Original Articles

Raza Rumi and Cyril Almeida on the Raymond Davis Affair

We would like to recommend the following two articles, by Raza Rumi and Cyril Almeida, to our readers that sum up the issue well.  For us, the outcome and the subsequent analysis is a vindication of what has already been published on this blog.  Nearly a month ago, one of our contributor’s Brandon Wallace, had this to say:

 “In the end, Raymond Davis is the football that was aimed at the gonads of the US establishment in order to get them to play ball solely with the security establishment and drop even the pretense of engaging with the people of Pakistan.”

 Another LUBP editorial by Abdul Nishapuri seems prescient when analysed by what Raza Rumi writes:

 International and local punditry, on the breakdown of the ISI-CIA relationship, also proved to be a bogey, as the two organisations continued to engage and find a solution”

 In his article for the Express Tribune, Raza Rumi takes to task the “Ghairat Brigade”:

“The most important lesson that we may note for our future misadventures is not to whip public emotion against law, reason and civilised norms of diplomacy. As it is, we have misinformed the public, packed lies into textbooks and allowed the mullahs and media mujahideen to spread hate at will. All of this is definitely not in our national interest or national dignity. We can only be protecting our honour if we appear as a law-abiding, civilised polity and not a jingoistic state, full of armed lunatics in the public domain.”

 Raza injects some much needed rationality and maturity in the debate.  His conclusion deserves special mention: 

“Honour-obsessed TV anchors and analysts have not liked the outcome of this saga and some are loudly claiming that qisas and diyat laws were not applicable in this particular case. Or the families have been pressurised and that Pakistan has not protected its sovereignty. Quite frankly, they will have to swallow the propaganda they have churned out and, for a change, answer for their ignorance of laws, international politics and history. Pakistan needs to strengthen its economy, undertake major social reform and only then it can think of dictating to the world with augmented bargaining power. Nuclear prowess alone cannot please the gods. Simple.”

 Well said Raza! Our urban hyper nationalists and our jingoistic, paper-tiger media should take note.

Cyril Almeida (DAWN), in highlighting the pervasive role of the security establishment adds a cautionary note:

“Indignant pundits on TV are warning that terrorism and extremism may increase now that Davis has been set free. If they are right, it’s only because Davis was made into an issue of national honour. And you don’t have to look very far to find who encouraged that characterisation in the first place. Remember the Kerry-Lugar fiasco? One little statement from GHQ and on cue the political class, sections of the media and the public at large erupted.

What did that gain us? Not one term was changed, not one word. If it was all about assurances, surely the establishment could have used other channels to demand those. And if those assurances were violated, the ante could have been upped later. But it’s the unthinking recourse to public pressure that seems to characterise the establishment’s responses. And they always appear to be responses, not part of some broader strategy.  In the Davis affair, the central concern for the Americans wasn’t the response of the Pakistani public, it was to get their guy back. So once we got their guy, we had bargaining power. Use it, quietly and efficiently.

And for those who think that killings in broad daylight in Lahore couldn’t be dealt with ‘quietly’, then think about all the attacks against military installations and security agencies in the past few years What visa details or interrogation tapes or jail-cell conditions has the public learned of in any of those attacks?  Raymond Davis is gone. But the bitterness and hate and propaganda the episode spawned will linger on.  Kerry-Lugar, drone strikes, Aafia Siddiqi, Raymond Davis — why can’t the establishment here fight its battles with the US without making this place a little more dangerous, a little less stable each time?”

Our chattering elites should pay attention to the power of the un-elected institutions. Many in this category are as mute or silent about the role of the establishment as they are vocal in fulminating about the current elected government.  

The conclusion of the Raymond Davis affair has been very interesting.  The chunk of the “Ghairat Brigade” in the form of the PML N has been on board with the US as has the “independent” Judiciary that is worshipped by the chauvinist sections of Pakistan’s urban elites for “standing up” (solely) to the weak elected Government and folk singers, whilst ensuring the freedom of our Jihadi “Ghazis”!  Our all powerful establishment too has played a central role in this entire crisis. Lastly, it was Saudi Arabia that paid the Bloody Money; sorry Sansar Abbasi/Jang Group/AAJ, your lies failed, Again!   Our fake civil society needs to rethink its selective haranguing of the PPP.  Perhaps now they have finally awakened to the fact that it was the establishment, PML N, the Judiciary and Saudi Arabia that used Sharia law to free Raymond Davis. 

 The conclusion of this affair proves that the PPP-lead government was not in a position to settle this issue on the basis of cautious and mature international détente. By being sidestepped in its efforts by the establishment and its proxies and their Saudi allies, Zardari played a master stroke in exposing the power of the Deep State and the struggle for democracy, moderation and progressiveness to prevail in Pakistan.  For those Pakistanis who are not stuck in Ostrich mode, the Raymond Davis affair like the Kerry Lugar Bill, the UN commission report on MBB’s assassination and the Mumbai attacks exposed the true power players in Pakistan and the struggle for those who truly want a functional democracy here.

About the author

Nighat

5 Comments

Click here to post a comment
  • Very well argued and analyzed. After the not so hidden behind-the-scenes dramas surrounding KLB, drone attacks, war on terror, suicide bombings, judges restoration, Afia, floods, Aasia/Taseer/Shahbaz/blasphemy laws, there isn’t any doubt left that all, repeat all, intelligence agencies and defence forces should be strictly subject to civilian supremacy, the executive authority and answerable to the elected parliament along with complete audit, key appointments and embargo on any extensions for at least 25 years.

  • Pakistanion ka khuda, Pak Fauj haar gayee lekin Pakistani uss kay nangay pan say guraizaan hain.

  • جیسا کہ ہمارا اصرار تھا، ایک عدالتی فیصلے نے ڈیوس کو رہا کیا اور مقتولین کے خاندانوں کو دھکوں کی بجائے کافی زرِ تلافی مل گیا۔
    اگر ہم چاہیں تو اپنے قومی اشتعال کے الاؤ کو آسمان تک دہکا لیں، مگر خون بہا کی رقم کے طور پر دو ملین ڈالر اور امریکی ویزے کا امکان ہماری دنیا میں کوئی معمولی تلافی نہیں ہے۔ چاہے یہ بات کتنی ہی دل کو ناگوار لگے، پاکستان میں کتنے لوگ بے دردی سے مارے جاتے ہیں اور اُن کے ورثا کو کیا ملتا ہے؟ فاٹا میں ڈرون حملوں اور کراچی میں ٹارگٹ کلنگ کے مقتولین کی کیا تلافی ہوتی ہے؟ جو لوگ شور مچا رہے ہیں کہ ورثا کو مجبور کیا گیا، ذرا تھوڑی ایمانداری سے سوچیں کہ بیس کروڑ روپے وصول کرنے کی مد میں مجبوری کا شائبہ ڈھونڈنا ذرا دشوار امر ہے کہ نہیں؟ ستم ظریفی ملاحظہ فرمائیں! یہ معاملہ صریحا ً اسلامی قانون کے تحت طے پا گیا اور ضابطہٴ فوجداری میں ترامیم جنرل ضیا ٴ نے کی تھی کہ خون بہا لے کر قاتل کو معاف کیا جا سکتا ہے۔ اب اگرسی آئی اے اسلامی قانون کا سہارا لے کر اپنا آدمی پاکستان سے لے گئی ہے تو کون معترض ہو سکتا ہے؟ تاہم ستم یہ ہوا کہ احتجاج کرنے والوں کا ہراول دستہ کوئی اور نہیں بلکہ ضیا کی حقیقی وارث، جماعت اب کیا کہہ سکتی ہے کہ اسلامی قانون کے مطابق خون بہا لینے کو منسوخ کر دیا جائے۔ اگر یہ قانون کی کتاب میں درج ہے تو امریکیوں کو اس کے استعمال سے کیسے روکا جا سکتا تھا؟ہماری تمام ایجنسیوں کی روح رواں آئی ایس آئی بھی تحسین کی مستحق ہے کہ اس نے کمال انداز سے یہ کھیل کھیلا ہے۔ ڈیوس کے قتل پر ہونے والا احتجاج حقیقی تھا ۔ اسے کسی خفیہ ایجنسی نے تحریک نہیں دی تھی، مگر صاحب ِ بصیرت کہتے ہیں کہ لاہور کے احتجاجی جلوسوں میں کچھ فرشتے بھی تھے۔ پاکستان میں کواکب وہ نہیں ہوتے جو نظر آتے ہیں، چاہے وہ کتنے ہی حقیقی کیوں نہ دکھائی دیں۔
    اس منظر نامے کا دوسرا پہلودفتر خارجہ اور وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کی ثابت قدمی ہے جو اُنھوں نے ڈیوس کے استثنا کے حوالے سے دکھائی۔ قریشی صاحب ایک قدم آگے نکل گئے اور ببانگ دہل کہا کہ ڈیوس کو وہ سفارتی استثنا حاصل نہیں جس کا امریکی مطالبہ کر رہے ہیں۔ دفتر خارجہ کی یہ بے باکی سب کے لیے غیر متوقع تھی۔ اب سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ اسے استقامت کس نے دی؟اس کے بازوؤں میں دم خم کس نے پید ا کیا؟ سازشوں کی بو سونگنے کے ماہر اس حیران کن بے خوفی کے سائے ، آئی ایس آئی کی عمارت، سے متصل دیکھتے ہیں۔ بھلا سوچیں کہ آئی ایس آئی کیا کرنے کی کوشش کر رہی تھی؟ ظاہر ہے کہ اس کا مقصد امریکہ سے جنگ کرنا تو ہر گز نہیں تھا، اور نہ ہی امریکہ کے ساتھ روابط کو شکوک و شبہات کے رنگ میں رنگنا۔ اس نے ڈیوس کے معاملے کے تمام پیچ و خم ایک دائرے میں مرکوز کر کے باقی تمام راستے بند کر دیے تھے ۔ صرف ایک ہی راستہ کھلا تھا او ر وہ آبپارہ، جی ایچ کیو، جاتا تھا۔ پہلے جذبات کی رو میں بہتے(بہکتے ) امریکیوں نے صرف وفاقی حکومت اور وزیر داخلہ رحمان ملک سے بات کرنے کی کوشش کی۔ وزیر داخلہ نے امریکیوں کو پیغام پہنچا دیا کہ پنجاب حکومت کو ڈیوس کے استثنا کے بارے میں بتا دیا ہے۔ یہ محض ایک بیان تھا کیوں کہ حقیقت میں ایسا کچھ بھی نہیں کیا گیا تھا۔ اپنے لاہور میں قونصل جنرل کے ذریعے امریکیوں نے پنجاب حکومت پر دباؤ ڈالنے کی کوشش کی مگر بے سود۔ معاملہ عدالت میں جا چکا تھا اور ڈیوس کے استثنا کا معاملہ ابھی حل طلب تھا۔ اور یہ استثنا ابھی بلیک سوان بن چکا تھا کیوں کہ دفتر خارجہ نے غیر متوقع طور پر ایوان صدر کی خواہشات سے متصادم راستہ اختیا ر کر لیا تھا۔ ان تمام معاملات میں مسٹر قریشی ہماری قومی عزت کے محافظ سے زیادہ غیر مرئی قوتوں کے ہاتھ میں ایک مہرہ دکھائی دینے لگے۔ اس تمام صورت حال کا ادراک کرنے میں امریکیوں کو یقینا کچھ وقت لگ گیا ہو گا۔ وہ کچھ شارٹ کٹ تلاش کررہے ہوں گے مگر آئی ایس آئی نے تمام دروازے بند کر رکھے تھے اوراس بساط پر صرف ایک ہی چال باقی تھی، جائے مفر صرف ایک ہی تھی۔خوشی سے نہیں بلکہ بامر مجبوری امریکیوں نے مکے کی بجائے دماغ استعمال کیا اور پس پردہ بہت سی ملاقاتیں ہوئیں۔ کب؟ بلاشبہ جب امریکیوں نے کچھ غصہ حلق سے نیچے اتارا ، اور وہ اس کے عادی نہیں ہیں، اور پھر اُنھوں نے پاکستانی نقشے کا ازسرِ نو جائزہ لیا اور دیکھا کہ زمیں کی ڈھلوان کس طرف ہے۔
    پریس میں آنیوالی بہت سی رپورٹس کے مطابق آئی ایس آئی کو سی آئی اے سے پاکستان میں ضرورت سے زیادہ کاروائیوں پر شکایا ت تھیں۔ چنانچہ یہ کوئی ڈھکی چھپی بات نہیں ہے کہ ڈیوس کے معاملے نے ان تمام رخنوں کو پر کرنے کا موقع فراہم کر دیا ہے۔ اگر سی آئی اے پاکستان میں اپنا کھیل کھیل رہی تھی تو یہ اس کو لگام دینے کا ایک موقع ہاتھ آگیا ہے۔ اب قومی عزت و آبرو کے رکھوالے، مجاہدانِ شعلہ فگن ، کہاں کھڑے ہیں جبکہ امریکی اسلامی قانون کے مطابق رہا کر دیا گیا ہے؟ کیا یہ دوست واقعی چاہتے تھے کہ ایک فرد کی خاطر امریکہ سے تعلق کو خطر ے میں ڈال دیا جائے۔ حقائق کی دنیا میں ایسے واہموں کی کوئی جگہ نہیں ہے۔

    اصحاب ِ غیرت کا سونامی… ایازا میر

    http://search.jang.com.pk/details.asp?nid=514355

  • I fully agreed what is write above. Just i have to say that our Govt has fixed Khaun Bhaa which they pay after each balst but they never take to stop balst.
    Allah hamare Hall pay reham farmaye

    Regards / Noman