Featured Original Articles

We should all support Ilmana Fasih Deobandi because takfiri Shias and mushrik Sunnis are targeting her


27

 

 

Context:

Beena Sarwar’s Assistant Ilmana Faish Deobandi abuses Hazrat Ali and Hazrat Fatima!

In a facebook conversation, in her usual attempt to justify or obfuscate Deobandi terrorism against Shias and Sunni Sufis, Ilmana Fasih Deobandi started abusing Hazrat Ali, his mother Fatima bint Asad and Prophet Muhammad’s daughter Fatima.

Ilamana has been recently promoted as a champion of liberalism and human rights by a Pakistani elitist (Ashrafi-brand) liberal Beena Sarwar who herself works for Jang Group’s Aman Ki Asha, a dubious anti-Pakistan project. Both Beeena and Ilmana belong to the Najam Sethi club of elitist journalists and activists – the same club that promotes Deobandi hate clerics Tahir Ashrafi and Ludhyanvi as ambassadors of peace.

This is not liberalism. This is blatant prejudice, bigotry and hate speech particularly in a context when Sunnis, Shias and Christians are being massacred by Deobandi Salafi terrorists around the world and Sunni-Shia joint symbols and personalities are being attacked.

Just as their Saudi handlers destroyed and desecrated the graves of the Holy Prophet’s family and companions, these Ashrafi liberals take sadistic pleasure in their hate speech against Hazrat Ali and his martyred family. How pathetic!

Beena Sarwar, Ilmana and their wannabe allies play the blasphemy card

However, instead of apologizing to tens of millions of Sunni and Shia Muslims, Ilmana Fasih and her network of promoters led by Beena Sarwar started playing the victim card, dishonestly alleging that blasphemy and incitment to violence were being used against them. Nothing could be more dishonest and futher from truth. For example, see the first and formal post on LUBP which only calls an abuser an abuser, a liar a liar. https://lubpak.net/archives/338164

Sadly at least a few dubious activists too deemed it fit to remove their facebook statuses critical of Ilmana Fasih in order to appease Beena Sarwar and Ilmana and instead started attacking Sunni and Shia rights activists. In this cause, they were also helped by known obfuscators and denialists of Shia genocide and Sunni Sufi genocide. This post provides  a glimpse of who stands where in the current episode.

 

802
333451 52 53 54 55 56100210001 57 58 59 60 61 62 63 64 65 66 67 68 69 70 71 72 73 74sufilusk2 75 76 77 78 79 80 80b 80c 801 802 803 804 805 806 807 808 809 810 811 812 813 814 815 816 817 818 819 820 821 822 823this112234peja 824 825 826 827 828natiq

snapsnap2rehantajj
201202q1q2

ہم حضرت علی کرم الله وجھہ الکریم اور حضرت فاطمہ رضی الله عنہا کے بارے میں نازیبا الفاظ ادا کرنے پر شدید دکھ اور مذمت کا اظہار کرتے ہیںیاد رہے کہ امن کی آشا کا مالک جنگ گروپ حامد میر، نجم سیٹھی، انصارعباسی، طاہر اشرفی، اورنگزیب فاروقی، اور لدھیانوی جیسے تکفیری خوارج کے ہمنواؤں کو پروموٹ کرتا ہےیہ بھی یاد رہے کہ المانه فصیح دیوبندی مظلوم سنی اور شیعہ مسلمانوں کے خلاف بد نام زمانہ تکفیری دیوبندی و سلفی خوارج بشمول داعش، سپاہ صحابہ، النصرہ کی وکیل اور ہمدرد ہے اور اس بد بخت عورت کی حمایت بینا سرور جیسے جعلی لبرل کرتے ہیںاس ویڈیو کا مقصد عوام میں آگہی پیدا کرنا ہے کہ ان منافقوں، امن دشمنوں اور انسانیت کے دشمنوں کے اصلی چہرے پہچان لیں، ہمارا مقصد نہ ہی تشدد ہے، نہ گالم گلوچ اور نہ ہی ہمیں کوئی ان جعلی لبرلوں کی منافقت آشکار کرنے سے روک سکتا ہے

Posted by Let Us Build Pakistan on Sunday, June 14, 2015

About the author

SK

4 Comments

Click here to post a comment

  • A few Shias who conveniently strarted deleting their critical comment on Ilmana after being approached by Beena and co, and instead started attacking Shia and Sunni activists were never sincere with the cause of Shia and Sunni Sufi cause to start with.

    Usually they did not even care to share Lubps status and in no way, have contributed much to lubp’s discourse on shia genocide and sunni sufi genocide. One of them borrows most of his discourse from lubp without giving credit and then feels bad when others do the same to him.

    How can we ever relay on the two persons who hastily removed their statuses today to appease Beena Sarwar and Ilmana. They have shown today that they can’t be relied upon, particularly when it matters!

    Ali Abbas Taj sahib was upset when a Shia activist removed his post from his wall because Taj sahib had written detailed comments on his wall. Those comments were also lost.

    If Salman Haider is a Shia activist, then he is second only to Tahir Ashrafi. One cannot waste my precious abuses on someone like Salman Haider Ashrafi. He is not worth it. After he was today,he has become more vile. We think therefore it is accurate to describe him as the second coming of Ali Sher Haidery Jhangvi.

    Well today was a good day to get some clarity. Can’t say we are surprised.

    One of deleters we know is a selfie activist,

    This is their card, blasphemy so let’s not talk about Ilmana’s abuses to Maula Ali and self censor per guidelines of mother Hen Beena Sarwar

    that’s their blackmial and we refuse to be blackmailed

    The logic that I should delete my protest status just because it may be a possible harm to the the culprit is ridiculous.

    I am only responsible for my own actions not the actions of others.

    Further it smacked of mother hen self censorship and mafia cliques for promotion of solo activists.

    Our response to Kufi backstabbers: “In spite of your best efforts to distort our protest as an accusation of Blasphemy, you have failed. We always had our doubts about your sincerity so thanks for providing the clarity. Please don’t waste both our times. We are busy with our activism and you are free to place your promotion over the principles you claim to stand for. Cheers”

    Yazid promised the government of Ray to Ibne Zayad for killing Hussain a.s., he did not get it.

    Beena Sarwar has promised promotion to the Shia backstabber and others to parrot her fake narrative, they will be the losers.

    Stay put and steadfast on you position. No need to engage with these irrelevant people

    اے شوق ایکٹوزم ہوتا نہیں فیصلہ
    اک طرف مولا علی ، اک طرف بینا و المانہ
    بینا و المانہ پر تنقید تو ممکن نہیں
    آئیے ایل یو بی پر ہی چڑھ دوڑیں ہم
    مولا علی کو دیوبندی کی گالیاں، ہم کو بھلا تکلیف کیوں
    آئیے اپنے ہی سنی و شیعہ پر ہم تنقید کریں

  • Aamir Hussaini said:

    المانہ بلکہ الملعونہ کے لبرل ازم کا پول کھل گیا ، یہ اصل میں دیوبندی اور سلفیوں سے اٹھنے والے اس گروہ سے ہیں جن کو جب تاریخ ، حدیث ، تفسیر ، فقہ سب اپنے نام نہاد عقلیت پسند مذھب یا مذھب کے صافی چشمے نہ لگے اور ان سے اہل بیت کی قدر و منزلت کی نفی نہ ہوسکی تو ایک گروہ تو شیخ ابن تیمیہ کے نقش قدم پر چلا کہ اس نے حدیث ، تفسیر اور فقہ کا انکار تو نہ کیا لیکن اپنے اصول رد وقبول بناکر وہ سارے اقوال رد کرڈالے جو ان کی تائید نہیں کرتے تھے اور دوسرا گروہ اس سے ایک قدم آگے بڑھا اور اس نے حدیث ، تاریخ ، تفسیر کو ہی سرے سے رد کردیا اور اسے عجمیت کا مجوعہ قرار دی اور ہمیں پرویز وغیرہ اور عرب دنیا میں احمد امین مصری کے ہاں یہ رجحان نظر آتا ہے ، الملعونہ بھی اس قبیلے کی لبرل پروڈکٹ ہیں اور ان کے فیس بک پر یہ کمنٹس تو ان کے اصل نفسیاتی عارضے کی زبردست وضاحت کرتے ہیں ، انہوں نے حضرت علی ، جناب فاطمہ کے حوالے سے جو ھذیان بکا اس کا کوئی تعلق دنیا کے کسی بھی نظریہ سے نہیں ہے یہ ملعونہ کا اپنا گند ہے جو باہر آیا ہے ، اینوں کہندے نیئں شکل مومنانہ تے کرتوت کافراں
    اور یہ بات بھی زھن میں رہنی چاہیئے کہ اس وقت دیوبندی تکفیری دہشت گردی کے عفریت کو دو مسالک یا تین مسالک کی جنگ بناکر دکھانے والوں کا سب سے بڑا زور اس وقت یہ ثابت کرنے پر ہے کہ جو بھی قتل و غارت گری ہورہی ہے یہ دیوبندی تکفیری دہشت گردوں کی نہیں بلکہ چودہ سو سال پرانی لڑائی کا شاخسانہ ہے اور اس کا مقصد سوائے شیعہ ، سنی ، کرسچن ، ہندو اور دیگر پر دیوبندی تکفیری دہشت گردی کی یلغار کی صورت حال کو مسخ کرکے شیعہ – سنی بائنری کی شکل میں دکھانا ہے اور ایک بات طے ہے کہ یہ نام نہاد لبرل یہ سب کچھ اپنی کسی لاعلمی یا بے خبری کے سبب کررہے ہیں یا نادانستہ کرتے ہیں بلکہ یہ باقاعدہ سوچ سمجھ کر یہ سب کچھ کررہے ہیں
    ان میں سے ملعونہ جیسے لوگ تو اپنے مذکورہ بالا کمنٹس سے بے نقاب ہوجاتے ہیں کچھ چتر چالاک اپنی تصویروں سے اور تحریروں سے پکڑے جاتے ہیں اور کچھ عمل میں ننگے ہوکر سامنے آتے ہیں ، ان کے اندر جو جانور چھپا ہے وہ کسی کی نہ تو قربانیوں کا خیال رکھتا ہے اور نہ ہی وہ اس شخصیت کے عبقری ہونے کو مانتا ہے
    ان کی سب سے بڑی تکلیف یہ ہے کہ حضرے علی و فاطمہ اور جملہ خانوادہ اہل بیت نے عرب امپریلسٹ رجحان کی حمائت نہیں کی اور انہوں نے ایک صلح کل کا نظریہ متعارف کرایا اور مجھے امام احمد بن حنبل کی بات یاد آتی ہے کہ جب علی کی شخصیت کی عبقریت کا توڑ نہ نکل سکا اور ان کے حریف و مدمقابل بہت بونے نظر آئے تو پھر تہمتیں اور من گھڑت افسانے اور اپنے گھٹیا ترتیب دئے ہوئے مقدمات سامنے لائے گئے جیسے ملعونہ لیکر آئی
    بینا سرور اگر الملعونہ کو اس سب کے باوجود بھی اپنا دوست رکھتی اور اس کا دفاع کرتی ہے تو پھر اسے بھی اسی صف میں کھڑا خیال کیا جائے گا
    میں اس قدر بے ہودگی کا اس قدر چتری اور چالاکی کے ساتھ تصور بھی نہیں کرسکتا تھا لیکن مجھے لگتا ہے کہ مولوی اسد خیرآبادی ، مولوی چکڑالوی ، محمود عباسی اور ان جیسے لوگوں کی بدروحیں اپنی تمام تر خباثتوں کے ساتھ اس الملعونہ کے اندر حلول کرگئیں ہیں اور اس حلول کے نتیجے میں جو گندگی اور تعفن اٹھ سکتا تھا وہ الملعونہ نے اٹھانے میں مدد کی ہے

    https://www.facebook.com/photo.php?fbid=10207030751315583&set=a.2216609583121.136324.1484045895&type=1&theater

    Khalid Noorani said:

    استغفراللہ , نعوذ باللہ من شر ار الخلق کالملاعنہ بروزن الماعانہ ,
    مخبر صادق حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے سچ فرمایا تھا کہ
    اے علی رضی اللہ عنہ تم سے محبت صرف مومن رکھے گا اور بغض صرف منافق
    آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا فرمان عالی شان ہے کہ
    من کنت مولاہ فعلیا مولاہ , من عاد علیا فعاد اللہ ورسولہ
    تو یہ جو کوئی بھی صاحبہ ہیں بلکہ ان کو صاحبہ کہنا لفظ صحبت کی توھین ہے اور اس کو جانور کہنا خود جانوروں کی توھین ہے کیونکہ ہمارا عقیدہ ہے کہ اہل بیت اطہار کا انسان تو انسان , چرند , پرند , جناور سب ہی ان کا ادب و احترام کرتے ہیں یہ بدبخت وہ لوگ ہیں جو اپنی دنیا اور عاقبت دونوں ہی خراب کرچکے ہیں ایسے لوگوں پر اللہ کریم , اس کے فرشتے اور جمیع مخلوق لعنت کرتی ہے اور یہ لوگ اصل میں زریت شیطان ہیں

    LUBP archives said:

    Lubp Archives
    16 hrs · Edited ·
    Don’t look at those Shias, Sunnis and rights activists who are criticizing Ilmana Fasih Deobandi on her abuses against Hazrat Ali and Hazrat Fatima.
    Look at those Shias, Sunnis and rights activists who are silent and/or are defending silence. The “neutrals”. They are more interesting. And at least as disgusting as Ilmana and her promoter Beena.
    “Kufa is not a city but the name of a silent nation. Whenever there is oppression and the nation remains silent, it becomes Kufa.” – Imam Ali Zain ul-Abideen

    Clearly for some “liberals”, honour of Ilmana Faish Deobandi and her promoter Beena Sarwar of Jang Group’s Aman Ki Asha is more important than the honour of Imam Ali and Hazrat Fatima.
    Lanat bhaij kar share karain.

    Khalid Noorani said:

    المانہ فصیح ایک ہندوستانی نژاد کینڈا میں رہنے والی ایک عورت ہے جس کا دعوی ہے کہ وہ ایک سول سوسائٹی ایکٹوسٹ ہے اس نے 10جون 2015 ء کو اپنی وال پر کمنٹس دیتےہوئے حضرت علی کرم اللہ وجہہ الکریم اور جناب فاطمۃ الزھرا اللہ پاک ان دونوں سے راضی ہو کی شان میں انتہائی نازیبا اور گستاخ فقرے کہے اور مجھے میرے ایک دوست جو میرے کراچی یونیورسٹی میں ہم جماعت تھے نے ان کمنٹس کے سکرین شارٹ بھیجے تو میں نے ان موصوفہ کا حدوداربعہ معلوم کرنے کے لیے سرچ کی تو مجھے پتہ چلا کہ یہ خاتون پاکستان کے اندر اور پاکستان سے باہر پاکستان سےتعلق رکھنے والی نام نہاد لبرل اور این جی نائزڈ گروہ کے بڑے بڑے ناموں میں بہت مقبول ہیں
    جیو ,جنگ گروپ میں امن کی آشا جوکہ بظاہر ہندوستانی فنڈڈ پروجیکٹ لگتا ہے کی روح رواں اور ایک سابق کمیونسٹ ڈی ایس ایف تنظیم کے بانی ڈاکڑ سرور کی بیٹی ہیں بینا سرور اس کی سب سے اہم دوست ہے اور زمانے کی نیرنگی دیکھئے کہ
    باپ قوم کو روس کی جانب دھکیلتا تھا تو بیٹی لوگوں کو واشنگٹن کوقبلہ و کعبہ بنالینے کے لیے سرگرم ہے
    اور بھی کئی لوگ ہیں جو اس المانہ فصیح کے ساتھ ملکر کام کررہے ہیں
    اور ان میں کافی بڑی تعداد ان لوگوں کی ہے جو خود کو سادات کہتے ہیں اور اپنے پاس رسول کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی آل اور اھل بیت کے جملہ حقوق محفوظ کرنے کا دعوی بھی کرتے ہیں لیکن المانہ فصیح کی دریدہ دھنی پر ان کو کوئی ملال نظر نہیں آتا اور ان کے نزدیک این جی او پروجیکٹ , مارکیٹ میں یورپی یونین اور امریکہ کی خوشنودی زیادہ عزیز ہے اور یہ سارے کوفی شیعہ وہ ہیں جن کے اپنے دلوں میں اہلسنت سے بغض نکالے نہیں نکلتا ہے اور یہی وجہ ہے کہ یہ لوگ ایک زبان ہوکر پاکستان میں دیوبندی تکفیری دہشت گردوں اور مڈل ایسٹ کے نام نہاد سلفی تکفیری دہشت گردوں کو سنی کہتے رہتے ہیں اور بضد ہیں کہ پاکستان میں شیعہ -سنی سول وار جیسی کیفیت دیکھنے کو ملے
    نام نہاد سول سوسائٹی جس کی باگ دوڑ عاصمہ جہانگیر , نجم سیٹھی , شیری رحمان , بینا سرور , ماروی سرمد , اعجاز حیدر , محمد تقی , المانہ فصیح , سلمان حیدر , علی زیدی , اور اس طرح کے کئی اور لوگوں نے سنبھال رکھی ہے امریکہ اور یورپ کی خوشنودی کے لیے اور سعودی عرب کو راضی کرنے کے لیے اہلسنت بریلوی کو زبردستی دہشت گردوں کی صف میں کھڑے رکھنے پر مصر ہیں اور یہ دیوبندی تکفیری دہشت گرد تنظیموں کی شناخت سنّی بتلاتے ہیں اور ہر موقعہ پر یہ ثابت کرنے کی کوشش کرتے ہیں کہ سنّی دیوبندی کی طرح کے انتہاپسند , تکفیریوں کی طرح دہشت گردثابت ہوں گے اگر ان کو بھی امریکہ , سی آئی اے اور آئی ایس آئی اسلحہ و تربیت فراہم کردے یعنی صرف اپنے قیاس کے گھوڑےکو دوڑاکراہلسنت کو تکفیری دہھشت گردوں کے برابرکھڑا کرنے کے خواہاں ہیں اور ان کی اس انتہائی گمراہ کن اور بہتان پر مبنی تھیوری کو کوئی آگے بڑھائے تو دیکھتے ہی دیکھتے وہ ان کا محبوب ہوتا ہے اور پھر وہ کیسی ہی گستاخی کیوں نہ کرے , اسلام کی جس بھی شخصیت پر بہتان باندھے وہ ان کی ھیرو ہے
    ہم اہلسنت کی عوام اور قیادت سے گزارش کرتے ہیں کہ وہ میڈیا اور سول سوسائٹی کے اندر سنیوں کو بدنام کرنے کا جو رجحان ہے اس کے خلاف احتجاج اور پرامن جلسے جلوس کا اہتمام کریں اور ہم سول سوسائٹی کی جانب سے آزادی اظہار کے نام پر اسلام اور مقدس ھستیوں پر کیچڑ اچھالنے والے گستاخوں اور ملعونوں کی حمائت سے دستبردار ہونے کا مطالبہ کرتے ہیں
    اور ہم حکومت سے بھی اس معاملے کا فوری نوٹس لینے اور المانہ فصیح کو پاکستان میں کسی بھی میڈیا گروپ کی کسی ویب سائٹ یا بلاگ و آرٹیکل کو شایع کرنے سے روکنے کے احکام جاری کرنے کا مطالبہ کرتے ہیں
    کچھ لوگوں کو بہت تکلیف ہورہی ہے کہ المانہ فصیح کے خلاف اس قدر ردعمل کیوں آرھا ہے تو ہم اہلسنت بہت واضح اور دوٹوک لفظوں میں بتادینا چاہتےہیں کہ پاکستان میں آزادی اظہار کے حق کی آڑ میں ناموس رسالت , ناموس اصحاب رسول , ناموس اھل بیت اطہار کو پامال کرنے کی کوئی کوشش برداشت نہیں کی جائے گی اور جو ایسی کوشش کرے گا اسے پاکستانی آئین کے مطابق اور پاکستان پینل کوڈ کے مطابق سزا بھگتنا پڑے گی اور جو ایسے ملعون یا ملعونہ کی طرف داری کا مرتکب ہوگا اس سے بھی آئین و قانون پاکستان کے مطابق نمٹا جائے گا

    https://www.facebook.com/permalink.php?story_fbid=446352185546371&id=100005147805195

    Shia Ulema said:

    سوشل ورکر بینا سرور کی اسسٹنٹ المانا فسیح نے آج فیسبک پر اپنے سٹیٹس پر خاندانِ رسالت ص, مولائے کائنات علی ع بی بی فاطمہ بنتِ اسد س اور نسلِ رسولِ مقبول ص یعنی ساداتِ کرام کے بارے میں انتہائی گھٹیا لغو اور گستاخی پر مبنی واحیات بکواس کی ہے.. ہم اس کی شدید ترین الفاظ میں مزمت کرتے ہیں وہ خبیث عورت ہمارے نزدیک ملعونہ ہے… اس کی زندہ رہنے پر بھی ربِ کعبہ کی لعنتیں ہوں اور مرنے کے بعد بھی جہنم ٹھکانہ ہو….
    آپ تمام لوگ جہاں جہاں بھی ہیں اس کی مذمت کیجیے اور اس پیغام کو آگے تک پہنچائیے…

    https://www.facebook.com/Shia.Ullema/posts/816245098490907

    Shia News said:

    نام نہاد تکفیری لبرل المانہ فصیح کی مولائے کائنات حضرت علی (ع) کی شان میں گستاخی

    شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) شیعہ نیوز سوشل میڈیا مانیٹرنگ ڈیسک کی رپور ٹ کے مطابق معروف تکفیری لبرل بینا سرور کی اسسٹنٹ المانہ فصیح (بھارتی) نے امیرالمومین حضرت علی علیہ سلام اور جناب سیدہ (س) کی شان میں گستاخی کرتے ہوئے انکے خلاف غلط الفاظ استعمال کیئے ہیں۔

    ادارہ تعمیر پاکستان کے مطابق فیس بک پر جاری دیوبندی دہشتگردی کے عنوان پر ہونے والی بحث کے دوران جواب نا ہونے پر المانہ فصیح نے امیرالمومینن اورآپکی والد ماجدہ پیغمبر اسلام کی دختر جناب سیدہ (س)کی شان میں گستاخی کرنا شروع کردی۔

    10373480_1115230095160490_8094459133809109476_n.jpg

    المانہ فصیح جو حال ہی میں انسانی حقوق کی علمبردار اور آزاد خیال کے طور پر ابھری ہیں دراصل دیوبند ،تکفیری ملا(طاہر اشرفی ) کا برائنڈ ہیں۔ طاہر اشرفی جیسے ملا بینا سرور اور المانہ فیصح اینڈ گروپ کو شیعہ، سنی اور اقلیتوں کے حق میں آواز اُٹھانے والی سول سوسائیٹیز کی مخالفت سامنے لے کر آئیے ہیں، اس کا ثبوت سوشل میڈیا پر جاری اس بحث میں اس ملعونہ نے دیوبندی حمایت میں امیر المومینن علیہ سلام کو گالی دیکر کیا ہے۔

    بنیا سرور جیو نیو ز کی پاکستان مخالف بھارتی مہم امن کی آشا کے لئے کام کرتی ہے ،جبکہ یہی وہ افراد ہیں جو طاہر اشرفی اور لدھیانوی جیسےدہشتگرد اور ان کے سہولت کاروں کو امن کا پیغمبر بھی قرار دیتے ہیں۔

    لبرل ازم کے نام پر عوام کو بے وقوف بنانے والے ان تکفیریوں کا چہرہ آشکار ہوگیا ہے، یہ لوگ لبر ل یا انسانی حقوق کے علمبردار نہیں بلکہ دیوبندی و تکفیری نظریہ کی پاسداری کے علمبردار ہیں اور محافظ ہیں۔ امیر المومینن جیسے عظیم انسان، انکی والد ماجدہ اور رسول اکر م(ص) کی پاکیزہ بیٹی کے بارے میں گستاخانہ کلمات ادا کرنا انکے لبرل تکفیری/دیوبندی ہونے کا واضع ثبوت ہے ۔کیونکہ اگر کہیں بغض علی و آل علی(ع) پایا جاتا ہے تو یہی تکفیر ی/ دیوبندی مکتب ہے ۔

    المانہ فاروقی،نعیمی،لدھیانوی،اشرفی کی جانب سے مولائے امیر علیہ سلام کی شان میں گستاخی پر عوامی ردعمل

    http://shianews.com.pk/index.php?option=com_k2&view=item&id=15679%3A2015-06-13-10-40-18&Itemid=108

  • Unmasked Takfiri said

    المانہ فصیح ملعونہ کی حضرت علی کرم اللہ وجہہ الکریم اور حضرت فاطمہ رضی اللہ عنھا کی شان میں گستاخی

    نقل کفر ، کفر ناباشد ، یہ ملعونہ کیا بکواس کررہی ہے زرا خود پڑھ لیں

    امام شافعی رحمتہ اللہ علیہ نے فرمایا
    اذافی مجلس ذَکَرُواعلیاً
    وسِبْطَیْہِ وَفاطمةَ الزَّکیَةَ
    فَاجْریٰ بَعْضُھم ذِکریٰ سِوٰاہُ
    فَاَیْقَنَ اَنَّہُ سَلَقْلَقِیَةَ
    اِذٰا ذَکَرُوا عَلیَاً اَو ْبَنیہِ
    تَشٰاغَلَ بِالْرِّوایاتِ الْعَلِیَةِ
    یُقال تَجاوَزُوا یاقومِ ھٰذا
    فَھٰذا مِنْ حَدیثِ الرّٰافَضِیََّّةِ
    بَرِئتُ الی الْمُھَیْمِن مِن اناسٍ
    بَرونَ الرَّفْضَ حُبَّ الْفٰاطِمَیةِ
    عَلیٰ آلِ الرَّسولِ صَلوةُ رَبِّی
    وَ َلَعْنَتُہُ لِتِلْکَ الْجٰاھِلِیَّةِ
    ”جب کسی محفل میں ذکر ِعلی علیہ السلام ہویا ذکر ِسیدہ فاطمہ سلام اللہ علیہاہویا اُن کے دوفرزندوں کا ذکر ہو، تب کچھ لوگ اس واسطے کہ لوگوں کو ذکر ِمحمد و آلِ محمدسے دور رکھیں، دوسری باتیں چھیڑ دیتے ہیں۔ تمہیں یہ یقین کرلینا چاہئے کہ جوکوئی اس خاندان کے ذکر کیلئے اس طرح مانع ہوتا ہے،وہ بدکار عورت کا بیٹا ہے۔ وہ لمبی روایات درمیان میں لے آتے ہیں کہ علی و فاطمہ اور اُن کے دو فرزندوں کا ذکر نہ ہوسکے۔وہ یہ کہتے ہیں کہ اے لوگو! ان باتوں سے بچو کیونکہ یہ رافضیوں کی باتیں ہیں(میں جو امام شافعی ہوں) خدا کی طرف سے ان لوگوں سے بیزاری کا اظہار کرتا ہوں جو فاطمہ سے دوستی و محبت کرنے والے کو رافضی کہتے ہیں۔ میرے رب کی طرف سے درودوسلام ہو آلِ رسول پر اور اس طرح کی جہالت(یعنی محبانِ آلِ رسول کو گمراہ یا رافضی کہنا) پر لعنت ہو
    یہ اشعار مجھے بے اختیار یاد آئے جب آج مجھے مرے دوست عامر حسینی نے اپنی ایک پوسٹ ٹیگ کی جس میں ایک فوٹو ہے کسی عورت کا اور دو سکرین شارٹ ہیں اس عورت کی وال پر کمنٹس کے اور یہ کمنٹس خلیفہ چہارم ، داماد رسول صلی اللہ علیہ والہ وسلم اور نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی صاحبزادی جناب سیدۃ النساء حضرت فاطمۃ الذھراء رضی اللہ عنھا کے بارے میں انتہائی بے ادبی ، گستاخی پر مبنی ہیں جن کی کسی بھی عاقل ، بالغ ، باشعور اور دیانت دار آدمی سے توقع نہیں کی جاسکتی
    یہ خاتون انسان کہلانے کی مستحق نہیں ہے اور اس کو یہ زعم ہے کہ یہ روشن دماغ ہے اور ترقی کو پسند کرنے والی ہے
    ہم ایسے ںام نہاد روشن خیالوں کی اصلیت کو بہت اچھی طرح سے جانتے ہیں اور یہ خاتون ہمیں بجا طور پر مسلمانوں کی تاریخ میں اس ٹولے کی پیروکار لگتی ہے جس نے کبھی اسلام ، قران ، حدیث ، تفسیر ، فقہ اور تاریخ کو اپنے مطابق نہ پاتے ہوئے سب کا انکار کیا اور صرف خانوادہ اہل بیت اطہار کی دشمنی میں اسلام کو جاننے کے سارے زرایع اور سرچشموں کو مسترد کردیا اور اسے عجمیت کا نام دے ڈالا
    یہ ٹولہ خاص طور پر نوآبادیاتی دور میں مسلمانوں کا مصلح بنکر سامنے آیا اور اس نے ماضی کے بہت سے مرے ہوئے افکار کو حیات نو دی اور ابلیسیت کو نئے رنگ سے پیش کیا ، اقبال نے شاید اسی منظر کو دیکھکر کہا تھا کہ
    کسے خبر تھی لے کر چراغ مصطفوی
    جہاں میں آگ لگاتی پھرے گی بو للہبی
    اور ہم نے بہت سے غلام احمد پرویز ، عبداللہ چکڑالوی ، محمود عباسی ، احمد امین مصری اسی چراغ مصطفوی کے ساتھ جہاں میں آگ لگاتے دیکھے اور پھر وہ وقت بھی دیکھا کسی کے دل میں یزید کی محبت جاگی تو کسی کو بنو امیہ کے ملوک اسلام کے ٹھیک پرچارک لگنے لگے اور ان سب نے اپنے باوا اور شیخ اول ابن تیمیہ کی صحبت سے عظیم فائدہ اٹھایا جس نے جناب علی المرتضی کرم اللہ وجہہ الکریم کے سبھی دشمنوں کے افکار کو اسلامی افکار قرار دیکر دشمنی اہل بیت اطہار کا بھرپور مظاہرہ اپنی کتاب ” منھاج السنّہ ” میں کیا اور یہ اتنا بدبخت تھا کہ اس نے اہل بیت اطہار کے فضائل و مناقب کا انکار کرنے والی اپنی کتاب کا نام ” سنت کا منھاج ” رکھ ڈالا لیکن یہ کتاب بتاتی ہے کہ اس میں جس راستے کو سنت بتایا گيا ہے اس سے مراد آقائے دو جہاں صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سنت مبارکہ کا راستہ نہیں بلکہ اصل میں خوارج کے راستے کی جانب لوگوں کو گھسیٹنے کی کوشش ہے
    لیکن ملاعنہ بروزن الماعانہ نام نہاد فصیح کا کیس اور بھی مختلف ہے ، یہ ملعونہ اصل میں ” الحاد ” اور نام نہاد ” لبرل ازم ” کے نام پر اہل بیت اطہار کی شان میں زبان طعن دراز کرتی ہے اور یہ اس گروہ سے تعلق رکھتی ہے جو نام نہاد روشن خیالی ۔ لبرل ازم ، ترقی پسندی کے نام پر اہل بیت اطہار کے خلاف اپنے بغض کا آظہار کرتے ہیں
    ہم نے اس ملعونہ کی وال کو دیکھا اور اس کے ٹوئٹس وغیرہ پڑھے تو یہ سوشل میڈیا میں اور ایکسپریس گروپ کی ویب سائٹ پر بلاگ وغیرہ لکھنے میں مصروف نظر آئی اور بادی النظر میں یہ ہمیں ان ملحدین اور لبرل کے کیمپ کی ساتھی معلوم ہوتی ہیں جن کی جنگ براہ راست ایرانی کیمپ کے ساتھ ہے اور ان کی اس جنگ میں ہمدردیاں گلف ریاستوں کے ساتھ نظر آتی ہیں ، گویا ان کو الحاد کے پردے میں ہم گلف ریاستوں کی پراکسی کا نام دے سکتے ہیں اور یہ لوگ پاکستان میں بجا طور پر دیوبندی تکفیری دھشت گردوں کی پشت پناہی اس طرح سے کررہے ہیں کہ یہ پاکستان کے اندر دیوبندی تکفیری دھشت گردوں کے فساد اور ان کے حملوں کو چودہ سو سال پرانے شیعہ – سنّی جھگڑے کا نتیجہ بتلاتے ہیں اور پاکستان کے اندر طالبانائزیشن ، دیوبندی تکفیریت کو شیعہ – سنّی بائنری کے اندر ہی دیکھنے کی کوشش کرتے ہیں اور اس طرح سے یہ لوگ کبھی بھی بھولے سے اس بات کا تذکرہ نہیں کرتے کہ سپاہ صحابہ پاکستان / جعلی اہلسنت والجماعت /جھنگوی / تحریک طالبان پاکستان / جماعت الاحرار / جند اللہ / جیش محمد / جیش الفرقان / جیش العدل وغیرہ ، وغیرہ سب کے سب پاکستان کے سنيوں کی نسل کشی میں ملوث ہیں جیسے یہ شیعہ اور دیگر مذھبی برادریوں کی نسل کشی میں ملوث ہیں کیونکہ اگر اس حقیقت کا اعتراف کرلیا گيا تو پھر اسے شیعہ – سنّی تنازعہ کہنا بہت مشکل ہوجائے گآ ، ان تنظیموں کو سنّی تںظیمیں کہنا ناممکن ہوگآ اور پھر ان کی دیوبندی تکفیری شناخت بھی سب کے سامنے لانا پڑے گی اور یہ موت ہے اس لبرل لابی کی جس نے امریکی تحقیقاتی انسٹی ٹیوٹس اور جامعات میں ریسرچ اور تحقیق کے نام پر لاکھوں ڈالر بٹورے اور یہ ثابت کرنے کے لیے ایڑی چوٹی کا زور لگایا کہ جنوبی ایشیا اور مڈل ایسٹ ، شمالی افریقہ میں نام نہاد جہادی تنظیموں کی جو دھشت گردی ہے وہ شیعہ – سنّی تنازعے کی وجہ سے ہے اور اس حوالے سے ان نام نہاد جعلی سکالرز نے کبھی بھی دیوبندی – سلفی تکفیریت کو پورے عالم اسلام پر حملہ آور ہونے اور عالم اسلام کی تکثریت اور تنوع کو برباد کرنے والی قوتوں کو بے نقاب نہ کیا
    پاکستان کے اندر یہ گروہ این جی اوز ، لبرل گروپس ، کیمونسٹ اور سوشلسٹ جھنڈوں تلے کام کررہا ہے اور یہ اپنے آپ کو ملحد ظاہر کرتے ہیں اور ان کے الحاد پر بھی دیوبندی تکفیری خارجیت کا رنگ بہت واضح ہے اور ایک حصّہ اس میں خود کو لبرل مسلمان بتلاکر دیوبندی تکفیریت کے بچآؤ کی کوشش کرتا ہے ، عاصمہ جہانگیر ، نجم سیٹھی ، بینا سرور ، تحسین ، فرزانہ باری ، طارق فتح اور یہ ملعونہ ایک ہی تھلی کے چٹے بٹے ہیں اور ان کے اندر بغض اہل بیت کوٹ کوٹ کر بھرا ہوا ہے

    محمد بن ادریس شافعی(امام شافعی) کے کچھ اور اشعار بھی برکت کے لیے پیش کرتا ہوں
    علیٌّ حُبُّہُ الْجُنَّة
    اِمامُ النّٰاسِ وَالْجِنَّة
    وَصِیُّ المُصْطَفےٰ حَقّاً
    قَسِیْمُ النّٰارِ وَالْجَنَّة
    ”حضرت علی علیہ السلام کی محبت ڈھال ہے۔ وہ انسانوں اور جنوں کے امام ہیں۔ وہ حضرت محمد مصطفےٰ کے برحق جانشین ہیں اور جنت اور دوزخ تقسیم کرنے والے ہیں“۔
    حوالہ حموینی، کتاب فرائد السمطین میں،جلد1،صفحہ326۔

    قٰالُوا تَرَفَّضْتَ قُلْتُ کَلّٰا
    مَاالرَّفْضُ دِیْنی وَلَااعْتِقٰادِی

    لٰکِنْ تَوَلَّیْتُ غَیْرَ شَکٍّ
    خَیْرَ اِمامٍ وَ خَیْرَ ھٰادٍ

    اِنَّ کٰانَ حُبُّ الْوَصِیِّ رَفْضاً
    فَاِنَّنِی اَرْفَضُ الْعِبٰادِ

    ”مجھے کہتے ہیں کہ تو رافضی ہوگیا ہے۔ میں نے کہا کہ رافضی ہونا ہرگز میرا دین اور اعتقاد نہیں۔ لیکن بغیر کسی شک کے میں بہترین ہادی و امام کو دوست رکھتا ہوں۔ اگر وصیِ پیغمبر سے دوستی و محبت رکھنا رفض(رافضی ہونا) ہے تو میں انسانوں میں سب سے بڑا رافضی
    یٰارٰاکِباً قِفْ بِالْمُحَصَّبِ مِنْ مِنیٰ
    وَاھْتِفْ بِسٰاکِنِ خِیْفِھٰا وَالنّٰاھِضِ
    سَحَراً اِذَافَاضَ الْحَجِیْجُ اِلٰی مِنیٰ
    فَیْضاً کَمُلْتَطَمِ الْفُراتِ الْفٰائِضِ
    اَنْ کٰانَ رَفْضاً حُبُّ آلِ مُحَمَّدٍ
    فَلْیُشْھَدِ الثَّقَلاٰنِِ اِنِّیْ رٰافِضِیْ

    ”اے سواری! تو جو مکہ جارہی ہے،ریگستانِ منیٰ میں توقف کرنا،صبح کے وقت جب حاجی منیٰ کی طرف آرہے ہوں تو مسجد ِخیف کے رہنے والوں کو آواز دینا اور کہنا کہ اگر دوستیِ آلِ محمد رفض ہے تو جن و انس یہ شہادت دیتے ہیں کہ میں رافضی ہوں۔
    وَلَمَّا رَأَیْتُ النّٰاسَ قَدْ ذَھَبَتْ بِھِمْ
    مَذَاھِبُھُمْ فِیْ اَبْحَرِ الْغَیِّ وَالْجَھْلِ
    رَکِبْتُ عَلَی اسْمِ اللّٰہِ فِیْ سُفُنِ النَّجٰا
    وَھُمْ اَھْلُ بَیْتِ الْمُصْطَفیٰ خٰاتِمِ الرُّسُلِ
    وَاَمْسَکْتُ حَبْلَ اللّٰہِ وَھُوَوِلاٰوٴُھُمْ
    کَمٰا قَدْ اُمِرْنٰا بِالتَمَسُّکِ بِالْحَبْلِ
    اِذَا افْتَرَقَتْ فِی الدِّیْن سَبْعُوْنَ فِرْقَةً
    وَنِیْفاًعَلیٰ مٰاجٰاءَ فِیْ وٰاضِحِ النَّقْلِ
    وَلَم یَکُ ناجٍ مِنْھُمْ غَیْرَ فِرْقَةٍ
    فَقُلْ لِیْ بِھٰا یٰا ذَاالرَّجٰاجَةِ وَالْعَقْلِ
    أَفِی الْفِرْقَةِ الْھُلاٰکِ آلُ مُحَمَّد
    اَمِ الْفِرْقَةُ الّلا تِیْ نَجَتْ مِنْھُمْ قُلْ لِیْ
    فَاِنْ قُلْتَ فِی النّٰاجَیْنِ فَالْقَوْلُ وٰاحِدٌ
    وَاِنْ قُلْتَ فِی الْھُلاٰکِ حَفْتَ عَنِ الْعَدْلِ
    اِذَاکٰانَ مَوْلَی الْقَوْمِ مِنْھُمْ فَاِنَّنِیْ
    رَضِیْتُ بِھِمْ لاٰزٰالَ فِیْ ظِلِّھِمْ ظِلِّیْ

    رَضِیْتُ عَلِیّاً لِیْ اِمٰاماً وَنَسْلَہُ
    وَاَنْتَ مِنْ الْبٰاقِیْنَ فِیْ اَوْسَعِ الْحَلِ
    ”جب میں نے لوگوں کو جہالت اور گمراہی کے سمندر میں غرق دیکھا تو پھر بنامِ خدا کشتیِ نجات (خاندانِ رسالت اور اہلِ بیت ِ اطہار علیہم السلام) کا دامن پکڑا اور اللہ تعالیٰ کی رسی کو تھاما کیونکہ اللہ کی رسی جو دوستیِ خاندانِ رسالت ہے ،کو پکڑنے کا حکم دیا گیا ہے۔جس زمانہ میں دین تہتر فرقوں میں بٹ جائے گا تو کہتے ہیں کہ صرف ایک ہی فرقہ حق پر ہوگا ،باقی باطل پر ہوں گے۔اے عقل و دانش رکھنے والے! مجھے بتا کہ جس فرقہ میں محمد اورآلِ محمد ہوں گے، کیا وہ فرقہ باطل پر ہوگا یا حق پر ہوگا؟ اگر تو کہے کہ وہ فرقہ حق پر ہوگا تو تیرا اور میرا کلام ایک ہے اور اگر تو کہے کہ وہ فرقہ باطل اور گمراہی پر ہوگا تو تو یقینا صراطِ مستقیم سے منحرف ہوگیا ہے۔
    یہ جان لو کہ خاندانِ رسالت قطعاً اور یقینا حق پر ہے اور صراطِ مستقیم پر ہے۔ میں بھی
    اُن سے راضی ہوں اور اُن کے طریقے کو قبول کرتا ہوں۔ پروردگار! اُن کا سایہ مجھ پر ہمیشہ قائم و دائم رکھ۔ میں حضرت علی علیہ السلام اور اُن کی اولاد کی امامت پرراضی ہوں کیونکہ وہ حق پر ہیں اور تو اپنے فرقے پر رہ ،یہاں تک کہ حقیقت تیرے اوپر واضح ہوجائے“۔
    یااَھْلَ بَیْتِ رَسُوْلِ اللّٰہِ حُبُّکُمْ
    فَرَضٌ مِنَ اللّٰہِ فِی الْقُرآنِ اَنْزَلَہُ
    کَفَاکُمْ مِنْ عَظِیْمِ الْقَدْرِ اِنَّکُمْ
    مَنْ لَمْ یُصَلِّ عَلَیْکُمْ لَاصَلوٰةَ لَہُ
    ”اے اہلِ بیت ِ رسول اللہ!آپ کی دوستی و محبت اللہ کی جانب سے قرآن میں فرض قرار دی گئی ہے:
    (مندرجہ بالا اشعار میں امام شافعی کا اشارہ آیت ِ زیر کی طرف ہے:
    ”قُلْ لا اَسْئَلُکُمْ عَلَیْہِ اَجْراً اِلَّاالْمَوَدَّةَ فِی الْقُرْبٰی“)
    آپ کی قدرومنزلت کیلئے یہی کافی ہے کہ جو آپ پر درود نہ پڑھے، اُس کی نماز قبول
    نہیں ہوتی“۔
    اشعار کے آخر میں سخت و تند لہجہ میں دشمنانِ اہلِ بیت کو مخاطب کرتے ہوئے کہتے ہیں:

    لَولَمْ تَکُنْ فِی حُبِّ آلِ مُحَمَّدٍ
    ثَکَلَتْکَ اُمُّکَ غَیْرَ طَیِّبِ الْمَوْلِدِ

    ”اگر تم میں آلِ محمدکی محبت نہیں تو تمہاری ماں تمہارے لئے عزا میں بیٹھے کہ تم یقینا حرام
    زادے ہو۔
    اب کچھ احادیث اور اقوال صحابہ کرام رضوان اللہ اجمعین کے جناب علی المرتضی رضی اللہ عنہ کی شان اقدس میں بیان کئے گئے اور یہ میں نے ڈاکٹر طاہر القادری کی کتاب ” کنز المطالب فی مناقب علی ابن ابی طالب ” سے لئے گئے ہیں
    بَابٌ فِي قَوْلِ سَيِّدِنَا أَبِي بَکْرٍ الصِدِّيْقِ وَ سَيِّدِنَا عُمَرَ بْنِ الْخَطَّابِ رضی الله عنه : عَلِيٌّ مَوْلَايَ وَ مَوْلَی کُلِّ مُؤْمِنٍ
    (فرمان صدیق اکبر و فاروق اعظم رضی اﷲ عنہما : علی رضی اللہ عنہ میرے اور تمام مومنین کے مولا ہیں)

    عَنِ الْبَرَاءِ بْنِ عَازِبٍ رضی الله عنه، قَالَ : کُنَّا مَعَ رَسُوْلِ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم فِي سَفَرٍ، فَنَزَلْنَا بِغَدِيْرِ خُمٍّ فَنُوْدِيَ فِيْنَا الصَّلَاةَ جَامِعَةً وَ کُسِحَ لِرَسُوْلِ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم تَحْتَ شَجَرَتَيْنِ فَصَليَ الظُّهْرَ وَ أخَذَ بِيَدِ عَلِيٍّ، فَقَالَ : ألَسْتُمْ تَعْلَمُوْنَ أنِّيْ أوْلَی بِالْمُؤْمِنِيْنَ مِنْ أنْفُسِهِمْ؟ قَالُوْا : بَلَی، قَالَ : ألَسْتُمْ تَعْلَمُوْنَ أنِّيْ أوْليَ بِکُلِّ مُؤْمِنٍ مِّنْ نَفْسِهِ؟ قَالُوْا : بَلَی، قَالَ : فَأخَذَ بَيَدِ عَلِيٍّ، فَقَالَ : مَنْ کُنْتُ مَوْلَاهُ فَعَلِیٌّ مَوْلَاهُ، اللّٰهُمَّ! وَالِ مَنْ وَالَاهُ وَعَادِ مَنْ عَادَاهُ. قَالَ : فَلَقِيَهُ عمر رضی الله عنه بَعْدَ ذٰلِکَ، فَقَالَ لَهُ : هَنِيْئاً يَا ابْنَ أبِيْ طَالِبٍ! أصْبَحْتَ وَ أمْسَيْتَ مَوْليَ کُلِّ مُؤْمِنٍ وَ مُؤْمِنَةٍ. رَوَاهُ أَحْمَدُ وَابْنُ أَبِيْ شَيْبَةَ.

    ’’حضرت براء بن عازب رضی اللہ عنہ سے روایت ہے ہم حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ سفر پر تھے، (راستے میں) ہم نے وادی غدیر خم میں قیام کیا۔ وہاں نماز کے لیے اذان دی گئی اور حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے لئے دو درختوں کے نیچے صفائی کی گئی، پس آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے نمازِ ظہر ادا کی اور حضرت علی رضی اللہ عنہ کا ہاتھ پکڑ کر فرمایا : کیا تمہیں معلوم نہیں کہ میں کل مومنوں کی جانوں سے بھی قریب تر ہوں؟ انہوں نے عرض کیا : کیوں نہیں! آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : کیا تمہیں معلوم نہیں کہ میں ہر مومن کی جان سے بھی قریب تر ہوں؟ انہوں نے عرض کیا : کیوں نہیں! راوی کہتا ہے کہ پھر آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے حضرت علی رضی اللہ عنہ کا ہاتھ پکڑ کر فرمایا : ’’جس کا میں مولا ہوں اُس کا علی مولا ہے۔ اے اللہ! اُسے تو دوست رکھ جو اِسے (علی کو) دوست رکھے اور اُس سے عداوت رکھ جو اِس سے عداوت رکھے۔‘‘ راوی کہتا ہے کہ اس کے بعد حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے حضرت علی رضی اللہ عنہ سے ملاقات کی اور اُن سے کہا : ’’اے ابن ابی طالب! مبارک ہو، آپ صبح و شام (یعنی ہمیشہ کے لئے) ہر مومن اور مومنہ کے مولا بن گئے ہیں۔ اس حدیث کو امام احمد اور ابن ابی شيبہ نے روایت کیا ہے۔‘‘

    الحديث رقم 65 : أخرجه أحمد بن حنبل فی المسند، 4 / 281، وابن أبی شيبة فی المصنف، 12 / 78،الحدیث

    . عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رضی الله عنه، قَالَ : مَنْ صَامَ يَوْمَ ثَمَانِ عَشَرَةَ مِنْ ذِي الْحَجَّةِ کُتِبَ لَهُ صِيَامُ سِتِّيْنَ شَهْرًا، وَ هُوَ يَوْمَ غَدِيْرِ خُمٍّ لَمَّا أَخَذَ النَّبِيُّ صلی الله عليه وآله وسلم بِيَدِ عَلِيِّ بْنِ أَبِي طَالِبٍ رضی الله عنه، فَقَالَ : أَلَسْتَ وَلِيَّ الْمُؤْمِنِيْنَ؟ قَالُوْا : بَلَی، يَا رَسُوْلَ اﷲِ! قَالَ : مَنْ کُنْتُ مَوْلَاهُ فَعَلِيٌّ مَوْلَاهُ، فَقَالَ عُمَرُ بْنُ الْخَطَّابِ : بَخْ بَخْ لَکَ يَا ابْنَ أَبِي طَالِبٍ! أَصْبَحْتَ مَوْلَايَ وَ مَوْلَی کُلِّ مُسْلِمٍ، فَأَنْزَلَ اﷲُ (اَلْيَوْمَ أَکْمَلْتُ لَکُمْ دِيْنَکُمْ)۔ رَوَاهُ الطَّبَرَانِيُّ فِي الْمُعْجَمِ الْأَوْسَطِ.

    ’’حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ جس نے اٹھارہ ذی الحج کو روزہ رکھا اس کے لئے ساٹھ (60) مہینوں کے روزوں کا ثواب لکھا جائے گا، اور یہ غدیر خم کا دن تھا جب حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے حضرت علی رضی اللہ عنہ کا ہاتھ پکڑ کر فرمایا : کیا میں مؤمنین کا ولی نہیں ہوں؟ انہوں نے عرض کیا : کیوں نہیں، یا رسول اﷲ! آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : جس کا میں مولا ہوں، اُس کا علی مولا ہے۔ اس پر حضرت عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ نے فرمایا : مبارک ہو! اے ابنِ ابی طالب! آپ میرے اور ہر مسلمان کے مولا ٹھہرے۔ (اس موقع پر) اللہ تعالیٰ نے یہ آیت نازل فرمائی : ’’ آج میں نے تمہارے لئے تمہارا دین مکمل کر دیا۔ اس حدیث کو طبرانی نے ’’المعجم الاوسط‘‘ میں روایت کیا ہے۔‘‘

    الحديث رقم 66 : أخرجه الطبرانی في المعجم الأوسط، 3 / 324، و خطيب البغدادی في تاريخ بغداد، 8 / 290، و ابن عساکر في تاريخ الدمشق الکبير، 45 / 176، 177، و ابن کثير في البدايه والنهايه، 5 / 464، و رازی في التفسير الکبير،ص 139 ، گیارھویں جلد

    . عَنْ عُمَرَ رضی الله عنه : وَ قَدْ نَازَعَهُ رَجُلٌ فِي مَسْأَلَةٍ، فَقَالَ : بَيْنِي وَ بَيْنَکَ هَذَا الْجَالِسُ، وَ أَشَارَ إِلَی عَلِيِّ بْنِ أَبِي طالب رضی الله عنه، فَقَالَ الرَّجُلُ : هَذَا الْأَبْطَنُ! فَنَهَضَ عمر رضی الله عنه عَنْ مَجْلِسِهِ وَ أَخَذَ بِتَلْبِيْبِهِ حَتَّی شَالَهُ مِنَ الْأرْضِ، ثُمَّ قَالَ : أَتَدْرِيْ مَنْ صَغَّرْتَ، مَوْلَايَ وَ مَوْلَی کُلِّ مُسَلِمٍ! رَوَاهُ مُحِبُّ الدِّيْنِ أَحْمَدُ الطَّبَرِيُّ.

    ’’حضرت عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ایک آدمی نے آپ کے ساتھ کسی معاملہ میں جھگڑا کیا تو آپ رضی اللہ عنہ نے فرمایا کہ میرے اور تیرے درمیان یہ بیٹھا ہوا آدمی فیصلہ کرے گا۔ ۔ ۔ ۔ اور حضرت علی رضی اللہ عنہ کی طرف اشارہ کیا۔ ۔ ۔ تو اس آدمی نے کہا : یہ بڑے پیٹ والا (ہمارے درمیان فیصلہ کرے گا)! حضرت عمر رضی اللہ عنہ اپنی جگہ سے اٹھے، اسے گریبان سے پکڑا یہاں تک کہ اسے زمین سے اوپر اٹھا لیا، پھر فرمایا : کیا تو جانتا ہے کہ تو جسے حقیر گردانتا ہے وہ میرے اور ہر مسلمان کے مولیٰ ہیں۔ اسے محب الدين طبری نے روایت کیا ہے۔‘‘

    الحديث رقم 67 : أخرجه محب الدين الطبری في الرياض النضره فی مناقب العشرہ

    . عَنْ عُمَرَ رضی الله عنه وَ قَدْ جَاءَ هُ أَعْرَابِيَانِ يَخْتَصِمَانِ، فَقَالَ لِعَلِيٍّ رضی الله عنه : إِقْضِ بَيْنَهُمَا يَا أَبَا الْحَسَنِ! فَقَضَی عَلِيٌّ رضی الله عنه بَيْنَهُمَا، فَقَالَ أَحَدُهُمَا : هَذَا يَقْضِي بَيْنَنَا! فَوَثَبَ إِلَيْهَ عمر رضی الله عنه وَ أَخَذَ بِتَلْبِيْبِهِ، وَ قَالَ : وَيْحَکَ! مَا تَدْرِيْ مَنْ هَذَا؟ هَذَا مَوْلَايَ وَ مَوْلَی کُلِّ مُؤْمِنٍ، وَ مَنْ لَمْ يَکُنْ مَوْلَاهُ فَلَيْسَ بِمُؤْمِنٍ. رَوَاهُ مُحِبُّ الدِّيْنِ أَحْمَدُ الطَّبَرِيُّ.

    ’’حضرت عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ان کے پاس دو بدّو جھگڑا کرتے ہوئے آئے۔ آپ رضی اللہ عنہ نے حضرت علی رضی اللہ عنہ سے فرمایا : اے ابوالحسن! ان دونوں کے درمیان فیصلہ فرما دیں۔ آپ رضی اللہ عنہ نے اُن کے درمیان فیصلہ کر دیا۔ ان میں سے ایک نے کہا کہ (کیا) یہی ہمارے درمیان فیصلہ کرنے کے لئے رہ گیا ہے؟ (اس پر) حضرت عمر رضی اللہ عنہ اس کی طرف بڑھے اور اس کا گریبان پکڑ کر فرمایا : تو ہلاک ہو! کیا تو جانتا ہے کہ یہ کون ہیں؟ یہ میرے اور ہر مؤمن کے مولا ہیں (اور) جو اِن کواپنا مولا نہ مانے وہ مؤمن نہیں۔ اسے محب الدين طبری نے روایت کیا ہے۔‘‘

    الحديث رقم 68 : أخرجه محب الدين أحمد الطبری في الرياض النضره فی مناقب العشره، 3 / 128، و محب الدين احمد الطبری في ذخائر العقبی فی مناقب ذوی القربی،

    . عَنْ عُمَرَ أَنَّهُ قَالَ : عَلِيٌّ مَوْلَی مَنْ کَانَ رَسُوْلُ اللّٰهِا مَوْلَاهُ. رَوَاهُ مُحِبُّ الدِّيْنِ أَحْمَدُ الطَّبَرِيُّ.

    ’’حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے فرمایا : حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم جس کے مولا ہیں علی رضی اللہ عنہ اس کے مولا ہیں۔ اسے محب الدين طبری نے روایت کیا ہے۔‘‘

    الحديث رقم 69 : أخرجه محب الدين أحمد الطبری في الرياض النضره فی مناقب العشره، 3 / 128، و ابن عساکر في تاريخ دمشق الکبير،

    https://unmaskedtakfiri.wordpress.com/2015/06/13/%D8%A7%D9%84%D9%85%D8%A7%D9%86%DB%81-%D9%81%D8%B5%DB%8C%D8%AD-%D9%85%D9%84%D8%B9%D9%88%D9%86%DB%81-%DA%A9%DB%8C-%D8%AD%D8%B6%D8%B1%D8%AA-%D8%B9%D9%84%DB%8C-%DA%A9%D8%B1%D9%85-%D8%A7%D9%84%D9%84%DB%81/

  • Helo champions. Chalo bakwas to tum zyada say zyada yehi kar saktay thay tasveer hi koi achi utha laytay fb say kuch to khush zoaq bano. Aur yeh Jo nazam kay naam pay lagaya hy Yeh bhi tumhari tarah bay wazan hy..isay kisi shair ko dikha lo kaho to main hi wazan main lay aata hn. Shair to kum say kum saleeqay say likha karo…