Original Articles Urdu Articles

یمن پر سعودی حملوں میں عام شہریوں اور بچوں کے قتل عام پر اقوام متحد ہ کی مذمت

ShowImage

اقوام متحدہ کی بچوں کے بہبود کے ادارے يونیسیف کا کہنا ہے کہ یمن میں ایک ماہ سے جاری سعودی عرب کے فضائی حملوں میں کم سے کم 115 بچے ہلاک اور 172 اپاہج ہو گئے ہیں۔

اقوام متحدہ نے جمعہ کو کہا کہ اس جنگ میں 551 سے بھی زیادہ شہری ہلاک ہو گئے ہیں۔

یونیسیف میں یمن کے نمائندے جولین ہارنیس کا کہنا تھا کہ ’یمن میں ہزاروں بچے ایسے ہیں جو اب بھی خطرے بھرے ماحول میں رہ رہے ہیں۔ ہلاک بچوں کی تعداد ظاہر کرتا ہے کہ یہ لڑائی اس ملک کے بچوں کے لیے کتنی خوفناک ثابت ہوئی ہے۔‘

اقوام متحدہ نے تمام فریقوں سے اپیل کی کہ وہ امدادی سامان کو شہریوں تک پہنچانے میں مدد کریں

اقوام متحدہ کے ایک اندازے کے مطابق، اس تشدد میں تقریبا 150،000 لوگ بے گھر ہو گئے ہیں۔

يوہانس وین ڈیرکل جو یمن کے لیے اقوام متحدہ کے انسانی امور سے متعلق کنوینر ہیں نے خبردار کیا ہے کہ ملک میں بڑھتے خونی تنازعے سے یہاں کے صحت کا نظام خاتمے کے دہانے پر ہے۔

ملک بھر میں پانی، بجلی اور کھانے کی چیزوں کی فراہمی میں تشدد کی وجہ سے رکاوٹ پیدا ہو گئی ہے اور ملک کے قریب بیس لاکھ بچے اسکول نہیں جا پا رہے ہیں۔

يوہانس وین ڈیركل نے بھی تمام فریقوں سے اپیل کی کہ وہ امدادی سامان کو شہریوں تک پہنچانے میں مدد کریں۔

About the author

Shahram Ali

110 Comments

Click here to post a comment