Original Articles Urdu Articles

Umayyad legacy: Attacking those who protest the abuse of Ali (as) – by Malika Rizvi

Rubab

 

During the reign of Umayyad Caliph Muawiya bin Abu Sufyan, it was an established practice based on official decree to both curse Imam Ali (a.s.) and his family and target his supporters. Hujr Bin Adi, a prominent Companion of the Holy Poprhet (PBUH), refused to be silent and stood up in support of Imam Ali and continued to protest the abuse against the family of the Holy Prophet (PBUH). He was tortured and killed by Muawiya.

When the followers of Muawiya and Yazid in the form of ISIS, Al Qaeda (FSA) and Sipah-e-Sahaba (ASWJ aka LeJ) are committing genocidal violence against Sunni Sufis, Shias, Christians and other communities, their fake or commercial liberal comrades such as Beena Sarwar’s trusted assistant, Ilmana Fasih Deobandi, is engaging in the same abuse and slander tactics against Imam Ali (a.s.), Hazrat Fatima (s.a.) and the family of the Holy Prophet (PBUH) in general. When Sunni, Sufi and Shia activists – who are facing genocidal violence from ISIS, Al Qaeda, Taliban and ASWJ/LeJ – stood up to protest this abuse, they too were threatened.
Instead of listening to their protests and engaging in much needed introspection, Aman Ki Asha’s Beena Sarwar and her fake liberal mafia started attacking Shia activists and distorting their protests.

Unfortunately, the glitter of NGO benefits and foreign trips has also dazzled the eyes of a few Shia activists. It’s very painful and disturbing. But we all know that Shimr too once was a commander in Imam Ali’s army until his soul went to the dark side of the Umayyad army.

Such Shia sell out include at least two name who claim to stand up for Shia rights but are more concerned with protecting their cheap fame and personal friendships. These activists, Rubab Mehdi Rizvi and Ale Natiq aka Ali Mashhadi are openly collaborating with the same mafia who feels that Freedom of Speech only applies to those who abuse Imam Ali and Hazrat Fatima. For these bigots, Freedom of Speech is NOT the right of those who are peacefully protesting this slander against Imam Ali. For these Munafiqs, the protests by those Shias who are facing genocidal violence at the hands of ASWJ-LeJ are not allowed.

Those ISIS-apologists and cheerleaders like Ilmana Fasih Deobandi of Canada who are slandering Imam Ali during the time when Imam Ali’s followers are facing genocidal violence are enabling this genocide at the hands of Takfiri Deobandi militants. Those opportunists and Shimris like Ale Natiq (Ali Mashhadi) and Rubab Mehdi Rizvi who are attacking the protesting Shias are the collaborators of enemies of Shias and enemies of Ahl-e-Bait.

These sell outs can never be trusted to represent us on any forum in the name of Shia genocide or Shia rights. Not only did they stay silent when Imam Ali and Hazrat Fatima were being abused, they openly engaged in threatening, intimidation and abuse tactics against those who were protesting this as well as their friends and relatives. May they be accounted as companions of Shimr and Amr bin Saad on the Day of Judgment.

Screen-Shot-2015-06-23-at-4.31.53-AM

کیا آپ لوگوں کو معلوم ہے کہ صحابی رسول حضرت حجر بن عدی رض کو ان کے ساتھیوں سمیت مقام عذراء پر امیر شام نے کیوں قتل کروا دیا تھا ؟ کس جرم کی پاداش میں ؟ کیوں کہ جب زیاد کوفہ کے منبر پر بیٹھ کر امام کو سب و شتم کرتا تھا تو حجر بن عدی جیسے جری ان حالات میں بھی زیاد کی خباثت کے خلاف احتجاج کرتے تھے، اس کو کنکر مارتے تھے۔ امام کو گالیاں دینے والوں کے خلاف احتجاج کرنا ہی حجر بن عدی کا وہ جرم تھا جس کی پاداش میں وہ شہید کر دیئے گئے ۔ آج علی ناطق صاحب کے ساتھی یہ سوال کرتے ہیں ہم سے کہ جب 90 سال امام پر سب و شتم ہوتا رہا تو تم لوگوں کی یہ حرمت بریگیڈ کہاں غائب تھی تو سوچا اس “بینا سرور بریگیڈ” کو تاریخ کے جھروکوں سے ایک سنہری باب پڑھ کر سنا دوں۔ اگر یہ کمرشل لبرل بینا سرور بریگیڈ اور علی ناطق بھائی وہاں موجود ہوتے تو شائد زیاد کے گالیاں دینے کے حق کا دفاع کر رہے ہوتے اور حجر بن عدی اور ان کے اصحاب کے خلاف گواہیاں دیتے پھرتے۔

اور علی ناطق بھائی کے ان ساتھیوں کو معلوم ہو کہ حضرت حجر بن عدی کی یہ پوری نہضت اور احتجاج صلح امام حسن کے بعد ہے۔ یہ اس لیئے لکھ دے رہا ہوں کہ بعض جہلاء سے توقع ہے کہ وہ یہ نہ کہ دیں کے صلح امام حسن کے بعد اس طرح کا کوئی احتجاج نہیں ہوا۔ حضرت حجر یہ کنکریاں صلح امام حسن کے بعد مارا کرتے تھے۔

کیا کسی صحیح العقل انسان سے جو تاریخ کا ذرہ برابر بھی مطالعہ کر چکا ہو، امام حسین علیہ السلام کا نام لیوا بھی بنتا ہو، اس بات کی توقع کی جا سکتی ہے کہ وہ یہ کہے کہ گزشتہ 1400 سال کی تاریخ میں اہل بیت اطہار، رسول ﷲ کی آل، ان کے محبین اور پیروکاروں کا قتل عام نہیں ہوا، ان کو اذیتیں نہیں دی گئیں، ان کو پرسیکیوٹ نہیں کیا گیا ؟ کوئی تاریخ نابلد شخص بھی ایسا دعوی نہیں کر سکتا کیوں کہ کچھ نہیں تو واقعہ کربلا ہر ایک کے سامنے ہے کہ کس طرح خاندان رسالت کا خون بہایا گیا۔ مگر جی ہاں ایک انگلستان میں بیٹھی ایک دانشور، جن کا پیشہ ان مقدس ہستیوں کے خون کو فروخت کرنا ہے اور اس کے عیوض برطانوی ہاؤس آف لارڈز اور دیگر امراء سے تعلقات پیدا کرنا ہے، اپنے فیس بک پروفائل پر فرماتی ہیں کہ خاندان رسالت اور ان کے پیروکاروں کی پرسیکیوشن نہیں ہوئی، ان پر ظلم و ستم نہیں ہوا، ان کی آزار دہی نہیں ہوئی۔ ان خاتون کو ادب و شائستگی چھو کر بھی نہیں گزری کیوں کہ یہ خانوادہ رسالت سے محبت کرنے والے ہر اس فرد کو اپنے پروفائل سے ننگی گالی دیتے ہوئے مخاطب کرتی ہیں جو اہل بیت اطہار کو گالم گلوچ کرنے والے کی مذمت کرنے کی جرات کرتا ہے۔ سارا سال امام حسین کے نام پر کھانے والی یہ خاتون جب مقام اہل بیت کے دفاع کی بات آتی ہے تو الحاد اور لادینیت کی داعی بن جاتی ہے اور اہل بیت اطہار کو گالی دینے کے معاملے کو آزادی اظہار رائے کا معاملہ بتاتی ہیں جبکہ اس گالم گلوچ کے خلاف احتجاج کو قاتلانہ کیمپین کہتی ہیں۔

جناب کوئی ان پاک ہستیوں کا دفاع کرنے کے لیئے کھڑا ہو یا نہ ہو۔ میں اور میرے ساتھی LUBP پر یہ کام کرتے رہیں گے۔ ہم دنیاوی مفاد کے لیئے، کسی رے کی گورنری کے لیئے، اپنے نظریات کا سودا نہیں کریں گے۔

 
 Rubab Chutiya

3

2
Screen Shot 2015-06-28 at 6.50.43 PM

Screen Shot 2015-06-28 at 6.50.15 PM

Screen Shot 2015-06-28 at 6.49.19 PM

Screen Shot 2015-06-28 at 6.48.35 PM

Screen Shot 2015-06-28 at 6.31.16 PM