شہید بھٹو پہلی وزیراعظم خاتون تھیں جو وزیراعظم ہوتے ہوئے بچے کی پیدائش کے عمل سے گزریں۔ تحریر : خالد عمر ترجمہ – عامر حسینی

 

شہید بھٹو پہلی وزیراعظم خاتون تھیں جو وزیراعظم ہوتے ہوئے بچے کی پیدائش کے عمل سے گزریں۔

کچھ اتفاقات بہت دلچسپ ہوتے ہیں

تحریر : خالد عمر
ترجمہ عامر حسینی

اکیس جون بے نظیر بھٹو کا جنم دن ہے۔آج کے دن ہی نیوزی لینڈ کی وزیراعظم مسز جیسنڈا آرڈن نے ایک بچی کو جنم دیا ہے۔

بہت عرصے بعد وہ عالمی رہنماء ہیں جنھوں نے حکومتی سربراہ ہوتے ہوئے بچی کو جنم دیا ہے۔

پہلی وزیراعظم خاتون جو دوران حکومت زچگی کے عمل سے گزر کر بچی کو پیدا کرنے والی تھیں وہ محترمہ بے نظیر بھٹو تھیں۔تین عشروں پہلے انھوں نے 25 جنوری 1990ء کو بیٹی کو جنم دیا تھا۔

لیکن اس بات کو یاد کرتے ہوئے تکلیف دہ یادیں تازہ ہوجاتی ہیں کہ پاکستان نے ان کے ساتھ کیا سلوک کیا۔ان کو مردانہ تعصبات کا سامنا کرنا پڑا بالکل ان عورتوں کے برعکس جو ماں بننے کے عمل سے گزر رہی ہوتی ہیں۔ایک ایسا ملک جس میں گریس فل عورتیں سرعام اپنا پھولا پیٹ تک نہیں دکھاتیں۔یہ کہا گیا کہ وزرات عظمی کے عہدے پہ فائز ہوتے ہوئے ان کو بچے کو جنم نہیں دینا چاہئیے تھا

محترمہ بے نظیر بھٹو کو یہ خوف لاحق تھا کہ اگر وہ آفس سے چھٹی لیتی ہیں اور نارمل ڈیلیوری کے عمل سے گزرتی ہیں تو ان کی غیر موجودگی میں اپوزیشن ان کی حکومت گرانے کی کوشش کرے گی۔ تو وہ سیزیرین سیکشن کی طرف گئیں۔تاکہ بنا تعطل کے اپنے فرائض سرانجام دیتی رہیں۔

انہوں لکھا، ‘اگلے ہی دن میں کام پہ واپس آگئی۔حکومتی کاغذات پڑھنے لگی اور سرکاری فائلوں پہ دستخط کرنے بیٹھ گئی۔مجھے تو بعد میں معلوم ہوا کہ میں ابتک کی معلوم تاریخ میں پہلی سربراہ مملکت تھی جس نے آفس میں ہوتے ہوئے بچے کی پیدائش کی۔

یہ خاص طور پہ نوجوان عورتوں کے لیے فیصلہ کن لمحہ تھا یہ ثابت کرنے کے لیے کہ عورتیں بچے جننے کے دوران بھی بلند ترین اور بہت زیادہ آزمائش والے قائدانہ عہدوں بھی کام کرسکتی ہیں۔

لیکن بختاور کی پیدائش جس کے نام کا مطلب خوش بختی ہے ان کی کوئی مدد نہ کرسکی۔ ان کو 1990 میں بختاور کی پہلی سالگرہ سے پہلے ہی برطرف کردیا گیا۔

نیوزی لینڈ کی وزیراعظم جو کہ پوری دنیا سے مبارکباد کے پیغام وصول رہی ہیں۔اور میٹرینٹی کی چھٹیوں پہ ہیں کی قسمت ‘دختر مشرق’ جیسی نہیں ہے۔

جو نہ تو اپنی زچگی کے دنوں میں سکون پاسکیں اور نہ ہی ماں بنکر ان کو سکون لینے دیا گیا۔وہ صرف مسلم دنیا کی پہلی منتخب خاتون وزیراعظم ہی نہیں تھیں بلکہ دنیا کی پہلی وزیراعظم تھیں جنھوں نے وزرات عظمی کے دنوں میں بچی کو جنم دیا تھا۔

The kind of shameful propaganda that Benazir Bhutto had to fade would have broken most – men and women. She never asked for a single concession and her supporters voted for her because she was simply the best leader to them. IMO, the most courageous Pakistani leader. She made mistakes but never claimed to be flawless. It would be incorrect to compare IK and NS to her as they are nowhere near.

It would be remiss to ignore the vicious slander and the urban myths of elitist gatherings that that were regularly planted against Benazir Bhutto. One of the chief smut manufacturers is #HussainHaqqani and amongst Benazir’s mistakes, IMO, is to have forgiven this feckless scorpion and deserter. Even in 2012, he let then PM YRG take the fall for a controversy that centred around him.

That was Benazir Bhutto. While Pakistan’s elites regularly abuse ZAB and her, she took the high rode on US-backed General Zia’s death.

From tax reforms to tackling extremism to addressing provincial autonomy, Benazir was and is ahead of her times. Sadly it seems that Pakistan’s hopes died with her murder.

 

Posted by Khalid Umar :

Some coincidences are intriguing.

It’s 21st June, Benazir Bhutto’s 65th birthday and today New Zealand Prime Minister Ms Jacinda Arden has given birth to a baby girl; first world leader after a long time to do so while in office. The first in the recorded history was Benazir Bhutto, who did it almost 3 decades earlier on 25 January 1990.

But it brings sad memories of how Pakistan treated her. She was hounded by male chuvinists and women alike on her way to motherhood. It was considered to be a lowly act, in a country where graceful women don’t show off openly their pregnant bump. It was said that she should not have had a child while in office.

Fearing that if she takes normal time away from office, the opposition would hasten their intrigues to topple her, she underwent an unplanned Caesarean section to ensure she continues her duties uninterrupted.

“The next day I was back on the job, reading government papers and signing government files,” she later wrote.

“Only later did I learn that I was the only head of government in recorded history actually to give birth while in office.

“It was a defining moment, especially for young women, proving that a woman could work and have a baby in the highest and most challenging leadership positions.”

But the birth of the daughter named “Bakhtawer” meaning “harbinger of luck” could not help her either. She was out of office on 06.08.1990 before her first birthday.

In comparison, the NZ PM is receiving felicitations from the world over and will have a maternity leave as usuak, not like “the daughter of the East” who could neither enjoy her pregnancy nor motherhood, although being not only the first democratically elected lady PM of a Muslim majority country but also the world’s first elected leader to give birth while in office.

Comments

comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*