Newspaper Articles

From Osama to Taliban, where are the Sharifs headed? – by Saeed Minhas

Punjab Chief Minister Shahbaz Sharif’s careful treading through the power corridors received a severe blow as his public appeal to the Taliban for avoiding his fiefdom raised an unprecedented hue and cry in the National Assembly.

If the CM’s actions are not enough, the younger Sharifs meeting with Chief of Army Staff Gen Ashfaq Pervez Kiyani in Rawalpindi was taken as another political blunder made by the ambitious prodigy of a family known for its love affair with the Army GHQ and extreme-right entities – known as non-state actors in modern politicking.

Parliamentarians from across the board could not resist the temptation to pounce on the Sharifs by highlighting their Punjab-centric and pro-establishment past throughout Monday and for ridiculing the rest of the three provinces. Our friends from NWFP and Balochistan were furious and shared their venom by saying the Sharifs should start to bid adieu to all their hopes.

Perhaps taken aback by an unexpected (surely unscripted) slip of the tongue, the younger Sharif’s political mentors, especially the intellectual maestro from Lahore and GHQ-expert from Rawalpindi, could not do much but rush for fresh advice from their well-fed local and imported spin-doctors. Much to their grief, the outspoken street-smart wiz-kids of Lahori and Sialkoti origin could also not manage to help bail them out of the mess, as both of them have been dispatched to settle personal scores against the Chaudhrys of Gujrat in a by-election. Finding no one coming to the rescue of his political custodian, Hamza Shahbaz was forced to meekly stand before the media and take their blows on his chin.

Cafeteria, corridors and even galleries were abuzz with this discussion and Nawaz leaguers, who were very recently flying high on their by-election victories were visibly deflated, being forced to avoid making eye contact with the media. On the floor of the House, if their fellow male parliamentarians were asking for an apology from their party leader, they were also being shown dupatas by some female colleagues who were mimicking Nighat Orakzai, an NWFP MPA who had earlier in the day offered her head scarf to Shahbaz for being cowardly and perhaps for inciting the Taliban to attack others not in his province.

These heartbroken leaguers seem to have all the reasons for pointing fingers at the advisors of the Sharif bothers, especially towards the chair of their House leader, whom some of them consider an autocrat within the democratic (but currently dissolved) setup of their party. One of the leaguer, a lawyer from Lahore, could not remain silent, whispering “lets hope the elder Sharif starts listening to some saner elements now and come out of the company of his trusted men”.

Being an Amratsari-Kashmiri, he added that Mian sahib likes to eat well, get driven around by trusted men and get a good twitching massage on his kneecaps and legs. “But that cannot be true of a person who is dubbed as a leader in waiting and who undoubtedly holds complete sway in Punjab. It also remains a fact that of all the political parties, if anyone is matching MQM’s media model, then it’s the Sharifs. They believe in hiring the best of the best to work for their image glorification and providing them spin options.” A news-bugger, who claims to be a correspondent of some secret publication, was thrusting this analysis upon all of us when an ever-smiling MQM’s bhai-log kicked in with his usual dribble, “we have a media team equipped with technological superiority whereas Mian sahib prefers to hire those already serving in high positions”.

Revisiting the past is always painful for most of the players in our treacherous political history, but facts cannot be denied, said a soft-spoken parliamentarian hailing from the ANP. He said that following the first secret call-on of Shahbaz, Mian sahib had taken a back seat when he was told by party hawks that power remains the ultimate goal of the younger ace of the family. This was exactly the reason, why the late Sharif never introduced Shahbaz to Gen Jillani back in the 80s and offered Nawaz for induction in the Ziaul Haq set up.

From meeting with Osama Bin Laden to toppling Benazir’s 1988 government to formation of the IJI, the ANP leader claimed that Mian sahib had been in close contact with NWFP and FATA parliamentarians. Before the MQM, our parliamentarians used to be key to making governments, he recalled, adding that the Sharifs love for “Jihad” and his efforts to impose himself on the nation as Caliph are all part of our recent past. “I vividly remember the Jamaat-e-Islami’s advertorial campaign against Sharifs in which they relied on the slogan of “Qazi Aa Giya” (Qazi Hussain has arrived) and alleged that Nawaz had betrayed the cause of the IJI,” he added.

Source: Daily Times

About the author

SK

4 Comments

Click here to post a comment
  • Dawn editorial on this topic is worth reading:

    Sharif and the Taliban

    Tuesday, 16 Mar, 2010

    EVEN by the wretched standards of the cesspit of lies and cravenness that can be the Pakistani political establishment, the comments made on Sunday by Punjab Chief Minister Shahbaz Sharif are extraordinary and demand the most vigorous condemnation possible. Essentially, Mr Sharif has argued that his party, the PML-N, shares a common cause with the Taliban —that of opposing Gen Musharraf and his policies and rejecting ‘dictation’ from abroad — and therefore the Taliban should ‘spare’ Punjab. The very thought that any mainstream politician, let alone one as high-profile and powerful as the serving Punjab chief minister, could find anything in common with the Taliban ideology is despicable. But Mr Sharif has gone so much further than that. By asking the Taliban to ‘spare’ Punjab, what does the Punjab CM mean? Does he mean that the Taliban should launch their attacks elsewhere, in Sindh, Balochistan, the NWFP, Fata, Pata or other places? And what does the CM mean when he says that his party is fighting foreign ‘dictation’ just like the Taliban are? Does he mean that Pakistan should not fight the threat of militancy? What does Mr Sharif want to do instead — accommodate the Taliban like they were accommodated in Swat last year? Or should ‘peace deals’ be struck with the Taliban like they were in South Waziristan for years? The chief minister’s half-hearted ‘clarification’ issued later will not suffice; he must apologise to Punjab and the nation.

    That Mr Sharif could possibly be ignorant of the threat posed by the Taliban is impossible. As chief minister of Punjab he has sat at the apex of that province’s administration for over a year and a half now. Countless secret and not-so-secret memos will have arrived on his desk detailing the atrocities and crimes committed and planned by the Taliban. The secret interrogation cell that was attacked in Model Town, Lahore, only a few days ago was run by provincial authorities. The Punjab chief minister is mocking the sacrifices made by the very people who serve his administration by finding common cause with the enemy.

    Why is it so difficult for the PML-N to condemn terrorism outright, with no ‘ifs’ and ‘buts’? It surely cannot be a question of the reluctance to use violence against ‘fellow Pakistanis’. Like Mr Sharif’s first tenure as chief minister in the late 1990s, Punjab is once again witnessing a spike in ‘encounter’ killings of alleged dacoits, kidnappers and sundry criminals. The men who have been killed in dubious circumstances are also ‘fellow Pakistanis’. But Mr Sharif has no sympathy for these men; in fact, he has on many occasions announced rewards for the policemen for ‘cleaning up’ the province of criminal elements. There has been no talk of an amnesty for such criminals, no appeals to their better sides, no exhortations to recognise that they have much in common with the largest party in Punjab. The ordinary criminals must be wondering what they must do to get on Mr Sharif’s good side. Perhaps a statement against Mr Musharraf will do the trick.

    The PML-N needs to come clean with the people of Pakistan. On which side of the divide does it stand? Is it against militancy in all shapes and forms or is it ideologically sympathetic to the ‘justness’ of some facets of the militants’ cause? This is not about political expediency but about the very worst form of moral corruption. Pakistan’s leaders have a sacred duty to protect the people and the sovereignty of the state. There is absolutely nothing in the Taliban’s agenda that is any way even remotely compatible with that sacred duty. In fact, finding common cause with the Taliban is to take the country one step closer to the abyss. Ordinary Pakistanis have shown remarkable courage in resolutely backing the fight against the militants for a year now. Shahbaz Sharif and the PML-N need to accept who the enemy is. Otherwise, they have no business being involved in the affairs of the state.

    http://www.dawn.com/wps/wcm/connect/dawn-content-library/dawn/the-newspaper/editorial/sharif-and-the-taliban-630

  • کچھ دن پہلے تک صرف مذہبی سیاستدان اور نوآموز سیاسی مہم جو‘ دہشت گردوں کی وکالت کیا کرتے تھے۔ گزشتہ روز ملک کے سب سے بڑے صوبے کے وزیراعلیٰ جناب شہبازشریف نے جوش خطابت میں یہاں تک کہہ دیا کہ اغیار کی پالیسیوں کی مخالفت میں ان کی جماعت اور طالبان ہم خیال ہیں۔ یعنی وہ بھی اغیار کی پالیسیوں کی مذمت کرتے ہیں اور مسلم لیگ (ن) بھی کرتی ہے۔ چنانچہ اس ہم خیالی کی بنیاد پر طالبان پنجاب میں دہشت گردی کی حرکتیں نہ کریں۔پاکستان کی ایک قومی جماعت کی طرف سے جو ایک صوبے کی حکمران اور قومی اسمبلی میں اپوزیشن کی قائد ہے‘ اس طرح کی بات حیران کن ہے۔ ایک اخبار کے مطابق وزیراعلیٰ کی اس تقریر پر سیاسی اور دینی حلقوں میں ایک نئی بحث چھڑ گئی ہے اور ان حلقوں کا کہنا ہے کہ ”جب ایک طرف فوج اور سکیورٹی کے دیگر ادارے‘ دہشت گردطالبان کے خلاف جنگ لڑ رہے ہیں‘ ایسے حالات میں وزیراعلیٰ پنجاب نے یہ بیان کیا مقصد حاصل کرنے کے لئے دیا ہے کہ امریکہ کے بارے میں طالبان اور (ن) لیگ کا موقف ایک ہے۔“ اے این پی کے رہنماؤں نے اس بیان پر شدید ردعمل کا اظہار کیا ہے۔ کچھ دن پہلے ہمارے دیرینہ دوست اور بھائی سعودی عرب نے بھی اس پر تشویش کا اظہار کیا تھا کہ ”طالبان کے خلاف پاکستانی راہنماؤں میں اتفاق رائے نہیں ہے۔“ منتخب اسمبلیوں میں ملک کی دوسری بڑی جماعت کا یہ اعلان اگر ایک طرف دہشت گردی کے خلاف لڑنے والے جوانوں کے حوصلوں پر اثر انداز ہو گا‘ وہاں دہشت گردوں اور ان کے حامیوں کو تقویت ملے گی۔
    آپ نے لاہور میں دہشت گردی کی تازہ وارداتوں کے بعد پاکستانی طالبان کے لیڈروں کی طرف سے جاری کردہ وہ بیان بھی پڑھا ہو گا‘ جس میں انہوں نے ہماری سکیورٹی فورسز کے حوصلے پست کرنے کی خاطر شہریوں کو مشورہ دیا ہے کہ وہ فوج اور پولیس والوں سے دور رہنے کی کوشش کریں۔ دہشت گردوں کی طرف سے عوام اور حفاظتی اداروں کے مابین عدم اعتمادی پیدا کرنے اور قوم کے حوصلے پست کرنے کے لئے ایسے حرب استعمال کئے جاتے ہیں۔ لاہور کی وارداتیں باقاعدہ سوچے سمجھے منصوبے کے تحت تھیں۔ جس صبح کینٹ میں دو خودکش دھماکے ہوئے‘ اسی رات کو علامہ اقبال ٹاؤن میں سکیورٹی فورسز سے تعلق رکھنے والے افرادکے گھروں پر دھمکی آمیز پوسٹر چسپاں کئے گئے تھے‘ جن میں تنبیہہ کی گئی تھی کہ پولیس‘ آرمی اور خفیہ ادارے امریکہ کی غلامی اور امریکی ایجنڈا چھوڑ دیں اور اگلی ہی شام ان سارے گھروں کے باہر دھماکے کر ڈالے گئے۔ سننے میں آیا ہے کہ ایسے ہی ہینڈبل آر اے بازار کے علاقے میں بھی تقسیم کئے گئے تھے۔ ایک طرف دہشت گردوں کی طرف سے ہمارے شہر اور حساس مقامات پر حملے اور نفسیاتی جنگ کے حربوں میں اضافہ ہو رہا ہے اور دوسری طرف پاکستان کے سیاسی رہنماؤں کے بیانات‘ قوم میں عدم اتفاق کے مظاہرے کر رہے ہیں۔ کسی بھی ملک کے دشمن کا سب سے پہلا حربہ یہی ہوتا ہے کہ وہ جنگ میں قوم کو متحد نہ ہونے دے۔ پاکستان کے خلاف کارروائیاں کرنے والے دہشت گرد اس مقصد میں پوری طرح کامیاب ہو رہے ہیں۔ ہمارے میڈیا کا ایک حصہ پاکستانی فوج کی ان کارروائیوں کو ‘ جو وہ ملک کے اندر قائم دہشت گردوں کے مراکز ختم کرنے کے لئے کر رہی ہے‘ کے خلاف عوام میں بدگمانیاں پیدا کرنے میں لگا ہے۔ بعض تحریریں پڑھ کر یوں لگتا ہے کہ ہمارے شہروں اور سکیورٹی فورسز پر حملے کرنے والوں کے موقف کی تائید کی جا رہی ہے اور حکومت اور فوج کو مشورہ دیا جا رہا ہے کہ وہ دہشت گردوں کو کچلنے اور ان کے ہاتھ روکنے کے بجائے‘ ان کے ساتھ مذاکرات کریں۔ دہشت گردوں کے مطالبات کیا ہیں؟ یہ کسی سے پوشیدہ نہیں۔ وہ ایک مخصوص مسلک اور ظہور اسلام سے قبل کے جاہلانہ قبائلی طرززندگی کو اسلام قرار دے کر ‘ اسے پورے پاکستان پرمسلط کرنا چاہتے ہیں۔ ان سے مذاکرات کا مطلب ان کی غلامی قبول کرنے کے مترادف ہے اور یہ تسلیم کرنے کے برابر ہے کہ پاکستانی قوم ان کے موقف پر مذاکرات کرنے کے لئے آمادہ ہے۔ یہ اپنی ہی قوم کی پیٹھ میں چھرا گھونپنے کے مترادف ہے۔ ہماری فوجیں جس دشمن کے خلاف برسرپیکار ہیں‘ ان کے عقب میں بیٹھے ہوئے لوگ اسی دشمن کے حق میں باتیں کر رہے ہیں۔ جنگیں اس طرح نہیں لڑی جاتیں اور لڑی جائیں تو ان میں کامیابی حاصل نہیں کی جا سکتی۔ حکومت پاکستان کی طرف سے یہ پیش کش آج بھی موجود ہے کہ دہشت گرد خونریزی بند کر کے ہتھیار پھینک دیں اور جو بھی موقف وہ رکھتے ہیں اس کے حق میں رائے عامہ کی حمایت حاصل کرنے کی کوشش کریں۔ یہی وہ حق ہے جو انہیں دیا جا سکتا ہے اور یہ حق انہیں روزاول سے دستیاب ہے۔
    دہشت گردی کے خلاف جنگ جیسے جیسے آگے بڑھ رہی ہے‘ سکیورٹی فورسزکے حوصلے پست کرنے والے حربے بھی تیز ہو رہے ہیں۔ گزشتہ چند روز کے دوران پولیس کے خلاف جو مہم چلائی گئی اس کا نتیجہ بھی اس فورس کے حوصلے پست کرنے کی صورت میں نکل رہا ہے۔ جس تشدد کے مناظر‘ میڈیا پر بارباردکھا کر‘ پولیس فورس کو ہراساں کیا گیا وہ اس کی پیشہ ورانہ صلاحیتوں پر انتہائی برا اثر ڈالے گا۔ پولیس کے بعض عناصر یہ تشدد پہلی بارنہیں کر رہے۔ بچہ بچہ جانتا ہے کہ اکثر حالات میں پولیس مجبوروں‘ غریبوں اور بے گناہوں پر اس طرح کی زیادتیاں کرتی رہتی ہے۔ اس کا مستقل علاج کرنے کی ضرورت ہے۔ لیکن ایسے وقت میں جبکہ ہمارے شہر دہشت گردوں کے نشانے پر ہیں اور شہریوں کو تحفظ دینے کے لئے پولیس کو مستعد اور چوکنا رہنے کی ضرورت ہے اور اس مقصد کے لئے شہریوں کی طرف سے ان کی حوصلہ افزائی ہونی چاہیے‘ پولیس کے خلاف نفرت کو فروغ دینے کی کوشش ہو رہی ہے۔ 1965ء کی جنگ میں پولیس بھی اسی طرح کی تھی اور زیادتیوں کے قصے بھی عام تھے۔ مگر اس قومی امتحان کے موقع پر عوام‘ پولیس اور فوج سب کچھ بھول کر ایک ہو گئے تھے۔ ہمیں بھی اس وقت سب کچھ بھول کر ایک ہونے کی ضرورت ہے اور وہی سب کچھ کرنے کی ضرورت ہے‘ جو دوران جنگ کیا جاتا ہے اور وہ ہے تمام گلے شکوے‘ اختلافات اور تنازعات کو ایک طرف رکھتے ہوئے انسان اور وطن دشمن قوتوں کے خلاف صف آرا ہونا۔

    Nazir Naji
    جنگیں یوں نہیں لڑی جاتیں …سویرے سویرے …نذیر ناجی
    http://www.jang.net/urdu/details.asp?nid=417823

  • Provincial/personal interests should not overweigh national interest. A statement like this from the CM of the largest province is a blow is to the efforts and the sacrifices offered by the people of NWFP to curb terrorism. It just makes the blood boil.

  • مسلم لیگ (ن) کے صدر اور پنجاب کے وزیراعلیٰ میاں شہباز شریف اپنے بیان سے بظاہر مُکر گئے ہیں اور جاری کردہ وضاحتی بیان میں کہا ہے کہ ان کا بیان سیاق وسباق سے ہٹ کر پیش کیا گیا ہے۔

    میاں شہباز شریف کی وضاحت اپنی جگہ لیکن آج کوئی بھی مسلم لیگ ہو، چاہے وہ (ن) ہو یا (ق) یا کوئی اور، انہیں پاکستان میں دائیں بازوں کی سوچ والے لوگوں کی حمایت حاصل رہی ہے۔

    سابق وزیراعظم اور پیپلز پارٹی کی مقتول رہنما بینظیر بھٹو کئی بار یہ کہتی رہیں کہ دنیا کے ’موسٹ وانٹیڈ پرسن‘ اسامہ بن لادن نے ان کی حکومت ختم کرنے کے لیے میاں نواز شریف کو رقم فراہم کی تھی جس کی مسلم لیگ (ن) نے تردید بھی کی۔ لیکن پاکستان میں آج بھی زیادہ تر لوگ سمجھتے ہیں کہ مسلم لیگ (ن) کے زیادہ تر ووٹر مذہبی سوچ کے حامل لوگ ہیں۔

    میاں برادران بغیر داڑھی کے مولوی ہیں اور اہل حدیث کی سوچ کے حامی ہیں۔
    ایک سرائکی پارٹی کے رہنما تاج لنگاہ
    ایک سرائکی پارٹی کے رہنما تاج لنگاہ نے کچھ عرصہ پہلے ایک ملاقات میں کہا کہ ’میاں برادران بغیر داڑھی کے مولوی ہیں اور اہل حدیث کی سوچ کے حامی ہیں۔ لشکر طیبہ بھی اہل حدیث کی سوچ کی حامل ہے اور ایسی سوچ کے حامل گروہوں کو سعودی عرب اور مشرق وسطیٰ کے دیگر ممالک بے تحاشہ پیسے دیتے ہیں‘۔

    اگر فروری سنہ دو ہزار آٹھ کے انتخابات کے نتائج کا جائزہ لیں تو بھی مسلم لیگ (ن) اور مسلم لیگ (ق) کے کالعدم سپاہ صحابہ نامی جماعت کی قیادت سے گہرے تعلقات ثابت ہوتے ہیں۔ ضلع بھکر سے میاں شہباز شریف نے خود کو بلا مقابلہ منتخب کروانے کے لیے سپاہ صحابہ کے امیدوار کو دستبردار کرانے کے لیے خود بات چیت کی اور حال ہی میں کالعدم سپاہ صحابہ کے چند مبینہ طور پر سزا یافتہ ملزمان کو رہا بھی کیا گیا۔

    کالعدم سپاہ صحابہ کے حامیوں کے ساتھ سنہ دو ہزار آٹھ کے انتخاب میں مسلم لیگ (ق) نے بھی اتحاد کیا اور مشترکہ طور پر ایک حلقے سے انتخاب میں حصہ لیا تھا۔

    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2010/03/100316_shahbaz_punjab_taleban_attacks_comment.shtml