Original Articles Urdu Articles

گلگت بلتستان: سیاسی جمود اور عوامی ایکشن کمیٹی – از سنگے حسین سیرنگ

 

14

یکم مئی : سینٹ کی قائمہ کمیٹی براۓ انسانی حقوق کے نو ممبران آج کل گلگت بلتستان کے دورے پر ہیں – گلگت شہر میں عوامی ایکشن کمیٹی* کے ممبران نے سینٹر صاحبان سے ملاقات کی اور مقامی مسائل پر گفتگو کی – دوران گفتگو سینٹر افراسیاب خٹک نے تسلیم کیا کہ گلگت بلتستان کے اداروں کو قانون سازی اور مقامی امور چلانے کی آزادی نہیں – بقول ان کے  اسلام آباد کی اجازت کے بغیر یہاں ایک چپراسی بھی تعینات نہیں ہو سکتا

انہوں نے تجویز دی کہ اسلام آباد میں موجود جی بی کونسل کے اختیارات گلگت میں موجود آئیں ساز اسمبلی کو منتقل کیے جایں اگر پاکستان کے آئین میں ترمیم کر کے جی بی کو ملک کا حصہ نہیں بنایا جا سکتا تو فی الوقت گلگت بلتستان کو آزاد کشمیر کی طرز پر عبوری آئین دیا جائے

  –

18

عوامی ایکشن کمیٹی جس کی قیادت صفدر علی ، بابا جان ہنزئی اور وجاہت علی کر رہے تھے نے سینیٹر صاحبان کو عوامی ایکشن کمیٹی کے مطالبات سے آگاہ کیا – اور باور کرایا کہ گلگت بلتستان ایک غریب خطہ ہے-  متعدد جنگوں اور ہندوستان اور پاکستان کے درمیان تنازعہ کی وجہ سے اس خطہ میں معاشی بہتری کی طرف کام نہیں ہو سکا – سیاسی کشمکش کی وجہ سے لداخ ، کشمیر اور وا خان کی طرف کھلنے والے تجارتی راستے بند ہیں جس کا مقامی معیشت پر ایک منفی اثر پڑتا ہے اور اس کے ازالے کے لئے انیس سو اڑتالیس سے منظور شدہ خوراک پر سبسڈی کو برقرار رکھنا اشد ضروری ہے

قائمہ کمیٹی نے عوامی ایکشن کمیٹی کی کی کاوشوں کو سراہا جو کہ مختلف مذاہب اور لسانی گروہوں میں اتحاد کا با عث بنا ہے – سینٹرز نے اس بات پر دکھ کا اظہار کیا ہے کہ متنازعہ حثیت کی وجہ سے گلگت بلتستان کے لوگ پاکستان میں ہونے والے حالیہ انتخابات میں اپنا حق راۓ دہی استعمال نہیں کر سکے – یاد رہے کہ ہندوستان نے جی بی کو اپنے سیاسی اداروں میں نمائندگی تو دے رکھی ہے مگر بے سود کیوں کہ جی بی کے لوگوں کو وہاں تک رسائی نہیں ہے

چھیاسٹھ سال سے بغیر کسی آئینی حقوق اور شہریت کے زندگی بتانے والے  جی بھی کے شہریوں کے لئے یہ ایک لمحہ فکریہ ہے – ان حالات کے پیش نظر جی بی میں آزادی کے نظریے کو پذیرائی ملی ہے – آزادی پسند ہندوستان اور پاکستان دونوں سے مطالبہ کر رہے ہیں کہ جی بی کی منفرد شناخت کو تسلیم کیا جائے اور یہاں کے لوگوں کو حق حکمرانی دیا جائے

سینٹرز نے عوامی ایکشن کمیٹی کے اس مطالبے کو بھی سراہا جس میں کرگل  سکردو ، نوبرا چھوربٹ ، استور سری نگر راہداری کو کھول کر بچھڑے خاندانوں کو ملنے کی سہولت کا ذکر ہے

19

Members of a family from Ladakh who arrived in Skardo are seen here crying on the graves of their relatives who were separated during 1971 Indo-Pak war. More than ten thousand individuals living in either Ladakh or Gilgit Baltistan claim to be separated from their family members during Indo-Pak partition and subsequent wars and continue to wait for a reunion. Many such souls have departed even before getting a chance to see their loved ones.

اقوام متحدہ نے اپنی قرار داد میں پاکستان سے گلگت بلتستان کے عوام کی جان و مال و ابرو کے حقوق ک تحفظ کا وعدہ لیا ہے – مسلہ کشمیر کے نام پر گلگت بلتستان کے عوام کو یرغمال بنا کر رکھنا اور ان کو بنیادی سیاسی و معاشی حقوق سے محروم رکھنا اقوام متحدہ کی قرار دادوں کی کھلی خلاف ورزی ہے – پاکستان کو گلگت بلتستان کے عوام کی محرومیوں کا ازالہ کر کے ثابت کرنا ہوگا کہ وہ اقوام متحدہ کا ایک ذمہ دار رکن ہے

عوامی ایکشن کمیٹی بائیس جماتوں کا ایک اتحاد ہے –
سنگے حسین سیرنگ کا تعلق گلگت بلتستان کے علاقے شگر سے ہے اور وہ امریکی ریاست میری لینڈ میں میں مقیم ہیں

 

 

 

 

11Protest rally organized by AAC in Skardo city

12

Rally near Independence square, Skardo

13AAC protests in Gilgit city

 

 

17AAC rally towards Garhi-bagh square, Gilgit

 

Appendices

An example of how Pakistani secret service agencies control jobs and economy in Gilgit Baltistan……

Government of Pakistan

Deputy Commissioner Skardu,

No: CC-2/2005-04-25

Dated: 25th April 2005

“No temporary (contingent) and permanent jobs will be given to any one without the clearance of the Head Quarters 62 Brigade Skardu in future. Any violation in this regard will be dealt very severely and head of the department will be responsible for the consequences. List of temporary (contingent) and recently appointed employees may be sent to Head Quarters 62 Brigade Skardu for clearance please….”

Here, HQ 62 stands for the office of secret service agency, ISI, which evaluates locals before hiring including for the lowest ranks
like drivers, peons and sweepers.

 

// <![CDATA[
//

// <![CDATA[
//

“The power lies in Islamabad”: Statement of the Senate’s standing committee on human rights on the issue of autonomy in Gilgit Baltistan

GILGIT: The power lies in Islamabad, rendering the Gilgit-Baltistan (G-B) Legislative Assembly toothless. This was one of the findings of the nine-member senate committee investigating human rights issues in the region.

“What we have found out is that the powers lie in Islamabad through the G-B Council, which is headed by the prime minister, and not with the G-B Assembly,” shared Senator Afrasiab Khattak on Tuesday at a news conference at the Gilgit Press Club where the other senators were also present.

“Even a peon cannot be appointed here without prior permission from Islamabad,” said Khattak, who is heading a nine-member Senate Functional Committee investigating human rights violations in G-B.

The finding is in stark contrast to earlier statements made by G-B Chief Minister Mehdi Shah who often boasted about the devolution of power, giving credit to former president Asif Zardari.

Unlike the “empowerment order of 2009, the next order will have more powers for the region,” shared Khattak.

The powers enjoyed by the G-B Council must be delegated to the local assembly to make elected representatives more powerful, enabling them to legislate on issues like forests and water, he added.

“The judiciary requires an overhaul. Judges need to be hired on a permanent basis unlike the current arrangement which allows hiring them to the regional apex court on contract.”

Explaining the committee had first hand information after meeting various sectors of society, Khattak maintained a committee headed by Farhatullah Babar will permanently oversee issues concerning the people of G-B. Under Article 1 of Pakistan’s Constitution, G-B is a part of Pakistan, added Babar, who was also at the press club.

Source :

http://tribune.com.pk/story/702044/committee-report-the-power-lies-in-islamabad/