Original Articles

Great struggle wins at last – by H.A. Khan

The Burmese military authorities have released the pro-democracy leader, Aung San Suu Kyi, from house arrest.

Appearing outside her home in Rangoon, Ms Suu Kyi told thousands of jubilant supporters they had to “work in unison” to achieve their goals.
The Nobel Peace Prize winner has been detained for 15 of the past 21 years. It is not yet clear if any conditions have been placed on her release.
US President Barack Obama welcomed her release as “long overdue”.

UN Secretary General Ban Ki-moon said Ms Suu Kyi was an “inspiration”, and called on Burma to free all its remaining political prisoners.
The decision to free 65-year-old Ms Suu Kyi comes six days after the political party supported by the military government won the country’s first election in 20 years. The ballot was widely condemned as a sham.

‘Long overdue’

For more than 24 hours crowds of people had been waiting anxiously near Ms Suu Kyi’s home and the headquarters of her now-disbanded National League for Democracy (NLD) party for news of her fate.

Many wore T-shirts sporting the slogan “We stand with Aung San Suu Kyi”.

Hundreds of people are refusing to go away – at this extraordinary moment of history – they keep saying they are very happy.

They are standing outside the house that has been Aung San Suu Kyi’s prison for so many years and is now her home.

It took about half an hour after the release before she came up to the gate and tried to address the crowd – and it took a long time to quiet the crowd so she could speak.

She looked extremely happy, very emotional, and the whole crowd is grinning from ear to ear. Plain clothes police were around but as soon as an opening appeared in the barricades, people just surged through. She has been released before and because of what she has said about peace and freedom and democracy she has been jailed again. We don’t know what is going to happen.

On Saturday afternoon, a stand-off developed between armed riot police and several hundred people gathered on the other side of the security barricade blocking the road leading to her lakeside home. Some of them later sat down in the road in an act of defiance.

As tensions rose, reports came in at about 1700 (1030 GMT) that official cars had been seen entering Ms Suu Kyi’s compound, and then that unnamed officials had formally read the release order to her. Hundreds of people then surged forward and rushed forwards to greet her. The ecstatic crowd swelled to three or four thousand before Ms Suu Kyi, in a traditional lilac dress, finally appeared, about 30 minutes later, on a platform behind the gate of her compound. She took a flower from someone in the crowd and placed it in her hair.

Ms Suu Kyi then tried to speak, but was drowned out by the noise of the crowd, many singing the national anthem and chanting her name repeatedly.
“I have to give you the first political lesson since my release. We haven’t seen each other for so long, so we have many things to talk about. If you have any words for me, please come to the [NLD] headquarters tomorrow and we can talk then and I’ll use a loud speaker,” she joked.

“There is a time to be quiet and a time to talk,” she added. “People must work in unison. Only then can we achieve our goal.”

She then went back inside her home for the first meeting with NLD leaders in seven years. She also spoke to her youngest son, Kim Aris, who was awaiting her release in neighbouring Thailand. Ms Suu Kyi had two sons with late husband, British scholar Michael Aris. International leaders were quick to welcome Ms Suu Kyi’s release.

I salute her for her long struggle for people!

About the author

Laila Ebadi

6 Comments

Click here to post a comment
  • I agree with you. She is definitely an example for us as a nation. It wonders me how just one woman can trouble dictators alone. It reminds me of Shaheed BeNazeer Bhutto, I know these courageous women are never alone but the nation stands behind them. Still I must say such leaders give courage and direction to whole nation to walk behind. I agree with what she says

    “People must work in unison. Only then can we achieve our goal.”

  • The PPP awarded Aung San Suu KYI the first Benazir Bhutto Shaheed Award for democracy earlier this year. http://bit.ly/bZSHLC

    ———————————————————
    Suu Kyi receives Benazir Bhutto Shaheed Award for democracy

    Agencies
    Tags : Suu Kyi, Benazir Bhutto, PPP, Asif Ali Zardari
    Posted: Tue Jun 22 2010, 13:07 hrs
    Islamabad:

    Myanmar’s dissident political leader Aung San Suu Kyi has become the first recipient of the new Benazir Bhutto Shaheed Award for democracy instituted by the Pakistan People’s Party in the memory of the slain former premier.

    The award was instituted by the ruling PPP to mark Bhutto’s birth anniversary, which was observed yesterday.

    It pays tribute to Bhutto’s life-long struggle for democracy, human rights, improvement of the status of women and social causes.

    The recipients of the award in four categories democracy, human rights, philanthropy and women’s empowerment were chosen by a committee chaired by PPP chief and President Asif Ali Zardari, an official statement said.

    The statement said Suu Kyi was being honoured for challenging the dictatorship in Myanmar despite remaining in detention and house arrest for many years.

  • ایشیا کی نیلسن منڈیلا

    جنوبی افریقہ کے رہنما نیلسن مینڈیلا کی طرح آنگ سان سو چی جبر کے خلاف پرامن جدوجہد کی عالمی علامت بن چکی ہیں۔

    پینسٹھ سالہ آنگ سو چی نے ملک میں جمہوریت کے لیے جدوجہد کے دوران اپنی زندگی کےگزشتہ اکیس سالوں میں سے پندرہ سال حراست میں گزارے ہیں۔

    آنگ سان سو چی برما کی آزادی کے ہیرو جنرل آنگ سن کی بیٹی ہیں۔ جنرل آنگ سن انیس سو سینتالیس میں ملک کو اقتدار اعلیٰ کی منتقلی کے دوران قتل کر دیا گیا تھا۔ باپ کے قتل کے وقت آنگ سان سو چی کی عمر صرف دو برس تھی۔ آنگ سان سو چی انیس سو ساٹھ میں پہلی بار انڈیا گئیں جہاں ان کی ماں کو برما سفیر مقرر کیا گیا تھا۔

    انیس سو چونسٹھ میں آنگ سان سو چی پہلی آکسفورڈ یونیورسٹی پہنچیں جہاں انہوں نے فلسفے، سیاست اور اکنامکس کی تعلیم حاصل کی۔ آکسفورڈ یونیورسٹی میں تعلیم کے دوران ہی آنگ سان سو چی کی اپنے شریک حیات مائیکل ایرس سے ملاقات ہوئی۔ کچھ عرصہ تک جاپان اور بھوٹان میں رہنے کے بعد آنگ سان سو چی نے برطانیہ میں مستقل سکونت کا فیصلہ اور ایک گھریلو ماں کی طرح اپنے دو بچوں، الیگزینڈر اور کم کی پرورش شروع کی۔

    برطانیہ میں رہائش کے دوران آنگ سان سو چی برما کو اپنے خیالات سے نہ نکال سکیں اور انیس سو اٹھاسی میں اپنی علیل ماں کی تیمارداری کے لیے واپس برما پہنچ گئیں۔ انہوں نے برما میں پہنچ کر تقریر کے دوران کہا کہ برما میں جو کچھ ہو رہا ہے میں اس سے لاتعلق نہیں رہ سکتی۔

    برما واپس پہنچنے کے بعد آنگ سان سو چی نے ملک میں جمہوریت کے لیے کوششیں شروع کی۔ آنگ سان سو چی نے مارٹن لوتھر اور مہاتما گاندھی کے عدم تشدد کے فلسفلے پر عمل کرتے ہوئے ملک بھر میں پرامن ریلیوں کا انعقاد کیا اور ملک میں جمہوریت کے کوششیں جاری رکھیں لیکن فوجی حکمرانوں نے طاقت کا بے دریغ استعمال سے ان کی پرامن جدوجہد کو کچل کر رکھ دیا۔ انیس سو نوے میں ہونے والے انتخابات میں آنگ سان سو چی کو نااہل قرار دیئے جانے اور حراست کے باوجود ان کی سیاسی جماعت نے انتخابات میں زبردست کامیابی حاصل کی۔

    برما کے فوجی حکمرانوں نے انیس سو اکانوے میں ان کی جماعت نیشل لیگ فار ڈیموکریسی کی کامیابی کو ماننے سے انکار کر دیا اور آنگ سان سو چی کو حراست میں لے لیا۔ دوران حراست ہی آنگ سان سو چی کو امن کے نوبل انعام سے نوازا گیا۔ نوبل انعام کمیٹی میں شامل فرانسس سیجسٹیڈ نے آنگ سان سو چی کو ’کمزورں کی طاقت‘ قرار دیا تھا۔

    دو عشروں میں پہلی بار انتخابات میں آنگ سان سو چی کو انتخابات میں حصہ لینے کی اجازت نہیں تھی لیکن اس کے باوجود آج بھی وہ برما کے لوگوں کے لیے امید کی نشانی ہے۔

    آنگ سان سو چی کو انیس سو پچانوے میں رہا کر دیا گیا لیکن ان کی نقل و حرکت پر پابندیاں برقرار رکھی گئیں۔ دو ہزار نو میں آنگ سان سو چی کو دو ہزار نو میں حراست کی خلاف ورزی کے الزام میں اٹھارہ ماہ کی سزا سنا دی گئی۔

    آنگ سان سو چی نے اپنی حراست کے دوران ملکی صورتحال پر غور و فکر کے علاوہ جاپانی اور فرانیسی زبان پر مہارت کی کوششیں کیں۔

    حالیہ سالوں میں آنگ سان سو چی کو اپنی حراست کے دوران اپنی جماعت کے رہنماؤں اور مخصوص سفارت کاروں سے ملنے کا اجازت ملتی رہی۔

    برما کے فوجی حکمرانوں نے آنگ سان سو چی کو ملک سے باہر علاج کی غرض سے بھیجنے کی کئی پیشکشیں کیں لیکن انہوں سے اسے ماننے سے انکار کر دیا اور برما کے اندر ہی رہنے کو ترجیح دی۔

    آنگ سان سو چی کی حراست کے دوران دادی بن گئیں لیکن وہ آج تک ان سے ملاقات نہیں کر سکیں ہیں۔

    حالیہ مہینوں میں ان کی طرف سے انتخابات کا بائیکاٹ کرنے کے فیصلے کو تنقید کا نشانہ بنایا گیا ہے۔ ان کی جماعت کا موقف تھا کہ انتخابی قوانین غیر منصفانہ ہیں۔ ان کی سیاسی جماعت کے کچھ اراکان نے آنگ سان سو چی کی جماعت سے علیحدہ ہو کر نئی جماعت قائم کی ا ور انتخابات میں حصہ لیا۔

    http://www.bbc.co.uk/urdu/world/2010/11/101113_aung_sun_profile_ra.shtml

  • GREAT PERSONALITY OF ASIA OUR SWEET ROLE MODEL SALUTE to Aung San Suu Kyi ! Great struggle for restoration of Democracy .SHE is true leader of Oppressed peoples of Burma !

  • We are to be blamed!

    سوچی ہماری قیدی ہے!

    وسعت اللہ خان
    بی بی سی اردو ڈاٹ کام، کراچی

    آنگ سان سوچی پر لکھتے ہوئے دل ڈرتا ہے۔ جانے پھر کب قید ہوجائے اور پھر میڈیا سوچی کی اگلی رہائی تک یہ کہانی لپیٹ کر دراز میں رکھ دے۔ ویسے بھی برما ہمیشہ سے ایک پٹی ہوئی سٹوری ہے اور تاریخ و سیاست کے ریڈار پر اسکی حیثیت کبھی بھی ایک فلیش سے زیادہ نہیں رہی۔

    برِصغیر کے زیادہ تر لوگ برما کو اگر جانتے بھی ہیں تو چار حوالوں سے۔

    اول۔ رنگون میں آخری مغل بہادر شاہ ظفر دفن ہے۔

    دوم۔ دوسری عالمی جنگ میں جاپانی افواج برما تک پہنچ گئی تھیں اور ہندوستان کو جاپانیوں سے بچانے کی لڑائی یہاں لڑی گئی۔

    سوم۔ ساٹھ کی دھائی میں شمشاد بیگم نے پتنگا فلم کے لئے گانا گایا تھا۔’میرے پیا گئے رنگون وہاں سے کیا ہے ٹیلی فون تمہاری یاد ستاتی ہے۔۔۔۔‘

    چہارم۔ سب سے اچھی ساگوان کی لکڑی ( برما ٹیک) برما میں ہوتی ہے۔

    اگر پوچھا جائے کہ جنرل آنگ سان کون تھے اور انیس سو اڑتالیس میں کیوں قتل ہوگئے۔ جنرل نے ون کون کس بلا کا نام ہے۔ روہنگیا لوگ کون ہیں۔ شان علیحدگی پسند تحریک کا آگا پیچھا کیا ہے۔ نیشنل لیگ فار ڈیموکریسی کونسی چڑیا کا نام ہے۔ تو ننانوے فیصد پڑھے لکھے لوگ الٹا آپ سے پوچھ لیں گے کہ بھائی صاحب طبیعت تو ٹھیک ہے۔ رات کو نیند تو اچھی طرح سے آئی تھی۔ یہ آپ کیسے عجیب و غریب نام لے رہے ہیں۔

    اس معلوماتی پس منظر میں اگر ایک عام سیاسی سوجھ بوجھ رکھنے والا دھان پان سی آنگ سانگ سوچی کے طفیل برما کو جانتا ہے تو یہ بذاتِ خود معجزہ ہے۔ لیکن میں ان لوگوں کے لیے بھی سر پیٹنا چاہتا ہوں جو جانے انجانے میں تشبیہات بانٹنے کے مرض میں مبتلا ہیں۔ جیسے یہی کہ آنگ سانگ سوچی ایشیا کی نیلسن منڈیلا ہیں؟ ہلو۔۔ ایکسکیوز میں۔۔کیا نیلسن منڈیلا افریقہ کی آنگ سانگ سوچی ہیں؟ کیا گوتم بدھ جنوبی اور جنوب مشرقی ایشیا کے حضرت عیسی علیہ سلام ہیں؟ تو کیا حضرت عیسیٰ فلسطین کے زرتشت ہیں۔اور کیا مارٹن لوتھر کنگ امریکہ کے مہاتما گاندھی ہیں؟؟؟ یہ کسی شخصیت کی بڑائی بیان کی جارہی ہے یا اپنی جہالت کا اشتہار دیا جارہا ہے؟

    سوچی کل رہا ہوئی تھی۔ پھر نظربند ہوگئی۔ آج رہا ہوگئی ہے ہوسکتا ہے کل پھر قیدی بن جائے۔ مگر کتنی عجیب بات ہے کہ جب وہ قید میں ہوتی ہے تو کوئی اسے نہیں پوچھتا ہمسائے تک کنی کترا جاتے ہیں۔ چین برما کے اڑتالیس سالہ آمرانہ تسلسل کی وارث جنتا سے گٹھ جوڑ کرکے کروڑوں ڈالر کی سرمایہ کاری کرتا رہتا ہے۔ آسیان کی علاقائی تنظیم یہ بہانہ بناتی ہے کہ برما کی رکنیت کی معطلی سے وہاں کے اندرونی حالات میں اور سختی آجائے گی۔گاندھی کا بھارت فوجی آمر جنرل تھان شا کے لئے سرخ قالین بچھا دیتا ہے۔ کیونکہ اس قالین کے نیچے ہی گیس اور تیل کے ذخائر ہیں۔ تھائی لینڈ سوچتا ہے کہ اگر سرحدی ناکہ بندی کردی تو قیمتی جنگلاتی لکڑی کہاں سے منگواؤں گا۔اور بنگلہ دیش۔۔بنگلہ دیش تو خود بے چارا کسی گنتی شمار میں نہیں۔ رہی بات یورپی یونین اور امریکہ کی، تو برما کے اندرونی سیاسی جبر پر اظہارِ تشویش برسلز اور واشنگٹن سے جاری معمول کے بیانات اور انسانی حقوق کی سالانہ رپورٹوں کی پانچ لائنوں میں سما جاتا ہے۔

    یوں لگتا ہے کہ عالمی برادری کے نزدیک سوچی اور اسکی ثابت قدمی کا بس ایک ہی مصرف ہے کہ جب جب بھی وہ رہا ہوتو اوبامہ اسے ’میری ہیرو‘ کہہ دیں۔ بانکی مون خوش آئند خبر کہہ کر خوش ہوجائیں۔ یورپی یونین اسے اہم پیش رفت سمجھ لے اور نئی دلی ایک مثبت قدم گردان دے۔اور جب بھی سوچی نظر بند ہوں۔ یہی لوگ ایک آہ بھرتے ہوئے ’بڑا افسوس ہوا‘ کہہ کر آگے بڑھ جائیں۔

    تو کیا یہ کہنا غلط ہے کہ آنگ سان سوچی برما کی کھوسٹ فوجی جنتا کی نہیں، عالمی برادری کی منافقانہ بے دلی کی قیدی ہیں ؟؟؟

    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2010/11/101114_baat_se_baat_si.shtml