Original Articles

LUBP condemns ban on The Baloch Hal – by Abdul Nishapuri


We have recently learnt about the ban on Balochistan’s first online English newspaper, The Baloch Hal, by the military establishment of Pakistan. Our dear friend, Malik Siraj Akbar, is the Editor-in-Chief of this excellent online newspaper.

The Baloch Hal in my view is a credible Baloch nationalist website, which highlights issues of identity and rights of the Baloch people. It is a progressive English language online newspaper which staunchly champions the cause of objective and investigative journalism.

With a special focus on Balochistan, the Baloch Hal has become Balochistan’s most quoted newspaper. Leading South Asian newspapers like Dawn, Daily Times, The Hindu, the National and Himal South Asian and radio stations like BBC, Dutch Welle and Voice of America have quoted the newspaper and interviewed its editor on the geopolitical issues.

The Editor in Chief of the Baloch Hall wrote the following note to the LUBP:

On November 8, Dawn News, a leading Pakistani television channel, reported that the Pakistan Telecommunication Authority (PTA) had suddenly decided to block the newspaper for allegedly carrying some “anti-Pakistan” material. While refuting the charges, we see this as a mere excuse by the Pakistani authorities to muzzle the independent media.

As the editor-in-chief of the newspaper, I am currently a Hubert Humphrey Fellow, a program sponsored by the US Department of State. In addition, I am a member of Society for Professional Journalists (SPJ) and South Asian Journalists Association (SAJA).

Throughout my professional career, I have always adhered to objective and balanced journalism. We have always provided sufficient coverage to the government and space to the opposition parties. Therefore, we believe the government has blocked our website in Pakistan to persuade The Baloch Hal to give up its editorial policy.

In the recent past, the security establishment in Pakistan shut down a couple of other newspapers in Balochistan, besieged the offices of others, abducted journalists and put them into torture cells. Even though the government expressed displeasure over our editorials, we, in return, provided adequate space to the official spokesman to present their version as we fully believe in the freedom of speech. However, this time the government did not take a democratic approach to convey its grievances and blocked our newspaper by leveling baseless charges.

Thus, I would like to request you to kindly take notice of the government’s undemocratic attitude towards a liberal and progressive newspaper. In addition, we would appeal to you to urge the government via your writings to withdraw its decision which is intended to restrict the freedom of speech.

We want to assure Malik Siraj Akbar and other editors, authors and well wishers of the Baloch Hal, that the LUBP team stands by you in this hour of need. We will keep monitoring and reporting the situation to the wider blogging and internet community.

We demand the Chief of Army Staff General Kayani and the Chief of the ISI General Pasha to lift this undemocratic ban on the Baloch Hall.

We are not directing our demand to the puppet CM of Balochistan Nawab Raisani and the puppet President Asif Zardari because we know the limitations of their ‘authority’.

We also request the civil society, in particular our fellow bloggers from all political or ideological inclinations, to extend their full support to the Baloch Hal.

About the author

Abdul Nishapuri

58 Comments

Click here to post a comment
  • The Baloch Hal News
    QUETTA/ISLAMABAD: The government of Pakistan has decided to ban Balochistan’s first online English newspaper, The Baloch Hal, on the advice of sensitive government departments, reported Dawn News.
    According to the details, the Pakistan Telecommunication Authority (PTA), which monitors the internet operations in the country, has confirmed to have received instructions from high-ups in the government to ban the Baloch Hal, which is currently the most widely quoted newspaper about Pakistan’s gas-rich province of Balochistan.
    “We deeply regret the official decision,” said Malik Siraj Akbar, editor-in-chief of the newspaper, “we have always provided equal and balanced coverage to the government and the opposition in our newspaper. The government should bring public whatever “objectionable” material it ever found in our newspaper. The ban is intended to disconnect Balochistan’s news link with the rest of the world. This is a setback to the freedom of press.”
    The Baloch Hal was launched on November 20, last year and was preparing to celebrate its first launching anniversary in the next two weeks. The government had also banned another Baloch newspaper, Daily Asaap, last year and besieged the offices of Daily Azadi and Balochistan Express.
    The signs of ban appeared on Saturday when readers of the newspaper complained from different Pakistani cities saying they were unable to access the newspaper.
    “Every time I try to access the site, I get a message which says it has been blocked on the instructions of the Pakistan Telecommunication Authority (PTA),” said Zubir Baloch, a resident of Karachi and a user of the services of World Call Group, a telecommunication Company.
    The government of Balochistan had also been recently disturbed with the critical editorials of the newspaper.
    ” The spokesman of the chief minister of Balochistan accused us of dictating the government but we still published his point of view because we believe in the freedom of the press,” said Nazia Baloch, Op-Ed editor of the newspaper.

    http://www.thebalochhal.com/2010/11/the-baloch-hal-banned/

  • Got Inbox Message from Editor of Baloch Hal on Facebook about the ban on Baloch Hal. It’s really a shameful act by PTA and seriously condemnable. We believe in Freedom of Speech and in this hard time we are standing with the Baloch Hal Team. It’s an appeal to Federal Government to resolve this issue and wave off the ban from Baloch Hal.

  • Now here is yet another test for the reality of ‘civil society’. Keep monitoring which civil society activists, media persons and bloggers condemn the military establishment on the ban on Baloch Hal.

    In recent past and also currently, we witness a deafening silence by the same civil society on the joint blockade of Shias of Kurram agency by the Taliban and Pakistan Army.

    Everyone will see but the blind!

  • The Baloch Hal is one of the most credible news resources about Balochistan. We have published many articles it here at LUBP.
    We stand by the its team and urge all the concerned people not to deprive people of a moderate voice regarding the already marginalized Balochs.
    Instead we request the authorities to ban the Islamist mouthpiece as Tarjumanul Quran, Daily Jasarat, Daily Ummat, weekly Al Qalam, Daily Islam and the websites of SSP/LeJ, JuD, HuM, JI, Al Sahab, HuT and all those who are poisoning our society with hatred, extremism and bigotry.

  • We are once again seeing that the response of Pakistani civil society is very selective. The media watch dogs, human rights groups and civil society will stand up only if something undermines or jeopardizes their own interests in the larger cities. They don’t care at all what happens in Balochistan with its people. That is what we complain about. However, we’d like to once again thank you for your support.

  • @ Malik Siraj Akbar

    The so called ‘civil society’ is a joke. We know the inside and outside of the pseudo-liberals, and their subservience to the military and civil establishment.

    They will never show sincerity nor commitment to the rights of ethnic and religious minorities of Pakistan. Their morality is selective, their logic twisted, and their conscience dead.

    Worse than the throat slitting Taliban is the species known as Pakistan’s civil society.

  • @MSA Feel free to send us any reports / articles that you would like us to publish from time to time during this ban. LUBP will be pleased to spread the word in all possible ways.

  • BalochHaal ban is really condemnable. its show they were doing something really good.
    Few days back Interior minister rehman malik gave such a insenstive statement about Habib Jalib Baloch killing ” he said Habib Baloch was killed by his wife”.

  • Good on LUBP for highlighting this ban and the oppression on the Baloch; I haven’t seen any civil society petitions on this.

  • We are not directing our demand to the puppet CM of Balochistan Nawab Raisani and the puppet President Asif Zardari because we know the limitations of their ‘authority’.

    we fearlessly voted for ppp under mr zardari for him to use the AUTHORITY of our mandate to challenge these “limitations”, not hide behind them!

    if messrs kayani and pasha had been stupid enough to retaliate to such a challenge on our behalf, the people of pakistan would have sent them the same clear message, even more strongly, that they sent to musharraf.

    the army will never court nationwide unpopularity. the time for mr zardari to strike a blow for democracy was when we first sent him in!

    it is an equally shameful capitulation for LUBP to ‘appeal’ to generals. why not our own representatives! if they are not able to represent us then i would rather they went down fighting. then they should see whether the people stand by them or not.

    the longer they wait, the more time do the agencies and the Deep State gets to malign them. it is no rocket science. the pattern is: undermine pols for a few years; rely on pols being stupid and/or spineless enough to not make an all out challenge to the Deep State.. not even a meaningful one; and let the people become so disillusioned with pols that they would accept anything but.

    there is no excuse for pols to allow the army to keep repeating the pattern… unless if they are happy accomplices.

  • @Usman Khan, In the case of the judges, KLB and in the case of the UN report, it was clear what happened to Zardari and his team every time they stood up to the establishment. Not only civil society, their coalition partners like MQM stabbed them in the back. Nonetheless, your point merits discussion.

  • Absolutely Malik Siraj can use LUBP to write anything during the ban on Baloch Hal. Feel free to write anything using LUBP’s Platform. Together we can make a difference and they can quit a single voice not a Force of Bloggers. LUBP stands with Baloch Hal and we appreciate Baloch Hal Team for their struggle against enemies of Peaceful Balochistan.

  • The presence of so many bloggers gives me a lot more courage. We are, I realize, not alone. I thank you all for your kind offer. I will surely contributing to your site in the future too.

  • @mai kolachi

    after 8 years with the dictator, MQM’s decision was not surprising?

    the Deep State has had so much time and absolute poer to play with people’s minds that it never occurred to anyone that it was no business of the corps commanders to say anything at all about the KLB, or any govt policy or legitimate decision, wihtou having the decency of tking off their uniforms first.

    actually, the girti huwee deewaaron ko ek dhekka aur do moment was the first 6 to 12 months of democracy – a small window. ppp could probably not have done it alone (although that is no excuse not to do one’s own bit to the full, instead of pleading ‘lack of authority’ when there is no lack of popular mandate and sentiment). in a two party system, typically, one’s gain is the other’s loss. but it would take both parties to realise that democracy vs dictatorial institutions is a bipartisan, indeed a people’s, fight.

    perhaps BB should have gone for withdrawal of pak govt involvement in the swiss case by executive order rather than constitutional govt. then sharif might not have felt he had to do ppp the too visible a favour of ratifying the NRO. but then things went even worse when the COAS thought it fine to intervene on behalf of the judiciary when it had clearly become synonymous to using his extra-constitutional influence in favour of one political party against the other.

    it’s a mess. but the fact remains that the army will not court nationwide unpopularity. and right now, despite the orchestrated disillusionment with politics, the general public even in the punjab are not prepared to accept any intervention by the army. despicable as our media is, people now almost automatically see blacking them out as conclusive evidence of mal-intent. even many soldiers do not want the army ever to return to the mess, after mush proving to be the most unpopular dictator within the army, after yahya.

  • … apologies if my argument seems like taking the topic off on a tangent. i don’t think it is. nevertheless, it is important to reiterate one’s sense of outrage and disgust at a good and bright young man and his publication being denied the most important and fundamental human right: freedom of speech.

  • This shows how much free our so-called independent media is?
    The Journalists on the pay-rolls of ISI can criticize the democratically elected government by posting false stories on daily basis. But, when it comes to Military, our media is muzzled, if it dare to criticize the on-going military operations in Baluchistan and Khyber Pakhtunkhwa and the resultant killing of innocent civilians.

  • I am surprised that Pakistan Federal Union of Journalists (PFUJ), which has been informed about the ban, has not issued a statement of condemnation even though we in Balochistan have always said “labek” to its calls for strikes, boycotts and protests.

  • Mr Zardari and his cohorts happily accepted what, in metaphorical terms, and in Mr Jinnah’s words, is a “truncated Pakistan”. It is clear that it was sharing of power rather than transfer of power that the military reluctantly agreed to after the last general elections. The civilian government has been kept squarely out of the policy spheres concerning Balochistan, Afghanistan, India, National Defence, Intelligence and -as is becoming increasingly clear- economy and mineral exploration. Now why did the PPP accept this truncated mandate, has elicited a response from many Zardari apologists that they want to change a system from within. I think that it is a delusion that they are even “within”. They are totally “without” when it comes to important decisions. Sherry did the right thing by resigning from cabinet when she realised the limitations agreed upon by her party. The others are merely watching the striking of the last nails in the coffin of their party. Baloch Hal has been targeted because it was treading the middle path, refusing from becoming an accomplice in this game and also refraining from becoming a supporter of the extremist militants in Balochistan, whose actions are achieving nothing but strengthening the basis on which the military is deepening its pillars in Balochistan.

  • بلوچوں کی گمشدگی پر تشویش

    جاوید سومرو
    بی بی سی اردو ڈاٹ کام، جنیوا

    انسانی حقوق کی دو اہم بین الاقوامی تنظیموں نے بلوچستان میں سینکڑوں سیاسی کارکنوں کے لاپتہ ہونے کے واقعات اور ہلاکتوں پر تشویش ظاہر کی ہے اور پاکستانی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ گمشدہ افراد کو ظاہر کرے اور تشدد اور ہلاکتوں کی عدالتی تحقیقات کرائے۔

    بلوچوں کی مبینہ طور پر سرکاری ایجنسیوں کے ہاتھوں گمشدگیوں، تشدد اور ہلاکتوں کے مسئلے کو عالمی سطح پر اٹھانے کے لئے جنیوا میں ہونے والی ایک کانفرنس میں انسانی حقوق کی دو بڑی تنظیموں، ایمنسٹی انٹرنیشنل اور ایشین فیڈریشن اگینسٹ انوالنٹئری ڈس اپیئرنسز کے نمائیندگان نے شرکت کی۔ اس کے علاوہ اقوام متحدہ کے ورکنگ گروپ برائے لاپتہ افراد کے سربراہ جیریمی سارکن نے کانفرنس میں اپنا پیغام بھیجا۔

    ان تنظیموں نے بلوچ کارکنوں کی گمشدگیوں اور ان میں سے کئی کی تشدد شدہ لاشیں ملنے کے واقعات پر شدید تشویش ظاہر کی اور کہا کہ حکومت پاکستان ان واقعات کو رکوانے کے لیے مزید اقدامات کرے۔

    بلوچ سیاسی تنظیمیں ان ہلاکتوں اور گمشدگیوں کا الزام پاکستان کے فوجی خفیہ اداروں آئی ایس آئی اور ایم آئی پر عائد کرتی رہی ہیں۔ تاہم حکومت ان الزامات کی سختی سے تردید کرتی ہے۔

    پاکستان کے سابق فوجی حکمران جنرل ریٹائرڈ پروز مشرف کے دور حکومت میں بلوچستان میں شدت پسندوں کے خلاف کارروائی کا آغاز ہوا تھا جس کے دوران بلوچ رہنما نواب اکبر بگٹی بھی مارے گئے تھے۔

    ان کی ہلاکت کے بعد بلوچستان میں سرکاری اہداف، سرکاری اہلکاروں اور بعض عام شہریوں کے خلاف حملوں میں مزید اضافہ ہوگیا جس کی ذمہ داری بلوچستان کی علیحدگی کی حامی چند مسلح تنظیمیں قبول کرتی رہتی ہیں۔

    لیکن اس کے ساتھ ہی بلوچ کارکنوں کی گمشدگیوں اور ان کی ہلاکتوں کی تعداد میں بھی اضافہ ہوگیا ہے۔ ایمنسٹی انٹرنیشنل نے اپنی تازہ ترین رپورٹ میں کہا کہ صرف پچھلے چار ماہ میں چالیس سے زائد افراد ہلاک ہوئے ہیں اور درجنوں لاپتہ ہوگئے ہیں۔

    جنیوا کانفرنس میں شریک ایک اور تنظیم ایشین فیڈریشن اگینسٹ انوالنٹری ڈس اپیئرنسز نے دعویٰ کیا ہے کہ بلوچستان میں کارروائی کے دوران لگ بھگ آٹھ ہزار لوگوں کو سرکاری اداروں نے غائب کردیا ہے۔

    فیڈریشن کے مطابق عام شہریوں کی ہلاکتوں کے لیے بلوچ قوم پرست تنظیمیں بھی موردالزام ہیں، لیکن سب سے زیادہ ہلاکتوں، تشدد اور گمشدگیوں کے ذمہ دار پاکستانی ادارے ہیں۔ فیڈریشن نے الزام لگایا کہ پاکستانی ریاست نے ’مارو اور پھینک دو‘ کی پالیسی اپنا رکھی ہے جس کے تحت لوگوں کو اغوا کیا جاتا ہے جس کے بعد ان کی تشدد شدہ لاشیں ویرانوں سے ملتی ہیں۔

    اس کانفرنس کا انعقاد انٹرنیشنل وائس فار مسنگ بلوچ پرسنز کے زیر اہتمام کیا گیا تھا جس کے سرکردہ آرگنائر احمرمستی خان کے مطابق ان کی تنظیم نے گیارہ سو لاپتہ افراد کی تفصیلات جمع کی ہیں جبکہ ایسے سینکڑوں مزید لوگ ہیں جن کے بارے میں معلومات نہیں مل سکیں۔

    یہ کانفرنس ایک ایسے موقع پر رکھی گئی ہے جب لاپتہ افراد سے متعلق اقوام متحدہ کے ورکنگ گروپ کی تیسویں سالگرہ کی تقریبات ہورہی ہیں۔

    مستی خان کے مطابق جنیوا انسانی حقوق کا دارالحکومت ہے اور یہاں بلوچوں کی گمشدگیوں سے متعلق کانفرنس کا مقصد یہ ہے کہ آئی سی آر سی اور دیگر بین الاقوامی ادارے بلوچوں کی حالت پر توجہ دیں۔

    پاکستان کے وزیر داخلہ رحمٰن ملک نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے ان الزامات کی تردید کی تھی کہ ریاستی ادارے ان ہلاکتوں یا گمشدگیوں کے ذمہ دار ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ سکیورٹی اہلکار شدت پسندوں کے حملوں کے جواب میں دفاعی کارروائی کرتے ہیں اور ان میں ہلاکتیں ہوسکتی ہیں۔

    پاکستان کے چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے بھی پاکستان میں شہریوں کی گمشدگیوں کا معاملہ اٹھایا تھا جس کے بعد حکومتی اداروں نے بعض لوگوں کو ظاہر کیا تاہم اب بھی ہزاروں لوگ لاپتہ ہیں اور حکومتی اداروں کا عدالت میں یہ موقف ہوتا ہے کہ یہ لوگ ان کی تحویل میں نہیں۔

    کانفرنس میں ایمنسٹی انٹرنیشنل کی پاکستان اور افغانستان کے لیے کمپینر مایا پستاکیا اور ایشین فیڈریشن اگینسٹ انوالنٹیئری ڈس اپیئرنسز کی سیکریٹری جنرل میری ایلین بکالسو کے علاوہ امریکہ، برطانیہ اور جنیوا سے متعدد بلوچ کارکنوں اور انسانی حقوق کے نمائندگان نے شرکت کی۔

    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2010/11/101110_baloch_missing_ra.shtml

  • یس ہی اِز سو ٹیلینٹڈ….اسی لئے کہہ رہی ہوں کہ اسے سمجھائیں کہ اپنی رفتار ذرا کم رکھے ،وہ بہت تیزی سے آگے جا رہا ہے ،اور ”وہ“ اس کے ساتھ کچھ بھی کر سکتے ہیں ….‘ آج سے صرف ڈیڑھ دو برس پہلے یہیں شال میں ،لہوری نژاد نوجوان جرمن خاتون صحافی مجھے اپنے اس باصلاحیت صحافی دوست سے متعلق اپنے پرخلوص خدشات سے آگاہ کر رہی تھیں ،اور ٹھیک دو برس بعد ہمیشہ سچ سے خائف رہنے والی سرکار نے بالآخر ملک سراج اکبرکے آن لائن اخبار کی پابندی کی صورت میں اس پر پہلا وار کر ہی دیا۔ پتہ نہیں یہ ذکر کرنا باعثِ دلچسپی ہو گا یا ایک المیہ کہ ’دِی بلوچ حال‘ کا آئیڈیا بھی ہم نے انہی دنوں سرکار ی اداروں کی بے جا مداخلت کے باعث بند ہونے والے بلوچ قومی اخبار روزنامہ آساپ کے اسی آفس میں ڈسکس کیا تھا،جہاں اس روز جرمن صحافی بلوچستان کی صورت حال کے حوالے سے ہمیں ملنے آئی تھیں ۔میں پبلی کیشن کے کام کے حوالے سے آفس چلا جاتا تھا ، سراج کی رہائش بھی قریب ہی تھی ،اس لئے اس نے انہیں وہیں ملاقات کا وقت رکھا۔اور اسی کے انتظار میں ہم اس کے مستقبل پر محوگفتگو تھے۔سراج نے اس خاتون کو اپنی شستہ انگریزی میں اپنے خیالات ریکارڈ کروائے اور میں اپنی ٹوٹی پھوٹی اردو میں گپیں ہانکتا رہا۔’آساپ‘ ان دنوں نیا نیا بند ہو ا تھا۔وقت تھوڑے بہت فرق کے ساتھ سراج بھی میر ی طرح بلوچستان کی صحافت میں آساپ ہی کی نرسری سے نکلا ہوا تھا ،اس لئے ذہنی ہم آہنگی کا کوئی فقدان نہ تھا۔بلکہ وہ میرے بلوچستان آنے سے بھی قبل ،آساپ کے نوجوان و نوموآموز بلوچ لکھاریوں کے اولین بیچ میں سے تھا اور یوں ایک طرح سے میرا ’سینئر ‘ تھا۔لیکن ہم دونوں چونکہ بلوچستان کی اس نئی نسل سے تھے جو اپنی محنت کے بل پر لوئر کلاس سے ہو کر آئی تھی اور رضاکارانہ کمٹ منٹ کے ساتھ اپنے لوگوں سے جڑی ہوئی تھی اس لئے جونیئر ،سینئر کے کسی جھگڑے میں پڑے بنا ہم مل کر اپنے اپنے حصے کا کام کرنے پر یقین رکھتے تھے۔اور یہی وہ وجہ تھی جو ہماری ملاقات کا باعث بنی۔ ’آساپ‘ نے بلوچستان میں قومی فکر سے جڑے ہوئے نئے لکھاریوں کی ایک کھیپ پیدا کردی تھی، آساپ کے بند ہونے باعث وہ ایک بڑے پلیٹ فارم سے محروم ہو چکے تھے اورچونکہ آساپ کی بندش کے دنوں میں ،میں وہاں بطور ایڈیٹر کام کر رہا تھا اس لئے اکثر لکھاری مجھے ہی پوچھتے کہ ’اب کیا کریں گے؟ کوئی سلسلہ شروع کریں‘ تاکہ یہ تسلسل نہ ٹوٹے….‘ ہم دوست اس خواہش میں تھے کہ مل جل کر پبلی کیشن کا کوئی ایسا کام کیا جائے جو بلوچ کیس کے حقیقی موقف کو پیش کر تا ہو اور جو یہ تاثر رکھتا ہو کہ بلوچستان کے نوجوان قلم کار،صحافی بنا کسی پارٹی وابستگی کے ،اپنے عوام اور عوام سے جڑی ہر تحریک کے ساتھ ہیں۔اتفاق سے سراج بھی انہی دنوں ،بلوچ کیس کو ’جانبداری‘ سے پیش کرنے کی پاداش میں اپنے ادارے سے نکالا جا چکا تھا اور بیروزگار تھا۔آساپ کے ویران دفتر میں بیٹھ کر جب ہم نے یہ خیال ڈسکس کیا تو اس نے ایک دم اس کی تائید کی اور کہا کہ ’فوراََ شروع کریں،آپ نے نہ کیا تو میں خو دشروع کر دوں گا۔“ اور حسبِ روایت و حسبِ توقع ہماری سستی کو دیکھتے ہوئے اس نے خود کمر کس لی اور بازی لے گیا۔صرف دو ہفتے بعد اس نے پہلے بلوچ آن لائن انگریزی اخبار ’دی بلوچ حال‘ کی ویب سائیٹ لانچ کر دی۔ ظاہر ہم سب نے اسے مبارکباد ہی دینی تھی….رشک آمیز مبارکباد!اس نے بتایا’ آپ کا پبلی کیشن کا آئیڈیا خاصا دِقت طلب ہے ،سرمایہ چاہئے،ٹیم ورک چاہئے،میں نے یہی خیال ایک دوست کے ساتھ ڈسکس کیا،اس نے کہا باتیں مت بناﺅ یہ بتاﺅ کا م کیا کر سکتے ہو،میں نے کہا میں لکھ سکتا ہوں،اس نے کہا میں اسے دنیا بھر میں بھیج سکتا ہوں،یوں ایک ویب نیوز پیپر کا خیال آیا اور بس ہم نے کام شروع کر دیا،بس اب مجھے آپ دوستوں کا تعاون چاہئے….‘ ہم جو اس کی طرح انگریزی سے نابلد لوگ تھے،بھلا کیا تعاون کر سکتے تھے، مگر اس نے ہمت نہ ہاری۔ایک ایک بلوچ دانشور کے پاس چل کر گیا۔اپنے نوجوان دوستوں کو تو منتیں تک کیں۔اور اگر کسی نے رواداری میں ’گلابی انگریزی‘ میں کچھ لکھ کر بھی دے دیا تو ا س نے بنا کسی حیل و حجت کے ’شکریہ‘ کے ساتھ قبول کیا ،اور نہایت اعلیٰ ایڈیٹنگ (بلکہ ری رائیٹنگ کی محنت ) کے بعد چھا پ بھی دیا۔ اس پراجیکٹ کی مخالفت شروع میں ہی دو بنیادوں پر ہوئی ۔اول‘ وہ خیر خواہ تھے جن کا یہ کہنا تھا کہ بلوچستان میں ایک انگریزی آن لائن اخبار کا کوئی تابناک مستقبل نہیں ہو سکتا ۔ اس کی ٹھوس وجوہات بھی موجود ہیں؛ایک تو یہاں کتنے لوگ ہیں جو بجلی کی نعمت سے بہرہ مند ہوں،ان میں کتنے ہوں گے جو کمپیوٹر کا استعمال جانتے ہوں ، اور ان بھی کتنے ہیں جو انٹر نیٹ کی سہولت سے مستفید ہوتے ہوں،(ان سوالات کا سامنا خود سراج کو بھی کرنا پڑا جب اس نے نوشکی میں ویب سائیٹ لانچنگ کی ایک تقریب منعقد کی)لیکن سراج اپنے موقف میں شروع دن سے واضح تھا کہ اس کی اصل رسائی بین الاقوامی مارکیٹ تھی،کہ بلوچستان کے حالات سے ،بلوچستان کے عوام تو ویسے ہی واقف ہیں ،اصل میں بتانا اور دکھانا انہیں ہیں ،جنہیں یہ حالات کوئی اور (اِس طرح سے) نہیں دکھاتا ، اس لئے ویور شپ کا تو کوئی مسئلہ نہ تھا ،ساتھ ہی ساتھ یہ بلوچ نوجوان لکھاریوں کے لئے ’آساپ‘ ہی کی طرح ایک فورم ثابت ہو سکتا تھا(اور ہو ابھی) ایک بین الاقوامی فورم،جس کی شدید ضرورت بھی تھی۔اوردوسری طرف وہ لوگ تھے ،جو اس نوجوان کی اٹھان سے ہی خائف تھے،اسے آپ پیشہ ورانہ رقابت بھی کہہ سکتے ہیں ۔جو اس کے نام (بلوچ حال)پہ ہی ناک بھوں چڑھاتے تھے کہ یہ ایک اور ’آساپ‘ ثابت ہو گا اور اس کا انجام بھی اس سے کچھ مختلف نہ ہو گا!اس نوجوان نے لیکن کسی مخالفت کو خاطر میں لائے بغیر محض ایک برس کے قلیل عرصے میں اسے واقعتا ’بلوچ حال‘ کا عملی نمونہ بنا کر پیش کیا۔ یہ جو ’بلوچ حال‘ کی ترکیب ہے اس کا عام سا ترجمہ تو ’بلوچ نیوز‘ بنتا ہے لیکن بلوچ پس منظر سے آگاہی رکھنے والے لوگ ہی اس کے اصل حسن کالطف لے سکتے ہیں۔بلوچی میں ’حال‘ آج کل کا روزمرہ والامحض ”اور سناﺅ“ والا حال احوال نہیں ہے ، یہ ایک پوری داستان کا متقاضی ہے۔ ایک دوسرے سے ملنے والے دو بلوچ جب ایک دوسرے سے کہیں ’حال آ دئے‘ تو سمجھیں پی ٹی وی کا کمرشل بریک شروع ہو گیا ۔یہ حال عین وہاں سے شروع ہو گا ،جہاں سے ملنے والے آخری بار ملے تھے (یہ ایک دن پہلے بھی ہو سکتا ہے،ایک ہفتہ پہلے بھی، ایک سال پہلے بھی!)اور اس کا اختتام اس حالیہ ملاقات پر ہو گا۔اس دوران حال لینے والا،حال دینے والے کو ’جی تھرا‘ کا لقمہ دیتا رہے گا….شاید دو بلوچوں کے ایسے ہی کسی ’حال حوال ‘کے درمیان سینڈوچ بننے والے کسی ستم ظریف نے یہ لطیفہ گھڑ دیا کہ کسی انجینئر نے یہ دعویٰ کر دیا کہ اس نے ایک ایسا کمپیوٹر ایجاد کر لیا ہے جو دنیا کے ہر سوال کا جواب منٹوں میں پرنٹ کر کے دے دیتا ہے۔لوگوں نے تجربہ کر کے دیکھا ،بہت کامیاب رہا۔ایسے میں ایک بلوچ چرواہا بھی ذرا تجربہ کرنے آ پہنچا ۔باری آنے پہ اس نے کمپیوٹر صاحب سے خدا جانے ایسا کیا کہہ دیا کہ جواب میں بولتے بولتے کمپیوٹر کا پرنٹر جواب دے گیا اور بالآخر کمپیوٹر ہی ہینگ ہو گیا ۔انتظامیہ پریشان حال؛ بلوچ ماما کی منتیں کیں کہ صرف اتنا بتا دے آخر ایسا کیا پوچھ لیا تھا کہ دنیا بھر کو لاجواب کرنے والا کمپیوٹر بھی ’لاجواب‘ ہو گیا ۔بلوچ ماما اپنی سادگی اور معصومیت سے بولا؛”میں نے تو صرف اتنا کہا تھا؛حالا دَئے!“ بہرحال‘سراج اکبر نے ’بلوچ حال‘ کواس روایتی بلوچی حال کا جدید عکس بنا دیا ۔بلوچستان سے لے کر ،ہلمند تک اور ایران سے لے کر سات سمندر پار تک،بلوچ سے متعلق کوئی ایشو ،کوئی خبر ’بلوچ حال‘کے ذریعے دنیا بھر کے بلوچوں اور بلوچ دوستوں تک پل بھر میں پہنچ جاتی ۔اور ہم بھی پڑھتے ہوئے اسے ’جی تھرا‘ کا لقمہ دینا کبھی نہ بھولے۔ صاحبِ اسلوب اور بلوچ دوست صحافی، وسعت اللہ خان نے ایک بار اپنے کسی کالم میں ایک پُرخلوص تنقیدی جملہ لکھا تھا کہ ’جس دن بلوچ نوجوان رات کو دیر سے سونے اور صبح دیر سے اٹھنے کی روایت سے بغاوت کریں گے ،تبدیلی کا آغاز اسی دن سے ہوگا!‘ بلوچ نوجوانوں کی سستی پر یہ نہایت برمحل و بامعنی تنقید تھی ۔وسعت اللہ خان اگر آج کے ملک سراج اکبر سے مل لیتے تو شایدوہ اس تبدیلی کے آغاز کی پیش گوئی بھی کر دیتے۔وہ بلاشبہ ہمہ وقت چست ،بیدار اور کام کے لئے تیار رہنے والا نوجوان ہے۔اس نے اس روایت کو بھی خام ثابت کر دکھایا کہ شادی کے بعد نوجوان کسی تخلیقی کام کے اہل نہیں رہتے،یا اس میں دلچسپی نہیں لیتے۔’بلوچ حال‘ کے آغاز کے چند ہی ماہ بعد اس نے اپنی ایک کزن سے شادی کی ۔ اور پنجگور کی یہ بلوچ لڑکی ،اپنے شریکِ حیات کی حقیقی معنوں میں ’ہم۔سفر‘ ثابت ہوئی۔’بلوچ حال ‘ کے ہمہ وقت مصروف کام سے لے کر ،شادی کے چند ہی ماہ بعد اس کی امریکن اسکالر شپ ہونے تک،وہ کہیں بھی اس کے لئے روایتی بیویوں کی طرح رکاوٹ بننے کی بجائے اس کی ڈھال بنی ۔اس لئے یہ کہنا بے جا نہ ہو گا کہ اِس کامیاب نوجوان کے پیچھے ایک مضبوط لڑکی کا ہاتھ ہے! سراج کی ایک اور بڑی خوبی یہ ہے کہ وہ محض تنخواہ کے لئے کام کرنے والا روایتی صحافی نہیں ، نہ وہ محض خبر کو کاغذ پہ اتارنے والی منشی گیری کرتا ہے ۔ وہ خبر کو پوری سچائی کے ساتھ پرکھنے والی بصارت اور اسی سچائی کے ساتھ اسے پیش کرنے کی جرات بھی رکھتا ہے ۔اور پاکستان کی اسٹیبلشمنٹ تو ازل سے سچ کی دشمن رہی ہے۔وہ صرف اسی کو سچ مانتے ہیں جو ان کی نظر میں سچ ہے ۔ اسی لئے کچھ ہی عرصہ پہلے جب اس نے اپنے ایک ایڈیٹوریل میں بلوچستان حکومت پہ تنقید کرتے ہوئے لکھا کہ ’ اگر حکومت امن و امان کے مسئلے پر قابو نہیں پا سکتی تو اسے مستعفی ہوکر عوام کے پاس واپس لوٹ جانا چاہئے‘ (یاد رہے کہ صوبائی وزیراعلیٰ اسلم رئیسانی نے ابتدائی دنوں میں ہی یہ کہا تھا کہ دو برس میں مسائل حل نہ کر سکے تو استعفیٰ دے کر اپنے عوام کے پاس چلے جائیں گے) اس ایک ایڈیٹوریل پہ صوبائی حکومت کے ترجمان اس قدر برافروختہ ہوئے کہ ایڈیٹر کے لتے لیتے ہوئے حکومت کی ڈھائی سالہ کارکردگی کی لمبی چوڑی لسٹ پیش کردی۔لیکن ’بلوچ حال‘ کے قارئین جانتے ہیں کہ اصل مسئلہ یہ ایڈیٹوریل نہیں بلکہ سراج کا پروفائیل نما وہ مضمون تھا جو اس نے اسلم رئیسانی سے متعلق کچھ دن پہلے لکھا تھا ،جس میں اس نے اسلم رئیسانی کے ساتھ وابستہ ان تمام بیانات کا پس منظر کھل کے بیان کیا تھا جو آج بھی عوامی حلقوں میں لطائف کے طور پر مشہور ہیں (ڈگری ،ڈگری ہوتی ہے…. تم سب مردہ باد….بمبو کری دیں گے،وغیرہ) اسی مضمون میں اس نے نہایت بے باکی اور جرات سے پہلی بار ’بمبو‘ کی مخصوص اصطلاح کا پس منظر بھی بتایا جو اگر یہاں لکھ دیا جائے تو سینسر کی نظر ہو جائے ۔ واضح رہے کہ محض اپنی صلاحیتوں کے بل بوتے پر وہ اس وقت امریکہ میں جرنلزم کی ایک اسکالر شپ حاصل کرنے والا ،بلوچستان کا پہلا کم عمر ترین صحافی بن چکا ہے ۔ اور یہ اعزاز بھی اس کے لئے وبالِ جان بنا ہوا ہے ۔ یہ عین ممکن ہے کہ اس پر یہ لنکا گھر کے کسی بھیدی نے ہی ڈھائی ہو ۔ورنہ ’بلوچ حال ‘نے ایسا کچھ نیا پیش نہیں کیا جو کہیں اور پیش نہ ہو رہا ہو ،اس لئے سراج نے اپنے ایڈیٹوریل میں بجا لکھا کہ ؛” اگر حکومت پر تنقید ریاست کی مخالفت کے زمرے میں آتا ہے تو سرکار کو ان تمام ملکی کالم نگاروں کوبین کر دینا چاہئے جو آئے روز ان پر ’پاکستان کو عملاََ امریکی کالونی‘ بنا دینے کا الزام عائد کرتے رہتے ہیں ، بلوچ حال نے ہمیشہ خبر کو مکمل سچائی کے ساتھ پیش کرنے کی روایت پر عمل کیا ہے اور حکومتی خبروں کو بھی وہی جگہ دی ہے جو حکومت پر تنقید کرنے والوں کی خبر کو ملی ہے۔‘ اپنے اس اداریے میں اس نے خود کولبرل اور پروگریسو کہا ہے ۔اور یہیں آ کر یہ بلوچ نوجوان غلط فہمی کا شکار ہواہے ۔بلوچ کا پروگریسو ہونا تو سمجھ میں آتا ہے لیکن لبرل کہنا شاید چند ماہ کی امریکی سماج کی تربیت کا اثر ہے ۔وہ شاید یہ بھول گیاہے کہ لبرل، غیر جانبدارہوتاہے ،وہ ظالم اور مظلوم دونوں کے حقوق کی بات کرتا ہے ، وہ سچ کی بجائے ’حالات‘ کا ساتھ دیتا ہے ۔ اور سراج کا تعلق اس قبیلے سے ہے جو یہ یقین رکھتے ہیں کہ سچائی کبھی غیر جانبدار نہیں ہوتی ۔خفیہ اداروں کے ہاتھوں اغواءہونے اور پھر مسخ شدہ لاشوں کی صورت میں واپس ہونے والے کارکنوں کی تصویریں پوری دنیاکو دکھانا ،غیر جانبداری نہیں ….سچ کی جانبداری ہے …. یہ منصور و سقراط کا رستہ ہے ….ان کی تقلید کرنے والوں کو ان کا انجام بھی یاد رکھنا چاہئے! سراج جس را ہ کا مسافر تھا ،اس کے ساتھ یہ ہونا کوئی انہونی نہیں ۔ہم آساپ کی صورت میں اس کا تجربہ کر چکے ہیں ….جب ’آساپ‘ کا گلہ گھونٹا گیا تو کوئی اس کے پاس نہ پھٹکا ،آج میڈیا کی آزادی کے دعویداروں کے ہاتھوں ،بلوچ کے ایک اور پلیٹ فارم کا قتل عام کیا جا رہا ہے ،اور ایک گھنٹے کے لئے کیبل آپریٹرز کے ہاتھوں بند ہونے پر آسمان سر پہ اٹھانے والے میڈیاکو یوں سانپ سونگھا ہوا ہے ،جیسے اس کے علم میں ہی کچھ نہ ہو۔لیکن وہ بھول رہے ہیں کہ یہ ’70sکا دور نہیں ہے‘ کہ کسی اخبار ،رسالے کو زندہ درگور کر دیا اورکسی کو کانوں کان خبر نہ ہوگی ….یہ مواصلات کا دور ہے ،انٹرنیٹ کا زمانہ ہے، فیس بک کی حکمرانی ہے ،اب بات نکلے گی تو دُور تلک جائے گی۔یہ کسی بلوچ بیوروکریٹ کا اخبار نہیں ، کہ جونیئر سینئر کے چکر میں کوئی اس کا واویلہ کرنے کی بجائے مٹھائیاں بانٹے گا، یہ بلوچستان کی نئی نسل کا پلیٹ فارم ہے ۔ وہ نئی نسل جس کے غصے اور جذبات سے یہ لوگ اتنے ہی واقف ہیں ،جتنے اس کی صلاحیتوں سے ….یہ پابندی ایک فرد پر ،ایک ادارے پر نہیں، بلوچستان کی نئی نسل کے آزادانہ سوچنے،پڑھنے،لکھنے اور بولنے پر پابندی ہے ۔اس کے خلاف احتجاج ،سوچنے،پڑھنے،لکھنے اور بولنے والے ہر بلوچ نوجوان کا حق ہی نہیں ،فرض بھی ہے۔ آئیے‘اپنا اپنا فرض ادا کریں ….کہ قومی فرائض کی ادائیگی میں ہماری نسل پہلے ہی بہت کوتاہیوں کا شکار ہو چکی ہے!

  • Not alll Nashville roofing contractors are transparent with
    their fees annd services; they will provide you with a very low estimate initially, and then add additional fees towards the end
    of the jobb for extra supplies or additional services.
    From the 80s this trend had gathered mass popularity and since then its popularity
    hhas increased. If you ever work with an Oxford architecture company then it is worth asking too see their
    certificates and make sure they aare legitimate.

    Here iis my weblog; Deer Park Roofing

  • In comparison to investing in a home, houses for rent in Cincinnati or Dayton will not require more loan applications.
    Thhe Roofing Contractors Cincinnati companies offer most affordable, especially developed and exclusive customer
    support to help their customers in sorting out any roofing problem they
    might have. Natural Stone India is remarkable in loks and strength.

    Feel free to surf to my webpage: Greater Cincinnati Roofing

  • The other day, while I was at work, my sister stole my iphone and tested
    to see if it can survive a 25 foot drop, just so she can be a
    youtube sensation. My apple ipad is now broken and she has 83 views.
    I know this is completely off topic but I had to share it with someone!

  • Howdy! I know this is kind of off topic but I was wondering which blog
    platform are you using for this website?

    I’m getting tired of WordPress because I’ve had issues with hackers and I’m looking at options for another platform.

    I would be awesome if you could point me in the direction of a good platform.

    Feel free to visit my page wejdz

  • It is appropriate time to make some plans for the future and it’s time to be happy.Hermes Birkin Outlet[url=http://nesbitre.com/hermesbirkin.asp]Hermes Birkin Bag[/url]Hermes Birkin Outlet[url=http://www.crests.com/hermesoutlet.asp]Hermes Outlet Store[/url]Hermes Handbags Outlet[url=http://www.hermesbirkinhandbagoutlet.com]Hermes Birkin Outlet[/url]Hermes Outlet Store[url=http://www.lenfestonline.com]Hermes Bags Outlet[/url]Ray Ban Sunglasses Discount[url=http://www.raybansunglasses.org]Ray Ban Store[/url]Ray Ban Sunglasses Outlet[url=http://www.ascelliance-retraite.com]Ray Ban Outlet[/url]Tiffany and Co Jewelry[url=http://www.jksorenson.com]Tiffany Outlet[/url]Borse Hermes Prezzo[url=http://www.comune.lanciano.chieti.it/borsehermesoutlet.asp]Borse Hermes Outlet[/url]
    Borse Hermes Birkin http://www.comune.lanciano.chieti.it/borsehermesoutlet.asp

  • I don’t even understand how I finished up here, however I
    assumed this publish was good. I don’t recognise who
    you’re but certainly you are going to a well-known blogger should you are not already.
    Cheers!

  • Greetings! This is my 1st comment here so I just wanted
    to give a quick shout out and say I really enjoy reading your blog posts.

    Can you recommend any other blogs/websites/forums that go
    over the same subjects? Thanks a lot!

  • Its like you read my mind! You appear to know so much about
    this, like you wrote the book in it or something. I
    think that you can do with some pics to drive the message home a little bit,
    but other than that, this is magnificent blog.
    A great read. I’ll certainly be back.

  • Just want to say your article is as surprising. The clearness
    in your post is just nice and i could assume you are an expert on this subject.

    Well with your permission allow me to grab your feed to keep updated with forthcoming post.

    Thanks a million and please keep up the gratifying work.

    Feel free to visit my web blog :: buy arimidex (Mohammed)

  • No doubt he’ll be picturing your display in his mind as he listens to and appreciates a wonderful piece of music. Thank you for taking the time and making the effort to bring this wonderful bit of Christmas cheer into our world.

  • ロレックス デイトナコピー時計:http://www.canot-kayak.qc.ca/rolexwatch.html
    フランクミュラーコピー時計:http://www.iconsinmed.org/cir/franckmullerwatch.html
    オメガ偽物時計:http://oiltechinvest.com/omegawatch.html

  • Awesome website, just lately been scouting forever for ideas on the
    very best rattan furniture pieces for our home and in our garden. This site really helpedgreat blog some great info here

    Also visit my weblog … prestige rattan sofa (Milagros)

  • Hi! I know this is kind of off topic but I was wondering which blog platform are you using for this site?
    I’m getting sick and tired of WordPress because I’ve had issues with hackers and
    I’m looking at options for another platform. I would be great if you could point
    me in the direction of a good platform.

  • Many people are advocating the usefulness of coupons. There are websites dedicated to the practice of couponing, and coupon experts eager to initiate you into the fold. Like anything that’s worth doing, though, getting the most out coupons requires a little bit of planning and work. This article will assist you if you wish to save money with coupons.
    Coach Factory Outlet

  • remarquablement, le message trГЁs amusant
    [url=http://japaneze.modelkot.com/search.php?search=freex+chicas+sexo+con+caballos&action=search]mishasn [/url]