Newspaper Articles

In view of Gujrat by-elections, PPP should jump out of PML-N’s catboat – by Shafiq Awan

Punjab’s ruling coalition earned nothing but embarrassment in the Gujrat by-elections. In fact the federal and Punjab governments – with all the resources and each other’s support – failed to wipe the Pakistan Muslim League-Quaid out from the political scene.

The PML-Q came out of the polls with charges of rigging and refused to accept the results. But, for the first time in the country’s history, National Identity Card-checking machines were introduced by the PML-N and the Election Commission was silent over this situation. Who allowed the PML-N’s polling agents to carry these machines in the polling stations and perform the job of the Election Commission? The question remains unanswered.

Although the PML-N and the PPP duo managed to win the general elections but jointly they could not maintain their vote bank in the by-elections. It is an eye opener for the ruling coalition in Punjab. The PML-N should analyse the situation that if the PPP had not come to its rescue, the results might have been different.

This could be a disturbing situation for both the PPP and the PML-N in the context of the upcoming local governments elections when the PPP, the PML-N and the PML-Q will be in the race along with other groups. The results of those elections may not come out as desired.

The PML-N and PPP were expecting a landslide victory with a margin of over 70 percent votes against the PML-Q. However, both parties were unable to convince voters to come to the polling stations, resulting in a low turnout. Even after a low turnout, the PML-N was expecting 40,000 votes in its favour.

A senior leaguer disclosed the close victory margin had shaken the Sharifs’ confidence and Nawaz Sharif had asked the party to find out the reasons: whether the voters were displeased with the PML-N and the PPP’s coalition or the PML-Q was gaining sympathies.

The PML-N’s top leadership was not at all satisfied with the results and urged the Punjab league to do better homework before jumping in the local governments elections.

In the general elections, candidates of the PML-N and the PPP jointly bagged 43,000 votes while the PML-Q’s vote count was 11,700. In the by-elections, the PML-N and the PPP coalition could only manage to bag 27,439 votes, while the PML-Q got double their vote count.

PML-N Senator Parvez Rashid claimed that voters in by-elections usually did not cast votes with the same spirit that is witnessed in the general elections. But he had no answer to how the PML-Q managed to double its vote count in the elections in which voters were “least interested”. The reason is obvious: voters are not satisfied with the PML-N-led coalition in Punjab. Credibility of both the parties has been marred in these elections.

But what has the PPP gained by supporting the PML-N, since PML-N MNA Khawaja Saad Rafiq, in a TV show, said they could not convince PPP voters to come out and vote for them. The PPP should not be surprised if one day the PML-N claims victory in Gujrat all by itself.

There were also reports that women had been tortured and their clothes stripped off. Calling the provincial coalition an “unholy alliance”, Marvi Memon could not keep away her tears while narrating the torture.

Being aware of politics in Gujrat, these elections would lead to new hostilities and cost human lives. In Gujrat, over 3,000 including politicians were killed in clashes and deaths were reported in double figures at a single event to settle scores.

Being a senior, the PPP should have not supported the PML-N in the Gujrat by-elections as it ditched them in the Fort Abbas by-polls and supported the PML-Zia. The PPP only earned a bad name through this and nothing else.

The PML N’s claims of being the heirs of Punjab were also dampened in these elections. The PPP should revamp its strategy to strengthen itself in Punjab instead of sailing in the PML-N’s catboat.

Source: Daily Times

About the author

Abdul Nishapuri

3 Comments

Click here to post a comment
  • The by-elections in Gujrat and Dera Ismail Khan for
    two provincial assembly seats are an ample reflection of the people’s mood on how they view the performance of the ruling parties currently in power. Although the PML-Q’s candidate was defeated by PML-N’s Imran Zafar in PP-111 by a slim margin, the number of votes PML-Q was able to muster reflected the continuing hold of the Chaudries in their traditional stronghold. Acting on the policy of reconciliation, the PPP had not fielded its candidate in this constituency and had announced its support for the PML-N’s candidate. However, both these parties together received only a slightly higher number of votes than their rival for their candidate Imran Zafar to win. And if we take into consideration the rigging charges that the losing PML-Q has levelled, this victory becomes all the more Pyrrhic. There are reports of manhandling of PML-Q voters as well as polling staff by PML-N supporters. PML-Q leader Chaudhry Pervaiz Elahi has alleged that bypassing the election rules and the Election Commission, PML-N workers were allowed to bring in machines to check the authenticity of ID cards in order to dissuade PML-Q voters. Violence and misuse of government machinery in the ruling party’s favour is regrettable and violates the norms of democratic conduct.

    Is it merely a coincidence or is this indicative of a pattern that voters in Punjab seemed disillusioned by both the major ruling parties? This also was true of a previous by-election for a National Assembly seat in Lahore, which saw a very low voter turnout and more than expected share of votes for one of the opposing candidates belonging to Pakistan Tehrik-i-Insaf (PTI). PML-Q, which was being considered a spent force, is emerging as the third largest political party of the country once again. The truth is that despite a legacy of problems that it inherited from the previous government, the PPP-led dispensation has not been able to address key issues nor solve people’s problems, even after two years of being in power. The lacklustre performance of the governments at the Centre and in Punjab has not only shaken the people’s confidence in the parties in power, but the democratic process itself. It has also come as a surprise for the PML-N, which has been overconfident of its popularity among the masses after political point scoring for its role in the restoration of the judiciary. However, the public’s verdict is that if a party does not prove itself up to the challenges, it does not deserve the mandate it got. Another aspect of this pattern indicated by the Gujrat by-poll is that PML-Q, which is a great champion of the local bodies, will present a real competition to all parties, which are not even half as enthusiastic, in the upcoming local bodies elections. Thus, there is an urgent need for the parties in power to reassess their performance and pull up their socks.

    The by-poll in DI Khan has, however, shown another aspect of the changed public mood in that part of Pakistan. Jamiat-i-Ulema-i-Islam (JUI) candidate Maulana Lutfur Rehman, who happens to be the brother of JUI’s head Maulana Fazlur Rehman, was defeated by a considerable margin by the PPP’s Samiullah Alizai. This shows public anger against the JUI, which was part of the Mutahidda Majlis-e-Amal’s (MMA’s) government in NWFP that allowed the growth and expansion of the Pakistani Taliban in FATA and the settled areas, particularly Swat, unhindered. Despite all its failings, the democratic government must be credited for swinging public opinion against militant extremism.

    http://dailytimes.com.pk/default.asp?page=20103\26\story_26-3-2010_pg3_1

  • مسلم لیگ نون کے ووٹر کہاں گئے؟

    علی سلمان
    بی بی سی اردو ڈاٹ کام، لاہور
    مسلم لیگ نون ضمنی انتخابات کی ’اگنی پرتکشیا، یعنی آگ میں سے گزرنے کی آزمائش‘ کے بعد بظاہر اپنی کامیابی کا دعوی کر رہی ہے لیکن لگتا ہے کہ اس کے لیڈران اس بات سے بخوبی واقف ہیں کہ ان کی کامیابیوں کا گراف وہ نہیں رہا جو سنہ دوہزار آٹھ کے عام انتخابات میں تھا۔

    نواز لیگ کی کامیابیوں کا گراف وہ نہیں رہا جو سنہ دوہزار آٹھ کے عام انتخابات میں تھا

    یہ صورتحال مسلم لیگ نون کے لیے پریشان کن لگتی ہیں۔

    ہوسکتا ہے کہ اس کے لیڈران کا ووٹ میں کمی کا برسرعام اعتراف شاید پاکستانی سیاست کے لحاظ سے کچھ راست اقدام نہ ہو۔

    ممکن ہے بظاہر کسی بڑی ہزیمت سے بچ جانے پر مسلم لیگ نون کے رہنما ایک دوسرے کو مبارکباد دیتے دکھائی دیتے ہوں لیکن میرے خیال میں معاملات کی سمجھ بوجھ رکھنے والے لیڈروں میں مستقبل کے طلسمی بلوریں گلوب میں جھانکنے کی اہلیت موجود ہے جو شاید کچھ منفی پشنگوئیوں کا مرکز بنا ہوا ہے۔

    بات ذرا دلائل اور اعداد وشمار کی روشنی میں کرنا ہی مناسب ہے۔

    سنہ دوہزار آٹھ کے عام انتخابات میں پاکستان میں بالعموم پیپلز پارٹی اور پنجاب میں مسلم لیگ نون کے حق میں اکثریتی ووٹ پڑا تھا۔ پیپلز پارٹی نے مرکز میں اور مسلم لیگ نون نے پنجاب کا تخت سنبھالا۔

    تجزیہ نگار وں کا کہنا ہے کہ ضمنی انتخابات میں عام طور پر نوے فی صد کامیابی صوبائی حکومت کو حاصل ہوتی ہے اور اگر فیصلہ ہار جیت کی بنیاد پر کیا جائے تومسلم لیگ نون یہ دعوی کرسکتی ہے کہ اس نے ضمنی الیکشنوں میں یہ روایت برقرار رکھی ہے۔

    لیکن یہ آدھا سچ ہے باقی کی نصف حقیقت یہ ہے کہ مسلم لگ نون کو ڈالے جانے والے ووٹوں میں تیس فی صد تک کمی ہوئی ہے اور اگر اس کے مخالفین کو پڑنے والے ووٹوں سے موازانہ کیا جائے تو نون کی نسبت مخالفین کی مقبولیت بڑھتی دکھائی دے رہی۔

    تازہ ترین مثال تو گجرات کےانتخابات ہیں جہاں سنہ دوہزار آٹھ میں اپوزیشن کی مسلم لیگ نون اور پیپلز پارٹی کے ووٹ ملا کر چھتیس ہزار سے زائد تھے اور جیت بھی مسلم لیگ نون کے حصے میں آئی تھی۔

    لاہور میں نواز شریف کے روایت حلقے کے ضمنی انتخاب میں نون کو ڈلنے والے ووٹوں میں تیئس ہزار کی کمی ہوئی اور ہ مسلم لیگ نون کی لیڈ ساٹھ ہزار سے کم ہوکر پینتیس ہزار پر آگئی۔
    اس بار دونوں پارٹیاں حکمران اور اتحادی تھیں لیکن ووٹ ماضی کے مقابلے میں نوہزار کم رہے۔ دوسری جانب اپوزیشن پارٹی مسلم لیگ قاف کے ووٹ میں بھی اتنا ہی اضافہ ہوگیا۔

    مسلم لیگ نون کو پہلا دھچکا چند مہینے قبل مانسہرہ کے ضمنی انتخابات میں لگا تھا جہاں مسلم لیگ نون کا امیدوار واضح فرق سے ہارا لیکن مسلم لیگ کے قائد نواز شریف نے یہ کہہ کر اپنی پارٹی کی پوزیشن واضح کی تھی کہ دوہزار آٹھ کے الیکشن میں جمعیت علمائے اسلام یعنی جے یوآئی سے اس سیٹ پر انتخابی ایڈجسٹمنٹ ہوئی تھی جو اس بار نہیں ہوسکی ۔ ان کے بقول اسی لیے جے یوآئی کی فتح کو مسلم لیگ نون کی غیر مقبولیت قرار نہیں دیا جاسکتا۔

    چلیئے مان لیا۔۔۔ لیکن راولپنڈی میں کیا ہوا؟ جہاں مسلم لیگ کے مدمقابل واحد سنجیدہ امیدوار شخ رشید کے ووٹوں میں تو بائیس ہزار کا اضافہ ہوگیا لیکن مسلم لیگ نون کے ووٹ تیرہ ہزار کم ہوگئے۔

    اس کو بھی چھوڑیں لاہور آجائیں جسے پندرہ برس سے نواز شریف کا قلعہ قرار دیا جارہا ہے، یہاں بھی مسلم لیگ نون کی چھوڑی ہوئی سیٹ این اے ایک سو تیئس پر الیکشن ہوا تھا۔ پیپلز پارٹی نے بھی مسلم لیگ نون کی حمایت کی لیکن نہ صرف نون کو ڈلنے والے ووٹوں میں تیئس ہزار کی کمی ہوئی بلکہ مسلم لیگ نون کی لیڈ ساٹھ ہزار سے کم ہوکر پینتیس ہزار پر آگئی۔

    جھنگ کے ضمنی انتخابات میں اپنی سیٹ بچانے کے لیے مسلم لیگ نون کے وزیروں کو کالعدم سپاہ صحابہ کے جلسوں میں شرکت کرنا پڑی اور اپوزیشن رکن قومی اسمبلی شیخ وقاص احمد کے بقول نون کے وزیر ووٹوں کی خاطر انسداد دشت گردی ایکٹ کے فورتھ شیڈول کے زمرے میں آنے والے افراد کی حمایت حاصل کرتے رہے۔

    بہاولنگر کے ضمنی انتخابات میں مسلم لیگ نون اگر دل سے پیپلز پارٹی کے ساتھ تھی تو پھر ضیاء لیگ کے امیدوار کی کامیابی بھی مسلم لیگ نون کے مخالف پلڑے میں ڈالی جاسکتی ہے۔

    مبصرین کا کہنا ہے کہ پیپلز پارٹی کی مقبولیت میں فرق کا آغاز آصف زرداری کی صدارت سنبھالنے کے بعد شروع ہوگیا تھا لیکن مسلم لیگ نون کی عوام میں پذیرائی کی کمی کا واضح اشارہ ضمنی انتخابات میں کھل کر سامنے آیا ہے۔

    یہاں اس بات کو نظر انداز نہیں کیا جاسکتا کہ ضمنی انتخابات ایسی صورتحال میں ہوئے ہیں جہاں پنجاب میں خود شہباز شریف حکمران ہیں اور مرکز میں شریف بردران کے نخرے اٹھانےوالی والی پیپلز پارٹی کی حکومت ہے۔

    ان ضمنی انتخابات کاموازانہ سنہ دوہزار آٹھ کے ان انتخابات سے کیا جارہا ہے جب پاکستان میں نواز شریف کے بدترین مخالف فوجی کمانڈو جنرل پرویز مشرف کی حکومت تھی۔

    پنجاب کے دیہی علاقوں کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہاں اس امیدوار کو کامیابی ملتی ہے جو تھانے کچہری میں اپنا اثر و رسوخ ثابت کرسکے اور شہری علاقوں میں وہ پارٹی کامیاب ہوسکتی ہے جو مستقبل کے سہانے خواب دکھا سکے
    تو کہا جاسکتا ہے کہ موافق ترین حالات میں ہونے والے انتخابات کے نتائج بدترین حکومتی مخالفت کےدور میں ہونے والے الیکشن کے نتائج کے مقابلے میں گراوٹ کا شکارہیں۔

    پنجاب کے دیہی علاقوں کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہاں اس امیدوار کو کامیابی ملتی ہے جو تھانے کچہری میں اپنا اثر و رسوخ ثابت کرسکے اور شہری علاقوں میں وہ پارٹی کامیاب ہوسکتی ہے جو مستقبل کے سہانے خواب دکھا سکے۔

    بلدیاتی نظام کو عملاً معطل کرنے کے بعد وزیر اعلی سے زیادہ تھانے کچہری پر عملدرآمد کرنے والا کوئی نہیں رہا تھا اور سہانے خواب دکھانےمیں بھی مسلم لیگ نون کی میڈیا ٹیم پاکستان میں لاجواب ہے لیکن اس کے باوجود مسلم لیگ نون کی بیلٹ باکس پر حمایت میں کمی اگر کسی بڑی تبدیلی کا اشارہ نہیں بھی ہے تو مسلم لیگ نون کے ان قائدین کے لیے پریشانی کا سبب ضرور ہونی چاہیے جنہیں رات کو سوتے میں بھاری مینڈیٹ کے خوش کن خواب آتے ہیں۔

    یہاں دھاندلی کے ان الزامات کا ذکر نہ بھی کیا جائے جو مسلم لیگ قاف پنجاب حکومت پر عائد کرتی ہے اس کے باوجود حال ہی میں ہی سپریم کورٹ کے خوف یا احکامات کے نتیجے میں قومی اسمبلی کی دو اور صوبائی اسمبلی کی خالی ہونے والی ایک نشست حکمران مسلم لیگ نون کے لیےایک پل صراط ثابت ہوگی۔

    مبصرین کا کہنا ہے کہ امن وامان اور معاشی تنگدستی سے پریشان پنجابی عوام کےروبرو جانے والے رہنماؤں کے لیے غلطی کی گنجائش نشتہ۔

    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2010/03/100325_pmln_votes_decreasing_why.shtml