Original Articles

Will ‘civil society’ please relax? – By Ayaz Amir

  Ayaz Amir has raised pertinent points in his article about the Civil Society

Ayaz Amir has been a respectable columnist of Pakistan though for PPP supporters, he has been a thorn all along. He is now a member of National Assembly from his native Chakwal and this is his second stint as a parliamentarian. In 1997, he was elected MPA. He has been elected on a PML-N ticket. One needs to applaud him for his writings, which generally are above party lines. In his column that I saw in today’s Khaleej Times, he has in a very subtle way told the so called “civil society” to relax or take a hike!

 Will civil society please relax?

Ayaz Amir (Pakistan)
Source: Khaleej Times
23 October 2010

The lawyers’ movement fostered many illusions, none more powerful than the myth that there was something called civil society in Pakistan, good people out to do good and inspired by the best of intentions.

 Retired bureaucrats, professors of academia in search of a cause, society girls and begums, and frustrated politicians—a politician who fails to get elected or who has nowhere to get elected from is a study in frustration—became the standard-bearers of civil society.

The media which had also come into its own thanks to Musharraf’s TV-proliferation policies—TV anchors, otherwise champions of revisionist history, must never forget their debt to Musharraf—skated over the miniscule numbers of civil society and glorified its image. Civil society became a catchphrase. Everyone was using it. If you were stumped for an answer you mumbled the words civil society and tried to look profound. It was surprising how often the trick worked.

NGOs once upon a time had started saying that they could manage things better than the government. The leading knights and ladies of civil society started suggesting that whereas the political class had failed the nation, they along with lawyers, the media and a rejuvenated judiciary would help fix the nation’s problems.

All these four classes—media, lawyers, judges and civil society—made common cause with each other, feeding upon each other’s prejudices, reinforcing each other’s arrogance. They lived in a world of make-believe. The world of reality was kept firmly at a distance.

Three years down the line we are in a position to judge the consequences of that strange and heady mood. The media is on a perpetual warpath, working itself up into a lather of excitement and anger even when it is pretty obvious that the performance is rather forced and contrived. What Oscar Wilde said of fox-hunting comes close to describing the media frenzy which is now part of everyday Pakistani existence. This is Musharraf’s revenge from beyond the seas, not diversity of news and opinion but the sameness of news and opinion delivered in a babble of 64 different voices.

We flatter ourselves by thinking that as a result of media plurality we are a more aware nation. The truth is more mortifying. We are becoming a dumber nation, feeding on trivia and endlessly dissecting it. This is a new kind of addiction which keeps us safely distracted from the consideration of issues which should be more rigorously looked into and more vigorously debated. On display in the media generally—and this has to be a loose generalisation—is the poverty of imagination and smugness of Pakistan’s lettered classes. In short, the media is running out of causes or is failing to see what the causes should be. To nourish its frenzy it has to sensationalise things and dig up meaning where none exists. The lawyers’ movement has successfully transmuted itself into a near-perfect expression of legal hooliganism, leaving other forms of public hooliganism far behind. It has even managed to take on senior members of the higher judiciary and there is little that the concerned judges have been able to do about it. Their lordships having ridden the tiger of lawyerly opinion now find that they cannot get off its back. Such is the way of most movements. And to think that the more starry-eyed amongst us thought that the rampaging black-coats would be the heralds of a new dawn.

If the firebrand of the lawyers’ movement, Ali Ahmed Kurd, of all people can be abused by a section of lawyers then it only goes to show that the Pakistani malaise, born of many things but born primarily of a lack of culture, is more about a poverty of the intellect and the imagination than anything else. Culture is not just song and dance but one’s attitude to life, one’s innate understanding of what the good life should be. Balance and a sense of proportion, the ability to engage in calm and reasoned discourse, the inculcation of tolerance, the ability to respect differences of opinion, a natural distaste for verbosity, an avoidance of mass hysteria, the shunning of slogans—these are mental attitudes grounded in the right kind of culture.

Their lordships too were affected by the times, their proclivity to indulge in a never-ending bout of judicial super-activism rooted in the belief nurtured by the lawyers’ movement that they had a near-divine duty to lead the process of cleansing the national stables. As a consequence they spread their wings far and wide touching a never-ending range of subjects, throwing things into turmoil but lacking the power to bring matters to a head or a conclusion.

To the paralysis of government many factors have contributed but this hyper-activism has also played its part. At its restoration the superior judiciary stood on the topmost peaks. Now it is inviting more than its share of cynicism.

The latest imbroglio it has found itself in is a case in point. Where in the world do judges concern themselves with rumours? Where do they go into a huddle, resembling an extended war council, on the basis of an unsubstantiated news report? This should be a sobering moment for the higher judiciary, an occasion to realise that judges allow themselves to be driven by the media only at their peril.

Agitation has its own norms but stability has its own requirements. Most of the expectations raised by the lawyers’ movement lie in ruins by the wayside. But if something is to be retrieved from the mess there has to be a soberer understanding of what the rule of law means.

Behind this mess lies the constant trumpeting and bellowing of civil society: retired grandees, assorted begums and a range of armchair warriors thundering for change even as, most of the time, they remain unclear what the elements of change should be, or how it should be brought about.

It hasn’t helped matters that the symbol of the Republic is a walking disaster, a man of few ideas and little understanding of how government works. But the answer to that is the spelling out of clear alternatives, not the constant fanning of the winds of instability.

The symbol of the Republic as much as the government he symbolises should have been weakened mortally by the burden of incompetence they carry. Ironically, however, through its ill-considered intervention into the media-generated rumour about the removal of judges, the Supreme Court, unwittingly no doubt, has extended a helping hand to a beleaguered president. The Supreme Court wanted a written assurance that nothing was on the cards but the weakness of its position was underlined when Prime Minister Gilani refused to oblige it and it found there was nothing it could do about it. Who looks discomfited and who looks comfortable?

This should be a time for everyone concerned to sit back and take stock of things. We have wasted too much time. Perhaps this was only to be expected but now is the time to leave the past behind and move forward, leaving it to historians to fight over the battles of yesterday.

Ayaz Amir is a distinguished Pakistani commentator and Member of National  Assembly  (parliament)

About the author

Ahmed Iqbalabadi

2 Comments

Click here to post a comment
  • Though an excellent article, Ayaz Amir sahab did justice to his party by targeting though very subtly, the president. Koi baat nahee. That is how you balance things.

  • For our readers in Urdu:

    سول سوسائٹی کہاں گئی؟…..ایازا میر

    2007 ء کی وکلاء تحریک کئی خیالی پیکروں کو پروان چڑھانے کا سبب بنی۔ ان خیالی پیکروں میں ایک افسانوی کرداروں سے بھی طاقتور ”سول سوسائٹی آف پاکستان“ تھی کہ بہت سے اچھے لوگ نیک مقاصد اور نیت کے ساتھ سڑکوں پر آئے۔ ان اچھے لوگوں میں ریٹائرڈ بیوروکریٹس، مخلص پروفیسر حضرات ، بیگمات،سوسائٹی گرلز اور کئی ناکام سیاستدان شامل تھے۔ سیاستدانوں میں اکثریت ایسے افراد کی تھی جو کبھی منتخب نہ ہوئے، نہ ان کا کوئی حلقہ انتخاب تھا اسلئے وہ سول سوسائٹی کے علمبردار بن گئے۔ قدامت پسند ٹی وی اینکروں کی قلیل تعداد بھی سول سوسائٹی کا حصہ بن گئی جس سے سول سوسائٹی کی تعظیم و تکریم میں بے پناہ اضافہ ہوا۔ یوں یہ لفظ مقبول عام بن کر ہر کسی کے زبان پر چڑھ گیا۔این جی اوز دعویٰ کرتی آئی ہیں کہ وہ حکومت سے کہیں بہتر نظم و نسق چلا سکتی ہیں۔ سول سوسائٹی کے سرکردہ غازیوں اور بیگمات نے یہاں تک کہنا شروع کر دیا کہ ملک کو ناکام بنانے میں سیاستدانوں نے بھر پور کردار ادا کیا، اسلئے وہ وکلاء برادری، میڈیا اور نئی آزاد عدلیہ کی مدد سے قوم کو مسائل کی دلدل سے نکالیں گے۔چاروں طبقات ،میڈیا، وکلاء ، ججوں اور سول سوسائٹی نے مل کر ایک مشترکہ مقصد طے کر لیا، ایک دوسرے کی مکمل طرف داری اور عوامی تائید کے نتیجے میں غرور کا پیدا ہونا فطری امر تھا۔ مگر وہ ایک ایسے جہان کے باسی تھے جس میں لوگوں میں یقین کا احساس پیدا کرنا کافی تھا حالانکہ یہ سب کچھ حقیقت کی دنیا سے بہت دور تھا۔
    تین سال گزر جانے کے بعد ہم اس پوزیشن میں ہیں کہ اس عجیب و غریب اور جلد بازی پر مبنی موڈ کے نتائج کا جائزہ لے سکتے ہیں۔ سنسنی پھیلانے اور ناراضگی کے اظہار کے علاوہ اس کے پاس کچھ نہیں لومڑی کے شکار کے بارے میں آسکروائلڈ نے کہا ہے ” ایک ایسے جانور کے پیچھے توانائیاں ضائع کرناجو کھانے کے بھی لائق نہیں “۔ سات سمندر پار سے مشرف کا انتقام ہے کہ 64مختلف آوازیں ایک ہی خبر یا رائے کو باربار دہرا رہے ہیں۔ہم یہ سوچ کر فخر کرتے ہیں کہ میڈیا کے اژدھام نے ہمیں ایک باشعور قوم بنا دیا حالانکہ حقیقت اس کے برعکس ہے۔ غیر ضروری فضول باتوں کے باعث ہم ایسی قوم بن رہے ہیں جس کی اپنی کوئی سوچ نہیں۔ ہم ایک ایسے نشے کے عادی بن رہے ہیں جو ہمیں ان حقائق سے دور لے جا تا ہے۔ حالانکہ کئی ایسے اہم امور ہیں جنہیں زیر غور لاکر ان پرسیر حاصل بحث ہونی چاہیے ۔ صورت حال اس کے برعکس ہے کیونکہ زیادہ تر ٹاک شوز فہم و فکر سے عاری اور عوامی شعور اجاگر کرنے میں کوئی کردار ادا کرنے سے قاصر ہیں ( پروفیسر اشفاق ایچ خان اور میکال احمد کے معاشی امور پر فکر انگیز آرٹیکلز اس میں شامل نہیں)۔
    بامقصد پروگراموں کا فقدان ہے یا پھر سمجھنے سے قاصر ہے کہ کن امور کو اہمیت ملنی چاہیے ۔ البتہ سنسنی خیزمواد کی کمی نہیں ، وکلاء تحریک انتہائی کامیابی کے ساتھ لاقانونیت کی ایک جامع تصویر بن چکی ہے جس کے سامنے ہر قسم کی لاقانونیت پھیکی پڑ جاتی ہے۔ یہ ماتحت عدلیہ سے ہوتی ہوئی اعلیٰ عدلیہ کے گریبان تک پہنچ رہی ہے، امکان نہیں کہ فکر مند اعلیٰ عدلیہ اس سلسلے میں کچھ کر پائے گی ۔ وکلاء نامی اس شیر کی پیٹھ پر سواری کرنے والی لارڈ شپ کیلئے اس کی کمر سے اترنا آسان نہیں۔ اچانک ابھرنے والی تحریکوں کا اکثر یہی انجام ہوا۔آج کوئی تصور بھی نہیں کر سکتا کہ انہی کالے کوٹوں کی تحریک کبھی صبح نو کی امید تھی ۔
    اگر وکلاء تحریک کے مقبول و شعلہ بیان رہنماء علی احمد کرد اپنے ہی حلقے کی بعض ارکان کی تنقید کا نشانہ بن سکتے ہیں تب یہ کہنا بے جا نہیں کہ پاکستانی معاشرہ فکرو دانش کی قلت کا ہی نہیں بلکہ ثقافتی و سماجی اقدار کے شدید بحران کا بھی شکار ہے۔ ثقافت محض ناچ گانے کا نام نہیں بلکہ انسانی زندگی کا ایک عمومی رویہ ہے جس میں معاشرے کا ہر فرد فطری طور پر جانتا ہے کہ اچھی معاشرتی زندگی کے لوازمات کیا ہیں۔ زندگی کے مختلف پہلوؤں میں توازن، پرسکون ماحول میں پر استدلال گفتگو، رواداری، اختلاف رائے کا احترام، بیکار اور طویل بحث سے پرہیز ، سنسنی پھیلانے سے حتیٰ الامکان گریز، نعرے بازی سے اجتناب وغیرہ جیسے معاشرتی رویئے اور انسانی خواص ہی دراصل مثبت ثقافتی اقدار کی بنیاد ہیں۔عمومی رویئے لارڈ شپ کو بھی متاثر کرتے ہیں، کبھی ختم نہ ہونے والی سپر جوڈیشل ایکٹوازم کا تعلق بڑی حد تک وکلاء تحریک کے پروان چڑھائے گئے ان عقائدسے ہے جس میں لارڈ شپ کو یقین دلایا گیا کہ ملک کا سیاسی گند صاف کرنا خدا تعالیٰ کی جانب سے ان پر عائد کی گئی ذمہ داری ہے جسے انہوں نے پورا کرنا ہے۔ اسی کا نتیجہ ہے کہ عدلیہ نے ہر شعبے میں مداخلت شروع کی جس کے مثبت نتائج برآمد نہ ہوئے مگر ابتری پہلے سے کہیں زیادہ بڑھ گئی۔موجودہ حکومت کی ناکامی کے جہاں دیگر کئی عوامل ہیں، انہی میں سے ایک جوڈیشل ایکٹوازم بھی ہے جس میں اکثر موقعوں پر بغیر سرسری سماعت کے احکامات جاری کر دیئے گئے۔ بحالی کے دنوں میں اعلیٰ عدلیہ مقبولیت کے عروج پر تھی مگر آج ہر کوئی انگلی اٹھا رہا ہے۔آدھی رات کے وقت اچانک ملک میں تھرتھلی مچانا اس کی ایک مثال ہے۔ کیا دنیا کے کسی بھی ملک میں ایسا نہیں ہوا ہے کہ ججوں نے افواہوں پر ردعمل کا اظہار کیا ہو؟ لوگوں کیلئے موقع ہے کہ غور کریں کہ احتجاج کے اپنے اصول جبکہ استحکام کے کچھ اپنے تقاضے ہیں۔ وکلاء تحریک سے جو توقعات وابستہ کی گئی ، آج راستے کی دھول بن چکی ہیں۔ اگر اس ابتری کی تلافی کرنا چاہتے ہیں تب ہمیں قانون کی حکمرانی کے معقول معنی سمجھنا ہوں گے۔اس ابتری کے پس منظر میں چیخنے چنگھاڑنے والے ریٹائرڈ بیوروکریٹس، بیگمات اور آرام کرسی پر بیٹھنے والے جنگجوؤں پر مشتمل سول سوسائٹی ہے جو مسلسل تبدیلی کے صدائیں لگا رہے ہیں۔ ان میں سے کوئی ایک یہ وضاحت نہیں کر سکتا کہ کس نوعیت کی تبدیلی چاہتا ہے ،کون سے عوامل تبدیلی کا باعث بنتے ہیں اور یہ کہ وہ تبدیلی کیسے لائیں گے ؟
    یہ کہنا کہ مملکت کا علامتی سربراہ ایک چلتی پھرتی بربادی ہے جس میں صرف بصیرت کی ہی کمی نہیں بلکہ حکومتی امور کے بارے میں بھی وہ کچھ نہیں جانتا۔ اس نوعیت کے اعتراضات مزید عدم استحکام کا پیش خیمہ ثابت ہونے کے علاوہ کچھ نہیں کر سکتے ۔ نااہلی کا بوجھ مملکت کے علامتی سربراہ کو اخلاقی طور پر کمزور کرنے کیلئے کافی ہونا چاہیے تھا مگر ججوں کی برطرفی کی افواہوں کی بنیاد پر عدلیہ نے مداخلت کرکے درحقیقت غیر دانستہ طور پر تنہائی کے شکار صدر کی مدد کی ہے۔ سپریم کورٹ نے تحریری یقین دہانی کا تقاضا کیا مگر وزیر اعظم کے صاف انکار نے اسے سوالیہ نشان بنا دیا۔ بے اطمینانی کس کے حصے آئی ، کون مطمئن دکھائی دیا؟ہر متفکر شہری کوپرسکون رہ کر حالات کا جائزہ لینے کی ضرورت ہے۔ ہم نے بہت وقت ضائع کر دیا، بہتر ہو گا کہ ماضی پیچھے چھوڑ کر آگے کی طرف دیکھا جائے۔ جہاں تک ماضی کا تعلق ہے اس کے جائزے کی ذمہ داری تاریخ دانوں پر چھوڑ دی جائے۔

    http://search.jang.com.pk/details.asp?nid=477871