Original Articles

The Mohali heart-breaker – by Bahadar Ali Khan

We are proud of you guys!

For Pakistani nation the moments of happiness have become a rarity in recent times. And in desperation they try to squeeze joy out of any minor/major event that comes across their way. The latest was the Cricket World Cup semi final match that was played in the spirit of sub-continetal Ashes. There was a huge hype weaved around this event and a night before the match Pakistani streets were reflecting the Chaand Raat like scenes. The cricket fans ( meaning by everybody in Pakistan, as everybody is a Cricket fan there ) in order to savour most out of this event made special arrangements to mark it the most memorable one. There was nothing but cricket in the air!

The course of the day leading to the match start time in the afternoon virtually brought Pakistan to a halt. Though officially government granted half-day off but practically it was observed as a full day off. Finally on their TV screens they saw Umar Gul picked up the ball and raced towards Tedndulkar along with millions of racing hearts, especially on the Pakistani side of the sub-continental divide. It is important to reckon this subtle difference that why Pakistani hearts were beating faster then their counterparts. Indians were no less thrilled but lately their country has achieved much successes in a lot of other fields while the Pakistani side is certainly success-thirsty. For the given moment, they were content to quench it with at least a cricketing success.

Ball after ball and Over after Over, as the day progressed so did the Indian score card, notwithstanding some forgiven follies committed by maestro Tendulkar, but in the end the Indian walked out with a decent though chase able total on the scoreboard. The charged crowds on the Pakistani streets regarded that Total as their half success. They ignored the fact that Pakistani bowling was better than Indians but that was not true in the case of batting. Naturally, with brief and distributed intervals of tractions, the Pakistani batting line kept on sliding South, resulting in producing a heart-breaker for 180 million people.

They say, the higher one flies, the harder one falls. Our cricket team’s flight in this match was not higher enough, but the flight of imagination of crowds was not matching the match. It was too high, to say the least. They wanted to settle a number of scores with India by the score on the scoreboard. But as it turned out, though a little late in the minds of emotion savvy nation, it was just another game of Cricket. The one who will play better, carries the day. In this case it happened to be India.

Never mind, we can have match with India in many other fields and believe me those matches don’t have any knock-out stage. History tells us that downfalls of the nations are not caused by singular events rather these are pluralistic in nature. Every string is broken and every bead is spilled. Out of a homogenous downfall we cannot keep some segments floated. All sinks or all rises. So my request is to treat this event just as a beautiful game of cricket and it would distasteful to see if we pick some scapegoats among the Pakistani cricket squad. They did their best. Better luck next time.

About the author

Taimoor Kashmiri

1 Comment

Click here to post a comment
  • میرا سیمی فائنل !

    وسعت اللہ خان
    بی بی سی اردو ڈاٹ کام، کراچی

    بھارتی ٹیم اب سنیچر کو ممبئی میں فائنل کے لیے سری لنکا کے خلاف کھیلے گی

    موہالی کا میچ شروع ہونے میں ابھی چار گھنٹے گیارہ منٹ سات سیکنڈ باقی ہیں۔ایک چینل نے گذشتہ رات سے اپنے سکرین پر ٹکنگ کلاک چسپاں کردیا ہے۔دوسرے چینل کے مورننگ شو میں ایک مالک سمیت طوطا مہمانِ خصوصی ہے۔وہ بکھرے کارڈز میں سے پاکستان کا کارڈ بار بار نکال کر اپنے فن کا مظاہرہ کررہا ہے۔شاید اسے بھی پتہ چل گیا ہے کہ ممبئی میں ایک چونچ پھٹ ( بروزنِ منہ پھٹ) طوطے کا کیا حشر ہوچکا ہے !!

    ایک چینل پر ایک خوبرو خاتون ٹیرو کارڈز کی مدد سے پاکستان جتوا رہی ہیں۔ایک اور چینل پر دو نجومی یہی کام کررہے ہیں۔جبکہ ایک چینل پر ایک ماہرِ دست شناسی موہالی کی وکٹ میں پڑنے والی لکیروں کی تصاویر پڑھنے کی کوشش کررہا ہے۔یہ بھی بتایا جارہا ہے کہ تیس تاریخ ہندو جوتشیوں نے دراصل اپنی ٹیم کو جتوانے کے لیے نکالی ہے لیکن وہ یہ بھول گئے کہ بدھوار کا رنگ ہرا ہوتا ہے اور یہی رنگ پاکستانی ٹیم کا بھی ہے۔

    ملٹی نیشنل کمپنیوں کے ولولہ انگیز نغماتی اشتہارات کی بھی سکرینز پر بھرمار ہے۔( ان میں سے بیشتر ممبئی میں شوٹ اور پروڈیوس ہوتے ہیں)۔

    پٹرول پمپ پر موٹر سائکلوں کا سبز ہجوم ہے۔یہ موٹر سائکل ابھی سے گھرر گھرر ، گھن ، گھوں گھوں کررہے ہیں۔ہر ٹنکی فل ہورہی ہے مبادا شام تک پٹرول ملے نہ ملے۔شاہد بھائی کے لمڈے ہر ممکنہ چوکے اور ہر آؤٹ پر ہوائی فائرنگ کے لیے گولیاں گن رہے ہیں
    موبائیل ایس ایم ایس کی گزشتہ شام سے بہار ہے۔تم کتنے طوطے مارو گے ، ہر گھر سے طوطا نکلے گا۔۔۔۔سیمی فائنل کی چاند رات مبارک ہو۔۔۔ دھونی کو دھون دو ، دھو ڈالو۔۔۔دودھ مانگا تو کھیر دیں گے ، کپ مانگا تو چیر دیں گے۔۔۔۔

    میں دفتر جانے کے لیے باہر نکلا تو دیکھا کہ سامنے کے پٹرول پمپ پر موٹر سائکلوں کا سبز ہجوم ہے۔یہ موٹر سائکل ابھی سے گھرر گھرر ، گھن ، گھوں گھوں کررہے ہیں۔ہر ٹنکی فل ہورہی ہے مبادا شام تک پٹرول ملے نہ ملے۔شاہد بھائی کے مداح ہر ممکنہ چوکے اور ہر آؤٹ پر ہوائی فائرنگ کے لیے گولیاں گن رہے ہیں۔

    ٹیکسی دفتر کی طرف جارہی ہے۔ پرچم بردار موٹر سائکلیں کبھی ادھر سے تو کبھی ادھر سے نکل رہی ہیں۔ٹیکسی ڈرائیور نے دورانِ سفر صرف ایک بات پوچھی

    ’بھائی صاحب کیا وہاں بارش ابھی تک چالو ہے یا رک گئی ہے‘ ؟

    ’رک گئی ہے !‘

    ’شکر الحمدللہ‘

    دفتر میں ہر شخص کے کان پر کنٹوپ چڑھا ہے۔ٹاس پاکستان ہار چکا ہے۔سہواگ اور تندولکر نے عمر گل کی گیند کو فٹ بال کی طرح کھیلنا شروع کردیا ہے۔۔۔۔پچاسیویں رن پر مجھے یہ ایس ایم ایس موصول ہوتا ہے کہ

    اچھی بات یہ ہے کہ ٹنڈولکر کو چار زندگیاں دینے اور خراب فیلڈنگ کے باوجود پاکستان نے انڈیا کو دو سو ساٹھ رنز کے سکور پر روک لیا ہے۔اگر حاضر دماغی سے کام لیا جائے تو یہ کوئی بڑا سکور نہیں ۔۔۔لیکن ۔۔
    ’ ابھی ابھی یاد آیا کہ ہمارا قومی کھیل تو ہاکی ہے‘۔

    اچھی بات یہ ہے کہ تنڈولکر کو چار زندگیاں دینے اور خراب فیلڈنگ کے باوجود پاکستان نے انڈیا کو دو سو ساٹھ رنز کے سکور پر روک لیا ہے۔اگر حاضر دماغی سے کام لیا جائے تو یہ کوئی بڑا سکور نہیں ۔۔۔لیکن ۔۔لیکن۔۔۔لیکن۔۔لیکککککن ۔۔۔

    جب آٹھ کھلاڑی آؤٹ ہوئے تو ایک اور ایس ایم ایس آیا

    ’ممبئی میں سری لنکا بھرکس نہ نکال دے تو نام بدل دینا‘

    چھیالیسویں اوور کے بعد میں دفتر سے نکلا۔گھپ اندھیرے میں سنسان سڑک پر صرف ایک رکشہ کھڑا ہے ۔اس کا ڈرائیور موبائیل فون کا سپیکر آن کرکے کمنٹری سن رہا ہے ۔۔۔

    گلشنِ اقبال چلوگے ؟

    ’جاتا ہے میرا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2011/03/110328_semifinal_cricket_wusat_nj.shtml