Original Articles

Data Darbar Blast: Sufi Shrine attacked by Saudi Wahhabi radicalized Pakistani

 

 

The tragic suicide attack on Data Darbar was by a Pakistani Wahhabi who was radicalised in Saudi Arabia.

Mohsin was radicalised by Tayyab. He belonged to the Tehrik e Taliban/Jamaat ul Ahrar and then its subsidiary, the Tehzib ul Ahrar.

Data Darbar is one of Pakistan’s many Sufi shrines where the majority of attendees are Sunni Muslims. Shrines are also the place where Sunnis, Shias and Hindus are all welcomed. Pakistan’s mainstream culture is Shrine Culture.

It is only despised by Pakistan’s liberal elites and by Takfiri Dobandi hardliners. The narrative of shrines and the attacks on shrines contradict the False Sunni vs Shia binary that is spread by liberals and Takfiri hardliners.

Today’s arrest and investigations once again contradict the False binaries spread by Pakistani liberals like #JibranNasir.

داتا دربار خودکش بمبار کے سہولت کار کا پروفائل

حضرت علی عثمان ہجویری داتا گنج بخش دربار پہ خودکش بمبار کا سہولت کار پکڑا گیا-
سہولت کار کا نام محسن خان ولد بہرام خان ہے اور یہ چارسدہ ضلع کے علاقے شبقدر سے ہے-

محسن خان ایک مزدور کے بھیس میں آکر بھاٹی گیٹ رہا اور اس نے خودکش بمبار کو وصول کیا-

محسن خان کے بارے میں معلوم ہوا ہے کہ یہ جب سعودی عرب میں مقیم تھا تو وہاں پہ طیب اللہ خان جوکہ مہمند ضلع سے تعلق رکھتا ہے نے اس کے خیالات کو تبدیل کیا اور محسن خان جوکہ ایک پرامن سنی دیوبندی خیالات کا حامل تھا وہ تکفیری جہادی وہابی خیالات کا مالک بن گیا، اس نے تکفیری وہابی خیالات کی حامل تنظیم تحریک طالبان پاکستان میں شمولیت اختیار کی جب طالبان سے الگ ہوکر جماعت احرار بنی تو یہ اس میں شامل ہوگیا اور جب اس سے ٹوٹ کر حزب احرار بنی تو یہ اس کا حصہ بن گیا-

ماخوذ…. ڈیلی ڈان