Original Articles

On Benazir’s 4th death anniversary, President Zardari hits out at Teen Jeem’s conspiracies against democracy

It was one of the largest shows of political strength in Pakistan’s political history after Benazir Bhutto’s arrival from exile in September 2007 (when about a million PPP workers and supporters had gathered to receive their leader at Karachi airport). On Benazir’s fourth death anniversary (27 December 2011), more than 300,000 PPP supporters gathered in Garhi Khuda Bux (Sindh) to pay tribute to their martyred leader. (Source 1, Source 2)

According to news reports, Pakistan’s president Asif Ali Zardari addressed at least 300,000 mourners at the Bhutto mausoleum in his first public speech since being treated in hospital in Dubai, brushing his illness under the carpet and delivering a veiled barb against the army and its proxies in judiciary and media. According to APP, around 500,000 people had thronged the venue, which was also reported by daily Express newspaper.

Pakistani President Asif Ali Zardari yesterday pledged to fight for democracy despite many challenges and threats to the democratic government in the country by the usual conspiracy network, Teen Jeem (3 Js), i.e., military (Jenerals), judiciary and (pro-military) journalists.

Zardari was addressing a rally outside the mausoleum of his slain wife Benazir Bhutto on her fourth death anniversary at Garhi Khuda Bakhsh, the ancestral graveyard of Bhuttos.

“Whenever we would get into fight, our style would be democratic and we would fight for democracy,” Zardari rhetorically told a large crowd in a field in front of the mausoleum.

This was Zardari’s first public appearance after he fell ill and remained under treatment in Dubai amid rumours that he might not come back home.

“But this fight would be within constitutional limits,” he said.

The president philosophically narrated his vision about the political situation in the country, that suggested that anti-democratic forces want to declare democracy as a failed system.

“It is a theatre to me. It has tried to install tailor-made democracy and there comes a voice of a dictator that the democracy has failed to deliver,” Zardari said.

In a critical reference to the Supreme Court, which is considering an investigation into a memo asking the US for help against the country’s powerful military and which could implicate Zardari, he asked about the as yet unsolved case of his wife’s assassination.

“People ask what happened to Benazir Bhutto’s case,” he said. “I ask (Chief Justice) Iftikhar Chaudhry: what happened to Benazir Bhutto’s case?”

No one has yet been charged with her assassination at a huge rally outside Islamabad.

Zardari said that he has been asked why the assassins of Benazir Bhutto had not been arrested so far. He said he directed the question towards the Chief Justice of Pakistan as to why he was not taking up other important cases.
“I ask Chief Justice Ifitkhar Chaudhry as to why he can’t see the [other] pending case of Zulifqar Ali Bhutto,” he said referring to a case filed by the people to challenge a 1979 verdict, which hanged Bhutto.

“And when the time comes, we would face you directly,” he told the Supreme Court, which is hearing a case against “memogate” that accuses Zardari and former Pakistani ambassador to Washington of prompting Americans to tame the Pakistani military.

The death anniversary came the same day the Supreme Court began deliberations on whether it could open its own investigation into the so-called “memogate” scandal.

It also came two days after cricketer-turned-politician Imran Khan brought at least 100,000 people into the streets of Karachi in a rally that increases pressure the government and cements his standing as a political force. (Source)

He trained guns on the military establishment in a rhetorical way. “Asfa [his daughter] would raise the flag from where it fell in Pindi,” he dramatically narrated the killing of Benazir Bhutto in Rawalpindi, the city that houses military headquarters.

“And she would ask that you gave assurance of protecting my mother here,” Zardari added.

Political analysts believe that the current government has become weaker and is not able to tackle the challenges.
“They have been weakened and the gulf is getting more wide, I am afraid,” said Aesha Siddiqa, a leading political and defence analyst, referring to the conflicting stances of the political government against the military.

“Once they threaten the army the next day they just back off,” said Siddiqa, who foresees an early end of the government, whether constitutionally or otherwise.

Zardari also criticised media for being partial against his government in favouring cricketer-turned-politician Imran Khan, who at a rally declared Zardari as “sick”.

“Someone taunted me that I am medically out, I ask him ‘if you did not get your muscle pulled, so was mine’,” he said.
Without naming it, Zardari addressed the US, a close ally of Pakistan in war on terror, warning he would not take dictates about Pakistan’s decisions of joining any war or in trade. (Source)


Pakistan’s President Asif Zardari’s address on 4th death anniversary of Shaheed Mohtarma Benazir Bhotto in Garhi Khuda Bux

About the author

Abdul Nishapuri

10 Comments

Click here to post a comment
  • Nation bows in grief to remember BB
    News Comments (0)
    Staff Report 1 hrs ago | Comments (0)

    SOMBER RESPECT: Prime Minister Yousuf Raza Gilani pays his respects over the grave of former prime minister Benazir Bhutto. AFP
    GARHI KHUDA BUX/PESHAWAR – People from different walks of life paid rich tributes to former PM and Pakistan People’s Party (PPP) chairperson Benazir Bhutto on her fourth death anniversary, which was observed on Tuesday with great fervour.
    The day began with Quran khawani at her mausoleum where a large number of people, including party workers and office-bearers took part. People in great numbers from every nook and corner of the country were reaching the mausoleum to pay tributes to their great leader. Party workers were carrying PPP flags and chanting slogans, including “Zinda Hai BB Zinda Hai”, “Charon Soobon Ki Zanjir Benazir Benazir”, and “Jeay Bhutto”. A big public meeting would also be held to mark the occasion. The venue of the public meeting was decorated with banners and PPP flags. Around 45 welcome camps were set up besides walk-through gates and other security measures at entry points for people who come to participate in the fourth anniversary of Benazir Bhutto. Simplicity in all aspects, including seating arrangements at 700-kanal space allocated for Benazir’s death anniversary, was the hallmark at Garhi Khuda Bakhsh.n
    Like other parts of the country, different programmes were held in Khyber Pakhtunkhwa to pay homage to services of Benazir. The Peoples’ Doctors Forum (PDF) and Peoples’ Youth Organisation (PYO) Khyber Pakhtunkhwa organised separate seminars at the Press Club. Keynote speakers included PDF Provincial President Dr Nisar, Party Labour Wing President Anwarzeb. PPP Provincial Information Secretary Ayub Shah participated in a programme where while Khyber Pakhtunkhwa Population Welfare Minister Saleem Khan and Youth Provincial President Gohar Inqilabi addressed.
    To pay homage to Benazir, the PPP Khyber Pakhtunkhwa and FATA chapters organised different. A rally was taken out from Hastnagri area and paraded on GT Road via Firdous Bazaar, Lady Reading Hospital Road and Khyber Bazaar. Small processions, which were taken out from Qissa Khawani Bazaar and Saddar also joined the main rally that was later converted into a big public meeting at Chowk Yadgar.
    In Nowshera, MNA Tariq Khattak and Excise and Taxation Minister Liaquat Shabab also organised Quran khawani for the eternal peace of Benazir. In FATA, Quran khawani and dua were held at the agency’s headquarters. Benazir’s death anniversary was commemorated with great fervour in Gujranwala.

    http://www.pakistantoday.com.pk/2011/12/nation-bows-in-grief-to-remember-bb/

  • Altaf terms Zardari’s speech positive

    STAFF REPORT

    KARACHI – Muttahida Qaumi Movement (MQM) chief Altaf Hussain on Tuesday hailed the address of President Asif Ali Zardari on the death anniversary of Benazir Bhutto.
    In a statement issued from London, Hussain said the positive and balanced views expressed by Zardari in his speech were reassuring for populist forces in the country.
    The MQM chief said it was the right step in the direction of strengthening democracy and reinforcing democratic institutions in the country.
    “It would also augur well for improving relations among institutions and for the betterment of the country,” he added.
    According to him, the policies given by Zardari for improving the economic and financial problems are in the interest of the country.
    He said a moderate approach is highly necessary for continuation of democracy in the country.
    In a separate statement, Hussain said Benazir Bhutto was a great leader of Asia who was martyred by evil forces.
    He said all those democratic forces that had been raising their voices for the rights of the underprivileged people were saddened and were paying tribute to the martyred leader.
    Bhutto was slain because of her efforts for promotion of democracy, strengthening of democratic institutions and for the rights of the deprived people, he added.

    http://www.pakistantoday.com.pk/2011/12/altaf-terms-zardari%E2%80%99s-speech-positive/

  • Defiant Zardari has no intention to quit

    Rehan Siddique

    27 December 2011

    KARACHI/Garhi Khuda Bakhsh — Pakistan President Asif Ali Zardari on Tuesday showed no signs of being a sick man and defiantly declared that he had no intention to quit despite facing a number of crises.

    Addressing a large gathering on the fourth death anniversary of his wife Benazir Bhutto in Garhi Khuda Bakhsh, the deeply unpopular president said that he would not quit and would continue to lead the nation as envisaged by the former prime minister.

    “We want to create history, not headlines. I tell you, politics — which we have left to our Prime Minister (Yousuf Raza Gilani) and the cabinet — is the art of the possible. But making a nation is the art of the impossible and I believe I am doing the art of impossible,” he told hundreds of thousands of slogan-raising supporters who had come from all over the country to pay homage to their late leader.

    Zardari, appearing before the public for the first time after his return from Dubai where he had gone for medical treatment, said that democracy was still in its infancy in Pakistan and it will take time to grow stronger and flourish. “We will only fight for democracy and nothing else,” he added.

    The president in a defiant mood emphasised that he and Gilani were constitutional president and prime minister and their main objective was to serve the masses.

    Taking a dig at the Supreme Court, which is currently pursuing several corruption cases against him, Zardari asked about the as-yet unsolved case of his wife’s assassination. “People ask, what happened to Benazir Bhutto’s case?,” he enquired. “I ask (Chief Justice) Iftikhar Chaudhry: What happened to Benazir Bhutto’s case?”

    The president showed his anger at the media and advised his party leaders and activists not to attend TV talk shows that he claimed were merely to pitch politicians against each other.

    Speaking from behind a bulletproof glass, Zardari shrugged aside the political heat generated by Imran Khan recently and rejected his ‘tsunami’. “It was not a tsunami, but a “Zoonami” (without any meaning),” he remarked.

    “We are compared to countries like Singapore. Look at that country’s population and look at ours,” was his comment to Khan’s speech two days earlier.

    The PPP co-chairman made it clear that Pakistan did not want to enter into any theatre of war. “We are friends of all. Nobody can dictate who we trade with and who do not,” an obvious reference to the United States asking Pakistan not to go ahead with a planned gas pipeline agreement with Iran.

    The president said that south Punjab demands its rights from Takht-e-Lahore (throne of Lahore), a reference to PML-N’s Punjab government and believed that their wishes should be heard.

    Zardari also pointed out that his government had implemented its 80 per cent of PPP manifesto and its remaining aspects would be implemented in the coming days and months

    http://www.khaleejtimes.com/DisplayArticle11.asp?xfile=data/international/2011/December/international_December1079.xml&section=international

    Video:

    http://youtu.be/UTU2dzBBRio

    http://youtu.be/pvG-MBoKdk4

    http://youtu.be/2AYfpy0KMYg

  • Aitzaz emotionalizes participants of BB death anniversary

    South Asian News Agency (SANA) ⋅ December 27, 2011

    GARHI KHUDA BAKHASH, (SANA): Pakistan Peoples Party leader Barrister Aitzaz Ahsan has emotionalized the gathering on the occasion of fourth death anniversary of Benazir Bhutto.

    Speaking on the occasion, Barrister Aitzaz Ahsan said that this place is graveyard of martyrs.

    Giving reference to Imam Hussain, he said that many people forbade Imam to go to Kufa and made him afraid that you would be killed. He said that paths are not changed with dangers of life and system. “The people who changed the way, I have no complaint with them.”

    He said that if somebody says that exit of any great leader have no effect,that is wrong. He said party workers have come here from across the country to attend BB’s death anniversary. “This is the way of ZA Bhutto and Shaheed BB.”

    Giving reference to Shaheed BB, he said that when I came to visit BB in jail she was sitting is scorching heat of sun with Bilawal and Asifa on a heap of stones. She was an embodiment of patience and steadfastness.

    While paying tribute to Banazir Bhutto, he said that she remained unwavering in the face of death.

    She was an embodiment of Hussainiyat. “All the world is witness to her innocence.”

    While throwing light on current issues faced by the nation, he said: “We know it better that people are unable to pay utility bill, house rents. We know prices are high and there are multiple other problems. Despite this, we are to follow BB’s way. We have to stay patient and steadfast.”

    http://www.sananews.net/english/2011/12/aitzaz-emotionalizes-participants-of-bb-death-anniversary/

  • ’جسٹس افتخار سے پوچھتا ہوں کہ بی بی کیس کا کیا بنا‘
    ریاض سہیل
    بی بی سی اردو ڈاٹ کام، لاڑکانہ
    آخری وقت اشاعت: منگل 27 دسمبر 2011 ,‭ 12:50 GMT 17:50 PST
    Facebook
    Twitter
    دوست کو بھیجیں
    پرنٹ کریں

    جسلے میں لوگوں کی کثیر تعداد نے شرکت کی
    پاکستان پیپلز پارٹی کی مقتول چیئرپرسن بینظیر بھٹو کی چوتھی برسی کے موقع پر جلسہء عام سے خطاب کرتے ہوئے صدر آصف علی زرداری کا کہنا ہے کہ ہم تاریخ بنانا چاہتے ہیں ہیڈ لائن نہیں۔
    پاکستان کے صدر آصف علی زرداری نےچیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ لوگ آپ سے پوچھتے ہیں کہ بی بی کے کیس کا کیا بنا؟
    اسی بارے میں
    بینظیر کی برسی، عوامی طاقت کے اظہار کا عزم
    بینظیر قتل کیس، جلد سماعت کا مطالبہ
    بینظیر قتل کیس: فورنزک شہادتوں کی اہمیت؟
    متعلقہ عنوانات
    پاکستان, پاکستان پیپلز پارٹی
    ’میں بھی پوچھتا ہوں چوہدری افتخار جج صاحب سے کہ بی بی کے کیس کا کیا ہوا؟‘
    صدر زرداری کا کہنا تھا کہ ’عدالتیں میرے ماتحت نہیں ہیں۔ کاش ایسا ہوتا کہ ہوتیں، مگر ایسا نہیں ہے۔‘
    صدر نے چیف جسٹس سے پوچھا ’آپ کو دوسرے کیس بڑی جلدی نظر آ جاتے ہیں۔ شہید ذوالفقار علی بھٹو کا جو کیس میں نے آپ کے پاس بھیجا ہوا ہے وہ آپ کو نظر نہیں آتا۔‘
    صدر آصف علی زرداری
    “میرا دنیا سے یہی کہنا ہے کہ ہمیں یہ حق دیا جائے کہ ہم جس کے ساتھ چاہیں ملیں۔ جس کے ساتھ چاہیں تجارت کریں۔ ہم جس سے چاہیں گیس لیں۔ اس لیے آپ ہمیں سنھبال نہیں سکتے”
    بلوچستان کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ بلوچستان کی محرومیاں نوروز خان سے شروع ہوئیں ان کی محرومیاں آج کی نہیں ہیں۔ انہوں نے بلوچوں کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ ’سیاسی لڑائی ہم سے آ کر سیکھیں۔‘
    ان کا کہنا تھا کہ ہم بلوچوں کی خدمت کر رہے ہیں اور کرتے رہیں گے لیکن یہ سب وفاق میں رہ کر ہوگا۔
    انہوں نے بلوچوں کو مخاطب کرکے کہا کہ انہیں جیلوں سے رہائی لڑنے کے لیے نہیں دی گئی۔ انہوں نے اپنی مثال دے کر کہا کہ ہم نے بارہ سال جیل میں کاٹے جس کا مقصد اپنا مطالبہ منوانا تھا۔‘
    انہوں نے صوبہ سرحد کا نام تبدیل کرکے خیبر پختونخواہ رکھے جانے کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ ’ہم نے پشتونوں کو ان کی پہچان دی جو اب ان سے کوئی نہیں چھین سکتا۔‘
    صدر آصف زرادی نے مزید کہا کہ ’جنوبی پنجاب کے لوگ تحتِ لاہور سے اپنا حق مانگ رہے ہیں۔‘
    بھارت کو ایم ایف این سٹیٹس دیے جانے کی طرف اشارہ کرتے ہوئے صدر زرداری نے پاکستانی فوج کو بڑا واضع پیغام دیا کہ ’ہم سب کے دوست ہیں، ہمارا دشمن کوئی نہیں ہے۔ ہم سب کے ساتھ تجارت چاہتے ہیں۔ ہمیں کوئی یہ نہ بتائے کے کس کے ساتھ تجارت کی جائے اور کس کے ساتھ نہیں۔‘
    صدر ذرداری کا کہنا تھا کہ ’ہم جس طرف بھی مڑ جائیں گے ہم اس خطے کو بنا دیں گے لیکن وہاں تک جانے کے لیے ہمیں روکا جا رہا ہے۔‘
    صدر زرداری کا کہنا تھا ’میرا دنیا سے یہی کہنا ہے کہ ہمیں یہ حق دیا جائے کہ ہم جس کے ساتھ چاہیں ملیں۔ جس کے ساتھ چاہیں تجارت کریں۔ ہم جس سے چاہیں گیس لیں۔ اس لیے آپ ہمیں سنھبال نہیں سکتے۔‘

    صدر آصف علی زرداری نےگڑھی خدا بخش میں بینظیر بھٹو کےمزار پر بھی حاضری دی
    انہوں نے امریکہ کا نام لیے بغیر کہا کہ ’آپ کی اپنی معیشت مشکل میں ہے تو اس صورت میں ہم کیا کریں۔ ہم نے بھی جینا ہے۔ میں اپنے بچوں کی فکر کروں یا آپ کے نخروں کی فکر کروں۔‘
    برسی کی تقریبات میں شرکت کے لیے پارٹی کے اہم رہنما مخدوم امین فہیم، شیری رحمان، وزیرِ اعظم یوسف رضا گیلانی، وزیرِ داخلہ رحمان ملک، وزیرِ اعلی سندھ قائم علی شاہ، اور پاکستان کے زیرِ انتظام کشمیر کے وزیراعظم چودھری عبدالمجید گڑھی خدا بحش پہنچے۔
    برسی میں شرکت کے لیے پنجاب، بلوچستان، سندھ،گلگت بلتستان اور پاکستان کے زیرِ انتظام کشمیر سے قافلے لاڑکانہ پہنچے۔ کراچی سے پیدل اور سائیکل سوار کارکن بھی آئے اورگڑھی خدا بخش جانے والی سڑکیں لوگوں سے بھری ہوئی تھیں

    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2011/12/111227_benazir_4th_death_anniv_zs.shtml

  • اعتزاز کی مؤکل سے پارٹی کی صف اوَل میں واپسی
    Published on 28. Dec, 2011

    (تبصرہ: ندیم سعید) اس ہفتے پاکستان کے سیاسی منظر نامے پر اگر کوئی سب سے زیادہ معنی خیز واقعہ ہوا ہے تو وہ چیف جسٹس افتخارمحمد چوہدری کے وکیل بیرسٹر اعتزاز احسن کی صدر آصف علی زرداری کے دربار میں پذیرائی ہے۔ سابق وزیراعظم بے نظیر بھٹو کی گڑھی خدا بخش میں چوتھی برسی پر صدر زرداری نے اعتزاز احسن کو خود خطاب کی دعوت دی اور انہوں نے بھی صدر کی اشاروں کنایوں پر مبنی تقریرمیں معنے تلاش کرتے جیالوں کو شہدائے کربلا اور گڑھی خدا بخش کے پرسوز واقعات سنا کر گرمایا اور رلایا۔

    اعتزاز احسن صرف یہیں پر نہیں رکے بلکہ انہوں نے صدر زرداری کو ’ایٹمی اثاثوں کے تحفظ‘ کے نام پر مسلسل تنقید کا نشانہ بنانے والے پیپلزپارٹی کے بھگوڑے سابق وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی کا نام لیے بغیرکہا کہ یہ جو آپ کو حکومت میں نظر آنے لگی خامیاں کہ یہ اثاثہ محفوظ نہیں وہ اثاثہ محفوظ نہیں تو ’کب کھلا یہ راز تجھ پہ انکار سے پہلے یا بعد‘۔ انہوں نے کہا کہ یہ بات اگر اس وقت کرتے جب آپ اس ٹیم کا حصہ تھے جو ان اثاثوں کی حفاظت پر مامور تھی ’تو میں آپ کی بات کو شاید معتبر سمجھتا‘۔

    انہوں نے ساتھ ہی جاوید ہاشمی پر بھی چوٹ کی کہ انہیں فیصل آباد میں تقریر کرتا جاوید ہاشمی بھی نہ سمجھا جائے۔ بیس نومبر کو مسلم لیگ نواز کے فیصل آباد کے دھوبی گھاٹ پر جاوید ہاشمی نے اپنے پرجوش خطاب میں نواز شریف کے ساتھ کھڑے رہنے کے عزم کا اظہار کیا تھا، بلکہ عمران خان کی بیعت کرنے سے صرف ایک روز قبل تیئس دسمبر کو لاہور میں خواجہ رفیق کی برسی کے پروگرام میں بھی وہ ایسی ہی باتیں کرتے سنے گئے تھے۔

    اعتزاز احسن کی ان باتوں کے بعد ان کے بھی تحریک انصاف میں جانے کی افواہیں نہ صرف دم توڑ گئیں بلکہ ’میمو کیس‘ کے پس منظر میں ہونے والی سیاسی ہلچل میں اب لگ رہا ہے کہ صدر زرداری اور پیپلزپارٹی نئی صف بندی کر رہے ہیں، جس میں اعتزاز احسن جیسے نظرانداز رہنماؤں کو اب اگلی صفوں میں جگہ مل رہی ہے۔اعتزاز احسن کے سابقہ مؤکل جہاں سوئس کیسز کو ہر حال میں دوبارہ کھولنے کے لیے حکومت پر دباؤ ڈالے ہوئے ہیں وہیں اعتزاز نے گڑھی خدا بخش میں بے نظیر بھٹو کو متعدد بار معصوم کہا اور اپنی تقریر کو ’یا اللہ یا رسول بے نظیر بے قصور‘ کے نعرے لگوا کر ختم کیا۔

    اب دیکھنا یہ ہوگا کہ بیرسٹر اعتزاز احسن اپنی پارٹی کی حکومت اور اس کے خلاف ترجیحی بنیادوں پر کیس سننے والے اپنے سابقہ مؤکل کے درمیان پل کا کام کرتے ہیں یا صدر زرداری کی آواز میں آواز ملا کر انہیں وہ کیس یاد دلاتے ہیں جو سنے نہیں جارہے جن میں ذوالفقار علی بھٹو کے ’عدالتی قتل‘ اور آئی ایس آئی کے سیاسی کردار سے متعلق ائیر مارشل اصغر خان کی پٹیشن شامل ہیں۔ وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف کی اہلیت سے متعلق کیس بھی عدالتی سرد خانے میں پڑا ہوا ہے۔

    لیکن لگتا ہے کہ آنے والے دنوں میں عدالتی فعالیت کے موجودہ رحجان کے اور بھی مظاہرے دیکھنے کو ملیں گے جس کا شکا ر توہین عدالت کے الزام میں وزیراعظم گیلانی ہوتے نظر آرہے ہیں، تبھی انہوں نے کہنا شروع کردیا ہے کہ میں رہوں نا رہوں پارلیمنٹ رہے گی۔صدر زرداری کی تقریر میں بھی طاقت (یا اداروں) کی موجودہ کشمکش میں ہدف تنقید عدالتی مورچہ تھا جس سے اندازہ لگایا جاسکتا ہے کہ حکومت کو خطرہ کس طرف سے آتا نظر آرہا ہے۔

    لیکن وزیراعظم کی یوم قائد اور پھر اسی دن قومی اسمبلی میں تقاریر کے ذریعے اداروں کو ان کے حدود و قیود یاد دلانے اور اب اعتزاز احسن کے دوبارہ صف اول میں نظر آنے سے لگتا ہے کہ پیپلزپارٹی نہ صرف اب مقابلے میں ہے بلکہ عمران خان کی سونامی کے مقابلے میں اس کے پشتے بھی مضبوط ہیں

    http://www.topstoryonline.com/aitzaz-ahsan-returns-to-front-rows-of-ppp

  • کچھ لوگ اس سے بھی آگے جا کر دور کی کوڑیاں لے آئے کہ صدر زرداری بولنے میں دقت محسوس کرنے لگے ہیں اور ان کی سپیچ تھراپی ہو رہی ہے۔ یاد رہے اس قسم کی مشکل پڑ جائے تو سپیچ تھراپی میں کئی مہینے لگ جاتے ہیں۔ لیکن صدر زرداری نے تو آتے ہی میٹنگیں بلانا شروع کر دیں اور بی بی شہید کی برسی پر روایتی تقریر بھی کر آئے۔ وہ اسی طرح فرفر بول رہے تھے‘ جس طرح بولنے کے عادی ہیں۔ وہ تمام ٹیلیویژن چینلوں پر اور لاکھوں کے اجتماع میں سینہ تان کر کھڑے مسلسل تقریر کر رہے تھے اور ان کے اندر بیماریاں ڈھونڈنے والے شرم سے زمین میں گڑنے کے بجائے جوں کے توں اپنی اپنی جگہ قائم تھے۔ صدر کے مخالفین اپنی ڈھٹائی سے باز نہیں آتے‘ تو صدر بھی ان کے ساتھ اچھا نہیں کر رہے۔ وہ انہیں مسلسل جھوٹا‘ دروغ گو‘ فریب کار اور چکمے باز ثابت کرتے رہتے ہیں۔ حالانکہ انہیں ایسا کرنے کی کوئی ضرورت نہیں ہوتی‘ ان کے جھوٹ اور غلط پیش گوئیاں ہی بطور سزا‘ ان کے لئے کافی ہیں۔
    صدر زرداری کیا؟ پیپلزپارٹی جب سے معرض وجود میں آئی ہے‘ اپنے مخالفین کے ساتھ اسی طرح کا ”بے رحمانہ“ سلوک کرتی آ رہی ہے‘ جو چند سال سے صدر زرداری کر رہے ہیں۔ ہر الیکشن کے چند مہینے بعد‘ مخالفین یہ آس لگا کے بیٹھ جاتے ہیں کہ اب پیپلزپارٹی کی مقبولیت ختم ہو گئی اور آنے والے الیکشن میں اس کا بوریا بستر لپیٹا جا سکتا ہے۔ بھٹو صاحب کو اقتدار میں آئے تھوڑا ہی عرصہ گزرا تھا کہ کچھ جنرلوں اور بریگیڈیئروں نے سوچ لیا کہ وہ اقتدار پر قبضہ کر سکتے ہیں۔ ان کی سازشیں پکڑی گئیں۔ اس کے بعد اپوزیشن نے سوچ لیا کہ اب بھٹو صاحب کی مقبولیت ختم ہو گئی ہے اور انہیں الیکشن میں جلد از جلد اتار کے فارغ کیا جا سکتا ہے۔ بھٹو صاحب نے قبل ازوقت الیکشن کا اعلان کر دیا۔ مخالفین نے فتح کے شادیانے بجاتے ہوئے یہ تاثر پیدا کر دیا کہ پیپلزپارٹی ختم ہو گئی۔ لیکن جب انتخابی مہم شروع ہوئی‘ تو جیالے سیلاب کی طرح گلیوں اور سڑکوں پر امڈ آئے اور بھٹو صاحب دو تہائی سے زیادہ اکثریت کے ساتھ کامیاب ہو گئے۔ جس پر مخالفین نے دھاندلی کا شور مچایا اور آخر کار فوج کی مدد سے انہیں اقتدار سے باہر کر کے پھانسی لگوائی۔ آمر ضیاالحق نے پیپلزپارٹی والوں پر ظلم و ستم کی انتہا کر کے سوچ لیا کہ اب اس پارٹی کا نام و نشان مٹ گیا ہے۔ جب ضیاالحق اپنی اسمبلیاں بنا کر یقین کر بیٹھے کہ ان کا اقتدار مستحکم ہو گیا ہے‘ تو محترمہ بے نظیر شہید واپس آ گئیں اور جنرل صاحب جس کاغذ کی کشتی میں بیٹھ کر اپنے آپ کو مستحکم سمجھ رہے تھے‘ وہ پرزہ پرزہ ہونے لگی اور آخر میں وہ خود بھی پرزہ پرزہ ہو گئے۔ ان کے جانشین جنرلوں کو پریشانی ہوئی کہ پیپلزپارٹی پھر نہ آ جائے۔ چنانچہ انہوں نے اربوں روپے خرچ کر کے سیاسی جماعتوں کا ایک متحدہ محاذ بنایا اور اسے الیکشن میں کامیاب کرانے کے لئے دھاندلی کی انتہا کر دی۔ پیپلزپارٹی کو فیصلہ کن اکثریت تو حاصل نہ کرنے دی لیکن اسے حکومت بنانے سے بھی نہ روک پائے۔ تین سال پورے ہونے سے پہلے اس حکومت کو ختم کیا۔ اگلے انتخابات میں جھرلو پھیر کے ہرا دیا اور تیسرے انتخابات میں جھرلو ناکام رہا اور پیپلزپارٹی پھر آ گئی۔ پرویزمشرف نے اپنی آمریت میں یہ سمجھ کے الیکشن کرایا کہ بی بی کو جلاوطن رکھ کرپیپلزپارٹی کو ہرایا جا سکتا ہے۔ لیکن وہ پھر جیت گئی۔ جس پر مشرف نے پیپلزپارٹی کے جیتے ہوئے اراکین کو لوٹے بنا کر حکومت قائم کی۔ 2008ء کے انتخابات میں مخالفین کی تمام تر کوششوں کے باوجود پیپلزپارٹی پھر سب سے زیادہ نشستیں لے کر جیت گئی اور چار سال سے کامیابی کے ساتھ حکومت چلا رہی ہے۔ گزشتہ ایک ماہ میں چند بڑے جلسے دیکھ کر مخالفین کی آرزوئیں بیدار ہو گئیں اور وہ سمجھ بیٹھے کہ اب پیپلزپارٹی کی مقبولیت ختم ہو گئی ہے۔ صدر زرداری نے سندھ کے ایک دوردراز گاؤں میں جا کر کراچی اور لاہور سے بڑا جلسہ کر دکھایا ۔ ایک پوری نسل پیپلزپارٹی کی انتخابی ناکامی کے خواب دیکھتے دیکھتے بوڑھی ہو چکی ہے۔ موجودہ نسل کا انجام بھی وہی ہو گا۔ پیپلزپارٹی غریبوں کی جماعت ہے۔ جونہ ہی اخبار پڑھتے ہیں نہ ٹی وی دیکھتے ہیں۔ ان کا رشتہ اپنی قیادت سے محبت اور امید کا رشتہ ہے۔ اس رشتے کو طبقاتی طاقت نے سیسہ پلائی دیوار بنا رکھا ہے۔ جب تک غریبی ہے‘ تب تک پیپلزپارٹی ہے اور اگر کسی نے غریبی کو دور کیا‘ تو وہ بھی پیپلزپارٹی ہو گی۔زرداری صاحب تو شاید نہیں‘ بلاول‘ بختاور اور آصفہ اپنی زندگی میں اپنے نانا کا وہ خواب ضرور پورا کریں گے‘ جو انہوں نے پاکستان کے غریب عوام کی خوشحالی کے لئے دیکھا تھا۔

    nazir naji
    http://search.jang.com.pk/archive/details.asp?nid=585096

  • Hamid Mir’s excellent column on BB’s 4th death anniversary:

    کیا قاتل بہت طاقتور ہیں ؟ …قلم کمان …حامد میر

    آخر وہی ہوا جس کا ڈر تھا۔ میمو گیٹ اسکینڈل کے بطن سے جنم لینے والی سازشوں اور دباؤ نے پیپلز پارٹی کو ایک نئی زندگی دیدی ہے۔ اس نئی زندگی کے آثار 27 دسمبر کو گڑھی خدا بخش میں شہید محترمہ بے نظیر بھٹو کی چوتھی برسی پر واضح نظر آ رہے تھے۔ پیپلز پارٹی جب بھی اقتدار میں آتی ہے تو اپنے کئی کارکنوں اور جیالوں کو ناراض کر لیتی ہے لیکن اس مرتبہ گڑھی خدا بخش میں جیالوں کی بڑی تعداد اپنی ناراضگیاں بھلا کر موجود تھی بلکہ اکثر جیالے ایک نئی لڑائی کے لئے تیار تھے۔ یہ انفرادیت بھی صرف پیپلز پارٹی میں ہے کہ یہ پارٹی پچھلے تین سال سے اقتدار میں موجود ہونے کے باوجود اس وقت ایک اپوزیشن پارٹی کا رویہ اختیار کئے ہوئے ہے۔ شاید اس کی وجہ یہ ہے کہ 2008ء میں پیپلز پارٹی کو حکومت کو دیدی گئی لیکن کئی ریاستی اداروں نے اس حکومت کو دل سے تسلیم نہیں کیا تھا اور وہ موقع کی تاک میں تھے کہ کب کوئی بڑی غلطی ہو اور پیپلز پارٹی کو حکومت سے نکالا جائے۔ یہ ادارے اس مخصوص سوچ کے اثر سے باہر نہیں آ سکے جو جنرل ضیاء الحق کے گیارہ سال اور جنرل پرویز مشرف کے آٹھ سالہ دور آمریت میں مضبوط ہوئی۔ پیپلز پارٹی نے آصف علی زرداری کی قیادت میں اس سوچ کا مقابلہ کرنے کی بجائے اس سوچ سے سمجھوتہ کر لیا لیکن پھر بھی بات نہ بنی۔ جیسے ہی میمو گیٹ اسکینڈل کے طوفان نے کچھ گرد و غبار اڑائی تو آصف علی زرداری کو ایوان صدر سے نکالنے کی تیاریاں شروع ہو گئیں۔ وہ علاج کی خاطر چند دن کے لئے دبئی گئے تو کہا گیا وہ واپس نہیں آئیں گے۔ میمو گیٹ اسکینڈل صرف آصف علی زرداری کے لئے نہیں بلکہ پوری قوم کے لئے باعث رحمت ثابت ہوا ہے۔ اس اسکینڈل نے کئی چہروں سے نقاب ہٹا دیئے ہیں اور مجھے یقین ہے کہ اس اسکینڈل پر عدالت میں بات ہو یا قومی سلامتی کی پارلیمانی کمیٹی میں تحقیق ہو اگر فیصلہ واقعی منصفانہ ہوا تو قوم کو نقصان نہیں بلکہ بہت فائدہ ہو گا۔ میمو گیٹ اسکینڈل سے آصف علی زرداری کو جو فائدہ ہوا وہ 27دسمبر کو گڑھی خدا بخش میں سب نے اپنی آنکھوں سے دیکھا۔
    اس اسکینڈل نے سیاست اور میڈیا میں آصف علی زرداری کے کئی مخالفین کی ساکھ کو تباہ کر دیا ہے۔ وہ جو کہتے تھے کہ آصف علی زرداری فالج و لقوہ کا شکار ہو گیا اور قوت گویائی سے محروم ہو گیا انہوں نے جھوٹا ثابت ہونے کے بعد یہ کہا کہ آصف علی زرداری کسی ذہنی بیماری کا شکار ہو چکے ہیں اور 27دسمبر کے جلسے میں وہ فوج اور عدلیہ کے خلاف اعلان جنگ کر کے اپنی بیماری کا ثبوت دیدیں گے۔ 27دسمبر کو ان کی تقریر واقعی اہم تھی لہٰذا یہ خاکسار بھی لاہور سے جناب منو بھائی، جناب مجیب الرحمن شامی، جناب عارف نظامی اور جناب پرویز شوکت کے ہمراہ گڑھی خدا بخش کے لئے روانہ ہوا تاکہ آصف علی زرداری کی بیماری کو ذرا قریب سے دیکھیں۔ لاہور سے بذریعہ ہوائی جہاز سکھر تک کا سفر تو بڑا آرام دہ تھا لیکن پھر سکھر سے لاڑکانہ تک عارف نظامی صاحب اور منو بھائی کے درمیان پھنس کر بیٹھنا ایک ایسا تجربہ تھا جس نے مجھے سوچنے پر مجبور کیا کہ آج جو بھی گڑھی خدا بخش پہنچے گا اس کا اصل رشتہ کسی حکومت یا آصف علی زرداری کے ساتھ نہیں بلکہ ان دو شخصیات کے ساتھ ہے جن کی لاشیں راولپنڈی سے سندھ بھیجی گئیں۔ پیپلز پارٹی کی موجودہ حکومت نے اپنی ناقص کارکردگی سے اس رشتے کو کمزور کرنے کی بہت کوشش کی لیکن مخالفین کی بھونڈی سازشیں بار بار اس رشتے کو زندہ کر دیتی ہیں۔
    رش اتنا زیادہ تھا کہ گاڑی پر گڑھی خدا بخش کے اندر داخل ہونا ممکن نہ تھا۔ ہمیں کافی فاصلہ پیدل طے کرنا پڑا۔ پیدل سفر کے دوران ایک سندھی نوجوان نے مجھے شکایت بھرے لہجے میں کہا کہ آپ ہماری شہید رانی کی برسی میں شرکت کے لئے نہیں آئے بلکہ صرف یہ دیکھنے آئے ہیں کہ آصف علی زرداری ٹھیک طرح بول سکتا ہے یا نہیں؟ اُس نے کہا کہ ہم زرداری کی حکومت سے اتنے خوش نہیں ہمیں مسلسل دو سیلابوں نے تباہ کر دیا ہے اور حکومت ہماری مناسب مدد نہیں کر سکی لیکن ہم چاہتے ہیں کہ آپ زرداری کو پانچ سال پورے کر نے دو اگر آپ اسے وقت سے پہلے نکالو گے تو پھر ہم اس کے ساتھ کھڑے ہوں گے۔ میں خاموشی سے نوجوان کی بات سنتا رہا اور کئی کلو میٹر تک ٹریفک کے رش میں پیدل چلتا رہا۔ میرے ساتھ نوجوانوں کا ایک قافلہ بن چکا تھا جو مجھ سے سوال پر سوال کئے جا رہے تھے۔ ایک نوجوان نے کہا کہ آپ نے پشاور میں عمران خان کے دھرنے میں شرکت کی اور پوری رات اس کے ساتھ سڑک پر گزاری تھی کیا آپ آج رات ہمارے ساتھ شہید بی بی کے مزار پر گزاریں گے؟ میں نے نوجوان کو یاد دلایا کہ عمران خان کا دھرنا ڈرون حملوں کے خلاف تھا کوئی سیاسی جلسہ نہیں تھا اگر آپ بھی کوئی دھرنا دیں گے تو میں صحافی کے طور پر آپ کا دھرنا دیکھنے ضرور آؤں گا۔ جواب میں نوجوان نے جو کہا اس میں صوبائی کی بُو تھی۔ یہ نوجوان اسلام آباد، لاہور اور کراچی کے میڈیا سے بہت ناراض تھے۔ گڑھی خدا بخش میں ذوالفقار علی بھٹو اور ان کے خاندان کے قبرستان کے سامنے ایک احاطے میں جلسہ گاہ بنائی گئی تھی۔ جلسہ گاہ لوگوں سے بھری ہوئی تھی لیکن جتنے لوگ جلسے میں تھے اس سے زیادہ لوگ باہر سڑکوں پر تھے اور شہید بی بی کے مزار پر فاتحہ خوانی کر کے واپس جا رہے تھے۔ یہ لوگ لاکھوں میں تھے لیکن غیرمنظم تھے۔ پیپلز پارٹی کے کارکن پورے ملک سے آئے تھے لیکن 90فیصد لوگ سندھ کے تھے۔ صدر آصف علی زرداری مقررہ ووقت سے پہلے جلسے میں آ گئے جس کے باعث مخدوم شہاب الدین، امتیاز صفدر وڑائچ، رضا ربانی، جہانگیر بدر اور مخدوم امین فہیم تقریر نہ کر سکے تاہم صدر زرداری نے اپنے بعد اعتزاز احسن کو تقریر کی دعوت دے کر سب کو حیران کر دیا۔ صدر زرداری نے اپنی تقریر میں برما کی اپوزیشن لیڈر آنگ سان سوکئی کا ذکر کیا جو کئی سال سے فوج کے خلاف مزاحمت کر رہی ہے۔ فوج کا نام لئے بغیر فوج کو پیغام دیا گیا کہ ہم لڑنا نہیں چاہتے اگر لڑو گے تو ہم آنگ سان سوکئی جیسی استقامت کے ساتھ لڑیں گے۔ امریکا کا نام لئے بغیر کہا کہ ہم کسی جنگ کے تھیٹر میں داخل نہیں ہوں گے جس سے مرضی گیس لیں گے۔ پیغام واضح تھا کہ ایران کے خلاف جنگ کا حصہ نہیں بنیں گے اور امریکی دباؤ کے باوجود ایران سے گیس بھی لیں گے۔ صدر زرداری نے عدلیہ پر کوئی بڑا حملہ نہیں کیا البتہ یہ ہیڈ لائن ضرور دیدی کہ جسٹس افتخار صاحب! بے نظیر کیس کا کیا ہوا؟ یہ تو وہ سوال ہے جو ہم بار بار صدر زرداری سے پوچھتے ہیں۔ اعتزاز احسن کا کہنا تھا کہ صدر صاحب یہ بات نہ کہتے تو بہتر تھا۔ صدر زرداری سے گزارش ہے کہ اور کچھ کریں نہ کریں کم از کم شہید بی بی کے قاتل تو پکڑ لیں۔ اگر قاتل بہت طاقتور ہیں اور صدر زرداری ان کے مقابلے پر کمزور تو کوئی بات نہیں، قاتلوں کے نام ہی بتا دیں اور ان کے چہروں سے بھی نقاب ہٹا دیں جنہوں نے قتل کی سازش تیار کی۔ یہ قرض آپ کو ہر صورت چکانا ہے۔ بہتر ہو گا حکومت میں رہتے ہوئے چکا دیں بعد میں کوئی آپ کا یقین نہ کرے گا

    http://search.jang.com.pk/archive/details.asp?nid=584595