Featured Original Articles Urdu Articles

محمد علی جوہر اور وہابیت و دیوبندی ازم -محمد بن ابی بکر

ادارتی نوٹ:17 اکتوبر 1926 ء کو ہمدرد اخبار میں مولانا محمد علی جوہر نے ایک مضمون “غیر اللہ کی بادشاہت”کے عنوان سے لکھا اور اس مضمون کو لکھنے کا پس منظر یہ تھا کہ حجاز پر برٹش سامراج کی مدد سے ابن سعود کے قبضے اور ابن سعود کی جانب سے بادشاہت کا اعلان جب ہوا تو ہندوستان میں وہابی اور دیوبندی مولویوں نے ابن سعود کی بادشاہت کو عین اسلامی قرار دینے کا سلسلہ شروع کردیا اور ابن سعود کی ملوکیت کو جائز ثابت کرنے کے لیے قران و سنت کو تختہ مشق بنا ڈالا
ایسے میں مولانا محمد علی جوہر کی رگ حمیت پھڑک اٹھی اور انھوں نے دو قسطوں میں ایک طویل مقالہ قلم بند کیا جس میں ابن سعود کے ہندوستان میں حامی مولویوں کے لتّے لیے
تاریخ کا یہ اہم ترین مضمون ہمدرد کی فائلوں سے سید محمد شاہ قادری قدس سرہ العزیز نے نکالا اور اسے مقالات محمد علی جوہر میں شامل کیا

آج کے دیوبندی-وہابی پاکستان میں خلافت راشدہ کے نظام کا ڈھونڈرا پیٹتے ہیں اور اصل میں وہ یہاں بھی اموی ملوکیت کا نفاز چاہتے ہیں جبکہ وہ آل سعود سمیت عرب کی وہابی بادشاہتوں کے حضور سجدہ ریزی کرتے رہتے ہیں
یہ خارجی ٹولہ پاکستان میں فساد فی الارض کا مرتکب ہے اور تاریخ میں اپنے موقعہ پرست کردار پر پردے ڈالنے میں کمال کی شہرت رکھتا ہے
میں اسے کب سمجھا اور کیونکر سمجھا
دنیا میں کوئی بھی شئے اتنی بری نہیں ہوتی کہ اس میں سے بھی ایک بھلائی کا پہلو نہ نکل سکے -گو اس میں اختلاف ہے کہ ابن سعود اور نجدیوں کی قبہ شکنی اور پختہ قبروں کی شکست وریخت کا کام بدعات کا دور کرنا تھا اور اس کے لیے ایک عمدہ کام تھا اور عین مطابق شریعت تھا یا خود ایک بدعت تھا اور بزرگوں کے مزارات کی توھین اور منشائے شریعت کے سراسر خلاف ،لیکن اس میں شک نہیں کہ اس کے باعث موجودہ نسل مسلمانان کو بناء علی القبور اور تجصیص قبور کے مسائل سے آگاہی ہوئی اور اس کے متعلق وہ علم جو مدرسوں اور خانقاہوں کی چار دیواریوں یا مساجد اور ان کے حجروں تک محدود تھا ،اب عام ہوگیا ،اور گلی کوچوں ،بازاروں اور عام گذرگاہوں تک پھیل گیا
اس طرح ابن سعود کی ملکیت حجاز ہے جس کے بعد سے ان کے حمائتی برابر کوشش کررہے ہیں کہ ملکیت کو بجائے سنت قیصر و کسری کے خداوند کریم کی بارگاہ میں ایک مقبول ترین انسٹی ٹیوشن یا نظام و ادارہ ثابت کریں اور بجائے اس کے کہ مسلمانوں میں اخیائے خلافت راشدہ کے لیے کوشش کرنے کی ترغیب دی جائے ،ان کو اس سے یہ کہہ کر باز رکھنے کی کوشش کی جارہی ہے کہ یہ تو فقط تیس برس کے لیے تھی-اب اس کی تمنا کرنا نبی اکرم کی پیشن گوئی جھٹلانے کے مترادف ہے اور بہتر ہے کہ مسلمان اس بادشاہت پر راضی ہوجائیں جس کی تعریف ملک العضوض (کہنی کٹی بادشاہت)کہہ کر نبی کریم نے فرمائی تھی
تاکہ وہابیت کو پھیلانے والے نجدی سلطان اور ان کے مولوی کی حکومت مرکز اسلام میں قائم ہوکر پھیلتے ہوئے ،وحدت العرب کے بہانے سے ۔سارے عرب پر چھا جآئے اور پھر ایک نہ ایک دن امامت سلطان نجد کو خلافت میں بدل دیا جائے اور اگر وہ ساری دنیا پر حاوی نہ ہو تو تب بھی عالم اسلام پر تو حاوی ہوجائے
اور یہ “روزنامہ زمیندار “کے نزدیک اسم بے مسمی ہوجائے اور چاہے ایک کافر بھی مسلمان نہ ہو تا ہم میں سے ہر مسلمان بجبر واکراہ ہی سہی مگر ضرور نجدی العقائد بن جائے اور اس طرح سے ولہ اسلم من فی السموآت والارض طوعا و کرھا کی نرالی و انوکھی تفسیر جوجائے
مجھے امید ہے کہ اور جو کچھ ہوگا سو ہوگا ،مگر ملوکیت ابن سعود کے باعث غیراللہ کی بادشاہت کے متعلق علم دین بھی مدرسوں اور مساجد کے حجروں سے نکل کر کوچہ و بازار میں پھیل جائے گا اور عوام بھی اس بارے منشائے شریعت حقہ سے کم از کم نسبت پہلے تو کچھ زیادہ ہی واقف ہوجائیں گے اور ایک شر میں سے اتنی ہی خیر نکل آئے گی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
زمیندار اب نجدیوں کی طرح خود بھی ان کے اتباع میں تمسک بالکتاب و السنۃ کا واحد ٹھیکدار بن گیا ہے مگر خلاف سنت خطاب قبلہ کو اپنے مالک رقاب کے نام سے دور کرنا اسے اسی قدر ناگوار ہے جس قدر گندے اور فحش اشتہارات کی کمائی کھانے کو بند کرنا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گردلم آئنہ بے جوہر است در بحر فم غیر قران مضمر است
اے فروغت صبح اعصار ودہور چشم تو بنیندہ مافی الصدور

معلوم نہیں نجد و یاران نجد کے اجتماع میں زمیندار نے اقبال پر فتوی کفر وشرک لگایا یا نہیں اس لیے کہ رسول اللہ سے دعا کی گئی ہے اور آپ کو بنیندئہ فی الصدور کہا گیا ہے -گو مجھے بھی خوف ہے کہ میرے لیے بھی فتوی کفر و شرک دے دیا جائے گا مگر میں بھی اس دعا میں شرکت کرنا چاہتا ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
البتہ جب سے وہاں نجدیوں کا دور دورہ ہوا ہے ،زندہ تو زندہ مردوں کو بھی آرام میسر نہیں ہوا اقبال صاحب وہاں کی موت کو انجام سمجھے ہوئے ہیں اور سایہ دیوار کو مرقد مانگتے ہیں -اب مرنا بھی آغاز نہیں -اس لیے کہ نہ معلوم قبر کا کیا انجام ہو اور دیوار کی بظاہر خیر معلوم نہیں ہوتی -سایہ دیوار میں مرقد کی تمنا کا نہ معلوم حشر کیا ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نوٹ:مولانا محمد علی جوہر نے اپنی آپ بیتی کے ص 64 پر صاف صاف لکھا ہے کہ ابن سعود نے حجاز پر اپنی بادشاہت کا اعلان اپنے وعدے کے برعکس کیا اور جنت البقیع کو بھی جنت المعلی کی طرح وعدے کی خلاف ورزی کرتے ہوئے مسمار کرڈالا
مولانا محمد علی جوہر بادشاہت کے سخت مخالف اور نجدیوں کی حجاز پر حکومت کے سخت خلاف تھے اور انھوں نے اس کا زکر اپنی آپ بیتی میں کئی مقامات پر کیا دیکھئے ص 93 مطبوعہ تخلیقات لاہور
مولانا محمد علی جوہر اور ان کے بعض رفقاء کو ابن سعود نے یہ یقین دلایا تھا کہ حجاز کو حجازیوں کے حوالے کرکے وہاں کا انۃطام و انصرام تمام مکاتب فکر کے نمائندوں پر مشتمل ایک کمیٹی کے سپرد کردیا جائے گا اور مقامات مقدسہ کو منہدم و مسمار نہیں کیا جائے گا لیکن ابن سعود نے یہ وعدہ توڑ دیا اور اس نے وہابی ازم کو حجاز پر ہی نافذ نہیں کیا بلکہ اسے پوری دنیا میں زبردستی نافذ کرنے کی کوشش بھی کی
مولانا محمد علی جوہر نے وہابی ازم اور ابن سعود کے عزائم کا ٹھیک اندازہ کیا تھا کہ ایک تو وہ اپنی حکمرانی پورے عالم اسلام تک قائم کرنے کا ہدف رکھتا ہے دوسرا وہ سارے عالم اسلام کو وہابی بنانا چاہتا ہے چاہے ایک بھی غیر مسلم مسلمان نہ ہو
اور آج محمد علی جوہر زندہ ہوتے تو اپنی آنکھوں سے اپنی پیشن گوئی کو پورا ہوتے دیکھتے ،ان کے زمانے میں ہی دارالعلوم دیوبند کا حال بگڑنا شروع ہوگیا تھا اور وہاں کے بارے میں ہمدرد اخبار میں “ساردا بل “پر تنقیدی مضمون لکھتے ہوئے مولانا محمد علی جوہر نے بہت سخت تبصرہ کیا اور بتایا کہ کیسے اپنے مفادات کے لیے دارالعلوم میں قتل تک کی واردات ہوگئی ،مولانا محمد علی جوہر حسن ظن کی بنا پر اصلاح دارالعلوم دیوبند چاہتے تھے مگر
ایں خیال است و محال است و جنوں است

About the author

Muhammad Bin Abi Bakar

6 Comments

Click here to post a comment
  • I agree to day wahabi are preaching in many names like Tableeghi jamat all over the world as by the name of peace after 3 or 4 years these elements are coming terrorist
    as armed group Al qeda Taliban, and many terrorist groups in Pakistan Afghanistan in the meddle east and Africa.

  • allah ke bandon dunya main jetna parpoganda karsakty ho karlo haq ko koi chopa nahi sakta.haqiqi or insaf ke nazar sy dekny waly dunya main bi dhen sakty hain ke kon haq pat hain or jo nahi samajty on ko medan e hashar main pta chal jaega.tab tak ap apny kam main lagy raho ham apny

  • Dear All,
    This websites are used to preach hatred against Islam and the notable of Islam and this caricature is an another attemp. They dont have courage to publish their name and introduction.

    Regards,

  • Agree… Wahabi and Deobandi are biggest Fitna and danger for Islam… The fake King Saud attacked Makkah just for the sake of his lust for power.

  • Sectarian division of Muslims is a historical fact. And every sect is in its own way extremist. Saudis have contributed much to Muslims’ sectarian divisions and now we stand divided . Muhammad Ali Jauhar was right. Saudis destroyed the institution of caliphate first and then established themselves as richest rulers and financed every sort of extremist terrorist. They may pray and fast and pay zakat, but they have prevented the Muslims from academic and cultural development in every way.