Original Articles

Kayani dictates talking points to “free media”

Also read: General Kayani explains his position on WikiLeaks via Haroon-ur-Rashid

This is a fascinating report in Dawn about a briefing given by a “top military official” to “editors, anchors, and columnists” on Sunday. The top military official gave these comments on the condition of strict anonymity. This briefing to the main opinion makers in the Pakistani media was given on Sunday on the day of the first set of leaks from Wikileaks.

The interesting thing about this meeting is that just by reading it, a few things are apparent :-

This “anonymous military official” can be no other than General Kayani. No other military official would speak so authoritatively on every aspect of Pakistani security policy.

The contents of this media briefing consist of an entire set of media talking points for the next few months’ news cycle. Note how an entire national narrative of grievance is supplied to the media personalities in order for them to project this to their viewership:

Detailing frank exchanges between the uppermost echelons of the Pakistan military and the Obama administration, the senior military official listed a catalogue of complaints the ‘people of Pakistan’ have against the US.

These include: the US still has a ‘transactional’ relationship with Pakistan; the US is interested in perpetuating a state of ‘controlled chaos’ in Pakistan; and, perhaps most explosively given the WikiLeaks’ revelations, the “real aim of US strategy is to de-nuclearise Pakistan”.

The most interesting thing to me is that this narrative is not presented as a military perspective but instead framed as “a catalogue of complaints that the people of Pakistan have against the US. See how easily General Kayani fuses the military’s interests with those of the people of Pakistan.

General Kayani then goes on to outline the entire array of talking points for the near future – he discusses US withdrawal from Afghanistan, what a satisfactory end-state in Afghanistan would look like for the Pakistani army, what Afghanistan’s relationship with India should be allowed to be, and that the Pakistani military will continue to be “India-centric”.

At first, upon reading this, one must wonder why Dawn is acting like a stenographer for General Kayani and faithfully transcribing his comments in this one. But upon later reflection, it is useful for the reader for Dawn to have described this briefing. For one thing, it’s quite obvious who is talking here, so we know that General Kayani has taken it upon himself to brief the major media players prior to the latest diplomatic crisis between Pakistan and the US. By describing everything that General Kayani said to these media persons, we, as future consumers of the media generated by these individuals gain a better understanding of some of the factors influencing these individuals. Indeed, as a daily reader/viewer of Pakistani news, these talking points should be incredibly familiar to you. For example, here is General Kayani’s talking point:

The official also repeatedly stressed that the ‘frames of reference’ of the US and Pakistan with regard to regional security matters “can never be the same and this must be acknowledged”. Furthermore, the official claimed, the dichotomy between short-term US interests and long-term Pakistani security interests needs to be kept in mind at all times.

Now here is an opinion journalist Mosharraf Zaidi, repeating the same talking point:

It boils down to this: Pakistan’s interests in Pakistan and in the region are simply not the same as those that the US and other Nato powers have. Unlike alliances that go back a long way and seem to endure all shades of politics, like the special relationship between Great Britain and the United States, Pakistan’s relationship with the United States is decidedly inorganic. To stimulate each other the right way, the United States pays the Pakistani military, and gingerly, its civilian government, to put the squeeze on the safe havens for bad guys in Pakistan that are targeting US and Nato troops in Afghanistan.

Or consider the following set of talking points issued by General Kayani on the issue of a North Waziristan operation:

Nevertheless, citing three factors, the official downplayed the possibility of an imminent operation in NWA. First, the official said, South Waziristan needs to be resettled. Second, the country had to prepare for the ‘serious blowback’ of an operation in NWA, which would include terrorist attacks in the cities and a fresh wave of Internally Displaced Persons.

Third, the official stressed the need for the “creation of a political consensus”. Referring to a similar consensus developed in the run-up to Operation Rah-i-Rast in Swat, the official suggested politicians, the media and the Pakistani public would have to demonstrate their support for a military operation in NWA before the army would undertake one.

When told of Prime Minister Gilani’s comment that there is no need for a fresh consensus because the support for the operation in South Waziristan also extends to North Waziristan, the official responded sharply: “I will not do it unless there is a political consensus on North Waziristan.”

Now read this article by Sherry Rehman who also happens to be a member of the National Security Committee in Pakistan’s Parliament. Here is what Sherry Rehman has to say about a North Waziristan operation.

The politics of a military operation are never easy. No military relishes fighting inside its own borders, and no civilian, elected government embraces the use of force as a first, or even second option. The government has thrown its full weight behind the operations, despite the costs that accrue from such initiatives. As a result, Pakistan now has its own generation of lost people, human tragedies, economic crises, internal strife and political instability.

While the military presses on with an offensive in Orakzai agency, there will be little room to divert forces for anything more than strategic strikes on NWA areas where the terrorists cluster. Pakistan must dismantle al-Qaida as well as India-centric jihadist outfits as a priority. It also must allow Kabul to form its own stable government and hope for a friendly partner. But it will need Pakhtuns to maintain stability in Afghan border provinces after the expected US troop withdrawal in 2011. Seeking more than surgical raids in NWA is asking for too much. Pakistan must act decisively against terrorists, but using its own gameplan.

How many times have we heard a journalist/analyst/anchor repeat the point that Pakistan’s interests and the US’s interests in Afghanistan are simply not the same or that Pakistan must conduct the North Waziristan operation “on its own time” and “in keeping with its own long-term strategic interests” rather than following the dictates of short-term US pressure. Perhaps General Kayani is simply a very sensible and insightful geopolitical analyst and his analysis is just so correct that it reflects reality. Or perhaps, just perhaps, sessions like the one reported by Dawn are conducted precisely in order to shape the national narrative which is then uncritically propagated by patriotic journalists across various fora. After all, it is not at all difficult to present a counter narrative to the one being presented by General Kayani (and Sherry Rehman) on North Waziristan. Readers of this blog will be aware of the many unanswered questions regarding the securing of Pakistanis “strategic assets” in North Waziristan – namely the Haqqani group. Readers will also be aware of the opinion put forward by analysts like Dr. Muhammad Taqi, Farhat Taj and Ali K Chishti that the conflict in Kurram is related to the military establishment’s frantic moves to secure these precious assets and conceal them in the event that they are forced by the US or by the discovery of another Faisal Shehzad plot to launch an operation in North Wazirstan. An intelligent person should, after reading Dr. Taqi’s article on Kurram, be able to deconstruct some of General Kayani’s talking points and perhaps even question them as being simply a cover for a deeper game being played by the Pakistani establishment. And surely, as readers, we deserve to have these questions raised in the mainstream media, on our talk shows and in our op-eds in order to question the cosy narrative that we are being forced to swallow by General Kayani.

The point is not that Sherry Rehman or General Kayani’s argument regarding the delaying of the North Waziristan operation is necessarily invalid, but that it’s not the only valid perspective given the facts that we know about the situation in Kurram and North Waziristan. And yet it has become the mainstream perspective, thanks to the line propagated by General Kayani and the ISPR being regurgitated uncritically by the mainstream media. Similarly, it is possible that Pakistani and US interests are indeed not aligned in Afghanistan. However, it is also possible (and indeed, LIKELY) that “Pakistani interests” in Afghanistan as formulated by the GHQ are suicidal and not really “Pakistani interests” but the interests of an intellectually paralyzed security state that simply cannot change its disastrous 30 year policy of slow-motion suicide at the hands of extremists.

Dr. Ayesha Siddiqa has written extensively on the deep tentacles that the GHQ has within the Pakistani media. Reading the report by Dawn on the briefing given to media personalities by General Kayani, one realizes the extent of this cancer. Who, in the media, will be bold enough to step out of this self-imposed mental cage or will we have to wait forever?

About the author

Laila Ebadi

14 Comments

Click here to post a comment
  • The anonomity (Gen. Kayani) deliberations to media on some issues just confirms my drawn corollaries from latest leaks of Wikileaks:

    – That USA is apprehending grabbing of nuclear warheads in the hands Al-Qaeda and Talibans. NAY! This is just an excuse behind the real intention that West just cannot digest a Muslim country being nuclear. More so, their spy satellites have detected alarming quantity of enriched Uranium in Pakistan and mind you, they are not Plutonium based fissile (having less mass destruction), they are pure U235 from Centrifuges (much more destructive). They are hell bent to disarm nuclear Pakistan and they can go to any limit for dream come true.

    – It just does not enter in my mind that a single soldier, Bradley Manning, copied on a memory chip 250,000 cables from US embassies all over the world, that device being not bigger than a few finger nails; and transferred it so easily to Wikileaks in Sweden under the very nose of US Intelligence. Unless, otherwise, there was intention that it would happen – and I am sure it is the case. The world has entered into a totally new scenario, something is getting cooked, there is au revoir to all existing rules of International relations and strategies.

    – About Iran nuclear program, the leaks have given a very strong message to Iran that West meant business and no more ultimatum and warning. Iran reacted wisely and announced its centrifuge was not working due to a serious “virus” in its software.

    – Saudi Arabia has been made scapegoat of American designs to send messages and bring turmoil and chaos in many countries specially in Pakistan.

    – Cables about Kaddafi is just fill in the blanks just to establish the genuinity of the other cables.

  • I totally agree when Laila writes:

    “The point is not that Sherry Rehman or General Kayani’s argument regarding the delaying of the North Waziristan operation is necessarily invalid, but that it’s not the only valid perspective given the facts that we know about the situation in Kurram and North Waziristan. And yet it has become the mainstream perspective, thanks to the line propagated by General Kayani and the ISPR being regurgitated uncritically by the mainstream media.”

    I also enjoyed the example (of Mosharraf Zaidi et al) as being a part of the ‘Pakistani people’s’ national narrative as dictated by the COAS. We already suspected that. Didn’t we?

    btw the link to Zaidi’s article is not working. here are two other links:

    http://www.thenational.ae/apps/pbcs.dll/article?AID=/20100806/REVIEW/708059990/1008

    http://www.mosharrafzaidi.com/2010/08/08/the-national-the-war-for-the-soul-of-pakistan/

  • “The point is not that Sherry Rehman or General Kayani’s argument regarding the delaying of the North Waziristan operation is necessarily invalid, but that it’s not the only valid perspective given the facts that we know about the situation in Kurram and North Waziristan. And yet it has become the mainstream perspective, thanks to the line propagated by General Kayani and the ISPR being regurgitated uncritically by the mainstream media.”

    It is not the only valid perspective, but it does remain the only rational ‘non conspiracy theory (ala protecting strategic assets)’ perspective.

    Before one gets to analyzing questions of ‘will/expediency/protecting assets’ on must answer the question whether a particular course of action (military operations in North Waziristan) would be feasible IF the required political will to do so existed, and there were no complicating factors such as ‘protecting strategic assets’. The answer to the question would still be a big no, given the reasons related to political and resource constraints outlined by Kiyani and other commentators in the media.

    Since those constraints are very real and legitimate, haggling over speculative theories about ‘protecting strategic assets’ is irrelevant and merely a smear campaign against the military. Once the resource and political constraints do not exist, the argument of ‘protecting strategic assets’ becomes a much more viable one, if lack of military action to resolve the issue continues, in the absence of any other options.

  • This mullah, military,predominantly rightist media and judiciary alliance is a recipe for disaster. I agree with you that they are following path of self distruction.In fact they are fossilized in their past and are unable to grow out of it.

  • Ahmad Qureshi is no doubt an army apologist. But, you guys running this blog are Zardari’s. Both are responsible for the rotten state this country is in.

  • With the kind of inefficient and spineless democratic government, it is of no surprise that military is making such transgressions. Unfortunately, our democraticially elected leaders lack the moral authority and courage to stand up to these excesses.

  • Hasan Nisar names ‘the person’ in his column in Jang on 1 Dec 2010:

    ایک ٹکٹ کئی مزے ….چوراہا …حسن نثار

    بات سے یہ بات بھی یاد آئی کہ میں کچھ ذاتی اور مواصلاتی مجبوریوں کے باعث چیف آف دی آرمی سٹاف سے ملاقات کے لئے راولپنڈی نہ جا سکا جس کا افسوس تھا لیکن رپورٹنگ پڑھ کر محسوس ہوا کہ نہ جا کر ہی اچھا کیا کیونکہ ہماری اس جمہوریت کے بارے ہمارے آرمی چیف کی رائے بھی وہی ہے جو ہمارے سیاستدانوں کی ہے۔
    قوم کو مبارک ہو

    http://criticalppp.com/archives/31159

  • It is not only the print or TV media, it is also bloggers who remain ‘influenced’.

    For example:

    JULY 25, 2010 · 7:44 PM

    Good luck, General Kayani
    Raza Rumi

    http://tribune.com.pk/story/30713/good-luck-general-kayani/

    http://pakteahouse.wordpress.com/2010/07/25/good-luck-general-kayani/

    ……

    AUGUST 29, 2008 · 6:50 AM

    A profile of the ISI (Pakistan’s best known secret)

    We are publishing this excellent academic piece by Dr Ishtiaq, a renowned scholar who does not castigate the ISI the way mainstream Western media does. It is a cool, level-headed analysis with some pertinent conclusions.

    http://pakteahouse.wordpress.com/2008/08/29/a-profile-of-the-isi-pakistans-best-known-secret/

    ————–

    Geo Blocked. Sherry Resigns. Hundreds Arrested. Crackdown on Long March. Efforts to Cool Tensions Heat Up. Uncertainty Rules.

    March 13, 2009

    Adil Najam

    http://pakistaniat.com/2009/03/13/geo-blocked-pakistan/

    ——

    Defending Dictatorship: Another View on Pakistan
    Posted on March 27, 2008

    http://pakistaniat.com/2008/03/27/pakistan-defending-dictatorship/

    ———-

    ATP Poll: Grading Our Leaders, Again (including General Kayani and CJ Iftikhar Chaudhry)
    Posted on April 11, 2010

    Adil Najam

    http://pakistaniat.com/2010/04/11/poll-pakistan-leaders-2/

  • In defence of General Kayani by a speech writer and aide of Nawaz Sharif:

    Share
    جنرل کیانی کے ساتھ ایک نشست..نقش خیال…عرفان صدیقی

    صحافی ، فطری طور پر کسی چٹخارے دار خبر کی تلاش میں رہتا ہے۔ کرید اس کی سرشت میں شامل ہے۔ کچھ نہ ہو تو وہ کسی بھی بات کو اپنی مرضی کا رنگ روپ دے کر ایک شوخ و شنگ خبر تخلیق کرلیتا ہے۔ ایک نیک نام پادری امریکی دورے پہ تھا۔ صحافیوں کی منڈلی نے طے کیا کہ اس کی پارسائی کا بھرم کھولنا چاہئے۔وہ جہاز کی سیڑھیوں سے اترا ہی تھا کہ تڑاخ سے سوال ہوا۔ ”فادر ! کیا آپ نائٹ کلبوں میں جائیں گے؟“ کہنہ مشق پادری شرارت کو بھانپ گیا۔ وہ یہ بھی جانتا تھا کہ سوال کیسا ہی نوکیلا کیوں نہ ہو ، برہمی کا اظہار مہنگا پڑتا ہے۔ سو وہ مسکرایا اور صحافی کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر بولا۔ ”اچھا تو یہاں نائٹ کلب بھی ہیں؟“ اگلے دن ناشتے کی میز پر پادری صاحب نے اخبار دیکھا جس کی سرخی تھی۔ ”کیا یہاں نائٹ کلب بھی ہیں؟… پادری کا استفسار “ اس کو آپ تروڑ مروڑ کہہ لیں یا اپنی مرضی کا کوئی اور نام دے لیں، صحافت میں روا خیال کیا جاتا ہے۔ ایک زمانہ تھا کہ امریکی صدر لنڈن بی جانسن پریس کی یلغار کا شکار تھے جیسے آج کل صدر زرداری اندر یا باہر سب کا نشانہ بنے ہوئے۔ واشنگٹن کے بیچوں بیچ ایک طرحدار ، خوبصورت دریا بہتاہے جس کا نام ہے دریائے پوٹاما“۔ ایک دن صحافیوں کی پیہم نشتر زنی سے عاجز ، صدر لنڈن بی جانسن نے ٹھنڈی آہ بھرتے ہوئے کہا ۔ ”اگر میں کسی دن دریائے پوٹاما کے نیلگوں پانیوں پر چلتا ہوا نظر آؤں تو اگلے دن اخبار سرخیاں لگائیں گے۔ ”صدر کو تیرنا نہیں آتا۔“
    لیکن 28/نومبر کی شام رات میں ڈھل گئی اور رات نے 29/ نومبر کی صبح کا جامہ زیبا پہن لیا۔ کم و بیش پچیس کہنہ مشق صحافی، کالم نگار اور بام فلک سے ستارے نوچ لانے والے ٹی وی میزبان لمبی میز کے دونوں طرف بیٹھے پیچ و تاب کھاتے رہے لیکن جنرل اشفاق پرویز کیانی نے انہیں من پسند خبر کا موقع نہ دیا۔ فوج کی بارگاہ عالی کا ایک مسئلہ یہ بھی ہے انگریز پادری یا امریکی صدر کی طرح ”لبرٹی“ نہیں لی جاسکتی اور مجبوراً کڑے ڈسپلن کے اندر رہنا پڑتا ہے سو میں اکثر چہروں پر مایوسی کی پرچھائیاں تیرتے دیکھ رہا تھا کیونکہ سپہ سالاراعظم نے پہروں گفتگو کے باوجود کوئی ایسی خبر نہ دی جو اگلے دن کے اخبار کا حسن دوبالا کردیتی یا شام کے ٹی وی چوپالوں میں گرما گرمی پیدا کردیتی۔ جنرل صاحب سے شاید یہ چوتھی ملاقات تھی لیکن اس بار وہ کم گوئی کی روایت کو ایک طرف رکھتے ہوئے جی بھر کے بولے۔ شاید اس کی وجہ یہ تھی کہ موضوعات کا انتخاب انہوں نے خود کیا تھا جو خالصتاً پیشہ ورانہ اور کسی حد تک فنی نوعیت کے تھے اور اس کے لئے انہوں نے بھرپور تیاری بھی کی تھی۔ سیاست کے ممنوعہ علاقے سے وہ کوسوں دور رہے۔ گاؤں کی حیادار دوشیزہ ، پانی کا گھڑا سر پہ رکھے، جب منچلوں کو آس پاس منڈلاتے دیکھتی ہے تو راستہ بدل لیتی ہے۔ جنرل کیانی بھی جب کسی صحافی کو سیاسی چھیڑچھاڑ پر آمادہ پاتے تو چپکے سے دوسری راہ پہ چل نکلتے ۔ گاؤں کے منچلے تو دور سے آوازہ بھی کس لیتے ہیں لیکن آزاد اور توانا میڈیا ابھی اتنا بے باک نہیں ہوا کہ چیف آف آرمی اسٹاف کے ساتھ ایسا سلوک کرسکے جو وہ صدر ، وزیراعظم ،وزرائے کرام اور سیاستدانوں کے ساتھ روا رکھتا ہے۔
    یہ آرمی چیف کے طور پر جنرل کیانی کے دوسرے دور کی پہلی شام تھی۔ دوستوں کا خیال تھا کہ شاید یہ اپنے نئے تین سالہ عہد کی ترجیحات کا ذکر کریں گے لیکن ایسا نہ تھا۔ ابتداء ہی میں انہوں نے کہہ دیا کہ مجھے آج کے دن کی کسی اہمیت یا خصوصیت کا اندازہ ہی نہ تھا، یہ تو اخبارات دیکھ کر پتہ چلا۔ ”مشرف گزیدہ“ ہونے کے باوجود جنرل کیانی کی بات پر شک کرنے کو دل نہیں مانتا۔ انہوں نے بڑی محنت اور ہنرمندی سے اعتبار کا یہ مقام حاصل کیا ہے اور یہی کسی شخص بالخصوص کسی اہم عہدے پہ فائز فرد کا حقیقی اثاثہ ہوتا ہے۔ ان کے کردار کا یہ پہلو بھی لائق ستائش ہے کہ وہ سیاست سے شعوری طور پر گریزاں رہتے ہیں۔ میں ان لوگوں میں سے ہوں جنہوں نے ان کی میعاد ملازمت میں تین سالہ توسیع پر منفی رائے دی لیکن ساتھ ہی لکھا کہ اب اسے ایک نزاعی مسئلہ نہیں بنانا چاہئے اور قومی مفاد کو نکتہ آفرینیوں پر ترجیح دینی چاہئے۔
    آنے والے تین سال نہایت اہم ہیں۔ پاکستان میں نئے انتخابات کی بساط بچھنی ہے۔ سیاسی درجہ حرارت کو نقطہ عروج پر پہنچنا ہے۔ اپوزیشن اور حکومت کی پنجہ آزمائی میں اضافہ ہونا ہے۔ کچھ اہم عدالتی فیصلے سامنے آنے ہیں اور سب سے بڑھ کر یہ کہ امریکہ ، ماضی کی شکست خوردہ سپرپاورز کی طرح اپنے زخم چاٹتے ہوئے افغانستان سے رخصت ہونا ہے۔ بجھتے چراغ کی لو کی طرح نام نہاد ”وار آن ٹیرر“ ایک بھرپور انگڑائی لے سکتی ہے۔ ایسے میں تین برس کا گہرا تجربہ رکھنے والے جنرل کیانی کا کردار خاصا اہم ہوجاتاہے۔ ان کی گفتگو سے لگا کہ وہ وقت کے اس چیلنج سے نہ صرف بخوبی آگاہ ہیں بلکہ اس کا ایک واضح منصوبہ بھی رکھتے ہیں۔ وہ اس اہم پہلو سے بھی آگاہ ہیں کہ افغانستان سے امریکی انخلاء کے حوالے سے سیاسی اور فوجی حکمت عملی میں گہرا رابطہ ضروری ہے۔ وہ پاکستانی عوام کے جذبہ و احساس سے بھی باخبر ہیں جو امریکی کردار سے مطمئن نہیں اور درجنوں سوالات اٹھاتے ہیں۔ حالات و واقعات پر نگاہ رکھنے والے اس حقیقت سے بھی واقف ہیں کہ مختلف مواقع پر جنرل کیانی نے پاکستانی موقف بڑی توانائی کے ساتھ پیش کیا اور براہ راست صدر اوباما تک اپنی بات پہنچانے سے بھی نہیں ہچکچائے۔
    جنرل کیانی کی اس کاوش کو بھی سراہنا چاہئے جو وہ فوج کے ادارے کو قومی ہم آہنگی کے فروغ کے لئے استعمال کرنے کے حوالے سے کررہے ہیں۔ اس ہمہ گیر پلان کا ایک پہلو یہ ہے کہ چاروں صوبوں نیز آزاد کشمیر ، گلگت،بلتستان فاٹا وغیرہ کو اپنی آبادی کے تناسب سے حصہ ملے۔ گزشتہ روز حامد میر نے اپنی رپورٹ میں اس کی پوری تفصیل بیان کردی ہے۔ گزشتہ ماہ کوئٹہ کی ایک تقریب کے حوالے سے میں نے لکھا تھا کہ جنرل کیانی کا یہ تازہ ”فوجی آپریشن“ ایسے ثمرات لارہاہے جن کی قوم و ملک کو ضرورت ہے۔ اس سب کچھ کے باوجود بھی اس امر کی شدید ضرورت ہے کہ وہ سوراخ سختی سے بند کئے جائیں جن سے رسنے والا مواد ، خاکی وردی کے تقدس کو مجروح کررہا ہے۔ پتہ نہیں کیوں لیکن مجھے یوں لگتا ہے کہ جنرل کیانی، ایجنسیوں یا ان کے بعض طفلان خود معاملہ کو راہ راست پہ لانے اور برس ہا برس سے جاری ناقابل رشک روایتوں کے سامنے بند باندھنے کی صلاحیت اور طاقت رکھتے ہیں۔ وہ مطالعے کا ذوق رکھنے والے ذہین شخص ہیں۔ ان سے بہتر کون جانتا ہے کہ ایک منفی حرکت کی رائی، مثبت کوششوں کے پہاڑ پر حاوی ہوجاتی ہے۔ یہ تاثر دور ہونا چاہئے کہ کچھ عالی مرتبت ایجنسیاں قانون سے ماوریٰ ہیں اور پاکستان کا نظام عدل و انصاف بھی ان کا بال بیکا نہیں کرسکتا۔ جنرل صاحب اپنی کوششوں کو بارآور دیکھنا چاہتے ہیں تو انہیں ایسے عوامل کا فوری سدباب کرنا ہوگا جو فوج کے خلاف فضا بنانے والوں کو مواد فراہم کرتے ہیں۔
    ساڑھے سات بجے شروع ہونے والا کھانا آٹھ بجے ختم ہوگیا۔ آٹھ بجے شروع ہونے والی محفل تمام ہوئی تو رات ، (بلکہ اگلی صبح) کا ڈیڑھ بج رہا تھا۔ لیکن چٹخارے دار خبر کے حوالے سے سب کا دامن خالی تھا۔ ساڑھے پانچ گھنٹے کی نشست کے حوالے سے ہر صحافی کے چہرے پہ لکھا تھا۔ ”عمر میری تھی مگر اس کو بسر اس نے کیا۔“ دو بجے میں گھر پہنچا تو ٹی وی چینلز وکی لیکس کے انکشافات سے گونج رہے تھے۔ خبر سے محرومی کے سارے زخم بھر گئے اور پرسکون نیند نے بانہیں پھیلادیں۔

    http://search.jang.com.pk/details.asp?nid=487671
    Jang, 2 Dec 2010

  • Shaheen Sehbai in defence of his masters in ISI:

    Share
    ویکی لیکس کے بعد پاکی لیکس ۔۔۔۔!!!!!

    واشنگٹن (شاہین صہبائی) ویکی لیکس کے انکشافات کے نتیجے میں کئی چہرے لال پیلے ہوگئے ہیں لیکن سب سے زیادہ نقصان اسٹیبلشمنٹ کو اٹھانا پڑا ہے جبکہ پاک فوج اور آئی ایس آئی پر براہِ راست حملے کئے گئے۔ اگر اس طرح دیکھا جائے تو ان ملٹری اسٹیبلشمنٹ کا دھوکے باز سیاست دانوں کے مقابلے میں بہت زیادہ نقصان ہوا ہے۔ یہ سیاست دان ڈھیٹ ہوچکے ہیں اور اپنی ساکھ کے باعث ناقابل اعتبار ہوچکے ہیں کیونکہ یہ لوگ دن میں وعدے کرکے رات میں توڑ دیتے ہیں۔

    ۔ جس وقت آرمی چیف کی جانب سے صدر زرداری کو ہٹانے (جس کا ذکر یہ خاکسار کئی مرتبہ اپنی تحاریر میں مائنس ون فارمولا کے طور پر کرچکا ہے) کا انکشاف ہو رہا تھا؛ اس وقت (لانگ مارچ سے قبل) جی ایچ کیو میں ایک سوچ پائی جاتی تھی کہ زرداری مغرور اور بے وقوف شخص جیسا رویہ اختیار کئے ہوئے ہیں اور کسی نہ کسی کو آگے بڑھ کر صورتحال کو کنٹرول کرنا پڑے گا۔ جی ایچ کیو میں ہر کسی کو یہ احساس ہوچکا تھا کہ یہ صرف زرداری صاحب ہی تھے جنہوں نے الیکشن کے بعد آنے والے موقع اور مفاہمت کی فضاء کو خراب کردیا تاکہ نظام کو دوبارہ پٹری پر لایا جاسکے اور یہ رواں دواں چلتا رہے۔ لیکن جیسے ہی زرداری صاحب نے کنٹرول سنبھالا؛ وہ عدم تحفظ کا شکار ہوگئے اور یکے بعد دیگرے انہوں نے ہر اس ذریعے کو ختم کرنا شروع کردیا جو ان کیلئے ممکنہ خطرہ بن سکتا تھا یا کم از کم جو انہیں پریشان کر سکتا تھا۔ انہوں نے شریف برادران اور پنجاب حکومت سے ابتداء کی، ججوں کو بحال کرنے سے انکار کیا حتیٰ کہ جنرل کیانی کو ہٹا کر اپنے جرنیل لانے کا بھی سوچا۔ اسی راستے پر چلنے والے وہ افراد جو فوج کے کردار اور اختیارات کو کم کرنے کیلئے مستقل مہم چلا رہے تھے، نے مقاصد کے حصول کیلئے اپنی تحاریر اور تصنیف کردہ کتب کے ذریعے واشنگٹن میں انتہائی سرگرم انداز کے ساتھ مہم شروع کی اور کیری لوگر بل ایسے ہی لوگوں کی ایک کوشش تھی۔ اس کے بعد فوج شکوک و شبہات کا شکار اور ہل کر رہ گئی اور یہی وہ وقت تھا جب مائنس ون فارمولا مسئلے کے حل کیلئے واحد آپشن کے طور پر دیکھا جانے لگا۔ یہ اسی تناظر میں تھا کہ پورے منظر میں سفیر این ڈبلیو پیٹرسن کو شامل کرلیا جاتا تھا تاکہ یہ تاثر پیدا ہوسکے کہ اس معاملے پر وہ اور امریکا کس رد عمل کا اظہار کرسکتا ہے۔ لیکن زرداری صاحب فوراً ہی پنجاب حکومت اور اور ججوں کے مسئلے پر پیچھے ہٹ گئے۔ ان کے پر کاٹ دیئے گئے لہٰذا مائنس ون فارمولا پر غور و فکر بند کردیا گیا۔ واشنگٹن میں بیٹھے فوج مخالف پرجوش عناصر کو بھی پیغام پہنچا دیا گیا

    http://www.jang.net/urdu/details.asp?nid=488626

    Also, Sehbai is worried about Pak Saudi relations:

    Damning Wikileaks Secrets Threaten Pak Saudi Relations

    http://www.columnspk.com/2010/11/damning-wikileaks-secrets-threaten-pak-saudi-relations/

  • Share
    یہ کام صرف جنرل کیانی کرسکتے ہیں…نقش خیال…عرفان صدیقی

    کوئی ریاست عسکری حوالے سے کتنی ہی طاقت ور، اقتصادی طور پر کتنی ہی مضبوط اور ترقی و خوشحالی کے اعتبار سے کتنی ہی توانا کیوں نہ ہوجائے، آج کی دنیا میں اس کے وقار کا حقیقی پیمانہ صرف ایک ہی ہے کہ وہاں آئین کی توقیر، قانون کی تکریم اور عدل وانصاف کی آبرو کا عالم کیا ہے؟ بوجوہ، پاکستان میں اس تصور کی حرمت قائم نہیں رہ سکی۔ اسباب و محرکات کی فہرست شاید طویل ہو لیکن اس افسوس ناک رجحان میں بنیادی کردار مارشل لاؤں نے ادا کیا۔ جب فوج کا سربراہ، فوج کی طاقت کو اپنی ذات کے لئے استعمال کرتے ہوئے اقتدار پر قابض ہوجاتا ہے اور لاکھوں کی مسلح، منظم اور منضبط نفری، آئین کی پاسداری کے حلف سے دستکش ہوکر، اس آئین شکن فرد کی پشت پر کھڑی ہوجاتی ہے تو ریاست کی روح پر نہایت گہرا گھاؤ لگتا ہے۔ آئین، قانون اور عدل کا بازیچہ اطفال بن جانا اور فرد واحد کے ذاتی مفادات، اہداف اور مقاصد کا ریاست کے بنیادی اجزائے ترکیبی پر غالب آجاتا، کوئی معمولی سانحہ نہیں ہوتا۔ مزاحمت اور احتجاج کی کوئی لہر اٹھے نہ اٹھے، قوم کے دل، دماغ اور باطن میں اتنی تباہ کن توڑ پھوڑ ہوتی ہے کہ اس کی پوری نفسیات بدل جاتی ہے۔ ہماری کم نصیبی دیکھئے کہ کم و بیش تینتیس برس آئین کی رسوائی، قانون کی جگ ہنسائی اور عدل و انصاف کی پسپائی کے دلدلی جنگلوں میں بھٹکتے رہے۔
    توانا خفیہ ایجنسیاں، جمہوری حکومتوں کے عہد میں اپنی آزادانہ، متوازی اور بعض اوقات متصادم حکمت عملی تراش لیتی اور راہنمائی کے لئے فوجی قیادت کی طرف دیکھتی ہیں۔ لیکن جب فوج کا سربراہ، ریاست و حکومت کی سربراہی کا تاج بھی اپنے سر پر سجالیتا ہے تو فوج کی طرح یہ خفیہ ایجنسیاں بھی اس کے عزائم کا موثر ہتھیار بن جاتی ہیں۔ جس وقت آمریت کے چاک پر مسلم لیگ (ق) کا مرتبان تخلیق ہورہا تھا اور ”شہنشاہ پاکستان“ کے لئے ایک سیاسی ریوڑ جمع کیا جارہا تھا تو انہی ایجنسیوں نے ہانکا لگایا، جال پھینکے، مشکیں کسیں اور مطلوبہ شکار کے انبار لگا دئیے۔ کون بھولا ہوگا کہ آج انقلاب کے دعوے کرنے والے کیسے کیسے سورما، اپنی آنکھوں میں سہانی رتوں کے خواب سجائے کرنیلوں اور جرنیلوں کے چرنوں میں بیٹھے تھے۔ انتخابی امیدواروں کے انٹرویوز ایجنسیوں کے سیف ہاؤسز میں ہوئے، وہیں سے پروانے جاری ہوئے اور وہیں سے کروڑوں کے فنڈز بانٹے گئے۔ جہاں اس طرح کے سرکس تواتر سے سجتے رہیں وہاں آئین، قانون اور عدل کی کیا حیثیت رہ جاتی ہے؟
    پے در پے مارشل لاؤں نے خفیہ ایجنسیوں کی دھار بے حد تیز کردی اور وہ بے مہار ہوگئیں۔ چونکہ آمر کا عوام میں کوئی حلقہ نہیں ہوتا اس لئے اس کا تمام تر انحصار فوجی وردی اور ایجنسیوں کی قوت و حشمت پر ہوتا ہے۔ جس کو چاہا قید کر دیا، جس کو چاہا جلاوطن کردیا، جس کو چاہا قتل کر ڈالا، جس کو چاہا نمونہ عبرت بنادیا۔ زعم عدل میں، عدلیہ ذرا سا کسمسائی تو ججوں کو بھی زنجیریں ڈال دیں۔ اس ساری معرکہ آرائی میں ایجنسیاں ہی اس کا بازوئے شمشیر زن ہوتی ہیں۔ فوجی حکمرانی کے عہد میں ان کی قوت اور جاہ و جلال میں کئی گنا اضافہ ہوجاتا ہے۔ موسم ان کے شارہ ابرو پہ رقص کرتے اور رتیں ان سے اذن خرام لے کر قدم اٹھاتی ہیں۔ پھر کسی دن آمریت اپنے منطقی انجام کو پہنچ جاتی ہے، آمر رسوائیوں کی پوٹ بن کر رخصت ہوجاتا ہے لیکن ایجنسیوں کے توانا بازوؤں کی مچھلیاں تھرکتی رہتی ہیں اور وہ آمروں کے عہد میں حاصل ہونے والی بے کراں توانائی کے زور پر تقدیریں بنانے اور بگاڑنے کا دل پسند مشغلہ اپنائے رکھتی ہیں۔
    ہمارے ہاں، خفیہ ایجنسیوں کی طاقت اور غیررسمی دائرہ کار میں بے کراں اضافہ کردینے میں، نام نہاد ”وار آن ٹیرر“ نے بھی نمایاں کردار ادا کیا ہے۔ آمریت اور ”وار آن ٹیرر“ نو برس تک ہاتھوں میں ہاتھ ڈال کر چلتی رہیں اور دونوں نے ایجنسیوں کی قوت کار پر انحصار کیا۔ دونوں نے انہیں کھل کھیلنے کی چھوٹ دی اور ان کے تجاوزات کی حوصلہ افزائی کی۔ اسی عہد بے ننگ و نام میں لوگوں کو اٹھانے، گم کردینے یا امریکیوں کے ہاتھ بیچ دینے کی روایت پڑی جو بعدازاں ایجنسیوں کے اسلحہ خانے کا موثر ہتھیار بن گئی۔
    اس طویل تمہید کا محرک، سپریم کورٹ کے سامنے آئی۔ایس ۔آئی اور ایم۔آئی کے وکیل کا یہ اعتراف ہے کہ 20/مئی کو اڈیالہ جیل سے رہائی کے بعد لاپتہ ہوجانے والے افراد ان کی تحویل میں ہیں۔ یہ انکشاف اپنے اندر اثرات و نتائج کی بے کراں دنیا سمیٹے ہوئے ہے۔ اس انکشاف نے ایجنسیوں کے ساتھ ساتھ عدلیہ کو بھی کٹہرے میں کھڑا کردیا ہے جو تاریخ کی ایک بے نظیر تحریک کے نتیجے میں بحال ہوئی، جو عوام کی لامحدود توقعات کے آشیانے میں بیٹھی ہے اور جو سول معاملات میں خاصی تند خو ہے۔
    اس میں کوئی کلام نہیں کہ دنیا بھر کی ایجنسیاں، آئین و قانون کے تنگ دائروں میں گھٹن محسوس کرتی ہیں۔ وہ قومی مفاد کے اپنے پیمانے وضع کرلیتی ہیں اور جہاں کہیں موقع ملے، کہنی مارنے سے گریز نہیں کرتیں۔ یہ بھی بجا کہ پاکستان ایک غیرمعمولی بحرانی کیفیت سے گزر رہا ہے۔ یہ بھی درست کہ ہمارے نظام عدل و قانون کی خامیوں کے باعث اکثر مجرم چھوٹ جاتے ہیں لیکن اس سب کچھ کے باوجود ریاست کے اندر اپنی الگ ریاست نہیں بنائی جاسکتی۔ آئین و قانون سے ماوری اقدام کرتے ہوئے لوگوں کو بنیادی حقوق سے محروم کردینا اور ان کے پیاروں کو مہینوں، سالوں تک آزار کی صلیب پر لٹکا دینا کسی طور روا نہیں۔ اس کا سب سے زیادہ نقصان فوج کو پہنچتا ہے جو مشرف عہد کی بوئی فصل کاٹ رہی ہے۔
    میں نے پہلے بھی لکھا تھا اور آج پھر دہرا رہا ہوں۔ یہ کام جنرل اشفاق کیانی ہی کرسکتے ہیں۔ اسے میری خوش گمانی کہہ لیجئے یا کچھ اور، لیکن میں نے فوج کی ساکھ کے حوالے سے جنرل کو ہمیشہ بڑا حساس پایا ہے۔ وہ بارہا کہہ چکے ہیں کہ ”فوج کی اصل طاقت عوام کی تائید و حمایت میں ہے“۔ جنرل نے عوام اور فوج کے فاصلے کم کرنے کے لئے بعض اہم اقدامات بھی کئے ہیں۔ حالیہ سیلاب میں فوج نے نیک نامی کا بے بہا سرمایہ کمایا ہے۔ جنرل کیانی فوج کو آئینی و قانونی حدوں کے اندر رکھتے ہوئے ایک مدبرانہ راہ پر چل رہے ہیں جس سے فوج کے وقار میں خاطر خواہ اضافہ ہوا ہے۔ جی نہیں مانتا کہ ان کے ہوتے ہوئے کوئی ایجنسی ”طفل خود معاملہ“ بن جائے۔ لیکن عمر چیمہ جیسے واقعات اور لاپتہ افراد کی داستانیں بہرحال فوج کے کندھوں کا بوجھ بن رہی ہیں۔ بلوچستان میں تو یہ معاملہ، دیگر تمام محرومیوں کے کوہ گراں پر بھی حاوی ہوگیا ہے۔ خوش بختی سے جنرل کیانی کے پاس ابھی مزید تین برس ہیں۔ گیارہ افراد کی حراست کے اعتراف کے بعد لازم ہے کہ جنرل کیانی اپنے رفقاء سے مل کر کوئی راستہ نکالیں۔ حکومت اور عدلیہ کو اعتماد میں لیں۔ ایجنسیاں بالعموم ”قومی مفاد“ اور ”حب الوطنی“ کو اپنے ”کارناموں“ کا جواز بناتی ہیں لیکن یہ درست نہیں۔ اگر غیرت کے نام پر کسی شخص کو قتل کردینے کا استحقاق نہیں دیا جاسکتا تو ”حب الوطنی“ یا ”قومی مفاد“ کے نام پر بھی قانون شکنی کا لائسنس نہیں دیاجاسکتا۔
    کرپشن کے الزامات میں لت پت، شاخ نازک پہ بیٹھی ناتواں حکومت بے بس ہے۔ یہ کام صرف جنرل کیانی ہی کرسکتے ہیں۔

    http://search.jang.com.pk/details.asp?nid=490962

  • Pakistani Media Still Seen As On A Tight Leash
    Print
    Email
    Comment
    Share:

    It seems an increase in media outlets in Pakistan has not automatically led to better journalism.

    Related Articles

    Where Is Pakistan’s Media Leading Us?
    Pakistan Takes Its War On Terror To The Small Screen
    Assassinations Mark Worsening Conflict In Balochistan
    Attack Torches NATO Supply Trucks
    TEXT SIZE
    By Abubakar Siddique, Abdul Hai Kakar
    April 08, 2011
    By all appearances, Pakistan has a free and thriving media environment.

    It has been three years since a coalition civilian government replaced direct military rule, and the selection of media outlets has risen on multiple fronts. There are scores of 24-hour television news channels, FM radio stations, and glossy new magazines and newspapers fill the newsstands.

    Beyond this, however, there is little to suggest that much has changed. More outlets, yes. But the scope of coverage continues to be narrow, the reporting of sensitive security and human rights stories is limited, and coverage in general tends to follow the official line.

    According to analysts, this suggests that Pakistan’s powerful army — now taking a back seat after years in power, while continuing to enjoy tremendous clout and influence on policy matters — still dictates the broader terms of what Pakistanis can read and watch.

    Authorities Set Media Agenda

    Muhammad Ziauddin, editor of the English-language “Express Tribune” daily, says the media environment is comparable to the days when General Pervez Musharraf ruled the country and even preceding decades in which three other military leaders held power.

    “When the military sets an agenda, it also tries to use its intelligence agencies to manipulate the nation, including the media, to fall in line,” he says.

    Ziauddin says that while the civilian government claims to be in charge, the military still sets the terms for all things tied to the national agenda, including the media.

    And that is the problem, he says, not the media.

    “So we are facing it, we are fighting it out,” he says. “This is a transition, I hope. When the transition is complete, the army will go back to its barracks.”

    Plenty Of Quantity, Not Enough Quality

    Aamer Ahmed Khan, editor of BBC’s Urdu broadcasts to Pakistan, says the explosion of media outlets in the country has not led to better journalism. The cutthroat competition among television news channels keeps them toeing the official line because many depend on official support to generate advertising revenue or even direct support.

    Khan, who used to edit the respected Pakistani news magazine “Herald,” says the military’s clout continues to grow because of its role in the war against terrorism. This, he adds, gives the military access to vast resources and influence over the civilian government in decision making on key national issues.

    Experts believe Pakistani authorities manipulate the local media to their advantage.

    As an example of the military’s influence on the Pakistani media environment, Khan says many senior journalists and editors now give preference to its statements over those of the Information Ministry, particularly on issues related to extremism.

    ‘Military Manages Media’

    Unheard-of in Western democracies, the civilian-run Information Ministry used to function as a bridge between the media and the government.

    Khan says that function is now being carried out by the Inter Services Public Relations (ISPR), the military’s media wing.

    “We know it for a fact that recently the ISPR has kind of restructured itself,” he says.

    “It has set up several wings: one dealing with private television channels, one dealing with the FM radio stations, [and] one dealing with the media. So it has become quite a sophisticated kind of machine in dealing with the media.”

    Khan says that the military has been very effective in using the media to its advantage.

    He notes that while violence attributed to the Taliban figures prominently on Pakistani news bulletins and front pages, allegations of human rights abuses conducted by government troops in Swat and Balochistan are ignored.

    He specifically cites the insurgency in Balochistan, where the Pakistani military has been battling secular Balochi separatists for the past six years. Khan says that over the past few months, mutilated dead bodies of known Balochi activists have been discovered.

    While such stories would interest media anywhere, he says, they are largely ignored in Pakistan.

    “I don’t think that the media in itself can be held responsible for ignoring these stories,” he says.

    “They are not ignoring it. They are very clearly being told to ignore it. And that speaks for the extent of the influence that the current military media machine has over the Pakistani media.”

    Army Rejects Criticism

    Major General Athar Abass, the director-general of the ISPR and spokesman for the Pakistani military, rejects any criticism of the military’s role in manipulating media.

    Speaking to RFE/RL from Islamabad, he says that the civilian government deals with the media in Balochistan, and argues that the Pakistani media has reported in depth on the army’s inquiry into the alleged executions of militants by soldiers.

    Major General Athar Abass, Director-General of the Pakistani military’s media wing

    “The army has declared zero tolerance for any bypassing of law or overruling of law by the armed forces,” he says, declaring that Pakistani media is “freer than any other media in the world” and that journalists are free to cover everything under the sun.

    “Day in and day out, they are reporting on everything,” says Abass.

    “There is nothing that is out of their reach. There are absolutely no holy cows. And they are absolutely free to report on any incident — any matter of government, military, security, and the army.”

    Many journalists in Pakistan, however, would find their daily experience in sharp contrast to this official line. Noting that eight journalists were killed in 2010, the Committee to Protect Journalists described Pakistan as the world’s “deadliest place” for journalists.

    8 April 2011

    http://www.rferl.org/content/pakistan_media_controlled_by_military/3551125.html