Original Articles

Haqqanis new home: Parachinar – by Kahar Zalmay

Jalaluddin-Haqqani-316x216

Note by Senge Sering :  May be Syed Faisal Abidi can shed some light on what his beloved army and good Taliban are doing in Kurram agency.

Another comment on Faccebook: Pakistani military going at great length to eliminate/frighten/dysfunction Shia leadership in Kurram Agency (Parachinar) to settle Haqqanis and other good Taliban in the agency. Local leader Sajid Turi’s home reportedly under attack…For over three years, Kurram Agency, the only ‘district’ of Pakistan with Shia majority remained under siege. Pakistani military let the Taliban run the valley where they slaughtered Shias with impunity and banned import of food and medical supplies. The situation became so worse that the local doctors had to use veterinary medicines on humans to treat ailments. Taliban ambushed wagons smuggling food and other provisions from Afghanistan killing scores of people.

For three years, Kurram Agency looked like Gaza. According to local sources, over 6,000 Shias of Kurram Agency lost their lives to Taliban attacks. Hundreds of thousands relocated to safer places like Karachi, Middle East and Gilgit-Baltistan.

Protest  against the settlement of Haqqani Taliban in Kurram
Protest against the settlement of Haqqani Taliban in Kurram

This year, locals will once again ‘host’ the good Talibans causing more misery and slaughter.Will you pay attention to this Gaza of Pakistan, or not since it is not fashionable to talk about non-Arabs.

The local administration began imposing curfews for no obvious reason, but once it was made known that the Haqqanis were in the area the curfews started making sense.

The Haqqanis network, key ally of the Pakistani establishment and renowned for its attacks against the US and NATO forces in Afghanistan, has found itself a new home in Parachina, Kurram Agency, after being dislodged from its hideouts in North Waziristan in May of this year. Just one month before the much publicized military operation, Zarb-e-Azb.

Strategically placed Parachinar, also the headquarters of Kurram Agency, is just 70 miles away from Kabul. Locals say the Haqqanis were relocated there in the months of April and May. The local administration began imposing curfews for no obvious reason, but once it was made known that the Haqqanis were in the area the curfews started making sense. Kurram Agency is surrounded by Afghanistan from three sides and is the closest in terms of distance to the Afghan capital, Kabul. The rapid increase in attacks in Afghanistan since the launch of military operation in Waziristan in June and the arrival of bodies to Lower Kurram from Afghanistan substantiates the locals’ claims.

Although the Haqqani network is officially part of the Afghan Taliban led by Mullah Omar, the Haqqanis maintain distinct command and control and lines of operations. Siraj Haqqani, the son of the famous anti-Soviet fighter Jalaluddin Haqqani, is the current leader of the Haqqani network. Siraj is even more extreme than his father and maintains closer ties to al-Qaeda and other foreign extremists in Pakistan.

Map of Kuram AgencyFor many years, the majority of the Shia tribes, Turi and Bangash, have been forbidding the Haqqanis, and other Taliban, from carving out hideouts in Upper Kurram, even though they already have existing sanctuaries within the Aurakzai tribe dominated areas of Central and Lower Kurram. The locals are left feeling helpless as the military moves their Haqqani ally to the Shalozan area, strategically placed in the foothills of Kohe-Sufaid (locally called Spin Ghar). Locals believe this area provides the perfect environment to the Haqqanis for two reasons: Cover from the drone strikes and easy and quick access to Kabul.

For the last five days, some 8,000 Turi and Bangash tribesmen have been staging sit-ins against the government’s policies that have brought the Haqqanis to the area cloaked in the garb of the Mengal tribe settlement in Shilozan Tangi area near the Pak-Afghan border. Mengal’s are Sunni like the Haqqanis and Taliban, making them natural allies.

The protester’s demands also include the release of some 100 elders who were put in prison under the dreaded Frontier Crimes Regulations (FCR) when they protested against the local administration facilitating the relocation of militant groups. They also want the government to grant permission for Paish Imam (prayer leader) Agha Irfani to return to Parachinar after being expelled by the local administration last month. Irfani has been in the forefront for many years resisting the Haqqnis entry into Upper Kurram. The administration assured the local people that he will be brought back after the month of Ramdan.

One of the protesters told me on twitter, “We cannot openly criticize the military for its role in relocating the Haqqani Network in our area as under FCR, my entire family will be put in prison and there will be no one to resort to for help. Our demand for our Paish Iman return is indirectly against the military’s policies of giving shelter to terrorists in our backyard. We do not want terrorists to roam in our streets”

The Pakistani government has been assuring the Obama Administration that the Haqqnis will not be spared in the North Waziristan operation but the realities on the ground suggest otherwise. They have safely been moved to other parts of the tribal belt and settled areas including some parts of the capital, Islamabad.

Critics claim that the military is in no mood to divorce from its previous policies of using terrorists for expanding its foreign policy interests in Afghanistan and India. For five years they have been dragging their feet to launch an operation in North Waziristan but in the end it appears to be a spurious one. Since the Haqqanis have now been safely moved to Kurram Agency it will take it another five years to go after them – a never ending cycle.

Others believe that the military operations ranging from Swat to Bajaur to North Waziristan are just part of the military’s favorite land-grabbing exercises; consistent with the view these operations are part of another cantonment setup in North Waziristan similar to what has taken place in Swat.

Source:

http://project-pakistan.com/haqqnis-new-home-parachinar/

 

About the author

Shahram Ali

9 Comments

Click here to post a comment
  • Please remove all but the first 2 paragraphs of this article. You are not authorised by the author or our website to post the article in its entirety. Thanks.

  • اصل حقائق۔۔۔اور تصویر کا دوسرا رخ
    دیکھا جو تیر کھا کے کمیں گاہ کی طرف
    اپنے ہی دوستوں سے ملاقات ہوگئی
    آپ کے ویب سائٹ حقانی نیٹ ورک کا نیا مسکن پاراچنار۔۔۔کے عنوان سے شائع شدہ آرٹیکل میں آپ نے حقیقت بیان کرنے کی بجائے حقیقت چھپائی ہے۔۔۔حقانی نیٹ ورک کو پاراچنار میں ستمبر 2010 میں
    پاراچنار کے اصل دشمنوں سیاسی و مالی مفادات کے حامل اور خفیہ اداروں کے ٹشو پیپرز پیش امام نواز گلگتی و ساجد طوری۔۔۔۔ نے بسایا تھا جس کی بدولت خفیہ اداروں نے ساجد طوری کے زریعے پیش امام نواز گلگتی کو اسلام آباد میں عالیشان بنگلہ و مالی مراعات دئیے۔۔۔جب کہ پیش امام نواز گلگتی نے 2013 کے انتخابات میں کئ امیدواروں میں سے صرف ساجد طوری کا اعلان کرکے خفیہ والوں کی مدد سے کامیاب کرکے علاقے کے عوام اور انتخابی امیدواروں کو تقسیم کیا۔۔۔
    حقانی نیٹ ورک کو پاراچنار خیوص میں ستمبر2010 میں کروڑوں روپے رشوت لے کر اسلام آباد بارہ کہو میں حقانی نیٹ ورک جلال دین حقانی کے بیٹوں ابراہیم اور نصیر حقانی کے ساتھ جن لوگوں نے معاہدہ کیا.. ان میں ساجد طوری ایم این اے اور ساجد طوری کے چچا لائق طوری سابق پولٹیکل ایجںنٹ وزیرستان اور خفیہ اداروں کے ٹشو پیپر پیش امام نواز گلگتی کے انجمن کے تین افراد شامل تھے جن کے نام ڈیلی ٹائمز میں ڈاکٹر محمد تقی نے تفصیل بیان کی تھی
    Kurram the foresaken FATA (Haqani Network in Kurram) Daily Times, Dr Mohammad Taqi .
    http://archives.dailytimes.com.pk/editorial/04-Nov-2010/comment-kurram-the-forsaken-fata-dr-mohammad-taqi

    The sham Operation in Kurram, Dr M Taqi
    http://iaoj.wordpress.com/2011/07/07/the-sham-operation-in-kurram-dr-mohammad-taqi/

    جس طرح خفیہ اداروں نے وزیرستان و دیگر علاقوں میں طالبان کمانڈرز بیت اللہ و حکیم اللہ کو ٹشو پیپر کی طرح اپنے مفادات کے لئے استعمال کیا اور پھر ڈسٹ بن میں پھینک دیا۔۔۔اسی طرح پاراچنار میں بھی مزہب کے نام پر ایک ٹشو پیپر نواز گلگتی ملا کو استعمال کیا جس نے ساجد طوری کا ایم این اے کے سیٹ کے لئے اعلان کیا۔۔۔اور ساجد طوری نے حقانی نیٹ ورک کو پاراچنار میں آباد کرنے کے لئے حکومت و خفیہ اداروں سے تعاون کیا۔۔
    ۔یاد رہے یہ دھرنا جس کی آپ نے تصاویر دئیے ہیں اور غلط انداز یعنی حقانی نیٹ ورک کے خلاف احتجاج کا نام دیا ہے۔۔۔اس دھرنے کے تین مطالبات ہیں
    1 فسادی ملا نواز گلگتی کو واپس پاراچنار لایا جائے
    2 قید شدہ قبائلی رہنماوں کو رہا کیا جائے
    3 پولٹیکل انتظامیہ کو برطرف کیا جائے
    اس ویب سائٹ والوں کو شرم آنی چاہئیے کہ دھرنے کے مطالبات میں حقانی نیٹ ورک کا مطالبہ شامل نہیں۔۔۔(حالانکہ پاراچنار کی عوام کی نوے فیصد اکثریت جو سیاسی و مالی مفادات کے حامل اور خفیہ اداروں کے ٹشو پیپرز نواز گلگتی و ساجد طوری والے دھرنے میں شامل نہیں سب ہی حقانی نیٹ ورک کے خلاف ہیں۔۔۔اصل میں حقانی نیٹ ورک کو پاراچنار میں آباد کرنے میں ان دو شخصیات اور خفیہ اداروں کے ٹشو پیپرز نواز گلگتی و ساجد طوری کا سب سے بڑا ہاتھ ہے ۔۔۔اگر نہیں ہے تو ساجد طوری اس مسئلے پر قومی اسمبلی میں بات یا پوائنٹ آف آرڈر کیوں نہیں اٹھاتے۔۔۔۔یا کم از کم میڈیا میں ایک بیان و پریس کانفرنس کیوں نہیں کرتے۔۔۔۔اسی طرح پاراچنار کے عوام کو آپسمیں تقسیم کرکے خفیہ اداروں کا ٹشو پیپرز نواز گلگتی ۔۔۔الطاف حسین کی طرح جمعے کے خطبے میں ٹیلفونک خطاب کرسکتے ہیں۔۔۔اپنے پاراچنار واپس لانے کے لئے دھرنے میں ٹیلفونک خطاب کرسکتے ہیں۔۔۔۔۔تو پھر حقانی نیٹ ورک کی پاراچنار شلوزان تنگی میں آباد کاری کے خلاف بھی ٹیلفونک خطاب کرکے اپنے پیروکاروں کو اس کے خلاف اٹھنے اور مزاحمت کا کہہ سکتے ہیں ۔۔۔لیکن خفیہ اداروں کے ٹشو پیپر نواز گلگتی کو اس کی توفیق نہیں۔۔۔اسلئے لوب پاک یعنی یہ ویب سائٹ غلط رپورٹنگ اور تصویر کا اک رخ پیش کرنے کی بجائے پاراچنار کے اصل دشمنوں سیاسی و مالی مفادات کے حامل اور خفیہ اداروں کے ٹشو پیپرز نواز گلگتی و ساجد طوری آستین کے زہریلی سانپوں کی اصلیت واضح کردیں۔۔۔یہاں یہ امر قابل زکر ہے کہ ماضی میں طالبان کے مظالم بالخصوص گلگت و کوئٹہ اور دیگر جگہوں میں شیعہ قتل عام کے خلاف پاراچنار سمیت پورے ملک میں ملک گیر دھرنے دئیے گئیے اور پاراچنار کے ہزاروں لوگوں نے دھرنے دئیے(لیکن ا اس وقت پاراچنار میں پاراچنار کے اصل دشمنوں سیاسی و مالی مفادات کے حامل اور خفیہ اداروں کے ٹشو پیپرز نواز گلگتی و ساجد طوری اور ان کے پیروکاروں نے کسی بھی دھرنے میں حصہ نہ لیا بلکہ الٹا دھرنوں کی مخالفت کرکے پی اے و کرنل کے ہاتھوں دھرنے والوں کو قید کرلیا)۔۔۔اب پاراچنار کے اصل دشمنوں سیاسی و مالی مفادات کے حامل اور خفیہ اداروں کے ٹشو پیپرز نواز گلگتی و ساجد طوری۔۔۔۔ اب پاراچنار کے اصل دشمنوں سیاسی و مالی مفادات کے حامل اور خفیہ اداروں کے ٹشو پیپرز نواز گلگتی و ساجد طوریکس منہ سے دھرنے دے رہے ہیں اک بار پھر پاراچنار کو تقسیم در تقسیم کرنے کے لئے۔۔۔
    دیکھا جو تیر کھا کے کمیں گاہ کی طرف
    اپنے ہی دوستوں سے ملاقات ہوگئی
    از عنایت علی طوری پاراچنار

  • http://www.logandfwe.com regulating insurance companies in the European market. This directive will bring changes to capital adequacy requirements and determination, corporate governance and public disclosures. These changes are due to be implemented in 2014. The Solvency II regime is somewhat similar to the banking regulations of Basel II and based on three guiding principles (pillars), each pillar

  • http://www.postzgtn.com component. Pillar I ?Estimation of the QUANTITATIVE requirements ?Assets and Liabilities ?Market Consistent Valuation ?Solvency Capital Requirement (SCR) ?Standard Formula or Internal Model ?Minimum Capital Requirement Pillar II ?Evaluation of QUALITATIVE requirements ?System of Governance ?Own Risk and Solvency Assessment (ORSA) ?Supervisory Review Process Pillar III ?Disclosure of the institution’s solvency and financial situation ?Public Disclosure ?Annual Solvency and Financial Condition Report ?Information to be provided for Supervisory Purposes The Potential Impact of Solvency

  • Создание и продвижение интернет сайтов “под ключ”. Вы имеете возможность заказать у нас свою собственную страницу в сети интернет. Мы работаем с любыми заказчиками и уважаем каждого. Наша организация поможет Вам быстро, качественно и в самый короткий срок появиться в глобальной сети. Мы создаём от сайтов-одностраничников, индивидуальных блогов, самых простейших до эксклюзивных сайтов со всеми “капризами” потребителя.Создание корпоративной почты: после @название вашего сайта. Сайты созданные нами сразу проиндексированы и адаптированы под поисковые системы что с лёгкостью позволит продвигать сайт в ТОП поисковиках. Так же у нас присутствуют оказания услуг по продвижению сайтов и регистрации их во всех поисковых системах. Мы знаем как “продвинуть” Ваш сайт. С Уважением компания Веб-Лаборатория http://labweb.pro

  • entering a phase, described as ‘dangerous’ by a January 2012 World Bank report. Policy makers and governments the world over, are looking at large-scale changes in regulations and initiating policy makeovers, in order to bring some respite to the world economy and shielding businesses and investors, particularly in the financial services domain, from making crippling losses.
    http://www.tospfree.com

  • MQM Terrorist ALTAF & FetnaBaz Agah Nawaz TELEPHONIC VERSION OF TORTURING PEOPLE

    ایم کیو ایم ٹائپ غنڈہ گردی اور دو ہفتوں سے پاراچنار شہر کے غریب عوام
    یوں تو بدقسمت شہر پاراچنارمیں ایکدوسرے سے برسر پیکار دونوں گروپس اگر ایک طرف ائیر مارشل سید قیصر و سید اقبال گروپ تو دوسری طرف فتنہ باز آغا نواز گلگتی و ساجد طوری گروپ پاراچنار کے عوام کی تقسیم کے زمہ دار اور دونوں گروپس نے رسی کا ایک ایک سرا پکڑ کر پاراچنار کے دشمنوں کو خوش کر رہے ہیں۔۔
    یہاں جیسے کہ پہلے بتایا گیا کہ حالات کی خرابی آپسمیں چپقلش اور بحران کے دونوں گروپس زمہ دار ہیں۔۔۔لیکن غریب عوام بالخصوص روزانہ محنت مزدوری کرنے والے مزدورں اور محنت کشوں و پاراچنار شہر کے دکانداروں و تاجروں حتی کہ بیمار افراد کی تمام تر مشکلات کا زمہ دار صرف اور صرف ایم کیو ایم ٹائپ غنڈہ گرد فتنہ باز آغا نواز گلگتی کے ڈنڈا بردار مریدان ہیں۔۔۔وجہ صاف ظاہر ہے کہ احتجاج و دھرنا تو ہر ایک کا حق ہے اور دو ہفتوں سے جاری دھرنے پاراچنار شہر کے مخصوص مقامات تین جگوں پر ہے۔۔۔اسلئے پاراچنار شہر کا باقی حصہ اور بازار جہاں کوئی دھرنا نہیں وہاں تو کاروبار معمول کے مطابق ہونا چاہئیہے۔۔۔ یاد رہےگزشتہ سال انتخابات میں ناکامی اور کرسی کے غم میں ائیر مارشل سید قیصر کے حامیوں نے بھی کئئ دن تک دھرنا دیا تھا۔۔لیکن قیصر کے دھرنے کی یہ بات قابل تحسین تھی کہ دھرنا صرف دھرنے کی جگہ پر احتجاج تھا باقی پاراچنار شہر کے بازار و دکان کھلے اور محنت کش و مزدور اپنے اپنے کام کے لئے جاتے تھے۔۔اس بات میں قیصر کو داد دینی چاہئے۔۔
    لیکن ا یم کیو ایم ٹائپ غنڈہ گرد فتنہ باز آغا نواز گلگتی کے ڈنڈا بردار مریدان نے دو ہفتوں سے جاری احتجاج اور دھرنے کی آڑ میں پورے پاراچنار شہر کو مفلوج کردیا ہے،۔۔۔۔اگر کوئی دکاندار حتی کہ پاراچنار شہر میں میڈیکل سٹور والا بھی عوام کی ضرورت کے لئے دکان کھول دیتا ہے تو ایم کیو ایم ٹائپ غنڈہ گرد فتنہ باز آغا نواز گلگتی کے ڈنڈا بردار مریدان انہیں ایسا نہیں کرنے دیتے بلکہ لاٹھیوں اور بندوقوں کے زور پر پورا پاراچنار شہر و بازار مفلوج کر چکے ہیں۔۔۔یہ کونسا اسلام ہے؟؟؟؟ یہی بات تو طالبان کے بیت اللہ و حکیم اللہ اور فضل اللہ و ملا عمر کا بھی ہے کہ بالجبر اپنی بات سب پر منوائی جائے۔پھر طالبان دہشت گردوں اور ایم کیو ایم ٹائپ غنڈہ گرد فتنہ باز آغا نواز گلگتی اور اس کے ڈنڈا بردار مریدان میں فرق کیا ہے؟؟؟۔۔جیسا کہ اس تحریر کے آغاز میں بھی کہا گیا کہ احتجاج اور دھرنا ایم کیو ایم ٹائپ غنڈہ گرد فتنہ باز آغا نواز گلگتی اور اس کے ڈنڈا بردار مریدان کا حق ہے لیکن اسی جگہ دھرنا دیا جائے جہاں دھرنے کی قناعتیں اور ٹینٹ لگے ہیں۔۔۔نہ کہ پورے پاراچنار شہر کو مفلوج کیا جائے۔۔۔جس طرح کراچی میں ایم کیو ایم اپنی من منانی کے لئے پوری کراچی کو مفلوج کرتی ہے ۔۔۔اسی طرح پاراچنار میں ایم کیو ایم ٹائپ غنڈہ گرد فتنہ باز آغا نواز گلگتیکے ڈنڈا بردار مریدان کا بھی یہی حال ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایسے میں پاراچنار شہر میں ان بیچارے غریب مزدوروں کا کیا ہوگا جو کہ پاراچنار شہر میں روزانہ دیہاڑی کی محنت مزدوری کرتے تھے۔۔۔؟؟ان کے گھروں کے چولہے ٹھنڈے ہوگئے ہیں ان کے بچے آٹا و خوارک نہ ملنے کی وجہ سے مر رہے ہیں۔۔۔لیکن ایم کیو ایم ٹائپ غنڈہ گرد فتنہ باز آغا نواز گلگتی کے ڈنڈا بردار مریدان کو ان کا کوئی احساس نہیں۔۔۔
    ایم کیو ایم کے الطاف حسین اور ایم کیو ایم ٹائپ غنڈہ گرد فتنہ باز آغا نواز گلگتی ڈنڈا بردار مریدان یعنی کراچی و پاراچنار کے فسادات اور اشتعال انگیزی میں ایک بات اور بھی مشرک ہے۔۔۔جس طرح ایم اکیو ایم کے منافق الطاف حسین لندن میں بیٹھ کر ٹیلفون کے زریعے کراچی میں آگ و فسادات بڑھکاتے ہیں۔۔اسی طرح ایم کیو ایم ٹائپ غنڈہ گرد فتنہ باز آغا نواز گلگتی اسلام آباد میں بیٹھ کر ٹیلفونک خطاب کے زریعے آگ و فسادات بڑھکا کراپنےڈنڈا بردار مریدان کے زریعے غریب عوام پر ظلم و جبر روا رکھتا ہے۔۔۔
    فتنہ باز آغا نواز گلگتی کس طرح اپنے مریدان اور پاراچنار کے بے شعور عوام کو دھوکہ دیتے ہیں کہ فتنہ باز نواز آغا کے حامیوں نے فتنہ باز آغا کے مشورے سے یہ پروپیگنڈا مشہور کروایا ہے کہ اگر فتنہ باز آغا پاراچنار میں ہوتے تو حال ہی میں پاراچنار شلوزان تنگی میں آئی ڈی پیز کی آڑ میں حقانی نیٹ ورک کی ممکنہ آباد کاری نہیں ہوتی۔۔۔اس کا سادہ سا جواب یہ ہے۔۔۔خفیہ اداروں کا ٹشو پیپرز فتنہ باز آغا نواز گلگتی ۔۔۔الطاف حسین کی طرح جمعے کے خطبے میں ٹیلفونک خطاب کرسکتے ہیں۔۔۔اپنے پاراچنار واپس لانے کے لئے دھرنے میں ٹیلفونک خطاب کرسکتے ہیں۔۔۔۔۔تو پھر حقانی نیٹ ورک کی پاراچنار شلوزان تنگی میں آباد کاری کے خلاف بھی ٹیلفونک خطاب کرکے اپنے پیروکاروں کو اس کے خلاف اٹھنے اور مزاحمت کا کہہ سکتے ہیں ۔۔۔لیکن خفیہ اداروں کے ٹشو پیپر نواز گلگتی کو اس کی توفیق نہیں۔۔؟؟؟؟؟؟ –
    خفیہ اداروں کا ٹشو پیپرز فتنہ باز آغا نواز گلگتی ۔۔۔الطاف حسین کی طرح جمعے کے خطبے میں ٹیلفونک خطاب کرسکتے ہیں۔۔۔اپنے پاراچنار واپس لانے کے لئے دھرنے میں ٹیلفونک خطاب کرسکتے ہیں۔۔۔۔۔تو پھر حقانی نیٹ ورک کی پاراچنار شلوزان تنگی میں آباد کاری کے خلاف بھی ٹیلفونک خطاب کرکے اپنے پیروکاروں کو اس کے خلاف اٹھنے اور مزاحمت کا کہہ سکتے ہیں ۔۔۔لیکن خفیہ اداروں کے ٹشو پیپر نواز گلگتی کو اس کی توفیق نہیں۔۔؟؟؟؟؟؟ –
    خفیہ اداروں کا ٹشو پیپرز فتنہ باز آغا نواز گلگتی ۔۔۔الطاف حسین کی طرح جمعے کے خطبے میں ٹیلفونک خطاب کرسکتے ہیں۔۔۔اپنے پاراچنار واپس لانے کے لئے دھرنے میں ٹیلفونک خطاب کرسکتے ہیں۔۔۔۔۔تو پھر حقانی نیٹ ورک کی پاراچنار شلوزان تنگی میں آباد کاری کے خلاف بھی ٹیلفونک خطاب کرکے اپنے پیروکاروں کو اس کے خلاف اٹھنے اور مزاحمت کا کہہ سکتے ہیں ۔۔۔لیکن خفیہ اداروں کے ٹشو پیپر نواز گلگتی کو اس کی توفیق نہیں۔۔؟؟؟؟؟؟ –
    لیکن جن کے عقلوں پر قفل اور پردے پڑے ہوں ان کے لئے قرآنی آیت ہی کافی ہے کہ
    اسمیں عقل والوں کے لئے نشانیاں ہیں۔۔۔القرآن۔۔۔اگر کوئی سمجھیں۔۔۔لیکن کراخیلہ و وچے غاڑے اورنواز گلگتی کے وہ مرید جنہوں نے اندھی تقلید میں میاں مریدان کو دو قدم پیچھے چھوڑ دیا ہے۔۔۔اور جو نواز گلگتی کو اپنا قرآن مزہب حتی کہ بعض زلیل لوگ کہتے ہیں کہ نواز گلگتی ہمارا خدا ہے(نعوز باللہ)۔۔
    پاراچنار میں عوام کو مشکالت میں ڈالنے والےدھرنے کے صرف تین مطالبات ہیں اگر فتنہ باز آغا نواز گلگتی واقعی حقانی نیٹ ورک کے خلاف ہیں تو دھرنے کے مطالبات میں شلوزان تنگی سے حقانی نیٹ ورک کی یبدخلی کا مطالبہ شامل ہوتا یا پھر فتنہ باز آغا نواز گلگتی ۔۔۔الطاف حسین کی طرح جمعے کے خطبے میں ٹیلفونک خطاب کرسکتے ہیں۔۔۔اپنے پاراچنار واپس لانے کے لئے دھرنے میں ہر دوسرے دن ٹیلفونک خطاب کرسکتے ہیں۔۔۔۔۔تو پھر حقانی نیٹ ورک کی پاراچنار شلوزان تنگی میں آباد کاری کے خلاف بھی ٹیلفونک خطاب کرکے اپنے پیروکاروں کو اس کے خلاف اٹھنے اور مزاحمت کا کہہ سکتے ہیں ۔۔۔لیکن خفیہ اداروں کے ٹشو پیپر نواز گلگتی کو اس کی توفیق نہیں۔۔؟؟؟؟؟؟
    1 فسادی ملا نواز گلگتی کو واپس پاراچنار لایا جائے
    2 قید شدہ قبائلی رہنماوں کو رہا کیا جائے
    3 پولٹیکل انتظامیہ کو برطرف کیا جائے
    ۔۔۔اصل میں حقانی نیٹ ورک کو پاراچنار میں آباد کرنے میں ان دو شخصیات اور خفیہ اداروں کے ٹشو پیپرز فتنہ باز آغانواز گلگتی و ساجد طوری کا سب سے بڑا ہاتھ ہے۔۔۔ثبوت یہاں دئیے جارہے ہیں لیکن اگر کوئی عقل سے کام لیں۔

    حقانی نیٹ ورک کو پاراچنار خیوص میں ستمبر2010 میں کروڑوں روپے رشوت لے کر اسلام آباد بارہ کہو میں حقانی نیٹ ورک جلال دین حقانی کے بیٹوں ابراہیم اور نصیر حقانی کے ساتھ جن لوگوں نے معاہدہ کیا.. ان میں ساجد طوری ایم این اے اور ساجد طوری کے چچا لائق طوری سابق پولٹیکل ایجںنٹ وزیرستان اور خفیہ اداروں کے ٹشو پیپر پیش امام نواز گلگتی کے انجمن کے تین افراد شامل تھے جن کے نام ڈیلی ٹائمز میں ڈاکٹر محمد تقی نے تفصیل بیان کی تھی
    Kurram the foresaken FATA (Haqani Network in Kurram) Daily Times, Dr Mohammad Taqi .
    http://archives.dailytimes.com.pk/editorial/04-Nov-2010/comment-kurram-the-forsaken-fata-dr-mohammad-taqi

    The sham Operation in Kurram, Dr M Taqi
    http://iaoj.wordpress.com/2011/07/07/the-sham-operation-in-kurram-dr-mohammad-taqi/

    ۔۔۔اگر نہیں ہے تو ساجد طوری اس مسئلے پر قومی اسمبلی میں بات یا پوائنٹ آف آرڈر کیوں نہیں اٹھاتے۔۔۔۔یا کم از کم میڈیا میں ایک بیان و پریس کانفرنس کیوں نہیں کرتے۔۔۔۔اسی طرح پاراچنار کے عوام کو آپسمیں تقسیم کرکے خفیہ اداروں کا ٹشو پیپرز فتنہ باز آغا نواز گلگتی ۔۔۔الطاف حسین کی طرح جمعے کے خطبے میں ٹیلفونک خطاب کرسکتے ہیں۔۔۔اپنے پاراچنار واپس لانے کے لئے دھرنے میں ٹیلفونک خطاب کرسکتے ہیں۔۔۔۔۔تو پھر حقانی نیٹ ورک کی پاراچنار شلوزان تنگی میں آباد کاری کے خلاف بھی ٹیلفونک خطاب کرکے اپنے پیروکاروں کو اس کے خلاف اٹھنے اور مزاحمت کا کہہ سکتے ہیں ۔۔۔لیکن خفیہ اداروں کے ٹشو پیپر نواز گلگتی کو اس کی توفیق نہیں۔۔؟؟؟؟؟؟ –
    خفیہ اداروں کا ٹشو پیپرز فتنہ باز آغا نواز گلگتی ۔۔۔الطاف حسین کی طرح جمعے کے خطبے میں ٹیلفونک خطاب کرسکتے ہیں۔۔۔اپنے پاراچنار واپس لانے کے لئے دھرنے میں ٹیلفونک خطاب کرسکتے ہیں۔۔۔۔۔تو پھر حقانی نیٹ ورک کی پاراچنار شلوزان تنگی میں آباد کاری کے خلاف بھی ٹیلفونک خطاب کرکے اپنے پیروکاروں کو اس کے خلاف اٹھنے اور مزاحمت کا کہہ سکتے ہیں ۔۔۔لیکن خفیہ اداروں کے ٹشو پیپر نواز گلگتی کو اس کی توفیق نہیں۔۔؟؟؟؟؟؟ –
    – See more at: https://lubp.net/archives/319464#sthash.7DEgKG2x.dpuf
    منجانب۔۔۔عنایت علی طوری پاراچنار