Original Articles

‘Everyone Declare Pakistan’s Blasphemy Law as Black Law’ Campaign

Shaheed Salman Taseer was martyred by religious fanatics because he termed an Islamofascist law (blasphemy law) as a black law

Please participate in this campaign by joining this page.

http://www.facebook.com/pages/Everyone-Declare-Pakistans-Blasphemy-Law-as-Black-Law-Campaign/184005861618624?v=wall

On 4 January 2011, Governor Punjab Salman Taseer was shot dead by an Islamofascist terrorist in Islamabad.

Shaheed Salman Taseer’s only crime was:

1. He raised voice in support of an innocent Christian woman, Aasia bibi, who is currently sentenced to death by a Pakistani court because of her alleged blasphemy to the Prophet Muhammad (peace be upon him).

2. Saheed Taseer termed the notorious blasphemy law as a black law and wanted the law to be revised in order to put a stop to its misuse and also to create more tolerance in Pakistani society.

3. Fanatic mullahs in Pakistan (supported by right wing lawyers, journalists, politicians etc) condemned Taseer because of his stance that “the Blasphemy Law is a Black Law”. He was killed because of uttering these exact words.

Therefore, the aim of this campaign (facebook page) is to honour Salman Taseer’s sacrifice, and to show to the entire world that Taseer was not alone. We all say that Pakistan’s blasphemy law is a black law and that the law must be repealed or at least revised to create more space for tolerance and diversity in Pakistani society.

Join this campaign as a tribute to Salman Taseer’s great sacrifice and to participate in our struggle against Islamofascism in Pakistan.

http://www.facebook.com/pages/Everyone-Declare-Pakistans-Blasphemy-Law-as-Black-Law-Campaign/184005861618624?v=wall

Here is a glimpse of what what we are uniting against:

Malik Mumtaz Hussain Qadri in Islamabad Court

About the author

Abdul Nishapuri

14 Comments

Click here to post a comment
  • Excellent step, much needed to show to haters that Salman Taseer was not alone.

    I am very pleased to join this campaign by joining the fb page, let my voice be counted.

  • Jamaat Ghair Islami, PML-N and Tehreek Insaf lawyers celebrating the killer

    Malik Mumtaz Hussain Qadri in Islamabad court

  • Taseer had traveled from Lahore to Sheikhupura district jail on November 20 to meet Aasia Bibi, saying, “She is poor and belongs to a minority community and should be pardoned.”

    Talking to the media men after the meeting, he said that Aasia Bibi has denied that she had said anything disrespectful to the Holy Prophet (PBUH) or Islam, adding that she accused the villagers who had chased her to her home of sexually assaulting her and dragging her through the streets. Taseer said that he did not want to interfere in the judicial proceeding, but he would do as much as he could in his capacity to make sure that she does not get punished for a crime she said she had not committed. Taseer added that it was for President Zardari to decide whether he would or wouldn’t grant her appeal.

    Two days later, Salmaan Taseer told a private television channel that Pakistan’s Blasphemy Law is man-made and not God-given, and that his meeting with Aasia Bibi is being politicized by the clergy to instigate the masses against him. Salmaan Taseer said that no Muslim could even imagine blasphemy, and the issue important for him was reviewing the Blasphemy Law.

    He said he had conducted a thorough investigation of the case and concluded that the law was misused against Aasia. The governor said in his opinion, blasphemy itself was an offence, but to misuse it by falsely accusing someone was a greater offence.

    Aasia’s case provoked international concern and even criticism inside Pakistan, where sensitive Islamic issues rarely lead to dissension or debate. Following Taseer’s meeting with Aasia Bibi, the clergy bitterly criticized him and warned the president of a countrywide agitation against him if the blasphemy accused was granted presidential pardon. The Tehreek Namoos-e-Risalat, an alliance of the pro-blasphemy law, small and big religious parties had even asked the president to dismiss Punjab Governor Salmaan Taseer for his harsh views against the blasphemy law.

    Blasphemy laws have existed in British India since 1860. In 1927, Article 295 was added to the Penal Code under which “deliberate and malicious acts intended to outrage religious feelings of any class by insulting its religious belief” became a culpable offence.

    The controversial law was non-discriminatory and conviction under its provisions depended exclusively on conclusive evidence, as a consequence of which there were only ten blasphemy cases in the 58 years between 1927 and 1985. However, since that year the number of blasphemy cases has soared to more than 4,000.

    In 1982, Ziaul Haq introduced Section 295-B in the Penal Code of Pakistan, under which “defiling the Holy Quran” became punishable by life imprisonment. In 1986, Section 295-C was added, mandating capital punishment for “use of derogatory remarks in respect of the Holy Prophet”. Even the law minister at the time did not support the bill when it was introduced in the National Assembly “on the ground that the Quran did not prescribe a penalty for this offence”.

    Amir Mir
    The controversy that led to the murder

    Wednesday, January 05, 2011
    http://www.thenews.com.pk/TodaysPrintDetail.aspx?ID=24010&Cat=2

  • It is not black law it is Islamic law. If you are against it then you have to leave Muslim lands and live in briton.

    Let the faith murtad Taseer be a lesson.

    Allahu Akhbar!

  • What kind of Muslim would support the acceptance of blasphemy against rasululah and. Allah. It is an honorable act that someone done his brave Islamic duty and put a stop to this evil. How sad is it that the people of Pakistan are becoming like the kuffar and leaving the seen and law of Allah (swt). Salaam brothers and sisters, please take my sincere advice, I do not want to offend anyone and I beleive in tolerance. Islam is tolerant to most except those who attack it. And Allah will protect his seen through the hands of the believers. Peace

  • “”It is ironic that they play God every day, yet they are against blasphemy. They declare people to be liable to live or die, which are Godly decisions. According to them, anyone who expressed sympathy over the death of a blasphemer was also committing blasphemy. Let me commit it then. Salmaan Taseer, may you rest in peace. Aasia Bibi may you count me as one of your supporters””

    http://www.dailytimes.com.pk/default.asp?page=2011%5C01%5C07%5Cstory_7-1-2011_pg3_4

  • Muslims living in Christian lands commit blasphemy everyday by not recognizing their God.Similarly the good doctor Naik and idiots like him living in a Hindu majority country are guilty of blasphemy to the Hindu gods.
    So, blasphemy is just an issue of geography.
    The advocates of this law should take it and shove it up their holy site where sun don’t shine.

  • A lot of Qadri are alive and they are brainwashed by dirty mullahs. all of these bastards will go to hell.

  • کاش انہیں ضیا مل جائے !

    وسعت اللہ خان
    بی بی سی اردو ڈاٹ کام، کراچی

    اس کرہِ ارض کی آبادی چھ ارب نوے کروڑ ہے۔اس میں ایک ارب ستاون کروڑ مسلمان ہیں۔ یعنی دنیا کے ہر چوتھے شخص کی وابستگی اسلام سے ہے۔ باون ممالک اور خطوں میں اکثریتی آبادی مسلمان ہے۔ اس دنیا کے تریپن فیصد مسلمان پندرہ ممالک میں بستے ہیں۔

    (ایک)

    انڈونیشیا کی پچیس کروڑ آبادی میں سے چھیاسی فیصد کلمہ گو ہیں۔انیس سو پچھتر میں قائم ہونے والی انڈونیشین علما کونسل شرعی قوانین کے نفاز میں حکومت کی رہنمائی کرتی ہے۔دو ہزار چھ میں انڈونیشیا میں چھ مذاہب کو سرکاری عقیدہ تسلیم کیا گیا۔اسلام ، کیتھولک ازم، پروٹسٹنٹ ازم ، بدھ ازم ، ہندو ازم اور کنفیوشس ازم۔انڈونیشیا کے پینل کوڈ کے آرٹیکل ایک سو چھپن اے کے تحت توہینِ مذہب اور مذہبی منافرت پھیلانے کی زیادہ سے زیادہ سزا پانچ برس قید ہے۔

    ( دو)

    ملیشیا میں ستر فیصد آبادی مسلمان ہے

    انڈونیشیا کے ہمسایہ ملک ملیشیا میں ستر فیصد آبادی مسلمان ہے۔سیکولر عدالتوں کے ساتھ ساتھ شرعی عدالتی نظام بھی کام کرتا ہے۔ملیشین وفاق میں شامل کئی ریاستوں میں قانون سازی کا ماخذ شریعت ہے۔وفاقی پینل کوڈ کے آرٹیکل دو سو پچانوے اور دو سو اٹھانوے اے کے تحت توہینِ مذہب کی زیادہ سے زیادہ سزا تین سال قید اور ایک ہزار امریکی ڈالر کے مساوی جرمانہ ہے۔

    (تین)

    ملیشیا سے ذرا پرے آبادی کے لحاظ سے تیسرا بڑا مسلمان ملک بنگلہ دیش ہے۔پندرہ کروڑ میں سے تراسی فیصد آبادی کلمہ گو ہے۔انیس سو ترانوے میں جماعتِ اسلامی بنگلہ دیش نے ایک قانونی بل پارلیمنٹ میں پیش کیا جس کے تحت پاکستان کی طرز پر توہینِ قرآن و رسول پر عمر قید اور سزائے موت تجویز کی گئی۔لیکن یہ بل مسترد ہوگیا۔اس وقت بنگلہ دیشی پینل کوڈ کے آرٹیکل دو سو پچانوے اے کے تحت توہینِ مذہب پر پانچ برس تک قید اور جرمانے کی سزا ہے۔

    ( چار)

    افغانستان کی ننانوے فیصد آبادی مسلمان ہے۔ سن دو ہزار چار میں نافذ ہونے والے آئین کے تحت عدالتیں جرم کی سنگینی کے حساب سے توہینِ مذہب پر سزائے موت تک دے سکتی ہیں۔لیکن اگر مجرم سزا سنائے جانے کے تین روز کے اندر اظہارِ پشیمانی کرے تو سزا ساقط بھی ہوسکتی ہے۔

    ( پانچ)

    ایران میں ننانوے فیصد مسلمان ہیں

    ایران کی ننانوے فیصد آبادی مسلمان ہے اور ملکی قوانین کا ماخذ فقہِ جعفریہ ہے۔ایرانی پینل کوڈ میں توہینِ مذہب کے لئے علیحدہ سے کوئی شق نہیں بلکہ اسلامی حکومت کی مخالفت ، توہینِ مذہب اور اکثریتی عقیدے سے متصادم مواد کی اشاعت پر سزاؤں کو ایک ہی خانے میں ڈال دیا گیا ہے۔ان میں سے کسی جرم پر بھی اس کی سنگینی کے اعتبار سے سزائے موت تک دی جاسکتی ہے۔

    (چھ)

    سعودی عرب کی لگ بھگ سو فیصد آبادی مسلمان ہے۔سعودی پینل کوڈ حنبلی مکتبہِ فکر کے تحت بنائے گئے شرعی قوانین ، فتاوی اور شاہی فرمانوں اور ان کے تحت وقتاً فوقتاً بنائے جانے والے ذیلی ضوابط کا مجموعہ ہے۔توہینِ مذہب حدود کے دائرے میں آتا ہے۔ جرم کی سنگینی کے اعتبار سے جرمانے ، کوڑوں ، قید یا موت کی سزا دی جاسکتی ہے۔ بادشاہ پشیمانی ظاہر کرنے پر مجرم کو معاف بھی کرسکتا ہے۔

    (سات)

    سعودی ہمسائے یمن کی ننانوے فیصد آبادی مسلمان ہے۔اسلام سرکاری مذہب ہے۔توہینِ مذہب کے مقدمات کا فیصلہ شرعی قوانین کے تحت کیا جاتا ہے اور جرم کی سنگینی کے اعتبار سے کوڑوں اور قید کی سزا دی جاسکتی ہے۔

    ( آٹھ)

    متحدہ عرب امارات کا سرکاری مذہب اسلام ہے۔ تمام سرکاری و نجی سکولوں میں اسلام کی بنیادی تعلیم لازمی ہے۔توہینِ مذہب پر جرم کی نوعیت کے اعتبار سے جرمانے یا قید کی سزا ہوسکتی ہے۔لیکن انیس سو ترانوے میں وفاقی سپریم کورٹ کی دی گئی رولنگ کے مطابق شرعی سزاؤں کا اطلاق غیر مسلمانوں پر نہیں ہوگا۔

    ( نو)

    کویت میں قانون سازی کا منبع شریعت ہے۔ لیکن توہینِ مذہب کا معاملہ انیس سو اکسٹھ کے پریس اینڈ پبلیکشنز لا کا حصہ ہے۔ کوئی بھی تحریر و تقریر جس سے مذہب یا مقدس شخصیات کی اہانت کا پہلو نکلتا ہو اس پر جرمانے یا قید کی سزا ہوسکتی ہے۔

    ( دس)

    اردن کی پچانوے فیصد آبادی مسلمان ہے۔ اسلام سرکاری مذہب ہے۔ توہینِ مذہب کے قانون کے تحت تین برس تک قید اور جرمانے کی سزا ہے۔

    ( گیارہ)

    ترکی کی ساڑھے سات کروڑ کی آبادی میں پچاسی فیصد مسلمان ہیں۔ ملک پر پچھلے دو ادوار سے اسلام پسند جسٹس اینڈ ڈویلپمنٹ پارٹی کی حکومت ہے۔ توہینِ مذہب کے لئے علیحدہ سے کوئی قانون نہیں ہے۔ البتہ ترک پینل کوڈ میں دو ہزار پانچ میں شامل کئے گئے آرٹیکل تین سو ایک کے تحت ترک قوم اور اس کی اقدار، ریاست، پارلیمنٹ، عدلیہ اور فوج کی ہتک پر چھ ماہ سے دو برس تک قید کی سزا دی جاسکتی ہے۔

    ( بارہ)

    مصر کی نوے فیصد آبادی مسلمان ہے۔ سرکاری مذہب اسلام ہے۔ تمام نجی و سرکاری سکولوں میں اسلامک سٹڈیز لازمی مضمون ہے۔ ہر مصری شہری کے شناختی کارڈ میں مذہب کا خانہ بھی ہے۔ جامعہ الازہر کی اسلامک ریسرچ کونسل مذہبی امور پر حکومت کی رہنمائی کرتی ہے۔ اس کونسل کی اجازت کے بغیر کوئی بھی مذہبی کتاب شائع نہیں ہوسکتی۔ سن دو ہزار چھ میں بننے والے توہینِ مذہب کے قانون کے تحت چھ ماہ تا پانچ برس قید اور ایک ہزار پاؤنڈ جرمانے تک سزا ہوسکتی ہے۔

    ( تیرہ)

    الجزائر کی ننانوے فیصد آبادی مسلمان ہے۔ اسلام سرکاری مذہب ہے۔ انیس سو نوے کے ایک قانون کے تحت وزارتِ مذہبی امور ایسی کسی بھی شے کی اشاعت کو روک سکتی ہے جس سے توہین مذہب کا پہلو نکلتا ہو۔ پینل کوڈ کے تحت مذہبی اہانت پر دو سال تک قید اور پانچ لاکھ دینار تک سزا ہے۔

    ( چودہ)

    نائجیریا کی ساڑھے بارہ کروڑ آبادی میں پچھتر فیصد مسلمان ہیں۔ ملک کے مسلم اکثریتی علاقوں میں شرعی و سیکولر عدالتی نظام کام کرتا ہے۔ پینل کوڈ کی شق دو سو چار کے تحت توہینِ مذہب کی سزا دو برس تک ہے۔

    ( پندرہ )

    محمد علی جناح سے لے کر ذوالفقار علی بھٹو تک کسی کو بھی خیال نہیں آیا کہ یہ دفعات ناکافی ہیں۔اگر خیال آیا تو تیسرے فوجی آمر ضیا الحق کو۔ جس نے دفعہ دو سو پچانوے اور دو سو پچانوے اے کے ہوتے ہوئے بھی دو سو پچانوے بی کا اضافہ کیا جس کے تحت قرانِ کریم کی براہ راست یا بلا واسطہ یا اشاروں یا کنایوں میں توہین کی سزا عمر قید رکھی۔
    سوڈان کی چار کروڑ تیس لاکھ آبادی میں ستر فیصد مسلمان ہیں۔کرمنل ایکٹ کے سیکشن ایک سو پچیس کے تحت توہینِ مذہب کے مجرم کو جج جرم کی نوعیت دیکھتے ہوئے جرمانے ، قید یا چالیس کوڑوں کی سزا دے سکتا ہے۔

    پاکستان کی سترہ کروڑ آبادی میں مسلمان ستانوے فیصد ہیں۔ پاکستان کے پینل کوڈ کی دفعہ ایک سو تریپن اے کے تحت توہینِ مذہب اور مذہبی منافرت پھیلانے کی زیادہ سے زیادہ سزا پانچ برس قید ہے۔ دفعہ دو سو پچانوے کے تحت مذہبی عبادت گاہوں کی بے حرمتی اور توڑ پھوڑ قابلِ تعزیر جرم ہے۔ جبکہ دفعہ دو سو پچانوے اے کے تحت زبان یا قلم سے مذہبی جذبات مجروح کرنے پر قید ، جرمانے یا اشاعت شدہ مواد کی ضبطی ہوسکتی ہے۔ اس دفعہ کے تحت قرآن سمیت تمام الہامی کتابیں اور رسولِ اکرم سمیت تمام انبیا کی توہین کا احاطہ ہوتا ہے۔

    تیس برس تک چار گورنر جنرل ، چار فوجی و غیر فوجی صدور اور آٹھ وزرائے اعظم اور تمام دینی و سیاسی جماعتیں انہی تین دفعات کو احترامِ مذہب کے لئے کافی سمجھتے رہے۔ محمد علی جناح سے لے کر ذوالفقار علی بھٹو تک کسی کو بھی خیال نہیں آیا کہ یہ دفعات ناکافی ہیں۔اگر خیال آیا تو تیسرے فوجی آمر ضیا الحق کو۔ جس نے دفعہ دو سو پچانوے اور دو سو پچانوے اے کے ہوتے ہوئے بھی دو سو پچانوے بی کا اضافہ کیا جس کے تحت قرانِ کریم کی براہ راست یا بلا واسطہ یا اشاروں یا کنایوں میں توہین کی سزا عمر قید رکھی۔ (تورات ، زبور اور انجیل سمیت کسی اورالہامی کتاب یا صحیفےپر یہ قانون لاگو نہیں ہوتا)۔ جبکہ دفعہ دو سو پچانوے سی کے تحت رسولِ اکرم کی براہ راست یا بلا واسطہ یا اشاروں یا کنایوں میں توہین کی کم ازکم سزا موت رکھی۔( اس دفعہ کے دائرے میں دیگر انبیائے کرام نہیں آتے)۔

    ضیاالحق کے دور میں ملک میں کلاشنکوف اور ہیروئین کی بیماریاں پھیلیں

    یوں ضیا الحق نے پاکستان کو دنیا کا واحد مسلمان ملک بنا دیا جہاں توہینِ مذہب کا قانون پہلے سے نافذ ہوتے ہوئے بھی الہامی کتابوں اور انبیائے کرام کی توہین کو نئی درجہ بندی میں بانٹ دیا گیا اور شاہ خالد بن عبدالعزیز کے مشیر ڈاکٹر معروف دوالبی ، شریف الدین پیرزادہ ، اے کے بروہی ، ڈاکٹر تنزیل الرحمان ، جسٹس افضل چیمہ اور مولانا ظفر احمد انصاری وغیرہ کی رہنمائی میں مرتب کردہ حدود اور توہینِ مذہب کے قوانین کے مسودات کو الہامی دستاویزات کے مساوی سمجھ لیا گیا۔

    چنانچہ ضیا الحق کے بعد آنے والی جس حکومت نے بھی اس قانون کے انتقامی استعمال کو روکنے کے لئے ترمیم کی بات کی اسے شریعت دشمن قرار دیا گیا۔ترمیم تو کجا اس قانون کے تحت ہونے والی زیادتیوں کی جانب اشارہ بھی گناہِ کبیرہ اور لائقِ قتل قرار پایا۔زیریں عدالتیں ہجوم کے دباؤ میں آتی چلی گئیں۔اور مقدمے کے دوران یا با عزت بری ہونے کی صورت میں بھی ملزموں کو یا تو قتل ہونا پڑا ، یا چھپنا پڑا یا ملک چھوڑنا پڑا۔

    سوال یہ ہے کہ اگر پاکستان میں اکتیس برس سے نافذ توہینِ مذہب کا قانونی مسودہ واقعی الہامی حیثیت رکھتا ہے تو پھر سعودی عرب اور ایران سمیت دنیا کا کوئی اور مسلمان ملک اب تک اسے اپنا ماڈل نا بنا کر اسکے فیوض و برکات سے کیوں محروم ہے۔

    تو کیا پاکستان کے علاوہ باقی مسلمان ممالک اور حکومتوں کا عقیدہ کمزور یا گمراہ ہے یا وہ اسلام کی اس تشریح کو سمجھنے سے قاصر ہیں جسے پاکستانی مسلمانوں کا ایک طبقہ درست سمجھتا ہے۔

    پاکستان میں دنیا کی کل مسلمان آبادی کا صرف گیارہ فیصد بستا ہے۔اس گیارہ فیصد میں ایسے کیا سرخاب کے پر لگے ہیں جو انڈونیشیا ، بنگلہ دیش اور نائجیریا کو بھی نصیب نہیں۔ حلانکہ ان تین ممالک میں مجموعی طور پر ساڑھے باون کروڑ مسلمان رہ رہے ہیں۔

    کاش انہیں بھی کوئی ضیا نصیب ہو جائے ۔کاش ان کی بھی زندگی اور آخرت سنور جائے ۔۔

    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2011/01/110109_baat_se_baat_fz.shtml