Original Articles Urdu Articles

لشکر جھنگوی کا دہشت گرد اشتہاری اور مربی تنظیم اتحادی

14040036_10154362114407435_6142321304108492890_n

پاکستان رینجرز سندھ کے ہیڈ کوارٹر سے ایک اشتہار شائع کیا گیا ہے جس میں لشکر جھنگوی کے مبینہ چیف سید صفدر عرف یوسف حزیفہ عرف خراسانی کی گرفتاری میں مدد دینے والے کو 50 لاکھ روپے دینے کا اعلان کیا گیا ہے۔سندھ رینجرز کا یہ اعلان سندھ رینجرز کے کراچی آپریشن میں کالعدم تکفیری دیوبندی دہشت گرد تنظیم اہلسنت والجناعر/سپاہ صحابہ کے خلاف کاروائی نہ کرنے اور اسے غیرقانونی اجتماعات و ریلیاں منعقد کرنے پہ ہونے والی تنقید کا ممکنہ جواب لگتا ہے۔

لشکر جھنگوی ،طالبان،القاعدہ برصغیر سمیت جتنے تکفیری دہشت گرد نیٹ ورک کراچی میں سرگرم ہیں وہ اینٹی شیعہ،صوفی ،اسماعیلی ،احمدی ،یہاں تک کہ اعتدال پسند دیوبندیوں کے خلاف کاروائیاں اس آئیڈیالوجی اور فکر کے اثر میں کرتے ہیں جس کا اہلسنت والجماعت دیوبندی پرچار کرتی رہتی ہے۔

یہ تنظیم کالعدم صرف کاغذوں میں ہے اور آج تک سندھ رینجرز نے اس کے خلاف کوئی قدم نہیں اٹھایا ہے بلکہ سابق ڈی جی اور موجودہ ڈی جی رینجرز دونوں کی ہمدردیاں اس تنظیم کے ساتھ نظر آتی رہی ہیں۔بلکہ موجودہ ڈی رینجرز بلال اکبر نے اپنے دیوبندی خیالات کا اعلان جامعہ بنوریہ جیسے تکفیری مدرسے میں تقریر کے دوران کیا اور اپنی جانبداری کا ثبوت بھی فراہم کیا۔

لشکر جھنگوی سپاہ صحابہ کا ملٹری ونگ ہے اور اس بات کی نشاندہی معروف صحافی عارف جمال سمیت کئی صحافیوں اور دفاعی تجزیہ نگاروں نے کی ہے لیکن رینجرز لشکر جھنگوی اور سپاہ صحابہ کے درمیان تعلق اور رشتوں کو اہمیت دینے کو تیار نہیں ہے۔

لوگ سوال کرتے ہیں کہ کیا سندھ رینجرز کو کراچی آپریشن کے ٹھیک ہونے کے لیے ایک کالعدم تکفیری دہشت گرد تنظیم کی ریلیوں کی محتاجگی ہے ؟ہم سمجھتے ہیں جب تک مسئلہ کی جڑ تک نہیں پہنچا جائے گا تب تک دہشت گردی کا ناسور پھیلتا ہی چلاجائے گا۔سپاہ صحابہ صفدر عرف خراسانی جیسے دہشت گرد پیدا کرتی رہے گی ۔

14064056_10208824905354474_5550663019983750203_n