Featured Original Articles

Cosmetic Gestures can not hide the deep undercurrents of Takfiri Hate

 

 

It is interesting that Rashid Soomro has also come out in support of the Hindu community in Sindh. He has essentially joined the bandwagon after the Sindh Government took a firm stand against the Mithoo thugs. It is also a sign of a long standing hypocrisy by Rashid Soomro and JUI.

Where were they when a Shia mosque was bombed in Shikarpur?? Where was Rashid Soomro when Lal Shahbaz Qalandar’s shrine was attacked in Sindh in 2017!

Both attacks were by Sipah e Sahaba/ASWJ-LeJ and resulted in scores of casualties of Sunni, Sufi and Shia Muslim. Sipah e Sahaba is a Takfiri Deobandi offshoot of JUI. Sadly, this is part of a historical pattern of hypocrisy by JUI and its co-sectarians.

While Abul Kalam Azad was playing up to the liberal, secular gallery, Maulana Shabbir Usmani denied Jinnah’s Shia identity when he co-opted Jinnah’s funeral prayers.

In 1977, JUI supported by “liberal” “anti establishment” types, danced in the laps of General Zia’s Junta when they collaborated with him in the PNA Movement.

Throughout the 1990s and beyond, JUI refused to support PPP in removing the problematic clauses added to Pakistan’s Constitution by General Zia ul Haq.

The “rationalist” JUI and its co-sectarians accuse mainstream Sunni and Shia Muslims as “Mushrikeen” (polytheists) because of their respect for Sufi saints and their belief in Intercession (as elaborated in the Koran).

So it ironic and a pattern of hypocrisy to pretend that they care about the rights of Hindu minorities.

It is after all JUI’s madrasah network that has diffused intolerance and bigotry against not just Hindus and Christians but even Muslims in Sindh – and all across Pakistan.

This didn’t happen first time in the history of colonial and post colonial Indo-Pak subcontinent when Mullahs from Deoband Madrassah Tehreek having roots in Indian Nationalist movent led by AINC showed their fake sympathies toward Hindus, even some times toward Christians and Sikh but they never went to any Shia Imambargah or Sufi Shrine targeted by Takfiri terrorist organizations in Pakistan even before partition they were part of the Shia-Sunni riots problem( one exceptional case was visit of Shrine Shahbaz Qalandar after suicide bombing made by a delegation of JUI-F.)

JUI-F fully supported Talibanism in the country. Rashid Somroo and before him, his father Khalid Somroo never condemned sectarian extremist organizations like #SSP aka #ASWJ aka #SunniRabtaCommitteee #AfghanTaliban and their rising in #Sindh.

JUI-F shares responsibility of the rising of sectarian divide and of tendency of anti-composite culture as other organizations from different sects share.

I didn’t agree that JUI-F and other right wing Mullahs are included in real Secular face of Sindh.

They always spread hatred against composite culture of Indian Subcontinent and even when they had used to preach Indian Secular Nationalism in colonial era, they always excluded Sufi Sunnis(while declaring them Innovators and polytheists), Shias( while declaring them apostates) and JUI-F was one of the parties united in PNA during 77 and they played important role in imposing the darkest Martial Law against PPP. In 90s it was one of those religious parties who resisted against every step PPP tried to aborgate the retrrogressive amendments in 1973 constitution of Pakistan made by Ziaulhaq in the name of religion.

 

اس تصویر میں عرفانہ ملاح کا چہرہ تو سندھ کے سیکولر چہرے کی نمائندگی کرتا ہے لیکن یہ جو دو چہرے پیچھے ہیں یہ سندھ کے سیکولر چہرے کی ترجمانی ہرگز نہیں کرتے بلکہ ان کا تعلق سندھ میں گزشتہ کئی عشروں سے مسلسل بڑھنے والی فرقہ وارانہ تقسیم کو گہرا کرنے والوں میں سے ہے اور جے یوآئی ایف نے اپنے زیرانتظام مدارس و مساجد کے دروازے کبھی دیوبند کے اندر سے اٹھنے والی تفرقہ باز کالعدم و نام نہاد ہنود و یہود و نصاریٰ کے خلاف جہاد کے نام پر بننے والی تنظیموں کی قیادت اور کارکنوں کے لیے بند نہ کیے اور نہ ہی کبھی اعلانیہ اُن کی مذمت کی تو یہ کیسے سندھ کے سیکولر چہرے کا حصہ بن سکتے ہیں؟

میں عرفانہ ملاح کی اس بات سے اتفاق نہیں کرسکتا

ماضی کی جمعیت علمائے ہند تو پھر بھی سیکولر نیشنلزم کا نام استعمال کرلیتی تھی، اُس کی آف شوٹ جے یو آئی ایف تو سرے سے سیکولر ازم پر اور سیکولر قومیت پر یقین ہی نہیں رکھتی، اسے پاکستان تحریک انصاف اور اُس کا چئیرمین ‘یہودی ایجنٹ’ نظر آتا ہے اور قادیانی ایجنٹ لگتا ہے یہ ایم ایم اے میں رہی تو کے پی کے میں پوری شدت سے مذھبی انتہاپسندی کو پروان چڑھاتی رہی ہے اور سندھ میں تو جے یو آئی ایف کے بارے میں یہ کہا جاتا ہے کہ کب اس کا کارکن سپاہ صحابہ /اہلسنت والجماعت کا تفرقہ پسندانہ ماسک چہرے پر اور ہاتھ میں اُس کا جھنڈا تھام لیتا ہے پتا ہی نہیں چلتا

ابھی اس جماعت نے اسلام آباد میں حکومت مخالف دھرنے میں مذھبی کارڈ استعمال کرنے پر پورا زور لگا رکھا ہے

سندھ کے پروفیسر عرفانہ ملاح جیسے باشعور سیکولر دانشور جب ایسی مغالطہ آفرین پوسٹیں لگاتے ہیں تو مجھے بہت افسوس ہوتا ہے

میں اپنے ان جیسے بھولے ساتھیوں سے پوچھتا ہوں کہ یہ جو سُلطان آباد سے لیکر شکار پور، جیکب آباد تک اور سجاول ٹھٹھہ سے لیکر بدین اور آگے پورے تھرپارکر تک جن بنیاد پرست اور انتہاپسندوں نے سندھ کے سیکولر چہرے پر کالک ملنے کی کوشش کی ان میں کیا جے یو آئی ایف کا کوئی کردار نہیں ہے؟

کیا راشد سومرو اور مرحوم خالد سومرو سمیت جے یو آئی ایف سندھ کی قیادت نے کبھی سندھ کے اندر ہونے والی ہندؤ لڑکیوں کی جبری تبدیلی مذھب اور شادیوں کے نہ ختم ہونے والے سلسلے کو روکنے کے لیے اس میں ملوث عناصر کے خلاف کوئی واحد اخباری بیان بھی جاری کیا؟ کیا کبھی اس ملک میں شیعہ، صوفی سُنی، مسیحی اور احمدیوں پر ہوئے دہشت گرد حملوں کی ذمہ داری قبول کرنے والوں کو چتاؤنی دیتے ہوئے امامبارگاہوں، مزارات، کلیساؤں میں ایسے کھڑے ہوئے؟

میں جانتا ہوں یہ تنقید ٹھنڈے پیٹ کئی ایک لوگوں کو ہضم نہیں ہوگی اور ہوسکتا ہے کچھ چہروں سے سیکولر نقاب اتر جائے