Original Articles

Peshawar Declaration: The real one by Amn Tehreek, the fake by PTI

Pakistan Tehrik Insaf after today Daharna has issued a Declaration with the name of Peshawar Declaration to counter Amn Tehrik Peshawar declaration issued on 16th Jan 2010 after two days long consultation and deliberation, we demand from PTI to give another name to your declaration.

The consensus document of peace loving forces of the province and FATA.

How the terrorism started in Af-Pak and particularly in Pukhtoon Land? What do they want? Who are their friends and foes? How to eliminate terrorism and establish sustainable peace in the region?

Eliminating Terrorism and Establishing Sustainable Peace in the Region.

Peshawar Declaration

Aman Tehrik (Peace Movement), a conglomeration of civil society organizations, held a two-day workshop / conference on December 12 and 13 in Peshawar on “Terrorism – The Way out”. The workshop was attended by the provincial leadership of Awami National Party (ANP), Pukhtunkhwa Mili Awami Party (PMAP), Pakistan Peoples Party Parliamentarians (PPPP), Pakistan Peoples Party Sherpao PPP(S), National Party (NP) and Awami Party Pakistan (APP). Amongst others, the participants included businessmen, doctors, lawyers, teachers, students, laborers and intellectuals. All agencies of FATA, Swat, Malakand and Buner, areas directly affected by terrorism, were duly represented in the workshop/conference. A significant number of female participants were also present.

The participants unanimously opposed terrorism in all its forms and manifestations. It was decided at the outset of the workshop to discuss the various reasons / factors responsible for promoting extremism and terrorism and investigate the possible ways for our society to get out of this quagmire. Five groups were constituted in order to discuss and identify the political, ideological/strategic, economic, cultural and educational/awareness measures needed to end terrorism. The participants were given free choice to select the group of their liking.

On the first day every group came up with its report of draft recommendations. On the second day each group presented its report before the conference. Every report was critically analyzed, objections raised and recommendations for improvement discussed. After thorough discussions and brain storming, consensus based final recommendations were drawn from the draft recommendations of the respective groups. In a commendable show of unity, members with different political affiliations and shades of opinion succeeded in agreeing upon a single document of consensus.

It was decided that the report of the workshop / conference should be amalgamated into a joint declaration namely “Peshawar Declaration. A five member committee was constituted to prepare the documentation. It was further decided that all the organizations that attended the conference will jointly struggle to translate Peshawar Declaration into actions. For that matter, ten members Coordination Committee (Rabita Committee) was constituted comprising members from ANP, PMAP, PPPP, PPP (S), APP, NP and Amn Tehrik.

Defining Terrorism:

Terrorism means to fill someone with fear for the purpose of achieving certain ends. A person can be terrorized by a mere threat of use of force or actual use of force for inflicting physical or otherwise harm. An individual, a particular group, a sect, a nation or a country can resort to terrorism for achieving certain objectives. Those objectives may include money, property or women.

The Current Wave of Terrorism in our region:

Throughout the history of mankind there have been instances when certain men would terrorize fellow human beings for achieving their selfish objectives. The modes of terrorism have been different at different times. All participants of the conference unanimously agreed that the current form of terrorism is the most dangerous one, the worst type. This kind of terrorism is in fact a complex mixture of religious extremism, fanaticism, sectarianism, anti-civilization, anti-humanism and the most ruthless coercion.

The objectives of today’s terrorists seem to be to intimidate humanity by terror to the extent that it is compelled to accept the world order of terrorists’ choice. The present day terrorism is a new form of global fascism. Today a terrorist teacher issues ticket of paradise to his soldier (suicide bomber) with the promise of his marriage with a Hor (beautiful women in paradise) and the soldier confirms the ticket by ruthlessly killing innocent human beings, including women and children! The obvious madness and in-human thinking behind the rationale of killing fellow human beings, including women and children, for one’s material and animalistic yearnings (Pure Wines and Beautiful Women) is beyond any comprehension and does not deserve any sympathy or empathy.

The terrorism in our area is in three shape i. Talibanization ii. Sectarianism iii.Kidnapping for ransom, which is one of the financial sources of the terrorists.

To defeat this kind of terrorism in our region, it is mandatory to understand its causes and modus operandi, without which cure or elimination will not be possible.

Causes of the Terrorism in our Region:

Latif Lala, Vice Chairman, Pakistan Bar Counsil

The participants of the workshop / conference agreed unanimously that the current wave of terrorism emanates mainly from two sources i.e. Al-Qaeda and the Strategic Depth Policy of Pakistan.

Al-Qaeda is new form of Arab expansionism under the garb of global Islam. As is evident from history, Arabs imposed their superiority over the non-Arab Muslims with the tool of Wahabism. Al-Qaeda is an organization which has mandated itself to give continuity to the domination of Wahabi Islam over the non-Arab Muslims by terrorizing them. The ingredients, organizational structure, techniques and strategies of Al-Qaeda reflect the same.

The second ingredient contributing to this kind of terrorism is the Strategic Depth Policy of Pakistan Army. The purpose of this policy is to use Jihadi culture in order to counter India, protect nuclear weapons, subjugate Afghanistan and making it the fifth province of Pakistan or give it Azad Kashmir like status. The policy visualized in 1995 that the Central Asian Muslim states would be made Pakistan’s “client” states.

The Strategic Depth Policy of Pakistan Army has a complete background. The official ideology of nationhood on the basis of religion served as its foundation. Cantonments were labeled with the slogans of Jihad Fi Sabi-lil-lah (Jihad in the name of Allah). Big crossing and turn-abouts in cities were furnished with tanks, fighter planes and replicas of the Chaghai hills to make a war-like environment. Instead of a welfare state, Pakistan was made a security state.

Idrees Kamal, Amn Tehreek

The Objective Resolution (1949) gave birth to Mullah-Military Alliance. The same resolution was included, in letter and spirit, in the constitution by General Zia ul Haq. As a result of religious background, war-like environment, security state and Mullah-Military-Alliance, the first terrorist organizations in the names of Al-Shams and Al-Badar were launched in Bengal. The defeat in Bengal should have been an eye-opener for the military establishment of Pakistan and should have ended the military-Jihadist nexus but unfortunately the same policy was practiced in Kashmir, Pakistan and Afghanistan. Terrorist organizations like Hizbul Mujahideen, Harkatul Mujahideen, Lashkar-e-Tayeeba and Jash-e-Muhamamd were installed in Kashmir. In Paksitan Sibah-e-Sahaba and Lashkar-e-Jhangwi and in FATA Lashkar-e-Islam, Ansar-ul-Islam, Amarbil-Maroof, Tahreek-e-Nifaz-e-Shariat-e-Muhammadi and Tahreek-e-Taliban have been operational.

All these organizations were termed as strategic assets. In Afghanistan terrorism was started in 1972. First of all, Gulbadin Hikmatyar was brought to Peshawar and Colonel Imam (of Pakistan Army) was sent to Afghanistan. During that period and till 1978 Gulbadin Hikmat Yar, Professor Mujadidi, Burhan ud Din Rabbani, Pir Gilani and Abdul Rasool Siaf were trained to be the leaders of terrorists’ organizations. When these people conquered Afghanistan, they tried to stop their patrons from interfering in Afghanistan. Thus the strategic assets did not help their patrons. Even then the Army did not learn any lesson and another asset with the name of Taliban was formed which tuned out to be more aggressive and destructive for Afghanistan. During this time the marriage between Taliban and Al-Qaeda took place and they became the rulers of Afghanistan.

Due to the policy of Strategic Depth, the country had already plunged deep into the abyss of terrorism even before 9/11. The riots between Shia and Sunni Sects were a common phenomenon. The suicide bombings in the country were started in 1993. The suicide attack that killed Ahmed Shah Masood was carried out just one day before the 9/11. India and Afghanistan had already been suffering from such attacks. In due time religious extremism spread its tentacles in Pakistan and sectarianism grew. Besides Shia, the Barelvi were also targeted.

This is a historical fact that the US, China, Arab countries and Europe helped Pakistan in its aggression against Afghanistan in order to crush Sor Inqilab there. To quote just one example 24 billion petro-dollars were spent to establish seminaries (religious schools). Military aggression was named as Jihad. The whole environment was favorable to nurture the already strong triangular of Mullah-Military-Militants.

During the rule of the afore-mentioned religious and military components of terrorism, terrorists from Middle East, Chechnya, Uzbekistan, Sin kiang and other parts of the world came to Afghanistan. Thus Afghanistan became the hub of international terrorism. After 9/11, all these peoples were shifted to FATA. No doubt these terrorists are now present in FATA and elsewhere in the country. There is no denying the fact that these terrorists have occupied FATA and some parts of Punjab like southern Punjab and Muridke are their strong holds.

Deference of Perceptions of the people of Pakistan who are directly or indirectly affected and those who are not affected by the terrorism:

Although, Pakistan as a country is affected by terrorism but the whole Pukhtunkhwa province and especially FATA and Malakand are the most affected areas due to terrorism. Not a single village or city of Pukhtunkhwa province is spared by terrorists. The people of FATA and Pukhtunkhwa have virtually become hostages to the terrorists.

The perceptions and opinions of these people and those in the rest of the country, regarding terrorism, its causes, the objectives of military operations, involvement of foreign hands in terrorism and drone attacks, are pole apart. These perceptions and opinions are in sharp contrast and contradiction to each other.

Why is this contradiction?

One of its reasons is the natural one as a Pushtu proverb goes: only that place feels the heat which burns. The second reason is the policy of the government. For example the media policy during General Pervez Musharaf allowed massive coverage to those people who were supporting terrorism. This included some of the retired generals, a few journalists and analysts. As a result, those living in other parts of the country or those who were not directly affected by terrorism were continuously indoctrinated with ideas of these people for about eight years which further helped terrorism. Since people of the war zone have been eye witnesses to all that has been happening there, their perception of terrorism has, therefore, been different and to a great extent a correct one.

A few examples are:

a. Through the media, an impression is given that the present terrorism is the continuation of Jihad against the Soviet Russia. That the present terrorists are the same who fought against Soviet Russia and thereafter got settled in the tribal areas of Pakistan for the last 30 years

This impression is absolutely incorrect. All those militant commanders who fought against the Soviet Russia formed their political parties which have now joined the political process of Afghanistan and are deadly against the present terrorists. These commanders include Professor Mujadedi, Burhan-ud-Din Rabbani, Pir Gilani, Abdur Rab Rasool Sayaf, (late) Ahmad Shah Masud’s party, Rasheed Dostam etc.

Only two of those commanders who fought against the Soviet Russia are part of the present dispensation of terrorism, i.e, Gulbuddin Hikmatyar and Jalal-ud-Din Haqqani (who belonged to the same party). The party of Gulbuddin Hikmatyar is no more in existence and only one of his commanders namely Kashmir Khan and a few others are left with him. Jalal-ud-Din Haqqani had already left him and joined the Talibans.

Secondly, Uzbeks, Chechens, Sudanese and terrorists from Sank Yang came to Afghanistan during the period of Taliban. At that time the Soviets had withdrawn and Dr. Najeeb’s government was toppled down. These terrorist did not exists during the war against Soviets.

Thirdly, none of the Pakistani terrorist organizations like Hizbul Mujahideen, Harkatul Mujahideen, Lashkar-e-Tayeeba, Jash-e-Muhamamd Sibah-e-Sahaba, Lashkar-e-Jangwi, Lashkar-e-Islam, Ansar-ul-Islam, Amar-bil-Maroof, Tahreek-e-Nifaz-e-Shariat-e-Muhammadi and Tahreek-e-Taliban had participated in anti-Soviet campaign.

Fourthly, the Taliban in Afghanistan and Pakistan have never had any direct role in the anti-Soviet campaign. Despite this, it was propagated over the media that the on-going war is a continuation of the so-called Jihad in Afghanistan. It is propagated that these terrorists were part of the anti-Soviet campaign and they have been living in the tribal areas for thirty years where they had married the local women and thus became part and parcel of the tribal society. The fact is that in the tribal areas a forefinger is never called a native even if had taken asylum and lived there for centuries. Mahsud tribe of South Waziristan had the peculiarity that it did not allow a single non local to stay in their area during this whole period.

b. Another false propaganda over the media is the projected number of foreign militants present in FATA. In the media the number of foreign militants is portrayed as hundred to two hundreds. The reality is that there are 11000 Uzbeks, 6000 Arabs and 9000 Punjabis. From Waziristan to Swat, the number of Pushtun terrorist is merely 4000 but despite the fact the whole Pushtun nation is falsely propagated as extremist and terrorist.

c. On other issues such as military operations, peace deals and the fighting between army and Taliban, the people of war-affected areas have quite a different outlook than those living in the mainland. For example the people of the war-affected areas think that the army and Taliban are not enemies but friends. They have been persistently asking the question why the military failed to target the core leadership of the militants in all the 17 military operations in FATA? This is true that during the military operations the top as well as the second and third cadre leadership were neither killed nor wounded or captured. Moreover, the news of the killing of many terrorist leaders is telecasted several times over the media but they are still alive. Commanders like Ibn-e-Amin, Shah Duran and Ikram ud Din are the prime examples of such false propaganda. In Swat, the news of Fazl Ullah’s siege was three times telecasted by the ISPR but in the same month it was propagated through media that he had escaped to Afghanistan. Fazl Ullah’s close associates Muslim Khan, Haroon and Mahmood were arrested by the militants but six months have passed and nobody knows what happened to them. In the past, Sufi Muhammad was arrested and then released in a so-called peace deal which was imposed upon the political leadership at gunpoint. The valiant police of the province on many occasion arrested many terrorists few of them were the most criminal one. The intelligence agencies used took them away for further investigation. These people were kept somewhere for few months. They were released when the government stuck peace deals with the terrorists. It is due to these reasons that the people of the war-affected areas are neither satisfied with the military operations nor do they entertain false hopes.

The people of the war-affected areas demand that these terrorists should be hanged in open space like they used to hang innocent civilian or like what they did to Shabana. These people call for a real and targeted military operation and strongly condemn the dramas in the name of military operations. These people do not support any peace deals with the militants but unlike them the rest of Pakistan talk of putting an end to the military operations and resuming the so-called peace deals.

d. The issue of Drone attacks is the most important one. If the people of the war-affected areas are satisfied with any counter militancy strategy, it is the Drone attacks which they support the most. According to the people of Waziristan, Drones have never killed any civilian. Even some people in Waziristan compare Drones with Ababeels (The holy swallows send by God to avenge Abraha, the intended conqueror of the Khana Kaaba). A component of the Pakistani media, some retired generals, a few journalists/analysts and pro-Taliban political parties never tire in their baseless propaganda against Drone attacks.

e. The same is true of the discourse of foreign hands in militancy. In FATA there is either military or the afore-mentioned militant organizations. Majority of the local people have migrated to other parts of the country. Those who could not flee are helpless and nothing is in their control. The questions arises which one of the militant organization is not created by the Pakistan army and which one is serving a foreign agenda? If such is the case Pakistan should raise the issue on UN forum or name the organization which is serving a foreign agenda by using the diplomatic channel.

The possibility remains that there is a second or third tier terrorist with a few suicide bombers and he exchanges them for a handsome price. But this is not possible on organizational level and if the chaos persisted for a longer period there is also the possibility that some other countries would jump into the fray or the UN would bring peace forces to these areas.

All the participants agreed that the failure of military operations and the ongoing terrorism which is spreading its tentacles very fast are not because of the inability of the Pakistan army but rather it is a deliberate attempt on the part of our establishment to secure its military assets at every cost.

Terrorism and the Identification of Friends and Foe:

All participants of the workshop / conference agreed upon the idea that every individual, writer, intellectual, organization or country who is against the terrorism is our friend.

Every individual, organization, party or country that provides sanctuary to the terrorists, extend financial or moral support to them or support them in any way like diverting peoples’ attention to non-issues by concealing the truth about them is a friend of the terrorists and hence an enemy of the participants of the conference—an enemy of Pushtuns, Pakistan and humanity in general.

The conference applied the above mentioned criterion to gauge political parties. The participants unanimously reached the conclusion that Jumat-e-Islami, both factions of Jameet-Ulema-e-Islam, Jumat Al-Hadis Sajid Mir Group, Tahreek-e-Insaf, a component of the Pakistani media and establishment are pro-terrorists. All the Baloch Nationalist Parties are apposing terrorism and supporting Drones so they are our friends. Pakistan Muslim League(s) (N & Q) are primarily Punjab based parties, and very closed to establishment. Their stand against terrorism is vague so they are on our watch list. MQM in itself is a terrorist organization. Though MQM is apposing terrorism but this is because that it sees its own terrorism vanishing if the new phenomena enters their constituency.

RECOMMENDATIONS FOR THE ELIMINATION OF TERRORISM

A) Political Recommendations:

1. The conference unanimously agreed that the strategic depth policy is the cause as well as effect of terrorism. The policy caused a thousand times greater harm to Pakistan than any NRO or writing off debts could do. Due to this policy hundreds of thousands people have been killed or injured. The policy has pushed Pakistan into such abysmal depths that its foundations are eroding. The conference concluded that the people of Pakistan would still be resolute to oppose terrorists and the ideology of terrorism even if the US, NATO or ISAF are defeated in Afghanistan and the terrorist capture the throne of Kabul. If the terrorists succeeded in Afghanistan their next target would be Pakistan. Therefore, this policy is destructive for Pakistan and should be abandoned publicly.

2. Those who framed this policy should be tried through judicial commission.

3. Interference in Afghanistan should be stopped at once and it should be treated as a sovereign neighboring state.

4. Sanctuaries of terrorism in FATA, Pukhtunkhwa province and other parts of the country like those in Bara, Darra Adam Khel, Mechanai, Mirnashah, Mir Ali, Kurram Agency and southern Punjab should be destroyed. A brief and targeted military operation should be launched against the terrorists. Half-hearted military operation is only spreading and helping the terrorists. Therefore, the blunders of the past should not be repeated.

5. NATO and ISAF are sent to Afghanistan under UN mandate. NATO and ISAF should stay in Afghanistan until terrorism is uprooted, foreign interference in Afghanistan must be stopped and the institutions of army and police must be established on solid footings. However they should offer a clear time frame for that matter. The US has supported some of the terrorist and it still holds a double standard. Americans are blamed for supporting Jandullah Group. Similarly they are least interested in dealing with the terrorist from Sin Kiang. After the elimination of terrorism, the foreign troops must withdraw immediately.

6. Some political parties, part of the media and establishment are supporters of the terrorists. They are the enemies of Pashtoons and Pakistan. They must be boycotted.

7. The conference decided to improve and promote people to people contact of Af-Pak and demanded that governments of both the countries should not hinder the process.

8. The conference appeals Saudi Arab and other Arab countries to stop financing the terrorists.

9. The Pakistan army should not indulge itself in registration of the IDP’s or Reconstruction and Rehabilitation of affected areas. This job should be done by the civilian authority and the army should concentrate on elimination of the terrorist.

10. Besides uprooting terrorism in FATA, the people of FATA should be compensated for the damage done to them and their properties due to terrorism. A comprehensive developmental package should be planned and the people of FATA should be allowed to choose any administrative system for themselves.

11. The so-called nonfunctional terrorist organizations are still operative in the country. Merely naming them dysfunctional would not help. These organizations should be practically eliminated.

12. The conference demands that Pakistan army and intelligence agencies should not interfere in politics. They should do their jobs for which they have been recruited. Army and intelligence agencies should be made subservient to the parliament and their control should be in civilian hands.

13. The conference believes that every democratic government should complete its term. Any conspiracy to derail democracy will be defeated. The conference condemns the media trial of the politicians and the so-called corruption charges against them. The conference strongly demands that the establishment should stop dividing the political parties.

14. The people internally displaced due to the army operations should be treated as per UN resolutions.

15. The conference agreed that Pushtuns in FATA and Northern Pukhtoonkhwa have been made hostage by the terrorists. The terrorists and security personnel are apparently engaged in fighting but their targets are innocent civilians. Four millions Pushtuns are living as IDPs. Our schools are closed and our youth unemployed. Whether there is chance for festivity or an occasion of mourning terrorism is feared. Our Jargas are the target of terrorism. Jargas and Lashkars are banned in tribal areas. In settled areas gatherings and processions are not possible. Local Pushtuns names like Aimal Khan, Darya Khan and Khushal Khan are changed into Abu Zar and Abu Jandal. Pushtun nation is not only hostage to these terrorists but there is also an organized campaign to Arabize them. The whole world is playing its due role against terrorism but the most affected people of this menace are unable to play their effective historical role. The participants in conference agreed that if Pushtuns are given an opportunity to fight terrorism they would definitely deal with the terrorists in their historical courageous way. It is suggested that a grand Pushtun Jarga of the Pushtun of Pakistan should be called upon under the auspices of United Nations. If possible, Afghanistan Government should also be given representation. The Jarga should deal with the sole agenda “how to eliminate terrorism.” The Jarga should not be arranged on the traditional pattern; rather it should be given a broader touch by inviting all the Khels and tribes so that they can discuss the matter for two or three days. The participation of women in this Jirga must be mandatory. It should be conveyed to all non-Pushtuns that these Jargas are actually time-tested indigenous workshops. We believe that this Jarga would supersede all effective counter terrorism efforts. If succeeded, the same experiments should be repeated with the Pushtuns of Afghanistan.

16. The conference unanimously analyzed that the ground realities suggest terrorism is on the rise and Pushtuns are drifting along the tides of national, social, educational and psychological hopelessness. If terrorism is not uprooted in the upcoming months or if it further increased, Pushtuns would distrust all state institution vis-à-vis eliminating terrorism. In that case Pushtuns will be forced to invite UN peace keeping forces. To avoid the worst scenario, the problem of terrorism should be taken seriously. Participants of the conference were unanimous in their thinking that all responsibility would fall on the shoulders of the Pakistani establishment if UN peace-keeping forces landed in the area and the world finally opted to redraw the marking of various countries in the region.

B) Economic Recommendations:

Fata and Pukhtunkwha province are the most deprived areas for the past 62 years. The irony is that despite of having vast natural resources, Pushtuns are the poorest, the most uneducated, the most unemployed and perhaps the most displaced people of the world. The ongoing surge of terrorism is only adding insult to their injuries. To defeat terrorism, all the deprivations of Pushtuns should be dealt with and their economic problems should be solved.

1. All the aid and international assistance in the name of counter terrorism should be spent on FATA, Pukhtunkwha province and other terror-affected areas. The aid should not be diverted to other provinces or institution as is the routine in Pakistan.

2. Reconstruction Opportunity Zones (Roz) should be established in FATA and the people of FATA should be given its ownership and they should also be equipped with the relevant technical know how.

3. Pukhtunkwha province should be declared as war-affected area and therefore should be financially supported by giving its people exemption from taxes and utility bills till terrorism is uprooted.

4. In FATA the damages done due to terrorism should be compensated and a comprehensive developmental package approved to compensate the deprivations of the past.

5. An economic database should be established in FATA and Pukhtunkwha province for planning and keeping record of the economic needs.

6. Small and medium enterprises and large scale industries should be planned with the aim of imparting technical know how to the local population.

7. Fata and Pukhtunkwha province should be granted ownership of the resources of water, electricity, tobacco, gas and petrol and full fiscal autonomy should be granted accordingly.

8. Pushtuns living in four divided administrative unites should be merged to gather and made a single united province. Full national autonomy should be granted to this Pukhtoon province named Afghania, Pukhtoonkhwa or Pukhtoonistan. All the liabilities of this province in regard to their resources that are due to the federal government should be paid immediately.

9. Canals from Indus should be networked in Swabi, Shakardara, Laki Marwat and Dera Ismael Khan in order to irrigate and cultivatable 80% of the land which will contribute to the overall agricultural output of the country.

10. In order to increase the hydroelectricity output, the proposed plans in Pukhtuns land should be materialized.

C) Education and Awareness Related Recommendation:

The need of education and awareness to combat terrorism should be overemphasized. Terrorism is a global phenomenon but it has become the core issue of Pakistan. The rulers of Pakistan openly admit that Pakistan is in a state of war but unfortunately an open willingness to declare war on terrorism is still a far cry. Minor and poorly coordinated military operations have aggravated the crisis even further. A close examination reveals that the menace of terrorism is spreading deeper and deeper into the society by eroding the basic social fabric.

Recommendations:

Media:

1. The government of Pakistan should institute and initialize a concentrated media campaign against terrorism and activities such as dramas, educational pictures, documentaries etc against terrorism should be promoted.

2. The media should play its due role in the fight against terrorism. Pro-terrorism broadcasts should be banned. The media should also realize that discussion of non-issues further plays into the hands of the terrorists. The political parties, civil personalities and Lashkars constituted against terrorism should be given proper media coverage. Positive portrayal of terrorists should be discouraged.

3. Suicide bomber is the most lethal weapon in the hands of the terrorists. The experience of last many years has proved that the age of suicide bomber is from 12 – 20 years. This age group should be educated that this act is against humanity and Islam. A massive campaign in this regard should be lunched in all the schools, seminaries, every house and village and off course the media should be utilize for this purpose and repeatedly re-telecasted. If we are able to educate this age group it would become unlikely that the terrorists will use their major weapon.

Education and Religious Seminaries:

1. Budget allocation for education should be increased.

2. Education should be acknowledged as a basic human right.

3. Education till matriculation should be provided free of cost and elementary education up to grade 8 should be made compulsory. Female education should be emphasized.

4. Admission to higher educations should be based on merit while special arrangement should be made to secure the rights of the backward areas and lower classes.

5. Participatory teaching methodology should be introduced in education.

6. Corporal punishment should be banned in educational institutions.

7. The syllabus of education should be renewed. The curriculum should be designed on broader humanistic goals and the aims of good citizenship.

8. Modern scientific knowledge should be imparted on the basis of research and creativity.

9. Laboratories and libraries should be declared necessary for all institutions and all areas.

10. The need to inculcate the qualities of tolerance, peace and democracy should be emphasized and the contributions of people having these qualities should be highlighted to inspire the youth.

11. All the material regarding hate, prejudice and Jihad should be removed from the curriculum.

12. Sectarianism and religious hatred in any form should be termed as terrorism and the persons involved in such activities should be severely punished.

13. All the seminaries that have direct or indirect link with terrorists should be closed and ‘Fatwas’ (Religious Decree) should be obtained against the terrorists.

14. Orthodox seminaries should be streamlined and made answerable to the government.

15. Old history of the region and the consequent major historical events should be incorporated in the curriculum.

16. The curriculum should cater for broader national, regional and international understanding.

17. Healthy co-curricular activities should be made compulsory.

18. Gender equality should be ensured in Education and it should be taught to the students. Discriminatory customs, traditions, laws and curriculum against women should be undone.

19. Parent Teachers Association/ council should also be made compulsory for every school.

20. Students Unions should be reinstated and literary and cultural activities should be termed mandatory in colleges.

D) Cultural Recommendation:

Pushtun nation has 6000 years old strong cultural heritage. Pushtun society and culture is the main target of the current wave of terrorism. Jargas, Lashkars and Collective Responsibility are the three hallmarks of social and cultural fabrics in the tribal areas. Terrorism has targeted these three pillars of the tribal structures in a very organized way. As a result the society has become vulnerable. If we empower Pushtuns socially and culturally it would mean we have won 50% of the war against terror.

1. There is a dire need to instill a new life in Jarga, Hujra and Lashkar and reorganize them on modern modalities.

2. Arts Councils should be established in every district.

3. Community Centers should be set up in every district.

4. Pushtu Literary and Cultural Centers should be organized keeping the Press Clubs modality in view.

5. Literary organizations which are already contributing should be supported and Peace Committees should be organized in all parts of FATA and Pukhtunkwha province.

6. All illegal FM channels should be closed at once and the perpetrators should be severely dealt with.

7. FM channels should be started by the government to promote peace, development and Pushtun culture.

8. The artists who suffered due to terrorism should be compensated on emergency footings The female artists must also be compensated.

9. Fine Arts departments should be opened in colleges and universities and other educational institutions should be encouraged in this regard.

10. Pakistani media should take measures to discourage the negative trends of presenting Pushtuns as backward, ignorant, extremists and terrorists.

11. A national TV channel for Pushtuns should be started.

12. All those cultural activities should be banned which are against the basic human rights especially against the rights of women.

13. In FATA and Pukhtunkwha museums related to the historical, literary and political personalities should be established for example Khushal Khan Khattak, Aimal Khan Momand, Darya Khan Afridi, Umra Khan, Pir Rokhan, Faqir Ipi, Baacha Khan, Abbdul Samad Khan Achakzai and Sanubar Hussain Kaka Ji, Alif Khana Khattak, Malalai.

14. Pushtu should be declared as official language and it should be made the language of education, courts and offices.

15. The sign boards should be written in mother tongue.

Courtesy: Amn Tehreek

About the author

Ali Arqam

17 Comments

Click here to post a comment
  • One cant expect PTI to come up with such a detailed declaration. Their declarations are drone, afia and taliban

  • shame on imran khan for “stealing’ the Peshawar declaration on the instructions of ISI!

    seems imran khan is playing the GHQ fiddle and has stooped low standing alongside, JI, JUI, lashkar e taiba, jamaat ul dawa and above all being a taliban spokesperson and not that of PTI

    he should stop eluding himself as the future saviour of the nation , as those who ride the ISI horse -soon discover to their surprize , that they end up with trampled under its feet , once the objective is realised, they have only “interests’ of the deep state, the establishment , and no friends !

    so don’t elude yourself as being the next emperor dear khan!

  • mr talha

    as much less than what al quiada and the saudis (sic!) paid you and ISI this dirty money to post this mail – !

    you suggest a historic assembly of pukhtuns jirga would take money from the US, shame on you!

  • Let the time pass on, no one will remember what taliban khan said for more than 2 days.

  • وَ یٰقَوۡمِ لَاۤ اَسۡئَلُکُمۡ عَلَیۡہِ مَالًا ؕ اِنۡ اَجۡرِیَ اِلَّا عَلَی اللّٰہِ وَ مَاۤ اَنَا بِطَارِدِ الَّذِیۡنَ اٰمَنُوۡا ؕ اِنَّہُمۡ مُّلٰقُوۡا رَبِّہِمۡ وَ لٰکِنِّیۡۤ اَرٰىکُمۡ قَوۡمًا تَجۡہَلُوۡنَ ﴿۲۹﴾

    اور اے میری قوم نہیں مانگتا میں تم سے اس پر کچھ مال میری مزدوری نہیں مگر اللہ پر اور میں نہیں ہانکنے والا ایمان والوں کو ان کو ملنا ہے اپنے رب سے [۴۱] لیکن میں دیکھتا ہوں تم لوگ جاہل ہو [۴۲]

    And, O my people, I do not demand from you any wealth for it. My reward is with none but Allah. And I am not the one who could drive the believers away. Surely, they will be meeting their Lord (gracefully), but I do see your behavior is that of ignorance

  • people of pakhtoon khawa are still suffering from droon and also from sucite attacks but they are still struggle to bring the peace in country we salout them

  • PESHAWAR DECLARATION was the one declare by the original stakeholders of Peshawar and Pakhtunkhwa i.e. AMAN TEHRIK and participants of civil society and members of Political parties of Pakhtunkhwa.

    The second one is off coarse a fake one written by ISI and presented by PTI, with no genuine stakeholders involved. Can someone tell me a single name of any prominent Pakhtun elder in that sitting.

  • imran khan zindabad

    ANP , PPPP , pmln,q, etc………they alll are theft and lier……..
    they are the dog of america……

    PTI zindabad,,,imran khan zindabad.
    revolutioin we need

  • za lata na tapos kom che charta dai asfandyar ….

    dalta ba ye mung la inqilab khabarei kawalei
    che power kei raghai nu ws khkarei hm na……..
    kam az kam pakistan kei kho dei keine…..

    da pukhtano dei nen halat zimawar asfandyar dai………

    25 saal badh hm govt raghalai dai ws
    aw 25 saaal da govt soch hm ws wana kei…

  • اعلانِ پشاور
    پاکستان میں دہشت گردی کے خاتمے اور دیرپا امن کے لیے پشاور میں کام کرنے والی سول سوسائٹی کی تمام تنظیموں، 6 امن پسند سیاسی پارٹیوں، سوات ، مالاکنڈاور فاٹا کے متاثرہ علاقوں کے نمائندوں کی طرف سے متفقہ دستاویز

    فائنل ڈرافٹ

    پاکستان میں دہشت گردی سے نجات اور دیرپا امن کے لیے
    اعلانِ پشاور
    12 اور 13 دسمبر 2009 ءکو سول سوسائٹی کی تنظیموں اور دہشت گرد مخالف سیاسی پارٹیوں کا مشترکہ دو روزہ کانفرنس اور ورکشاپ منعقدہوا۔ اس کا صرف ایک ہی ایجنڈا تھا ” دہشت گردی ختم کرنے کے طریقے Terrorisim – the ways out شرکاءاس بات پر متفق ہوئے کہ دہشت گردی سے نجات کیلئے سیاسی، نظریاتی، سٹرٹیجک ، تعلیم اورآگاہی ، اقتصادی ، ثقافتی موضوعات پر بحث کی جائے ۔ لہٰذا ان پانچ گروپوں کیلئے شرکاءنے اپنی منشا کے مطابق اپنا گروپ منتخب کیا ۔ ہر گروپ نے اپنی پسند کے موضوعات پر دو دن مکمل جمہوری انداز میں اپنی اپنی رائے دی۔ ہر گروپ پہلے دن ایک عارضی ڈرافٹ لکھنے میں کامیاب رہا ۔ دوسرے دن یہ گروپ اس عارضی ڈرافٹ پر مزید بحث کے بعد حتمی ڈرافٹ مرتب کرنے میں کامیاب ہوئے۔ اس میں سب سے دلچسپ اور حوصلہ افزاءبات یہ رہی کہ پانچوں گروپ میں تمام مختلف الخیال گروپ کثرت رائے کی بجائے مکمل متفقہ ڈرافٹ کے ساتھ مشترکہ اجلاس میں اپنی لکھی ہوئی رپورٹ کے ساتھ حاضرہوئے ۔
    اس کانفرنس میں عوامی نیشنل پارٹی، پیپلزپارٹی پارلیمنٹرین، پیپلزپارٹی شیرپاﺅ، پختونخوا ملی عوامی پارٹی،نیشنل پارٹی اورعوامی پارٹی کی صوبائی قیادت نے شرکت کی ۔ امن تحریک میں شامل سول سوسائٹی کی تمام تنظیموں، تاجر، ¾ اساتذہ، ¾ طالب علم، مزدو روکسان ،وکلائ، ڈاکٹرز اور دانشور طبقہ نے شرکت کی ۔ اجلاس میں فاٹا کی تمام ایجنسیوں سوات، ملاکنڈ اوربونیرکے نمائندے خصوصی طور پر شریک ہوئے ۔ خواتین کی نمائندہ تعداد نے بھی اس کانفرنس میں شرکت کی۔
    ورکشاپ کے ہر گروپ نے کانفرنس کے سامنے اپنی رپورٹ پیش کی ۔ شرکاءنے ہر رپورٹ پر اعتراضات، تجاویز اور کمی بیشی کے متعلق اپنی رائے دی۔ یہ فیصلہ کیاگیا کہ ان تمام رپورٹس کو یک جا کرکے ” اعلان پشاور“ کے نام سے دستاویز کی شکل دی جائے ۔ اس کے لئے پانچ رکنی کمیٹی تشکیل دے دی گئی ۔ اس کمیٹی کو یہ دستاویز مرتب کرنے کی ذمہ داری سونپی گئی ۔
    کانفرنس میں بحث ومباحثے کے بعد یہ فیصلہ کیاگیا کہ اعلان پشاورکوعملی شکل دینے کے لئے اس کانفرنس میں شامل تمام تنظیمیں مشترکہ جدوجہد کریں گی ۔ اس مقصد کیلئے دس رکنی رابطہ کمیٹی تشکیل دیدی گئی جس میں اے این پی، پی پی پی پی، پی پی پی (ش) ، پی میپ، عوامی پارٹی پاکستان، نیشنل پارٹی اور امن تحریک کے نمائندے شامل ہیں ۔شرکاءکے سامنے جب رپورٹس پیش کی گئیں تو سیاسی و نظریاتی و سٹرٹجیک کو ایک ہی رپورٹ بنا دیاگیا ۔
    دہشت گردی کی تعریف:
    اپنے غرض کے حصول کے لیے دوسرے انسان کو خوف زدہ کرنا دہشت گردی ہے۔ دہشت گردی صرف دھمکی کی شکل میں بھی ہوسکتی ہے مارپیٹ ، اغوا ، جیل میں ڈالنا، قتل وقتال کے ذریعے بھی یہ غرض پورا کیا جاسکتا ہے۔ ایک فرد، گروہ ، نسل، فرقہ، قوم، ملک، حکمران طبقہ اپنے اغراض کے حصول کے لیے دہشت گردی کے مرتکب ہوسکتے ہیں۔ زن، زر، اور زمین بھی دہشت گردی کی بنیاد ہوسکتے ہیں۔
    موجودہ دہشت گردی :
    وقتاً فوقتاً انسان نے اپنے خود غرضانہ مقاصد کے حصول کیلئے دوسرے انسانوں پر بے تحاشا ظلم ڈھائے ۔ مختلف ادوار میں مختلف نوعیت کی دہشت گردی کی گئیں تمام شرکاءاس بات پرمتفق تھے کہ موجودہ دہشت گردی انسانی تاریخ کی سب سے زیادہ خطرناک دہشت گردی ہے ۔ موجودہ دہشت گردی دراصل مذہبی جنونیت، فرقہ واریت ، تمدن وتہذیب دشمنی، انسان د شمنی اور انتہائی حد تک بے رحمی کا ایک پےجےدہ مجموعہ ہے ۔
    موجودہ دہشت گردوں کی منزل یہ ہے کہ تمام بنی نوع انسان کو قتل کےا جائے اور ان دہشت گردوں کی مرضی کا معاشرہ تمام دنیا کا حکمران بنے ۔ اوران کے ذ ہن کا فتور تمام دنیا کا نظام بنے ۔ جنونیت کی ا نتہا یہ ہے کہ اس دہشت گردی کا استاد اپنے سپاہی کو جنت کا ٹکٹ اور حور سے نکاح کراتا ہے اور سپاہی انسانوں بشمول عورتوں اورمعصوم بچوں کی موت میں اپنے لئے جنت کی سیٹ Confirm کراتا ہے ۔
    دہشت گردی کے موجودہ لہرکوختم کرنے کےلئے ضروری ہے کہ پہلے اس دہشت گردی کی وجوہات اور عوامل کو سمجھا جائے ۔
    موجودہ دہشت گردی کی وجوہات اور عوامل :
    موجودہ دہشت گردی دو عناصر کا مجموعہ ہے اس میں سے ہر عنصر کااپنا پس منظر ہے ۔ القاعدہ اس دہشت گردی کا اہم عنصر ہے :۔ دراصل القاعدہ عرب توسیع پسندی کی ایک ایسی شکل ہے جس کوعالمگیر اسلام کا لباس پہنایاگیا ہے اپنے طویل پس منظرا وروہابیت کے باقی مسلمانوں پر غلبے کے نتیجے میں عرب باقی مسلمانوں پر غالب رہے ہیں یہی وجہ ہے کہ القاعدہ کا یہ عنصر موجودہ دہشت گردی کے اجزائ، طریقہ کار ،طریقہ واردات ،ترتیب اور تنظیم کا سپشلسٹ ہے ۔
    پاکستان کے فوجی حکمرانوں کی ترتیب کی گئی Strategic depth پالیسی اس دہشت گردی کا دوسرا عنصر ہے ۔ اس پالیسی کا مقصد یہ رہا ہے کہ ہندوستان مخالفت اور اپنے ایٹمی ا ثاثوں کوفوجی گہرائی دینے کے لئے جہادی کلچر کو فروغ دیاجائے ۔ افغانستان کوپہلے اپنا طابع اورپھر پانچواں صوبہ یا آزاد کشمیرماڈل بنایا جائے ۔ یہ مقصد پھر 1995 کے بعد اس حد تک آگے جاتا ہے کہ اس ایجنڈے کے حصول کے بعد وسطی ایشیائی ریاستوں کو Client ریاستوں میں تبدیل کیا جائے ۔
    پاکستان کے فوجی حکمرانوں کی بنائی گئی یہ پالیسی ایک طویل پس منظر کی حامل ہے مذہب کی بناءپرقوم کے تصور نے اس کیلئے پہلی اینٹ کاکام کیا۔ ،فوجی چھاﺅنیوں پر جہاد فی سبیل اللہ پاکستان کے مختلف شہروں کے چوراہوں پر ٹینکوں، جنگی جہازوں و میزائل اور چاغی کے پہاڑ بناکر جنگی ماحول فراہم کیا گیا ۔ اسی ماحول کے نتیجے میں ملک کو فلاحی مملکت کی بجائے سیکورٹی ریاست بنا دیاگیا۔ قرار داد مقاصد (1949)نے ملا ملٹری الائنس کے اتحاد کو جنم دیا ۔ جنرل ضیاءالحق نے اپنے دور میں اس قرارداد کو 1973ءکے آئین کا حصہ بنایا۔ مذہبی پس منظر، جنگی ماحول، سیکورٹی ریاست اور ملا ملٹری الائنس کے نتیجے میں الشمس اور البدر کی شکل میں بنگال میں پہلی دہشت گرد تنظیموں کو میدان میں اتارا گیا (Launched) یہاں کی شکست سے سبق سیکھنے کی بجائے یہ تجربہ کشمیر، پاکستان اورافغانستان میںسٹرٹیجک ڈیبتھ پالیسی کے ذریعے آزمایا گیا ۔ کشمیر میں حزب المجاہدین، حرکت المجاہدین، لشکر طیبہ، جیش محمد، پاکستان میں سپاہ صحابہ، لشکر جھنگوی، فاٹا میں لشکر اسلام ¾ انصار اسلام امر باالمعروف، تحریک نفاذ شریعت محمدی اورتحریک طالبان اس کی مثالیں ہیں ۔ ان سب تنظیموں کو سٹریٹیجک اثاثے asset کہا گیا افغانستان میں یہ عمل 1972 سے شروع ہوا ۔ پہلے گلبدین حکمتیار وغیرہ کو پشاور لایاگیا اسی وقت کرنل امام وغیرہ کو افغانستان بھیج دیاگیا 1978 تک گلبدین حکمتیار پروفیسر مجددی، برہان الدین ربانی ، پیر گیلانی ، عبدالرب رسول سیاف کو باقاعدہ جنگجو تنظیمیں دے دی گئی اوران کو اپنی تنظیموں کا سربراہ بنایاگیا جب یہ لوگ افغانستان فتح کرچکے تو انہوں نے پاکستان کو مداخلت سے روکا یعنی Strategic Assets اس پالیسی کے بنانے والوں کے کام نہ آئے ۔ یہاں بھی سبق نہ سیکھاگیا اورایک اوراثاثہ ” طالبان “ کی صورت میں بنایا گیا جو کہ زیادہ جارحانہ اور افغانستان کیلئے تباہ کن ثابت ہوا ۔یہی پر طالبان القاعدہ اتحاد کی بنیاد پڑی ۔اور یہ اتحاد افغانستان کاحکمران بنا۔
    Strategic Depth پایسی کے نتیجے میں پورا ملک 9/11 سے پہلے ہی دہشت گردی کی لپیٹ میں آچکاتھا ۔ شعیہ سنی فسادات اور ایک دوسرے پر حملے معمول بن چکے تھے ۔ پاکستان میں خود کش حملے 1993 سے شروع ہوئے ۔ احمد شاہ مسعود کو جس خود کش حملے میں مارا گیا وہ 9/11 سے صرف ایک دن پہلے ہوا ۔ ہندوستان اور افغانستان تو پہلے ہی حملے کی زد میں رہے ۔ خود پاکستان میں مذہبی انتہاپسندی پروان چڑہی اور فرقہ واریت شروع ہوئی۔ شیعہ کے ساتھ بریلوی بھی ان حملوں کانشانہ بنے ۔
    یہ ایک تاریخی حقیقت ہے کہ 1978 میں افغانستان کے سوشلسٹ انقلاب کی مخالفت میں پاکستان کے ساتھ ساتھ امریکہ، چین، عرب ممالک، یورپ، وغیرہ افغانستان پر عالمگیریلغار میں کامیاب ہوئے۔ صرف دینی مدرسوں کے قیام کے لیے 24 ارب پیٹرو ڈالر دئے گئے ہزاروں کی تعداد میں مدرسے کھولے گئے۔ جنگ جویانہ مقاصد کو جہاد کا نام دیا گیا۔ اس پورے دور نے ملا ، ملٹری اور ملیٹنٹ کے پہلے سے موجود تکون کے لیے ایسا کام کیا جیسے فصل کے لیے کھاد اور پانی یا آگ کے لیے پٹرول اور مٹی کا تیل ۔
    افغانستان میں مندرجہ بالا دو عناصر کی حکومت میں پھر چیچنیا، ازبکستان، سنکیانگ، غرض پورے جہاں کے دہشت گردیہاں آئے اور افغانستان دہشت گردوں کا مرکزبنا اس مرکزسے دنیا کے کئی ممالک متاثر ہوتے رہے اس بات میں بھی کوئی شک نہیں کہ یہ سارے عناصر اب فاٹا اور ملک کے دوسرے حصوں میں موجود ہیں اس حقیقت کو تسلیم کرنے میں کوئی عار نہیں کہ آج کا فاٹا ان عناصر کا مقبوضہ علاقہ ہے اور یہ حقیقت بھی نہیں جھٹلائی جاسکتی کہ جنوبی پنجاب اور مریدکے آج کے دہشتگردی میں بہت بڑی اہمیت کامقام رکھتے ہیں۔
    موجودہ دہشت گردی کے جنگ زدہ علاقوں اور ملک کے غیر متاثرہ یا کم متاثرہ علاقوں کے لوگوں کے ذہنوں میں حالات کی متضاد یا مختلف تصاویر:
    فاٹا اور ملاکنڈ دہشت گردی کے سب سے زیادہ متاثرہ علاقے ہیں صوبہ پشتون خوا کا کوئی شہر یا گاﺅں ایسا نہیں جو دہشت گردی سے متاثر نہ ہوا ہو یوں تو پورے ملک بلکہ ساری دنیا میں دہشت گردی کے اثرات پائے جاتے ہیں جنوبی پنجاب یا مرید کے کے بارے میں بھی حقیقت حال سب پر واضح ہے پنجاب میں دہشت گری کے واقعات بھی ہوتے رہے ہیں تاہم فاٹا اور پشتون خوا صوبہ کے عوام موجودہ دہشتگردوں اور ان کی دہشتگردی کے سائے میں زندگی گزار رہے ہیں مختلف حوالوں سے دہشت گردی کی حقیقت، وجوہات، فوجی اپریشنز، ڈرون حملے اور غیر ملکی ہاتھ وغیرہ کے حوالے سے ان علاقوں کے لوگوں اور باقی ملک کے رہنے والوں کے تصورات الگ الگ ہیں۔

    ایسا کیوں ہے؟
    اس کی ایک وجہ تو قدرتی ہے وہ یہ کہ پشتو کی کہاوت ہے کہ ”جلن اسی جگہ ہوتی ہے جہاں آگ لگی ہو“ اس کی دوسری وجہ حکومتی پالیسی ہے جنرل مشرف کے دور حکومت میں جو میڈیا پالیسی بنی اور اس پالیسی کے نتےجے میں جن لوگوں کو دہشت گردی کے حوالے سے میڈیا پر لایاگیا وہ خود دہشت گردوں کے حمایتی یا پروردہ رہے ہیں۔ اس میں چند ریٹائرڈ جرنیلوں اور چند صحافی/ تجزیہ نگاروں کے نام ہی کافی ہیں۔ اسی کے نتیجے میں ملک میں رہنے والے وہ عوام جو اس جنگ سے متاثر نہیں تھے ان کے ذہنوں میں مسلسل آٹھ سال ایک مخصوص سوچ ڈال دی گئی۔ جنگ کے متاثرہ علاقے کے عوام چونکہ خود روزانہ کے حالات دیکھتے رہے اس لیے ان کی سوچیں دہشت گردی کے اس جنگ کے حوالے سے مختلف ہےں۔ اس کی چند مثالیں دینا ضروری ہے:
    ٭ ملکی میڈیا پر یہ تاثر دیا جاتا رہا ہے کہ موجودہ دہشت گردی دراصل روس کے خلاف جہاد کا تسلسل ہے۔ حقیقت یہ ہے کہ روس کے خلاف جنگجوﺅ ں میں تمام کے تمام لیڈران اور ان کی پارٹیاں اب افغانستان میں باقاعدہ سیاست میں حصہ دار ہیں وہ ان دہشت گردوں کے سخت ترین مخالف ہیں ان میں پروفیسر مجددی ، برہان الدین ربانی، پیرگیلانی، عبدالرب رسول صیاف، احمد شاہ محسود مرحوم کی پارٹی، رشید دوستم وغیرہ شامل ہیں۔
    ٭ روس کے خلاف لڑنے والوں میں صرف دو لیڈر گلبدین حکمت یار اور جلال الدین حقانی آج کے دہشت گردوں میں بھی حصہ دار ہیں۔ گلبدین حکمت یار کی پارٹی تقریباً مکمل طور پر ختم ہوچکی ہے صرف ان کا ایک کمانڈر کشمیر خان اور چند افراد ہی ان کے ساتھ رہ گئے ہیں۔ حقانی پہلے ہی طالبان میں شامل ہوچکے تھے۔
    ٭ ازبک ، چیچن، سنکیاگ، سوڈان، یا دوسرے غیر ملکی افغانستان میں طالبان حکومت کے دور میں آئے تب روس جاچکا تھا ڈاکٹر نجیب کی حکومت ختم ہوچکی تھی۔ ان لوگوں کا روس کے خلاف جنگ کے دوران وجود ہی نہیں تھا۔
    ٭ پاکستان میں پیدا کردہ تنظیمیں سپاہ صحابہ، لشکر جھنگوی، لشکر طیبہ، جیش محمد، لشکر اسلام، انصار لاسلام، امر بالمعروف ، تحریک نفاذ شریعت محمد ی وغیرہ میں سے کسی تنظیم کا بھی روس کے خلاف لڑائی میں کوئی عمل دخل نہیں تھا۔
    ٭ افغانستان کے طالبان اور اس کے بعد پاکستان کے طالبان کا بھی اس جنگ سے کوئی تعلق نہیں تھا۔ان حقیقتوں کے باوجود میڈیا پر پروپیگنڈہ کیا جاتا رہا کہ موجود دہشت گرد، روس کے خلاف جنگ کا حصہ تھے اور وہ تیس سالوں سے قبائلی علاقوں میں آباد ہیں انہوں نے یہاں رشتے کیے اور یہ انہی قبائلی علاقوں کے لوگ بن گئے ہیں۔ حالانکہ قبائلی علاقوں میں موجود خیل اور قبیلے کے علاوہ اگر کوئی پناہ کے لیے صدیاں بھی گزاردے تو یہاں کے باسی تسلیم نہیں کئے جائینگے۔محسود قبیلہ وہ واحد قبیلہ ہے جس نے روس کے خلاف جنگ کے دوران کسی کو بھی اپنے علاقے میں پناہ نہیں دی ۔
    ٭ ایک اور غلط بیانی جو کہ میڈیا پر چلتی آئی ہے وہ یہ ہے کہ حکومت وقت نے ہمیشہ غیر ملکیوں کی تعداد ایک سو یا دو سو بتائی۔ حالانکہ فاٹا میں گیارہ ہزار ازبک، چھ ہزار عرب، اور ۹ ہزار پنجابی بھی موجود ہیں۔ وزیرستان سے لے کر سوات تک پختون دہشت گردوں کی کل تعداد 4 ہزار سے زیادہ نہیں اس کے باوجود تمام طالبان کو پختون اور تمام پختون قوم کو دہشت گرد ثابت کرنے کی مذموم کوششیں جاری ہیں۔
    ٭ فوجی اپریشن ،معاہدوںاور فوج اور طالبان کی لڑائی کے متعلق بھی انہیں عوامل کی وجہ سے متاثرہ اور باقی ملک کے عوام کے خیالات بالکل مختلف ہےں۔
    مثلاً: جنگ زدہ علاقوں کے عوام کا یہ متفقہ تاثر ہے کہ فوج اور طالبان ایک دوسرے کے مخالف نہیں بلکہ بہترین اتحادی ہیں۔ اس کا ثبوت یہ ہے کہ فاٹا میں کل 17 فوجی اپریشن ہوئے لیکن ان اپریشنوں کے باوجود دہشت گردوں کی قیادت کیوں ختم نہیں ہوئی ؟ بلکہ حقیقت یہ ہے کہ فاٹا میں کئے جانے والے ان فوجی اپریشنوں میں کسی اپریشن میں بھی دہشت گردوں کی پہلی ،دوسری اور تیسری درجے کی قیادت کا ایک بھی لیڈر نہ تو قتل ہوا نہ زخمی اور نہ ہی گرفتار ہوا۔ حد تو یہ ہے کہ ان دہشت گردوں کے بڑے لیڈروں میں چند ایک کی موت کی خبریں دو، دو، یا تین دفعہ نشر کی گئیں۔ جبکہ وہ آج بھی زندہ ہیں ان میں اکرام الدین، شاہ دوران، اور ابن امین جیسے کمانڈر شامل ہیں ۔ سوات میں تین دفعہ آئی ایس پی آر کی طرف سے خبر چلائی گئی کہ مولانا فضل اللہ فوج کے نرغے میں ہے۔ لیکن ایک ماہ بعد اسی میڈیا کے ذریعے بتایا گیا کہ موصوف افغانستان جا چکے ہیں۔ فضل اللہ کے ساتھی مسلم خان، ہارون، اور محمود گرفتار ہوئے 6 ماہ گزرگئے کچھ پتہ نہیں کہ ان کا کیا بنا۔ ہم نے تو ماضی میں یہ دیکھا کہ صوفی محمد گرفتار ہوا اور پھر چند سال بعد رہا ہوا۔ صوبے کی بہادر پولیس نے 38 دہشت گرد جن میں وہ دہشت گرد بھی شامل تھے جو خود کش جیکٹ سمیت پکڑے گئے پھر ان دہشت گردوں کو خفیہ والے مزید تفتیش کے بہانے اپنے ساتھ لے گئے اور پھر جس دن پرویز مشرف نے ایمرجنسی پلس نافذ کی ایک چھوٹی خبر کے ساتھ باعزت رہا کیے گئے یہی وجوہات ہیں کہ متاثرہ علاقے کے لوگ نہ فوجی اپریشنوں سے مطمئن ہیں اور نہ ہی ان کے وعدے وعید سے۔
    ٭ متاثرہ علاقوں کے لوگ یہ مطالبہ کرتے ہیں کہ ان دہشت گردوں کو چوکوں اور چوراہوں میں اسی طرح قتل کیا جائے جس طرح یہ معصوم عوام حتی کہ شبانہ جیسی عورت کو قتل کرتے تھے۔ متاثرہ علاقوں کے عوام حتمی اور حقیقی فوجی اپریشن کا مطالبہ کرتے ہیں اور فوجی ڈرامے ختم کرنے کا مطالبہ کرتے ہیں یہاں کے عوام ان دہشت گردوں کے ساتھ کسی قسم کے مذاکرات کے حامی نہیں جبکہ ملک کے باقی عوام اپریشن بند کرنے اور مذاکرات کی بات کرتے ہیں۔
    ٭ ڈرون ایک اہم مسلہ ہے متاثرہ علاقوں کے لوگ اگر دہشت گردی کے خلاف جنگ میں کسی واحد چیز سے مطمئن ہیں تو وہ ڈرون ہے۔ وزیرستان کے لوگ کہتے ہیں کہ ڈرونز نے کبھی بے گناہ لوگوں کو نہیں مارا۔ بلکہ وزیرستان کے کچھ لوگ ڈرونز کو ابابیل کہتے ہیں۔ میڈیا کا کچھ حصہ ، کچھ ریٹائرڈ جنرلز، مخصوص تجزیہ نگار/ صحافی اور طالبان کی ہمدرد چند پارٹیاں پورے ملک میں ایک اور ہی تاثر پھیلا رہے ہیں۔
    ٭ یہی حال بیرونی ہاتھ کے ملوث ہونے کا ہے ۔ موجودہ دہشت گردی میں شامل مذکورہ تنظیموں اور فوج کے علاوہ متاثرہ علاقوں میں یا تو بے بس عوام ہیں اور یا کچھ علاقوں میں وہ بھی ہجرت کرچکے ہیں۔ تو سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ ان تنظیموں میں سے کونسی تنظیم ایسی ہے جو پاکستان کی اسٹبلشمنٹ نے نہ بنائی ہو اور ان میں پھر وہ کونسی تنظیم ہے جو کہ غیر ملکی ایجنٹ بن گئی ہے۔ اور اگر ایسا ہے بھی تو پاکستان کی حکومت اقوام متحدہ میں یا سفارتی سطح پر ثبوت کے ساتھ اس ملک اور اس تنظیم کا ذکر کیوں نہیں کرتی۔
    البتہ ایک امکان موجود ہے کہ وہ دہشت گرد شخص جس کے ہاتھ میں کچھ خودکش ہوں وہ کسی بیرونی ملک سے رقم کے بدلے فروخت کردے تاہم یہ عمل تنظیمی طور پر ممکن نہیں ہاں مستقبل میں یہ امکان ضرور ہے کہ اگر یہ افراتفری اسی طرح رہی تو واقعی نہ صرف بیرونی ممالک اس میں کود پڑینگے بلکہ یہ امکان بھی ہے کہ خود اقوام متحدہ اپنی امن فوجوں کے ساتھ ان علاقوں میں آجائے۔
    کانفرنس کے تمام شرکاءاس بات پر متفق تھے کہ فاٹا میں موجودہ فوجی اپریشنوں کی ناکامی اور روز بروز فروغ پاتی دہشت گردی اس وجہ سے نہیں ہے کہ پاکستان کی فوج میں اہلیت کی کمی ہے بلکہ سب کا متفقہ جائزہ یہ تھا کہ یہ سب کچھ ارادا تاً ہورہا ہے اور ہماری اسٹبلشمنٹ اپنے فوجی اثاثوں کو کسی صورت بھی ضائع کرنے کو تیار نہیں۔
    موجودہ دہشت گردی میں دوست اور دشمن کا تعین:
    کانفرنس اس بات پر متفق ہے کہ ہر وہ فرد، لکھاری، دانشور، ادارہ، تنظیم، یا ملک جو کہ ان دہشت گردوں کا مخالف ہے اور دل سے اس کا خاتمہ چاہتا ہے وہ ہمارا دوست ہے۔
    ہر وہ شخص، تنظیم، ادارہ، پارٹی، یا ملک جو کہ دہشت گردوں کو پناہ کے لیے جگہ دے ،مالی امداد دے ،ان کی حمایت کرے، ان کے لیے مختلف بہانوں سے وقت کو طول دے یا اصل مسلے کی بجائے غیر اہم مسلوں کو مسلہ بنائے اور اصلی مسئلے کو لوگوں کی نظروں سے اجھل کرنے کی کوشش کرے وہ دہشت گردوں کا دوست اور اس کانفرنس کے شرکاءکی نظر میں پشتون، پاکستان اور انسانیت کا دشمن ہے۔
    کانفرنس میں پاکستان میں موجود مختلف سیاسی پارٹیوں کو مندرجہ بالا پیمانے پر ناپا گیا۔ کانفرنس کے شرکاءمتفقہ طور پراس نتیجہ پر پہنچے کہ جماعت اسلامی، جمیعت العلماءاسلام کے دونوں دھڑے، جماعت اہلحدیث ساجد میر گروپ، تحریک انصاف، میڈیا کا ایک مخصوص حصہ اور اسٹبلشمنٹ کا ایک حصہ دہشت گردوں کے ہمدرد اور حامی ہیں۔
    بلوچستان کی قوم پرست پارٹیاں دہشت گردوں کی کھل کر مخالفت کرتے ہیں اور ڈرون کے حامی ہیں وہ ہمارے دوست ہیں۔
    پاکستان مسلم لیگ ن اور ق بنیادی طور پر پنجاب کی پارٹیاں ہیں اور اسٹبلشمنٹ کے قریب ہیں یہ دونوں پارٹیاں دہشت گردی کے بارے میں واضح موقف اختیار کرنے سے عاری ہیں۔ کانفرنس کی نظر میں یہ دونوں پارٹیاں ہماری واچ لسٹ پر ہیں ۔
    ایم کیوں ایم خود ایک دہشت گرد تنظیم ہے گو کہ وہ دہشت گردوں کی مخالف ہے لیکن ہماری نظر میں ان کی مخالفت کی وجہ یہ ہے کہ ان کو اپنی دہشت گردی ختم ہونے کا ڈر ہے۔
    الف: دہشت گردی سے نجات کیلئے سیاسی سفارشات:۔
    (1) کانفرنس کا متفقہ فیصلہ ہے کہ سٹر ٹےجک ڈےپتھ پالیسی موجودہ دہشت گردی کی وجہ بھی ہے اور اس کا حتمی نتیجہ بھی ۔ اس پالیسی نے پاکستان کو جتنا نقصان دیا وہ NRO یاقرضوں کی معافی سے ہزاروں گنا زیادہ ہے اس پالیسی کے نتیجے میں لاکھوں افراد قتل اورزخمی ہوئے ۔ اس پالیسی نے پاکستان کو کوئی فائدہ نہیں دیا بلکہ ایک ایسی دلدل میں پھنسا دیا ہے کہ جس کی وجہ سے ملک کے وجود کو خطرات درپیش ہوگئے ہیں ۔ کانفرنس اس نتیجہ پر پہنچی کہ اگر امریکہ، نیٹو یا ایساف کو افغانستان میں شکست بھی ہوجائے اور اس کے نتیجہ میں دہشت گرد افغانستان میں حکومت بھی بنالیں تو تب بھی دہشت گردوں کا نظریہ اور سوچ ،پاکستان کے عوام کو کسی صورت قابل قبول نہیں۔صرف یہی نہیں بلکہ افغانستان میں ان کی فتح کے بعد پاکستان ان کا پہلا حدف ہوگا۔ لہٰذا ےہ پالیسی ہر لحاظ سے پاکستان کش پالےسی ہے جس کا کوئی بھی نتےجہ ملک کے مفاد مےں آ ہی نہےں سکتا۔ لہٰذا اس پالیسی کو علی اعلان ختم کردیا جائے ۔
    (2) اس پالیسی کے بنانے والوں پر عدالتی کمیشن کے ذریعے مقدمہ چلایا جائے ۔
    (3) افغانستان میں مداخلت بند کی جائے ۔ اوراس کوایک ہمسایہ اورخود مختار ملک کے طور پرزندہ رہنے کاحق دیا جائے ۔
    (4) فاٹا، صوبہ پختونخوااور ملک کے دیگر حصوں میں دہشتگردوں کے مراکز اور اڈے جڑ سے اکھاڑ دیئے جائیں مثلاً باڑہ، درہ آدم خیل، میچنی، میرانشاہ ، میرعلی، اورکزئی، کرم ایجنسی، اور جنوبی پنجاب وغیرہ۔ دہشت گردوں کے خلاف حتمی مختصر اور ٹارگیٹےڈ آپریشن کئے جائیں ۔ نیم دلی سے کئے گئے آپریشن سے فائدے کی بجائے نقصان ہوا آپریشن کے سلسلے میں ماضی کی غلطیاں نہ دھرائی جائیں ۔
    (5) افغانستان میں نیٹو اورایساف افواج اقوام متحدہ کے فیصلے کے تحت آئے ہیں یہ افواج اس وقت تک افغانستانمیں رہیں جب تک دہشت گردی کا مکمل خاتمہ نہ ہو ۔ افغانستان میں بیرونی مداخلت ختم نہ ہو اور افغانستان اپنے پولیس، فوج اوراداروں کی بنیاد پر خود مستحکم نہ ہو ۔ البتہ اس کا ایک واضح ٹائم فریم ضروری ہے ۔ امریکہ ان دہشت گردوں کا سرپرست رہا ہے ۔ امریکہ اب بھی ان کے بارے میں دہرہ معیار رکھتا ہے ۔ جندولہ کے بارے میں امریکہ پر ان کی سرپرستی کا الزام ہے ۔ سانکیانگ کے دہشت گردوں کے بارے میں وہ زیادہ سنجیدہ نہیں ہم تمام دہشت گردوں کے مخالف ہے ۔اس لیے ہم افغانستان اور پاکستان میں دہشت گردوں کے خاتمے کے بعد ان طاقتوں کو ایک دن بھی افغانستان یا پاکستان میں رہنے کی اجازت نہیں دیں گے۔
    (6) پاکستان کی فوج آئی ڈی پیز کی رجسٹریشن، راشن کی تقسیم، تعمیرنو وغیرہ کے کام سول حکومت کو کرنے دیں اور اپنی ساری توجہ حقیقی فوجی آپریشنز پر مرکوز کرے۔
    (7) کانفرنس سعودی عرب اور دیگر عرب ممالک سے اپیل کرتی ہے کہ وہ دہشت گردوں کی مالی امداد بندکردیں۔
    (8) پاکستان میں چند سیاسی جماعتیں، میڈیا کا ایک حصہ اور اسٹیبلشمنٹ کے کچھ عناصر دہشت گردوں کے حامی اور مدد گار ہیں ۔ یہ لوگ پختون اورپاکستان دشمن ہیں یہ لوگ انسان دشمن ہیں ان کی مکمل بیخ کنی کی جائے ۔
    (9) کانسرنس نے افپاک AF-PAK عوامی رابطوں (People to People Contact)کو فروغ دینے کا فیصلہ کیا اور دونوں حکومتوں سے مطالبہ کیا جاتاہے کہ وہ اس میں رکاوٹیں نہ ڈالےں ۔
    (10) فاٹا میں دہشت گردی کی صفائی کے ساتھ ساتھ یہاں پر دہشت گردی کے نتیجے میں ہونیوالے نقصانات کا ازالہ کیاجائے ۔ فاٹا کیلئے جامع ترقیاتی پیکج ترتیب دیا جائے ۔ دہشت گردی کے خاتمے کے بعد فاٹامیں نظام کے حوالے سے کوئی پیش رفت یہاں کے عوام کی مرضی سے لائی جائے ۔
    (11) ملک میں موجود کالعدم تنظیمیں دراصل اب بھی فعال ہیں ان کے ساتھ صرف کالعدم لفظ کا اضافہ ہواہے ۔ ان تنظیموں کاعملی طورپرخاتمہ کیاجائے۔
    (12) کانفرنس مطالبہ کرتی ہے کہ پاکستان کی فوج اور خفیہ ادارے سیاست سے باز آئیں ۔ وہ صرف وہی کام کریں جن کیلئے وہ بھرتی ہوئے تھے ۔ فوج اور خفیہ اداروں کو پارلیمنٹ کے ماتحت کیا جائے اور ان کو سویلین نگرانی میں دیا جائے ۔
    (13) کانفرنس ہر منتخب حکومت کو اپنی آئینی مدت پورا کرنے کے حق میں ہے اس سلسلے میں جمہوریت کو غیر مستحکم کرنے کی ہر کوشش اورسازش کا ڈٹ کر مقابلہ کیاجائیگا ۔ پاکستان کی ایسٹیلشمنٹ مختلف بہانوں مثلاً میڈیا ٹرائیل ، بدعنوانی کے الزامات ، اقتصادی خوشحالی کی نوید اور سیاسی پارٹیوں میں تھوڑ پوڑ اور بلیک میلنگ کے ذریعے منتخب حکومتوںکو گرا تا آیاہے۔ ہم ان تمام عوامل اور کوششوں کے مخالف ہیں۔
    (14) فوجی اپریشنوں کے نتیجے میں بے گھر ہونے والے (IDP’s )لوگوں کے ساتھ اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق سلوک کیا جائے۔

    (15) کانفرنس اس بات پر متفق ہے کہ فاٹا اورشمالی پختونخوا(این ،ڈبلیو، ایف ، پی) میں آباد پختون دہشت گردی کے ہاتھوں یرغمال ہیں کیونکہ دہشت گرداور سیکورٹی اہلکار بظاہر ایک دوسرے کے خلاف فائرنگ کرتے ہیں لیکن دراصل ان دونوں کی گولیوں کا نشانہ معصوم عوام ہیں۔ پختون قوم کی 40 لاکھ آبادی اپنے گھروں سے بے گھر(IDPS) ہیں ۔ ہمارے سکول بند، روزگار ختم ہے ۔ ہمارے غم اورخوشی کے تہوار مکمل طورپر دہشتگردی کی زد میں ہیں ہمارے جرگے دہشت گردی کانشانہ بنے ۔ قبائلی علاقوں میں جرگوں اورلشکر پر پابندی ہے ۔ بندوبستی علاقوں میں جلسے جلوس ممکن نہیں ۔ پختون کے ایمل خان، دریا خان خوشحال خان نام کو تبدیل کرکے ابوزر ، ابوجندل رکھا جارہاہے یرغمالیت کے ساتھ ساتھ پختون قوم میں Arabisation ایک منظم طریقے سے جاری ہے دہشت گردی کے خلاف ساری دنیا اپنے بس کے مطابق اپنا کردار ادا کررہی ہے لیکن اس جنگ مےں سب سے زیادہ متاثرقوم اس کے خلاف اپنا موثر اور تاریخی کردارادا کرنے سے عاری ہے ۔ اس بات پر شرکاءمتفق ہیں کہ اگر پختون قوم کو دہشت گردی سے نمٹنے کیلئے موقع دیا جائے تو یہ قوم اس کے خلاف اب بھی بہادری دکھانے کی صلاحیت رکھتی ہے ۔ تجویز یہ ہے کہ اقوام متحدہ کی زیر نگرانی پاکستان میں آباد پختون قوم کے قبیلوں کا ایک نمائندہ جرگہ بلایا جائے اس جرگے میں پاکستان اوراگر ہوسکے تو افغانستان کی حکومتوں کی نمائندگی بھی ہو ۔ اس جرگے کا صرف ایک ہی موضوع ہو کہ ” دہشت گردی سے نجات کیسے حاصل کی جائے “ اس میں روایتی پختون جرگوں کی بجائے اولسی پختون جرگوں کی طرز پر جس میں قوم کے تمام خیل اور قبیلے شامل ہوں دو یا تین دن اس مسئلے پر بحث کی جائے ۔ ( یہ بات غیرپختون کو سمجھانا ضروری ہے کہ ایسے جرگے دراصل ورکشاپ ہی کی ایک آزمودہ اورصدیوں سے عمل شدہ شکل ہے ) ہمیں یقین ہے کہ یہ جرگہ دہشت گردی کے خلاف اب تک تمام دنیا کی طرف سے اٹھائے گئے اقدامات سے بھی زیادہ موثرہوگا اور اگر یہ تجربہ کامیاب ہوا تو یہ عمل افغانستان کے پختونوں میں بھی دھرایا جائے ۔
    (16) کافرنس کا یہ متفقہ تجزیہ ہے کہپہلے ذکر شدہ عوامل اور حقائق کی بدولت دہشت گردی روز بروزبڑھ رہی ہے اورپختون قوم اقتصادی، سماجی، تعلیمی، نفسیاتی طور پر مکمل مایوسی کی طرف جارہی ہے اگر آئندہ چند مہینوں میں دہشت گردی کا خاتمہ نہ ہوسکا یا یہ مزید بڑھی تو اس قوم کو یقین آجائیگا کہ پاکستان کاکوئی ادارہ ان کو دہشت گردی سے نجات نہیں دلا سکتا۔ لہٰذا وہ مجبورا اقوام متحدہ سے امن فوج کا مطالبہ کریں گے یا اقوام متحدہ خود بھی امن فوج کے ساتھ یہاں آسکتا ہے ۔ اتنے انتہائی قدم سے بچنے کیلئے ضروری ہے کہ دہشت گردی کو آئندہ تین مہینوں میں سنجیدگی سے ختم کیاجائے ۔ کانفرنس کے شرکاءاس بات پر متفق تھے کہ اگر ان غفلتوں کے نتیجے میں اقوام متحدہ کی امن فوج علاقے میں اتری یا علاقے کے نقشے کے بدلنے کی صورت حال آئی یا پاکستان کو تباہی کے کنارے پر لایا گیا تو اس کی ذمہ دار پاکستان کی اسٹبلش منٹ ہوگی۔
    (ب) دہشت گردی سے نجات کیلئے اقتصادی تجاویز:
    فاٹا اورصوبہ پختونخوا پاکستان میں پچھلے 62 سالوں سے محروم علاقے ہیں۔ قدرتی وسائل سے مالامال اور سب سے دولت مند قوم پاکستان میں سب سے غریب، سب سے زیادہ ان پڑھ، سب سے زیادہ بے روزگار، اور شاید دنیا کی سب سے بڑی مسافر قوم میں تبدیل ہوگئی ہے۔ پھر موجودہ د ہشت گردی نے ان کی رہی سہی کسر بھی ختم کردی۔ دہشت گردی کو مات دینے کے لیے اس قوم کی محرومیوں کو دور کرنا اور ان کے جائز اقتصادی مسائل کا حل کرنا بے حد ضروری ہے۔
    1 دہشت گردی کے نام پر ملنے والی امداد فاٹا ¾ صوبہ پختونخوا اور دہشت گردی سے متاثرہ دوسرے علاقوں پرخرچ کی جائے ۔ ماضی کی طرح یہ امداد دوسرے صوبوں اور محکموں کونہ Divert کی جائے ۔
    2۔ فاٹا کیلئے) Reconstructive Oppurtunities Zones Rozs (کو عملی شکل دی جائے اور فاٹا کے عوام کو اس کا مالک بناےا جائے اور ٹیکنیکل نالج Know how) (Technical فراہم کیاجائے ۔
    3۔ صوبہ پختونخوا کو جنگ زدہ صوبہ قرار دیکر تمام ٹیکس اور یوٹیلیٹی بل تب تک معاف کئے جائیں جب تک دہشت گردی ختم نہیں ہوجاتی۔
    4۔ فاٹا میں دہشت گردی سے ہونیوالے نقصانات کا ازالہ کیا جائے اوروہاں ایک جامع ترقیاتی پیکج دیا جائے تاکہ ماضی کی محرومیوں کا ازالہ کیاجائے ۔
    5۔ فاٹا اور صوبہ میں اقتصادی ضروریات اور منصوبہ بندی کا ڈیٹا بیس بنایا جائے۔
    6۔ چھوٹے، درمیانے اور بڑی صنعتوں کے لیے یہاں کے لوگوں کو تکنیکی علم اور ترقی کے جامعہ منصوبے بنائے جائیں۔
    7 ۔ فاٹا اورصوبے کو اپنے وسائل پانی، بجلی، تمباکو، گیس اور پیٹرول پر حق حاکمیت اورحق ملکیت دیا جائے ۔
    8 ۔ پاکستان میں چار حصوں میں تقسیم پختونوں کو ایک متحدہ صوبے میں لا کر مکمل قومی خود مختاری دی جائے اور صوبے کے وسائل کے سلسلے میں جو رقم پاکستان کے ذمے قرض ہے وہ ان کویکمشت ادا کی جائے۔
    9 ۔ صوابی ، شکر درہ ، لکی مروت اور ڈیرہ اسماعیل خان کے لیے اباسین سے نہریں دی جائیںتاکہ اس علاقے کی 80فیصد زمین زیر کاشت آسکے اور اس طرح پاکستان حقیقی معنوں میں ایک زر عی ملک بن سکے۔
    10 ۔ صوبے میں بجلی کی پیداوار بڑھانے کے مجوزہ منصوبوں کو عملی جامہ پہنایا جائے۔
    (ج) دہشت گردی سے نجات کیلئے تعلیم اورآگاہی کے متعلق تجاویز:۔
    اس بات میں کوئی شک نہیں کہ دہشت گردی کو شکست دینے کے لیے تعلیم اور آگاہی بے حد ضروری ہے۔ دہشت گردی ایک عالمگیر مسئلہ ہے لیکن یہ مسئلہ پاکستان کا سب سے پہلا مسئلہ بن چکا ہے۔ پاکستان کے حکمران برملا کہتے ہیں کہ پاکستان حالت جنگ میں ہے۔ لیکن بدقسمتی سے دہشت گردی کے خلاف اعلان جنگ نہیں ہوا۔ چھوٹے چھوٹے فوجی اپریشن اور وہ بھی باہمی ربط کے بغیر مسئلے کو حل کرنے کی بجائے مزید بگاڑ کا سبب بن رہے ہیں اگر تفصیل سے دیکھا جائے تو ہر آنے والے دن دہشت گردی کم ہونے کی بجائے روز بہ روز بڑھتی چلی جارہی ہے۔
    تجاویز:
    میڈیا:
    ٭ پاکستان کی حکومت دہشت گردی کے خلاف منظم میڈیا کمپین ترتیب دے اور اس پر منظم طریقے سے عمل کیا جائے۔ دہشت گردی کے خلاف اور امن کے حق میں ڈراموں، فلموں، پمفلیٹ، پوسٹر، مباحثوں، مشاعروں کو ترتیب دیا جائے۔
    ٭ پاکستان کی میڈیا کو بھی دہشت گردی کے خلاف جنگ پر آمادہ کیا جائے۔ میڈیا میں دہشت گردوں کے حمایتی پروگراموں کو ختم کیا جائے۔ میڈیا کو اس بات پر آمادہ کیا جائے کہ وہ نان ایشو کو ایشوبنانے کی بجائے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں حصہ لے کر اس ملک کو بچائیں۔ دہشت گردی کے خلاف بنائے گئے لشکر اور وہ لوگ اور پارٹیاں جو کہ ان کے خلاف برسرپیکار ہیں ان کو زیادہ Space دیا جائے۔ میڈیا پر دہشت گردوں کو مجاہد کہنے اور ثابت کرنے کی تمام مذموم کوششوں پر پابندی لگائی جائے۔
    تعلیم اور مذہبی مدارس:
    1۔ تعلیم کا بجٹ بڑھایا جائے۔
    2۔ پاکستان میں تعلیم کو بنیادی انسانی حق تسلیم کیا جائے۔
    3۔ میٹرک تک تعلیم مفت اور لازمی کی جائے ۔
    4۔ اعلیٰ تعلیمی اداروں میں داخلے میرٹ کی بنیاد پر ہوں۔ تاہم غریب او ر پسماندہ علاقوں کے لیے بھی گنجائش رکھی جائے :۔
    5۔ تعلیمی اداروں میں ”شرکتی “طریقے سے تعلیم دی جائے کیونکہ یہی جدید طریقہ ہے ۔
    6۔ تعلیمی اداروں میں جسمانی سزائے مکمل طور پر ختم کیا جائے ۔
    7۔ تعلیم کا نصاب ایسے بنایا جائے کہ اس کے ذریعے طالب علم ملک کے بہتر شہری اور انسان بن سکےں۔
    8۔ جدید او ر سائنسی علوم تحقیق اور تخلیق کی بنیاد پر پڑھائے جائیں ۔
    9۔ تعلیمی اداروں میں لبارٹریز اور لائبریرز کا قیام لازم ہو ۔
    10۔ تعلیم میں امن برداشت اور جمہوریت پر خصو صی توجہ دی جائے اور ان خصوصیات کی حامل شخصیات کی تاریخ ان کی قربانیوں اور اس قسم کے واقعا ت کو اجاگر کیا جائے۔
    a11۔ نصاب میں نفرت ، تنگ نظری کے چےپٹر ، شقیں اور غیر اسلامی او ر خود ساختہ جہاد ختم کیا جائے ۔
    11 b ۔ عورتوں کے خلاف صنفی امتیاز ختم کیا جائے
    12۔ وہ تمام دینی مدرسے جن کا دہشت گردوں سے تعلق ہے ان کو فوراً بند کیا جائے دو تمام مدرسے جو کہ دہشت گردی اورخود کش حملوں کے خلاف فتویٰ نہیں دیتے ان کو اس پر آمادہ کیا جائے ۔
    13۔ روایتی مذہبی مدرسوں میں اصلاحات کی جائیں اور ان کو حکومت کے سامنے جواب دہ بنایا جائے ۔
    14۔ ملک میں فرقہ واریت اور مذہبی منافرت کو دہشت گردی قرار دیا جائے اور ان میں ملوث مجرموں کو سزائیں دی جائیں۔
    15۔ ملک میں آباد قوموں کی قدیم تاریخ اور اس کے بعد کی بڑی تبدیلیاں نصاب کا لازمی جز ہو ۔
    16۔ نصاب تعلیم میں پاکستان کے پانچو ں قوموں کی تاریخ ، قومی ،علاقائی اور بین الاقوامی شعور دلایا جائے ۔
    17۔ تعلیم میں جنسی اور صنفی برابری کو یقینی بنایا جائے اور اس کا درس دیا جائے ۔
    18۔ صحت مند غیر نصابی سرگرمیوں کو لازمی اور یقینی بنایا جائے ۔
    19۔ استاد اور والدین کونسل ہر تعلیمی ادارے میں لازمی ہونا چاہیے ۔
    20۔ طلبہ یونین کو بحال کیا جائے ، کالجوں اور یوینورسٹیوں میں لیٹرری ، کلچرل او ر بزم ادب سوسائٹیوں کا قیام لازم قرار دیا جائے ۔
    ( د) دہشت گردی سے نجات کے لیے ثقافتی تجاویز ۔
    پشتون قوم ایک مضبوط اور چھ ہزار سالہ قدیم ثقافت کی امین ہے۔ پشتون ثقافت اور سماج موجودہ دہشت گردی کا خصوصی حدف ہیں۔ قبائلی علاقوں میں جرگہ، لشکر، اجتماعی ذمہ داری اس علاقے کے لوگوں کے سماج اور ثقافت کے تین بنیادی ستون رہے ہیں۔ دہشت گردی کے نتیجے میں ان ستونوں کو بڑے منظم انداز سے گرایا گیا جس سے یہاں کا معاشرہ دہشت گردی کے سامنے ریت کی دیوار ثابت ہوا اب بھی اگر ہم اس قوم کو ان کا اپنا سماج اور اپنی ثقافت واپس دے سکیں تو ہم دہشت گردی کے خلاف آدھی جنگ جیت جائیں گے۔
    1۔ پختون معاشرے میں سماجی اداروں یعنی حجرہ ، جرگہ اور لشکر کو نئی جہت اور زندگی دی جائے۔
    2۔ ہر ضلع کی سطح پر آرٹس کونسل تشکیل دیے جائیں ۔
    3۔ ہر ضلع میں کمیونٹی سنٹر بنا یا جائے ۔
    4۔ تمام اضلاع میں پریس کلب کی طرح پشتو لیٹرری ا ور کلچرل سنٹر قائم کیا جائے ۔
    5۔ صوبہ اور فاٹا میں پہلے سے موجود ادبی تنظیموں کی مدد کی جائے اور امن مشاعروں کو یہاں پر ترتیب دیا جائے ۔
    6۔ تمام غیر قانونی FMریڈیوچینلز کو بند کیا جائے اور مجرموں کو کیفر کردار تک پہچایاجائے ۔
    7۔ وطن میں امن ، ترقی اور پشتون ثقافت کو فروغ دینے کے لیے سرکاری سطح پر FMریڈیو چینل شرو ع کیے جائیں۔
    8۔ اقوام متحدہ کے اصول کے مطابق پرائمری تک تعلیم مادری زبانوں میں دی جائے ۔
    9۔ دہشت گردی کے ہاتھوں متاثرہ فنکاروں کی ہنگامی امدا د کی جائے اور خواتین فنکاروں کی امداد پر خصوصی توجہ دی جائے۔
    10۔ نشتر ہال کو فور ی طور پر ادبی سرگرمیوں کے لیے کھول دیا جائے۔
    11۔ کالج اور یونیورسٹیوں میں فائن آرٹس ڈیپارٹمنٹس کھولے جائے اور تعلیمی اداروں میں فنونِ لطیفہ کو خصوصی فرو غ دیا جائے ۔
    12۔ پاکستانی میڈیا پر پشتون قوم کو پسماندہ ، جاہل ، انتہا پسند اور دہشت گرد دکھائے جانے کا مذموم عمل فوراً بند کیا جائے اور اس قوم کے حقیقی تاریخ اور کلچرل کو اجاگر کیا جائے ۔
    13۔ پختون قوم کا اپنا قومی ٹی وی چینل شرو ع کیا جائے۔
    14۔ وہ تمام کلچرل کار گزاری فور ی طور پر ختم کی جائے جس سے انسان ا ور خصوصاً خواتین کے حقوق متاثرہوتے ہو ۔
    15۔ صوبے اور فاٹا میں تاریخی ، ادبی اور سیاسی شخصیات سے موسوم موزیم بنائے جائیں ۔ مثلاً خوشحال خان خٹک ، ایمل خان مہمند، دریا خان آفرید ی، عمرہ خان ، پیر روخان ، فقیر ای پی ،باچا خان ، عبدالصمد اچک زئی ، صنوبر حسین کاکا جی الف خانہ خٹک ، ملالئی وغیرہ ۔
    16۔ پشتوکو قومی زبان تسلیم کرکے اس کوصوبے کی تعلیمی ، عدالتی اور دفتری زبان بنایا جائے ۔
    17۔ تمام سائن بورڈز مادری زبان میں لکھے جائیں۔

    http://khyberwatch.com/nandara/index.php?option=com_content&task=view&id=810&Itemid=1

  • What made you compare your declaration with Imran Khan and mentioning your superiority over PTI?
    That might look much beautiful statement, if you have written that “Only PTI and Amn Tahreek worked in this regard”…
    You should compare your movement with PMLN, ANP, MQM, PMLQ and PPP. All these parties have done any thing for this issue…

  • […] Pakistan’s government, media and think tanks, by writing that the people of KP and FATA are grateful for the drones. According to Taj, Code Pink’s quest to visit the Mahsud Tribe was pointless, because the […]