Original Articles Urdu Articles

Fake criticism of military establishment

Related posts: Fake criticism of Pakistan army by a budding writer

Fake critical letter to ISI chief by Ejaz Haider

We have seen a new trend in the past few months that some people or forums known for supporting or reinforcing the military establishment’s narratives have started criticizing foj, ISI or establishment while at the same time fulfilling their agenda by carefully repackaging and presenting their arguments to achieve the intended outcomes. Some of these people are more refined and better camouflaged (Najam Sethi etc of the fake civil society) than others (Ansar Abbasi etc of the right wing) in that they carefully mix their lies with truth to mislead and deceive the public.

Here is one such example from a forum known for its tilt towards the right wing / establishment.

….

ISI Led Alliance in Formation
by Dr. Akram Khan

Source: http://pkpolitics.com/2011/04/02/isi-led-alliance-in-formation/

APRIL 2, 2011
Featured Article at pkpolitics.com

Based on information from by multiple sources in political and media circles, and compilations of analysis on discuss forum on pkpolitics, a clear plan seems to be under execution by establishment (aka Army/ISI) to setup the future puppet political government in Pakistan.

The plans seems to be as under:

• A new alliance comprising PTI (Imran Khan), MQM (Altaf Hussain), factions of PMLQ, and JI are being actively supported to form an alliance to force an anarchic situation followed by a joint electoral alliance.

• This alliance would be supported by other individual ISI agents, including Sheikh Rasheed, Shah Mehmood Qureshi, Saifullah brothers, Humayun Akhtar Khan and many more.

• A few TV anchors and journalists, such as Haroon Rasheed and Kamran Khan are already making grounds for such alliance and change.

• This ISI led political alliance would intensify the call for breakup of Punjab plans through campaigns of Mohammad Ali Durrani, PPP and MQM to make Bahawulpur, Multan, Haripur and Karachi as new provinces primarily to weaken the anti-establishment parties in next elections.

• A planned campaign is being executed to discredit judiciary. The judiciary will be dragged and blamed for every major issue in the country and will be held responsible for not taking suo-motto against actions led by ISI and their agents, such as on Raymond Davis issue.

Here are some suggestions for political parties and politicians who are willing to counter the ISI led alliance:

• PMLN should establish strong contacts and work on forming electoral alliance with like-minded people like Hasil Bizenjo, Bugtis, PKMAP, Achakzai, Mumtaz Bhutto. Also invite some politicians in alliance from PMLQ and PPP such as Tariq Azeem, Sheikh Waqas Akram, Aitzaz Ahsan, Safdar Ali Abbasi, Naheed Khan etc.

• This alliance should engage PTI (Imran Khan) in dialogue and lure him in for some seats and offer ministries like education, medical, sports, where he has experience and can effectively bring changes for masses.

• The alliance should demand that NO new provinces should be formed for at least next 15 years till the national unity is achieved.

• The alliance should also strongly focus on Balochistan and must keep the nationalists engaged from all provinces and actively start regular political gatherings.

• The political parties part of this alliance in National Assembly should demand an inquiry on Raymond Davis issue and demand the resignation of DG ISI General Pasha. He is also expected to be the key player in next elections.

• The alliance should prove their strength on ground to counter any upcoming long march by ISI led PMLQ, MQM, PTI and JI alliance.

• The alliance should improve the quality of candidates for next elections and promote large proportion of youth who are disillusioned after betrayal of General Musharraf and possibly Imran Khan.

The writer (Dr. Akram Khan) claims to be anti-establishment but I have no doubt he is one of the stooges. Also don’t miss the opportunity to read smsupportmovement‘s very wise comments (provided below).

شاید انہی صفحات پر پڑھا تھا کہ ایک فلسفہ دان نے ایک مکھی پکڑی ، اسے نیچے رکھا اور کہا “اڑ جاؤ مکھی” .مکھی ا ڑ گئی اسے پھر پکڑا اور اس کے پر کاٹ دئیے اب اسے پھر نیچے رکھا اور کہا ” “اڑ جاؤ مکھی”. مکھی نہیں ا ڑ ی . فلسفہ دان نے اپنی مشاہدات کی کتا ب میں درج کیا ” پس ثابت ہوا کہ اگر مکھی کے پر کاٹ دئیے جائیں تو اس کی قوت گویائی ختم ہو جاتی ہے ”

پتلی گھر میں ڈاکٹر اکرم نامی پتلی کو خوش آمدید . غلط مفروضات پر مبنی ، غلط حصّہ داروں (سٹیک ہولڈرز ) کی نشان دھی اور ان کی طاقت اور دل چسپی کے غلط اندازے کے ساتھ ایک کمزور تجزیہ ہے

A new alliance comprising PTI (Imran Khan), MQM (Altaf Hussain), factions of PMLQ, andJI are being actively supported to form an alliance to force an anarchic situation followed by a joint electoral alliance.

یہ ایسٹبلشمنٹ کی افواہیں ہیں کہ اوپر بیان کردہ اتحاد کسی کو کوئی نقصان پہنچا سکتا ہے . اگر تجزیہ نگار کو خدشہ ہے کہ اس سے نواز شریف کمزور ہو گا تو یہ غلط ہے . یہ تجزیے صرف اس لیے کیے جاتے ہیں کہ نواز شریف کا دائیں بازو کی طرف جھکاؤ بڑھے حالانکہ نواز شریف کو د ائیں بازو سے دور ہٹنے کی ضرورت ہے

This alliance would be supported by other individual ISI agents, including Sheikh Rasheed, Shah Mehmood Qureshi, Saifullah brothers, Humayun Akhtar Khan and many more.

ہارون اختر خان اور شاہ محمود قریشی وزیراعظم کی تنخواہ پر کام کرنا چاہتے ہیں اگر اس سے کم ہوا تو وہ موجودہ تنخواہ پر ہی کام جاری رکھیں گے

A few TV anchors and journalists, such as Haroon Rasheed and Kamran Khan are already making grounds for such alliance and change.

ٹی وی والوں کی اکثریت ایسٹبلشمنٹ نواز ہے تاہم وہ اس ایجنڈہ پر کام نہیں کر رہے . یہ صرف ہارون رشید کا ایجنڈہ ہے ” گلیاں ہو جان سنجیاں تے وچ مرزا یار پھرے ”

This ISI led political alliance would intensify the call for breakup of Punjab plans through campaigns of Mohammad Ali Durrani, PPP and MQM to make Bahawulpur, Multan, Haripur and Karachi as new provinces primarily to weaken the anti-establishment parties in next elections.

نئے صوبے بننے میں کسی کا کوئی نقصان نہیں . اگر مرکز کے اختیارات موجودہ صوبوں، اور صوبوں کے اختیارات انصاری کمیشن میں بیان کردہ نئے صوبوں کو دے دئیے جائیں تو نہ صرف عوامی مسائل حل ہوں گے بلکہ مرکز گریزی میں کمی آئے گی

جنوبی پنجاب کے عوام نے کبھی بھی نئے صوبے کی حمایت نہیں کی . جنوبی پنجاب کے جاگیر دار کا فائدہ ہمیشہ پورے صوبے پر حکومت کرنے میں تھا . پچھلے چند سالوں میں کچھ سوچیں جنوبی پنجاب میں مضبوط ہوئی ہیں :

-پنجاب کے بجٹ سے جنوبی پنجاب کو منصفانہ حصّہ نہیں ملتا
– پنجاب کی حکمرانی میں اب جنوبی پنجاب کے جاگیردار کا کردار ثانوی ہو گا
-اگر وفاقی حکومت کسی اور صوبے سے ہو تو اسے لاہور سے لانگ مارچ کرکے کمزور کیا جا سکتا ہے

ایک لمبے عرصے تک فیصلہ نہ کر پانے کے بعد اوپر بیان کردہ تیسرے نکتے کی بنا پر پیپلز پارٹی نے بھی جنوبی پنجاب میں نئے صوبے کی حمایت کا فیصلہ کیا ہے

A planned campaign is being executed to discredit judiciary. The judiciary will be dragged and blamed for every major issue in the country and will be held responsible for not taking suo-motto against actions led by ISI and their agents, such as on Raymond Davis issue.

اب کیا اس بات پر مزید بحث کی گنجائش ہے کہ اپنی سوچ اور کردار میں موجودہ عدالتیں بھی ایسٹبلشمنٹ کا حصّہ ہیں

Here are some suggestions for political parties and politicians who are willing to counter the led alliance:

PMLN should establish strong contacts and work on forming electoral alliance with like-minded people like Hasil Bizenjo, Bugtis, PKMAP, Achakzai, Mumtaz Bhutto. Also invite some politicians in alliance from PMLQ and PPP such as Tariq Azeem, Sheikh Waqas Akram, Aitzaz Ahsan, Safdar Ali Abbasi, Naheed Khan etc.

شاید مضمون نگار کو اندازہ نہیں کہ ممتاز بھٹو ایسٹبلشمنٹ کے تنخواہ دار ہیں . اعتزاز احسن صاحب اسٹبلشمنٹ اور عدلیہ کے “وچولے ” ہیں . ناہید عبّاسی جیسے لوگ جلد ہی اسٹبلشمنٹ کے اشاروں پر کهیلتے کهیلتے تاریخ کے ڈاکٹر مبشر حسن بن جائیں گے. ویسے کمال ہے آپ ایک ایسا “ایسٹبلشمنٹ دشمن ” اتحاد بنا نا چاہتے ہیں جو پیپلز پارٹی کو کمزور کرے . جناب عالی یہ تو ایسٹبلشمنٹ کا ہی منصوبہ دکھائی دیتا ہے

This alliance should engage PTI (Imran Khan) in dialogue and lure him in for some seats and offer ministries like education, medical, sports, where he has experience and can effectively bring changes for masses.

عمران خان سیاسی نابالغ ہے گدھا نہیں

The alliance should demand that NO new provinces should be formed for at least next 15 years till the national unity is achieved.

کیوں بھائی ؟

The alliance should also strongly focus on Balochistan and must keep the nationalists engaged from all provinces and activity start regular political gatherings.

بلوچستان کا معاملہ بہت پیچیدہ ہو چکا .ایسٹبلشمنٹ کی حرکتوں کی وجہ سے نوجوان قوم پرست “ریاست ” کے خلاف ہو چکے ہیں اب وہ کسی ایسی پارٹی کی باتوں میں نہیں آئیں گے جس کے پاس فوج کو زیر کرنے کی طاقت نہ ہو

آپ ہزارہ قوم پرستوں جیسے حیدر زمان اور سرائیکی قوم پرستوں جیسے تاج لنگاہ اور قیوم جتوئی وغیرہ کو نظر انداز کرکے باقی قوم پرستوں کو کیسے انگیج کریں گے

The political parties part of this alliance in National Assembly should demand an inquiry on Raymond Davis issue and demand the resignation of DG ISI General Pasha. He is also expected to be the key player in next elections.

کس بات کی انکوائری کہ ریمنڈ ڈیوس کے معاملے کو اسٹبلشمنٹ کے حامی مولویوں اور میڈیا کی مدد سے الجھا یا کیوں گیا یا اسے رہا کیوں کیا گیا ؟

The alliance should prove their strength on ground to counter any upcoming long march by ISI led PMLQ, MQM, PTI and JI alliance.

کوئی ایسا لانگ مارچ جس میں پیپلز پارٹی یا مسلم لیگ ن میں سے کوئی ایک شامل نہ ہو اس میں بندے کہاں سے آئیں گے ؟

The alliance should improve the quality of candidates for next elections and promote large proportion of youth who are disillusioned after betrayal of General Musharraf and possibly Imran Khan.

گھبرانے والی کوئی بات نہیں . جو بچے عمران خان کی حمایت کرتے ہیں نیا الیکشن آنے تک بالغ ہو جاتے ہیں

*****

میرے خیال میں یہ کوئی سوال ہی نہیں کہ عمران خان آنے والے وقت میں کتنا مقبول ہو گا وہ تاریخ کے دھارے کے خلاف چل رہا ہے اور اس کا مقدر ہی کچالو خان بنا ہے (آلو خان صرف اصغر خان کے لیے مختص ہے ). سوال یہ ہے کہ مسلم لیگ کے اندر موجود اسٹبلشمنٹ کے حامی دھڑے کے دباؤ کے تحت میاں نواز شریف تیزی سے خود کو جی ٹی روڈ تک کیوں محدود کر رہے ہیں

یاد رہے کہ ننانوے سے پہلے میاں صاحب اس لیے ایک بڑے لیڈر کے طور پر نہیں ابھر رہے تھے کہ وہ جذبہ جہاد سے سرشار ہو کر کوئی نئی صلیبی جنگ شروع کرنے جا رہے تھے . میاں صاحب اپنے طبقاتی مفاد کے تحت بھارت اور مرکزی ایشیا کی ریاستوں کے ساتھ تجارت کے راستے پر کوشاں تھے اور یہی راستہ پاکستان کی خوشحالی کا راستہ بھی تھا . ان کے دور میں سا رک کا تصور مضبوط ہو رہا تھا. اسٹبلشمنٹ میاں صاحب کی تجارتی اور مفاہمتی پالیسیوں کے خلاف تھی اور اسی لیے اس نے کارگل جیسا گھناونا جرم کیا تھا

پاکستان واپس آنے کے بعد انتہا پسندوں کے دباؤ کے تحت میاں صاحب نے کھل کر ایسی سیاست نہیں کی جو انھیں سندھ ، جنوبی پنجاب ، بلوچستان اور سرحد میں ایک جمہوری اور عوام دوست سیاست دان کے طور پر مقبول کرے . جی ٹی روڈ کو عمران خان کے فرضی خطرے سے بچاتے بچاتے میاں صاحب باقی پاکستان سے ہاتھ دھو بیٹھیں گے . کم از کم ایک الیکشن میں مسلم لیگ نواز کو گوجرانوالہ ، لاہور ، راولپنڈی فیصل آباد ڈویزنوں سے الیکشن ہااراننے کی حد تک کمزور نہیں کیا جا سکتا

میان صاحب کو اس وقت انتہا پسند دشمن اور عوام دوست ایجنڈہ لے کر باقی علاقوں میں جانے کی ضرورت ہے

مسلم لیگ نواز کے اندر اسحٰق دار جیسے کاروباری ، پرویز رشید جیسے سیاسی اور جاوید ہاشمی جیسے جمہوری ذہن موجود ہیں .میاں صاحب کو یہ بھی فیصلہ کرنا ہو گا کہ انھیں چوہدری نثار اور شہباز شریف جیسے ایسٹبلشمنٹ کے پسندیدہ چہروں کو اپنی میراث سونپنی ہے یا جا وید ہاشمی اور پرویز رشید جیسے ایسٹبلشمنٹ دشمنوں کو اپنا وارث بنا نا ہے

اور ہاں پی کے پالیٹکس کی انتظامیہ بھی چونکہ مشرف دوڑ ہی کی پیداوار ہے اس لیے ایسٹبلشمنٹ کے پراپیگنڈہ سے متاثر ہو کر ڈاکٹر اکرم جیسی پتلیاں تخلیق کر رہی ہے

About the author

SK

10 Comments

Click here to post a comment
  • The following comments from pkpolitics are relevant to the present post.

    qaisanwar said:
    مولوی اور آزاد فکر لبرل کے جھگڑے کا عوام کے ساتھ کوئی تعلق نہیں ہے . مولوی حکمران طبقات کو چغے پہنے ہوئے بادشاہوں کی صورت میں دیکھنا چاہتا ہے اور آزاد فکر لبرل ایک کامیاب ” کارپوریٹ ایگزیکٹو ” کی صورت میں. ان دونوں میں سے کوئی بھی مذہبی رواداری کی بنیاد وادی سندھ کی صدیوں پرانی روح پر نہیں رکھنا چاہتا . بریلوی مولوی میں اتنی طاقت اور بصیرت نہیں کہ وہ اس جدید تحریک کی بنیاد کو ختم کر سکے جس کے بانی بابا فرید الدین شکر گنج ہیں اور جس کو سید وارث شاہ ، بلھے شاہ ، خواجہ فرید ، شاہ حسین اور سینکڑوں صوفیوں ، سنتوں اور بھگتوں نے پروان چڑھا یا لیکن ضرورت کسی ساحر کی ہے جو دمادم مست قلندر کا نعرہ لگا کر عام آدمی کو بتا سکے کہ مولوی کے اندر صوفی نہیں ” سلفیوں ” کا پیسہ بولتا ہے تاہم آزاد فکر لبرل سے یہ کام نہیں ہو سکتا کہ اس کے منہ سے نکلنے والے نغموں کی دھنیں “کثیر الاقوامی کارپوریشنز ” بناتی ہیں

    تاریخ میں “وادی سندھ کی روح ” نے بار بار عود کیا ہے اس کی وجہ یہاں کا مخصوص سماجی اور معاشی ڈھانچہ ہے بدھ مت ، کبیر پنتھ ، سکھ مت اور تصوف کا مختلف زمانوں میں پھیلاؤ اس کا ثبوت ہیں حالیہ دور میں سی آئ اے اور آئ ایس آئ کی دہائیوں پرانی سوچوں پر اثر انداز ہونے والی تحریک کے باوجود عوام نے طالبان کے خلاف نفرت کا اظہار کرنا شروع کر دیا تھا . تاریخ بتائے گی کہ پچھلے چھ مہینے کے واقعات القاعدہ کی بہت بڑی سرمایہ کاری کا نتیجہ ہیں . نواز شریف نے یہ موقع ضائع کر دیا ہے . وادی سندھ کے لوگ جس میں پنجاب بھی شامل ہے برہمن کے مقابلے میں سنت اور مولوی کے مقابلے میں مرد قلندر کا ساتھ دیتے ہیں اگر نواز شریف مولوی کے خلاف کھڑا ہو جاتا تو لوگ اس کے ساتھ کھڑے ہو جاتے . میں نے ساری عمر بھٹو مرحوم کی مخالفت کی ہے لیکن ان میں یہ بات تھی کہ یہ کیہ کر کہ تھوڑی سی پیتا ہوں ، یا عوامی جلسے میں …..چود کی گالی دے کر بھی عوام کی حمایت حاصل کر لیتے تھے . کوئی بھی اگر ثقافت کو سہارا بنا لے تو وہ مذہبی شدت پسندی کو شکست دے لیتا ہے ، پچلے سال زرداری کے سندھی ٹوپی پہننے پر اعتراض کیا گیا تو سندھی ٹوپی کا دن سندھ کا صوبائی تہوار بن گیا . مسلہ یہ ہے کہ امریکہ اس منصوبے پر سرمایہ کاری نہیں کرے گا ، پاکستان آرمی پارٹی زید حامد جیسے لوگوں کے ذریعے ایسے منصوبوں کو ناکام بنائے گی . القاعدہ کے لیے “عدم برداشت ” موت کا نام ہے بایاں بازو ختم ہو چکا ہے لیکن اگر کوئی بھی تصوف اور معیشت کو ملا کر عوام کو پیغام دینے میں کامیاب ہو گیا عوام اس کا ساتھ دیں گے اس خطے کی ہزاروں سا لوں کی تاریخ یہی بتاتی ہے

    ——–

    Faarigh Jazbati said:

    ایم ایم اے تو نہیں بنے گا، البتہ مسلم لیگ قاف، سابقہ ایم ایم اے اور ایم کیو ایم ( جی ہاں ایم کیو ایم ) کا ایک اتحاد وجود پذیر ہوتا نظر آ رہا ہے . چوہدری شجاعت کا حالیہ دورہ کراچی اسی سلسلے کی کڑی ہے.

    میرا نہیں خیال کہ جنرل کیانی ، پرویز مشرف کا کردار ادا کرسکتے ہیں اور ویسے بھی کیانی کے مزاج اور جنرل طبلہ کے مزاج میں زمین آسمان کا فرق ہے . ایک اہم بات جس کا ہارون رشید نے بارہا ذکر کیا ہے اور کیانی والی کالم میں پھر ذکر کیا ہے وہ کیانی کی متحمل مزاجی اور احتیاط پسند طبیت ہے . کیانی کو مہم جوئی پسند نہیں ہے اور وہ معاملات کو اور نظام کو الٹ پلٹ کرنے والا شخص نہیں ہے . عدلیہ کی بحالی کی طویل یاترا میں اس کی مداخلت سے اور کئی دوسرے مواقع میں اس کی خاموش مداخلت سے یہ بات الم نشرح ہے . ویسے بھی کیانی نوکری پیشہ جنرل ہے اور اس سے زیادہ کچھ نہیں
    اب آتے ہیں ہارون رشید کی طرف . آپ نے فرمایا کہ ہارون رشید ہیت مقتدرہ کا بندہ ہے ، میں یہ کہوں گا کہ آپ اس کو اس کے وزن سے زیادہ اہمیت دے رہے ہیں . ہارون رشید دائیں بازو کی نمائندگی ضرور کرتا ہے اور زیادہ سے زیادہ پیغام بر تو ہوسکتا ہے اور کچھ نہیں ، ویسے بھی وہ ہیت مقتدرہ کے ضیاء الحق گروہ سے تعلق رکھتا ہے اور اس گروہ کی آجکل دال زیادہ نہیں گلتی. کیانی والی ملاقات کے بارے میں ہارون رشید نے دانش سکولوں والے کالم میں ذکر کیا تھا اور کہا تھا کہہ وہ اس بارے میں ایک دو دن تک لکھے گا.اگر کیانی کو ہارون رشید کو صفائی دینے کی ضرورت تک معاملات آ پڑے ہیں تو کیانی کو تو استعفا دے دینا چاہیے. میرے خیال میں اس کالم کا مقصد صرف اور صرف کیانی کو اشتعال دلانا ہے اور کالم کے آخری پیراگراف سے یہ صاف نظر آتا ہے .
    جہاں تک عمران خان کے شوکت عزیز بننے کا تعلق ہے تو یہ دو وجوہات کی بنا پرممکن نہیں.
    ١) عمران خان نہایت متلون مزاج آدمی ہے اور ہیت مقتدرہ ایسے کسی بندے پر داؤ نہیں لگاتی کہ لینے کے دینے پڑ جاتے ہیں . عمران ویسے بھی امریکی کیمپ کی بجائے برطانوی کیمپ کا بندہ ہے اور امریکی کبھی بھی اسے قبول نہیں کریں گیں . عمران خان ہیت مقتدرہ کو بھی آنکھیں دکھا سکتا ہے اور ہیت مقتدرہ ابھی تک نواز شریف والے صدمے سے باہر نہیں نکل سکی تو عمران چہ معنی.
    ٢) مولانا فضل الرحمن کے ہوتے ہوئے کسی شوکت عزیز کی کیا ضرورت ہے ، نہایت دیکھے بھلے ہیں ، گھر کے بندے ہیں ، اقتدار کی خاطر ہر سمجھوتہ کرنے پہ تیار رہتے ہیں ، اور امریکا اور خاص طور پر سعودی عرب کو نہایت قابل قبول ہیں تو اور کہیں کیا جانا . جب لڑکا گھر میں موجود ہو تو رشتے کیلئے کسی اور کی طرف کیا دیکھنا .

    آخر میں ایک بات جس کا میں نے کچھ عرصہ پہلے اشارہ دیا تھا کہ اب پاکستان میں بھی فوج کی زنجیر حاکمیت کو خطرہ لاحق ہے اور درمیانی سطح کے منصب داروں کی طرف سے بغاوت کا حقیقی خطرہ موجود ہے خاص طور پر اگر الجزائر، شام اور مصر میں عوامی احتجاج حکومتوں اور نظام کی تبدیلی پر منتج ہوتا ہے .

    پس تحریر : پاکستانی ہیت مقتدرہ کے مستقبل کے سودوں میں شاہ زین بگٹی کا نرخ کافی اونچا ہے اور حالیہ واقعات اس کے قد کاٹھ میں اضافہ کیلئے کیے گئے ہیں اور حربیار مری کے اثر و رسوخ کو کم کرنے کیلئے ہیں . آئندہ کبھی وزیراعظم کا قرعہ فال اگر بلوچستان کے نام نکلا تو جناب بگٹی بھی اس کے امیدواروں میں شامل ہونگے . لیکن اسکے لئے پہلے انکو وزیراعلیٰ بنایا جائے گا .

    Bawa said:
    با آدب ۔۔۔با ملاحضہ ۔۔۔ ہوشیار

    اسٹبلشمنٹ کے خصوصی ایلچی ہارون الرشید اسٹبلشمنٹ کا خصوصی پیغام آپ تک پہنچانا چاہ رہے ہیں. غور اور توجہ سے سنیے گا

    ظلم کی فصل پک چکی…ناتمام…ہارون الرشید

    خیال یہ ہے کہ چند ماہ میں فیصلہ ہو جائے گا۔ زیادہ سے زیادہ2012ء کے موسم بہار تک بہت ہو چکا، بہت ہوچکا۔ ظلم کی فصل پک چکی۔ لاٹھی بے آواز ہے. فرمان یہ ہے مایوسی گناہ ہے اوردیر ہے ، اندھیر نہیں.

    لہٰذا ٹی وی چینلز اور کان افواہوں کے لیے کھلے رکھیں

    http://www.jang.com.pk/jang/jan2011-daily/26-01-2011/col4.htm

    ——

    http://pkpolitics.com/2011/01/11/establishment-next-elections-blasphemy-an-analysis/

  • This explains why some known friends (Cyril Almeida, Omar Waraich, Najam Sethi, Nadir Hassan etc) have suddenly started criticizing GHQ while carefully promoting GHQ’s very own narratives and goals.

  • Khaak ho jayen gay hum tum ko khabar honay tak.

    LUBP circulate Sethi’s article after Davis release praising Zardari and Nawaz for handling the case so good and criticizing ISI. Najam is the smartest pro-military ‘intellectuals’. Where did Zardari or PPP every had any share in the matter.

    He wants his audience to believe that Davis handover decision was made by the political gov.

    I dont bother myself to read that ass hole.

  • from Twitter

    AbdulNishapuri
    Ansar Abbasi appears quite harmless when compared with our very own, well refined Najam Sethi. Back in 1990s he described Nawaz Sharif and BB as most corrupt, and Farooq Leghari as “A clean and capable man of immense integrity”

    http://criticalppp.com/archives/40420

    NadeemfParacha
    Dear @najamsethi, it seems Sindh, Baloch, mohajir and Pushtun cards are ‘dangerous,’ but Punjab card is patriotic?

  • i have read all the story and i have reached this conclusion that shah mehmod qureshi,aitzaz ahsan,safdar abbasi and naheed khan were very sincere PPP workers and politician and they have offered many sacrifies for party but now they are toys of establishment,WHY,HOW??i cannot understand this because the value of party is decreasing day by day and it becomes so hard to defend the party due to lack of leadership ability in party.i cannot understand whose fault is this?are senior PPP leadership not sincere with party now??WHY they are out of the scene?why they are not represent the party in streets,towns,cities,districts level?I am very afraid of this,if we will not be able to handle PPP in front of all provinces then more anorchie will rise in country because PPP is the sign of federal and if we want to strong pakistan we have to strong the federal and if we want to strong federal then we have to strong the PPP. so please save pakistan,by saving the PPP.
    Mr.PRESIDENT please save the party of Mr.BHUTTO.PLEASE
    LONG LIVE PAKISTAN
    LONG LIVE BHUTTO
    LONG LIVE BB SHAHEED
    LONG LIVE ASIF ALI ZARDARI
    LONG LIVE PPP

  • Does this mean PML-N is an anti establishment party??? LOL!!!!! I can die laughing…

  • an interesting comment from pkpolitics.

    بلیک شِیپ said:
    ایک انتہائی سینئر انصافی تحریکی ساتھی کی آپ بیتی کے پہلے
    حصہ ‘‘ میں عمران پر ایمان کیسے لایا ‘‘ کی بے مثال کامیابی
    کے بعد پاکستان تحریکِ اطفال انتہائی مسّرت کے ساتھ یہ اعلان
    کرتی ہے کہ آپ بیتی کا دوسراحصہ ‘‘ میرا ایمان عمران پر کیسے
    مستحکم ہوا ‘‘ شائع ہو گیا ہے۔۔۔۔۔۔۔ تمام انصافیوں اور اطفالوں
    سے یہ گذارش کی جاتی ہے کہ ان دو مذکور کتابوں کو پاکستان
    کے نصاب میں شامل کرانے کی جدوجہد میں پورے عمرانی جوش
    و جذبہ سے شامل ہوں۔۔۔۔۔ اس سلسلے میں اس جمعہ کو لال مسجد
    کے سامنے سِسٹر جماعت جماعتِ اسلامی کے تعاون سے ایک
    مظاہرہ کا اعلان کیا گیا ہے۔۔۔۔۔ تمام اطفال سے شرکت کی درخواست
    ہے۔۔۔۔

    اس موقع پر سرپرستِ اعلیٰ جناب حمید گُل نے دس ہزار کاپیاں اپنی
    ذاتی (آئی ایس آئی) جیب سے خرید کر پہلی جماعت کے بچوں میں
    بانٹنے کا اعلان کیا ہے۔۔۔۔۔۔
    عظیم پیشہ ور لکھاری اور کالم نگار جناب ہارون رشید نے روزانہ دو
    پیراگراف اپنے کالم میں شامل کرنے کا وعدہ بھی کیا ہے۔۔۔۔۔۔۔

    ہمارے چیئرمین ہِز ہائی نیس جناب خلیفہ عمران خان صاحب کی جنرل
    پاشا سے بات ہوگئی ہے اور ان آپ بیتیوں کو ہیلی کاپٹروں کی مدد سے
    پورے ملک کے طول وعرض میں گِرایا جائے گا۔۔۔۔۔ اور اب اس وطن
    کو کوئی حصہ عظیم اِنصافی تعلیمات سے محروم نہیں رہے گا۔۔۔۔۔۔

    ساتھ ساتھ پاکستان تحریکِ اطفال یہ اعلان کرتی ہے کہ تمام ساتھیوں
    پر ان آپ بیتی کے دو صفحات روزانہ حِفظ کرنا لازم قرار دیا گیا ہے۔۔۔
    جلد ہی ہماری صفوں میں ان آپ بیتیوں کے بہت سارے حافط ہوں گے۔۔۔

    مزید خبریں آنے تک عمران پر ایمان قائم رکھئے۔۔۔۔۔۔۔

  • According to Najam Sethi, CJ Iftikhar Chaudhry offers stern counter-narrative to General Kayani. Fake criticism!

    ……

    Military in the dock

    
    COAS General Ashfaq Kayani has decried criticism of the military and ISI in certain sections of state and society. He insists that the military (army and Intel agencies) is not meddling in politics and has no untoward role in Balochistan. More significantly, he has pointed out that “national institutions are not created overnight but are built with a fair amount of difficulty, so no one should become a party in weakening institutions.” He believes that intelligence outfits are nowhere in the world maligned and discussed as they are in Pakistan. He urged critics to “let the army and Inter-Services Intelligence (ISI) work within their mandate and domain and no uncalled-for interference should be done in their work.”

    A stern counter-narrative – an indictment really — has been provided by the Chief Justice of Pakistan, Justice Iftikhar Mohammad Chaudhry. In the context of missing persons in Balochistan and FATA and unaccountable payments made to politicians in the Mehrangate case, the CJP told the ISI and MI: “You need to get it out of your mind that you are superior and others [civilians] are inferior… Who gave you the right to hound people? You are insensitive to the human loss that the families of missing persons have suffered lately because of you. This is a big allegation against you – there is a hue and cry throughout the country that you abduct people and then dump their dead bodies”. The CJP remarked: “As much as you consider yourself loyal to this country, perhaps we are more loyal than you…If a judge is bound not to break a traffic signal, then why will he allow you to subvert the constitution of the country?” Outraged, the CJP thundered against the ISI and MI: “You’re an arsonist. You have set Balochistan on fire. We ask you time and again and you always tell us stories. Are we here to listen to your stories?” Summing up, he observed: “The agencies have become insensitive to such issues and are the biggest violators of the country’s law and order. They are not working as per their mandate. They are not above the law. We cannot compromise on the interests of the State.”

    General Kayani’s allegation that the intelligence agencies are being “maligned” (wrongly or maliciously accused) is incorrect. Since the 1980s, Pakistan’s history is witness to the shenanigans of the ISI and MI in bribing and browbeating politicians, sponsoring parties, destabilizing governments, provoking conflict, subverting constitutions, abetting assassinations, “disappearing people”, standing above the law. This explains why the heat is on them now when the media and judiciary have come of age and politicians of all shades have agreed to establish civilian supremacy over the military.

    General Kayani wonders why the CIA and RAW and other intelligence agencies are not subjected to such scathing criticism in their own countries. The answer is simple: unlike in Pakistan, all such national intelligence agencies are generally staffed by civilians, led by civilians, monitored by civilians and accountable to elected and representative civilians. There is no conflict of interest in these countries between their agencies and the national interest as defined by their elected civilians in government.

    There is a bigger issue underlying the civil-military tension in Pakistan. In democratic societies, the military is subservient to the civilians who own responsibility for the military’s acts of omission and commission. That is why the military is not “maligned”. Not so in Pakistan where the military has historically billed itself as a sacred cow that stands above the law and constitution in the so-called interest of “national security”. But the development of a consensus in Pakistan about the primacy of democracy and civilian supremacy has made the military’s supra-constitutional position untenable. The criticism is therefore aimed not just at making the military both accountable and subservient to civilian perceptions and interests but also at challenging the military’s paradigm of “national security interest” (which ignores peoples welfare) and counter-posing it with “social security” interest (which takes into account military security).

    The military has historically been propped up by two factors: the mullahs for legitimacy and America for rents. But Pakistanis have now come of age to reject the notion of the mullahs for legitimizing governance and America for dependent economic development.

    It is not surprising that a civilian critique of the military should have materialized in the last decade. It was during General Musharraf’s regime that both mainstream parties were sidelined and alienated. It was during his time that the media was freed and shackled in turn. His agencies ignited a fire in Balochistan. His generals kicked out the judges. He sold out Pakistan to America for dollops of military hardware. His policy meddling in Afghanistan without stitching up tensions with India has led to overreach and vicious blowback. If General Kayani insists that the “mandate and domain” of the military cannot change, he should brace his institution and himself for more rather than less criticism in time to come.

    http://www.thefridaytimes.com/beta2/tft/article.php?issue=20120323&page=1

    TFT 23-29 March 2012