Original Articles

The will of a Sindhi journalist – by Laibaah

Bashir Arisar of Jeay Sindh Mutahida Mahaz was kidnapped and tortured by intelligence agencies.

We are cross-posting a painful story (published by BBC Urdu) of Shahid Khaskheli, a Sindhi journalist who filed a report for KTN about Bashir Arisar, a Sindhi nationalist who was abducted and brutally tortured by Pakistan army’s intelligence agencies in reprisal of his political activities. Shahid Khaskheli has been threatened by the intelligence agencies that he would be punished because he published Arisar’s story. This shows that Pakistan army and its intelligence agencies are now reviving their brutal game in Sindh after they brutally crushed political workers of Pakistan Peoples Party and Sindhi nationalist during the Movement for Restoration of Democracy (MRD) in 1980s.

Is it a crime to report a missing person’s story in the mainstream media?

We condemn Pakistan army’s role in illegal kidnapping and torture of Sindhi nationalists and harassment of journalists. We urge Pakistan army chief General Kayani and President Zardari to pay urgent attention to the matter, assure full security of journalists; punish those who abducted and tortured Bashir Arisar and those who are now harassing Sindhi journalists.

***********

’اگر میں مارا جاؤں تو‘
حسن مجتبیٰ
بی بی سی اردو ڈاٹ کام، نیویارک
آخری وقت اشاعت: اتوار 26 فروری 2012 ,

پاکستان میں لاپتہ لوگوں کی تعداد میں گزشتہ سالوں میں اضافہ ہوا ہے

’اب میں اپنا سر بچا کر بھیس بدل کر رپورٹنگ کر رہا ہوں اور کرتا رہوں گا۔ برائے مہربانی میرا یہ میسیج ڈیلیٹ مت کیجیے گا اور ریکارڈ پر رکھنا اگر میں مارا جاؤں تو۔‘ یہ الفاظ ہیں اس اخباری اور ٹی وی رپورٹر کے جس نے ایک گمشدہ شخص کے متعلق رپوٹنگ کی اور اب وہ بھاگتی ریل کے پیچھے ہے۔

گزشتہ منگل کو پاکستان کے صوبہ سندھ کے شہر میرپور خاص کے قریب میرپور خاص – عمر کوٹ روڈ پر ایک شخص شدید زخمی حالت میں بے ہوش ملا تھا۔ اس شخص کے دونوں جبڑے ٹوٹے ہوئے تھے جبکہ ایک جبڑے پر پلاسٹر بھی چڑھا ہوا تھا۔ اس شخص کا نام بشیر آریسر ہے۔

بشیر آریسر ان گمشدہ سندھی قوم پرستوں میں سے ایک ہے جن کی آزادی کے لیے ان کے اہلِ خانہ یا لواحقین سپریم کورٹ کے سامنے ان کی رہائي کی لیے احتجاجی کیمپ لگاکر مظاہرے کر رہے تھے۔ لیکن جس وقت بشیر آریسر کے گھر والے اسلام آباد میں مظاہرے کر رہے تھے انہیں منگل کی رات بتایا گیا کہ کئي ماہ قبل مبینہ طور پر انٹیلیجنس ایجنسیوں کے ہاتھوں گرفتار ہوکر لاپتہ ہونے والا بشیر آریسر انتہائي بری اور زخمی حالت میں پایا گیا ہے۔

بشیر آریسر جس شام ہاتھ آیا اسی رات اس کے تشدد شدہ زخمی جسم کے ساتھ برآمد گی کی خبریں اور فوٹیج اور فوٹوز سندھی ٹیلی ویژن نیوز نیٹ ورک کے ٹی این اور اخبار ’کاوش‘ پر نشر اور شائع ہوئے۔

لیکن کاوش اور کے ٹی این کے جس نمائندے نے یہ خبریں اور فوٹیج دیے اسکے خلاف مبینہ طور پر بقول اسکے ایجنیسوں نے کیا سلوک کیا ہوا وہ کاوش اور کے ٹی این کے اس نمائندے شاہد خاصخیلی کی اپنی زبانی سنیے جو اس نے مجھے ایک ای میل پیغام میں لکھا ہے۔ صحافی شاہد خاصخیلی نے لکھا ہے اگر وہ مارا جائے تو اسکا یہ میسج ریکارڈ پر رہے۔
شاہد خاصحیلی مجھے اپنے انٹرنیٹ پیغام میں لکھتے ہیں (جو میں جوں کے توں یہاں پیش کر رہا ہوں) :

’میں شاہد خاصخیلی، رپورٹر کے ٹی این نیوز اینڈ کاوش میرپور خاص۔ آج سے چار روز قبل مسنگ پرسن ایک شخص بشیر آریسر میرپور خاص کے نزدیک عمرکوٹ-میرپور خاص روڈ کے قریب سے ملا تھا۔ اسکی خبر کے ٹی این نیوز سے بریک ہوئي تھی۔ پھر میں رات گۓ میرپور خاص سے نکل کر بدین کے ایک گاؤں جا کر اسکی فوٹیج لیکر آیا۔ وہ کے ٹی این پر نشر ہوئی اور کاوش میں اسکی خبر شائع ہوئی۔ مگر صبح کو میرے پیچھے ایجنیسوں والے لگ گئے۔ وہ میرے آفس میں آئے اور بعد میں زبردستی مجھے آئي ایس آئی کے مرپور خاص میں واقع آفس میں طلب کیا گیا اور ڈرایا دھمکایا گیا کہ میں دہشتگروں کی حمایت کر رہا ہوں۔ مطلب یہ کہ مجھ پر یہ الزام صرف مسنگ پرسن کی نیوز چلانے، اسکے ٹوٹے ہوئے چار دانت دکھانے، اسکے منہ کے دونوں مسوڑوں کے نیچے لگي ہوئی لوہے کی پتریاں دکھانے اور اسکے کٹے ہوئے گلے کو دکھانے کی وجہ سے لگ رہا ہے۔ کیا یہ دہشتگردی ہے؟‘

شاہد اپنے پیغام میں لکھتے ہیں ’میں نہ قومپرست ہوں، نہ انتہا پسند۔ میں انسانیت میں یقین رکھنے والا آدمی ہوں۔ لیکن جب سے میں نے میرپور خاص جیسے ’ان سین‘ ایریا میں آکر کام کیا ہے تو وڈیرے، ایجنسیوں والوں اور تمام بیوروکریسی کو انگارے لگ گئے ہیں۔ میں اپنی تعریف نہیں کر رہا مگر کہہ رہا ہوں کہ سچ میں یہ ایک ’ان سین‘ ایریا ہے جہاں ظلم بھی چھپائے جاتے ہیں۔ جہاں خوبصورتی پر بھی پردے ڈالے جاتے ہیں۔‘

آخر میں کاوش کے رپورٹر شاہد خاصخیلی لکھتے ہیں، ’اب میں اپنا سر بچا کر بھیس بدل کر رپوٹنگ کر رہا ہوں، ا ور کرتا رہوں گا۔ برائے مہربانی میرا یہ میسیج ڈیلیٹ مت کیجیے گا اور ریکارڈ پر رکھنا اگر میں مارا جاؤں تو۔‘
پاکستان جیسا ملک، جو صحافیوں کے تحفظ کی عالمی تنظیم کمیٹی ٹو پروٹیکٹ جرنلسٹس (سی پی جے ) کے مطابق دنیا میں صحافیوں کیلیے خطرناک ممالک میں سرفہرست دس ممالک میں شمار ہوتا ہے اور جہاں حیات اللہ سے لیکر شہزاد سلیم جیسے کئي صحافی مارے گۓ ہوں وہاں سندھ کے چھوٹے سے شہر کے صحافی کے پیغام کی یہ سطریں مجھے سندھی شاعر آکاش انصاری کی اس نظم کی یاد دلاتی ہیں:

’اے ماں اے ماں
اگر میں بھی
رات کے رہزنوں کے ہاتھوں
مارا جاؤں
اپنے ساتھیوں کی طرح
ماں تو رونا نہیں
ماں تو رونا نہیں‘

About the author

Jehangir Hafsi

2 Comments

Click here to post a comment
  • Three more Enforced/ Involuntary disappearances in Sindh… Will that ever end?
    Posted on 22/11/2011 by iaoj
    Mr. Mohummad Arisar reported at RightsNow Pakistan’s office about his son’s disappearance. According to him, his son along with two friends Ahsan Malano and Mohsin Shah were forcedly taken by Pakistan’ intelligence agency personnel from Khanpur road between Kotri and Jamshoro. These are targeted disappearances which have been carried out by intelligence agencies with the connivance of Incharge CIA Hyderabad.

    Mohummad Arisar’s 25 year old son has a political affiliation with Jeay Sindh Mutahida Mahaz (JSMM), a nationalist group, was being followed by the intelligence agencies and was booked in many false criminal cases from which he was respectfully released by the courts.

    A few days ago, now disappeared Mohummad Bashir Arisar shared with the family that his motorbike was intercepted by a few people who were in plain clothes and they tried to abduct him but he managed to escape. Yesterday, on 17th November 2011, Bashir Ariasar and his two friends Mohsin Shah and Ahsan Malano came to the Session Court Kotri for hearing in a case. Bashir Arisar was also accompanied by his elder brother Manzoor Ahmed Arisar and one relative of Mohsin Shah. Manzoor Arisar elder brother of disappeared Bashir Ahmed shared that yesterday that they observed that a few people in plain clothes, who were accompanied by CIA in-charge Hyderabad, were present in the premises of the Session Court and were chasing Bashir Ahmed, Mohsin Shah and Ahsan Malano.

    Later, Bashir Ahmed Arisar, Ahsan Malano, Mohsin Shah left Session Court and were going to Jamshoro on two bikes with Manzoor Arisar and one relative of Mohsin Shah. Their motor bikes were intercepted at the Khanpur road between Kotri and Jamshoro and they were forcedly abducted. According to Manzoor Arisar, brother of Bashir Arisar, during interception, they also hit their motor bikes and they fell down.

    Manzoor Arisar told “Rights Now Pakistan” that those who abducted his brother Bashir Ahmed Arisar and two of his friends (Mohsin Shah & Ahsan Malano) were in two black vehicles. One was cultus while other was of similar type. Manzoor Arisar shared that, “we were scared and nervous so could not note down their numbers but I could recognize, CIA In-charge who was also present in the Court premises.”

    RightsNow Pakistan has also reported that the mother of disappeared Mr. Bashir Arisar who by qualification is a mining engineer, is a heart patient. After hearing news of her sons’ abduction, her condition has further deteriorated. Bashir Arisar’s father who is a high school teacher in Badin is shuttling between Kotri, Jamshoro Police Station and visiting CIA center Hyderabad for the whereabouts of his son Bashir Arisar and two of his friends but so far nobody knows where they have been taken.

    RightsNow Pakistan condemns these illegal activities of legal state actors which violate Pakistan’s constitution and international human rights law. These activities of State actors are creating fear, insecurity in the masses as well as society and eroding people’s trust in the State and its institutions. RightsNow Pakistan calls for immediate and safe release of Bashir Arisar, Mohsin Shah and Ahsan Malano and clearly states that if the State actors have any charges against these people they should be brought against them in the court of law and they should be given the chance of facing the fair trials.

    Why has the State been silent and not only failed to protect its citizens but failed to control its agencies. The State of Pakistan seems have lost all control over its intelligence agencies that control the province. These agencies use national security and protection of ideological boundaries and territorial integrity of Pakistan, to justify the extra-judicial killings and disappearances of citizens of Pakistan.

    RightsNow Pakistan has observed and analyzed that such incidents are increasing in Balouchistan and Sindh; particularly in universities. In Sindh, there is rarely a week goes by without any news of disappearance. This is making people of Sindh critical of Pakistani State institutions and weakening the foundations of the federation and helping violent elements to further their agenda and increase their numbers.

    RightsNow Pakistan demand an end to the disappearances of Pakistani citizens and calls for the immediate release of all those who have been forcibly disappeared.

    Source – Right Now Pakistan

    http://iaoj.wordpress.com/2011/11/22/three-more-enforced-involuntary-disappearances-in-sindh-will-that-ever-end/

  • سندھ:’قوم پرست رہنما میر عالم مری لاپتہ‘
    آخری وقت اشاعت: بدھ 7 مارچ 2012 ,‭ 08:58 GMT 13:58 PST
    Facebook
    Twitter
    دوست کو بھیجیں
    پرنٹ کریں

    پاکستان کے صوبہ سندھ کے نوجوان قوم پرست رہنما اور مصنف میر عالم مری اپنے ساتھی کے ساتھ حیدرآباد سے مبینہ طور پر لاپتہ ہوگئے ہیں۔
    ان کی جماعت نے الزام عائد کیا ہے کہ انہیں پاکستان کے انٹلی جنس اداروں نے حراست میں لیا ہے۔
    اسی بارے میں
    ’خود کو آئین،قانون سے بالاتر سمجھنا چھوڑ دیں‘
    ’بہاولپور جیل سے عمر رسیدہ شخص لاپتہ‘
    تین بیٹوں کا غم ناقابلِ برداشت، ماں چل بسی
    متعلقہ عنوانات
    پاکستان, سندھ
    جیئی سندھ قومی محاذ کا کہنا ہے کہ ان کے رہنما کو منگل کی شام اس وقت حراست میں لیا گیا جب وہ بھٹائی نگر کے قریب واقعے ایک ہوٹل پر بیٹھے ہوئے۔
    تنظیم کے چیئرمین عبدالواحد آریسر کے مطابق’ایک سیاہ رنگ کی گاڑی اور پولیس موبائل میں سوار اہلکار وہاں پہنچے اور میر عالم مری اور ان کے ساتھ موجود راجہ داہر کو اٹھا کر لے گئے، جنہیں نامعلوم جگہ پر منتقل کردیا گیا ہے۔‘
    دوسری جانب حیدرآباد کی بھٹائی نگر پولیس نے گرفتاری سے لاعلمی کا اظہار کیا ہے۔
    نامہ نگار ریاض سہیل کے مطابق ڈاکٹر میر عالم مری جیئے سندھ قومی محاذ کے سینیئر نائب صدر ہیں، وہ سندھ کی سیاست پر کئی کتابوں کے منصف ہیں اور اخبارات میں باقاعدگی کے ساتھ لکھتے رہے ہیں، اپنی حالیہ تحریروں میں انہوں نے بلوچستان میں جاری بلوچ تحریک کی بھرپور حمایت کی تھی۔
    جئے سندھ قومی محاذ کے چیئرمین عبدالواحد آریسر کا کہنا ہے کہ آزادی ہر کسی کا بنیادی حقوق ہے، جب وہ یہ بات کرتے ہیں تو انہیں غدار قرار دیا جاتا۔
    ان کا کہنا تھا کہ پاکستان کا وقار یہاں کے خفیہ اداروں نے خراب کیا ہے۔
    آریسر کے مطابق بلوچستان کے ساتھ سندھ سے بھی لوگ لاپتہ ہیں سپریم کورٹ کے چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری اس کا نوٹیس کیوں نہیں لیتے۔
    جیئے سندھ قومی محاذ کے چیئرمین عبدالواحد آریسر متحدہ قومی موومنٹ کے قریب سمجھے جاتے ہیں، جس کی وجہ سے سندھ کے قوم پرست حلقے ان پر تنقید بھی کرتے رہے ہیں، آریسر نے ڈاکٹر میر عالم کی بازیابی کے لیے الطاف حسین سے مدد کی اپیل کی اور کہا کہ وہ ان کا ساتھ دیتے رہے ہیں اب ان کی باری ہے

    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2012/03/120307_sindh_missing_zz.shtml