Original Articles Urdu Articles

نیوز الرٹ: راولپنڈی، پنجاب پولیس شیعہ گھروں میں داخل، چھاپے توڑ پھوڑ

punjab govt

https://www.facebook.com/photo.php?v=584353061613539

راولپنڈی-تازہ ترین اطلاعات یہ آئی ہیں کہ پنجاب پولیس صوبائی وزیر قانون رانا ثناء اللہ کے حکم پر راولپنڈی کے کئی محلوں میں شیعہ گھروں کی چادر اور چار دیواری کا تقدس پامل کرتے ہوئے اندر گھس گئی-چھاپے مار کر کئی نوجوان گرفتار کرلئے گئے-جبکہ خواتیں سے بدتمیزی کی گئی-پیام ٹی وی نے ایک ویڈیو ریلیز کی ہے جس میں ایک شیعہ خاتون نے ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے پنجاب پولیس کی زیادتی اور ان کی جانب سے مستورات سے ان کے موبائل تک چھین لینے کا الزام عائد کیا ہے-تعمیر پاکستان کو قدیمی امام بارگاہ سے تعلق رکھنے والے اور بی بی سی نیوز ریکارڈ پاکستان کے مالک ڈاکٹر ذوالفقار نے بتایا کہ کل رات سے یہ چھپے شروع ہوئے اور ان کا سلسلہ جاری ہے-شیعہ گھرانوں پر چھاپوں کے دوران عورتوں کو خوفزدہ کرنے،ان سے بدتمیزی کئے جانے اور ان کے گھروں میں توڑ پھوڑ کرنے کای اطلاعات بھی موصول ہوئی ہیں

سنّی اتحاد کونسل کے جئیرمین صاحبزادہ حامد رضا نے تعمیر پاکستان سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ایسا نظر آتا ہے کہ صوبائی وزیر قانون پنجاب میں ہم آہنگی کی فضاء برقرار رکھنے میں سنجیدہ نہیں ہیں-جبکہ سابق وفاقی وزیر سید حامد سعید کاظمی نے بھی ان واقعات پر تشویش کا اظہار کیا ہے-مجلس وحدت المسلمین کے رہنماء علامہ توقیر عباس شمسی نے کہا ہے کہ پنجاب حکومت ان کے صبر کو نہ آزمائے -میاں نواز شریف دھشت گردوں کی حمائت میں بہت آگے جاچکے ہیں-یاد رہے کہ راولپنڈی واقعہ کے زمہ داروں کے خوالے سے دو کمیٹیوں کی تشکیل ہوئی اور دونوں کے سربراہ صوبائی وزیر قانون ہیں جنہوں نے ابھی تک صرف جامعہ تعلیم القران دیوبندیوں والی کا دورہ کیا اور وہ راولپنڈی میں نذر آتش ہونے والی نہ تو امام بارگاہ میں گئے اور نہ ہی پنجاب حکومت نے امام بارگاہوں کی مرمت اور تعمیر بارے کوئی اعلان کیا-شیعہ علماء کونسل تحقیقاتی کمیٹی کے سبراہ رانا ثناءاللہ پر پہلے ہی عدم اعتماد کرچکے ہیں-اور تحقیقات کمیٹی کا بائیکاٹ کرنے کا فیصلہ کیا ہے-رپورٹ تعمیر پاکستان نیوز

About the author

Aamir Hussaini

4 Comments

Click here to post a comment
  • Assalam !!! There is no otherway left other than start protesting in front of National Assembly which will catch Media eye as well as National level attention to this Rana Sana Ullah’s biased investigation. I wonder why our Ulema Akram of MWM are not calling for call of protest. I think they should call for it immediately less things move way beyond controllable limits. A peaceful protest even for three to four days will do the job or less turn it into a prolonged protest wherein the city life will scum to road blocks etc and then government will be forced to take actions. I hope this will reach our Jayed alims of MWM

  • یہ خواتین اس وقت کہاں تھیں جب انکے بیٹے پنڈی کو جلارہے تھے، بچوں کو زبح کررہے تھے اور پولیس سے اسلحہ چھین کر فائرنگ کررہے تھے۔

  • Geo News Urdu ‏@geonews_urdu 42m
    ہلاک ہونے والوں میں جامعہ تعلیم القرآن کا کوئی طالب علم شامل نہیں، سی پی او

    Geo News Urdu ‏@geonews_urdu
    سانحہ راول پنڈی میں 11 افراد ہلاک ہوئے، سی پی او راول پنڈی

    https://twitter.com/geonews_urdu/status/405594991831298048

    https://twitter.com/geonews_urdu/status/405594924839886849

    پنڈی کے راجہ بازار کی مدینہ مارکیٹ میں جب میں لوگوں سے انٹرویو کر رہی تھی تو ایک شخص نے بے قابو ہو کر کہا کہ سو لوگ مارے گئے تھے۔ دوسری طرف ایک اور شخص نے کہا کہ بچوں کو بھی مارا گیا تھا۔ جب میں نے ان سے پوچھا کہ ان بچوں کے بارے میں پتہ ہے کہ وہ کون تھے اور کس ہسپتال لے جایا گیا، تو وہ بتا نہ سکے۔ ان کا یقین کہی سنی پر مبنی تھا، آنکھوں دیکھا حال نہیں تھا۔

    اس بازار کی طرح سماجی رابطوں کی ویب سائٹوں پر واقعے کے بارے میں خوب تبادلہ خیال ہوا۔ کس نے شروع کیا، کس نے پہلا پتھر مارا ، کتنے لوگ اور کس مسلک کے ہلاک ہوئے اور کیا یہ ایک دانستہ سازش تھی، ایسے سوال گردش کر رہے ہیں۔
    اگرچہ واقعے کے روز ٹیلی وژن چینلز نے لائو کورج نہیں کی، ٹوئٹر اور فیس بک پر ہر قسم کی افواہوں کو مزید ہوا دی گئی۔ مثال کے طور پر ایک افواہ یہ ہے کہ مشتعل افراد نے اس مسجد میں گھس کر بچوں سمیت لوگوں کے گلے کاٹ کر مار دیا۔ اس کے ثبوت کے لیے ایسی تصاویر پیش کی گئیں جو شام جیسے پر تشدد ممالک میں بھی استعمال کی گئی تھیں۔ یہ افواہ عام ہے کہ سو سے زیادہ لوگ مرے تھے اور بچوں کے گلے کاٹے گئے تھے۔
    تاہم، بی بی سی اردو کی تحقیق کے مطابق، ایسے کوئی شواہد نہیں ہیں کہ اتنی تعداد میں لوگ ہلاک ہوئے اور بچوں کے گلے کاٹے گئے ہوں۔

    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2013/11/131126_myths_about_moharram_riots_sa.shtml