Featured Original Articles Urdu Articles

سعودی اسپانسرڈ تکفیری دیوبندی دہشتگرد گروہ کا باچا خان یونیورسٹی پر حملہ اور ہماری ذمہ داریاں- خرم زکی

 

تکفیری دیوبندی دہشتگرد خلیفہ عمر اور باچا خان یونیورسٹی پر حملہ

ذرا غور سے سن لیں اور پہچان لیں ان تکفیری دیوبندی دہستگردوں کے چہروں کو وہ افراد جوکسی اور کو نہیں بلکہ اپنے آپ کوکبھی را کبھی سی آئی اے کبھی موساد کے نام پربیوقوف بناتے رہتے ہیں. سن لیں کہ تکفیری کسے کہتے ہیں، تکفیری دیوبندی کسے کہتے ہیں، تکفیری دیوبندی دہشتگرد کون ہیں اور یہ کیوں ہمارے اسکول، کالجز اور یونیورسٹی پرحملے کررہے ہیں، کیوں ہمارےمعصوم بچوں کو، طالب علموں کو، عورتوں اور بچوں کو، اساتذہ کو، سنی اورشیعہ مسلمانوں کو قتل کررہے ہیں، شہید کر رہے ہیں. جی ہاں یہ کوئی انڈین شہری نہیں، یہ کوئی امریکی شہری نہیں. ان سب کا تعلق پاکستان سے ہے، یہ سب کوئی یہودی، ہندو یا عیسائی نہیں بلکہ سعودی اسپانسرڈ تکفیری دیوبندی ہیں. ان تکفیری دیوبندی دہشتگردوں کی نظر میں شیعہ مسلمان بھی کافر ہیں، سنی صوفی بریلوی مسلمان بھی کافر مشرک ہیں، پاکستان کی مسلح افواج بھی کافر مرتد ہے، پاکستان کا ہر کالج، یونیورسٹی اور اس میں پڑھنے والا ہر طالب علم کافر مرتد اور واجب القتل ہے بلکہ پورا پاکستان کافرہے. خود سنیں، سعودی اسپانسرڈ کالعدم تکفیری دیوبندی دہشتگرد گروہ کا بزدل بھگوڑا خلیفہ عمرکیا بکواس کررہاہے. چلو بھرپانی میں ڈوب مریں وہ اخوانی، جماعتی، تکفیری دیوبندی اور کمرشل لبرلز جو سعودیہ کی طرف سے مسلط کردہ ان تکفیری دیوبندی دہشتگردوں کی کاروائیوں کو کبھی شیعہ سنی فرقہ وارانہ جنگ کا نام دیتے ہیں، کبھی اس کوسعودی عرب ایران پرکسی وار کہتے ہیں اور اس طرح سے ایک جھوٹی اور مصنوعی ثنویت پیدا کر کے اس حقیقت پر پردہ ڈالنا چاہتے ہیں کہ سعودی سرپرستی اور فنڈنگ سے چلنے والے یہ تکفیری دیوبندی دہشتگرد نہ صرف شیعہ مسلمانوں کی نسل کشی کررہے ہیں بلکہ سنی بریلوی صوفی مسلمانوں کا قتل عام بھی کر رہے ہیں، یہ پاکستان کی مسلح افواج کو بھی کافر مرتد کہتے ہیں اور تمام پاکستانیوں کا بھی خون بہا رہے ہیں. یہ اگر امام بارگاہوں اورشیعہ مساجد پر حملے کرتے ہیں تو درگاہوں اور سنی مساجد کو بھی نشانہ بناتے ہیں. یہ جی ایچ کیو اور ISI پر حملہ کرتے ہیں تو اسکول وکالجز کو بھی نہیں چھوڑتے. یہ تکفیری دیوبندی فکر جس کی بنیاد سعودی سرپرستی اور فنڈنگ سے جنرل ضیاء کے دور میں کالعدم تکفیری دیوبندی دہشتگرد گروہ انجمن سپاہ صحابہ (موجودہ کالعدم اہلسنت والجماعت) کی صورت میں بدنام زمانہ دہشتگرد حق نواز جھنگوی نے رکھی تھی اب تکفیری دیوبندی مساجد ومدارس کی صورت میں پورے پاکستان میں پھیل چکی ہے اور ایک عفریت بن چکی ہے جس کی کمرنہیں توڑنی بلکہ سر کچلنا ضروری ہے. اوراس کا صرف ایک طریقہ ہے اور وہ یہ کہ "دشمن کے بچوں کو پڑھانے" کےبجاۓ اور ان کی طرف کسی نرمی کا مظاہرہ کرنے کے بجاۓ، ان تکفیری دیوبندی دہشتگرد گروہوں سے منسلک تمام مسجد و مدارس، ان کے حامیوں اور حمایتیوں اخوانی وجماعتیوں، کے خلاف ایک بھرپور اور بے رحم آپریشن کیا جاۓ، نیشنل ایکشن پلان پر اس کی روح کے مطابق عمل کیا جاۓ. وہ تکفیری دیوبندی دہشتگرد جن کوعدالت عظمیٰ سے پھانسی ہو چکی ہے بشمول اکرم لاہوری کے، ان سب کوفوری طور پرتختہ دار پر چڑھایا جاۓ اور اس لعنتی خلیفہ عمر، ملا فضل الله، مولوی برقعہ پوش عبدالعزیز، لدھیانوی، فاروقی، مینگل وغیرہ کو کیفر کردار تک پہنچایا جاۓ. ایک سال پہلے فوجی قیادت نے ان تمام تکفیری دیوبندی دہستگردوں کو ان کے انجام تک پہنچانے کا وعدہ کیا تھا لیکن وعدہ وفا نہ ہو سکا اور یہ دہشتگرد گروہ دوبارہ ہمارے تعلیمی اداروں کو کشت و خون میں نہلانے میں کامیاب ہو گیا اور کھلے عام دھمکی دیتا ہے کہ یہ تکفیری دیوبندی دہشتگرد پورے پاکستان میں اسکول کالجز اور یونیورسٹیز پر دہشتگرد حملے کریں گے. مسلح افواج کی قیادت پر اب یہ ذمہ داری آن پڑی ہے کہ ان تکفیری دیوبندی دہشتگردوں سے قوم کو نجات دلا کر اپنا قول نبھاۓ. ورنہ یہ سعودی اسپانسرڈ تکفیری گروہ پاکستان کو بھی شام و عراق بنانے میں کوئی کسر نہیں چھوڑیں گے.

Posted by Khurram Zaki on Friday, January 22, 2016

ذرا غور سے سن لیں اور پہچان لیں ان تکفیری دیوبندی دہستگردوں کے چہروں کو وہ افراد جوکسی اور کو نہیں بلکہ اپنے آپ کوکبھی را کبھی سی آئی اے کبھی موساد کے نام پربیوقوف بناتے رہتے ہیں. سن لیں کہ تکفیری کسے کہتے ہیں، تکفیری دیوبندی کسے کہتے ہیں، تکفیری دیوبندی دہشتگرد کون ہیں اور یہ کیوں ہمارے اسکول، کالجز اور یونیورسٹی پرحملے کررہے ہیں، کیوں ہمارےمعصوم بچوں کو، طالب علموں کو، عورتوں اور بچوں کو، اساتذہ کو، سنی اورشیعہ مسلمانوں کو قتل کررہے ہیں، شہید کر رہے ہیں. جی ہاں یہ کوئی انڈین شہری نہیں، یہ کوئی امریکی شہری نہیں. ان سب کا تعلق پاکستان سے ہے، یہ سب کوئی یہودی، ہندو یا عیسائی نہیں بلکہ سعودی اسپانسرڈ تکفیری دیوبندی ہیں. ان تکفیری دیوبندی دہشتگردوں کی نظر میں شیعہ مسلمان بھی کافر ہیں، سنی صوفی بریلوی مسلمان بھی کافر مشرک ہیں، پاکستان کی مسلح افواج بھی کافر مرتد ہے، پاکستان  کا ہر  کالج، یونیورسٹی  اور  اس  میں  پڑھنے والا  ہر  طالب علم کافر مرتد اور واجب القتل ہے  بلکہ پورا پاکستان کافرہے. خود سنیں، سعودی اسپانسرڈ کالعدم تکفیری دیوبندی دہشتگرد گروہ کا بزدل بھگوڑا خلیفہ عمرکیا بکواس کررہاہے. چلو بھرپانی میں ڈوب مریں وہ اخوانی، جماعتی، تکفیری دیوبندی اور کمرشل لبرلز جو سعودیہ کی طرف سے مسلط کردہ ان تکفیری دیوبندی دہشتگردوں کی کاروائیوں کو کبھی شیعہ سنی فرقہ وارانہ جنگ کا نام دیتے ہیں، کبھی اس کوسعودی عرب ایران پرکسی وار کہتے ہیں اور اس طرح سے ایک جھوٹی اور مصنوعی ثنویت پیدا کر کے اس حقیقت پر پردہ ڈالنا چاہتے ہیں کہ سعودی سرپرستی اور فنڈنگ سے چلنے والے یہ تکفیری دیوبندی دہشتگرد نہ صرف شیعہ مسلمانوں کی نسل کشی کررہے ہیں بلکہ سنی بریلوی صوفی مسلمانوں کا قتل عام بھی کر رہے ہیں، یہ پاکستان کی مسلح افواج کو بھی کافر مرتد کہتے ہیں اور تمام پاکستانیوں کا بھی خون بہا رہے ہیں. یہ اگر امام بارگاہوں اورشیعہ مساجد پر حملے کرتے ہیں تو درگاہوں اور سنی مساجد کو بھی نشانہ بناتے ہیں. یہ جی ایچ کیو اور ISI پر حملہ کرتے ہیں تو اسکول وکالجز کو بھی نہیں چھوڑتے. یہ تکفیری دیوبندی فکر جس کی بنیاد سعودی سرپرستی اور فنڈنگ سے جنرل ضیاء کے دور میں کالعدم تکفیری دیوبندی دہشتگرد گروہ انجمن سپاہ صحابہ (موجودہ کالعدم اہلسنت والجماعت) کی صورت میں بدنام زمانہ دہشتگرد حق نواز جھنگوی نے رکھی تھی اب تکفیری دیوبندی مساجد ومدارس کی صورت میں پورے پاکستان میں پھیل چکی ہے اور ایک عفریت بن چکی ہے جس کی کمرنہیں توڑنی بلکہ سر کچلنا ضروری ہے. اوراس کا صرف ایک طریقہ ہے اور وہ یہ کہ “دشمن کے بچوں کو پڑھانے” کےبجاۓ اور ان کی طرف کسی نرمی کا مظاہرہ کرنے کے بجاۓ، ان تکفیری دیوبندی دہشتگرد گروہوں سے منسلک تمام مسجد و مدارس، ان کے حامیوں اور حمایتیوں اخوانی وجماعتیوں، کے خلاف ایک بھرپور اور بے رحم آپریشن کیا جاۓ، نیشنل ایکشن پلان پر اس کی روح کے مطابق عمل کیا جاۓ. وہ تکفیری دیوبندی دہشتگرد جن کوعدالت عظمیٰ سے پھانسی ہو چکی ہے بشمول اکرم لاہوری کے، ان سب کوفوری طور پرتختہ دار پر چڑھایا جاۓ اور اس لعنتی خلیفہ عمر، ملا فضل الله، مولوی برقعہ پوش عبدالعزیز، لدھیانوی، فاروقی، مینگل وغیرہ کو کیفر کردار تک پہنچایا جاۓ. ایک سال پہلے فوجی قیادت نے ان تمام تکفیری دیوبندی دہستگردوں کو ان کے انجام تک پہنچانے کا وعدہ کیا تھا لیکن وعدہ وفا نہ ہو سکا اور یہ دہشتگرد گروہ دوبارہ ہمارے تعلیمی اداروں کو کشت و خون میں نہلانے میں کامیاب ہو گیا اور کھلے  عام  دھمکی  دیتا ہے  کہ یہ تکفیری  دیوبندی  دہشتگرد  پورے  پاکستان  میں  اسکول کالجز اور یونیورسٹیز پر دہشتگرد  حملے کریں گے.  مسلح افواج کی قیادت پر اب یہ ذمہ داری آن پڑی ہے کہ ان تکفیری دیوبندی دہشتگردوں سے قوم کو نجات دلا کر اپنا قول نبھاۓ. ورنہ یہ سعودی اسپانسرڈ تکفیری گروہ پاکستان کو بھی شام و عراق بنانے میں کوئی کسر نہیں چھوڑیں گے.