Featured Original Articles Urdu Articles

Peshawar church attack: PTI chairman Imran Khan tastes a rare spurt of anger amid cries of pain by Christian community

pppic

Source: Adapted from daily Dawn, 23 Sep 2013

PESHAWAR, Sept 22: The Pakistan Tehreek-i-Insaf and its allies tasted public anger for the first time when aggrieved families of those killed in the Sunday’s twin suicide attacks on All Saints Church in Peshawar city sparked anger over the government’s apathy.

“Shame, shame, we don’t want your posters and slogans. Come and help us,” the Lady Reading Hospital (LRH) crowded with families of the killed and injured in the attacks resonated with protest chants as one PTI MPA turned up to give a statement on media present on the spot instead of consoling the families of the victims.

Mourners and protesters also used harsh language (Shame on Imran the dog – Imran Kutta Hai Hai) to express their condemnation of a political leader (Imran Khan) who is known for his sympathetic stance towards Deobandi terrorists of Taliban and Sipah Sahaba (ASWJ).

Audio: Angry reception for Imran Khan after church bombing (audio credits: Aleem Maqbool)

https://audioboo.fm/boos/1615109-angry-reception-for-imran-khan-after-church-bombing

ik

The yard outside the trauma centre resonated with cries of pain and anger as the aggrieved families did not let the MPA score points on media and speak. Mourners were chanting slogans against the provincial government and LRH management for not providing quick response to the traumatised wounded people.

“The government instead of giving severe punishment to the culprits has been releasing militants and criminals from prisons,” remarked Father John William, who stated that not a single murderer was brought to justice.

Umar Maseeh, another protester at LRH, accused PTI chairman Imran Khan of supporting the cause of militants. “Imran carried out his election campaign across the country, but he was never attacked, while we are unsafe even inside church, why?” he asked. “It only shows Imran is a sympathiser of militants,” he alleged.

The bloody attack was a reality check for the coalition partners of PTI, including Qaumi Watan Party and Jamaat-i-Islami. The ministers and MPAs fearing backlash could not dare to visit the LRH for almost three hours after the incident to console the angry mourners and ensure timely treatment of the wounded. There were no arrangements at the official level to provide coffins.

Of total 59 cabinet members, advisors, special assistants and parliamentary secretaries, only senior minister Sikandar Khan Sherpao and PTI provincial information secretary Ishtiaq Urmar, who is also parliamentary secretary, reached the LRH, but the angry protesters did not let them speak. Agitated Christians forced Sikandar Sherpao and Mr Urmar to leave the hospital’s premises immediately.

The absence of Information Minister Shah Farman often seen in an offensive demeanour on the floor of the assembly and press briefings, was conspicuous.

Health Minister Shaukat Ali Yousafzai whose reckless statements and apologist stance towards Taliban and ASWJ-LeJ terorism frequently put the ruling coalition in hot waters was missing till the PTI chairman and chief minister turned up at the hospital where he just gave figures of the dead and injured in the attack.

Perhaps, it was the appearance of the former information minister Mian Iftikhar Hussain of ANP on media which might have spurred the PTI into action as Imran Khan came from Islamabad to the Peshawar hospital for damage control.

Imran, while talking to media, shamelessly blamed his political rivals for inciting the aggrieved Christians against the provincial government. He condemned them for politicising the incident. However, he seemed willy-nilly in condemning the terrorists who had attacked the innocent worshippers at one of the oldest churches of the city.

“The previous government has left the mess for us and now people are being provoked against us,” he told media without mentioning the Awami National Party.

Interior Minister Chaudhry Nisar, on the directives of the President and prime minister, came too late (at around 8:00pm) with the message of the Punjab chief minister’s offer of medical help.

The agent of the federal government Engineer Shaukatullah, who did not come out from his palatial Governor’s House to console the religious minority brutally attacked by terrorists, was visible only when the interior minister was talking to media.

pti

زخمیوں کو جس وقت لایا جارہا تھا اس وقت تک ایمرجنسی گیٹ کے سامنے عیسائی براداری سے تعلق رکھنے والے سینکڑوں نوجوان ہجوم کی شکل میں جمع ہوگئے تھے۔ یہ افراد انتہائی غصے کی حالت میں تھے اور پھر جب پشاور پولیس کے سربراہ محمد علی بابا خیل پولیس اہلکاروں سمیت ایمرجنسی وارڈ میں داخل ہوئے تو وہاں موجود افراد اچانک مشتعل ہوگئے اور انہوں پولیس اہلکاروں پر پتھراؤ کر دیا۔ پولیس سربراہ اور دیگر اہلکار اس پتھراؤ سے تو محفوظ رہے لیکن لوگوں کے تیور دیکھ کر وہ وہاں سے فوری طور پر نکل گئے۔

اس دوران مشتعل ہجوم نے ایمرجنسی وارڈ میں توڑپھوڑ بھی کی اور دروازوں اور کھڑکیوں کے شیشوں کو توڑ ڈالا۔ اس ساری کارروائی کے دوران وہاں پولیس اہلکار اور ہسپتال کا عملہ بھی موجود تھا لیکن لوگوں کے غصے کو دیکھ کر کوئی ہجوم کو روکنے کے لیے سامنے نہیں آیا۔

مشتعل افراد مسلسل عمران خان ، وزیراعظم نواز شریف اور وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا کے خلاف زبردست نعرہ بازی کرتے رہے۔ انہوں نے سخت غصے کی حالت میں عمران خان، نواز شریف اور وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا کےلیے نازیبا الفاظ کا استعمال بھی کیا ۔

  ایمرجنسی وارڈ کی سیڑھیوں پر بیٹھے عیسائی نوجوان ’عمران خان مردہ باد‘ کے نعرے لگاتے  رہے

وارڈ کے اندر داخل ہونے کا موقع ملا تو ہر طرف زخمی بیڈ اور سٹریچروں پر پڑے ہوئے تھے اور وارڈ کے فرش پر بھی ہر طرف خون ہی خون بکھرا ہوا تھا۔

تقریباً تین گھنٹے تک ہسپتال میں میری موجودگی کے دوران عوامی نیشنل پارٹی ، پیپلز پارٹی اور جمعیت علماء اسلام (ف) کے رہنما تو وہاں آئے تاہم اس دوران پاکستان تحریک انصاف کا کوئی وزیر یا پارٹی عہدیدار دیکھنے میں نہیں آیا۔

موقع پر موجود عیسائی نوجوان اس بات پر بھی غصے میں تھے کہ نہ تو گرجا گھر کو حکومت کی طرف سے کوئی خاص سکیورٹی فراہم کی گئی تھی اور نہ اب حکومتی اہلکار ان سے ہمدردی کے لیے ہسپتال آ رہے ہیں۔

تاہم جب حالات کچھ بہتر ہوئے تب تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان دیگر وزراء اور رہنماؤں کے ہمراہ لیڈی ریڈنگ ہسپتال آئے اور زخمیوں کی عیادت کی۔

عمران خان کی آمد بھی مشتعل عیسائیوں کے دکھ میں کمی نہ لا سکی اور کچھ رہنما یہ بات بھی کرتے سنائے دیے کہ عمران خان دہشتگردوں سے مذاکرات کی بجائے ان کے خلاف کارروائی کی حمایت کرتے تو شاید انہیں آج یہ دن نہ دیکھنا پڑتا۔

http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2013/09/130922_peshawar_hospital_scene_zs.shtml

غمزدہ مسیحی نو جوانوں نے عمران خان کی ہسپتال آمد پر عمران کتا کہ کر اس طالبان پرست سیاستدان کے خلاف اپنے جذبات کا اظہار کیا

https://audioboo.fm/boos/1615109-angry-reception-for-imran-khan-after-church-bombing

عمران خان شدت پسندوں کی جانب قدرے مبہم سا یا ان کی جانب جھکتا ہوا موقف اختیار کرکے شاید اپنی جماعت کو تو طالبان کے قہر سے بچا لیں لیکن کیا وہ اس صوبے کے عوام کو بچا پائیں گے۔ یہی ان کے لیے سب سے بڑا چیلنج ہے۔ اس کا احساس انہیں ہے یا نہیں اس بارے میں اکثر لوگ ابہام کا شکار ہیں۔ ان کا موقف کہ یہ حملہ ان لوگوں کا کام ہے جو مذاکرات نہیں چاہتے، زیادہ وزن نہیں رکھتا۔ یہ اسی طرح کا گھسا پٹا روایتی بیان ہے جس میں ’بیرونی ہاتھ‘ کو ہر کارروائی کی وجہ قرار دیا جاتا رہا ہے۔ وہ ہاتھ آج تک کسی نہیں دیکھا لہذا مذاکرات مخالف قوتیں بھی شاید کبھی سامنے نہ آسکیں۔

عمران خان نے ایک بیان میں اس حملے کو شرمناک قرار دیا ہے۔ انہیں امید ہے کہ اگر سپریم کورٹ انہیں اس لفظ کے استعمال پر چھوڑ سکتی ہے تو شاید شدت پسند بھی اس کا زیادہ برا نہیں منائیں گے۔

پاکستان میں جاری شدت پسندی کے گزشتہ بارہ سالوں میں نہ تو امن مذاکرات سے کچھ افاقہ ہوا اور نہ ہی فوجی کارروائیوں سے اور کسی دائمی حل تک اپنی بیٹی کھو دینے والے ریاض مسیح کو شک ہی رہے گا کہ وہ اس مملکت خداداد کے برابر کے شہری ہیں یا نہیں

http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2013/09/130923_peshawar_att

. تین دن میں دشتگردوں نے شیعہ، سنی اور آج مسیحی برادری پر دھماکہ کردیا. اور ہم دشتگردوں سے جنگ کے بجاۓ انکے پیر پکڑ کر مذاکرات کی بات کررہے ہیں

 https://lubpak.net/archives/283999#sthash.fNdG7X3Z.dpuf

ہم نواز شریف، عمران خان، منور حسن، فضل الرحمان سمیت ہر اس یزیدی کی مذمت کرتے ہیں جو طالبان اور لشکر جھنگوی کے وحشی درندوں سے مذاکرات کی آڑ میں سنی بریلویوں، شیعوں، احمدیوں اور مسیحیوں کے قتل عام میں تکفیری دہشت گردوں کی مدد کر رہا ہے –

ایسے ہی جذبات پاکستان کے تمام مظلوم عوام میں نواز شریف، حمید گل، نجم سیٹھی، انصار عباسی، حامد میر اور آستین کے دیگر سانپوں کے خلاف پاے جاتے ہیں آج پورا پاکستان دیوبندی دہشت گردوں اور ان کے سرپرستوں کے خلاف سراپا احتجاج ہے

https://lubpak.net/archives/283999

https://lubpak.net/archives/283903

5

4

About the author

SK

13 Comments

Click here to post a comment