Original Articles

Revisiting Zulfikar Ali Bhutto’s trial – by Amna Paracha


The raging controversy that is being generated by the Government’s reference to the Supreme Court to revisit the ZAB trial evidences at least one fact, namely that the forces that ousted and murdered Zulfiqar Ali Bhutto are still all powerful and have the ability to cloud the judgment of even those who stand for justice and rule of law. They succeed in miring a question that has nothing to do with the PPP or the person of Zulfiqar Ali Bhutto in the murky waters of petty politics.

The ZAB trial is a blot on the fair name of the judiciary but also on the fair name of all those who espouse justice and rule of law. It is above all a blot on the fair name of the legal fraternity who more than anybody else has the obligation to strive for correcting the wrong that was perpetrated-not because one loves or hates Zulfiqar Ali Bhutto but because this one case alone epitomizes the greatest and most blatant miscarriage of justice and evidences the mother of all conspiracies. The case ostensibly hinged around a conspiracy to murder a non entity but the trial in fact was in itself a conspiracy to eliminate one of the greatest sons of this soil.

We owe it to posterity to expose the conspiracy and it is for this reason that it is imperative that this trial be revisited and it is for this reason too that those who oppose the idea do not want it re-visited.

The fact that the people of this country have again and again reposed confidence in Zulfiqar Ali Bhutto and have against all odds voted for his party is manifest evidence of the fact that Zulfiqar Ali Bhutto stands exonerated in the court of the people. The fact that the judgment is not cited or accepted as a precedent before or by any court of law in Pakistan is a manifest evidence of the rejection of the judgment by the legal fraternity and judiciary. The fact that a judge who convicted Zulfiqar Ali Bhutto and assisted in sending an innocent man to the gallows has deemed it fit to cleanse his soul and admit to wrongdoing is a manifest evidence of the fact that injustice of the gravest order was perpetrated.

But is any of the foregoing a good enough reason that the conspiracy to eliminate Zulfiqar Ali Bhutto should not be unveiled and the annals of history not be cleansed to bury forever the alleged conspiracy that never existed and on the basis of which a sordid military dictator aided by his cabal of generals, time serving judges, spineless bureaucracy, venal politicians and the vengeful Bhutto hating elite of this country aided and abetted in the murder of Zulfiqar Ali Bhutto.

That the modus operandi used by the Government to initiate this action is wrong or mala fide is another issue-what better could have been expected of the legal team that advises the Government, most of them were themselves part of the Bhutto hating brigade but that too does not justify opposition to the quest for revisiting of the ZAB trial.

………

Amna Paracha was Begum Nusrat Bhutto’s political secretary through the ZAB trial. Her husband (late) Saleem Zulfiqar Khan was on the original defence bench. Mr Khan was a close confidant of Shaheed Mohtarma Benazir Bhutto and worked closely with her for two decades in the drafting of legal briefs on various issues and also assisting in managing the PPP’s finances.

About the author

Abdul Nishapuri

13 Comments

Click here to post a comment
  • President Zardari condoles death of Salim Zulfikar Khan
    PPI 02 January 2010 Saturday | 17:44:00

    Islamabad, President Asif Ali Zardari has expressed profound grief and shock over the death of Salim Zulfikar Khan in London Saturday morning.

    Salim Zulfikar Khan a distinguished corporate lawyer of Islamabad was a close confidant of Shaheed Mohtarma Benazir Bhutto and worked closely with her for two decades in the drafting of legal briefs on various issues and also assisting in managing the PartyIs finances.He was taken ill recently with a rare disease of nerves and was taken to London for specialist treatment but did not recover from it. The death of Salim Zulfikar Khan is a great loss not only to the legal fraternity but also to the Party and the void created by his untimely death will not be filled for a long time, President Zardari said in a condolence message Saturday.

    In a condolence message to Ms. Amina Piracha the widow of the\ deceased and also a close associate of Shaheed Mohtarma Benazir Bhutto the President said that he was deeply grieved over the death of Salim Zulfikar Khan. Paying tributes the President said that late Salim Zulfikar assisted the Party leaders and workers during a crucial period when they were being chased and hounded while in the opposition to the government. The news of his death was a personalshock to him, the President said in his message.

    President Zardari said that Slim Zulfikar was an upright person who never minced words in candidly expressing his views without fear or favour to any one. He was imbued with great qualities of head and heart that endeared him to many. A professional par excellence Salim Zulfikar was a truly gifted person whose versatility was matched only by his amazing serenity and profundity, the President said.

    The President said that he recalled how Shaheed Mohtarma Benazir Bhutto used to consult him often on the phone and at times invite him to visit her in exile for consultation on various issues. President Zardari also prayed for eternal peace to the soul of Salim Zulfikar and patience to the members of the bereaved family to bear the loss with fortitude.

    http://www.onepakistan.com/news/national/28427-president-zardari-condoles-death-of-salim-zulfikar-khan.html

  • I agree with Assad Zulfiqar Khan’s suggestion that federal government should seek assistance from Mr. Abdul Hafeez Lakho in the ZAB case review. It would be very pertinent considering he is the only surviving member from the original defense team.

  • Bhutto Qasoori Ka QAatil Tha Uss Ko Apne Jurm Ki Saza Mili. Uss Nay Mulk Tora. Uss Ki Bhi Saza Mili.

    Garay Murday Ukharo, Zardari Khappay

  • ’عدالتی تحقیقات ہوئیں مگر ثبوت نہ ملا‘

    جعفر رضوی
    بی بی سی اردو ڈام کام کراچی

    مارشل لاء کے نتیجے میں گرفتار ہونے والے ذوالفقار علی بھٹو انتیس جولائی سنہ انیس سو ستتر کو رہا ہوئے

    پاکستان پیپلز پارٹی کے بانی اور سابق وزیرِاعظم ذوالفقار علی بھٹو کے مقدمے کا آغاز گیارہ نومبر سنہ انیس سو چوہتّر کی شب اس وقت ہوا جب قانون دان، رکن قومی اسمبلی اور سیاسی جماعت تحریک استقلال کے سیکریٹری اطلاعات احمد رضا قصوری لاہور میں اپنے اہل خانہ کےساتھ گاڑی میں جارہے تھے۔

    گولی چلائی گئی اور گاڑی میں احمد رضا قصوری کے ساتھ بیٹھے ہوئے ان کے والد نواب محمد احمد خان ہلاک ہوگئے۔

    قتل کا مقدمہ نامعلوم افراد کے خلاف درج ہوا مگر احمد رضا قصوری نے موقف اختیار کیا کہ پیپلز پارٹی کے سربراہ اور اس وقت ملک کے وزیرِاعظم ذوالفقار علی بھٹو کے ایما پر سیاسی انتقام کے لئے اس حملے کا نشانہ انہیں بنایا گیا اور ان کے والد ہلاک ہوگئے۔

    ذوالفقار علی بھٹو نے قومی اسمبلی میں دھمکی دی تھی کہ انہیں بہت برداشت کرلیا گیا اب انہیں خاموش ہوجانا چاہیے وہ ذوالفقار بھٹو کے خلاف بہت زہر اگل چکے ہیں اور اب انہیں مزید برداشت نہیں کیا جائے گا
    احمد رضا قصوری
    احمد رضا قصوری کا کہنا تھا کہ سنہ انیس سو چوہتّر میں انہیں ذوالفقار علی بھٹو نے قومی اسمبلی میں دھمکی دی تھی کہ انہیں بہت برداشت کرلیا گیا اب انہیں خاموش ہوجانا چاہیے وہ ذوالفقار بھٹو کے خلاف بہت زہر اگل چکے ہیں اور اب انہیں مزید برداشت نہیں کیا جائے گا۔

    ذوالفقار علی بھٹو کے وکیل حفیظ لاکھو کہتے ہیں بعد میں لاہور ہائی کورٹ کے جج شفیع الرحمٰن کی سربراہی میں قائم خصوصی ٹریبونل نے عدالتی تحقیقات کیں مگر کوئی ثبوت نہ ملا کہ یہ قتل ذوالفقار بھٹو کےایماء پر ہوا۔ دوبارہ تفتیش کا حکم ضرور جاری ہوا مگر تفتیش مکمل نہ ہوسکی اور کیس داخل دفتر کردیا گیا۔

    ذوالفقار علی بھٹو کی حکومت کو حزبِ اختلاف کی نو جماعتوں پر مشتمل پاکستان قومی اتحاد کے زبردست سیاسی مخالفت کا سامنا رہا۔ سیاستدانوں کی چپقلش کے دوران اس وقت فوج کے سربراہ جنرل ضیاء الحق نے پانچ جولائی سنہ انیس سو ستّتر کو ذوالفقار علی بھٹو حکومت کا تختہ الٹ کر ملک میں مارشل لاء نافذ کر دیا۔

    لاہور ہائی کورٹ کے جج شفیع الرحمن کی سربراہی میں قائم خصوصی ٹریبونل نے عدالتی تحقیقات کیں مگر کوئی ثبوت نہ ملا کہ یہ قتل ذوالفقار بھٹو کےایماء پر ہوا۔ دوبارہ تفتیش کا حکم ضرور جاری ہوا مگر تفتیش مکمل نہ ہوسکی اور کیس داخل دفتر کردیا گیا
    ذوالفقار علی بھٹو کے وکیل حفیظ لاکھو
    حفیظ لاکھو کے مطابق مارشل لاء کے نفاذ تک تو احمد رضا قصوری خاموش رہے مگر مارشل لاء لگتے ہی انہوں نے پھر یہ معاملہ اٹھایا اور مارشل لاء حکام نے حکم دیا کہ مقدمے کی دوبارہ تفتیش کرکے اس کا چالان پیش کیا جائے۔

    مارشل لاء کے نتیجے میں گرفتار ہونے والے ذوالفقار علی بھٹو انتیس جولائی سنہ انیس سو ستتر کو رہا ہوئے۔ تین ستمبر کو انہیں پھر گرفتار کرلیا گیا اور تیرہ ستمبر کو جسٹس کے ایم اے صمدانی نے انہیں ضمانت پر رہا کردیا۔ مگرجسٹس کے ایم اے صمدانی کا تبادلہ کردیا گیا۔

    سولہ ستمبر کو ذوالفقار علی بھٹو پھرجیل بھیج دئیے گئے اور چوبیس اکتوبر سنہ انیس سو ستّتر کو احمد رضا قصوری کے والد کے قتل کا مقدمہ مختلف مراحل سے گزرتا ہوا لاہور ہائی کورٹ پہنچا جہاں مولوی مشتاق حسین چیف جسٹس تھے۔

    اس مقدمے میں ذوالفقار علی بھٹو کے ساتھ پانچ دیگر افراد بھی شریک جرم گردانے گئے۔ ایک اُس وقت کے بدنام زمانہ وفاقی ادارے فیڈرل سیکیورٹی فورس یا ایف ایس ایف نامی ایجنسی کے ڈائریکٹر جنرل مسعود محمود تھے جو ذوالفقار علی بھٹو کے خلاف وعدہ معاف گواہ بنے۔ دوسرے وعدہ معاف گواہ بنے غلام حسین جو سپاہی تھے۔
    جسٹس حسین سنہ انیس سو پینسٹھ میں ذوالفقار علی بھٹو کے ساتھ وزیرِخارجہ کے طور پر کام کرچکے تھے مگر وہ بھی ذوالفقار علی بھٹو کے کھلم کھلا مخالف مشہور تھے۔

    حفیظ لاکھو کہتے ہیں کہ خود ذوالفقار علی بھٹو نے چیف جسٹس کے ساتھ اپنے ذاتی اختلاف کا معاملہ اٹھایا تھا اور جیسے ہی مقدمہ شروع ہوا تو انہوں نے اپنا اعتراض درج کروایا جس پر جسٹس حسین نے کہا کہ یہ فیصلہ اعلیٰ عدلیہ کو کرنے دیں کہ مقدمے کی سماعت کون کرے گا۔ میں ہائی کورٹ کا جج ہوں مقدمہ بھی میں سنوں گا اور فیصلہ بھی میں ہی کروں گا جس پر بھٹو صاحب نے عدالتی کارروائی کا بائیکاٹ بھی کیا۔

    اس مقدمے میں ذوالفقار علی بھٹو کے ساتھ پانچ دیگر افراد بھی شریک جرم گردانے گئے۔ ایک اُس وقت کے بدنام زمانہ وفاقی ادارے فیڈرل سیکیورٹی فورس یا ایف ایس ایف نامی ایجنسی کے ڈائریکٹر جنرل مسعود محمود تھے جو ذوالفقار علی بھٹو کے خلاف وعدہ معاف گواہ بنے۔ دوسرے وعدہ معاف گواہ بنے غلام حسین جو سپاہی تھے۔

    اٹھارہ مارچ سنہ انیس سو اٹھہتّر کو لاہور ہائی کورٹ نے ذوالفقار علی بھٹو کو مجرم قرار دیتے ہوئے پھانسی کی سزا سنا دی۔ جس کے بعد ذوالفقار بھٹو کےوکلاء نے فیصلے کے خلاف سپریم کورٹ سے رجوع کیا۔ سپریم کورٹ میں ابتداء میں نو وکلاء تھے۔ لیکن جسٹس قیصر ریٹائر ہوگئے، جسٹس وحیدالدین بیمار ہوگئے اور یوں چیف جسٹس انوارالحق کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے سات رکنی بینچ نے مقدمے کی سماعت کی۔
    حفیظ لاکھو بتاتے ہیں کہ ان کو اس شرط پر معافی دی گئی کہ اگر وعدہ معاف بن جائیں تو انہیں سزا نہیں ہوگی مگر انہیں اپنا جرم عدالت میں قبول کرنا ہوگا۔

    حفیظ لاکھو نے الزام لگایا کہ باقی تین شریک مجرم جو سپاہی تھے، جماعت اسلامی کے لوگ تھے۔ جس دن انہیں سزا سنائی گئی تو وہ عدالت ہی میں کھڑے ہوگئے کہ صاحب ہم سے تو وعدہ کیا گیا تھا کہ سزا نہیں ہوگی۔

    اٹھارہ مارچ سنہ انیس سو اٹھہتّر کو لاہور ہائی کورٹ نے ذوالفقار علی بھٹو کو مجرم قرار دیتے ہوئے پھانسی کی سزا سنا دی۔ جس کے بعد ذوالفقار بھٹو کےوکلاء نے فیصلے کے خلاف سپریم کورٹ سے رجوع کیا۔ سپریم کورٹ میں ابتداء میں نو وکلاء تھے۔ لیکن جسٹس قیصر ریٹائر ہوگئے، جسٹس وحیدالدین بیمار ہوگئے اور یوں چیف جسٹس انوارالحق کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے سات رکنی بینچ نے مقدمے کی سماعت کی۔

    سات میں سے چار ججز نے ذوالفقار علی بٹھو کی سزا برقرار رکھی مگر تین ججز، جسٹس حلیم، جسٹس صفدر شاہ اور درّاب پٹیل اُن تین ججز میں شامل تھے جن کا موقف تھا کہ جرم ثابت نہیں ہوتا۔

    جسٹس دراب پٹیل کہتے ہیں مقدمہ انتہائی سادہ تھا۔ دو وعدہ معاف گواہوں کے بیانات ثبوت تھے۔ ایک مسعود محمود ایک غلام حسین۔ غلام حسین کی گواہی بھٹو کے خلاف نہیں تھی بلکہ میاں عباس کے خلاف تھی۔

    سماعت چودہ فروری کو شروع ہوئی اور چوبیس مارچ سنہ انیس سو انہتر کو سپریم کورٹ نے فیصلہ پھر برقرار رکھا درخواست خارج کردی اور چار اپریل سنہ انیس سو انہتر کو ذوالفقار علی بھٹو کو پھانسی دے دی گئی۔
    غلام حسین کے بقول میاں عباس نے انہیں فون کیا کہ مسعود محمود نے میاں عباس سے کہا ہے کہ ذوالفقار علی بھٹو نے احمد رضا قصوری کو قتل کرنے کا کہا ہے۔ یہ ساری باتیں بیانات اور کہی سنی کی حیثیت رکھتی ہیں۔ سمجھ میں نہیں آتا کہ پھر عدالتوں (ہائی کورٹ اور سپریم کورٹ) نے کیوں غلام حسین کے بیان کو اتنی اہمیت دی۔ ہم برطانوی قوانین پر چلتے ہیں۔ جن کے مطابق حکم یا ہدایت دینے والے کو سزائے موت نہیں ہوسکتی۔

    یہ بھی کہا جاتا ہے کہ ذوالفقار علی بھٹو کو اپنے وکلاء سے شکایت تھی کہ انہوں نے کیس کی پیروی درست نہیں کی مگر حفیظ لاکھو کہتے ہیں کہ یہ درست نہیں بھٹو صاحب وکلاء کی کارکردگی سے مطمئن تھے مگر کہتے تھے کہ وکلاء کے بس کی بات نہیں کہ ان کو رہا کروالیں انہیں عوام چھڑوائیں گے۔

    سپریم کورٹ نے ذوالفقار علی بھٹو کی سزا کا فیصلہ برقرار رکھتے ہوئے درخواست خارج کردی۔

    اس فیصلے کے خلاف ذوالفقار علی بھٹو کے اہل خانہ نے پھر گیارہ فروری کو سپریم کورٹ سے رجوع کیا اور فیصلے پر نظر ثانی کی درخواست دائر کی۔

    سماعت چودہ فروری کو شروع ہوئی اور چوبیس مارچ سنہ انیس سو اناسی کو سپریم کورٹ نے فیصلہ پھر برقرار رکھا درخواست خارج کردی اور چار اپریل سنہ انیس سو اناسی کو ذوالفقار علی بھٹو کو پھانسی دے دی گئی۔

    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2011/04/110413_zab_case_history_rwa.shtml

  • What the government has done is quite right. PPP couldnt have been expected to do so when GIK and Farooq Leghari were the presidents. Yes, as far as modus operandi is concerned, it can be questioned, but the step is without doubt important to bring all the people of Pakistan who loved Bhutto together

  • YOULOGIC BUT YOUR COURT IS MURDER<ANDYOU AND YOURS FATHE ?BROTHERS inlaw troubled any/all ypoursdoings,highlighted/some/cath/similers/maps/displays/boxez/databazed/3.3/comission about father/children family/one they siportedkilluniversry/zeven/one waz killed/devill killedin-law specials dats basinfuniversals(FAISALS)CASESsmarts/paints/pens/wrote/emissinals/documents/phds/p-s/mrs/colours/madecars/boots/animals/games/entertainmentsallknowledgements/waths/displays/mobilevista/mbiles/otherprogramesservedas internes/google/conp/call hanas/ clocks1/2/tt/ttt/you/me/lo0gicsalluniverzalizsd/bluesedalsimisters/pages/chap[ters/contents/numbers/alpetics/anysubjectes

  • “The ZAB trial is a blot on the fair name of the judiciary.” ‘Fair name of the judiciary’? The judiciary is responsible for the Maulvi Tamizuddin Khan case, the Dosso case and the Begum Nusrat Bhutto case besides taking an oath prescribed by Gen. Musharraf. (Even the now dry-cleaned Chief Justice took that oath and was a signatory to a judgment granting the General legitimacy.) It was because of these cases that the people of Pakistan started to have doubts about the viability of the state which ultimately led to the separation of East Pakistan, the alienation of Baluchistan and hatred in Sindh. And yet you say the judiciary has a fair name? But then yes! Brutus was an honourable man wasn’t he?

  • Great politicain r know not in pakistan..After bhutoo only we have one hope benazir but she also leave us..due to bad politics of pakistan..know u can see after finish thios family what is the condition of pskistan…

  • We should not blame each other This all happen because Bhutto want to make Pakistan a Islamic Super power he trying to unite all the Islamic world Islamic Summit is example for his struggle and this all is not accept to USA and then CIA use Gen.Zia Ul Haq ( He May Go To Hell) to destroy all plan that time all people involve in that case including Justice system was USA Puppet just see whre Massod Mahmood (Director Generel of FSF) went after Bhutto trail he went to USA and live there before his death