Featured Original Articles Urdu Articles

عمران خان کی طالبان کودفتر کھولنے کی پیشکش پرکامران شفیع کا تبصرہ

ks

معروف تجزیہ کار کامران شفیع نےکہا کہ عمران خان ان دہشت گردوں سے مذاکرات کی بات کررہے ہیں جنہوں نے پاک فوج کے بارہ جوانوں کے گلے کاٹے، جنرل ثنااللہ کو شہید کیا، لاہوراور کراچی میں دھماکے کیے کوئٹہ میں شیعوں کو قتل کیا گلگت اور زیارت پر جانے والے زائرین کو شناختی کارڈ اور ماتم کے نشان دیکھ کر قتل کیا چار اہلسنت نے یہ سب دیکھ کر منع کیا تو طالبان اور لشکر جھنگوی کے تکفیری دہشت گردوں نے انھیں بھی قتل کردیا۔

کامران شفیع کا کہنا تھا کہ طالبان دہشتگردوں نے گلگت میں بیگناہوں کو بسوں سے اتار کر ان کی پیٹھ پر ماتم کے نشان دیکھ کر ان کوشہید کیا – یہی تکفیری خارجی لوگ سنی، احمدی، مسیحی وغیرہ کو قتل کر رہے ہیں – کامران شفیع نے کہا کہ وقت آ گیا ہے کہ پاکستانی فوج جہادی دیوبندی اور وہابی دھشت گردوں کے بارے میں تذبذب کی کیفیت سے باہر نکلے اور پاکستانی فوج اور عوام پر چھپ یر حملہ کرنے والے دہشت گردوں کی سر کوبی کرے – کامران شفیع نے طالبان کو دفتر کھولنے کا مشورہ دینے پر عمران خان پر شدید تنقید کی

پروگرام میں موجود دیوبندی کالم نویس انصار عباسی نے طالبان اور لشکر جھنگوی کی کھلی حمایت کی اور ان کو معصوم شہید قرار دیا – یاد رہے کہ جنگ گروپ میں کام کرنے والے کچھ دوغلے صحافی طالبان اور سپاہ صحابہ کے لئے پاکستانی فوج کی سرپرستی پر خاموش رہتے ہیں جن میں انصار عباسی، نجم سیٹھی، حامد میر وغیرہ شامل ہیں

About the author

SK

2 Comments

Click here to post a comment
  • پاک فوج کے جرائم کی داستان کامران شفیع صاحب کے بیان کردہ طالبان کے جرائم سے کہیں زیادہ ہے۔
    دراصل جنگ کے حامی اور امریکہ سے مفادادات وابستہ کئے ہوئے دانشوروں ایک ہی لاٹھی سے سب کو پانکنے ہیں۔ وگرنہ شیعوں پر حملوں میں طالبان نہیں امریکہ کی تیار کردہ جنداللہ ملوث رہی ہے یا اسکے جنداللہ کے اشتراک سے کام کرنے والی لشکر جھنگوی ۔