Original Articles Urdu Articles

Naya Daur’s Hypocrisy against Bilawal

 

The 2014 massacre of Anti-Taliban Sunnis by the then PML N government exposed Pakistani liberals in a manner never seen before. Pakistan’s leading human rights “champions” and liberals were publicly mocking the bloodied victims of Model Town and their leadership under Tahir ul Qadri.

Aside from the exceptions, these Pakistani liberals all backed the murderous PML N regime. These liberals had nothing but contempt and derision for the workers and activists of PAT. They often mocked their Sunni Sufi beliefs and even the name of PAT’s leader, Tahir ul Qadri by mocking him as “Padri”!

The result is that we are now left with Khadim Rizvi who had been propped up by PML N and the establishment to undercut Sunni Barelvi moderates as well as the PPP Punjab vote bank.

These are the liberals who are now blasting Bilawal Bhutto Zardari from their new pulpit at the #NayaDaur – run by Patwari and commercial liberal sellouts.

Sometime back, in one of his million gaffes, Imran Khan stated that he would rather commit suicide than seek #IMF assistance. His government just accepted IMF loans!

When Bilawal reminded Imran Khan of his statement, it was he who was attacked and not Imran Khan!! Such is the level of hypocrisy amongst Pakistani liberals.

Clearly, it is Imran Khan who was either joking or lying about his commitment to suicide and his opposition to the IMF. Either ways, he should have been held accountable to his atrocious statement.

But accountability, or rather selective accountability in Pakistan is only reserved for the PPP and the weak. It is never reserved for the powerful. And Pakistani liberals represent the height of this moral cowardice. Often times, you will see them share video clips of harmless Sufi beliefs and people gyrating and dancing because of some interpretation of faith.
However, these same liberals will not call out the murderous incitement of #ISIS affiliated hate groups like Sipah Sahaba.

 

پاکستانی کمرشل لبرل مافیا کو عمران خان کے آئی ایم ایف کے ساتھ ڈیل پہ خودکشی کرنے والے بیان کو لیکر اب آئی ایم ایف سے ڈیل پہ سیاست دانوں کی تنقید اور طنز بھی چھبنے لگا ہے، بلاول بھٹو زرداری اور پیپلزپارٹی تو ان کی خوردبینی تنقید کے نشانے پہ رہتے ہی ہیں، بلاول نے اپنے ٹوئٹ میں طنزیہ انداز میں پوچھ لیا کہ آئی ایم ایف سے ڈیل کے بعد کس نے وزیراعظم کو خودکشی کرتے دیکھا ہے؟

تو ہمارے کمرشل لبرل مافیا کو لگتا ہے کہ یہ انتہائی گرا ہوا اورنامناسب طنز ہے

 

کمرشل لبرل مافیا ایک دم سے ماہر نفسیات بن گیا ہے اور لگا ہے اخلاقیات کے بھاشن دینے

کمرشل لبرل مافیا کے ایک سیکشن جو بلاول بھٹو پہ اخلاقیات کا ایٹم بم گرانے کا جنون طاری ہے تو اس سیکشن سے یہ ضرور پوچھا جانا چاہیے کہ جب ڈاکٹر طاہر القادری سانحہ ماڈل ٹاؤن کے مقتولین کے لیے لانگ مارچ پہ نکلے تھے تو اس زمانے میں طاہر القادری کو ‘طاہر پادری’ سمیت برے برے القاب اور یہاں تک کہ زہنی مریض تک قرار دیا گیا تو اس وقت کسی کمرشل لبرل نے اپنے علم نفسیات کی روشنی میں اسے مینٹل ہیلتھ سے کھلواڑ قرار کیوں نا دیا؟
پھر تحریک لبیک کے ابھار کے دنوں میں نیوز ویک ایشیا جیسے جریدے نے

Uprising of Beralvi Beasts

جیسی سرخی سرورق پہ لگائی تو کسی نے اس کو

Lowest of the lows

نہیں کہا تھا

یہ جو امثال ہم نے درج کیں یہ واقعی انتہائی گری ہوئی اور بدتر غیراخلاقی پروپیگنڈے کی مثالیں ہیں جن پہ کمرشل لبرل مافیا کا ضمیر کبھی نہیں جاگا

دوہزار آٹھ سے لیکر 2013ء تک پیپلزپارٹی کے صدر آصف علی زرداری سمیت پی پی پی کی لیڈرشپ کے خلاف انتہائی گھٹیا پروپیگنڈا ہوا لیکن ہم نے کمرشل لبرل مافیا کے اس سیکشن کو کبھی اخلاقی بھاشن مستعدی کے ساتھ دیتے نہیں دیکھا لیکن ایک ایسی تنقید جو بلاول بھٹو نے کی جس میں کوئی مینٹل ہیلتھ کا سرے سے مذاق ہی نہیں ہے بلکہ شرم دلائی گئی ہے موجودہ وزیراعظم کو اسے انتہائی نچلی سطح کی گری ہوئی بات قرار دینا خود ایک بددیانتی ہے اور پھر اس پہ ایک بلاگ دے مارنا یہ دوسری بڑی بددیانتی ہے-

پیپلزپارٹی کی رہنما شیری رحمان کو اصل میں اس کا جواب دینا بنتا ہے کیونکہ وہ پیپلزپارٹی میں کئی ایک کمرشل لبرل کے لیے حمایت کرنے والی خیال کی جاتی ہیں

(note in Urdu by Aamir Hussaini)