Original Articles

Questions for General Pasha

If I have to comment on ISI chief’s emotional speech in the in-camera session of the parliament, I can say this via Mirza Ghalib:

roney se aur ishq mey beybaak hogay,

dhoey gaye hum aisey ke bas pak hogay

(transl: the more I cry, the more I become committed to what I have done!)

The details provided by the TV channels about ISI chief’s speech and the reaction by various persons ranging from politicians to retired army men (presenting themselves as analysts) have many points to be discussed and critically evaluated.

First, Gen Pasha equated the Abbottabad cataclysm with 9/11 in US and 26/11 in India, and prompted Pakistan’s civilian government of the reaction of the US and Indian Governments after those events. He was wrong in his equivalence because both 9/11 and 26/11 were terrorists attacks perpetrated by non-state actors, incidently mentored by the ISI. However, the Abbottabad operation was performed by United States, who is paying us billions of Dollars for our alliance in War on Terror. Whether it is 9/11 or 26/11, Both the terror acts ensued in mass killings. Abbottabad debacle cannot be compared to these incidents in any respect. As it was a targeted operation with not a single innocent killed during this.

Another problem with General Pasha’s comparison is that with the clarification above it seems he considers US SEAL operation in view of violation of Pakistan’s sovereignty rather a great tragedy, i.e., the presence of Osama Bin Laden in in Garrison city for the last five years. He forgot to acknowledge that it was OBL and his mentors in the ISI who had violated Pakistan’s sovereignty by harbouring a proclaimed terrorist in Pakistan.

It will be a matter of concern for General Pasha and those who agree withhim but the reaction on the Osama killing in the Khyber Pakhtunkhwa tells another story as they have exclaimed the killing of world’s most wanted terrorist. They do not have interests in the rhetorics of sovereignty as their sovereignty is staked with the continuous attacks by the terrorists i.e Taliban,  a big part of their territories insulated as FATA are in actual control of the terrorists.

Amn Tehreek (Peace Movement) a conglomeration of civil society organizations and representatives of all major political parties of Khyber Pakhtunkhwa province in a declaration have clearly stated this as

“Although, Pakistan as a country is affected by terrorism but the whole Pukhtunkhwa province and especially FATA and Malakand are the most affected areas due to terrorism. Not a single village or city of Pukhtunkhwa province is spared by terrorists. The people of FATA and Pukhtunkhwa have virtually become hostages to the terrorists.

The perceptions and opinions of these people and those in the rest of the country, regarding terrorism, its causes, the objectives of military operations, involvement of foreign hands in terrorism and drone attacks, are pole apart. These perceptions and opinions are in sharp contrast and contradiction to each other.”(source)

And also the term “intelligence failure” applies to our inability to stop or alert Taliban attacks targeting common man, public places, police and FC men and military installations.

Terrorists attacks on French Engineers, Manawan Police Station, FIA building, SIU office, GHQ, Parade lane mosque, Karsaz bombing, BB assassination, Marriot bombing, fostering terrorists in the heart of Capital i.e Lal Masjid, Swat, Buner, Bajawar, FATA, all these are examples of Intelligence failures. But our intelligence agencies were neither questioned for any of these deadly attacks, nor they have offered resignations for the failure.

General Pasha! its the time to clean up the mess and if I say this in the very softest terms, “Clean your institution of the rogue elements, those who facilitated Osama Bin Laden in a safe house for many years causing embarrassment to the people of Pakistan “

About the author

Shaista Aazar

6 Comments

Click here to post a comment
  • Ansar Abbasi, an ISI proxy, attempts to shift the blame to the civilian government:

    Drone attacks: govt emerges as main suspect

    Ansar Abbasi
    Saturday, May 14, 2011

    ISLAMABAD: The khakis extraordinary briefing to parliamentarians on Friday made the Gilani government conspicuous as the prime suspect for the continuation of US drone attacks as well as the post-9/11 Washington-centric policy on the so-called war on terror.

    On the issue of drone attacks as raised by the parliamentarians, the Pakistan Air Force (PAF) top bosses candidly told parliament that they were capable of shooting down the US Predators, but they explained that for this they required an order from the government. “Give us the order, we would shoot them down,” was the clear message from the PAF chief, but Prime Minister Yousuf Raza Gilani and almost all his cabinet ministers, who were present there, kept mum.

    For a review in the post 9/11 controversial policy on the war on terror, the ISI chief and the DGMO said they would simply do what parliament would decide. But parliament had already given its policy in 2008 to the government through a unanimous resolution but it remained unimplemented as it is the executive’s responsibility to get the policies, as evolved by parliament, implemented through its different arms, including the military and ISI. The khakis subtly conveyed that the 2008 parliamentary resolution was never referred to them for execution.

    The 2008 parliamentary resolution, which was adopted by the joint sitting of the two houses after several days of their in-camera deliberations and briefings, not only asked for immediate halt of drone attacks, but also sought review of Musharraf’s post 9/11 policies to evolve an independent foreign policy reflecting the will of the people and in the best interest of Pakistan. The resolution also sought for a paradigm shift in the war on terror policy by resolving the issue through dialogue with the extremists.

    However, despite the clear mandate given by the top representative body of the people of Pakistan, neither the government directed the defence forces to shoot down the US Predators nor did it pursue the option of dialogue with extremists etc to bring about peace. On the contrary, military operations were launched one after the other. In the case of drone attacks, the WikiLeaks had exposed the double speak of the rulers. One of these leaks showed Prime Minister Yousuf Raza Gilani as having told the Americans that they should continue with the drone attacks. He was even quoted as telling them that for the sake of internal public pressure, hue and cry would be raised within parliament against such drone attacks. President Zardari was also quoted to have not only allowed the drone attacks, but also the May 2-like US special forces strike to hit any high profile target.

    According to a lawmaker, the DG ISI though did talk of the Raymond Davis issue, he did not explain how and on whose orders the CIA contractor was handed over to the Americans in a manner that had really hung the nation’s head in shame.

    http://www.thenews.com.pk/TodaysPrintDetail.aspx?ID=5976&Cat=13

  • Share
    کیا پاکستان، امریکہ سے جنگ کر سکتا ہے؟… رحیم اللہ یوسف زئی

    کسی فرد سے متعلق دنیا کی سب سے بڑی، طویل عرصہ پر مبنی اور مہنگی تلاش تقریباً پندرہ برس جاری رہنے کے بعد 2 مئی کو اس وقت اختتام پذیر ہوئی جب صدربارک اوبامہ نے اعلان کیا کہ اسامہ بن لادن پاکستان کے شہر ایبٹ آباد میں مارا جا چکا ہے۔
    اگرچہ بہت سے لوگ اسامہ سے متعلق امریکی بیان کے بارے میں شکوک و شبہات میں مبتلا ہیں۔ کیا واقعی اسامہ اس مکان میں رہتا تھا اور کیا اس کو قتل کر دیا گیا ہے اور اس شک کا اظہار اس وقت تک ہوتا رہے گا جب تک یہ یقین کرنے کے لئے ٹھوس ثبوت پیش نہیں کر دیئے جاتے۔ علاوہ ازیں اس سے بھی زیادہ پاکستان کے بارے میں سوالات اٹھائے جا رہے ہیں کہ یہ کیونکر ممکن ہوا کہ اسامہ ملک کے اہم شہر میں موجود فوجی چھاؤنی سے چند قدم کے فاصلے پر کئی سال تک مقیم رہا جبکہ اس کے قریب ہی فوجی درسگاہ کاکول اکیڈمی بھی تھی۔ اس کے علاوہ دنیا کے انتہائی مطلوب شخص کو ختم کرنے کے لئے امریکہ کے خصوصی فوجی دستوں کو بھی اس علاقے میں کسی بھی قسم کی مداخلت کے بغیر ہر قسم کی رسائی حاصل تھی۔
    نام نہاد سرخ نشانات جن کا پاکستانی حکام اکثر ذکر کرتے رہتے ہیں کہ ان کو عبور کرنے کی کسی صورت میں بھی کسی کو اجازت نہیں ہے تو یہ کیسے ممکن ہوا کہ ان خطوط کو عبور کر کے امریکی جوتوں نے پاکستانی سر زمین کو روند ڈالا اور ملک کی افواج کسی بھی قسم کا ردعمل ظاہر کرنے میں ناکام رہیں۔ امریکیوں کی یہ کارروائی کوئی پہلی کارروائی نہیں تھی اس سے پہلے بھی ان کی جانب سے کئی مرتبہ شمالی اور جنوبی وزیرستان میں اس قسم کی کارروائیاں ہو چکی تھیں لیکن پاکستان میں اس قدر اندر داخل ہو کر ایبٹ آباد جیسے علاقے میں کبھی ایسی کوئی کارروائی نہیں ہوئی تھی تاہم واقعات سے متعلق دیئے گئے بیانات سے کئی طرح کے شکوک و شبہات پیدا ہوتے ہیں۔
    تقریباً دو گھنٹے تک امریکی بلیک ہاک ہیلی کاپٹر پاکستانی فضاؤں میں اور امریکی افواج کے قدم پاکستان کی سر زمین پر رہے اور یہ کہا جا رہا ہے کہ ملک کی فضائی افواج اور جاسوسی کے اداروں کو ان کی موجودگی کا پتہ نہیں چل سکا، یہ بات ناقابل یقین ہے۔ یہی وجہ ہے کہ کہا جا رہا ہے کہ پاکستان کے ارباب اختیار کو اس کارروائی کے بارے میں بتا دیا گیا تھا اور ساتھ ہی یہ ہدایات بھی جاری کردی گئی تھیں کہ وہ امریکی کارروائی کے دوران کسی قسم کے ردعمل سے گریز کریں گے اور اس کارروائی میں کسی بھی مزاحمت سے اجتناب کریں گے۔
    اس کی تصدیق پاکستان کی وزارت خارجہ اور خود وزیراعظم یوسف رضا گیلانی کے بیان سے ہوئی ہے جو انہوں نے 3 مئی کو دیا اس بیان میں انہوں نے امریکی کارروائی کو جواز فراہم کیا۔ وزیراعظم کا کہنا ہے کہ امریکہ نے یہ کارروائی اپنے اس منصوبے کے عین مطابق کی ہے جس کے بارے میں امریکہ نے پہلے ہی اعلان کر رکھا تھا کہ اگر اسامہ بن لادن کی موجودگی کے بارے میں دنیا کے کسی بھی مقام کے بارے میں پتہ چلا تو اسامہ کو ختم کرنے کے لئے امریکی افواج خود کارروائی کریں گی۔ تاہم بہت سے الفاظ میں پاکستان کے لوگوں کو یقین دلایا گیا ہے کہ طاقتور امریکہ نے پاکستان کے اعتراضات کے برعکس یہ کارروائی مکمل کی۔ امریکہ اس شخص کے بارے میں جس نے 9/11 کی کارروائی کی منصوبہ بندی کر کے امریکہ کو اس قدر کرب اور اذیت میں مبتلا کیا تھا جب انٹیلی جنس اداروں کی جانب سے مصدقہ اور قابل عمل اطلاعات دے دی گئیں تو امریکہ کو اپنے مجرم کے خلاف کارروائی سے روکنا ممکن نہ تھا۔ امریکی ذرائع ابلاغ سے ظاہر ہوتا ہے کہ خفیہ معلومات کی روشنی میں یہ یقین کیا گیا کہ متعلقہ مقام پر اسامہ بن لادن کی موجودگی کے 40 فیصد سے 60 فیصد امکانات ہیں، جو کسی بھی کارروائی کے لئے کافی تھے۔ تاہم یہ بھی ممکن ہے کہ کسی قسم کی پیچیدگی سے بچنے کے لئے جس مقام پر امریکی کمانڈو نے کارروائی کرنی تھی اس سے متعلق پاکستان کے حکام کو آخری وقت میں اطلاع دے دی گئی ہو لیکن انہوں نے اپنے اصل ہدف کے بارے میں معلومات کو خفیہ ہی رکھا۔ اس طرز عمل سے سی آئی اے کے سربراہ کے اس توہین آمیز بیان کی بھی عکاسی ہوتی ہے کہ پاکستان کو ہدف کی نوعیت کے بارے میں نہیں بتایا گیا تھا کیونکہ ایسا کیا جاتا تو خطرہ تھا کہ کارروائی کے بارے میں معلومات پہلے ہی ظاہر کر دی جاتیں اور مشن ناکام ہو جاتا۔ ایسی جگہ جہاں ہر وقت فوجیوں کی موجودگی نظر آتی ہے وہاں اسامہ کی موجودگی نے پاکستانی فوج کے اداروں سے متعلق امریکیوں کو شکوک و شبہات کا شکار کردیا ہے اور یہی وجہ ہے کہ انہوں نے پاکستانیوں کو اس مشن سے دور رکھا۔ اس کی ایک اور وجہ ریمنڈ ڈیوس کے معاملے میں سی آئی اے اور آئی ایس آئی کے درمیان تناؤ بھی تھا ریمنڈ ڈیوس کے معاملے میں آئی ایس آئی کی کوششوں سے مقتولین کے ورثاء دیت قبول کرنے پر آمادہ ہو گئے تھے اور اس طرح ریمنڈ ڈیوس کی رہائی ممکن ہو سکی تھی اور یہی وجہ تھی کہ آئی ایس آئی کو ایک موقع مل گیا کہ وہ اس واقعے کے پیش نظر سی آئی اے کے جاسوسوں کو پاکستان سے باہر نکالنے کے لئے ان پر دباؤ ڈالے جو سفارت کاروں کے روپ میں پاکستان میں داخل ہو گئے تھے لیکن ایبٹ آباد میں سی آئی اے کے آپریشن سے ایسا ظاہر ہوتا ہے کہ آئی ایس آئی کو میسر اس فائدے کو انہوں نے غیر موٴثر کردیا ہے اس لئے اس بات سے کسی کو بھی حیران نہیں ہونا چاہیے کہ دونوں ممالک اور ان کی خفیہ ایجنسیوں کے مابین اعتماد کا فقدان ہے دنیا کے اس حصے میں پاکستان اور امریکہ کا واضح طور پر الگ الگ ایجنڈا ہے ان میں سے ایک عالمی اور سامراجی ایجنڈے کے ساتھ سپر پاور ہے جسے دنیا کو کنٹرول کرنے کی شدید خواہش ہے جبکہ دوسرا ملک مختلف چیلنجز سے نبرد آزما ہے اور پھر بھی ایٹمی طاقت ہے۔ اگر امریکی پاکستان پر اعتماد نہیں کرتے تو اس کی معقول وجوہات ہیں لیکن دوسری جانب پاکستانی بھی امریکہ پر اعتماد نہیں کرتے اور یہاں اس سے زیادہ معقول وجوہات ہیں۔ یہ عدم اعتماد کی فضا دو طرفہ ہے لیکن پھر بھی زمینی حقائق کی بنا پر انہوں نے دشمن کو کسی دور دراز پہاڑی علاقے میں نہیں بلکہ ایبٹ آباد جیسی جگہ پر پکڑا جو خوبصورت موسم، معیاری اسکولوں اور فوجی تنصیبات کی وجہ سے کافی مشہور ہے۔ میڈیا کو امریکہ کی جانب سے ملنے والی اطلاعات (جو بہت کم درست ہوتی ہیں)کے مطابق اس مشن میں 79/امریکی نیوی سیل نے حصہ لیا جو افغانستان کی بگرام ایئربیس سے چار بلیک ہاک ہیلی کاپٹروں کی مدد سے ایبٹ آباد آئے اور بن لادن کے کمپاؤنڈ میں 40 منٹ کے آپریشن کے بعد بحفاظت واپس چلے گئے۔ بہر کیف، اگر پاکستانیوں کو اس کا علم تھا تو یہ آپریشن حتمی طور پر خطرے سے خالی تھا کیونکہ پاکستانی سر زمین میں داخل ہونے والے ان امریکی ہیلی کاپٹروں کا نہ تو پاکستانی جنگی جہازوں سے سامنا ہوا اور نہ ہی ان پر کسی قسم کی فائرنگ ہوئی۔ ایک اور وجہ جس سے یہ شبہ ہوتا ہے کہ پاکستانی فوج کو پہلے ہی آگاہ کردیا گیا تھا کہ ہماری فوج کا بن لادن کے کمپاؤنڈ میں امریکیوں کے جانے کے فوراً بعد داخل ہونا ہے۔
    ایبٹ آباد کے کامیاب آپریشن پر امریکیوں کا جشن منانا قابل فہم ہے اگرچہ بن لادن کو مارنے کا مطلب القاعدہ کی آخری شکست یا دہشت گردی کے خلاف جنگ کا خاتمہ نہیں ہے اور نہ ہی اسے افغانستان میں طالبان کے خلاف امریکہ کی سربراہی میں قائم اتحادی افواج کی فتح کے طورپر دیکھا جا سکتا ہے۔ ان کے پاس اپنے کمانڈروں کی تعریف کرنے کی کئی وجوہات ہیں جنہوں نے اطلاعات کے مطابق کمپاؤنڈ پر حملہ کیا اور اسامہ بن لادن کے تین ساتھیوں سمیت انہیں قتل کر دیا اور ان کی لاشیں اپنے ساتھ لے گئے لیکن اس مشن کو ایک عظیم کارنامہ کہنا بعید از فہم نظر آتا ہے کیونکہ اسلحے سے لیس 79/امریکی کمانڈوز نے آخر میں غیر مسلح بن لادن اور دیگر تین آدمیوں کو قتل کردیا جو اپنی نیند میں بے خبر سو رہے تھے جبکہ دیگر افراد میں خواتین اور بچے شامل تھے اور ان کے پاس کسی قسم کے ہتھیار یا خود کش جیکٹس نہیں ملیں ۔ علاوہ ازیں ایک خاتون کو مار دینا اور دوسری خاتون کو زخمی کرنا کسی بھی طرح سے بہادری کی بات نہیں ہے۔ اس کے علاوہ یہ سوالات بھی اٹھائے جا رہے ہیں کہ اسامہ کو زندہ کیوں نہیں پکڑا گیا؟؟ سابق صدر جارج ڈبلیو بش اسے زندہ یا مردہ گرفتار کرنا چاہتے تھے لیکن ایسا لگتا ہے کہ اوبامہ انتظامیہ نے انہیں قیدی نہ بنانے کا فیصلہ کر لیا تھا اور اس کے ساتھ ہی انہوں نے اسامہ کی لاش کو سمندر برد بھی کر دیا تاکہ ان کی قبرپر کوئی مزار تعمیر نہ ہو سکے۔ اس سے بھی زیادہ اہم بات یہ ہے کہ پاکستانیوں کے ایک جانب کھڑے ہونے سے امریکیوں کا کام آسان ہوگیا، پاکستانی حکومت اور فوج کے پاس اس کے علاوہ اور کوئی راستہ نہیں تھا کہ وہ ایبٹ آباد کمپاؤنڈ پر ہونے والے حملے کے متعلق عدم واقفیت کا اظہار کریں اور اب انہیں تنقید کا سامنا ہے کیونکہ امریکی ہیلی کاپٹروں کو روکنے کی کوئی بھی کوشش ان کے ساتھ جنگ کا باعث بن سکتی ہے اور انہی وجوہات کی بنا پر پاکستان اپنے قبائلی علاقوں میں ہونے والے امریکی ڈرون حملوں کے مسئلے کو بھی حل کرانے سے قاصر ہے۔

    http://search.jang.com.pk/details.asp?nid=528626

  • What I don’t understand is why PPP spokes people are supporting generals so much?