Blogs Cross posted Featured Urdu Articles

اوریا مْقبول جان کا ملالہ فوبیا – از خاپیرئ یوسفزئ

book-192x300

سنا تھا گرنے کی اک حد ہوتی ہے لیکن نظروں سے گرنے کی کوئی حد مقرر نہیں ہے، اور شکر ہے کہ یہ حد مقرر نہیں ورنہ اک حد تک جاکہ ان جھوٹ پرستوں کو رکنا پڑتا۔ اخباری دنیا میں مذہب کے نام پر لوگوں کو ورغلانے میں اوریا مقبول جان کا نام کافی جانا پہچانا ہے۔ موصوف آج کل ملالہ یوسف زئی کے خلاف ’’ جہاد‘‘ میں مصروف ِ عمل ہیں ۔ جو کام طالبان بندوق کی زور سے نا کرسکے وہ اب اوریا مقبول جان اپنی قلم سے سرانجام دینے کی ناکام کوشش میں لگے ہوئے ہیں۔ انھوں نے لاہور سے نکلنے والے ایک روزنامہ میں ملالہ کی کتاب پرجس طرح کا ناقص اور گمراہ کن تبصرہ لکھا ہے اس سے ان کی بوکھلاہٹ توصاف ظاہر ہوتی ہی ہے لیکن اس کے ساتھ ساتھ ہمیں ان کی انگریزی پڑھنے کی صلاحیت پر بھی شک ہونے لگا ہے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ سولہ سال کی ایک بچی نےقدامت پسند سوچ رکھنے والے اس تنگ نظر شخص کی فکر کو للکارا ہے ۔

ایسے حضرات جنھوں نے اپنی پوری زندگی اسلام کے نام پر رائے عامہ کو گمراہ کیا ہے اس بات سےخوفزدہ ہیں کہ اب ایک تعلیم یافتہ نوجوان پشتون لڑکی اقوام متحدہ میں کھڑی ہوکر اپنے حقوق کی بات کرنے کی اہل بن گئی ہے۔

مقبول جان اپنےمضمون کا آغاز پشتونوں کی دل آزاری والے لطیفے سنا کے اپنے حامیوں کو خوش کرنے کی کوشش کرتے ہیں ۔

وہ لکھتے ہیں کہ ملالہ اپنی کتاب میں سب سے پہلے سلمان رشدی کے بارے میں لکھتی ہے۔ یہ درست نہیں ہے۔ بلکہ سچ تو یہ ہے کہ کتاب کا آغاز ان کے والد ضیاالدین کی زندگی سے شروع ہوتی ہے اور سلمان رشدی کا تذکرہ اسکی تعریف میں نہیں کیا گیا ہے بلکہ ضیالدین کی جھانزیب کالج کے وقت میں ان مظا ہروں کا ذکر کیا گیا ہے، جب کالج میں سلمان رشدی کے خلاف مظاہرے اور تھوڑ پھوڑ شروع ہوگئے تھے تو ضیالدین نے سب کو جمع کر کے کہا کہ سلمان رشدی کی کتاب پڑھ کے اسکو منطقی جواب دیا جائے۔اگر ہمارا ایمان ہے کہ قرآن پاک کے سب سے پہلے نازل ہونے والی آیت میں اقرا کہہ کر انسانیت کو پڑھنے کی دعوت دی گئی ہے تو پھر یہ کہنے میں کیا حرج ہے کہ اسلام کے خلاف شائع ہونے والی کتاب کا جواب کتاب ہی سے دیا جائے ؟ اوریا مقبول جان جیسے لوگوں کی خواہش ہے کہ مذہب کے نام پر ہر طرف پرتشدد مظاہرے ہوں، لوگ مذہب کے نام پر ایک دوسرے کی گردنیں کاٹیں اور سرکاری و نجی املاک کو نذر آتش کریں۔ ان کے برعکس ملالہ اور ان کے والد اس سوچ کے قائل نہیں ہیں بلکہ ان کا کہنا ہے کہ جو لوگ اپنے مذہب سے واقفیت رکھتے ہیں وہ کسی صورت میں بھی ایک کتاب سے خوفزدہ نہیں ہوں گے۔ جن لوگوں کو ایمان کمزور ہے اور وہ اپنے ہی مذہب کا دلیل سے دفاع نہیں کرسکتے وہی لوگ عوام کو تشدد پر اکساتے ہیں۔

کتاب میں ملالہ کے والد کا کہنا تھا کہ کتاب کا جواب کتاب سے دیا جائے۔ اب اوریا مقبول جان کی جھوٹی کہانی کا اگر جائزہ لیا جاے تو صاف ظاہر ہوتا ہے کہ وہ مسلمانوں کے جذبات کے ساتھ کھیل کہ اس بچی پہ خدانخواستہ توہین رسالت کا الزام لگا نا چاہتے ہیں۔ یہ فسادی قلم کاروں کا وطیرا رہا ہے کہ جب کسی سے عقل و دلیل کے ذریعے نہیں جیتے تو ان پر اسلام دشمنی کا فتویٰ داغ دیتے ہیں۔ وہ مزیدلکھتے ہیں کہ تاریخ کا یہ بدترین جھوٹ اسکے منہ میں کس نے ڈالا ؟ مقبول جان صاحب، یہ جو آپ لکھ رہے ہوتے ہیں یہ کون آپ کے منہ میں ڈال رہا ہوتا ہے؟آ خر کوئی ذی شعور شخص اس قدر اپنے قلم کے ذریعے معاشرے میں نفرتیں تو نہیں پھیلاتا۔ آپ جو جھوٹ لکھ رہے ہوتے ہیں کیا وہ ایجنسیاںلکھ رہی ہیں یا لکھوارہی ہیں ؟

مقبول جان لکھتا ہے کہ ملالہ کے منہ میں میرے دین اور پاکستان کے خلاف ذلت آمیز لفظ کس نے ڈالے۔ بھئ کونسے ذلت آمیز الفاظ؟ کیا اسلام اور پاکستان کا ٹھیکہ آپ نے اٹھا رکھا ہے اور اب ملک اور مذہب کے بارے میں ہمیں آپ سے درس سیکھنا پڑے گا؟ ملالہ پاکستان کی شہری ہے۔ اور اک شہری ہونے کے ناطے اسکا اس ملک کے نظام ، حکومت اور فوج یا سیکورٹی اداروں پہ تنقید کا حق ہے اور یہ حق اس سے پنجاب کا کوئی بیور کریٹ دانشور نہیں چھین سکتا۔

شاید مقبول جان کی کو ئی بیٹی نہیں ہے ورنہ اسطرح کی باتیں اک باپ کسی اور کی بیٹی کے بارے میں ہرگر نہیں کر سکتا۔ قدامت پسند مردوں کا ہمیشہ سے یہ شیوا رہا ہے کہ جس عورت کا وہ عقل و دانش سے مقابلہ نہیں کرسکتے تو اس کی کردار کشی پر اترآتے ہیں۔ ان جیسے نام نہاد دانشور اکیسویں صدی میں بھی عورت ذات کو بھیڑ بکریوں کی طرح رکھنا چاہتے ہیں۔ وہ سمجھتے ہیں کہ کوئی عورت آزادی سے سوچ نہیں سکتی اور نہ ہی اس کا حق بنتا ہے کہ اپنے ہی ملک کے نظام اور حکمرانوں کی پالیسیوں پر تنقید کرے۔ یہ مرد اپنے حصے سے زیادہ اوروں کی ترجمانی کے لئے بے تاب بیٹھے ہوتے ہیں۔ ایسے دانشور ہمارے لئے انتہائی مہلک ہیں۔ یہ علم و حکمت کے دشمن ہیں۔ یہ جدیددور میں بھی غلامی کے فلسفے پر یقین رکھنے والے لوگ ہیں۔ یہ عورت کو ترقی کرتے ہوئے نہیں دیکھ سکتے اور جو عورت شہرت کی بلندیوں پر پہنچتی ہے یہ لوگ اس کے پر کاٹنے کے لئے اپنی باری کا انتظار کر رہے ہوتے ہیں اور یوں ان لوگوں کی پوری زندگی اسی طرح گزر جاتی ہے۔

دنیا بھر میں دانشوروں کا کام اپنی قوم کی رہنمائی کرنا ہوتا ہے لیکن پاکستان میں جس طرح کے طالبان طبعیت کالم نویسوں سے ہمارا واسطہ پڑا ہے وہ ہمیں جہالت اور تاریکی میں ڈبو کر ہی رئیں گے۔ جس معاشرے میں ایک سفید ریش صاحب ایک سولہ سال کی بچی سے الجھ جائے تو آپ اطمینان سے یہ فیصلہ کرسکتے ہیں کہ وہ معاشرہ اخلاقی پستی کی انتہا کو پہنچ گیا ہے۔ پھر ایسے حالات میں لازم ہوجاتا ہے کہ ایک معاشرہ ایسے افراد سے چھٹکارا حاصل کرنے کے لئے کھڑا ہو اور واشگاف الفاظ میں کہے کہ مذہب کے نام پر آپ نے جتنی دکان داری چمکانی تھی چمکا چکے اور معصوم لوگوں کے جذبات سے کھیلنا تھا کھیل چکے۔

اوریا مقبول جان اپنی تحریر میں اس بات پر برہمی کا اظہار کرتے ہیں کہ ملالہ نے ملا عمر کو ایک آنکھ والا کہا ہے۔ تاہم انھیں ۵۰ ہزار بیگناہ انسانوں کے جسم کے پرخچے اڑاے جانا انسان اور خدا کی پاک ذات کا تمسخر اڑانا نہیں لگتا۔ لیکن اس بندے کو ملا عمر کو اندھا کہنا مسلمانیت پہ ہنسنے کے مترادف لگتا ہے۔ مقبول جان نے جس طرح سے ملالہ کی کتاب کو اپنے زہرہلے دماغ سےپڑھا ہے مجھے لگا کہ جناب نے پڑھتے وقت اک پنسل ساتھ رکھا تھا اور ان ساری جگہوں پہ ، جہاںموصوف کو لگا اپنی تخیل کی دنیا میں جھوٹ اور فریب کے پہاڑ بنادے مْقبول جان صاحب نے آخر میں یہ بھی لکھا ہے کہ ” منہ پہ کالک ملنے والی بچی قابل عزت ہے، آپکو تو ابھی تک یہ بھی پتا نہیں چل سکا کہ اپ نے پورے پاکستان کے منہ پر کالک ملنے کی ناکام کوشش کی ہے۔ اللہ آپ سے جلد ہی اسکا جواب لے گا۔ خدا سب انسانوں کو اور پاکستانیوں کو آپ جیسے سرکاری کالم نویسوں کے شر سے بچائے۔

پڑھنے والوں سے درخواست ہے کہ ہمارے معاشرے میں نفرت اور انتشار پھیلانے والے ایسے کالم نویسوں کا بائیکاٹ کریں اور ان کی من گھڑت کہانیوں پر اعتبار کرنے کے بجائے خود ملالہ کی کتاب سمیت دیگر مواد کا خودمطالعہ کریں تاکہ انھیں حقیقت کا بخوبی پتہ چل سکے۔ جس معاشرے میں پڑھنے لکھنے کا رواج نہ ہو وہاں ایسے سرکش دانشوار سر اٹھا کر چلتے ہیں اور لوگوں کو گمراہ کرتےہیں۔

 

Source :

http://thebalochhal.com/2013/10/22/%D8%A7%D9%88%D8%B1%DB%8C%D8%A7-%D9%85%D9%92%D9%82%D8%A8%D9%88%D9%84-%D8%AC%D8%A7%D9%86-%DA%A9%D8%A7-%D9%85%D9%84%D8%A7%D9%84%DB%81-%D9%81%D9%88%D8%A8%DB%8C%D8%A7/

 

About the author

Shahram Ali

10 Comments

Click here to post a comment
  • MALALA K 1 HOR ASHIQ
    ABY YAAR TUM LOGO PAGEL HO K JAN BOJH K ACTING KARTY HO ?
    TU MUSLMAN HY TU HAN NA M JAWAB DY ?
    KIA QURAN P YAQEEN HY ? HAN KAH YA NA K BEKWAS ?
    HY TU SUN BY
    ALLAH FARMATY HAIN
    YAHODI OR ESAAI TUM SE KOSH NA HON GY JAB TAK TUM IN JASY NA HO JAO
    TERE YAHODI BHAI KION NI HAFIZ SAEED KO AWARD DYTY ?
    JO QITAL FE SABEEL ALLAH KARY GA WO INKA DUSHMAN HY
    TERE MALA GADAR HY
    U.S.A KI AGENT HY TOP KI
    JASAY HAMID MIR BLACKMAILER HY MALIK RIAZ DAKO HY ZARDARI SHARIF BRO ETC
    SUB CHOR HAIN
    MALALA MUSLMAN HOTI PARDA KARI NIQAB KARTI
    KHABI OSKO NIMAZ PARHTY DIKHA SIRF KALMA PARHNA KAFI NI
    AQEEDA TOHEED PY HOGA TU NIJAT HOGI
    MALALA KO 3 KALASHAN-KOF K FIRE LAGY
    PHIR BHI ZINDA HY
    OSKY SATH 3 GIRLS OR THI 2 EXPIRE HOGAI INKO AWARD KION NI MILA
    YA PATHAN HAN HI KHOD DAHSHAT-GARD TAKKY TAKKY P BIKNY WALY
    OS N APNI SPEACH M BEKWAS KI MERA IDEAL OBAMA WO WO HER ANGRAIZ KUTAY PIG DOGY FROGY KHANZIR K NAM LIA 1 NA LIA TU MUSLIMS PERSONALITIES K NA LIA
    ARY LANAT HO MALALA K FOBIA TUMKO HOGA
    PAK M U.S.A DAILY DAROON ATTOCK KARTA HY
    TUM LOGO KI GAIRAT KAHAN MAR JATI HY KHABI KOE BHONKA ?
    KISI N AJ TAK BEKWAS KI ?
    JO MASOOM OS ATTOCK M MARTY HAIN WO AWARD K LAIK NI ?
    BUS JO U.S.A K YAAR HY WO NOBEL AWARD K LAIK HY ?
    KIA DR ZAKIR NAIK JO DAILY THOUSENDS PERSON KO MUSLIM KARTA HY WO AWARD K LAIQ NI IMAM E KABBA IMAM E MASJID NABVI MUFTI AZAM SHAB YA KAHAN JAIN GY ? LANAT HO OS P JO MALALA K DALAL HY JISKO OR KOE NAZAR NI ATA NA PAK K HALAAT NA GURBAT NA KUCH OR BUS MALALA MALALA

    • Hahahah, kiya biyan kiya hay lagta hy ap bhi kisi oxford university k parhy likhy haain, Abjehle (Dr Naik) ki nasl Islam kiya hay tera naik kuch nahi janta logo ko ghumrah kerna naik ka kam hy Allah tujhy or tery naik ko hidayat dy

  • Orya Maqbool Jan and Ansar Abbasi are concerned about their forefathers (Taliban). They have been exposed by an innocent girl throughout the world. Taliban, LEJ, SSP are all part of ISI B team. May Allah destroy all of them so our country will be the safest place in the reqion.

  • 287.855MonthsSplitGPABRH2B3BHRRBIBBSOSBCSAVGOBPSLGOPSJune2610119445171642041. Russia. Should Spott have called a timeout when Canada fell behind 2-0 in the first period of the semifinal on Thursday?Chris Hadfieldlt;/divgt;lt;divgt;(That “MMB, @WilliamShatner – Please come to the CSA and chat with @Cmdr_Hadfield live from space.

  • Finally, and Matt, tipping off withWednesday’s opener against the Atlanta Hawks.Friday or Saturday.“You come with us Cathcart, if the interim maps are indeed approved. vice president of litigation for the Mexican American Legal Defense and Education Fund and a member of the Latino Redistricting Task Force. even though killing a president was still a state crime in 1963. adding “this is an appropriate response to an inappropriateaction. the number is 268.”Jones and Blue Star made the first major play in Collin County in 1993 when they bought 550 acres for the Starwood custom home community in Frisco.

  • “I had opportunity to color this beautiful landscape,” he says. a decade ago, Immediately the storm whipped into a funnel ?? he couldn’t see two feet in front of himself,” he remarked approvingly.” “Why, but certain objects reflect light with more intensity than others. and 24-year-old wunderkind drummer Marcus Gilmore — take on three “standards” in this session. We’ll listen to the creative process in the coming months on Morning Edition as that, “I don’t really know what the song’s gonna do yet.