Newspaper Articles

To call Zardari or Gilani dictators is to insult the very word dictator – by Ayaz Amir

Ayaz Amir

Death wish of the Pakistani political class

Did our founding fathers have any idea of the kind of country they were creating? A country where conspiracies would never cease and stability would never come. Sixty-four years, going on sixty-five, and not one peaceful transition from one democratic government to another. Quite a record and we seem determined it should remain like this forever.

Mansoor Ijaz must be laughing up his sleeve, the most flattered man in the world. After all, it is no small thing to throw the one-and-only Fortress of Islam, the world’s sole Islamic nuclear power (as we keep reminding ourselves), into a mad spin by something bizarre you have set in motion. The composure of the Islamic Republic torpedoed by a memo: quite an achievement.

But a con job is only as good as its gullible target. And what easier target, what more willing assembly of fools, than Pakistan’s movers-and-shakers: a claque of media-men eager for adventure, politicos despairing of removing Zardari and finally sensing their opportunity, and generals with a gift for conspiracy, long wanting an excuse to target Asif Zardari, their bête noire, and hard put to find a handy instrument to achieve their goal until they stumble upon the godsend of Ijaz’s memo.

The Sheikh of our distress and his Abbottabad hideout are forgotten, other disasters from the past erased from the tablet of memory: all that rivets the minds of our leading ideological warriors is the memo delivered to Admiral Mike Mullen and, if imperfect evidence is to be believed, forgotten promptly by him.

But we should be under no illusion. The drama being played out has nothing to do with imperilled national security. For once Prime Minister Yousaf Raza Gilani is right. This is a conspiracy against democracy with some pretty unsavoury characters involved, including the smiling, oily senator alluded to obliquely by Gilani.

These characters, conspirators for the sake of conspiracy, know what they are up to. So they are not gullible, far from it. But they are taking the nation for a ride. And they have also managed to make an issue of Zardari’s illness.

Had this problem been confined to newspaper columns or TV chat-shows it would have been no great matter. But when an extended bench, also becomes involved by taking up the matter for hearing, then the whole thing takes on a more serious aspect, especially when the word bandied about the most loosely is treason. That, surely, is no laughing matter, even if we have devalued the meaning of most things.

Strange indeed are the ways of the Islamic Republic. In few other countries would such a farce be taken seriously. Here we are milking it for all it is worth because the holy troika behind it – media-men, a section of politicos and one or two key generals – has other fish to fry, ‘Get Zardari’ the name of their grand strategic manoeuvre.

In Thursday’s papers there was a thoughtful piece on the economy by former State Bank governor, Muhammad Yaqub. In it he said that before all else we should be looking to the state of the economy or Pakistan would be undone. He might as well have preached to deaf ears. The guardians of national security are seized with other matters.

The PML-N’s position is the strangest of all. On the one hand Nawaz Sharif talks of foiling conspiracies against democracy, on the other hand forgetting that if there is one Trojan horse that can breach the walls of democracy and bring the whole edifice down it is his petition about the memo in the Supreme Court. What exactly is the PML-N hoping to achieve? It would be fascinating to know the intellectual journey leading to the filing of this petition.

Every last cynic can at least be sure of one thing. Pulling the real strings are neither media-men nor politicos – whether of the N-League or any other denomination – but our holy guardians. Without their eager interest the fires of conspiracy we presently see illuminating the sky would scarcely be lit. The guardians have been saving the nation for the last 60 years, with what results we know. Let’s pray for that miracle, yet to be revealed, which puts an end to nation-saving. If we could see the last of this enterprise Pakistan would be a happier place.

One man’s future is no big thing. But at stake in what is presently going on is not just Zardari’s head or position but the course of future politics. Are we at all capable of managing the thing called democracy? Four years have gone by and only one remains before the election tocsin sounds. What’s got into the present band of nation-saviours who have created an encyclopaedia out of a piece of paper that they can’t wait for another year?

Gilani is right. You can’t isolate events in a quarantine ward and expect that they would not lead to other consequences. The PNA parties agitated against Zulfikar Ali Bhutto in that fateful summer of 1977 but what they got, and what through them the nation got, was not freedom of any kind or the promised kingdom but 11 years of the worst tyranny Pakistan was to experience. Any change now would confirm military supremacy. The military has never acted as anyone’s instrument. When it has its way it sets its own agenda. It doesn’t queer the pitch for others.

We can’t afford any more adventures. The memo petition is not good politics. In fact it is a dangerous move which takes a political issue into an arena where it does not belong: the hallowed halls of the apex court.

What drives Pakistani politicians to undermine their own position? It is nonsense of the worst kind to maintain that this parliament has become a rubberstamp. Whose rubberstamp? To call Zardari or Gilani dictators is to insult the very word dictator. They are bumbling democrats, with more than their share of mistakes or omissions. But they are not autocrats. They couldn’t be autocrats even if that is what they wanted to be. And if parliament despite this is a rubberstamp, then the only thing to be said is that this is an act of voluntary abdication. No one has forced this role on parliament.

Why do we insist on feeding ourselves on shibboleths? Elementary things often escape our understanding. The transition from Musharraf to democracy was not easy. It was brought about not by the lawyers’ movement, much as we may like to glorify that event, but by a set of understandings between Musharraf and Benazir Bhutto which the Americans (read Condi Rice and Richard Boucher) helped broker. The NRO was very much part of those understandings. Only with the NRO in place did Benazir Bhutto return to Pakistan. And only when she returned was Nawaz Sharif able to make his way home.

The hardest thing was to get Musharraf to shed his uniform. This only happened – mark the logic carefully – after their rightful lordships were deposed through the Nov 3 emergency. The exit of their lordships gave Musharraf the confidence to take off his uniform. Only then were free elections possible. And it was only the democracy born of those elections which created the conditions for the restoration of their lordships. This narrative, convoluted as it is, is forgotten when we substitute shibboleths and self-serving clichés for the truth.

There are no knights in shining armour. Most of the paladins around – generals, judges or politicians – have made compromises of one sort or another. To say that the NRO is worse than taking an oath under a dictator-inspired Provisional Constitutional Order is a matter of opinion. Haven’t all their lordships borne the burden of this oath? Shouldn’t this inculcate a measure of tolerance and patience?

If what is happening had the flavour of dark conspiracy something still might be said for it. But much of it is plain stupid and, like so much in our history, short-sighted. There is still time to arrest this march of folly. But only if, and this is a big if, we can rise above our limitations.

Email: winlust@yahoo.com

Source: The News, December 16, 2011

پاکستانی سیاسی طبقے کی کاروکاری

کیا ہمارے وطن کے بانی یہ جانتے تھے کہ وہ کیا تخلیق کر رہے ہیں؟ کیا اْنھوں نے اپنی تمام توانائیاں اس لیے وقف کی تھیں کہ ایسا ملک حاصل کریں گے جہاں ہر وقت سازشوں کے بادل چھائے رہیں گے اور استحکام کی فضا کبھی قائم نہ ہو گی۔ چونسٹھ بر س بیت گئے ہیں مگر اس سرزمین پر ایک مرتبہ بھی پر امن طریقے سے انتقالِ اقتدار نہیں ہوا ہے

اوراتنی جمہوری حکومتیں ہماری مہم جوئی کی نذر ہو چکی ہیں کہ ہم شاید ایک عالمی ریکارڈ قائم کر چکے ہیں اور اس کو مزید بہتر کرنے کے لیے رات دن کمربستہ ہیں۔ ہماری حالتِ زار دیکھ کر مسٹر منصور اعجاز پسِ آستین مسکرا رہا ہو گا کیونکہ اس سارے معاملے میں شاید سب سے خوش وہی ہوگا کہ اس اسلام کے قلعے اور ٟ جیسا کہ ہم اپنے آپ کو بتاتے نہیں تھکتے ٞ پہلی اسلامی ایٹمی طاقت کو ایک معمولی سے پیغام ، صرف ایک کاغذ کے ٹکڑے ،نے بیدِ مجنوں بنا دیا ہے۔کیا کہنے اس کامیابی کے ٝ تاہم ایاگو کے منصوبے کی کامیابی کے لیے اس کا شاطر دماغ ہونا اتنا ہی ضروری ہے جتنا اوتھیلو کاسادہ لوح ہونا۔ بعض اہداف تو خود ناوک کے متلاشی ہوتے ہیں ، اور ہماری سرشت ہی ایسی ہے کہ جہاںشیر کے منہ میں ہاتھ دینے سے ہی ٴٴکام ،، چل جاتا ہے، ہم سردینا فرض سمجھتے ہیں۔ کیا کہنے پاکستان کے میڈیا کے سر بکف شیروں کاٝ اربابِ سیاست جوصدر زرداری کو منظر عام سے ہٹانے پر تلے ہوئے ہیں ، اور پھر وردی پوش جو صدر صاحب سے کب سے ادھار کھائے بیٹھے تھے مگر ہاتھ ڈالنے کا کوئی موقع ہاتھ نہ آرہا تھا مگر اب میمو نے سب کی ڈھارس بندھا دی ہے کہ اب کوئی دن جاتا ہے جب ٴٴہو رہے گا کچھ نہ کچھ،،۔
اس گرد میں ایبٹ آباد میں شیخ صاحب کی موجودگی کا شاخسانہ نظروں سے اوجھل ہو گیا ہے ، اسی طرح کچھ اور سانحے بھی یاد داشت سے محو ہو گئے ، بس ہمارے مردانِ دلاور کے دوشِ خرد پر ایک ہی پیرِ تسمہ پاسوار ہے اور یہ وہ پیادہ ہے جس کو مائیک مولن نے اپنی بساط پرٟسےٞ آگے نہیں بڑھنے دیا تھا مگر ہم اس کے ذریعے حریفوں کی شہ مات چاہتے ہیں۔ اب ہمیں کسی غلط فہمی کا شکار نہیں ہونا چاہیے۔یہ میمو ہماری قومی سلامتی کو ہرگز خطرے میں نہیں ڈالتا ہے۔ کم از کم اس مرتبہ سید یوسف رضا گیلانی درست فرماتے ہیں کہ یہ جمہوریت کے خلاف ایک سازش ہے اس میں کچھ احباب میدان عمل میں ہیں جبکہ کچھ پسِ پردہ ہیں ٟبشمول وہ چرب زبان سینٹر صاحب جن کی طرف گیلانی صاحب نے مبہم اشارہ کیا ٞیہ سب کردار جانتے ہیں کہ وہ کیا سازش کر رہے ہیں ، چنانچہ وہ کوئی معصوم نہیں ہیں۔ وہ قوم کو ایک چکر دے رہے ہیں اور یہ وہی ہیں جنھوں نے زرداری صاحب کی بیماری کو سیاسی رنگ دے دیا ہے۔ اگر یہ معاملہ صرف ٹی وی کے ٴٴایوانوں ،، تک ہی محدود رہتا تو کوئی بات نہ تھی مگر جب مائی لارڈ جناب چیف جسٹس صاحب اس معاملے کی ایک بڑے بنچ کے ساتھ سماعت کر رہے ہوں تو پھر یہ کوئی کھیل تماشا نہیں رہتا ، خاص طور پر جب لفظ ٴٴآئین سے بغاوت ،، کی گونج سے سماعت لرزاں ہو۔
اب اس پس منظر میں معمولی سی خراش بھی خوفناک زخم کا روپ دھار رہی ہے اور بقول ولیم بلیک، انگریز صوفی شاعر ٜٴٴہم ریت کے ذرے میں کائنات دیکھ لیتے ہیں ،،، یہ اور بات ہے کہ ہمیں دامن کے چھید دکھائی نہ دیں۔ اس اسلامی جمہوریہ کے بھی کیا کہنے ہیںٝ ایسا طربیہ ڈرامہ کسی اور ملک میں اتنی سنجیدگی سے نہ لیا جاتالیکن ہم پانی میں پتھر حل کرنے کی کوشش میں اس لیے مصروف ہیں کہ طاقت کی تکون۔۔۔ میڈیا کے سنیاسی، سیاسی کولمبس اور ایک یا دو وردی والے۔۔۔ ایسا ہی محلول چاہتی ہے کہ ان کے کسی مسئلے کا حل زرداری صاحب کی روانگی میں ہی پوشیدہ ہے۔ جمعرات کے اخبارات میں اسٹیٹ بنک کے سابقہ گورنر مسٹر محمد یعقوب کا ایک فکر انگیز مضمون چھپا۔ اْن کا کہنا ہے کہ اگر ہم نے سب معاملات کو پسِ پشت ڈال کر پاکستانی معیشت کی طرف توجہ نہ دی تو پاکستان برباد ہو جائے گا، تاہم یہ خرد آسا صدا بہرے کانوں سے ٹکرا کر بے حسی کے صحرا میں بکھر جائے گی۔ ہماری قومی سلامتی کے ناخدا کسی اور کشتی کو کھیل رہے ہیں۔

نواز لیگ کی پوزیشن سب سے حیرت ناک ہے۔ ایک طرف تو نواز شریف صاحب جمہوریت کے خلاف تمام سازشوں کو ناکام بنانے کی بات کرتے ہیں ، دوسری طرف وہ بھول جاتے ہیں کہ ایک جمہوریت کی فصیل میں شگاف ڈالنے کے لیے ایک ٹروجن گھوڑا ہی کافی ہے۔ پھر بھی وہ میمو گیٹ کو سپریم کورٹ میں لے گئے ہیں۔ نواز لیگ کیا حاصل کرنے کی کوشش کر رہی ہے ؟

پٹیشن دائر کرنے کا مشورہ دینے والے کی ذہانت پر عقل ماتم کنا ں ہے۔یہ بات جاننے کے لیے بہت زیادہ ذہین ہونے کی ضرورت نہیں ہے کہ، نواز لیگ جو چاہے کرتی نظر آئے، اس ساری کاروائی کے پیچھے قومی سلامتی کے مقدس رکھوالے ہیں۔

اْن کی آستین میں پنہاں پتوں کے بغیر ایسی بازی جم نہیں سکتی تھی۔ کہنے کو تو ہمارے دفاعی ادارے گزشتہ چھ عشروں سے قوم کو تاریکی سے بچارہے ہیں مگر ضیائی ظلمت کا مہیب اندھیرا پھیلانے کا مہان شرف بھی انہیں ہی حاصل ہے۔ اگر وہ اس قوم کو مزید بارِ خاطر نہ کریں تو ایک احسانِ عظیم ہو گا۔

ایک انسان کا مستقبل کوئی معنی نہیں رکھتا مگر اب معاملہ صرف زرداری صاحب کے اقتدار کا نہیں ہے بلکہ جمہوریت کے مستقبل کا ہے۔ کیا ہم دل سے جمہوری رویوں کی پاسداری کرنے کے اہل ہیں یا نہیں؟ چار سال گزر گئے ہیں اور صرف ایک سال بعد انتخابات ہونے ہیں۔ اب ایک کاغذ کے ٹکرے سے کیا عفریت آزاد ہو گیا ہے کہ ہم مزید ایک برس اور انتظار نہیں کر سکتے؟ گیلانی صاحب درست فرماتے ہیں کہ آپ واقعات کو فرداً فرداً نہ دیکھیں بلکہ عمل اور رد عمل کا قانون یاد رکھیں۔ پی این اے میں شامل جماعتوں نے ذوالفقار علی بھٹو کے خلاف 1977 کے موسمِ گرما میں احتجاجی تحریک شروع کردی تھی مگر اس کا انجام کیا ہوا۔ قوم کو کوئی سنہرا نظام نہ ملا بلکہ گیارہ برس پر محیط طویل خزاں نے اس گلشن میں کھلنے والے بیشتر غنچے مرجھا دیے۔اب اگر سیاسی جماعتیں کسی بھی غیر جمہوری تبدیلی میں معاون بنتی ہیں تو وہ ایک مرتبہ پھر فوج کے ہاتھوں کھیل رہی ہوں گی۔ اب ہمارا ملک مزید مہم جوئی کا متحمل نہیں ہو سکتا ہے۔ میمو پٹیشن سیاست کے لیے اچھا شگون نہیں ہے، یہ ایک خطرناک چال ہے جس کے ذریعے ایک ادنی درجے کے سیاسی معاملے کو اعلی عدلیہ کے سپرد کر دیا گیا ہے۔

پاکستانی سیاست دان اپنی حیثیت کو کس ترازو میں تولتے ہیں ؟ یہ ایک انتہائی درجے کی حماقت ہے اگر کوئی یہ سمجھتا ہے کہ پارلیمنٹ ایک ربڑ کی مہر بن چکی ہے۔ ایسا کہتے ہوئے کیا وہ سوچتے ہیں کہ اگر فرض کر لیں کہ معاملہ ایسا ہی ہے تو کیا زرداری صاحب یا گیلانی صاحب آمر ہیں یا کسی چور دروازے سے آئے ہیں ؟ وہ الیکشن جیت کر اور اپنی اکثریت ثابت کر کے آئے ہیں ، اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ اْن سے کتنی حماقتیں سرزد ہوئی ہیں یا اور ہوں گی۔ وہ مطلق العنان یا بادشاہ نہیں ہیں اور اگر وہ ایسا بننا بھی چاہتے تو نہیں بن سکتے تھے۔ اس کے باوجود اگر پارلیمنٹ ربڑ کا مہرہ لگتی ہے تو یہ اس نظام کا نہیں بلکہ پارلیمان کا قصور ہے کہ اْس نے زیادہ جاندار کردار ادا کیوں نہ کیا۔ کسی نے اسے خاک نشینی پر مجبور نہیں کیا تھا۔ہم نے ہر بال کی کھال اتارنے کا ٹھیکہ کیوں لیا ہوا ہے، جبکہ عام اور بنیادی مسئلے ہم سے حل نہیں ہو پارہے ہیں۔

مشرف سے وردی اتروا کر جمہوریت کا سفر شروع کرنا آسان کام نہ تھا۔ یہ وردی وکلا کی تحریک ، اگرچہ ہمیں اس تحریک پر فخر ہے، کے نتیجے میں نہیں اتری تھی بلکہ مشرف اور محترمہ بے نظیر بھٹو کے درمیان مفاہمت کا نتیجہ تھی اور اس کے ضامن امریکی تھے ٟکونڈولیزارائس اور رچرڈ باؤچر کے پیغامات پڑھ لیںٞ۔ اس افہام و تفہیم کا اہم جزو این آر اوتھا کیونکہ صرف اس کی موجودگی میں ہی محترمہ وطن واپس آ سکتی تھیں۔ اب یہ تو سب جانتے ہیں کہ اْن کے وطن واپس آنے کی وجہ سے ہی نواز شریف صاحب ایسا کرپائے تھے۔مشرف صاحب کو وردی ٟجس کو اْنھوں نے اپنی کھال قرار دیا تھاٞ اتارنے پر مجبور کرنا سب سے مشکل مرحلہ تھا۔ ذرا غور کریں کہ تین نومبر کی ایمرجنسی ٟجب چیف جسٹس صاحب کو بر طرف کر دیا گیا ٞ نے ہی مشرف کو اعتماد دیا تھا کہ وہ وردی اتار دے۔ جب تک وہ وردی نہ اترتی ، منصفانہ انتخابات ممکن نہ تھے اور ان انتخابات کے نتیجے میں ہی وہ جمہوری حکومت وجود میں آئی جس نے جناب چیف جسٹس صاحب کو بحال کیا۔ تاہم کوئی بھی تنکا جب نظروں کے سامنے آجائے تو ہمیں سابقہ مصائب کا کوہِ گراں بھول جاتا ہے۔

اب کسی کا بھی لبادہ بے داغ نہیں ہے
کیونکہ زیادہ تر جنرل ، جج صاحبان اور سیاست دان۔۔۔ ٴٴواں نہیں پر واں کے نکالے ہوئے تو ہیں،،۔اب اگر مرز اغالب اور شعری وزن حائل نہ ہو تو ٴٴنکالے ،، کی جگہ ٴٴنکلے ،، لگا لیں ، بات سمجھ آ جائے گی۔ اس پر بھی بات کی جا سکتی ہے کہ این آر او برا ہے یا کسی آمر کے بنائے گئے پی سی او کے تحت حلف اٹھانا۔ کیا تقریباً تمام جج صاحبان نے کبھی پی سی او کے تحت حلف نہیں اٹھایا ؟ کیا اس سے روا داری کا کوئی پہلو نکلتا ہے یا نہیں ؟اگر آج درپیش تمام معاملات کسی انتہائی پیچیدہ سازش کا حصہ ہوتے تو سمجھ آتی تھی کہ عقل چکرا گئی ہے مگر یہ سب کچھ تو روزِ روشن کی طرح عیاں ہے۔ ابھی بھی وقت ہے کہ اس حماقتوں بھری راہ سے قدم ہٹالیے جائیں۔

لیکن اس کے لیے ہمیں بڑے قد کی ضرورت
ہے اور انا کے گنبد کو آسمان سمجھنے والے کسی کو خاطر میں لانے کے لیے مشکل ہی سے تیار ہوتے ہیں۔

Source: Daily Mashriq Lahore

About the author

SK

1 Comment

Click here to post a comment
  • On 18 Nov 2011, Ayaz Amir wrote:

    But in a land not famous for an excess of imagination what is there to expect? Are the keepers of the sacred flame, the guardians of national security, on anything better? Not if we judge matters by something which in any other clime would be treated as a national absurdity: the Hussain Haqqani-inspired memo to what it is safe to assume must have been a startled Admiral Mike Mullen, sent through a messenger with a well-earned reputation for self-promotion.

    A charlatan as a conduit: this takes some doing. If President Zardari has anything to do with this he deserves to be fired not for endangering national security, or putting patriotism on the line, but for outright stupidity. When the crowd in Julius Caesar catches one Cinna, taking him to be one of the conspirators, he shouts, “I am Cinna the poet.” Someone from the crowd retorts, “Hang him for his bad verses.” If anyone deserves hanging it should be for stupidity. Or, in Haqqani’s case, for being too clever by half, his regular failing over the years.

    The army is miffed at Haqqani. Indeed it always was, considering him to be a suspect piece of goods, but only now has the opportunity come its way to fix him. PM Gilani, always the most pragmatic of souls – they don’t come more pragmatic than from Multan – would feel not the slightest compunction in letting Haqqani go, as a sacrifice, so to speak, to appease military anger.

    But will this satisfy the usual conspirators whose real aim is not Haqqani’s scalp but Zardari’s? For some time now they have been urging General Headquarters and the army’s think-tank, the ISI, to go the entire distance and get rid of Zardari. The way they are going on about this memo suggests that this is their last chance before Zardari rides out yet another storm. He has shown a capacity for survival that no one would have given him credit for when he stepped into the presidency. Talk of a cat’s nine lives. This accounts for the conspirators’ desperation.

    http://www.thenews.com.pk/TodaysPrintDetail.aspx?ID=78013&Cat=9&dt=11/18/2011