Featured Original Articles

Exposed: PML-N MNA Malik Riaz led the attack on Christian community in Lahore

pmln

Related post: Anti-Christian violence in Lahore further blemishes Shahbaz Sharif govt’s record on minorities – by Amir Mir

Editor’s note: The following article (originally published in daily Dawn) offers clear evidence that PML-N leaders in Lahore, along with their Takfiri allies ASWJ-LeJ, played a key role in leading a procession of brainwashed Deobandi-Sunni youth to attack and burn more than 100 Christian homes in the Badami Bagh area. Given that PML-N has in the past taken no action against Takfiri Deobandi ASWJ terrorists involved in Ahmadi massacre in Lahore, Christian massacre in Gojra and Shia massacres in Chakwal, Khanpur and Rawalpindi, there is little hope that Saudi-funded Messrs Nawaz Sharif and Shahbaz Sharif will take action against the PMLN-ASWJ culprits responsible for recent ransacking of Christian properties in Lahore.

Cries for a lost home(land)
by Xari Jalil

Source: http://dawn.com/2013/03/10/cries-for-a-lost-homeland/

LAHORE, March 9: “Burn us too!” wails a woman, her hands repeatedly hitting her head. “Did they leave us alive to see all this?” Her tears stream down her face and her nose is red and swollen. In one of the doorways, a mother and son stand hugging each other and weeping as if someone has just died. “They took everything from us…” sobs the boy. “Those robbers took everything we had worked hard for.”

Not many of the homes in Joseph Colony are left intact. They are now skeletons, empty shells, housing nothing but ashes.

The Christian families, who had been shifted one night ago for ‘safety’ as the police told them, only came the next day to find out that all of their belongings and all their assets – in fact everything that they owned had been ransacked, robbed, and the rest mercilessly burnt to the ground. All because one man from among them was accused under Section 295-C: an accusation which has not been proved.

While the police remain guarded, only carefully revealing any kind of information to the media, and the Muslim community prefer to remain mute, the Christians are ablaze with fury.

“There are about 250 families in total,” says Aslam Masih. “Each family has faced a loss of about Rs0.8 to Rs0.9 million, and this figure is the lowest I am talking about.”

Mariam Bibi stands in her doorway peering inside. She cannot step inside because the ashes are still white and burning, and acrid, black smoke fumes out angrily.

“We saved every penny to collect for my daughter’s dowry,” she sobs. “In one night they have left us homeless and out on the streets. Where will we sleep now?”

A teenaged boy says the mob comprising hundreds were ruthless. “It was all preplanned. They had planned this attack on us from Wednesday thanks to a brawl between Saawan, and Imran. But they targeted us three days later, and pretended it was about blasphemy. They even threw our goats into the fire alive. They burnt our motorcycles. They stole whatever they could.”

“For the families their assets were their children,” says Gulnar Gill, executive director of Canadian Human Rights International Organization. “They simply fled for safety when the police told them to otherwise maybe lives would have been at stake too.”

An old man crying over the pages of a burnt Bible, murmurs through tears: Our Gods are not different….we were always brothers…why do they do this to us?”

Joseph Francis from CLAAS (Centre for Legal Aid Assistance based in UK) says that the whole issue is a farce. There was never any religion involved.

“If the truth is really understood this was just a trivial drunken fight,” he says. Despite this we handed over Saawan to the police but they still did this.”

Francis says if the mob was so angry about a blasphemy accused, how was it that they waited three whole days?

James Rehmat, a Christian worker, openly accuses the PML-N government of actually patronising the mob. “Some top leaders of the N-League, including Malik Riaz (local MNA) led the procession. On Friday night, another local PML-N leader came and had banners put up against blasphemy,” he points upwards to freshly put up cloth banners saying ‘The penalty of blasphemy is only beheading’.

“But we don’t see any politicians or other higher ups in this area after this incident although a whole day has passed by. How is it that all these incidents against us happened during the Shahbaz-Nawaz government?”

This relays a reaction to the angry victims and they suddenly break out chanting slogans against the government, women beating their chests in anguish.

Bishop Akram Gill, of the Emmanuel Church also stands and makes an official complaint against the Sharif-led Punjab government. “The Shantinagar and Gojra incidents too happened during the Sharifs’ rule. How is it that when they are not in power, we tend to live more peacefully? The time has come that Christians must ask themselves:
Can we live in Pakistan any longer? We request the UNO to give us refuge because we cannot find any justice in this country.”

Though Akram Gill thanks the police for controlling the situation, Sohail Johnson from the Sharing Life Ministry Pakistan has to stop himself from swearing at the police authorities. “They are lying!” he shouts. “They have done nothing to save us. They stood on one side while our Bible was burnt. Their excuse was there were too many terrorist outfits present and that the police was weak.”

Meanwhile many are of the opinion that the whole scenario was a game plan by the nearby iron factory owners who they believe are patronised by a powerful ruling family member. The attackers, they say, were factory workers, and the agenda was to grab the land the Christians had their houses on. And when Saawan had already been arrested why was their need of violence?

About the author

Kristina Yn

Humanitarian by heart, philanthropist by mind. Promoting a tolerant, progressive Pakistan.

7 Comments

Click here to post a comment
  • تکفیری دیوبندی دہشت گردوں کی سرپرستی اور شہ دینے والے مُسلم لیگ نواز کے لاہورممبر قومی اسمبلی محمّدریاض این اے 118

    مسیحی سوشل ورکر جیمز رحمت نے کُھل کر مسلم لیگ نواز کو بادامی باغ میں مسیحی آبادی پر حملوں میں مُلوّث قرار دیا ہےاور کہاہے کہ نواز لیگ کے ایم این اے محمّدریاض جمعے کی راتتکفیری دیوبندی دہشت گردوں کی احتجاجی ریلی کی قیادت کر رہے تھے اور دوسرے لوکل لیڈرزنے بینرز آویزاں کیئے“

    مسلم لیگ نواز نے سپاہ صحابہ کے ساتھ مل کر ایک نام نہاد امن گروپ کی جانب سے مسیحیوں اور احمدیوں کے خلاف تشدد اور نفرت پھیلانے والے بینر لگائے ہیں سپاہ صحابہ کا دہشت گرد احمد لدھیانوی فاروقی لاہور میں رانا ثنا الله کی رہائش گاہ پر قیام کرتا ہے

    مسلم لیگ نون اور سپاہ صحابہ دونوں سعودی امداد یافتہ ہیں اور القاعد ہ اور طالبان کی طرفدار جماعتیں ہیں

  • رانجھا 5

    فیصل آباد سے تعلق رکھنے والا ، نون لیگ کا رانا ثناءاللہ ، جو چیف جسٹس افتخار چوہدری کا کزن ہے ، لشکر ِ جھنگوی کا سرپرست ِاعلیٰ ہے ۔ایک کزن لشکر ِ جھنگوی والوں سے نواز شریف کے لئے ووٹ مانگتا ہے اور اس کے بدلے مین ان کو اپنی چھتری مہیا کرتا ہےاور دوسرا کزن ، افتخار چوہدری ، اگر ان میں سے کوئی پکڑا جائے تو اس کو ’قانونی ‘ مدد مہیا کرتا اور کرواتا ہے ۔ ’ مسنگ پرسنز‘ کے مقدمات کی آڑ میں دراصل صرف انہی مجرموں کی سرپرستی کی جاتی ہے ۔جب تک یہ شیطانی کولیشن موجود ہے ملک میں امن قائم نہیں ہو سکتا ۔

    شریفوں کے گھر کے بھیدی اب لنکا ڈھا رہے ہیں اور ان بے شرموں کے کرتوتوں کو بے نقاب کر رہے ہیں ۔سنیئے آج کا ثنا بچہ کا شو جس میں انعام اللہ نیازی نے بیان کیا ہے کہ شہباز شریف کو بھکر سے سپاہ ِ صحابہ ( نقل ِ کفر کفر نباشد ۔ لاکھ لعنت اس نام کو مس یوز کرنے والوں پر ۔ مجبورا لکھنا پڑتا ہے تو بھی دل کانپ جاتا ہے) نے منتخب کروایا اور وہ چونکہ اس وقت نون لیگ میں تھے اور شہباز شریف کی مہم چلا رہے تھے اس لئے اچھی طرح جانتے ہیں کہ وہ نشست سپاہ ِ صحابہ والوں نے شہباز کواپنا امیدوار بٹھا کر تحفہ میں دی ۔ ثنا کے اس سوال پر کہ اگر سپاہ ِ صحابہ والے اپنا امیدوار نہ بٹھاتے تو کیا شہباز شریف نہ جیتتے ، نیازی نے کہا کہ ہر گز نہیں
    ( 28:00منٹ سے سنیں !)
    http://www.youtube.com/watch?v=gOEN-0yrB9w

    http://www.topstoryonline.com/terror-strikes-in-karachi

  • incident took place on Saturday afternoon not on friday night.
    and there is no relationship at all between Rana Sanaullah and Iftikhar Chaudhry. even lie in proper manner

  • سانحہ بادامی باغ نے شہباز حکومت کے ریکارڈ کو مزیدگہنادیا

    لاہور (عامرمیر) مسیحی کش فسادات کے نتیجے میں انتہاپسندوں کی جانب سے 100 سے زائد گھروں  دکانات  املاک کو لوسٹنے اور نذرآتش کرنے کے واقعے نے اقلیتوں کے حوالے سے مسلم لیگ (ن) کے داغدار ریکارڈ کو مزید گہنا دیا ہے جو سنی دیوبندی شدت پسندوں کے غیض و غضب سے اقلیتوں کو محفوظ رکھنے میں بالکل ناکام ثابت ہوئی ہے۔ ایک محتاط اندازے کے مطابق شہبازشریف کے 5سالہ دورحکومت میں 200 کے قریب عیسائیوں  احمدیوں اور شیعوں کو موت کے گھاٹ اتارا گیا۔ لاہور میں فرقہ وارانہ ٹارگٹ کے کئی خوفناک واقعات ہوئے۔ بادامی باغ سانحہ سے ملتے جلتے ایک واقعہ میں 31جولائی 2009 کو سپاہ صابہ پاکستان کے ہزاروں کارکنوں نے گوجرہ میں مسیحی بستی کو نذرآتش کر دیا۔ اس واقعہ میں ایک ہی خاندان کے 8افراد کو زندہ جلا دیا گیا اور 100 سے زائد گھر نذرآتش ہوئے۔ پنجاب حکومت کی جانب سے واقعہ میں ملوث 70سے زائد افراد کے خلاف کوئی کارروائی نہ ہونے پر متاثرہ خاندان کا سربراہ جان کے خوف سے ملک ہی چھوڑنے پر مجبور ہوگیا۔ یہ فسادات قرآن شریف کی توہین کی خبر عام ہونے پر برپا ہوئے۔ خبر تو بعد میں جھوٹی ثابت ہوئی تاہم زندہ جل جانے والی عورتوں اور بچوں کی زندگیاں تو واپس نہ لائی جا سکیں۔ تمام 72نامزد ملزمان کو ایک ایک کرکے ضمانت پر رہائی مل گئی۔ واحد مدعی الماس حمید مسیح کو بھی پاکستان چھوڑنا پڑا۔ دراصل الماس حمید نے مسلم لیگ (ن) ٹوبہ ٹیک سنگھ کے صدر اور سپاہ صحابہ پاکستان (حالیہ اہل سنت والجماعت) کے رہنماؤں کو اس واقعے میں ملزم نامزد کیا تھا۔ ان میں مسلم لیگ (ن) کا عبدالقادر اعوان اور اہل سنت والجماعت کے مولانا عبدالخالق  قاری عبیدالرحمن شاہ اور حافظ محمد عمران شامل تھے جن کے خلاف انسداد دہشتگردی ایکٹ کے سیکشن 7کے تحت مقدمات درج کئے گئے تھے۔ گوجرہ سانحہ کے 10 ماہ بعد پنجابی طالبان کے فدائین گروپوں نے ماڈل ٹاؤن اور گڑھی شاہو میں قادیانیوں کی عبادت گاہوں کو نشانہ بنا کر 100 سے زائد افراد کو ہلاک کیا۔ 28مئی 2010 کو پنجابی طالبان کے ایک ترجمان منصور معاویہ نے کہا کہ ”کسی احمدی کو پاکستان میں چین سے نہیں رہنے دیا جائے گا  یہ یہودیوں سے بدتر ہیں اور ان کے مکمل خاتمے تک جہاد جاری رہے گا“۔ دوران تفتیش انکشاف ہوا کہ ان حملوں کا ماسٹر مائنڈ جناح ہسپتال کا ایک ڈاکٹر علی عبداللہ ہے جو کہ جماعت الدعوة میڈیکل ونگ کا صدر بھی ہے۔ اس نے بتایا کہ وہ علامہ اقبال میڈیکل کالج میں دوران تعلیم آزادکشمیر الدعوة کے ٹریننگ سنٹر سے جہادی تربیت حاصل کرچکا ہے۔ اس کی گرفتاری سے پہلی دفعہ یہ انکشاف ہوا کہ لشکر طیبہ بھی پنجابی طالبان کا حصہ ہے۔ ان جڑواں حملوں کے کسی ملزم کو تاحال گرفتار نہیں کیا جا سکا۔ سات ماہ بعد 4جنوری 2011کو گورنر پنجاب سلمان تاثیر اسلام آباد میں ملک ممتاز قادری کے ہاتھوں لقمہ اجل بن گئے جو کہ پنجاب پولیس کی ایلیٹ فورس کی جانب سے سلمان تاثیر کی سکیورٹی پر مامور تھا۔ اس نے سلمان تاثیر کو توہین رسالت قانون پر تنقید کرنے اور توہین رسالت کے جرم میں سزائے موت پانے والی آسیہ مسیح کیلئے صدارتی معافی طلب کرنے کی پاداش میں قتل کیا تھا۔ قادری نے اعتراف کیا کہ راولپنڈی کے مفتی حنیف قریشی اور قاری امتیاز حسین شاہ کی اشتعال انگیز تقاریر سے متاثر ہو کر اس نے یہ فعل سرانجام دیا۔ مفتی حنیف بریلوی جماعت شباب اسلامی کا امیر جبکہ امتیاز شاہ آمنہ مسجد راولپنڈی کا امام ہے۔ دو ماہ بعد 2مارچ 2011 کو رومن کیتھولک وفاقی وزیر شہباز بھٹی کو توہین رسالت قانون کے خلاف آواز بلند کرنے پر اسلام آباد میں قتل کر دیا گیا۔ جائے وقوعہ سے ملنے والے ایک اردو زبان کے پمفلٹ کی وجہ سے قتل کی ذمہ داری پنجابی طالبان پر عائد کی گئی۔ ان کے قاتل بھی ابھی تک آزاد ہیں۔ طالبان کا اگلا نشانہ 72سالہ سویڈش چیرٹی ورکر برگیتا المبے بنیں جنہیں 3دسمبر 2012 کو ماڈل ٹاؤن لاہور میں موت کے گھاٹ اتار دیا گیا۔ ان پر مبینہ توہین رسالت کے مرتکب دو پادریوں کی پشت پناہی کا الزام لگایا گیا۔ برگیتا ایک امریکی عالمی چرچ تنظیم فل گوسپل اسمبلیز کی منیجنگ ڈائریکٹر تھیں۔ پولیس کے مطابق کوٹ لکھپت سے گھر واپس جاتے ہوئے دو نامعلوم موٹرسائیکل سواروں نے انہیں نشانہ بنایا۔ اسی روز ماڈل ٹاؤن کے کیو بلاک کے احمدی قبرستا ن میں 100 سے زائد قبروں کی بے حرمتی کی گئی۔ اس واقعے سے 3ماہ قبل 13اگست 211کو لشکر جھنگوی نے 71 سالہ یہودی امریکی امدادی کارکن وارن وائن سٹائن کو اغوا کیا اور طالبان کو فروخت کر دیا۔ بادامی باغ واقعے کا خوفناک پہلو یہ ہے کہ مسلم لیگ (ن) کی پنجاب حکومت پہلے ہی اہل سنت والجماعت سے جنوبی پنجاب میں اگلے انتخابات کیلئے سیٹ ایڈجسٹمنٹ کرنے پر مخالفین کی کڑی تنقید کا سامنا کر رہی ہے۔ تاہم پنجاب حکومت کے ایک ترجمان نے ایسی خبروں کی تردید کی کہ اس کے کالعدم جماعتوں سے تعلقات ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ حکومت اقلیتوں کے تحفظ کے لئے بھرپور اقدامات کر رہی ہے۔

    http://beta.jang.com.pk/NewsDetail.aspx?ID=73082

  • Lets just nuke them, it’s a wasteland of ignorance and hate. Not civilized or cultured at all.