Original Articles

British Secular Muslims condemn stabbing of a police officer and 3 Sunni Muslims by Somali Wahhabi extremist in Birmingham

mosque

British Secular Muslims condemn the Saudi Wahhabi brainwashed Somali man who stabbed four including a police officer at a Sunni mosque in Birmingham.

According to media reports, a Somali Wahhabi extremist stabbed a police man and three Pakistan-origin Sunni Muslims at the Washwood Heath Mosque in Birmingham.

The Somali Wahhabi man stabbed worshippers at the mosque; didn’t like the way the men next to him read the Quran. The new breed of Salafi-Wahhabi Deobandi extremists consider ever one kafir (infidels) who can’t do ‘proper’ Wahhabi Arab way recitation of Quran and  other Wahhabi-Deobandi rituals.

Chief Superintendent Alex Murray said the actions of the 31-year-old officer, his colleagues and worshippers who intervened during the incident at the Madrassa Qasim ul Uloom mosque, in the Washwood Heath area of Birmingham, on Saturday had been heroic.

Police were called to the mosque by a worshipper just after 11pm and arrived within four minutes to find three people injured. They were directed to a side room where they found the suspect armed with a combat knife.

“They challenged the individual and the individual ran at one of the officers with the knife,” said Murray. “The officer deployed a Taser, the Taser had no effect on the individual and the individual stabbed the officer in the chest and in the stomach around the stab-proof vest that he was wearing.”

Despite being seriously injured, the 31-year-old officer detained the attacker with the help of a female colleague.

The wounded officer, from the Yardley Wood area of Birmingham, who has served with West Midlands police since 2007, was undergoing surgery in hospital on Sunday. “The work of those officers was heroic and the work of the some of the people in the mosque assisting those officers was also heroic,” said Murray.

Two worshippers, a 28-year-old man who suffered multiple stab wounds and a 36-year-old man who suffered a single stab wound to the thigh, were also being treated in hospital.

http://www.dailymail.co.uk/news/article-2342504/Mosque-knifeman-stabbed-policeman-chest-stomach-AFTER-Tasered–stopped-worshippers-helped-restrain-him.html

Councillor Majid Mahmood, representing the Birmingham Hodge Hill ward, said ‘The man is known to have prayed at the mosque on several occasions but was not a daily user and would use it on an ad hoc basis.’

Another worshipper suffered a hand injury but did not need hospital treatment. All were given first aid at the scene by police officers and worshippers, who included an off-duty surgeon.

Ch Supt Alex Murray from West Midlands Police said although the motivation for the stabbing was still unknown, it didn’t appear to be linked to “anything else going on around the country”.

What kind of guy goes for prayer (and possibly spiritual enlightenment) to a mosque and decides to take a knife with him?

The Sunni mosque organised ‘Seerat conference’ earlier this month. Sunni Sufis (Barelvis) and Shias believe in intercession of holy Saints (descents of Prophet Muhammad), a practice which is loathed by the Khilafah-loving Jihado-sectarian extremists of Wahhabi and Deobandi sect. It is a fact that since 9/11, 99% of all acts of terror in the West have been conducted by Wahhabi and Deobandi extremists. Not a single Sunni Sufi (Barelvi), Shia or Ahmadi Muslim is involved in acts of terror in the US, UK, Spain etc.

bsmAccording to Saudi-sponsored Wahhabi and Deobandi ideology, Sunni Sufis are considered as grave worshippers and impure Muslims who practice polytheism.

Three men and a police officer are being treated in hospital after they were stabbed at a mosque in Birmingham.

A 23 year old Somail Wahhabi man has been arrested for attempted murder at in Washwood Heath Road, Ward End Mosque.

A nearby resident reported hearing an argument coming from inside the mosque and believed it was a intra-Musim incident between members, Shafiq said. “I have spoken to someone who lives a few doors down from the mosque and they described hearing an argument between some of the people inside the mosque. “It escalated into violence and a police officer has been stabbed.

The Birmingham mosque stabbing by a Somali fanatic shows that a peaceful Muslim may become animal when brainwashed by Saudi Wahhabi ideology. It also shows that more than EDL or BNP, Saudi Wahhabi brainwashed extremists are a threat to British Muslims.

Another mosque, the Green Lane Mosque (GLM) in Birmingham is known to be hardcore Wahhabi institution that is much reviled in the local community and known for bringing in hardline Wahhabi and Deobandi clerics in order to preach intolerance and hate. Its Imam is none other than the notorious Abu Usamah, who was investigated by West Midlands Police after being filmed speaking about how women are deficient in intellect, how gays should be killed, Jews are the enemies of Islam and all the usual hate mongering. It is the same mosque that denounced the bans on hate mongers Bilal Phillips and Zakir Naik. Who has given these Wahhabis, who run Saudi-funded mosques, the right to speak on behalf of the Muslim Community of Birmingham – some 150,000 people? The vast majority of Birmingham’s Muslims are Sunni Sufis / Brelwis and have nothing but contempt for the Green Lane Mosque crowd of Bedouin wannabes and their Saudi trained imams.

Sunni Muslims of the Middle East and Africa are becoming increasingly radicalized due to Saudi Wahhabi pro-Jihadist propaganda eg by Anjme Chowdary, Farhat Hasmi, Zakir Naik etc. A few weeks ago, two Nigerian Wahhabi extremists killed British solider Lee Rigby in London’s Woolwich area.

c1

c2

c3

c4

About the author

SK

3 Comments

Click here to post a comment
  • Wahhabism is a form of insanity. It impairs healthy minds.

    Stab suspect taken to mental health unit as investigation gathers pace
    16 June 2013

    A MAN being held in connection with a multiple stabbing at a mosque in east Birmingham has been taken to a secure mental health facility.

    The 32-year-old was arrested last night (Saturday 15 June) on suspicion of attempted murder following an incident in which three men and a police officer were stabbed at a mosque on Washwood Heath Road.

    The suspect was assessed by mental health experts at lunchtime today and was deemed unfit to be interviewed in relation to the attack.

    While the investigation continues, the man will be constantly assessed by medics who will alert detectives as soon as he is deemed well enough to undergo questioning.

    Anyone with information which may aid the investigation is urged to call police on 101.

    Follow this link for details on the investigation.

    http://www.west-midlands.police.uk/latest-news/press-release.asp?ID=4810

  • Pakistani media does not report that the Somali extremist was a Wahhabi extremist who attacked Sunni Hanafi Muslims.

    ٹانگیں کھول کر نماز پڑھو، بدعت نہ کرو، صومالی نے نمازیوں کو باطل کہہ کر خنجر چلادیا

    لندن (رپورٹ: آصف ڈار) برمنگھم کی مسجد میں صومالی مسلمان نے نمازیوں پر یہ کہہ کر خنجر چلا دیا کہ وہ ٹانگیں کھول کر نماز کیوں نہیں پڑھتے اور امام کی جانب سے سورہ فاتحہ کے اختتام پر زور سے آمین کیوں نہیں کہتے۔ ایسا نہ کرنا اس کے نزدیک بدعت ہے، یہی وجہ ہے کہ اس نے نہ صرف تین نمازیوں کو بلکہ ایک پولیس افسر کو بھی خنجر سے زخمی کر دیا۔ مسجد میں موجود نمازیوں میں سے بعض نے بتایا ہے کہ صومالی مسلمان کا رویہ انتہائی جارحانہ تھا اور وہ مسجد میں نمازیوں کے ساتھ اس بات پر بحث کر رہا تھا کہ انہیں اس کے طریقہ کار کے مطابق نماز ادا کرنا چاہتے۔ اس کا کہنا تھا کہ جو لوگ رکوع میں جانے سے قبل اللہ اکبر کہتے ہوئے کانوں کو ہاتھ نہیں لگاتے اور التحیات پڑھتے ہوئے مسلسل شہادت کی انگلی نہیں ہلاتے رہتے وہ بدعت کرتے ہیں۔ نمازیوں کے ذرائع کے مطابق یہ شخص نماز عشاء سے قبل نمازیوں کے ساتھ ان فروعی اختلافات پر بحث کرنے کے بعد طیش میں آگیا۔ ذرائع کے مطابق اس صومالی مسلمان کو مسجد طیبہ میں موجود اہل سنت والجماعت کے نمازیوں کا طریقہ کار بالکل پسند نہیں تھا اور اس نے سنت نبویﷺ اور صحابہ اور خلفائے راشدین کے طریقہ کار کے مطابق نماز ادا کرنے والوں کو باطل قرار دے کر ان پر خنجر تان لیا۔ اس شخص نے اس بات کو بھی بدعت قرار دیا کہ نماز سر کو ٹوپی سے ڈھانپ کر کیوں پڑھی جارہی ہے۔ اس واقعہ کے بعد برطانوی مساجد میں اب یہ بحث بھی شروع ہوگئی ہے کہ آیا اب پاکستان مساجد کی طرح برطانیہ کی مساجد بھی تو غیر محفوظ نہیں ہوگئیں۔ نمازیوں کے ذرائع کا کہنا ہے کہ ہرکسی کو اپنے فرقے او رعقیدے کے مطابق نماز اور کرنے اور دیگر عبادات کا حق حاصل ہے۔ کسی پر اپنا عقیدہ مسلط کرنا انتہا پسندوں ہے جو بعد میں دہشت گردی کا روپ دھار لیتی ہے۔ اہلسنت و الجماعت کے علماء کرام کا موقف ہے کہ ٹانگوں کو کھول کر نماز پڑھنا درست نہیں، رکوع میں جاتے وقت اللہ اکبر کہتے ہوئے کانوں کو ہاتھوں لگنے کی بھی کوئی ضرورت نہیں اور نہ ہی التحیات پڑھتے وقت مسلسل انگلی ہلاتے رہنا درست ہے۔ اس سلسلے میں مجلس تحفظ ناموس رسالت برطانیہ کے ایک ترجمان قاری عبدالرشید نے جنگ کے ایک استفسار پر اس بات کی تصدیق کی کہ ٹانگیں کھول کر نماز پڑھنا، سر پر ٹوپی نہ پہننا اور انگلی مسلسل ہلاتے رہنا ان کے عقیدے کے مطابق درست نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ وہ کسی دوسرے کے عقیدے کو غلط نہیں کہتے انہیں صرف اس بات پر اعتراض ہے کہ ان لوگوں کو اہلسنت کی مساجد میں اگر اس قسم کی حرکات نہیں کرنی چاہئیں جس سے اہلسنت مساجد میں نماز پڑھنے والے نوجوان بے راہ روی کا شکار ہوں۔ برمنگھم کی مسجد پرحملے کے بعد برطانیہ کی مختلف مساجد نے اپنی سیکورٹی کے انتظامات شروع کر دیئے ہیں اور مساجد کی انتظامیہ کو گائیڈ لائن دی جارہی ہے۔ مجلس عمل تحفظ ناموس رسالت کے برطانیہ کے رہنماؤں نے بھی اس سلسلے میں ایک گائیڈ لائن جاری کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ مجلس کے رہنماؤں کا کہنا ہے کہ اس بات کا پتہ چلایا جانا چاہئے کہ خلفائے راشدین کی تعلیمات کے مطابق نماز ادا کرنے والے کے طریقہ کار کو باطل قرار دینے والے یہ لوگ کون ہیں اور یہ کہاں سے تربیت حاصل کر رہے ہیں۔ اہلسنت کی مساجد میں آکر نوجوانوں کو بھڑکانا درست نہیں ہے۔ مجلس عمل تحفظ ناموس رسالتﷺ برطانیہ کے رہنماؤں مولانا امدادالحسن نعمانی، مولانا قاری تصورالحق، مفتی فیض الرحمن اور مولانا سہیل باوا نے آئندہ کے لئے حکمت عملی تیار کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ ان رہنماؤں کا کہنا ہے کہ مسجد کے اندر دہشت گردی کا واقعہ ہمیں یہ سبق دیتا ہے کہ اس قسم کے ذہنیت کے لوگوں کا داخلہ اہلسنت کی مساجد میں بند کر دیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ جو افراد فساد کے لئے مساجد میں آنے چاہتے ہیں اور نمازیوں کو اپنے مخصوص عقیدے کی طرف حائل کرنا چاہتے ہیں ان کا مساجد میں داخلہ بند جا سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اہلسنت کی مساجد کی کشادہ دلی کا فائدہ اٹھاتے ہوئے بعض شرپسند نمازیوں کو تنگ کرتے ہیں اور اب تو مسجد کے اندر نمازیوں کو خون سے لت پت بھی کیا گیا ہے۔ جبکہ مجلس عمل کے ترجمان قاری عبدالرشید نے کہا کہ انتہا پسندوں کو فرقے اور عقیدے کی بنیادوں پر دوسرے فرقے کے لوگوں کو قتل اور زخمی کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ ان انتہا پسندوں کا مساجد میں داخلہ روکنے کیلئے اقدامات کئے جائیں گے جن میں پہلا قدم یہ ہوگا کہ ان فرقہ پرست عناصر کو مساجد کے اندر اپنے فرقے کے نظریات کا پرچار کرنے کے لئے فری ہینڈ نہیں دیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ مساجد میں لوگ نماز ادا کرنے کے لئے آتے ہیں اور انہوں نے سنی مساجد میں تمام فرقوں کے لوگوں کو آنے کی اجازت دے رکھی ہے۔ سب اپنے اپنے طریقہ کار کے مطابق نماز ادا کر سکتے ہیں مگر مساجد میں دہشت گردی کی اجازت نہیں دی جا سکتی۔ انہوں نے کہا کہ مجلس عمل اس بات پر غور کر رہی ہے کہ مساجد کے باہر بورڈ لگا دیئے جائیں جن میں لکھا ہوگا کہ اس مسجد کے اندر سنی عقیدے کے مطابق نماز ادا کی جاتی ہے۔ اگر کسی نے اس طریقہ کے تحت نماز ادا کرنا ہے تو شوق کے ساتھ مسجد میں داخل ہو سکتا ہے۔ اگر نہیں تو اسے اپنے عقیدے والے مسجد میں جانا چاہتے۔ قاری عبدالرشید نے کہا کہ انتہا پسندوں کو فرقے کی بنیادوں پر لوگوں کو قتل اور زخمی کرنے کی اجازت نہیں دی جا سکتی۔ ایک سوال پر انہوں نے کہا کہ برطانیہ کے اندر بھی انتہا پسندی کی نرسریاں موجود ہیں جن میں نوجوانوں کو انتہا پسندی کی تعلیم دی جاتی ہے اور ایک مخصوص فرقے کے لوگ پاکستانی نوجوانوں کی نسل کو انتہا پسند بنا رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ برطانوی حکومت کو چاہئے کہ وہ دہشت گردی کی ان فیکٹریوں کاپتہ چلائے اور انہیں بند کرے۔ انہوں نے کہا کہ سنی عقیدے کے لوگ مساجد یا کسی جگہ بھی انتہا پسندی میں ملوث نہیں ہوتے۔ انہوں نے کہا کہ مجلس عمل اس سلسلے میں جلد اپنی حکمت عملی کا اعلان کرے گی

    http://beta.jang.com.pk/NewsDetail.aspx?ID=103838

  • For your informatiom that mosque was a deobandi sunni mosque. So please stop spreading lies about deobandis. and we are not wahabis.