Original Articles

Baba Farid of Pakpattan: Another Shrine attacked by Taliban-SSP-LeJ beasts

Baba Farid shrineAnother blast at the shrine of Sufi Saint Baba Farrid Shakar Ganj has once again reminded us of the threat to our own cultural traditions from the Salafist Saudi Arabian ideology penetrated through huge political influence over us via sponsored Mullahs, Terroris outfits and his favorite  dictator Zia-Ul_Haq.

One of the most influential and mutually binding aspect of  various Pakistani nationalities is their affections to the shrines, which infact is  the real center of religious observance as compared to the mosque.  The concept of “shrine” is a very significant part of our religious traditions and all over the world in all Muslim countries except Saudi Arabia,   And the reason for this is its mass appeal due to different ways of showing affections and love to God, Humanity and its values irrespective of race and religion. In south Asian religious traditions,  it is not considered a ban in Islam which is like that in Saudi Arabia. If you go to Saudi version of Islam, as they say, a shrine is really a no-go area, while in other parts it has nothing wrong.

I mean, one of the main poet of Pashto, Rahman Baba, whose shrine is in Peshawar, he is one of the greatest saint work of the Pashto language. His shrine was bombed by Pakistani Taliban. So that thing that comes in, and it was never destroyed or it was never touched in the last hundred years.

Many other shrines of Sufis were destroyed in Khyber Pakhtunkhwa. The shrine of data Ganj Baksh was attacked and recently Abdullah Shah Ghazi’s shrine was also attacked resulting in deaths.

Nadeem Farooq Paracha in his Op-Ed has replied to the answer of why Shrines are attacked,

“The shrine culture of devotional, recreational and professional activity around the shrines of Muslim saints has been present in the subcontinent for over a thousand years. It is largely associated with activity around the shrines of Sufi saints who started arriving from Iraq, Iran and Central Asia with various waves of Muslim imperialists from 8th century onwards.”

“This popular religious culture was not attuned to a puritan interpretation of jihad, which constituted a problem for the Zia regime. He had to propagate the importance of ‘jihad against the infidels’ in the wake of Pakistan’s frontline status in the CIA-backed guerrilla war against Soviet occupation forces present in Afghanistan. The dictatorship went about building a number of puritan mosques and madressahs, mostly funded by donations from the Gulf states. Zia also began partronising certain spiritual leaders (pirs) around some shrines.”

“This was also done because many shrines (especially in Sindh) had become the centre of activity of various anti-Zia political forces. The tactic of hijacking the shrines by the Zia regime was successful in diminishing the participation of the middle-class in the shrine culture, but the culture’s core participants (the masses) remained intact. The status quo in this regard remained unchanged, and many shrines faced neglect and growth of crime around them.

The state’s interest in reinvigorating the all-encompassing shrine culture was revived after the tragic 9/11 episode. Governments under Musharraf (and the current PPP-led coalition) put in efforts to upgrade various shrines in an attempt to arrest the growth of extremism which has also found an appeal among the urban middle-class. This is why puritan terror outfits like the Taliban have begun targeting the shrines.”

About the author

Ali Arqam

9 Comments

Click here to post a comment
  • Another blaming game by LUBPS without any proof and without any investigation….
    LUBP is infect encouraging sectarian violence by this pre-mature blame game….

  • @ “This popular religious culture was not attuned to a puritan interpretation of jihad, which constituted a problem for the Zia regime. He had to propagate the importance of ‘jihad against the infidels’ in the wake of Pakistan’s frontline status in the CIA-backed guerrilla war against Soviet occupation forces present in Afghanistan. The dictatorship went about building a number of puritan mosques and madressahs, mostly funded by donations from the Gulf states. Zia also began partronising certain spiritual leaders (pirs) around some shrines.”

    As for as Jihad is concerned, there is no need of any thing else except Quran-e-Qarim.
    About 400 verses in Quran discuss the different matters of Jihad. This Holly Book is the main source of Jihadi literature all around the world. jihadi verses of Quran are even as clear as they font need to be further interpreted

    I strongly condemn these brutal attacks and I asked for a partial, productive and free investigation. I belive that who so ever is involved in this should be apprehended and punished.

    and I also want to clear that Taswoof and Qaberparesti are two different things.

  • How?
    What do you think, which part of the above text hurt you, the one from the editor or from NFP.
    The first part very simply elaborated what is the importance of Shrine in South Asian traditons and the second part threw light on the politically manifested steps by Zia.
    As for as Jihad, the very concept, its role in contempory age is concerned, it is a major source of differences between sensible intellectuals like Ghamidi, Fethullah and other big names as compared to Qutbian-maududian interpretations, influenced by the later politically motivated ideas.
    It depends on whom you follow, as for as Tasawwuf is concerned, it is indeed very interesting that the strong south Asian essence of it is not even digested by the moderate intellectuals like Ghamidi and Pervez.
    As Tasawwuf is about Love, intimacy, devotion, affections and its expression in very aesthetic way as Music and dance.
    Read Baba Fareed, Bhulley Shah, Rehman Baba and other Sufis, it is about feelings and expressions not verbosity.

  • @Kashif Naseer

    “I strongly condemn these brutal attacks and I asked for a partial, productive and free investigation. I belive that who so ever is involved in this should be apprehended and punished”

    are you sure?

  • @Kashif Naseer:

    Overtime your deobandi terrorist friends Taliban claim responsibility. Wait a few hours and they will happily claim responsibility for this one too while Taliban supporters like Jamaat Islami and deobandi Mullahs will be blaming backwater and God knows who WITHOUT any evidence.

    Deobandis are trying to carve out a deobandi state from Pakistan that is why deobandis are not opposing these Talibans except for occasional lip service.

  • I am a Sunni (Barelvi) Muslim and my question is that why our mosques, shrines, activists and Ulamas are being targeted, just because that there is no reaction in same language.

  • تمام دیوبندیوں اور جماتیوں سے یگ گزارش ہے
    ہر نماز کے بعد یہ دعا کریں

    یا الله یہ دھماکے جو بھی کر رہا ہے انہیں عذاب دے
    یا الله یہ دھماکے اور قتل جو بھی کر رہا ہے ان کو ذلیل اور رسوا کرے
    یا الله یہ خودکش دھماکے جو بھی کر رہا ہے یا انہیں سپورٹ کر رہا ہے انھیں دنیا اور آخرت میں ذلیل اور رسوا کر

    امین

    ( اس دعا سے منافقت کھل کر سامنے آجاے گی )

  • From BBC Urdu:

    مزاروں اور درگاہوں پر حملے
    برصغیر کے عظیم صوفی شاعر اور مذہبی ہم اہنگی کی بہت بڑی علامت فرید الدین گنج شکر کی درگاہ پر پیر کی صبح بم دھماکہ ہوا ہے۔ بابا فرید ناصرف مسلمانوں میں مقبول ہیں بلکہ سکھ بھی ان سے مذہبی عقیدت رکھتے ہیں اور ان کا کلام گرنتھ صاحب میں شامل ہے۔

    پاکستان میں کسی صوفی بزرگ کی درگاہ پر یہ پہلا حملہ نہیں ہے بلکہ اس سے قبل اسلام آباد میں بری امام کی درگاہ پر خودکش حملہ، خیبر پختون خواہ میں رحمان بابا کے مزار پر دھماکہ، لاہور میں داتا گنج بخش کی درگاہ پر خودکش حملے، کراچی میں عبداللہ شاہ غازی کے مزار پر دھماکوں کے علاوہ کئی دیگر صوفی شعار پر حملے ہو چکے ہیں۔

    یہ حملے عوام میں غم و غصہ تو پیدا کر رہے ہیں لیکن حملہ آور صوفی بزرگوں کے مزاروں اور درگاہوں پر حملوں کے ذریعے کیا پیغام دینا چاہتے ہیں؟

    کیا ایسے حملوں سے تصوف یا صوفی نظریات کو کوئی خطرہ پہنچ سکتا ہے؟ جنوبی اشیا میں صوفیاء کا کیا مقام ہے؟

    اس حوالے سے اپنی کہانی، تصاویر اور ویڈیو اس لنک کے ذریعے ہمیں بھیجیں۔

    (ازراہِ کرم نوٹ فرمائیں کہ صرف اردو میں ٹائپ کی جانے والی آراء شائع کی جائیں گی۔ اس کے لیے آن سکرین کی بورڈ پر alt+shift دبا کر اردو سلیکٹ کریں)

    شائع شدہ: 10/25/10 12:15 PM GMT

    اپنا تبصرہ شامل کریں
    تبصرے تبصروں کی تعداد:15
    قارئین کے تجویز کردہ تازہ ترین
    تمام تبصرے اپنی آمد کے حساب سے

    وقت ارسال : 10/25/10 4:48 PM GMT

    يہ ملک پاکستان اسلام کے نام پر مسلمانوں کے ليے اس ليے بنا کہ يہاں مسلمان اپنے عقائد کے مطابق آزادی سے بلا خوف و خطر زندگی گزار سکيں۔ ليکن آج اس ملک ميں مذہبی مقامات سب سے زيادہ پُر خطر سمجھے جاتے ہيں۔

    [riazfarooqui]

    تجویز کنندہ 1 شخص

    اس تبصرے پر رائے دیں
    شکایت کریں
    وقت ارسال : 10/25/10 4:16 PM GMT

    آداب عرض ہے۔ جناب عالیٰ ميرا تو ايسی خبريں سن کر کليجہ منہ کو آتا ہے۔ ميرے پاس تين سوال ہيں:
    1- اگر يہ حملے طالبان کر رہے ہيں تو يہ کونسا اسلام ہے؟ رسول اللہ کےلائے ہوئے دين ميں يہ بربريت نہيں تھی؟
    2- اگر حکومت کی ايجنسی (I.S.I) کر رہی ہے تو يہ کہاں کی حب الوطنی ہے؟
    3- اگر بيرونی ايجنسياں (بليک واٹر، را، سی آئی اے) وغيرہ کر رہی ہیں تو پھر پاکستانی پوليس، خفيہ ايجنسياں، قانون نافذ کرنے والے ادارے کس لیے ہيں؟

    محمد الياس، شمالی وزيرسثان
    تجویز کنندہ 1 شخص

    اس تبصرے پر رائے دیں
    شکایت کریں
    وقت ارسال : 10/25/10 3:24 PM GMT

    صوفيائے کرام کی بدولت دين اسلام ہم تک پنہچا۔ ان بزرگان نے دين امن و پيار سے پھیلايا۔ ان کو ماننے والے امن و پيار سے رہتے ہيں۔ ان کے درباوں پر دھماکے کرنے والے فسادی ہيں اور ملک ميں افرا تفری پھیلا کر اپنے آقاؤں سے ڈالر وصول کرتے ہيں مگر وہ ناکام ہی ہوں گے کيونکہ بزرگان دين کو ماننے والے درويش صفت ہيں اور کبھی بھی مشتعل نہیں ہوں گے۔

    محمد سرفراز، پيرس، فرانس

    تجویز کنندہ 2 لوگ

    اس تبصرے پر رائے دیں
    شکایت کریں
    وقت ارسال : 10/25/10 2:59 PM GMT

    نہ صرف جنوبی ایشیا بلکہ پوری دنیا میں اسلام صوفیا کے ذریعے پھیلا ہے۔ ایران سے شام، مصر سے افریقہ اور ہند سے چیچینیا تک چودہ سو سال سے بنے مزارات اور لوگوں کی ان سے عقیدت اس بات کا ثبوت ہے۔

    نويد عاصم

    تجویز کنندہ 8 لوگ

    اس تبصرے پر رائے دیں
    شکایت کریں
    وقت ارسال : 10/25/10 2:49 PM GMT

    میرا کہنا تو یہ ہے کہ یہ حملے کروانے والے مسلمان ہیں ہی نہیں۔ یہ مسلمانوں کو آپس میں لڑانا چاہتے ہیں۔ پاکستان میں پہلے ہی حالات بہت خراب ہیں اور یہ اس بات کا فائدہ اٹھا رہے ہیں۔ حکومت کو ان کے خلاف ایکشن لینا چاہیے۔

    umar farooq sahil، pakpattan
    تجویز کنندہ 0 لوگ

    اس تبصرے پر رائے دیں
    شکایت کریں
    وقت ارسال : 10/25/10 2:32 PM GMT

    تمام مذاہب کو آپس ميں لڑوانا اور پاکستان کو تباہ اور خانہ جنگی کروانا دشمنوں کا مشن ہے۔ ہمارے خفيہ ادارہ مفت کے تنخواہ لٹاتا ہے۔ اتنا ناکام ہے۔ زندہ کو خودکش قرار دے ديا۔ جوگھر سے بھاگ جائے پوليس اسے خودکش قرار دے گی۔ ہوشيار، خبردار رہيں۔

    mm، kuw
    تجویز کنندہ 1 شخص

    اس تبصرے پر رائے دیں
    شکایت کریں
    وقت ارسال : 10/25/10 2:20 PM GMT

    تصوف یا صوفی نظریات کو ان دہشت گردوں سے کوئی خطرہ نہيں مگر ان افراد اور گروہوں سے يقيناً خطرہ ہے جنہوں نے صوفياء کے مزاروں کو اربوں روپے کي نفع بخش انڈسٹري ميں تبديل کر ديا ہے۔ يہ لوگ تصوف سے روح کا علاج کرنے کی بجائے عجيب و غريب انداز ميں شوگر سے لے کر ايڈز تک کا علاج کرتے پھرتے ہيں۔ ديوبند کو جتنا خطرہ طالبان سے ہے، صوفی مسالک خصوصاً بريلوی مکتبہ فکر کو اصل خطرہ ان خود ساختہ جانشينوں يا گدی نشينوں سے ہے۔ تصوف کا نصاب بھنگڑے، دھمالوں ، منتوں، لنگروں، جھاڑ پھونک، وسيلوں يا عرسوں پر مبنی نہيں ہے۔

    احتشام فيصل چوہدری، شارجہ، متحدہ عرب امارات

    تجویز کنندہ 2 لوگ

    اس تبصرے پر رائے دیں
    شکایت کریں
    وقت ارسال : 10/25/10 2:14 PM GMT

    ہوسکتا ہے کہ يہ مسلم فرقوں کو آپس ميں لڑانے کے لیے کسی تيسرے فريق کی شرارت ہو۔طارق محمود قاسمي، جدہ سعودی عرب
    جناب عالیٰ ہونے کو تو خدا جانے کيا کچھ ہو سکتا ہے ليکن ان حملہ آوروں کو جنت کی بشارت تيسرا فريق تو نہيں ديتا۔ مزاروں کے خلاف شديد نفرت کی تبليغ تيسرا فريق تو نہيں کرتا، ایک نجی چینل کے پروگرام میں کراچی کا جو مفتی عبداللہ شاہ غازی کے مزار پر خودکش حملے کی مزمت کرنے کيليے شرکت سے انکار کرتا ہے اس کا تعلق تيسرے فريق سے تو نہيں۔

    rashid suhail، leeds، برطانیہ

    تجویز کنندہ 25 لوگ

    اس تبصرے پر رائے دیں
    شکایت کریں
    وقت ارسال : 10/25/10 2:00 PM GMT

    مزاروں، درگاہوں پر حملوں سے تصوف یا صوفی نظریات کو خطرہ پہنچنے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوسکتا، کیونکہ ضیائی ’اسلامائزیشن‘ عمل نے اور پھر بعدازاں اسی ضیائی باقیات نے صوفی نظریات کو کتابوں، رسالوں، اخباروں، میڈیا، ہر جگہ سے غائب کر رکھا ہے، جو چیز غائب ہو، اس کو نقصان پہنچانا ممکن نہیں ہوتا۔ ہاں البتہ، یہ بات ضرور غور طلب ہے کہ صوفیاء کے مزاروں اور درگاہوں پر دھماکوں سے ’صوفی ازم‘ اصطلاح ازخو عوام کے ذہنوں میں آنے لگتی ہے، نتیجتاً، ’صوفی ازم‘ سے تجسس پیدا ہوتا ہے اور اس طرف توجہ دینے کی ترغیب ملتی ہے۔

    نجيب الرحمٰن سائکو، *** L@H()RE *** [{( پاکستان )}]
    تجویز کنندہ 14 لوگ

    اس تبصرے پر رائے دیں
    شکایت کریں
    وقت ارسال : 10/25/10 1:38 PM GMT

    درگاہوں پر حملے دہشت گردوں يا ان کے بيرونی سرپرستوں کی پاکستان پر مسلط کردہ جنگ کی اہم حکمت عملی ہے۔ دہشت گردوں کے نقشہ راہ کو ايسے سمجھا جا سکتا ہے۔ پہلے عسکری اداروں اور افراد پر حملے، پھر غير ملکی افراد پر حملے، پھر شہری تنصيبات يا عام آدمی پر حملے، اس کے بعد مخالفين خصوصاً غير مسلم اقليتوں پر حملے اور اب مذہبی يا مسلکی مقدس مقامات پر حملے۔ غرض یہ کہ دہشت گردوں کے حملوں کی نوعيت اور ان کی وسعت ميں بتدريج اضافہ ہو رہا ہے جو فوجی کارروائيوں کي’کاميابی‘ پر سواليہ نشان ہے۔

    احتشام فيصل چوہدری، شارجہ، متحدہ عرب امارات

    تجویز کنندہ 4 لوگ

    اس تبصرے پر رائے دیں
    شکایت کریں
    وقت ارسال : 10/25/10 1:32 PM GMT

    حملے چاہے کسی بھی جگہ ہوں، چاہے مسجد میں ہوں، درگاہوں میں، مندروں میں، گرجا گروں میں یہ سب دہشت گردی ہے کیونکہ ہر جگہ پر انسانی جانوں کا ضیاں ہوتا ہے۔

    Zahid Bashir، Gool Jammu and Kashmir
    تجویز کنندہ 11 لوگ

    اس تبصرے پر رائے دیں
    شکایت کریں
    وقت ارسال : 10/25/10 1:30 PM GMT

    ہوسکتا ہے کہ يہ مسلم فرقوں کو آپس ميں لڑانے کے لیے کسی تيسرے فريق کی شرارت ہو۔

    طارق محمود قاسمي، جدہ سعودی عرب
    تجویز کنندہ 4 لوگ

    اس تبصرے پر رائے دیں
    شکایت کریں
    وقت ارسال : 10/25/10 1:20 PM GMT

    گراں قدر قاری و بئلی بھانا صاحب و دیگر قارئین، آداب! صوفی بزرگوں کی درگاہوں پر حملوں کے ذریعے دہشتگرد پانچ مقاصد چاہتے ہیں،اول، عوام میں خوف و ہراس پھیلانا، مذہب و عبادات سے دور رہنے کی تلقین کرنا، دوم، عوام کو حکومت کے خلاف کھڑا کرنا کہ یہ جان ومال کی حفاظت میں ناکام ہو چکی ہے، سوم، ’افغانستان‘ کی راہ ہموار کرنا، چہارم، بھارت کو پاکستان کیخلاف پراپیگنڈہ کا روڈ میپ دینا، پنجم، چونکہ لگ بھگ تمام مزاروں کا تعلق سنی فرقہ سے ہے، لہذا کچھ عجب نہیں کہ حملوں کے پیچھے مقصد ’سعودی ازم‘ بذریعہ طاقت لانا ہو۔

    نجيب الرحمٰن سائکو، *** L@H()RE *** [{( پاکستان )}]
    تجویز کنندہ 14 لوگ

    اس تبصرے پر رائے دیں
    شکایت کریں
    وقت ارسال : 10/25/10 1:18 PM GMT

    صاف اور سيدھی بات، کوئی بليک واٹر وغيرہ نہيں، بليک واٹر تو ابھی جمعہ جمعہ اٹھ دن کی بات ہے، قصہ سن انيس سو اسی سے شروع ہوتا ہے جب فسادِ افغانستان کے ليے جنرل ضيا نے امريکہ اور سعودی تعاون کے ساتھ لوگوں کو مسلح کرنا شروع کيا۔ مجلس عزا پر حملوں کا سلسلہ تو تيس برس سے جاری تھا اب يہ لوگ صوفيوں کے مزارون پر بھی حملے کرنا شروع ہوگئے ہيں۔

    rashid suhail، leeds، برطانیہ

    تجویز کنندہ 20 لوگ

    اس تبصرے پر رائے دیں
    شکایت کریں
    وقت ارسال : 10/25/10 1:17 PM GMT

    يہ بات حقيقت اور روز روشن کی طرح عياں ہے کہ يہ ذہنيت چند وہابی ملاؤں کی ہے کہ مزاروں کو منہدم کيا جائے اور ہو سکتا ہے يہ نقطہ ايجنسياں استعمال کر کے ملک ميں افراتفری اور خانہ جنگی پيدا کرنے کی کوشش ميں ہوں۔ جس دن بريلوی مکتبہ کو مذہبی جنون آگيا اسی روز يہ حملے خانہ جنگی کا پيش خيمہ بنيں گے۔

    محمود بٹ.، بلنسیہ، ہسپانیہ

    http://newsforums.bbc.co.uk/ws/ur/thread.jspa?forumID=12870