Original Articles

Trust deficit emerges into newly Muslim League alliance

Related Articles:

PML-N alliance with Musharraf League: Tariq Azeem to meet Nawaz In London

Nawaz Sharif’s alliance with Musharraf League: Where are the principles now?

IJI style game plan

IJI style game plan: phase two

“Politics makes strange bed-fellows”. The reunification of all Muslim Leagues, once again all the turn coats getting together.

One day after the formation of the Muttahida Muslim League alliance, a group from within voiced its concerns over the nomination for the head of the steering committee. The move for the grand alliance suffered a major setback by the PML-Q, which kept itself a distance from merger move, Although the Chaudhrys of Gujrat were initially agreeable-but now it’s leadership set conditions that they would be on board only if those who left them first, came back.

“We believe that there are only three factions of Muslim Leagues… PML-N, PML-Q and PML-F…we have asked Pir Pagara to ask the leaders of PML-Q break away factions to first come back to the party fold, before moving ahead for any alliance or merger,” said Kamil Ali Aga information secretary of PML-Q. He added that Sheikh Rashid, Ijaz ul Haq, Jamali, Hamid Nasir Chatta and Saleem Saifullah all betrayed the PML-Q and made their own factions.

Reacting to the formation of  MML,  Syed Ahmed Saeed Kirmani on Saturday said the alliance of four Muslim League factions has yet to explore its justification, as alliances are always based upon ideas and principles. The Muttahida Muslim League (MML) that has emerged from illusory forces efforts is a merger of four factions of the League — PML(F), PML(Zia), PML(Like-minded) and Awami Muslim League, -mostly one-man-show parties -and  the broken away “like minded” group of PML-Q.

The group within MML also complained that it was not taken into confidence over the nomination of the committee members.

Chairman Muttahida Muslim League (MML), Pir Pagara, who enjoys the reputation as the GHQ’s cognomen, has sacked the coordinator of steering committee Imtiaz Sheikh after objections were raised on the formulation of steering committee by PML-(Likeminded) faction. Differences emerged in the newly formatted alliance of MML.

Sources said that Chief of MML, Pir Pagara to address the objections of PML-Likeminded and remain unifying the alliance decided to increase the members of steering committee. Sources said that the decision regarding the new coordinator of steering committee will be taken in next meeting scheduled on November 04 with the consultation of all factions.(Online international news network)

All military dictators ranging from Ayub Khan to Pervez Musharraf have all used the Muslim League banner to cobble together a willing coalition of political disgruntled, opportunists and turncoats that could offer a democratic smoke screen, obliteration, obscuration, and camouflage to their authoritarian adventurism.

Pir Pagara and his special friends living in Pindi want, that  all Muslim leagues ranging from A-Z to join MML as  member parties, in order to create IJI style[anti PPP]alliance, but in present circumstances, it seems, PML- N and Q can have a political alliance with MML but will not merge into MML to lose their identity and sans Sharifs and Chaudharys MML  not significant enough to make any difference in present political scenario or derail democratic system.

But hope still alive for the new MML dreamers; the PML-N leadership is ready for talks with the leaders of Muttahida Muslim League- and former Prime Minister Mir Zafarullah Jamali is expected to meet PML-N leaders next week to formally invite the PML-N to join the Muttahida Muslim League to develop once again anti PPP alliance especially in Sindh.

It also seems, that  Pir  Pagara or his bosses are ignorant about the actual facts and figures and they are unable to understand present democratic realities and harsh conditions;  Pakistan is facing tough time of its history, flood crises is still not over, also facing a horrible insurgency, terrorism, extremism, and thousand of people killed in suicide attacks.

According to Daily Times Editorial, ” Historically, the unification of Muslim League only comes about when some shadowy forces are at work. Otherwise, their practice has been to ‘unite later, split first’.”

Déjà vu all over again

Another bid to ‘unify’ the different factions of the Muslim League is being witnessed these days under the patronage of Pir Pagara. The Muttahida Muslim League (MML) that has emerged from these efforts is a merger of four factions of the League — PML(F), PML(Zia), PML(Like-minded) and Awami Muslim League. Historically, the unification of Muslim League only comes about when some shadowy forces are at work. Otherwise, their practice has been to ‘unite later, split first’. The Muslim League has very often been the handmaiden of dictators and part of anti-democratic manoeuvres in our history. Under newly appointed president Pir Pagara, PML-Q’s dissident group who like to call themselves ‘like-minded’ have joined the MML bandwagon in yet another opportunistic move, perhaps encouraged by the ‘invisible angel’ friends of the Pir. It is ironic that Allama Iqbal and Jinnah’s Muslim League has remained hijacked by opportunists for the most part of our history as an independent country. These ‘men for all seasons’ waste no time in hopping from one party to another, depending on in which direction the favourable wind is blowing, just to remain close to the powers-that-be. The PML-Q and the PML-N have not yet shown any interest in joining the MML while it is not yet clear why Musharraf’s All Party Muslim League (APML) has not been given a seat at the new table.

Despite that, PML-N spokesperson Ahsan Iqbal dubbed the MML as Musharraf’s “alumni club” and said that “various alliances and individuals are being fielded with a plan to divide the PML-N vote bank in the next elections” in a bid to obstruct its success in the future. On the other hand, the PPP’s moves to woo the PML-Q, and the latter’s opening a channel to Shahbaz Sharif might be among the reasons why the Chaudhry brothers have not yet become a part of the MML, preferring an enigmatic silence so far. The PPP’s government is surviving by default as there is no other alternative in sight and no other party is willing to take responsibility for the multiple crises in the country. Even those who want to see the back of the PPP are in a bind as there is no other option available to bring a change of government through the electoral/democratic process. Thus, it must be asked if unifying the Muslim League is a political move to create some ripples in the ‘stagnant’ political landscape. Everyone is trying to explore some new options these days. Therefore, it is possible that the four factions that have joined the MML platform having become virtually irrelevant politically, have now come together to gain some political mileage. It is no secret that Pir Pagara is the blue-eyed boy (read old hand) of the GHQ and the MML’s inspirational roots therefore seemingly trail back to Rawalpindi. If indeed this is the case and these manoeuvres are afoot to create new possibilities, its implications are serious. Some powerful forces want an end to this government.

Under these circumstances, Prime Minister Yousaf Raza Gilani’s overconfidence in his government should be taken with a pinch of salt. Mr Gilani may not be afraid of the unification of the Muslim League, but if those lurking in the shadows succeed in their aims, the PPP should be worried. The MML’s chances of becoming a powerful political entity are quite dim, yet we never know what conspiracies are being hatched behind closed doors. There are indeed no permanent friends or enemies in politics, and certainly not in Pakistani politics. *

Some more interesting developments are in the offing, as General Musharaf’s Party could not attract much attention of the organizers, due to Nawaz factor, so now APML, has decided to issue a 20-point charge sheet against Mian Nawaz Sharif. And the relationship between PML-N and PML-Q has been so tense in the past that theoretically there are very dim chances of an alliance between the Sharifs and Chaudharys. Chaudhry Pervaiz Elahi said on Saturday Chief Minister Shahbaz Sharif habitually blamed others for his follies and took credit for others’ good work. He criticised the performance of the incumbent chief minister and blamed him for Punjab’s current ‘dismal’ situation. He said on the one hand Sharif failed to launch even a single mega project in the province and on the other he was removing plaques of his (Elahi’s) name from the projects initiated or completed by his government.

Nobody is safe anymore in Punjab, he said, advising Chief Minister Shahbaz Sharif to stop calling himself “Khadim-i-Ala (servant of the people).”

So, we  can say that right now present political situation is not very much favorable for the grand anti PPP alliance.

About the author

Junaid Qaiser

7 Comments

Click here to post a comment
  • پیر صاحب پگاڑا کے گھوڑے! روزن دیوار سے …عطاء الحق قاسمی

    آج کے اخبارات سے یہ مژدہ جانفزا پڑھنے کو ملا کہ چار مسلم لیگیں متحد ہوگئی ہیں، تاہم میرے خیال میں انہوں نے اس نیک کام میں کافی دیر کی ہے، ان کا فرض بنتا تھا کہ ایک فوجی آمر کی خدمات کے اعتراف میں اس کے جاتے ہی منتخب حکومت کے خلاف متحد ہو جاتیں کیونکہ ان مسلم لیگیوں کو اسی کام کے لئے رکھا گیا ہے،

    ایک سفید پوش نے بقر عید کے لئے ایک بکرا خریدا، لیکن گھر میں لانے کے بعد پتہ چلا کہ وہ کانا ہے، وہ بچارا مولوی صاحب کے پاس گیا اور کہا کہ اس کا بکرا کانا نکلا ہے،میں اسے بیچنا چاہتا ہوں مگراس کا خریدار ہی کوئی نہیں، بچے سارا دن اس پر سواری کرتے رہتے ہیں، براہ کرم مجھے بتائیں کہ اس بکرے کی قربانی جائز ہے کہ نہیں؟ مولوی صاحب نے فرمایا ”یہ بھی کوئی پوچھنے کی بات ہے، سبھی جانتے ہیں کہ کانے بکرے کی قربانی جائز نہیں ہے!“ اس پر سفید پوش نے روہنسا ہو کر پوچھا ”اب میں اس بکرے کا کیا کروں؟“ مولوی صاحب نے کچھ دیر سوچنے کے بعد جواب دیا ”اب اسے سواری ہی کے لئے رہنے دو!“

    سو مسلم لیگیں بھی ماضی میں فوجی آمروں کی سواری ہی کے لئے استعمال ہوتی چلی آرہی ہیں، بس 1990ء کے بعد نواز شریف نے فیصلہ کیا کہ آئندہ مسلم لیگ سواری نہیں، سوار کے طور پر اپنا کردار ادا کرے گی اور پھر انہوں نے قید و بند اور جلاوطنی کی صورت میں اس فیصلے کا خمیازہ بھی بھگتا۔

    اس وقت بھی صورتحال یہ ہے کہ نواز شریف کی مسلم لیگ جو اصلی تے وڈی مسلم لیگ ہے اور جس پر عوام کی تصدیقی مہر ثبت ہے۔ وہ اس ”اتحاد“ کے قریب بھی پھٹکنے کو تیار نہیں، حالانکہ انہیں اس حوالے سے دائیں بائیں، اوپر نیچے اور اندر باہر سے خاصے دباؤ کا سامنا ہے لیکن نواز شریف اپنے جمہوری رہنما کے امیج کو داغدار کرنے پر تیار نہیں، انہوں نے اپنی ”ہاں“ کی بہت حفاظت کی ہے، یہ ایک ”ہاں“ انہیں جنرل پرویز مشرف کے قہر سے بچاسکتی تھی بلکہ اس کے عوض انہیں بہت کچھ مل سکتا تھا لیکن وہ جمہوری قدروں پر سمجھوتے کے لئے تیار نہیں ہوئے۔ اور اب ”مسلم لیگیوں“ کا اتحاد ان کے بغیر وہ گاڑی ہے جس کا اسٹیرنگ نہیں ہے، میاں صاحب ا گر ایک ”نکی جئی ہاں“ کہہ دیں تو اس گاڑی کو نہ صرف اسٹیرنگ مل جائے گا بلکہ اس کا کنٹرول بھی میاں صاحب کو مل سکتا ہے لیکن لگتا ہے وہ ”اقتدار کی بجائے اقدار کی سیاست“ والی بات پر سنجیدہ ہو چکے ہیں، حالانکہ کہا جاسکتا تھا کہ یہ بات تو انہوں نے محض دل پشوری کے لئے کی تھی، کیونکہ میں نے سنا ہے سیاست میں اس طرح کی کہہ مکرنیوں کی بہت گنجائش ہوتی ہے۔

    میرے دل میں پیر صاحب پگاڑا کے لئے بہت عزت ہے، اس کی بہت سی وجوہ ہیں جو ضروری نہیں کہ سب کی سب بیان کی جائیں تاہم ان کی اس صفت کا تو زمانہ قائل ہے کہ انہیں گھوڑوں کی بہت پہچان ہے، ان کے ا صطبل میں ”نجیب الطرفین“ گھوڑے موجود ہیں اور انہوں نے آج تک کسی کمزور گھوڑے پر ہاتھ نہیں رکھا اور کسی ہارنے والے گھوڑے پر شرط نہیں لگائی لیکن اس مرتبہ انہوں نے جو گھوڑے چنے ہیں، معافی چاہتا ہوں، یہ ان کی چوائس نہیں ہے چنانچہ یوں کہنا چاہئے کہ جو گھوڑے انہیں میسر آئے ہیں، وہ مولانا روم کی مثنوی میں موجود اس گھوڑے کی مانند ہیں جن کی تیزی و طراری اور سبک رفتاری کے لئے ایک چابک بردار درکار ہوتا ہے جو فی الحال میسر نہیں اور ایسے ”افسوسناک“ گھوڑوں کی موجودگی میں آئندہ بھی اس کی توقع نہیں۔ یہ وہ گھوڑے ہیں جنہیں بگھی کے آگے جوتا جاسکتا ہے، چنانچہ ان کا زیادہ سے زیادہ مصرف یہ ہے کہ ان میں سے سب سے بہتر گھوڑے یعنی شیخ رشید احمد کو پہلے نمبر پر جوت کر پیر صاحب پگاڑا کلفٹن کی سیر ویر کے لئے نکل جایا کریں، میری یہ تجویز ممکن ہے ۔ گھوڑوں کو پسند نہ آئے لیکن اسی میں ان کی بہتری ہے، ایک تو یوں کہ بہت عرصے سے وہ بیکار بیٹھے ہیں اور یوں ان کی ”ہارس پاور“ ضائع ہو رہی ہے اور دوسری بہتری یہ کہ پیر سائیں کی خدمت ویسے ہی ثواب ہے ، ممکن ہے کسی دن وہ خوش ہو کرانہیں دعا دیں اور پانچ دس سال بعد ہی سہی، اس دعا کی تاثیر سے ان کی مرادیں بر آئیں۔ ویسے مجھے حیرت ہے کہ پیر سائیں نے جنرل پرویز مشرف کے بھیجے ہوئے ”گھوڑے“قبول کیوں نہیں کئے، ان میں سے کم از کم میجر جنرل(ر) راشد قریشی اور امیر مقام کو تو رکھ لیتے، پاکستانی عوام جنرل راشد قریشی کا رخ زیبا دیکھنے کو ترسے ہوئے ہیں اور بات کرتے ہوئے ان کے منہ سے جو پھول جھڑتے تھے، وہ دیکھنے کے خواہش مند ہیں، اقتدار کی چوکیداری سے جواب ملنے کے بعد انسان کیسا لگتا ہے، اسی طرح پیر سائیں کو چاہئے تھا کہ وہ امیر مقام کو بھی قبول فرما لیتے کہ اور کچھ نہیں تو ان سے بار برداری کا کام تو لیا ہی جاسکتا تھا۔ یہ لوگ آتے تو جنرل پرویز مشرف بھی شرفِ باریابی کے خواہش مند ہوتے یہ صاحب پیر سائیں کے کام کے تو نہیں تھے لیکن پاکستانی عوام ان سے اپنا وہ تاریخی ” مُکہ“ لہرانے کی فرمائش کرتے جو انہوں نے اپنے عوام کو دکھایا تھا تاکہ اس میں اور قائد ملت لیاقت علی خان کے پاکستان کے دشمنوں کو دکھائے جانے والے مکے کا فرق ایک بار پھر واضح ہوتا۔

    میں یہ کالم دفتر کو فیکس کرنے کو تھا کہ بھولا ڈنگر آگیا، اس نے کالم پر ایک نظر ڈالی اور کہا ”یہ تم کیا چار مسلم لیگوں“ کو کالم کا موضوع بنا رہے ہو، یہ چار مسلم لیگیں نہیں، چار ”مسلم لیگی“ ہیں جن کا اتحاد سامنے آیا ہے، لہٰذا اپنے کالم میں تم نے جہاں جہاں ”چار مسلم لیگیں“ لکھا ہے، اسے کاٹ کر چار مسلم لیگی لکھو اور ”مسلم لیگی“ کے گرد انورٹڈ کاما بھی ڈالومگر میرے لئے اس کی ڈنگرانہ فرمائش کی تکمیل وقت کی کمی کے باعث ممکن نہیں، ویسے بھی پیر سائیں کے احترام میں، میں ان کے گھوڑوں کے درجات میں کمی نہیں کرسکتا تاہم نادانستہ طور پر اگر ان میں سے کسی کی شان میں کوئی گستاخی ہوگئی ہو تو اسے معاف فرمائیں اور اگر معاف کرنا مناسب نہ سمجھیں تو معاف نہ فرمائیں۔

    http://search.jang.com.pk/details.asp?nid=479615

  • یہ کیا بن گیا؟… سویرے سویرے…نذیرناجی

    ٹوتھ برش کے پیکٹ میں بندوق نہیں رکھی جا سکتی۔ وائلن کے کور میں‘ درجنوں ٹوتھ برش آ سکتے ہیں۔ اگر ف لیگ میں ن یا ق لیگ داخل کرنے کی کوشش کی جاتی‘ تو ف لیگ پھٹ جاتی۔ چھوٹی چھوٹی چھوٹی چھوٹی لیگیں‘ اپنے سائز کے پیکٹ میں آرام سے سما گئیں اور کسی کا کچھ نہیں بگڑا۔

    ان میں پیر صاحب پگاڑا کی لیگ سب سے بڑی ہے۔ ہرچند اس کے اراکین اسمبلی کی مجموعی تعداد بھی واحد ہندسے میں سمائی ہوئی ہے۔ ان چار لیگوں میں دو لیگیں اسمبلیوں کی آلودگی سے پاک ہیں۔ اعجازالحق کی لیگ کے پاس مانگے تانگے کی ایک صوبائی نشست ضرور ہے‘ مگر پارٹی کے سربراہ خود محروم ہیں۔ شیخ رشید احمد ‘ حبیب جالب مرحوم اور نوید ملک کی روایت کے لیڈر ہیں۔ وہ میان کی تلوار ہیں‘ جس میں دوسری تلوار کی گنجائش ہی نہیں۔

    حبیب جالب نے جب اپنی ایک جماعت بنائی‘ تو اس کا سلوگن شعر میں تھا۔ وہ اپنی پارٹی کا تعارف یوں کراتے۔

    نہ دفتر نہ بندہ
    نہ پرچی نہ چندہ

    شیخ صاحب کی جماعت کا حال بھی کچھ اسی قسم کا ہے۔ ہو سکتا ہے ان کی پارٹی میں کوئی دوسرا عہدیدار بھی ہو لیکن عوام اس سے بے خبر ہیں۔ نوید ملک کا بھی ایک سٹائل ہے۔ انہوں نے بھی اپنی ایک جماعت بنا رکھی ہے‘ جس کی عمر تقریباً40برس ہو چکی ہو گی۔ مگر کیا مجال ہے ‘ اس میں ملک صاحب کے سوا کسی دوسرے کو عہدیدار بننے کی سعادت نصیب ہوئی ہو۔ جب ملک صاحب سے اس احتیاط کی وجہ پوچھی جاتی‘ تو وہ بڑے اعتماد سے جواب دیتے ”میں پاگل ہوں؟ اگر کسی کو نائب صدر یا جنرل سیکرٹری بنا دیا‘ تو وہ اپنا گروپ بنا کے مجھے نکال دے گا۔“ ملک صاحب کو آج تک عہدہ صدارت سے کوئی نہیں نکال سکا۔اس طرح شیخ رشید بھی اپنی پارٹی کے ایسے عہدیدار ہیں‘ جنہیں کسی سے کوئی خطرہ نہیں۔ ان کی کرسی محفوظ ہے۔

    ف ‘ ض ‘ ہ اور ع لیگوں کا یہ اتحاد ‘ ملکی سیاست میں اتنی ہلچل ہی پیدا کر سکتا ہے‘ جتنا حلوائی کے دودھ کے کڑاہے میں‘ چار ٹی سپون۔ پانچواں ٹی سپون آتے آتے رہ گیا۔ ایک مسلم لیگ ہمارے دوست سید کبیرواسطی کے حرم میں بھی پڑی رہتی ہے۔ وہ اسے باہر آنے کا موقع کبھی کبھار ہی دیتے ہیں۔ انہیں بھی ”مسٹر اور مسز“ کا کارڈ بھیجا گیا تھا‘ ساتھ بزنس کلاس کا ایئرٹکٹ بھی تھا لیکن واسطی صاحب نے اجلاس میں شرکت نہیں کی۔ انہیں بتایا نہیں گیا تھا کہ فنڈز کس نے دیئے ہیں؟ یہ اصولی بات ہے۔ جس اجلاس کا خرچ اٹھانے والے کے بارے میں پتہ ہی نہ ہوکہ وہ کون ہے؟ تو بااصول لوگ اس میں شرکت نہیں کرتے۔ واسطی صاحب کو شک ہو گا کہ اجلاس کے اخراجات پرویزمشرف نے بھجوائے ہوں گے۔ ہو سکتا ہے ان کا شک درست ہو۔ کیونکہ پیرپگاڑا کے طلب کردہ اجلاس میں پرویزمشرف کے نمائندے بھی جا دھمکے تھے‘ جنہیں دیکھ کر دیگر مدعوئین کو تعجب ہوا۔ انہیں بتایا گیا تھا کہ مشرف لیگ کو نہیں بلایا گیا۔ پھر یہ لوگ کیا کرنے آئے تھے؟ خیال ہے وہ اپنی ٹکٹوں کا حساب دیکھنے آئے تھے کہ سارے ٹکٹ استعمال بھی ہوئے ہیں یا نہیں؟ واسطی صاحب نے تو اخباری بیان میں بتا دیا کہ انہیں بھیجا گیا ٹکٹ استعمال میں نہیں آیا۔ پرویزمشرف کے نمائندوں نے موقع پر جا کر‘ جو چھان بین کی‘ اس کے نتیجے میں مزید کتنے غیراستعمال شدہ ٹکٹوں کا سراغ لگا ہو گا؟ اس کا حساب پرویزمشرف خود دیکھ لیں گے۔ رہ گیا یہ سوال کہ جنرل صاحب کے نمائندے بغیر بلائے کیسے پہنچ گئے؟تو اس کا جواب بہت آسان ہے۔جنرل حضرات ہمیشہ بغیربلائے آتے ہیں اور اقتدار پر قبضہ کر لیتے ہیں اور دھکے کھائے بغیر جاتے نہیں۔ ان کے نمائندے دعوت نامے کا انتظار کیوں کرتے؟

    سید کبیرواسطی نے ایک راز تو بہرحال کھول دیا کہ مسلم لیگوں کے زیادہ تر حروف تہجی جمع کرنے پر کسی نہ کسی نے رقم ضرور خرچ کی ہے۔ جو بھی خرچ کرنے والا ہے‘ اس سے یہ ضرور پوچھنا چاہیے کہ چلے ہوئے کارتوس جمع کر کے ‘ وہ کونسے میدان جنگ میں اترنا چاہتا ہے؟ سیاست کے میدان میں موثر ترین ہتھیار عوامی حمایت اور اسمبلیوں میں نشستیں حاصل کرنے کی اہلیت ہوتی ہے۔ ان چاروں جمع کئے گئے حروف تہجی کے پاس تو اتنی بھی نشستیں نہیں‘ جتنی فاٹا والے لے آتے ہیں اور جہاں تک عوامی حمایت کا تعلق ہے‘ تو ایسے ایسے محبوب اور مقبول عوامی لیڈروں کو اکٹھے دیکھ کر ‘ میدان سیاست میں گیندیں اٹھانے والے بچے بھی ہنسیں گے۔ پیرصاحب پگاڑا کی اپنی شان ہے۔ وہ دعوت کھانے کا باقاعدہ بل وصول کرتے ہیں۔ اس لئے حاضرین کی تعداد کی ذمہ داری مدعو کرنے والے پرہوتی ہے۔ باقی سارے لیڈر‘ جیب سے پیسے دے کر اپنی دعوتیں کرانے والے ہیں۔ وہ حاضرین کیسے اکٹھے کریں گے؟ شیخ رشید کے چٹکلے سننے والے ٹیلی ویژن پر ہی لطف اندوز ہو لیتے ہیں اور پیر صاحب کے چٹکلے اخباری نمائندوں کے ذریعے قارئین تک پہنچ جاتے ہیں۔ سلیم سیف اللہ کسی زمانے میں دیکھنے کی چیز تھے۔ اب دیکھنے کی چیز بھی نہیں رہ گئے۔

    میرظفر اللہ خان جمالی لیڈر بہت بڑے ہیں اور جنرل پرویزمشرف نے ان پر سابق وزیراعظم کا لیبل بھی لگا دیا ہے۔ مگر اللہ گواہ ہے‘ مجھے بالکل پتہ نہیں کہ ان کا تعلق کونسی مسلم لیگ سے ہے؟ جو چاروں لیگیں اکٹھی ہوئی ہیں‘ کیا وہ ان میں سے کسی کے رکن ہیں؟ یا کسی ایسی مسلم لیگ کے رکن ہیں‘ جو متحدہ مسلم لیگ میں شامل ہی نہیں؟ ایک زمانہ تھا کہ کابینہ میں ایک بے محکمہ وزیرہوا کرتا تھا۔ کہیں جمالی صاحب غیرجماعتی مسلم لیگی تو نہیں؟ ویسے ہم خیال بھی اصل میں غیرجماعتی مسلم لیگی ہی ہیں۔ یہ ق لیگ کے چند ادھڑے ہوئے ٹانکے ہیں‘ جو اپنی جماعت کی سلائی سے باہر ہو گئے۔ ان کا اپنا کوئی نام نہیں۔ خود کو ہم خیال کہتے ہیں۔ مگر انہوں نے اپنے آپ کو لیگ کب بنایا؟ مجھے اس کی خبر نہیں۔ عملاً یہ غیرجماعتی مسلم لیگی ضرورہیں۔ اپنی جماعت میں رہے نہیں۔ نئی جماعت بنائی نہیں۔ ہم خیال یہ ہیں نہیں۔ یہ صرف ایک نام ہے‘ جو ہم خیال نہ ہوتے ہوئے بھی انہوں نے رکھ لیا۔ ورنہ کہاں خورشید محمود قصوری؟ کہاں میاں اظہر؟ کہاں کشمالہ طارق؟ کہاں حامد ناصر چٹھہ‘ کہاں ہمایوں اختر؟ اور کہاں ہم خیالی؟مجھے جھٹلانا ہے تو خورشید محمود قصوری اور میاں اظہر سے کہیں کہ وہ دس منٹ کسی ایک موضوع پر میاں اظہر سے گفتگو کر کے دکھا دیں۔ دونوں کی ہم خیالی تیسرے منٹ میں چت ہو جائے گی۔جس ادارے یا ایجنسی نے مسلم لیگوں کو جمع کرنے کا منصوبہ بنایاتھا وہ تو پورا نہیں ہوا۔جال مسلم لیگ (ن) اور ق پر پھینکا گیا تھا۔ یہ دونوں پارٹیاں پھسل کر نکل گئیں۔

    ”ن“ تو ہاتھ نہیں لگی اور ”ق“ جال میں آ کر بھاگ نکلی۔ لمبے چوڑے خرچ کے بعد مسلم لیگوں کے بجائے پرانی ڈاک ٹکٹیں جمع ہو گئیں۔ ٹکٹ پسند نہیں‘ تو پرانے سکے کہہ لیں۔ورنہ ”چار حرف“ تو ہیں ہی۔ مگر استعمال کے قابل تینوں ہی نہیں ہوتے۔ نہ پرانے ٹکٹ‘ نہ پرانے سکے‘ نہ ”چار حرف“۔اس پورے ہجوم میں کھلونوں سے لطف اندوز ہونے کا شوق صرف حامد ناصر چٹھہ کو ہے۔ کچھ عرصہ پہلے تک تو ان کے کھلونوں کے ساتھ کھیلنے کی اطلاع تھی۔ اب کچھ بڑے ہو گئے ہیں‘ ہو سکتا ہے شوق بدل گیا ہو اور ان میں پرانے ٹکٹوں اور پرانے سکوں سے کھیلنے کا ذوق پیدا ہو گیا ہو۔ ”چار حرف“ البتہ ان کے کام کے نہیں‘ شریف اور خاندانی انسان ہیں۔ بہرحال اچھی خاصی رقم خرچ کر کے‘ جس نے بھی‘ جو کچھ بنایا ہے‘ کچھ نہ کچھ بن ہی گیا ہے۔ مگر نتیجہ دیکھ کر وہ یقینا سوچ رہا ہو گا کہ ”میں کیا بنانے چلا تھا اور یہ کیا بن گیا؟ میں چار حروف کا کیا کروں؟

    http://search.jang.com.pk/details.asp?nid=479620

  • DAWN Editorial: One League fits all
    THE merger of four relatively smaller Muslim Leagues in Karachi on Friday is a continuation of the Pakistani brand of politics. The four Leagues — Functional, Likeminded, Zia and Awami — are seeking to reassert themselves in a political scene dominated by parties with a sizeable presence in parliament.

    Following the merger, the new League’s head Pir Pagara said he was willing to “think about” or “consider” all those going around with the title of ‘Leaguer’ — including Gen Musharraf and his All Pakistan Muslim League. The Pir must have been joking. Clearly, the reunion of these elements will be a dull affair until the PML-N also joins in. And, presumably, the PML-N would not be inclined to share the same umbrella with Gen Musharraf.

    The same holds true for the PML-N’s seemingly cold overtures towards PML-Q which, despite earlier contact with the Pir is not part of the merger. However, Nawaz Sharif has not ruled out an alliance with the PML-Q.

    It is not surprising that the PML-N reacted with a strong ‘no’ to the merger. At this moment, the alliance has little to offer Mr Sharif, who represents a considerable challenge to the incumbents on his own. However, the importance the PML-N has attached to the alliance by describing it as an attempt to eat into its vote bank should give the Pagara camp some hope; there is no bigger reconciliatory factor in Pakistani politics than the fear of a division of the vote bank.

    In his reaction to the Karachi merger, PML-N politician Ahsan Iqbal recalled how the Pakistani Islamic Front had been formed to divide the right-wing PML-N vote in 1993. Why would the party allow a repeat when by its own tacit admission the new emerging League under Pir Pagara has the potential to do so? Come an election, perhaps a more apt analogy would be with the Islami Jamhoori Ittehad, a forum created by the military establishment to take on Benazir Bhutto in 1988.
    Perhaps some politicians are hoping, groping, longing for the same signal. It will be in the interest of politics that they are kept waiting.

  • Mian Azhar says UML zero without Nawaz, Shujaat
    ISLAMABAD: Former president of Pakistan Muslim League-Quaid (PML-Q) Mian Muhammad Azhar said Sunday PML-N and PML-Q would have to be part of the newly formed United Muslim League (UML) in order to put a challenge to PPP in the next elections.

    To give real meaning to UML, Mian Azhar, who attended the Pir Pagara-hosted two-day event at the Kingri House as independent politician like ex-premier Mir Zafarullah Khan Jamali, emphasised the need for convincing both Mian Nawaz Sharif and Chaudhry Shujaat Hussain to also join hands.

    Mian Azhar said he and Zafarullah Jamali were invited by Pir Pagara in individual capacity and but both strongly advocated revival of a strong Muslim League, setting aside differences over personality or any other matter.

    “I raised the point of convincing Mian Nawaz Sharif and Chaudhry Shujaat to shun their differences during my speech at the Kingri House the other day and I guess it has been well taken and that is why a committee has been formed to approach leadership of both these important PML factions,” he maintained.

    He pointed out neither PPP nor PML-N had enough seats from all the four provinces in the 2008 elections but a unified PML could achieve this to provide a better alternative.

    When reminded of PML-N insistence that in the presence of Chaudhrys of Gujrat and Shaikh Rashid Ahmed, it would never consider the option, he proposed, “If they don’t like my face or that of any other person, he can voluntarily withdraw to let the much-desired unification of PML factions take place”, adding “when the agenda before us is the welfare of Pakistan, trivialities should not be given weight”.

    Asked whether the assemblies would complete their term, keeping in view the performance of the incumbent set-up, he wished the government completed its term but doubted it would succeed in doing so in the given circumstances with the economy going down, security situation grim and Pakistan plunging further in the quagmire of corruption.

    Mian Azhar, who was de-seated as PML-Q chief in a dramatic move by the Chaudhrys of Gujrat through a general council meeting at the party central secretariat here eight years back, which used to be the head office of PML-N before October 12, 1999, made it clear a unification of all the PML factions was imperative to provide an effective two-party option to the masses.

    He contended a divided Muslim League would not auger well for the promotion of democracy in Pakistan and said the meeting at Pir Pagara’s Kingri House was quite positive and the committee it formed would produce encouraging results in the days to come.
    http://www.paktribune.com/news/index.shtml?233064