Original Articles Urdu Articles

Pakistan belongs to Captain Hammad and Mastois not Mukhtaran, Zarina and Shazia Khalid

کیپٹن حماد اور مستوئیوں کا پاکستان

ایما ڈنکن نے ضیاء دور کے اپنے قیام کا سیاسی سفرنامہ لکھتے ہوئے اپنی ہر شعبہ زندگی کے لوگوں سے ملاقاتوں کے حوالے سے اس بات کا خصوصیت سے تذکرہ کیا تھا کہ پاکستان میں باتوں اور گفتگو کے دوران جنسی طور پر ذومعنی جملوں کا استعمال انتہائی عام ہے، اورسڑکوں، چوراہوں اور بازاروں میں کھڑے مردوں کی آنکھوں سے جنسی بھوک ٹپکتی ہے. اس حوالے سے ایما نے کئی عملی مشاہدات کابھی تذکرہ کیا

اب ایما کے مشاہدات کا یہ حصہ کسی کے لئے حیران کن نہیں تھا کہ یہ ہمارے ہاں انتہا ئی عام ہے. بلکہ ہمارے ہاں تو عوامی ادب کے جدید سلسلے یعنی ایس ایم ایس میں زرداری کو گالی اور پٹھانوں کے تمسخر کے بعد سب سے پاپولر عنوان ہی جنسی تلذّذ پر مبنی لطائف کا ہے

اگر جان کی امان پاؤں توعرض کروں کہ یھاں تو مولویوں کے زور خطابت میں معاشرے کی اخلاقی گراوٹ اور مغربی تہذیب کے زوال کے دلائل بھی جنسی بے راہ روی کے واقعات کے تفصیلی اظہار اور لفظی منظر کشی کے ذریعے کرکے اپنی اور اپنے سامعین کے جنسی تلذّذ کا ساماں کیا جاتاہے

پچھلے دنوں پڑوس میں ہونے والی ایک شادی میں “بند کمرے میں پیار کریں گے” کی تکرار پر مبنی انڈین گانا شب وروزاس تسلسل کے ساتھ بجایا گیا کہ مارے جھنجھلاہٹ کے مجھے اس سمعی دلخراشی سے بچنے کے لئے خود کمرے میں بند ہونا پڑا

جب ایل یو بی پی کے فورم پر ایک وکیل دوست نے مختاراں مائی کے مقدمے کی کاروائی اورفیصلے کے مندرجات ، اس میں استعمال کی گئی زبان وبیان پر حیرت وافسوس کا اظہار کیا تو یقینا وہ سب پڑھ کر دکھ تو ہوا لیکن حیرت نہیں تھی کہ ججوں نے بھی اپنی زبان وبیان اور ذہنیت سے پاکستانی ہونے کا ثبوت دیا تھا

پرویز مشرف نے تومختاراں مائی کے معاملے کی بین الاقوامی انسانی حقوق کی تنظیموں کی طرف سے توجہ دیئے جانے پر جھنجھلاکر بڑے بے رحمانہ انداز میں کہا تھا کہ پاکستان میں شہرت حاصل کرنے کابڑا آسان نسخہ ہے کہ اپنا ریپ کرالو، مگر پرویزمشرف یہ بات فراموش کر گئے کہ ایسے افسوس ناک واقعات کی تشہیر کی بڑی وجہ ایسے واقعے کے شکار افراد کے ساتھ روارکھا جانے والا سلوک، انصاف کی عدم فراہمی اور ہر ریپسٹ کے دفاع میں مشرف اور لاہور ہائی کورٹ اور سپریم کورٹ کا بچاو کے لئے سامنے آنا ہے

اگر یہاں اعتزاز احسن کی ریاست ماں کے جیسی ہوتی، اور وہ مختاراں مائی اور شازیہ خالد کے لئے ماں کی ممتا کی چھاؤں بن جاتی، تو شاید اس ریاست کے تنخواہ داروں کو یوں منہ کھولنے اور ایسے فیصلے لکھنے کی جسارت نہ ہوتی

جب تک ایسا نہیں ہے تب تک یہ مختاراں، زرینہ مری اور شازیہ خالد کا نہیں بلکہ کیپٹن حماد اور مستوئیوں کا پاکستان کہلائے گا

About the author

Danial Lakhnavi

14 Comments

Click here to post a comment
  • The Hayatabad Rally was also addressed by “Marvi Memon aka “Ma Barker” and Dr Shahid Masood (Dr Shazia Khalid Rape Case) was also there ???

    Marvi Memon (She is the daughter of Nisar Memon and mind you Nisar Memon served as Caretaker Minister in the Caretaker Cabinet of Moeen Qureshi in 1993 and Moeen Qureshi didn’t have the Pakistani National Identity Card nor Passport but he became “Prime Minister of Pakistan – Fast Forward Marvi Memon was given the Job in ISPR after thoroughly relaxation of Law and her father was lick spittle of Pervez Musharraf.

  • Tribals looking down a barrel in Balochistan By Syed Saleem Shahzad Jan 15, 2005 http://www.atimes.com/atimes/South_Asia/GA15Df07.html

    ATol: Was Dr Shazia a Baloch?

    Bugti: Honestly, I did not know about her ethnicity until somebody told me that she was not a Baloch, but hailed from Sindh. But it is beside the point. The Punjabi cannot understand our culture and codes. What respect we give to a women, irrespective of her caste, religion or ethnicity, no Punjabi can understand. The attack on the DSG camps was pure resentment against the humiliation of a woman, and nothing more. A Punjabi cannot understand these sentiments because they are alien to these concepts of the honor of a woman. You may have read about many incidents that happened in Punjab, reported in newspapers, that on the issue of personal enmity somebody entered into the house of his enemy and brought the women of his enemy naked in public, and the Punjabi public, instead of reacting or putting clothes on the naked women, clapped. We are alien to this kind of culture, and therefore when our men learned of the heinous crime they bombed the criminals’ nest [DSG] and we say, “Get lost back to your Punjab and do whatever you like, but not on our land.”

  • Another controversy surrounds Dr Shahid Masood Saturday, June 19, 2010 http://www.dailytimes.com.pk/default.asp?page=20106\19\story_19-6-2010_pg7_4

    * Email claims TV anchor had role in forcing rape victim Dr Shazia out of country * Masood denied UK asylum for fraudulent practices – LAHORE: Noted TV show host Dr Shahid Masood is surrounded by yet another controversy after the surfacing of allegations regarding his role in forcing Dr Shazia Khalid out of the country. Shazia had alleged that an army officer had raped her in a hospital while she was serving in Balochistan in 2005. The controversy is associated with an email circulated with the name of noted defence analyst Dr Ayesha Siddiqa. The email said Dr Shahid Masood and another person, Mohsin Baig, harassed Dr Shazia, warning her that she and her family would be assassinated if they did not leave the country immediately and if the proceedings of her case were not halted in Pakistan. Dr Shazia was quoted as saying that Dr Shahid and Mohsin Baig made her rush out of the country. Daily Times tried contacting Dr Shahid a number of times for comments, but failed to get through. British refusal: Also, documents obtained from reliable sources in the British Home Office revealed that Masood was denied asylum in the United Kingdom for fraudulent practices.

    According to the documents, he travelled to the UK on April 26, 2000, with his family. Masood sought asylum in Britain on May 3, 2000, but his request was denied by the British authorities who stated, “On June 9, 2000, a decision was made to give directions for his removal from the United Kingdom as mentioned in Section 16(1) of the Immigration Act 1971 and to refuse to grant asylum under paragraph 336 of HC 395.” Paragraph 336 of HC 395 authorises British officials concerned to remove any individual who enters the UK illegally. While giving the reasons for the rejection, the authorities wrote, “He claimed to have entered the United Kingdom on April 26, 2000, using a Pakistani passport of which he was not the rightful owner, accompanied by his daughter and his sister and her two children.” Dr Shahid attached a statement of evidence form SEF3 dated May 16, 2000, asylum interview record SEF4 dated June 5, 2000, and other documents supporting his application. The document mentioned Home Office Reference Number M1045053, and Port Reference Number EDD/00/4390.

  • ستمبر میں اپنے دورہ امریکہ کے دوران اخبار واشنگٹن پوسٹ کو انٹرویو دیتے ہوئے جنرل مشرف نے جنسی زیادتی کا شکار عورتوں کے بارے مبینہ طور پر ایک ایسا غیر ذمہ دارانہ بیان دے دیا جس کی مبصرین کے مطابق کم از کم کسی سربراہ مملکت سے توقع نہیں کی جاسکتی۔ ان کا کہنا تھا کہ ’ریپ پاکستان میں اب ایک کاروبار بن گیا ہے۔ بہت سے لوگ کہتے ہیں اگر آپ امیر ہونا چاہتے ہیں یا کنیڈا کا ویزا درکار ہے تو خود کو ریپ کرالیں‘۔
    ونی، ریپ اور جنرل مشرف کا بیان
    ندیم سعید
    بی بی سی اردو ڈاٹ کام، ملتان
    وقتِ اشاعت: Friday, 16 December, 2005, 02:09 GMT 07:09 PST
    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/story/2005/12/051216_women_yearender_as.shtml
    ڈاکٹر شازیہ نے کہا کہ شناخت پریڈ کے دوران ملڑی انٹیلجینس کے ایک میجر ان کے پاس آئے تھے اور ان کو کہا کہ وہ ملک سے چلے جائیں کیونکہ ان ( ڈاکٹر شازیہ) کی جان کو خطرہ ہے۔

    ڈاکٹر شازیہ نے کہا کہ فوجی افسر نے کہا تھا کہ ان کو پتہ ہے کہ ملزم کون ہے اور وہ فوج کی حراست میں ہے اور جوں ہی دوسرے ملک پہنچیں گی تو ان کو اچھی خبر سنے کو ملے گی۔
    فوجی نے کہا ملک چھوڑ دو‘
    وقتِ اشاعت http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/story/2005/09/050907_dr_shazia_army_ra.shtml
    صدر جنرل پرویز مشرف نے اس کیس میں فوجی کپتان کی نامزدگی کو غلط اور بے بنیاد قرار دیا ہے اور اس کیس میں ہائی کورٹ کے جج کی زیر نگرانی بنائے گئے ٹریبیونل کا فیصلہ آنے سے پہلے ہی فوجی کپتان کو بے گناہ قرار دے دیا تھا۔

    تحقیقاتی ٹریبیونل نے اپنی رپورٹ میں اس بات کی تصدیق کی ہے کہ ڈاکٹر شازیہ کے ساتھ زیادتی کی گئی ہے۔
    ڈاکٹر شازیہ بیرونِ ملک روانہ
    مبشر زیدی
    بی بی سی اردو ڈاٹ کام اسلام آباد
    وقتِ اشاعت: Friday, 18 March, 2005, 17:05 GMT 22:05 PST
    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/story/2005/03/050318_dr_shazia_abroad_ra.shtml
    یہاں انصاف سے قاتل بڑا ہے‘
    حسن مجتبی’
    سان ڈیاگو، کیلیفورنیا
    وقتِ اشاعت: Tuesday, 01 March, 2005, 21:50 GMT 02:50 PST
    http://www.bbc.co.uk/urdu/miscellaneous/story/2005/03/050301_hasan_column_zs.shtml
    ’ بنے ہیں اہلِ ہوس مدعی بھی منصف بھی، کسے وکیل کریں کس سے منصفی چاہیں‘
    پاکستان کے صدر پرویز مشرف نے سوئی میں ڈاکٹر شازیہ خالد کے ساتھ ہونے والے ریپ میں مبینہ طور پر ملوث فوجی کپتان حماد کو ’ بیچارہ اور بے گناہ‘ قرار دے ہی دیا- جنرل صاحب خود ہی جج ، جیوری اور عدالت بنے اور فتویٰ بھی صادر کر دیا۔
    کہنے والے اسے ’ بنے ہیں اہلِ ہوس مدعی بھی منصف بھی، کسے وکیل کریں کس سے منصفی چاہیں‘ نہ کہیں گے تو کیا کہیں گے! اسی کو سندھی میں کہتے ہیں ’ جہان خانی انصاف‘۔

    لیڈی ڈاکٹر کے ساتھ ریپ کی تصدیق
    اعجاز مہر
    بی بی سی اردو ڈاٹ کام، کراچی
    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/story/2005/01/050128_lady_rape_confirmed_ra.shtml
    وقتِ اشاعت: Friday, 28 January, 2005, 14:58 GMT 19:58 PST
    کراچی پولیس نے سوئی میں لیڈی ڈاکٹر کی آبرو ریزی کی تصدیق کردی ہے۔
    کراچی کے پولیس سرجن نے طبی معائنے کے بعد اپنی رپورٹ میں صوبہ بلوچستان کے علاقے سوئی میں خاتون ڈاکٹر شازیہ خالد کی آبرو ریزی ہونے کی تصدیق کردی ہے۔
    پولیس سرجن نے صوبہ سندھ کے محکمہ صحت کے سیکریٹری کو ایک خط لکھا ہے جس کے ساتھ ’میڈیکل رپورٹ، کی کاپی بھی ارسال کی ہے، جس میں یہ تصدیق کی گئی
    بلوچستان کی صوبائی حکومت نے ڈاکٹر شازیہ خالد کی آبروریزی کے معاملے کی تحقیقات کے لیے ہائی کورٹ کے جج پر مشتمل تحقیقاتی کمیٹی قائم کر رکھی ہے جو متعلقہ حکام اور افراد کے بیانات قلمبند کرچکی ہے۔

  • All I can say , that it is a terrorists friendly judiciary. As in other scandal’s case like hajj or NICL , political democratic govts were to be blamed and were to earn the bad name , it was facinating for our judiciary to portray themselves as playing very aggressive role ( aLthough judicary is not doing it also in “Love for Ali” but in the ” Enemity of Moaawia “). It was the case where NGO’s were active which always have been thought as enemy to the fundametalists islamic groups , current judiciary who has the image of terrorism friendly , had to decide it this way.
    By this way our judiciary has played a role in strengthening and defending the tribal values which are once again the symbol & assets of the areas which r heavens for terrorists. Shame on such a decision. oUR JUDICIARY HAS WIDENED THEIR IDENTIFICATION BASE BY ADDIING A TAG OF RAPIST FRIENDLY JUDICIARY TO PREVIOUS TAG OF TERRORIST FRIENDLY JUDICIARY.

  • جب تک ایسا نہیں ہے تب تک یہ مختاراں، زرینہ مری اور شازیہ خالد کا نہیں بلکہ کیپٹن حماد اور مستوئیوں کا پاکستان کہلائے گا

    sad….

  • مختاراں مائی کیس میں سپریم کورٹ کی حکم سے رہا ہونے والے ملزمان نے ملتان جیل سے باھر سپریم کورٹ کے حق میں نعرے لگائے.
    چیف تیرے جاں نثار بے شمار بے شمار

  • Did we just forget Israrullah Zehri’s golden thoughts about Baloch concept of honouring women?