Original Articles Urdu Articles

پاکستان میں سنّی نسل کشی جاری – پیر سائیں ظہور شاہ قادری کھڑی شریف میں سپاہ یزید کے ھاتھوں شہید – صداۓ اہلسنت

FB_IMG_1435802031491

 

سانحہ داتا دربار پانچ سال بیت گئے , حملے کے ماسٹر مائینڈ گرفتار نہ ہوئے

یکم جولائی 2010ء کی شام کو جب حضرت عثمان ہجویری المعروف داتا گنج بخش رحمتہ اللہ علیہ کے مزار پرانوار واقع بھاٹی گیٹ لاہور پر عقیدمندوں کا رش لگا ہوا تھا تو دیوبندی تکفیری دہشت گرد جن کا مبینہ تعلق تحریک طالبان پاکستان سے بتایا جاتا ہے مزار شریف میں داخل ہوئے اور انھوں نے خود کش بم دھماکہ کرڈالا جس سے متعدد افراد شہید و زخمی ہوگئے

یکم جولائی دو ہزار پندرہ کو اس واقعے کو گزرے پانچ سال ہوگئے , پنجاب حکومت نہ تو اس واقعے کے ماسٹر مائینڈ کو آج تک گرفتار کرسکی ا ور نہ ہی ان دھشت گردوں کے سہولت کار سامنے لائے گئے جنھوں نے ان دھشت گردوں کو یہاں تک پہنچنے میں مددی

آج جب میں اس واقعے پر نوٹ لکھنے بیٹھا تو اسی وقت میرپور کھڑی شریف سے ایک اندوہ ناک خبر ملی کہ کہ وہاں پر پیرطریقت , رھبر شریعت حضرت سائین ظہور حسین شاہ قادری کو کسی نے کلہاڑیوں کے وار کرکے شہید کرڈالا اور ان کی لاش کھڑی شریف کے جنگل سے ملی ہے , سائیں ظہور حسین شاہ کے بھائی منظور حسین شاہ جوکہ کھڑی شریف پولیس میں سب انسپکڑ ہیں نے بتایا کہ ان کے بھائی کو کالعدم سپاہ صحابہ پاکستان کے دہشت گرد ونگ لشکر جھنگوی کی جانب سے دھمکیاں موصول ہورہی تھیں اور کہا جارھا تھاکہ وہ شرک و بدعت سے باز آجائیں اور پھر ان کو قتل کردیا گیا

میرپور سمیت آزاد کشمیر میں کالعدم سپاہ صحابہ پاکستان اہلسنت والجماعت کے نام کے ساتھ سرگرم ہے اور یہ زبردستی آزاد کشمیر جہاں کی 95 فیصد آبادی صوفی سنّی ہے کو دیوبندیانے اور سنّی مساجد پر قبضہ کرنے میں اہم ترین مدد فراہم کرنے میں ملوث ہے , جبکہ انٹیلی جنس رپورٹس موجود ہیں کہ آزاد کشمیر میں طالبانائزیشن کے پھیلاؤ میں اے ایس ڈبلیو جے کا ھاتھ صاف نظر آتا ہے , اس کے باوجود دیوبندی تکفیری قوتیں آزاد کشمیر میں سرگرم عمل ہیں اور کوئی ان کو روکنے کی کوشش نہیں کرتا

میر پور کھڑی شریف جہاں پر معروف پنجابی صوفی باصفا حضرت میاں محمدبخش کا مزار ہے اور یہ مزاردیوبندی تکفیریوں کی آنکھ میں اسی طرح سے کھٹکتا ہے جیسے پاکستان میں مزارات اولیاء کھٹکتے ہیں اور ہمیں سخت خطرہ اس بات کا ہے کہ اگر غفلت اور نااہلی کا یہی عالم رہا تو کوئی بھی المیہ رونما ہو سکتا ہے 

ہم منگلا کے کور کمانڈر , سیکڑ انچارج آئی ایس آئی , آئی جی پولیس آزاد کشمیر اور وزیراعظم آزاد کشمیر سے کہتے ہیں کہ وہ آزاد کشمیر میں کالعدم تنظیموں کو کام کرنے سے روکیں اور اہلسنت والجماعت کے نام سے کام کرنے والی تنظیم جوکہ فروری 2012 ء میں کالعدم قرار دی گئی تھی کے دفاتر بند کرائیں اور اس,لوگو,کے تحت کام کرنے والوں کی قیادت کو گردفتار کرے

ابتک دیوبندی تکفیری دہشت گردوں کے ھاتھوں پاکستان میں ایک اندازے کے مطابق 45000 صوفی سنّی شہید ہوچکے ہیں اور یہ صاف,صاف سنّی نسل کشی کا,معاملہ ہے جو دیوبندی تکفیری دہشت گرد تنظیموں کے ھاتھ پاکستان میں ہورہی ہے اور افسوس ناک امر یہ ہے کہ پاکستان کا مین سٹریم میڈیا صوفی سنّی نسل کشی کا زکر کرنا بھی پسند نہیں کرتا اور اسے شیعہ -سنّی لڑائی کا نام دیا جارھا,ہے , لیکن اتنی بڑی تعداد میں سنّیوں کی شہادتیں ظاہر کرتی ہیں کہ پاکستان کے اندر دیوبندی تکفیری دہشت گردی ایک خارجی تکفیری دہشت گرد عفریت ہیں جن سے کوئی مذھبی کمیونٹی محفوظ نہیں ہے اور پوری قوم کو متحد ہوکر اس,عفریت کامقابلہ کرنا ہوگا

Summary

On 1st July 2010 , one suicide bomber entered in courtyard of famous Shrine of Hazrat Usman Hajvari Data Gunj baksh at Bhati gate Lahore and he blew himself. In that Suicide bombing at shrine many people killed and injured. Responsibility of this terrorist attack was accepted by Tehreek Taliban a Deobandi takfiri Khariji organization

Now it is July 2015 and 5 years have been passed and neither master mind of this terrorist attack, nor facilitators of this act we’re arrested

When I was writing this note that I received a sad  news from Mirpur of Azad Kashmir that Hazrat Pir Saien Zahoor hussain Qadri was killed by takfiri terrorists and his dead body was found in jungle of Khari Sharif near Shrine of renowned  Sufi poet Main Muhammad Bakhsh

We have no dispute or personal enmity with anyone ,  but my brother was receiving threatening calls from banned outfits like Lashkar jhangvi,  Said  Mazoor Hussain younger brother of diseased Zahoor hussain Shah Qadri. Manzoor hussain is sub inspector in Azad Kashmir police

Mirpur a big city of Azad Kashmir particularly and whole Azad Kashmir has become center of banned outfits like Deobandi takfiri organizations like SSP aka Ahle Sunnat  Wal Jamat -ASWJ,  Jaish Muhammad etc. Deobandi mosques and,seminaries are growing more and more in Azad Kashmir with Saudi funding and most of these seminaries and mosques are under control of banned outfit ASWJ or Jaish Muhammad which was formed by Masood Azhar involved in many attacks on Sufi Sunnis of Pakistan. Seminaries and mosques under control of Deobandi takfiris are disseminating hatred against Sufi Sunnis while calling their religious paractices polytheism and innovations

We are not seeing real implementation of National Action Plan and all extremists and banned organizations are working freely under cover name , said Pir Ateeq ur rahman former M.L.A and president of Jamiat Ulemaie Pakistan -JUP Azada Kashmir prominent Sufi Sunni political organization

Discourse of main stream media on Sufi Sunni genocide is obfuscating and never shows Sufi Sunni identity in such cases of killing and suicide attacks in which Sufi Sunnis are targeted and in often cases identity of killers also is showed as Sunni militants. Most anchors,  analysts,  journalists and human right defenders translate into false Shia -Sunni binary or infra sect fight among two groups of Sunnis

Takfiri Deobandi terrorism which is allied and affiliated with global Salafi takfiri terrorism is responsible of organized fatal acts of terrorism not only against Sufi Sunnis but against Shia, Christian,  Hindus and other religious communities. So this is not fight or civil war among different sects and religious communities but open and brutal terrorism by a tiny minority takfiri Khariji groups emerged from Deobandi school of thought , therefore we call them Deobandi Takfiri Khariji

We should all oppressed and victims of Deobandi Takfiri terrorism unite  against this mess

Source

http://voiceofsunnis.blogspot.co.uk/2015/07/blog-post.html