Original Articles

Well done Latif Chaudhry – by Ahsan Abbas


Dear Mr Latif Chaudhry

I am very pleased to read your column in daily Express in which you exposed the hypocrisy of notorious Taliban apologist Ansar Abbasi of the Jang Group (Jang/The News/Geo).

The so called “Jihad” of Ansar Abbasi against “Fahashi” (vulgarity) reminds me of Taliban’s “Islamic” Government in Swat.

In one such episode of prostitution of Islam in the name of Islam, three so called Taliban Mujahideen entered a poor person’s house in Swat and ordered him to marry his 3 daughters with them immediately otherwise get ready for dire consequences.

So when the Uzbek, Arab, Cheychen Taliban were capturing our daughters, this was NOT fahashi or vulgarity?

When these “Mujahideen” flogged a girl with two unrelated (Na Mehram) men holding her arms and her legs, it was NOT Fahashi, but a “Jihad”?

I still remember, Ansar Abbasi wrote a column in Jang stating the reference from “Surah e Noor” proving that his “Islami brothers” were doing all such excesses as per the injunctions from the Holy Quran
(He should have been charged of Tauheen e Quran, I believe)

When Medam Tahira (an agency tout) confesses to be a provider of call girls to Maulana Sami ul Haq (another agency tout), the father of the Taliban, it is NOT Fahashi?

Pakistan Army captures Taliban Camps and from every Camp, they find porn videos and sexu devices. This is NOT Fahashi? Why does Abbasi always hides it?

I am in the UK, the centre of Fahashi as per Abbasi’s standards, yet the modest people here are more pious even than many Pakistanis. Is it PEMRA controlling them?

Yes, every Muslim is bound to keep modesty and refrain from fahashi, no second opinion on it; but at the same time, we have to see what one means to say “between the lines”

A story from Islamic history:

A man from Yazeed’s army asked Hazrat Abdullah Ibn e Abbas (RA):

Oh the Son of Abbas, tell me is the Blood of a Mosquito impure (Najis) or Pure (Paak).

Ibn e Abbas replied

“Be the curse of Allah upon you and Yazid. You killed Imam Hussain (AS) the most beloved Grand Son of the Holy Prophet PBUH, mutilated his pious body, left him without burial and considered it to be Halal
and now you are asking me about blood of a Mosquito”

The same question I ask Ansar Abbasi

From Chilas to Quetta, Karachi, Parachinar, Mastung to Khuzdar, blood of innocent people is being shed in Pakistan’s streets, mosques and houses; you are hiding it and intentionally diverting the attention by discussing issues like Fahashi, the SAME tactics as
our “Judiciary” is using by manufacturing the Memo Scandal or Waheeda Shah’s slap.

I would further add that:

EVERY PROBLEM OF PAKISTAN INCLUDING ENERGY SHORT FALL, ECONOMIC
CRISIS, NUDISM, IS THE RESULT OF THE TALIBAN AND SIPAH-E-SAHABA’S TERRORISM WHICH COLUMNISTS LIKE ABBASI WANT TO HIDE AT EVERY COST AND THEY ARE PAID FOR IT.

Mr Latif writes:

“The nexus of terrorists and their supporters in the media is intentionally bringing this society to total destruction”

A personal request:

The job of a columnist is like that of Prophets; they do not say what people want to listen but tell them the facts.

They were stoned even but remained stick to truth.

It is too difficult to say the truth in a society where people like Hafiz Saeed, Mumtaz Qadri and Imran Khan are made “heroes” by their right wing supporters in the media.

Carry on your good work, Mr. Latif Chaudhry. Keep exposing Ansar Abbasi and other Taliban apologists in Pakistani media.

About the author

Jehangir Hafsi

5 Comments

Click here to post a comment
  • ایسی شخصیت شروع دن سے ہی کانٹے کی طرح آنکھ میں کھٹکتی ہے جو کسی ہردل پسند اور مقبول قومی ہیرو کے ساتھ وابستہ ہوں ، مشکل سے ہی شائیقین کی نظرو میں کوی قابل ستائیش مقام حاصل کر سکتیں ہیں ان سے ایک خاص قسم جیلیسی بہی کار فرما رہتی ہے
    اسی احساس کے ساتھ آصف علی زردای نے کئ سال گزارے ہوں گے.. پہر بات اس سے بہی اگے بڑھ گی اور محترمہ شہید کو زچ کرنے کے لے اسے جیل کی سلاخوں کے پیچھ بند کردیا گیا.
    اس معتوب شخص کی زندگی کو اگر دیکھا جاے کہ رئیس باپ کا بیٹا ، دولتمند اور سیاسی بیک گراونڈ سے تعلق رکھنے والے خاندان کا وە کھلنڈرا نوجوان جس نے کبہی سوچا بہی نهين ہوگا کہ ایک دن وە اس ملک کے سب سے اعلی ترین مقام پر بٹھادیا جاے گا
    جس نے چاہا تو یہی ہوگا کہ ایک شوہر، باپ اور خاندان کا سربراە بن کر بمع اہل و عیال خوشی کے ساتھ زندگی گزارےلیکن خدا نے اسے بہت بڑی آزمائیش کے لیے چن لیا
    وە اپنی عمر کے بہترین سال ہی نہیں بلکہ اپنے معصوم بچوں اور پیاری بیوی کے نہایت ہی اہم ساتھ سے بہی محروم کردیے گۓ
    انکے پیارے اور معصوم چہروں کو دیکھنے سے محروم رہے، ان کو بڑا ہوتے،چلتے بولتے اور اٹھکیلیاں کرتے اور شرارتیں کرتے دیکھتے کیسے پاپا جیسے دل موە لینے والے الفاظ سنتے.. ان حسین ترین لمحات سے محروم کردیے گئے جو ہمیشہ ہی والدین اور بچوں کی کیلے بہت پیاری اور عزیز ياديں ہوتی ہیں. لیکن یہ وہی محسوس کرسکتا ہے جس نے خوشی کے وە دن گزارے ہوں ،لیکن آصف علی زرداری نے تو ان کی بجاے کتنی سیاە راتیں ان تاریک کوٹھریوں میں آپنے پیارے بچوں اور بہادر بیوی کو یاد کرتے گزاریں ہوں گیں کتنی خواہشیں اور تمنائیں دل میں اٹھتیں ہوں گیں
    یہی ہی نہیں بلکہ ظلم کی رات لمبی سے لمبی تر ہوتی گئ اور مختلف دباوٴ ڈالنے کیلے سالوں تک زلت ، رسوائ اور بدنامی کے تمام تر داغ لگادیے گے
    میڈیا ٹرائل اور عدالتوں کے ذریعے بغیر کوئ ثبوت اور سزا کے جیلوں مين بد ترین تشدد کیا گیا
    ایک شخص کے خلاف ہر اس چیز کو استعمال کیا گیا جس سے اس کی بدنامی ہو جوکہ فی الواقع شہید محترمہ کو تکلیف اور بلیک میل کرنے کیلیے تھا نیز سمجہوتے کا بہی لالچ دیا گیا تہا
    ، لیکن آفرین ہے اس مرد حر پر جسنے نہ تو ذھنی اور نہ ہی جسمانی ظلم کے آگے سر چہکایا اور پہر وە دن آپہنچا جس کا فیصلہ آسمانوں ہوچکا تہا اور وە شخص جو چن لیا گیا تھا اس آزمائیش کےلیے اور جسے زلت و بدنامی کا پیکر بنا کر پیش کیا جاتا رہا اسی مملکت خداداد کے سدە الحکم پر بٹھا دیا جاتا ہے کہ اس قادر مطلق کے قول کا بول بال ہوا کہ”میں ہی عزت اور زلت دینے والا ہوں اور میرے ہی ہاتھ میں اچھای ہے اور میں ہی ہر چیز قادر ہوں”
    کیا اس سے زیادە کوی برھانے الہی ہو سکتا ہے جس جوڑے كو اپنی دانست میں تاریخ کا بدنام ترین سیاسی جوڑا بنا نے کے لیے اندرونی اور بیرونی سازشیں تیار کی گیں ہوں أسی كی ہی بے گناھی آسمانوں میں ثابت ہوی ایک کو آخرت کے عظیم مقام شہادت اور دوسرے کو دنیا کے عظیم مقام صدارت عطا فرمادی گی ہو
    اور تاریخ میں وە مقام حاصل کرگے جو ہر کسی کے نصیب میں نہیں ہو سکتا ، هارون رشيد جيسي بہت سے عابر سبيل كا تاريخ ميں دهول سے زياده کا وجود نہ ہوگا ليكن آصف علي زرداري نے تاريخ كے اس سنك ميل كا مقام حاصل كر لیا ہے جوکہ نہ صرف پاكستان بلكہ تاريخ كي كتابوں میں رہتی دنيا رہے گا یہ نہ تو کوی دیومالای داستان ہے اور نہ ہی کوئ افسانوی کردار ہیں لیکن یہ ہرگز عام انسانی روئیداد بہی نہیں ہوسکتی اتنا زوال و عروج کہ جس کی مثالیں فقط آسمانی صحف میں ہی مل سکتی ہیں جهوٹ و بہتان تو أنبياء پر بہی لگے لیکن اس وقت تک جب احكم الحاكمين نے وعدە سچا فرمايا ہو کہ “تمہيں اعلي مقام پر فايز كيا جاے گا” کہ خالق کونین کا ہی اختیار ہے کہ “وە جیسے چاہے حکمرانی دے اور جس سے چاہے حکمرانی چہین لے” لیکن عقل کے اندہوں پر خداے برتر و بالا نے مہر لگادی ہے کہ وە اسکی نشانیوں کو جہٹلاتے رہیں گے تا آنکہ یوم الحساب

  • This abasi should remember that to who he support will have anyway to change their fathers who are blowing innocents. You are a virus that is shifting in ifti who is trying to jam words from sms and media.
    The vulgar most news paper is umat which uses very nude language. The words “aik adh inch kam krne ka kahen bilkul khasi na kren”
    where was ansar abasi to note this and where was ifti? Mr. Ifti why you are trying to protect islam? Which islam shia sunni or ? Why you don’t stop terrors who are forcing to kill innocent kids by black mail? The murder of teen boys being blown are your credit on your head?
    Why you term it suicide by using such a big seat?
    You will have to explain that who the hell are you to ask media to use this and stop that? why u r trying to mixup islam that never allows to touch others behaviour at to maintain yourselves?

  • AoA,
    Kam sy kam ye ehsas to hova hamara media bold hy sold nahi.
    Bhut khusbsorat andaz me bhut khubsorat points highlight kiy aap ny
    thank you Ch. sahib