Newspaper Articles Original Articles

Wahabbi ISIS in Syria destroy Assyrian statues and artifacts believed to be 3000 years old

20140517023915

 

Don’t be surprised if it reminds you of the Deoabndi Taliban destroying Buddha statues a few years ago. This is an ideology that views the collective human heritage with hate and disdain as if the human civilization began only with the advent of Islam with Prophet Mohammad. Wahabbi violence has resulted in the wanton destruction of historical treasures in many other countries also. This has nothing to do with politics. This is Wahabbi (Salafi/Deobandi) extremism, intent on destroying all other beliefs. Not long ago, in Maldives their cohorts stormed the museum and destroyed its display of priceless artifacts from the nation’s pre-Islamic era. Similar instances have also been observed in Iraq and Mali. Pakistan has destroyed most of its Hindu and Buddhist temples. Pakistani history text books begin with the coming of Muslims to the Indian subcontinent, totally ignoring the Hindu and Buddhist history of the past. These people do not have the IQ to appreciate their own history! Savages, is the only way to describe them. Taliban blew up schools and Boko Haram kills and kidnaps innocent students for the crime of pursuing education. 

Clearly their intolerant faith doesn’t teach them anything about older faiths and beliefs and trying to live in peace and harmony with other human beings on this planet. 

We also note with great interest that when the Taliban announced the destruction of the Buddha statues of Bamiyan at the end of the year 2000 in Afghanistan, a wave of protest went around the world. In all Western countries, the cultural scene was bewildered and tried to stop the destruction with helpless appeals to the Taliban. On the other hand it is quite perceptible how muted the protests in the West have been to the acts of desecration perpetrated by its own Wahabbi touts in Syria. This shows the double standards of the West, completely devoid of moral or principled moorings, and is probably the reason why no one in the ‘cultural industry’ is interested in these barbaric acts of Wahabbi terrorists in Syria.

It has been argued that destruction of Buddaha Statues in Afghanistan created resentment and ensuing violence against the Rohingya Muslim community of Burma. Prior to 2000 the Buddist and Muslims had co-existed relatively peacefully. The Saudi propagation of the intolerant and literal Islam is at the heart of this global problem. The problem will only increase, the longer the pulpit of Mecca and Medina or the biggest megaphone in the world of Islam is allowed to be hijacked by the literal cult.

As it would be the bad Karma for destroying the Buddha statues destroyed the Taliban the same year. May the same fate befall these ignorant bigots in Syria!

(AINA) — According to a report from the website www.apsa2011.com, the Islamic State of Iraq and the Levant (ISIL, also known as ISIS) has destroyed Assyrian statues and artifacts believed to be 3000 years old.

The Assyrian archaeological artifacts were illegally excavated from the Tell Ajaja site.

Looting of Assyrian artifacts was also carried out in Iraq soon after 2003 by Al-Qaeda, which sold the artifacts to finance its operations. The looting occurred at the Baghdad Museum (AINA 2003-04-19) as well as archaeological sites which were left unguarded as a result of the collapse of the government of Saddam Hussein (AINA 2005-02-17).




 

Source :

http://www.aina.org/news/20140517025551.htm

 

 

 

About the author

Shahram Ali

5 Comments

Click here to post a comment
  • I cant believe it…we are having this conversation…..all the museums of muslim ummah from egypt to pakistan have idols…its not about idol worship…its about preserving ur past and ur culture….its about learning history….its about studying an ancient way of life….havent u people heard…ammal ka daro madar neyat per hota hai…and by looking at a buddha statue ..doesnot mean i worship it….there are certain things which should be left between Allah and his human beings…by the way our holy prophet and hazrat Ali broke those idols because they were placed in kaaba…they didnot go inside peoples home ,looking for it and then destroying it….our holy prophet didnot destroy kuffars worship places…after conquering makkah he gave religious freedom to all and sundry…..mehmood ghaznavi had nothing to do with islam he was a bandit who looted muslims as well as non muslims and then went back without establishing any sort of islamic government in the conquered areas….

  • ماشاء اللہ مجھے حیرت ہے، کہ مسلمان، جو ایک اللہ کے ماننے والے ہیں، وہ بنی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی اور اسلام کی تعلیمات بھول گئے ہیں، آج بتون کو اور پتھرون کے مجسمون کو اپنے گھرون مین تاریکی نوادرات کا نام دیکر سجاوت کا اہتمام کرتے ہیں۔ جبکہ اسلام میں جس گھر میں کوئی شبیہ ، کوئی تصویر یا کوئی مجسمہ ہو تو نماز نہیں ہوتی۔
    آج کے مسلمان جو کچھ قبرون، اور مزارات پر جاکر خرافات کرتے ہیں، منتین مانگتے ہین، یہ بھی گناہ ہے۔ آج جو خرافات ان جعلی پیرون اور خلیفاؤن نے پھیلا رکھی ہیں ، یہ بھی قابل گرفت ہیں۔ انکا بھی بندوبست ہونا چائیے۔
    اسلام مین سب سے پہلے اللہ پاک کے احکامات ہیں، جو ہمین نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے ملے ہیں۔ نبی کریم ﷺ نے خانہ کعبہ کے بت اپنے ہاتھوں سے توڑے تھے۔ اور یہ واضع اشارہ تھا ، کہ کفر مٹ گیا اور دین آگیا۔
    حضرت ابراہیم علیہ سلام نے بی نمرود کے سب سے بڑے بتکدہ کے بہت توڑے تھے۔ یہ اسبات کی واضع اشارات ہیں کہ کفر مٹنے کے لئے ہے۔ اب وہ بت چاہے کتنی پرانی تاریخ رکھتا ہو۔ ہے تو بٹ ہی اور اسے اللہ کے مقابل کھڑا کیا گیا تھا۔ اور پوجا گیا تھا۔ اور جو اللہ پاک کی وحدانیت کے خلاف تھا۔
    مجھے حیرت ہئے کہ مسلمانون کو کافرون کی تاریخ میں کیون اتنی دلچسپی ہے جبکہ اللہ پاک کے نبی کریم ﷺ کی حدیث مبارک ہے کہ ایکدن کفر مٹ جائے گا، اور اسلام ہر کچے پکے گھر مین پہنچے گا۔ تو آج ہم اس مٹنے والی چیز کے لئے اتنے پریشان کیون ہیں۔ ہمیں تو چائیے ، اسے اسی وقت مٹا دین، اور اللہ پاک کی وحدانیت کو پھیلانے والے بن جائیں۔
    جمھے شرم آتی ہے ایسے تعلیم یافتہ مسلمانون پر جو غیروں اور کافرون کی ہمدردی میں دبلے ہوئے جاتے ہیں۔ افسوس صد افسوس انپر جو اپنے دین کی معلومات سے زیادہ دوسرون کے پارے میں علم رکھتے ہیں۔ جو نام کے مسلمان ہیں، جنہین نمازتک نہیں آتی ، آج وہ لوگ دین اسلام کو اپنے آباؤ اجداد کےدین کو برا کہتے ہیں۔
    ای صاحب نے فرمایا ۔ کہ محموقد غزنوی نے ہندوستان پر حملہ صرف دولت کے حصول کے لئے کیا تھا۔ ان سے درخواست ہے کہ تاریخ اسلام کا مطالعہ کرین۔ اسنے ایک بر نہیں 17 بار ھملے کیئے، اور سومنات کو متح کیا ۔ اور بت شکن کہلایا۔ اور اسلام کو ہندوستان میں پھیلایا۔ آج ہندو ، بابری مسجد کو شہید کرتا ہے۔ تو ہم خاموش ہیں ، کیا وہ مسلمانون کا تریخی ورثہ نہیں تھی جسے شہید کیا گیا۔ آج وہان رام مندر بنیا جارہاے۔ اسے آپ کی لبرلازم سمجھا جائے یا بے غیرتی۔ اور یہ بے غیرتی آپ میں اسلئے ہے ، کہ آپ آج بھی ان بتون کو جو آج نہیں تو کل منہ کے بل زمیں ہر گر کر مٹی ہوجائیں گے۔ اسکے مٹنے کا درد رکھتے ہین۔ اسلام کو جو کفار مٹانے کو کوشش کر رہا ہے اسکا آپ کو کوئی درد نہیں۔ میں کہتا ہون لعنت ہے ایسے مسلمان ہونے پر۔
    کیا عجیب منتق ہے۔ تاریخی ورثہ مٹ جائے گا اسے بچاؤ ۔۔۔ اور جو دین مٹانے کی کوشش کر رہے ہین۔ انہں مٹانے دو۔ جو بت توڑے وہ ظالم ہے۔ جو دین مٹائے وہ مظلوم۔
    ایک بات اور سن لیں ، دین کے لاکھون پروانے آج اپنے ایمان اور دین، اور اسکی حرمت پر مرنے کے لئے تیار ہیں اور وہ دن دور نہیں جب ہندوستان میں گھر گھر میں اسلام پھیلے گا۔ اور انشاء اللہ پوری دنیا میں اسلام پھیلے گا۔۔ اور اسلام کا بچہ بچہ ، بتون کو توڑے گا۔ جو مٹ گیا اسکی فکر کرنے والے بھی ساتھ ہی ن؟ت جائینگے، یہ اسلام کے مجاہدون کو شہید کرین گے ۔ ہم انکے خداؤن کو مٹا دینگے۔ انشاء اللہ۔
    ہوش میں آؤ۔ اگر مسلمان کہلاتے ہو اور ہو تو مسلمان بنکر دیکھاؤ ۔ مٹ اسطرح مٹ جاؤ گے، کہ ان بت پرستون کی طرح نشان عبرت بن جاؤ گے۔،،،،،، اور تمھاری داستان بھی نہ ہوگی داستانون میں۔
    وما اللبلاء