Original Articles

18th Amendment: The Parliament must not surrender its sovereignty to grade-22 bureaucrats in the Supreme Court

The pro-establishment judges in the Supreme Court of Pakistan have challenged the constitutional supremacy of the elected Parliament.

The Supreme Court’s order (on the 18th amendment) throws light on certain very important issues about the court’s recent role and function in our constitutional democracy.

The court has been stretching beyond its constitutional mandate. Suo motu notices were issued to fix prices of sugar and other commodities. Then the executive’s function was challenged as to whom to prosecute and not to prosecute in the name of implementation of the NRO judgment. For example, the SBP was ordered to take action against people who had got their loans written off. It is difficult to comprehend that the SC can ask private business entities to recover their written-off debts, as this will amount to asking them to violate their contracts with these private parties.

As regards the 18th Amendment cases, the SC referred the matter to parliament. I don’t know how and under what authority. Courts cannot refer matters to parliament or legislature.

They can only decide matters according to the law and the Constitution. I don’t agree that parliament is a sovereign body while it is acting as a legislature, but while it is amending the constitution, it is exercising powers of the people, the ultimate sovereign.

The courts cannot direct the ultimate sovereign to do or not to do something. Another aspect of the court’s judgment is incomprehensible and that is the reference to Article 68. The court said Article 175-A is in conflict with the said article. What a novel jurisprudence, one article in conflict with another. Then which one should take precedence over the other — the latter or the former?

Normal statutory interpretation says that the former should submit to the latter, but here a new jurisprudence is laid down by the court. People are happy that the court has offered a compromise, but to me it appears that the sanctity of our judiciary as well as of our legislature has been compromised. We are going through forced transition from parliamentary democracy to juristocracy.

MIRZA NASAR AHMAD
Lahore (Source)

According to daily Dawn:

The 18-page long order focuses almost exclusively on Article 175A. Cutting through the legalese, it appears the SC has dictated a constitutional judicial appointment process under Article 175A that will feel very much like the old process even if it is dressed up in the new clothing of the Judicial Commission and the Parliamentary Committee. Under the old process, the chief justices of the SC and the high courts were the central figures in the appointment process, wherein the nominations could not be rejected by the prime minister/president without giving reasons.

Now, post the SC order of yesterday, the appointment process will once again be controlled by the chief justices, something arguably at odds with the language of and intention behind Article 175A. The names of candidates for appointment to the superior judiciary will now be ‘initiated’ by the chief justices, while the chief justice of Pakistan is to ‘regulate’ the meetings and affairs of the Judicial Commission. At the next step, the Parliamentary Committee will have to meet in camera and, in the case of rejecting a nominee forwarded by the Judicial Commission, will have to register its reasons for doing so — reasons which will be justiciable by the SC. In effect, the old process has been fitted into the new language of and bodies created under Article 175A. At this point, it does not appear clear if parliament will even necessarily need to change the language of Article 175A — the new process (with the old configuration of power) is operational forthwith and unless parliament wants to challenge the SC on the matter (something which seems unlikely) the issue stands settled.

Because a detailed judgment has not been given, it is difficult to comment on the legal rationale of the changes. It appears the SC has discerned some kind ‘fundamental principles’ (perhaps even basic features) of the constitution that are inviolable, though rather than striking down an amendment on the touchstone of those principles it has found a middle ground of tossing the matter back in parliament’s lap. (Source)

According to Daily Times:

The 18th Amendment was passed unanimously by parliament this year. The proposed judicial commission became a bone of contention between the executive and the judiciary despite the fact that the Chief Justice (CJ) of Pakistan is to head the commission while the parliamentary committee has equal representation of both treasury and the opposition. For the first time in Pakistan’s history, the method of appointing judges would be with the approval of parliament in a transparent manner and there would be across the board consultation to avoid any controversy. This is a welcome change from our past practices when the executive and the judiciary used to appoint judges behind closed doors. Rather than appreciating the elected representatives’ decision to make this process transparent, the SC decided to hear petitions against the 18th Amendment despite the fact that Article 239(5) of our constitution states: “No amendment of the Constitution shall be called in question in any court on any ground whatsoever.” It is a well-established principle in jurisprudence to interfere with constitutional amendments only in extremis and by way of exception. Very rarely have constitutional amendments been struck down by courts around the world and that too when the basic structure of a constitution is sought to be changed. In Pakistan’s case, the basic structure of our constitution is still an unsettled matter.

Now that Article 175-A has been sent back to parliament for reconsideration, if our elected representatives decide not to change it at all, it is hoped that the judiciary would not strike it down in deference to the will of the people expressed through their elected representatives. The matter should have been left to parliament from day one but that did not transpire. Now that the ball is in parliament’s court, our revered lordships should let this be the end of it. The January 2011 hearing seems a bit laboured in this case. The decision to leave the matter hanging for another three months is like a Damocles sword hanging over the head of parliament and the executive. The sovereignty of parliament should not be challenged and in order to avoid a clash of institutions, we hope that in January 2011, the SC would honour whatever decision has been taken by parliament. (Source)

Finally, this analysis by Nazir Naji (in Jang, 23 Oct 2010):

یہ پنڈورا بکس ہے…..سویرے سویرے…نذیر ناجی

عدلیہ کی آزادی کے لئے بنچ اور بار کا تعاون ضروری ہے۔ وکلا رہنماؤں کی طرف سے 18ویں ترمیم پر عبوری فیصلے کی جو زبردست تحسین کی گئی‘ اس سے عام آدمی اور سیاستدانوں کو فیصلے کے متعلق اپنی رائے قائم کرنے کا موقع ملا۔ آئین اور قانون پر مہارت رکھنے والے وکلا کی قانونی ”حس“نے انہیں یہ تو بتا ہی دیا ہو گا کہ عدلیہ کیا فیصلہ کر سکتی ہے؟ چنانچہ فیصلہ آتے ہی وکلا رہنماؤں کے بیانات کی بھرمار ہو گئی اور یہ تبصرے سامنے آئے کہ عدلیہ اور پارلیمنٹ میں تصادم کا خطرہ ٹل گیا۔ عدلیہ نے ملک کو بحران سے بچا لیا۔ عدالت عظمیٰ نے بہترین فیصلہ کیا۔ اب محاذ آرائی کا خاتمہ ہو جائے گا۔ حتیٰ کہ وزیراعظم نے بھی کہہ دیا کہ سپریم کورٹ کے فیصلے سے پارلیمنٹ کے وقار میں اضافہ ہوا۔ ہم فیصلے پر عملدرآمد کریں گے۔

نیک خواہشات رکھنا اچھا ہوتا ہے۔ مگر غیر واضح حقائق یا محض تصورات کی بنا پر اندازے قائم کر لینا‘ آخرکار نقصان دیتا ہے اور انسان حقائق کو دیکھنے اور سمجھنے کی ضرورت کو نظرانداز کر کے خودفریبی کا شکار ہو جاتا ہے۔ فیصلے کے فوراً بعد جب ہر طرف داد و تحسین کے ڈونگرے برس رہے تھے اور وکلا رہنماؤں نے طے شدہ پروگرام کے مطابق فیصلے کے حق میں رائے عامہ کو کامیابی سے ہموار کرنے کا سلسلہ شروع کردیا تھا اور بیشتر تبصرہ نگار اس مہم سے متاثر ہوئے بغیر نہ رہ سکے۔ مگر فیصلے کے ابتدائی حصے دیکھ کر اندازہ ہو گیا تھا کہ معاملہ اتنا سادہ نہیں جتنا ظاہر کیا جا رہا ہے اور فیصلہ بھی اتنا واضح نہیں کہ ایک ہی نظر میں سمجھ لیا جائے۔ اس میں بے شمار مضمرات ہیں۔

فیصلہ آنے کے بعد ”جیو“ کی خصوصی نشریات میں دوپہر 12 بجے سے پہلے میں نے کہہ دیا تھا کہ اس فیصلے کے تحت پارلیمنٹ کو اپنی ساورینٹی سپریم کورٹ کے سامنے سرنڈر کرنا پڑے گی جبکہ آئین اور عوام نے پارلیمنٹ کو یہ حق ہرگز نہیں دیا کہ وہ اپنی ساورینٹی پر کمپرومائز کرے۔

شام کو حامد میر ہی کے پروگرام کیپیٹل ٹاک میں مجھے اپنا موقف قدرے وضاحت سے پیش کرنے کا موقع ملا۔ میں نے عرض کیا کہ اس فیصلے سے تصادم کا خطرہ بڑھ گیا ہے۔ پہلے عدالتی فیصلوں سے صدر اور وزیراعظم متاثر ہو رہے تھے۔ وہ آئینی عہدوں پر فائز افراد ہیں‘ خود ادارہ نہیں۔ مگر یہ فیصلہ فیڈریشن آف پاکستان کو فریق بنا کر دیا گیا ہے۔ جس کی کسٹوڈین پارلیمنٹ ہے۔

اب معاملات عدلیہ اور پارلیمنٹ کے درمیان چلیں گے۔ اصولی طور پر اداروں کے درمیان کشمکش کا آغاز اب ہو گا۔ سپریم کورٹ نے اپنے فیصلے میں پارلیمنٹ کو حکم دیا ہے کہ وہ ججوں کی تقرری سے متعلقہ آئینی شق 175-اے پر نظرثانی کرے اور نظرثانی کرتے ہوئے شق کے اندر وہ تبدیلیاں لائے‘ جن کی فہرست عدالت عظمیٰ نے درج کی ہے۔

وکلا حضرات تبدیلیوں پر مبنی احکامات کو تجویز یا سفارشات قرار دے رہے ہیں۔ مگر عدالت عظمیٰ نے مکمل فیصلہ لکھنے کے بعد آخری پیراگراف میں اسے ”آرڈر“ قرار دیا ہے۔ بہرحال انہیں سفارشات‘ مشورے‘ تجاویز یا مطالبات کچھ بھی کہیں‘ اصل میں یہ احکامات ہیں ۔ جیسے کہتے ہیں کہ جج ہر جگہ جج ہوتا ہے‘ اسی طرح یہ بھی کہا جا سکتا ہے کہ جب سپریم کورٹ کے سترہ ججوں پر مشتمل فل بنچ اتفاق رائے سے کچھ کہتا ہے‘ تو اس کا درجہ حکم کا ہوتا ہے اور اسے حکم ہی سمجھنا چاہیے۔

ان سفارشات یا تجاویز کو کچھ بھی قرار دیں‘ سپریم کورٹ نے حکم دیا ہے کہ آرٹیکل 175-اے -2
– (ii) کے الفاظ اور مفہوم میں تبدیلیاں لائی جائیں۔ یہ تبدیلیاں صرف اور صرف آئینی ترمیم کے طریقہ کار کے تحت ہی لائی جا سکتی ہیں۔ پارلیمنٹ کو ایک نئی ترمیم بہرطور پاس کرنا ہو گی اور اسی چیز کو پیش نظر رکھتے ہوئے میں نے کہا تھا کہ معاملہ طے نہیں ہوا۔ پنڈورا بوکس کھل گیا ہے۔ سپریم کورٹ نے اس آئینی ترمیم کے لئے پارلیمنٹ کو تین ماہ کا وقت دیا ہے‘ اس کے بعد سپریم کورٹ خود فیصلہ کرے گی۔

میں نے وسیم سجاد سے سوال کیا کہ پارلیمنٹ حکم نہ مانے تو کیا ہو گا؟ ان کی رائے تھی ”اس پر فیصلہ خاموش ہے۔“ لیکن سماعت دوبارہ شروع ہو گی۔ معافی یا سزا کا فیصلہ عدلیہ کے اختیار میں ہے۔ آئینی تبدیلیوں کے لئے باقی درخواستیں بھی محفوظ رکھ لی گئی ہیں۔ سپریم کورٹ کو ابھی ان پر فیصلے سنانا ہیں۔ گویا پارلیمنٹ کو ایک حکم دے کر اسے مہلت دی گئی ہے کہ وہ اس کی تعمیل کرے۔ یہ سپریم کورٹ بنام پارلیمنٹ کا معاملہ بن گیا ہے اور وکلا رہنما ہمیں باور کرا رہے ہیں کہ اداروں میں تصادم کا خطرہ ٹل گیا ہے۔ حالانکہ اس حکم سے پہلے اداروں میں کوئی تصادم نہیں تھا۔ عدالت عظمیٰ آئینی مناصب پر فائز افراد کے بارے میں فیصلے کر رہی تھی۔ اداروں کا تصادم اب شروع ہوا ہے۔

اب آتے ہیں آئینی ترمیم کی طرف‘ جس کے بغیر سپریم کورٹ کی سفارشات یا حکم کی تعمیل نہیں ہو سکتی۔ پارلیمنٹ کو آئینی ترمیم کے لئے تین ماہ کا وقت ملا ہے اور یہ بنیادی نوعیت کی آئینی ترمیم ہے‘ جس میں ججوں کی تقرری کے معاملے میں پارلیمنٹ کو اپنی ساورینٹی سے دستبردار ہو کر چیف جسٹس آف پاکستان کی بالادستی ماننا ہو گی‘ ورنہ حکم کی تعمیل سے معذرت کرنا پڑے گی۔ اگر حکم کی تعمیل ہوتی ہے‘ تو پارلیمنٹ اپنے مینڈیٹ سے تجاوز کرے گی۔ آئین اس کی اجازت نہیں دیتا اور حکم کی تعمیل نہیں ہوتی‘ تو پارلیمنٹ توہین عدالت کی مرتکب ہو گی۔ کیا حکم کی تعمیل نہ کرنے پر پارلیمنٹ کو عدالت میں طلب کیا جائے گا؟

آئینی ترمیم کے معاملے کو دیکھیں‘ تو یہ مشکل ترین کام ہو تا ہے۔ یہ قانون نہیں ہوتا‘ جسے سادہ اکثریت سے پاس کر لیا جائے۔ بھارتی پارلیمنٹ میں درجنوں آئینی ترامیم کے بل پچیس تیس سال سے پڑے ہیں اور کوئی بھی حکومت انہیں پاس کرنے کے لئے مطلوبہ اکثریت حاصل نہیں کر سکی۔ کیا موجودہ پارلیمنٹ میں‘ اب دو تہائی اکثریت حاصل کرنا ممکن ہو گا‘ جو 18ویں ترمیم کے لئے حاصل ہو گئی تھی؟ ایسا نہیں ہو گا۔

اس کی متعدد وجوہ ہیں۔ پیپلزپارٹی اور مسلم لیگ (ن) میں وہ تعلقات باقی نہیں رہ گئے‘ جو پہلے تھے۔ ان دونوں میں تصادم شروع ہو چکا ہے۔ اس ترمیم کے لئے مسلم لیگ کا تعاون حاصل کرنا مشکل ہو گا۔ دیگر جماعتیں بھی پارلیمنٹ پر سپریم کورٹ کی بالادستی کی مزاحمت کریں گی۔ خصوصاً اے این پی نے اگر یہ پوزیشن تسلیم کر لی تو سپریم کورٹ میں خیبرپختون خوا کے نام کا معاملہ موجود ہے۔ اے این پی اپنے صوبے کے نام کا فیصلہ کرنے کا اختیار سپریم کورٹ کو ہرگز نہیں دے گی۔ پیپلزپارٹی اگر اس حکم کی تعمیل کرنا بھی چاہے‘ تو اسے خود اپنے اراکین کو منوانے میں مشکلات کا سامنا کرنا ہو گا۔ یہ جماعت پاکستان کو پہلا آئین دینے کا اعزاز رکھتی ہے اور 18ویں ترمیم کے ذریعے آئین کو بحال کرنے کا فخر بھی اسے حاصل ہے۔ اس جماعت نے آئین اور جمہوریت کی بحالی کے لئے بے شمار قربانیاں دی ہیں۔ اس کے اراکین کبھی آمادہ نہیں ہوں گے کہ پارلیمنٹ کی ساورینٹی کو عدلیہ کے سامنے سرنڈر کر کے ‘ اپنے ہی فیصلے کے نتیجے میں قائم ہونے والے ایک ادارے کی ماتحتی قبول کر لی جائے۔

ابھی تک تو یہی فیصلہ نہیں ہو سکا کہ سپریم کورٹ کے حکم کی رسپانس کا طریقہ کار کیاہو گا؟ آئینی اصلاحات کی کمیٹی موجود بھی ہے یا نہیں؟ سپریم کورٹ نے اسے فریق بنایا ہے جبکہ اس کمیٹی کے رکن میرحاصل بزنجو کا کہنا ہے کہ یہ کمیٹی صرف آئینی اصلاحات کی تجاویز پیش کرنے کے لئے بنائی گئی تھی‘ جس دن تجاویز کامسودہ سپیکر قومی اسمبلی کو پیش کر دیا گیا‘ کمیٹی کا وجود بھی ختم ہو گیا۔ پہلے تو یہی بحث چلے گی کہ سپریم کورٹ کے فیصلے پر عملدرآمد کے لئے طریقہ کار کیاہو گا؟

میں نے صرف چنداشارے کئے ہیں۔ سپریم کورٹ کا حکم ماننے میں کئی مراحل آئیں گے اور ہر مرحلے پر ایسے ایسے نکات اور مسائل کا سامنا کرنا پڑے گا‘ جن کا کسی کو اندازہ نہیں۔ مجھے بھی نہیں۔ ایک بات واضح ہے کہ آنے والے کئی سال اسی بحث میں گزریں گے۔ عوام اپنے مسائل کے حل کے لئے حکومت کی طرف دیکھتے رہیں گے اور انصاف کے لئے عدالت عظمیٰ کی طرف۔ اور دیکھتے رہ جائیں گے

About the author

Abdul Nishapuri

8 Comments

Click here to post a comment
  • Nazir Naji was from the very first day skeptic of the decision, and he asked the participants of Jihadi Ass-at Hamid Mir show, all of them including Azeem Daultana were clueless about the consequences of this decision.

  • I have never seen a single article in the constitution of Pakistan 1973, where it is said that Parliament is supreme.

    Our constitution is very clear about the matter of supremacy and it says all supremacy goes to Almighty Allah.

    Therefore the term “supremacy of Parliament” is extra constitutional and at least law literate people should not use this illogical and extra constitutional term.

  • Out of the frying pan into the fire-place.Things have become more complicated now as parliamentary sovereignty is at stke in persuance of “first episode” this verdict.No body knows what will happen when the “last but not least episode” of the verdict will be announced.

  • @Kashif

    Yours is a typical Jamaat Islami argument. That “all supremacy goes to Almighty Allah” argument ignores the fact that we need a practical mechanism to interpret and enact ‘Allah’s supremacy’. That mechanism is the parliament, the creator of the constitution.

  • سپریم کورٹ کا 18/ ویں ترمیم کے متعلق حالیہ فیصلہ غیر قانونی اور غیر آئینی ہے، جسٹس (ر) طارق محمود

    اسلام آباد (احمد نورانی) جسٹس (ر) طارق محمود نے انکشاف کیا ہے کہ سپریم کورٹ کا 18/ ویں ترمیم کے متعلق حالیہ فیصلہ غیر قانونی اور غیر آئینی ہے اور چند وجوہات کی بناء پر وہ اس ایشو پر مزید بات نہیں کرسکتے۔ جسٹس طارق نے سپریم کورٹ بار کے الیکشن سے ایک دن پہلے اس نمائندے سے بات چیت کرتے ہوئے بتایا کہ انہوں نے اس معاملے پر بات نہیں کی اور خود کو روکے رکھا لیکن حقیقت یہ ہے کہ 17/ رکنی بینچ نے پانچ ماہ تک 18/ ویں ترمیم کے متعلق درخواستوں کی سماعت کے بعد گند کردیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ججوں نے بچگانہ حرکت کی ہے۔ جسٹس (ر) طارق نے کہا کہ عاصمہ جہانگیر نے این آر او کے متعلق فیصلے پر کہا تھا کہ ججوں نے 17/ جڑوی بچیوں کی طرح فیصلہ سنایا ہے لیکن اس مرتبہ 18ویں ترمیم کے متعلق سپریم کورٹ کا فیصلہ پرانی صورتحال سے بھی بدتر ہے۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ فیصلے کی کوئی بنیاد نہیں ہے اور مجھے نہیں معلوم کہ 17/ ججوں نے یہ کیا کردیا ہے۔ ان کے اس بیان سے معلوم ہوتا ہے کہ عاصمہ جہانگیر کے ساتھیوں کے آزاد عدلیہ مخالف مقاصد ہیں اور وہ پیپلز پارٹی کی طرف سے عدلیہ کے ساتھ محاذ آرائی کرسکتے ہیں

    http://www.jang.net/urdu/details.asp?nid=478639

  • supreme court decision is supreme,but v c all decision of supremecourt in the light tht honourable cjp will remain chief justice for ever or honourable president mr zardari for ever iqtadar shabab k baad burha ho jata hai.v should get out of it.i salute the wisdom of raza rabbani and all 26 team members and other staff who work day and night above thr own party intrust.the parameter of reform commetee priority was not to give absolute power to one designation.president surrendered his strengthy powers to parliament.bhuttos ka qarz ada kia.now the question and order b4 parliament is whether inducting more judges in judicial counsul or resending name to parliamentry comitee is binding.or appeal b4 supreme court bench constitute by chief justice is like giving absolute power to one post is contrary to check and balance.i hope supreme court will give final decision to stregthen all institution for the stability of pakistan.l also request president tht top medals r not only for bloodsheds on borders.pl sir give top rank medals to parliament reform commettee.lawyers who work hard for rule of law and all constructive media persons.single v r drop institution v r an ocean.suhail afandi.