Newspaper Articles

PPP, R.I.P? – by Irfan Husain

ihAn old Native American saying gives this sage advice: “If you are unfortunate enough to find yourself on a dead horse, the best strategy is to dismount immediately.”

Sadly, I did not follow this wise counsel and found myself on the carcass of a PPP steed that had passed on five years ago. The truth is that the party died the moment Benazir Bhutto was cruelly assassinated on Dec 27, 2007.

Since then, the only thing holding the PPP up was the embalming fluid of power. Once this prop was removed, the party promptly imploded. With the perks and privileges of high office, it was possible to give the semblance that all was well, and there was still life in the party founded by Zulfikar Ali Bhutto in 1969.

After he was killed by Zia, first his widow Nusrat, and then his daughter Benazir, took over the reins. But that’s the problem with any family enterprise: after the early generations die, the organisation soon loses its sense of direction. Paid employees grab what they can in a final free-for-all.

Had elections not followed on the heels of BB’s murder, the party would have been over for the PPP long ago. There’s no way Asif Zardari could have held it together without the carrot of power. Even loyalists who hated him went along, partly because they had no choice, but mainly because he offered them jobs that enabled them to enrich themselves.

The few idealists still remaining in the ranks thought they might use this stint in power to do some good. And to be fair to them, they were able to push through some progressive legislation. But it is pragmatists like Raja Rental and his ilk who appeared to really thrive. It almost seemed that they knew they would never get another shot at power, so they might as well make hay for as long as they could.

The reality is that BB never groomed a successor, wanting to elevate one of her children, just as her father had done with her. For her, the PPP was a family heirloom to pass on to the next generation, not a meritocracy where the succession would be on the basis of party elections.

This is the model in much of South Asia as well as in other Third World countries. Across the subcontinent, a similar dynamic is at work: the Rajapaksas in Sri Lanka, Sheikh Hasina in Bangladesh, Sonia Gandhi in India, and Asif Zardari in Pakistan all represent familiar ambitions to further family interests.

My support for the PPP was largely based on its appeal to the marginalised. It was always seen as the party of the poor, the minorities and women. Whatever the reality, the party’s rhetoric placed it on the left, and so I stood by it for years, even when I could see the corruption eating away at its core.

I will never forget the sight of my late mother’s two Christian carers weeping, saying they had been orphaned after BB’s murder. The point is that despite her flaws, she genuinely cared for the poor: although it wasn’t in the news at the time, after the near-fatal suicide bombing of her joyous homecoming in October 2007, she went to several hospitals to visit those wounded in the attack on her truck.

Neither her widower nor her children have demonstrated this kind of empathy. It’s true that her son and two daughters hardly know Pakistan or its poverty at first hand.

To this extent, I can sympathise with young Bilawal for his reluctance to play a more active role. And I’m sure Zardari’s refusal to part with control over the PPP must have helped dissuade the inexperienced party chairman from plunging into the electoral battle.

To expect Bilawal to lead the PPP to victory was always an illusion. But the figure who was finally handed the party banner turned out to be Rehman Malik, one of the least impressive ministers we have had in a long and undistinguished rogues’ gallery. He and his boss were part of the PPP’s problem, so they could hardly provide a solution.

We had all expected the PPP to get hammered for its incompetence and its corruption. But the scale of its defeat stunned even its worst enemies. From 97 seats to 31 is a very steep fall in our electoral calculus. Today, it stands reduced to being a provincial entity when it was once the only truly national political party.

But before we write the PPP off, we should not forget that the poor need a party to represent them. Although its leadership lost contact with its base five years ago, this has generally been the case when it has been in power.

The truth is that the PPP has always been more of a movement than a party, and it is in opposition that it has shone. We should never forget the role it has always played against military dictatorship.

The question now is whether there is anybody who can revive it, or will the next five years in power in Sindh completely destroy whatever little credibility it has left? I’m sure Zardari is packing his bags; but even if he stays on (and out of jail), I doubt his ability to inspire demoralised party members.

Another harsh judgment is that while Pakistan has moved on, the PPP’s message has remained stuck in its old groove. As its defeat in Punjab shows, Pakistan is now more urban, and its young population is more aspirational. It’s no longer about roti, kapra aur makan, but about jobs, education and security.

Sadly, I see no PPP leader who even understands the problem his party faces, leave alone bringing about the changes so badly needed.

irfan.husain@gmail.com

Source: http://dawn.com/2013/05/18/ppp-r-i-p/

About the author

SK

2 Comments

Click here to post a comment
  • Replacing Pakistan Peoples Party (PPP) as the second most popular party is no mean achievement. Instead of being excited about PTI’s improved standing, many supporters were shell-shocked by their failure to sweep to power. PTI should take a leaf out of the book of the bloody but unbowed Awami National Party (ANP) who lost so many to terror, but remained committed to peace and did not try to shut down Karachi for even one hour in mourning. They looked Taliban in the eye on election day, but lost heavily to PTI in KP as the EU election observer mission admitted that Taliban violence had “unbalanced the playing field” in some places.

    Although ANP accepted the election results without demur, no one in Lahore, Karachi or Islamabad really talks about them because they are not in their social circle.

    In Karachi, PTI emerged as the second largest party behind Muttahida Qaumi Movement (MQM). After the fracas with MQM, a PTI supporter claimed she, “would side with Tehreek-e-Taliban Pakistan (TTP) the second they declare war on MQM.’’ Ironically, PTI supporters can be as bloody minded and intolerant as Bhai log. More is the pity because being educated and urbane, PTI wallahs really should know better and have the patience to respect other peoples’ point of view. In fact, many of those infuriated with MQM are the very same people who used to be their enthusiastic volunteers.

    Accusations of rigging may hold some water, but it’s certainly not on the scale which would have given PTI the ability to form a government at the centre.

    Why is it that the urban elite shouting themselves hoarse about the power of their vote are themselves unwilling to respect the power of the vote of the poor masses?

    The agony and esctasy of PTI
    Maheen Usmani
    http://blogs.tribune.com.pk/story/17329/the-agony-and-esctasy-of-pti

  • کجھ شہر دے لوک وی ظالم سن، کجھ سانوں مرن دا شوق وی سی‘
    Posted by admin / May 13, 2013 / Posted in تبصرے / 11 Comments

    10
    تحریر:انور عباس انور

    انتخابات کے نتائج نے واقعی سب کو حیران کر دیاہے۔مسلم لیگ نوازپنجاب،پیپلز پارٹی سندھ، تک محدود ہو کر رہ گئیں۔ کہا جاتا تھا کہ پاکستان کے عوام دہشت گردی کے خلاف ہیں اور دہشت گردوں کے خلاف لڑنے والی جماعتوں نے بڑی قربانیاں دی ہیں۔لیکن جب انتخابات کا وقت آٰا تو عوام نے انکی بجائے دہشت گردوں کی حمایت کرنے والوں کا ساتھ دینے کا فیصلہ کیا۔خیبر پختون خواہ سے امن پسند عوام کے تحفظ کے لیے اپنی جانوں کا نذرانے پیش کرنے والی جماعت عوامی نیشنل پارٹی اور اسکی اتحادی جماعت پیپلز پارٹی کو خیبر پختونخواہ سے دیس نکالا دیدیا ہے۔

    اسی طرح پنجاب سمیت پورے ملک میں منتخب نمائندوں کے ذریعے ترقیاتی منصوبے مکمل کروانے کا ریکارڈ رکھنے والی پارٹی کو بھی پنجاب کے عوام اور مقتدرہ قوتوں نے دیس نکالا دے دیا۔حالانکہ پنجاب حکومت نے اپنی اتحادی اور بعد میں اپوزیشن جماعت پیپلز پارٹی کے ارکان اسمبلی کے حلقوں میں کسی قسم کے ترقیاتی کام نہیں کروائے تھے ۔اور نہ ہی کسی قسم کے فنڈز جاری کئے گئے۔ایک الیکشن میں پی پی کو پنجاب سے بارہ یا پندرہ نشستین دی گئیں تھیں،مطلب یہ کہ پنجاب کے ہر ڈویژن سے ایک قومی اسمبلی کی نشست پر پیپلز پارٹی کا میدوار کامیاب قرار دیا گیا۔لیکن اس بار تو ’’ کاریگروں‘‘ نے پیپلز پارٹی کوپنجاب سے بالکل اٹھا کر پنجاب کی حدود سے باہر پھینک دیا ہے۔

    لاہور سے تمام تجزیہ نگاروں کا خیال تھا کہ لاہور تحریک انصاف ،پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ نواز میں تقسیم ہو جائیگا۔ اورپی پی اس بار لاہور سے دو سے تین نشستیں جیت جائے گی۔لیکن ’’ہنر مندوں ‘‘ نے یہاں بھی پی پی کا ’’ تخم ‘‘ مکا دیا ہے۔لیکن لوگوں کی زبانیں بند رکھنے کے لیے لاہور سے شفقت محمود جیسے شخص کو کامیاب قرار دیا لیکن انکا بھی کافی تردد کے بعد نتیجہ جاری کیا گیا۔ لیکن ’’کاریگروں سے ایک غلطی ہو گئی ہے کہ انہوں نے تحریک انصاف کے چئیرمین عمران خان کو ایک عام ورکر سے شکست دلواکر ثابت کیا ہے کہ عمران خاں کی حثیت ہی کیا ہے۔جب اس بات کا پورا پورا خیال رکھا گیا کہ مسلم لیگ نواز کے بھائی جان کہیں سے بھی ناکام قرار نہ دئیے جائیں۔

    اس بات میں کوئی شک و شبہ کی گنجائش ہی نہیں ہے کہ کہا جائے کہ پیپلز پارٹی کی اس میں کسی قسم کی کوئی غلطی اور کوتاہی نہیں ہے۔میرے نزدیک ساری غلطیاں ہی پیپلز پارٹی کی قیادت میں ہی ہیں۔۔طالبان کی جانب سے تو ابھی انتخابی مہم میں سیاسی جلسوں میں دھماکے کرنے کی دہمکیاں دی گئیں اور پاکستان کے عوام کو خبردار کرتے ہوئے انہیں پیپلز پارٹی،عوامی نیشنل پارٹ اور ایم کیوایم کی انتخابی مہم سے دور رہنے کے ’’احکامات‘‘جاری ہوئے ۔لیکن صدر آصف علی زرداری سے لیکر گورنرز صاحبان تک اور وز یر اعظم سے لیکر تمام وفاقی اور صوبائی وزرا کو کس نے روکا تھا کہ وہ پورے پانچ سال تک عوام کے پاس ہی نہ جائیں۔انکی داد فریاد ہی نہ سنیں۔ اور محض ایوان صدر میں بیٹھ کر یا گورنرز ہاوسز میں بیٹھ کر ترقیاتی منصوبوں کا افتتاح کرکے سمجھیں کہ انہوں نے اپنا حق ادا کر دیا ہے۔

    میں اپنے ضلع کی حد تک تو یہ کہہ سکتا ہوں کہ پورے پانچ سالوں میں وزیر اعظم تو بہت دور کی بات ہے ۔کسی ایک بھی وفاقی وزیر نے شیخوپورہ کا دورہ کرنے کی زحمت نہیں کی۔ کسی نے اس طرف دھیان دینے کی ضرورت ہی محسوس نہیں کی کہ شیخوپورہ جو کبھی پیپلز پارٹی کا منی لاڑکانہ ہوا کرتا تھا اسے دوبارہ حاصل کیا جائے۔انہیں تو بس ایک ہی کام تھا کہ مال کیسے بنایا جائے۔ مجھے یقین ہی نہیں بلکہ پختہ یقین ہے کہ ایسا ہی سلوک پاکستان کے ہر ضلع کے عوام کے ساتھ روا رکھا گیا ہے۔الیکشن کے اگلے روز میری دو کارکنوں سے بات چیت ہوئی ہے ،آپ بھی پڑھیں۔

    محترم محمد حسنین خاں سے دریافت کیا کہ پیپلز پارٹی کے ساتھ اتنا برا کیوں ہوا ہے تو انہوں نے جواب دیا کہ’’جب انتخابی مہم ہی نہیں ہو گی تو یہی ہوگا‘‘ میں نے پھر پوچھا کہ’’انتخابی مہم کس نے چلانی تھی اور اس نے کیوں نہیں چلائی؟حسنین خاں نے بڑی فراخدلی سے جواب دیا کہ ’’لیڈر کے بغیر انتخابی مہم نہیں ہوتی‘‘انتخابی نتائج کو دیکھ کر روشن خیال اور لبرل حلقے پریشان ہوگے ہیں وہ سوچنے لگے ہیں ،کہ انہیں اب پنجاب میں ہر طرف طالبان،لشکر جھنگوی ،اور سپاہ صحابہ کا راج نظر آتا ہے ۔ْ انکے خدشات کی بنیاد میاں نواز شریف کی طالبان دوست پالیسیاں ہیں۔

    ایک اور کارکن مرزا الیاس نے پیپلز پارٹی کی کارکردگی کے حوالے سے بتایا’’ بھائی ہم جو کچھ کر سکتے تھے کیا ہے مگرکسی نے ہماری ایک نہیں سنی۔آپ دیکھیں انتخابات کے دوران کوئی جلسہ اور کوئی جلوس ہی نہیں اور نہ ہی کوئی انتخابی مہم ہے۔میں نے بار بار کال کر کے پوچھا کہ یہ کیا ہو رہا ہے۔مگر کسی نے بھی کوئی تسلی بخش جواب دینا گوارا نہیں کیا۔مرزا الیاس کہتا ہے کہ مجھے ایسا لگتا تھا کہ لیڈر شپ نے کوئی فیصلہ کر رکھا تھا۔کہ اس بار اس نے کوئی کوشش ہی نہیں کی۔میں تو خود حیران ہوں کہ پی پی کے ساتھ ایسا کیوں ہواہے۔مرزا الیاس کا کہنا ہے کہ۔اگر پیپلز پارٹی نے سیاست کرنی ہے تو پارٹی میں تبدیلی لانی ہوگی اور تمام پرانی تنظیموں کو ختم کرکے نئی تنظیمیں بذریعہ پارٹی انتخابات منتخب کرنی ہوں گی۔تمام فیصلے میرٹ پر ہوں۔اور جدید دور کے تقاضوں کے مطابق میڈیا پالیسی میں چینج لانا ہوں گی۔

    نیچے سے لیکر اوپر تک تمام لیڈر شپ انتخابات کے ذریعے منتخب کی جائے۔’’زرداری صاحب کی کریڈیبلٹی پارٹی کے لیے بڑا مسئلہ ہے‘‘پارٹی کی طرف سے اختیار کی گئی پالیسی کو دیکھتے ہوئے پی پی کے جیالے اور ان کے حامی ووٹر گھر وں سے باہر نہیں نکلے۔دوسرا لیپ ٹاپ اور سولر انرجی پینل کی تقسیم سمیت دوسرے پروگراموں نے بھی عوام کو ’’گمراہ‘‘ کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی۔ پی پی پی کی نچھلی سطح کی قیادت سے لیکر اعلی سطح تک سب نے انتخابات جیتنے کی کوشش نہیں کی ،اسکی وجہ یہ ہے کہ انہوں نے سارا تکیہ بینظیر انکم سپورٹ پروگرام کے تحت فیض یاب ہونے والی خواتین کے گھرانوں پر کر رکھا تھا۔

    ان کا خیال تھا کہ قومی اسمبلی کے ہر ایک حلقے میں آٹھ سے دس ہزار خواتین بینظیر انکم سپورٹ پروگرام سے مستفید ہو رہی ہیں۔انکا تخمینہ تھا کہ ہر خواتین کے گھر والے پیپلز پارٹی کو ہی ووٹ دیں گی۔لیکن ایسا نہیں ہوا۔مخالفین نے یہ پروپیگنڈہ کر رکھا تھا کہ بینظیر انکم سپورٹ فنڈ کے پیسے پنجاب حکومت دے رہی ہے ۔مخالفین کا یہ ہتھیار کار گر ثابت ہوا۔پی پی پی کی اس بری شکست کی ایک بڑی وجہ پارٹی ٹکٹوں کی فروخت کو بھی قرار دیا جا رہا ہے۔

    راجہ پرویز اشرف ،یوسف رضا گیلانی اور میاں منظور وٹو سمیت محترمہ فریال تالپور تک سب کو پنجاب میں جلسے اور جلوس کرنے چاہئیں تھے ۔اگر انہیں اپنی ’’ جانیں‘‘ پیاری ہیں تو پھر سیاست کرنا چھوڑ دیں۔پاکستان کی تاریخ میں ایسا پہلے کبھی نہیں ہوا کہ کسی پارٹی کو اسکی قیادت نے اتنا مجبور اور لاچار چھوڑا ہو۔ایک بات اور بھی قابل توجہ ہے کہ امریکہ نے جب بھی ہمارے الیکشن کمیشن کے ساتھ مل کر صاف شفاف الیکشن کا انعقاد چاہا ہے اور اسکے لیے تعاون بھی کیا ہو تو ایسے ہی نتائج آتے ہیں۔

    پیپلز پارٹی کو اس سلوک کا مستحق اس لیے بھی سمجھا گیا ہے کہ اس نے تمام تر دباؤ کو خاطر میں نہ لاتے ہوئے ایران سے گیس پائپ لائن منصوبے پر دستخط کیے اور گوادر پورٹ کا انتظام بھی امریکی خوائش کے برعکس چین کے سپرد کیا ۔یہ دونوں کام ذوالفقار علی بھٹو کے ایٹمی پروگرام سے کسی طور بھی کم نہیں ۔ایران سے گیس پائپ لائن منصوبہ سے ہمارے اسلامی برادر ملک سعودی عرب کو بھی پسند نہیں ہے۔آگے آپ خود اندازہ لگا لیں کہ پی پی پی کو اس انجام سے کیوں دوچار کیا گیا ہے۔اب دیکھنا ہوگا کہ کیا میاں نواز شریف گیس پائپ لائن منصوبے کو جاری رکھتے ہیں یا اپنے امریکی دوستوں کی خواہشات کا احترام کرتے ہوئے اسے ختم کر دیتے ہیں۔کیونکہ بلوچستان میں ان کے اتحادی بلوچ رہنماؤں کو گوادر پورٹ کا انتظام چین کے سپرد کرنا ایک آنکھ نہیں بھاتا۔میاں نواز شریف کا یہ بھی ایک امتحان ہوگا ،کہ وہ بگٹی، مینگل اور مری سرداروں کو ساتھ لے کر چلتے ہیں؟

    ___________

    انور عباس انور سینئر صحافی ہیں اور اپنے بے لاگ تبصروں کے حوالے سے جانے جاتے ہیں

    http://www.topstoryonline.com/anwar-abbas-column-13051