Original Articles

Minus Three + Leash on Media – by Sikandar Mehdi

"Let's have an Ayat-e-Kareema khatam to get rid of the government"

If some one got up from coma after a month or was away in some wonderland where they didnt have access to the internet or newspapers, especially Geo News, he will be in a complete state of shock to read THE NEWS on Sunday, September 26, 2010 a tabloid newspaper. I happen to get two newspapers on Sunday and both reflected a different political situation in Islamabad relating to SC & government. According to tabloid, THE NEWS, the government will fall in next 24 to 48 hours and GEO will be there for live telecast. Even Dr. Shahid Masood said that ARY will continue its live transmission till midnight for any new developments on Monday. Meaning to say the whole media was praying hard for the clash of Government & SC that would lead to its fall.

I have come to the conclusion on the recent rise in the temperature of media & supreme court that there will be no minus one (president) or minus two (President & PM) formula but if there is any formula that the establishment or power brokers would like to go along, it will be minus three formula (President, PM & CJ). CJ might be feeling like a hero to bring stumbling blocks for PPP led government to satisfy his personal ego but actually he is digging his own grave. We have always heard that “JUSTICE IS BLIND” we never thought we will live to see that. This CJ is a symbol of that old saying…….not need to elaborate on that. CJ who is alleged to have a fake domicile as claimed by many can’t hide when the ten corps boots will be heard marching down on Quaid e Azam Avenue and turning on Constitution Avenue of the capital.

A word to CJ, dear lordship there is no way you will ever become President like your ADC’s and Chiefs of Staffs in waiting like Ansar Abbasi, Dr. Shahid Masood and others are promoting. The man who has the stick to implement BANGLADESH MODEL, uncle Kiyani has said it again and again that Bangladesh model has failed. And my Lordship under which constitutional article your buddies are promoting “BANGLADESH MODEL”. You have in the back of your mind that you can call up the army under some clause (probably article 190) to implement your orders. Sir have you forgotten that CJ Sajjad Ali Shah did the same? CJ Sahib remember once you bring boots out of the barracks, it will be like flood water it doesn’t differentiate whose land it is going to be destroy a poor man’s land or a rich mans land. And once boots come to town to implement your order they sure will send you with the politicians on the honey moon to Attock Jail on the newly created beaches of river Indus. And sir I recall that there was a reference filed against you in Supreme Judicial Council, we haven’t heard in a long time about the reference filed against you by Musharraf. You were reinstated by your colleague judges and the judgment said “your removal was illegal” but no one has said anything about reference against you and that reference can be brought to light and your so called colleague judges will stab in your back like many before. We haven’t forgotten you did the same in 1999.

Let’s look at few scenarios

1- Minus one (Removal of President)

To remove President Zardari, this is the place to go!

Only constitutional way to do is by impeachment thru parliament. And in the current parliament any new grand alliance will not have enough votes to remove president because that vote will also include senate too. A simple mathematics will do the trick.

Senate (Upper House) 100

Parliament (lower House) 342

Total Votes 442

Votes required for Impeachment 297

All parties combined except PPP votes 285

PPP (own votes without any coalition) 157

Seats vacant 10

Votes short for impeachment 12

It should be kept in mind that PPP being government can easily muster support from its coalition partners in Baluchistan, Sindh and KP. Let’s not forget following important factors

Independents 22 (Traditionally aligned with Government)

JUI (F) 10 (Always willing to help any government)

ANP 19 (18th Amendment fulfilled their long desire of naming KP, NFC award and award of Hydel profits)

MQM 32 (With internal strife in the form of dissidents after the life of Altaf Bhai, last thing MQM would want is to be out of power)

2- Minus Two (removal of President & PM)

This is possible only thru parliament.  This impeachment as described earlier will not work. So with the new PM (other than PPP) in power they will not be able to remove president. As a net result the tussle continues like GIK – Benazir, GIK – Nawaz and Nawaz – Leghari. So the question is why the establishment will allow such a thing to take place. If the President is removed by the order of SC but under what case because there is no case pending against Zardari in Pakistani courts. If the President is removed by force or by the biased decision of SC, it will clearly bring PPP voters in the streets and that will make it easy for PPP to win next general elections whenever held due to sympathy vote.

3- Minus Three (Removal of PM, President & CJ)

In the current scenario the way things are going, if forced military will take over and impose martial law then the Minus Three will be in place. Does anyone have an iota of doubt that the boots will let CJ stay and let him run the show? The CJ whose ego trip is much larger than the whole SC building is not settling down, will the military let the highly honorable megalomaniac loose up on themselves? It is like robbing the house and asking the watch man not to do anything. The robber will quickly take care of the watch man first before robbing the house.

4- Media

Media doesn’t realize the kind of irresponsible and rein free freedom they enjoyed during this tenure under the kind protection of egotistic and biased judiciary. As portrayed whole country is corrupt except Judiciary, Lawyers and Media. If we look at the professional structure of this country, these three are considered to be the most corrupt professions and at the intellectual level probably at the bottom of the pit. The man who is repairing tyres on the road side has more intellect and honesty than these three professionals.

Media has also very short memory. I still haven’t forgotten THE NEWS and JANG being printed on single pages (Nawaz’s second tenure 97-99). Ask Najam Sethi he knows what happened to him. Ask media who gagged them. Judiciary should not forget how Nawaz Sharif shut down SC through his badmash wing from Gujrat (who later became rulers). And please don’t forget the procedure adopted by Nawaz Sharif, he paid off Quetta bench of SC thru his confidant at the time a retired judge Rafiq Tarar to trigger a judicial coup against the CJ which led to the down fall of the Sajjad Ali Shah who was instrumental in taking down Benazir and was ready to do the same with Nawaz. So dear CJ, precedent is there.

Justice Sajjad Ali Shah

It was win win for Nawaz & Rafiq Tarrar. Nawaz stayed as PM later to be taken down by Musharraf and Rafiq Tarrar became president and poor Sajjad Ali Shah went home. If we remember Sajjad Ali Shah had also requested Pak Army to come for the aid & protection of SC (under the constitution) and at the time Chief of

Former President Rafiq Tarar

Army General Jehangir Karamat refused to entertain such request. If army did not interpret such request according to CJ wishes at that time how will they do it now? Few months later General Jehangir Karamat was also sent home (though it was for different reasons).

The evil axis of Media and Judiciary/Lawyers and Nawaz will lead to further destruction of the country. At the moment the axis of evil is hard at work to discredit the government. Remember the murdered ex-ISI agent Khalid Khwaja, he said the 1997 mandate of Nawaz was given by ISI on the condition that he will impose Shariah. Don’t we have mullahs killing innocent people in the mosques and streets, now we will have them in the power corridors too. Didn’t we have enough mullahism during Zia & Nawaz’s tenures that we want more. Look where we are by shouldering with mullahism approach in last three decades.

So Mr. CJ it is requested to relax and lower your ego. You will be no more a judge whenever you retire or Fauji general will be no longer a general after retirement but politicians never retire they keep coming back with people’s votes but you cant even win your own town’s council’s elections even if you wanted to. Look at the history how many Judges and Generals have ever stood in elections in this country. People even forget the names of retired generals & judges but they do remember the names of politicians.

About the author

Ahmed Iqbalabadi

24 Comments

Click here to post a comment
  • Former President Rafiq Tarar 🙂

    The Lahore High Court accepts (Feb 9, 1998) the constitutional petition filed by Rafiq Tarar against his disqualification by the (former) Acting CEC and declared him qualified to contest for and hold the office of President. The acting CEC, Justice Mukhtar Ahmed Junejo of the Supreme Court, had found Mr Tarar, a former Supreme Court Judge, guilty of propagating views prejudicial to the integrity and independence of the judiciary at the time of his nomination as a presidential candidate under Article 63(G) of the Constitution and debarred him from the December, 1997 contest. [Courtesy: Excerpts from ISLAMIC PAKISTAN: ILLUSIONS & REALITY By Abdus Sattar Ghazali]

  • 🙂 Former President Rafiq Tarar

    What was Leghari’s successor in office, Rafiq Tarar, doing in Quetta on the day the order suspending Chief Justice Sajjad Ali Shah was handed down by the Quetta Bench of the Supreme Court? Why did Tarar and two others fly to Quetta in a special plane on that disastrous day? Leghari is right. Questions are being asked. Why were the police at the Quetta airport ordered not to manifest his arrival (which instructions they in fact manifested)? Where did Tarar stay on the night of November 26 (his departure on November 27 having been manifested by the airport police)? What reward was he given for his day’s efforts?

    Why, on January 20, was a story leaked by the government to the press about the obstruction of justice early in 1997 in an alleged rape case involving a servant in the then Justice Ajmal Mian’s Karachi house when he, as CJ, was presiding over the bench hearing contempt of court cases against Nawaz Sharif and others? Why were stories leaked about the foreign sholarship sponsored by the government to the wife of the good J-1 Saeeduzzaman Siddiqui? Why is the Muslim League inner circle boasting that the ‘package’ . REFERENCES: The second Tumandar
    Ardeshir Cowasjee Week Ending : 28 February 1998 Issue : 04/09 http://www.lib.virginia.edu/area-studies/SouthAsia/SAserials/Dawn/1998/28Feb98.html

  • 🙂 Former President Rafiq Tarar

    President pardons Nawaz; entire Sharif family exiled
    Nasir Malick and Faraz Hashmi Week Ending : 16 December 2000 Issue : 06/48 DAWN WIRE SERVICE http://www.lib.virginia.edu/area-studies/SouthAsia/SAserials/Dawn/2000/dec1600.html

    ISLAMABAD, Dec 9: President Rafiq Tarar has pardoned former prime minister Nawaz Sharif’s 25-year jail sentence but exiled the former prime minister and his family, a government announcement said in the wee hours of Sunday. “On the advice of the chief executive, the president of Pakistan, according to law has pardoned Nawaz Sharif’s remaining jail sentence while the rest of the punishment awarded by the honourable courts, which includes fine, forfeiture of property and disqualification from public office would remain in place,” the announcement said.

    “Nawaz Sharif and family have been exiled to Saudi Arabia. This decision has been taken in the best interest of the country and the people of Pakistan,” it said.

    The former prime minister was awarded 14 years’ Imprisonment on corruption charges, fined Rs20 million and disqualified from contesting election for 21 years. Mr Sharif, who was removed by the army in a bloodless coup, was sentenced to life imprisonment on charges of hijacking the plane in which General Pervez Musharraf
    was travelling. He had appealed in the high court, which had rejected the plea. He was fined Rs500,000 and forfeiture of property worth Rs500 million.

    The official announcement said that Nawaz Sharif and his family had been appealing to the chief executive and the president of Pakistan requesting clemency. They had also filed a petition requesting for waiver of punishment awarded by the Sindh High Court and the accountability court in the helicopter case. “Nawaz Sharif and his family had pleaded his falling health and need of specialist medical care urgently requesting that he may be allowed to proceed abroad for treatment. The Sharif family had also submitted that they be allowed to accompany him,” the announcement said.

    SAUDI ROLE: Indirectly admitting that the deal had been brokered by Saudi Arabia, the announcement said that recently, Pakistan’s closest friend Saudi Arabia offered the Government of Pakistan to accept the Sharif family for medical treatment on humanitarian grounds if exiled to their country.

    Sources said that Saudi defence minister and former intelligence chief Prince Turki Al Faisal, arrived in Islamabad “this morning on a special plane and held detailed talks with the military government officials as well as with Begum Kulsoom Nawaz at the residence of Saudi ambassador to Pakistan. The Saudi prince, according to Raja Zafarul Haq, also met Nawaz Sharif in Attock jail this afternoon along with Begum Kulsoom Nawaz, to give final touches to the deal. Nawaz Sharif, according
    to latest reports, has been brought from Attock Fort and admitted to the Armed Forces Institute of Cardiology in Rawalpindi.

    Sources in the Pakistan Muslim League claimed that Nawaz Sharif was averse to leaving the country but his son Hasan Nawaz, who is now in London, has played a decisive role in convincing his father to accept the deal.

    These sources said that under the deal, Nawaz Sharif and his family would not return to Pakistan for 10 years. The deal has fuelled speculations about the restoration of the suspended assemblies. However, some political analysts believe that an interim political structure will be established in the country and the army will step
    down after ensuring “due share” in the new political structure.

  • 🙂 Former President Rafiq Tarar

    Japan links aid to CTBT, democracy Bureau Report
    DAWN WIRE SERVICE Week Ending : 30 October 1999 Issue : 05/44 http://www.lib.virginia.edu/area-studies/SouthAsia/SAserials/Dawn/1999/30oct99.html

    Briefing reporters here on Wednesday on the short visit of the Japanese state secretary for foreign affairs to Islamabad, he said Mr Yamamoto had held detailed meetings with President Rafiq Tarar, chief executive’s senior adviser Syed Sharifuddin Pirzda, Foreign Minister Abdul Sattar and a member of the National Security Council, Dr Attiya Anayatullah. He had also met senior vice-
    president of the Pakistan Muslim League, Ejaz- ul- Haq.

    Commonwealth rules out Pakistan’s expulsion Bureau Report
    DAWN WIRE SERVICE Week Ending : 30 October 1999 Issue : 05/44 http://www.lib.virginia.edu/area-studies/SouthAsia/SAserials/Dawn/1999/30oct99.html

    He said the mission intends to meet with the Pakistan authorities including President Mohammad Rafiq Tarar, Chief Executive General Pervez Musharraf, Chief Justice of Pakistan Mr Justice Saiduzzaman Siddiqui, political leaders, the Human Rights Commission, and representatives of civil society.

    He said “the ministers are here to listen carefully to as wide range of views as possible, keeping in mind the interests of the people of Pakistan and the Commonwealth’s fundamental principles to which all its members Subscribe”. He said the mission will prepare a report of its findings for consideration of the colleagues in Commonwealth Ministerial Action Group on the Harare Declaration (CMAG) adding that the following day the CMAG will present its recommendations on Pakistan to heads of governments.

    Four members of NSC, three ministers named M. Ziauddin
    DAWN WIRE SERVICE Week Ending : 30 October 1999 Issue : 05/44 http://www.lib.virginia.edu/area-studies/SouthAsia/SAserials/Dawn/1999/30oct99.html

    ISLAMABAD, Oct 25: The government on Monday constituted the, much awaited, National Security Council( NSC) naming Sharifuddin Pirzada, Dr Mohammad Yaqub, Dr Attiya Inayatullah and Imtiaz Sahibzada as its members.

    According to an ISPR press release on the recommendations of Chief Executive Gen Pervez Musharraf, President Mohammad Rafiq Tarar on Monday appointed the members of the National Security Council (NSC) and ministers for finance and foreign affairs. In his October 17 address Gen Pervez Musharraf had announced that the NSC, to be headed by the chief executive, will comprise six members. These members will be chief of naval staff, chief of air staff, a specialist each in legal, finance, foreign policy and national affairs. Sharifuddin Pirzada, the ex-officio member, has apparently been appointed for his expertise in legal and constitutional matters. Pirzada got prominence during the first military rule of Gen Ayub Khan when he was appointed as foreign minister after the sacking of Zulfikar Ali Bhutto.

    Pirzada had also served as attorney general as well as law minister of Pakistan during the military rule of Gen Zia. Pirzada had also served as secretary general of the OIC (Organisation of Islamic Conference).

  • 🙂 Former President Rafiq Tarar

    Ordinance amended: Army gets powers to investigate cases
    Bureau Report Week Ending : 28 November 1998 Issue : 04/47 DAWN WIRE SERVICE http://www.lib.virginia.edu/area-studies/SouthAsia/SAserials/Dawn/1998/28Nov98.html

    ISLAMABAD, Nov 26: The federal government on Thursday notified that armed forces will have the power to conduct investigation “appropriate cases” of terrorism. President Rafiq Tarar on Thursday issued an ordinance amending the Armed Forces (Acting in Aid of the Civil Power) Ordinance, wherein the armed forces have been empowered to investigate “appropriate cases.”

    The amended ordinance to be called the Pakistan Armed Forces (Acting in Aid of Civil Power) (Amendment) Ordinance, 1998 has substituted section 5 of the ordinance which had provided that the armed forces might supervise investigation of any case but that too on the direction of the federal government. The new section stated that investigation of all the offences specified in the Schedule to this ordinance should be conducted in accordance with the provisions of the Code of Criminal Procedure, 1898 (Act V of 1898) and in appropriate cases the same may be conducted by the armed forces.

  • 🙂 Former President Rafiq Tarar

    The president in the shade By Ardeshir Cowasjee Week Ending:10 January 1998 Issue : 04/02 DAWN WIRE SERVICE http://www.lib.virginia.edu/area-studies/SouthAsia/SAserials/Dawn/1998/10Ja98.html

    TWO weeks ago, I was wrong when I wrote: “During the three years he sat there, one sole judgment authored by the Honourable Justice Tarar was recorded in a PLD — his concurring judgment in the case of the 1993 dissolution of the National Assembly restoring Nawaz Sharif.” Two judgments of his have been recorded, the second being
    Criminal Appeal No. 74/SAC/L, decided by Tarar on February 19, 1994, reported at 1994 SCMR 1466.

    This was the case of “Muhammad Ashraf and Others versus The State,” an appeal against the enforcement of the Hudood Ordinance and the conviction of the appellants by the Special Court for Speedy Trials No.II, Lahore. Muhammad Ashraf, Khalid Javaid and Zafar Ali had
    been sentenced to have their right hands amputated from the wrist and their left legs from the ankle, to seven years RI, and to a fine of Rs.20,000 each. Their crime was the theft of Rs.40,000 and of a licensed pistol from one Zahid Mahmood, and for “causing him simple and grievous injuries” in the process.

    The learned honourable Chairman of the Supreme Appellate Court, Justice Muhammad Rafiq Tarar, headed the bench comprising members Justices Afrasiab Khan and Muhammad Zubair. The honourable Justice Tarar wrote the judgment. His concluding paragraph :

    “Before convicting the appellants, the learned trial Court considered all the relevant provisions of law, including sections 10, 11, 16 read with sections 7 and 20 of the Offences Against Property (Enforcement of Hudood) Ordinance 1979 which cater for situations where Hadd shall not be imposed and/or enforced and on proved facts rightly concluded that the offence committed by the
    appellants squarely falls within the ambit of section 17(3) of the Ordinance. The only punishment provided by section 17(3) is the amputation of right hand from the wrist and left leg from the ankle which has been imposed by the learned trial Court and we confirm the same.” To repeat, the year was 1994.

    Another interesting case has come to light involving the honourable and learned Justice Tarar. On August 3, 1994, Justices Munir Khan and Mir Hazar Khan Khoso of the Supreme Court heard the matter of “Khalil-uz-Zaman versus Supreme Appellate Court Lahore,” reported at PLD 1994 SC 885. This was an appeal against the judgment of that
    court dated March 14, 1993, passed in Criminal Appeal 91/SAC/L/92. The chairman, again, of that honourable Supreme Appellate Court was Justice Tarar, sitting with Judges Raja Afrasiab Khan and Abdul Majid Tiwana.

    Justice Tarar wrote the judgment (not reported), opening up : “This appeal by Khalil-uz-Zaman convict is directed against the judgment of the learned Special Court for Speedy Trials-II Lahore, whereby he was convicted u/s 302 and 324 read with Section 337-F of the PPC. Under Section 302-PPC he was sentenced to death as Tazir and was directed to pay Rs.50,000 as compensation to the legal heirs of Mst Aasia Perveen deceased u/s 544-A of the Cr.P.C. and u/ss 324/337-F of the PPC he was sentenced to imprisonment for 10 years….” He finished off: “In the circumstances, the appellant is liable for Qatl-e-Amd u/s 302(a) of the PPC punishable with death as Qisas. In that view of the matter, the order directing payment of compensation is set aside. His conviction and sentence u/s 337-F is also set aside and with the above modification his appeal is dismissed.”

    Supreme Court Judges Munir Khan and Khoso heard the convict’s appeal against Justice Tarar’s judgment, and, inter alia, in their judgment have recorded :

    “…we are in no manner of doubt that the trial Court and also the learned Appellate Court had no lawful authority / jurisdiction / power whatsoever to convict the petitioner under section 302 PPC or to impose penalty of death on him, and have acted in gross violation of law. The Courts derive authority to punish the accused
    from the statute. If the statute does not provide death penalty for the offence then obviously the Court would have no jurisdiction to award the same, and, as such, the conviction and sentence of the petitioner recorded under section 302 PPC is coram non judice.

    “…If the impugned judgments are allowed to stand then the petitioner would be deprived of his life obviously in pursuance of orders which suffer from lack of jurisdiction and authority, gross carelessness, illegality and were violative of Fundamental Rights
    guaranteed by the Constitution. Fortunately for the petitioner, our Constitution gives protection to the citizens of Pakistan against illegal treatment in the matter of life, liberty and body…. In this case the Courts, vide impugned judgments, have ordered the petitioner to be hanged to death although he was/is not liable to death in law for the offence allegedly committed by him. There can be no case more fit and proper than the present one for interference in exercise of our original jurisdiction under Article 184(3) of the Constitution.”

    “….Had the Courts taken the trouble of reading three sections of the Pakistan Penal Code, i.e. section 306, 307 and 308, we are sure they would not have sentenced the accused/petitioner to death under section 302 PPC. The error committed by the Courts in convicting
    the accused/petitioner under section 302 PPC and sentencing him to death is so serious that had the petitioner eventually been hanged to death, we are afraid it would have amounted to murder through judicial process. Needless to say that plea of good faith/bona
    fide/ignorance of law/incompetency is/are not available in such like cases.” The case was remitted back to the Lahore High Court for a “fresh decision in accordance with law.” The year was also 1994.

    Another much discussed case involving the good Justice Tarar dating back to circa. 1994 involved a 20-year old girl and a young man accused of adultery and of killing the girl’s husband. On very flimsy evidence they were convicted by a sessions judge in the NWFP to be hanged to death. They appealed to the High Court but the sentence was upheld. They then appealed to the Supreme Court where
    they found Justice Tarar. He upheld the sentence and the 20-year old girl would have been hanged but for an ultimate presidential reprieve.

    Three years later, whilst the Anti-Terrorism Act was being drafted, retired judges now Senators, Rafiq Tarar and Afzal Lone, were called in. They recommended what could be termed a parallel judicial system composed of special courts with special judges with special powers to try all those suspected of terrorist acts. Chief Justice of Pakistan Sajjad Ali Shah objected, and proposed that
    suspects be tried in the normal course by sessions judges
    (requesting that many more be appointed). To expedite matters, trials could be held in the jails. Those convicted could appeal to the High Court, and then to the Supreme Court. The CJ assured the prime minister that he would see that the entire trial period was completed within three months.

    Nawaz Sharif did not want trials held in three stages, so it was finally agreed by all that the sessions court stage would go, that suspects would be tried in the High Court, and then allowed an appeal to the Supreme Court.

    However, much to the CJ’s surprise, when the Act was passed by parliament, the law laid down that a suspect would be tried by a special judge in a special court, that an appeal would lie only before a special tribunal of two specially appointed high court judges, that no bail would be granted, and no appeal to the Supreme
    Court allowed. All as initially recommended by Tarar/Lone.

    Such is the recorded mindset of a judge (thank heavens, no longer a judge), a Senator, and now the president.

    After he had been nominated on December 15 as the Muslim League presidential candidate, minister of thought control Mushahid Hussain declared Tarar to be a “moderate Muslim” On December 18, Acting Chief Election Commissioner Mukhtar Junejo rejected his nomination papers under Article 63(g) of the Constitution.

    Rather than honourably withdrawing from the race, Rafiq Tarar appealed for help to the prime minister and to the law ministry. The law ministry confidently announced that Tarar’s appeal would be placed before Justice Malik Qayyum of the Lahore High Court, brother of PML MNA Malik Parvez, that an interim stay would be given on the EC order, and the dates of subsequent hearings of the
    case would be so adjusted as to allow Tarar to successfully contest the election. This happened, and as things now stand, Tarar is president subject to the EC order being struck down by the High Court and then by the Supreme Court. With all this behind their head of state, — the judgments and the new law — and with him and the prime minister on the march for “Reform”, should we be a very frightened nation ? Wake Up.

  • Tarar says he was replaced by virtue of PCO Staff Reporter Week Ending : 23 June 2001 Issue : 07/25 DAWN WIRE SERVICE http://www.lib.virginia.edu/area-studies/SouthAsia/SAserials/Dawn/2001/jun2301.html

    LAHORE, June 20: Former president Rafiq Tarar, said that he had been replaced by virtue of the PCO. He said a few days back he was approached and told that for effective implementation of the government agenda and attainment of the national goals, elevation of Gen Pervez Musharraf to the office of the president was necessary.

    Mr Tarar said at his first meeting after the military takeover, Gen Musharraf had told him that he should continue as president in the larger national interest and he had agreed. As president, Mr Tarar said, he avoided confrontation and cooperated with the government. He said the military leadership consulted him on important national issues. He thanked the press and the nation for their cooperation.

  • 🙂 Former President Rafiq Tarar

    Laughing at ourselves Ardeshir Cowasjee Week Ending:11 November 2000 Issue: 06/43 DAWN WIRE SERVICE http://www.lib.virginia.edu/area-studies/SouthAsia/SAserials/Dawn/2000/nov11.html

    In deference to the Supreme Court order, the IGP Islamabad has appointed SP Khalid Mahmud to further enquire into the storming. And where is Khalid Mahmud now stationed? In the Aiwan-i-Sadar, in charge of the security of the President of Pakistan, Rafiq Ahmad
    Tarar. And what was Rafiq Ahmad Tarar on the day the Supreme Court was stormed in 1997? He was an honourable Senator, installed in the honourable Senate by Nawaz Sharif. And to where did Tarar journey a couple of days before the eventful day the Supreme Court was stormed, the same day on which the Quetta Bench of the Supreme
    Court headed by Justice Irshad Hassan Khan (the present Chief Justice of Pakistan) and the Peshawar Bench of the Supreme Court (headed by Justice Saeeduzzaman Siddiqui, who succeeded Ajmal Mian as Chief Justice of Pakistan) handed down their orders against their then sitting Chief Justice, Sajjad Ali Shah? He went to Quetta, secretly, in the dark.

    We laugh a bit more. Tarar was despatched to Quetta by Nawaz Sharif in a special flight which landed at Quetta at night. Now, the Quetta airfield is not normally lit up after nightfall as no flights land. The runway was specially lit up for Tarar and the security man on duty is reported to have noted in his log:

    “Instructions have been received from Islamabad that the details the special flight carrying the visiting dignitary, senator Rafiq Ahmad Tarar, must be kept confidential and not reported” (or words to this effect).

    Now poor SP Khalid Mahmud will also have to question the present Secretary of the Ministry of Defence, Lieutenant General Rana, who on the day the Supreme Court was raided in 1997, headed the ISI spooks. He reported the then COAS, General Jehangir Karamat, at the dawning of November 27, that Nawaz’s cohorts were to raid the
    Supreme Court in the morning. All this is written in jest, in an effort to alleviate the pervading atmosphere of gloom and doom.

  • 🙂 Former President Rafiq Tarar

    Fascism on the march – III Also see [Facism I] [Fascism II] Ardeshir Cowasjee Week Ending : 27 December 1997 Issue : 03/52 http://www.lib.virginia.edu/area-studies/SouthAsia/SAserials/Dawn/1997/27Dec97.html

    Then Abbaji stepped in, and within the space of one minute settled everything. Cut the cackle and forget about the ‘smaller’ provinces. Let’s keep it all in the family and in Punjab. Select my friend and legal adviser, Rafiq Tarar, whose wit and wisdom I share, and with whom I often sup late into the night, exchanging sick Sikh jokes from our vast reservoirs. He is, and will prove to
    be, perfect.

    What is good for the Sharifs, is good for the party, and is good for the nation. Soon, with God’s blessings, we will have a Sharif nominee at the head of the Supreme Court and at the head of our powerful army.

    ‘Der Fuhrer’ had spoken. Without further ado, without consulting his ruling party members, or the leaders of the coalition parties, Nawaz Sharif nominated Tarar.

    Thought-broadcaster and ‘media developer’ Mushahid Hussain was ordered to tailor Tarar to fit the slot, and vice versa. Mushahid trumpeted: Tarar is a moderate Muslim, a clean, devout, upright man and, contrary to what is said, is not a misogynist. He has been cleared by the agencies (who codified him in the records sent to those prosecuting Benazir’s Bhutto government’s
    dismissal as DW1 — Dari Wallah 1). He is a son of the soil, officially born in Pirkhot, District Gujranwala, on November 2, 1929, educated in Gujranwala and Lahore. Gujranwala is his oyster. It was there he grew his formal beard and in 1951 launched himself as a pleader.

    He moved up to become advocate of the high court, to additional district and sessions judge, to district and sessions judge, and was elevated to the bench of the Lahore High Court in 1974, in the good old days of Zulfikar Ali Bhutto’s PPP. In 1989, in the equally
    good old days of Zia, he became chief justice of that court, moving up to the Supreme Court in 1991, from where he retired in 1994. His brilliance on the bench of the Supreme Court has beEn immortalized. During the three years he sat there, one sole judgment authored by the Honourable Justice Tarar was recorded in a PLD — his concurring judgment in the case of the 1993 dissolution
    of the National Assembly when the presidential Dissolution order was struck down and the government of Nawaz Sharif restored.

    Amongst his friends who share his thoughts and beliefs and over whom he wields considerable influence are Justice Khalilur Rahman (codified as DW2), a signatory to the November 1997 order of the Quetta bench of the Supreme Court which sparked off the sorry disintegration process; Afzal Lone, a benefactor of the Ittefaq
    empire, rewarded with a Senate seat, who is inevitably to be found lurking in the prime minister’s secretariat, and Major General Javed Nasir (DW3), Nawaz Sharif’s former chief of the ISI and of the ‘Afghan misadventure’.

    Tarar’s nomination was filed on December 16, together with that of his covering candidates Captain Haleem Siddiqi and Khwaja Qutubuddin. (It is somewhat of a disgrace that a master mariner should have allowed his name to be included amongst the spineless.) Tarar’s nomination was rejected on December 18 by Justice of the
    Supreme Court Mukhtar Ahmad Junejo, who also holds the post of Acting Chief Election Commissioner. Junejo, in this case, proved himself to be as strong as Seshan.

    Can we remove Junejo, was Nawaz Sharif’s first Gawalmandi reaction. Risky, he was told. Then file a petition against Junejo’s order in the Lahore High Court and have the order suspended. Suitable counsel were hurriedly contacted, and it goes to the credit of the bar that not one of the top constitutional lawyers was willing to
    accept Tarar’s brief. Ejaz Batalvi, expert criminal lawyer, was roped in. Justice Qayyum admitted the petition on December 19 and suspended Junejo’s order,
    allowing Tarar to “participate in the election provisionally subject to further orders”. A larger bench will hear the petition on the 23rd.

    My renowned constitutional expert (who for his own good explicitly asked me not to name him) maintains that Tarar may sail through the Lahore High Court. But, in the Supreme Court, it may, just may, be a different kettle of fish. Passing muster there will not be that simple.

    The irony is that the order of Acting CEC Mukhtar Junejo will be defended by Attorney General Chaudhry Farooq, who, though technically the first law officer of the land representing the people still acts as if he were the personal hired lawyer of Ittefaq and Nawaz Sharif.

    As for the president of the republic, with the powers now left to him in the Constitution, all he can depend upon is his moral authority and his presentability to the world. Tarar, unfortunately, possesses neither. To quote from the ‘Comment’ of man-of-integrity Kunwar Idris, published in this newspaper on December 20 :

    “Also casting a dark shadow on him is the referendum of December 1984 when, as a member of Zia’s Election Commission, he solemnly assured the people that 55 per cent and not just five per cent of the electorate had turned out to confer legitimacy on Zia’s dictatorial rule. Mr Tarar also has to dispel the widely insinuated
    impression that he was involved in the ‘Quetta Shuttle’ which divided the Supreme Court and wrote the saddest chapter in Pakistan’s constitutional history.”

    The task before the present de facto chief custodian of the Supreme Court, the honourable J-1, Justice Ajmal Mian, is onerous indeed. Before he can reform and unite his ‘farishtas’ (as the judges of the SC are affectionately known) he has to clean up the paradise
    over which they preside. The dignity and honour of the court remain desecrated and dented by the mob attack upon it organized by the ruling party. The court must be cleansed and reconsecrated, the sponsors and their stormers punished for committing a criminal act
    in the face of the court.

    Another task awaiting Justice Mian is the reining in of the parallel judiciary incorporated in the Anti-Terrorism Act of 1997 (a Lone-Tarar creation). Also (important and urgent) he must demolish the formation of a squad of honorary magistrates planned to be recruited in Punjab
    from the ranks of party bosses of the Muslim League. Following in his master’s footsteps, Punjab Law Minister Raja Basharat is said to have thought up this brilliant fascistic move.

  • LOL 🙂 Former President Rafiq Tarar

    Musharraf to stay on as JCSC, army chief Ihtasham ul
    Haque DAWN WIRE SERVICE Week Ending : 02 October 1999 Issue : 05/40 http://www.lib.virginia.edu/area-studies/SouthAsia/SAserials/Dawn/1999/02oct99.html

    ISLAMABAD, Sept 29: President Rafiq Tarar here on Wednesday confirmed the appointment of the Chief of the Army Staff (COAS) General Pervaiz Musharraf as the Chairman Joint Chiefs of Staff Committee as well since the day he took over the acting charge of the post on October 6, 1998. His tenure as both the COAS and the CJCSC will now end on October 6, 2001.

  • 🙂 LOL Former President Rafiq Tarar

    Six papers accepted CEC rejects Tarar’s nomination Bureau Report DAWN WIRE SERVICE Week Ending:20 December 1997 Issue : 03/51 http://www.lib.virginia.edu/area-studies/SouthAsia/SAserials/Dawn/1997/20Dec97.html

    ISLAMABAD, Dec 18: Acting Chief Election Commissioner Justice Mukhtar Junejo on Thursday rejected the nomination papers of PML presidential candidate Justice Rafiq Tarar for making derogatory remarks against judiciary. The acting CEC rejected the nomination papers of Mr Tarar under Article 63 (g) of the Constitution and conveyed the decision to Senator Anwar Bhinder, counsel for Mr Tarar.

    Mr Tarar was not present when his nomination papers were rejected, however, his covering candidate Capt (retd) Halim Siddique and several other members of the ruling party were there. The acting CEC accepted nomination papers of six other candidates, including Capt Halim Siddique, Aftab Shahban Mirani, Senator Mir Zafarullah Khan Jamali and Maulana Mohammad Khan Shirani, a JUI
    MNA.

    In a seven-page order released later Justice Junejo said: “I am of the view that case of Mr Tarar is covered by sub-clause (g) of clause (1) of Article 63 of the Constitution and since he cannot be elected as member of parliament, hence in terms of Article 41(2) of the Constitution of Pakistan, he cannot be elected as president of Pakistan. I therefore, reject his nomination papers.”

    Article 63 (1)(g) reads: “A person shall be disqualified from being elected or chosen as, and from being, a member of the Majlis-e-Shoora (parliament), if he is propagating any opinion, or acting in any manner, prejudicial to to the ideology of Pakistan, or the sovereignty, integrity or security of Pakistan, or morality, or the maintenance of public order, or the integrity or independence of
    the judiciary of Pakistan, or which defames or brings into ridicule the judiciary or the Armed Forces of Pakistan.”

    Parliamentary Secretary for Law Syed Zafar Ali Shah, who termed the order of the acting CEC unconstitutional and illegal, said the decision would be challenged in the court through a writ petition.

    Wrong choice, Mr Prime Minister M.P. Bhandara DAWN WIRE SERVICE Week Ending:20 December 1997 Issue : 03/51
    http://www.lib.virginia.edu/area-studies/SouthAsia/SAserials/Dawn/1997/20Dec97.html#wron

  • ADC’s and Chiefs of Staffs in waiting like Dr. Shahid Masood
    ===========

    Another controversy surrounds Dr Shahid Masood
    Saturday, June 19, 2010 http://www.dailytimes.com.pk/default.asp?page=20106\19\story_19-6-2010_pg7_4

    * Email claims TV anchor had role in forcing rape victim Dr Shazia out of country

    * Masood denied UK asylum for fraudulent practices

    Staff Report

    LAHORE: Noted TV show host Dr Shahid Masood is surrounded by yet another controversy after the surfacing of allegations regarding his role in forcing Dr Shazia Khalid out of the country.

    Shazia had alleged that an army officer had raped her in a hospital while she was serving in Balochistan in 2005. The controversy is associated with an email circulated with the name of noted defence analyst Dr Ayesha Siddiqa. The email said Dr Shahid Masood and another person, Mohsin Baig, harassed Dr Shazia, warning her that she and her family would be assassinated if they did not leave the country immediately and if the proceedings of her case were not halted in Pakistan.

    Dr Shazia was quoted as saying that Dr Shahid and Mohsin Baig made her rush out of the country. Daily Times tried contacting Dr Shahid a number of times for comments, but failed to get through.

    British refusal: Also, documents obtained from reliable sources in the British Home Office revealed that Masood was denied asylum in the United Kingdom for fraudulent practices.

    According to the documents, he travelled to the UK on April 26, 2000, with his family. Masood sought asylum in Britain on May 3, 2000, but his request was denied by the British authorities who stated, “On June 9, 2000, a decision was made to give directions for his removal from the United Kingdom as mentioned in Section 16(1) of the Immigration Act 1971 and to refuse to grant asylum under paragraph 336 of HC 395.” Paragraph 336 of HC 395 authorises British officials concerned to remove any individual who enters the UK illegally.

    While giving the reasons for the rejection, the authorities wrote, “He claimed to have entered the United Kingdom on April 26, 2000, using a Pakistani passport of which he was not the rightful owner, accompanied by his daughter and his sister and her two children.” Dr Shahid attached a statement of evidence form SEF3 dated May 16, 2000, asylum interview record SEF4 dated June 5, 2000, and other documents supporting his application. The document mentioned Home Office Reference Number M1045053, and Port Reference Number EDD/00/4390.

  • ADC’s and Chiefs of Staffs in waiting like Dr. Shahid Masood
    ===========

    ڈاکٹر شازیہ کا پہلا ویڈیو انٹرویو

    منیزے جہانگیر

    http://www.bbc.co.uk/urdu/miscellaneous/story/2005/09/050909_dr_shazia_video_int.shtml وقتِ اشاعت: Friday, 09 September, 2005, 20:06 GMT 01:06 PST

    ڈاکٹر شازیہ ریپ کیس کئی ماہ تک پاکستانی اورعالمی میڈیا کی شہ سرخیوں میں رہا۔ یہ کیس پاکستانی فوج اور بلوچ قوم پرستوں کے درمیان ہونے والے تنازعے کا بھی مرکز رہا جس میں کئی افراد ہلاک بھی ہوئے اور یہ معاملہ ابھی مکمل طور پر حل نہیں ہوا۔
    انٹرویو سننے کے لئے یہاں کلک کریں
    ڈائل اپ کوالٹی کے لئے یہاں کلک کریں
    لیکن بہت سے لوگوں کا خیال ہے کہ ڈاکٹر شازیہ کی کہانی ہمیشہ ادھوری ہی بتائی گئی۔ ان سے پہلے ایسی زیادتی کا شکار ہونے والی بہت سے عورتوں کی طرح ڈاکٹر شازیہ خالد کی کہانی بھی اس سارے معاملے میں کہیں دب سی گئی۔ انہیں بھی دوسری عورتوں کی طرح ابھی تک انصاف نہیں ملا لیکن انہوں نے بھی بہت سی دوسری عورتوں کی طرح انصاف کے حصول کے لئے ہمت نہیں ہاری۔ اور انہیں بظاہر اپنے آپ کو ’مزید شرمندگی‘ سے بچنے کے لئے ملک چھوڑنا پڑا۔

    انٹرویو کا متن پڑھنے کے لیے کلک کریں
    خواتین کے حقوق کی علمبردار تنظیموں کی طرف سے بیانات آتے رہے اور میڈیا میں اس کیس کی کوریج اس وقت تک جاری رہی جب تک ڈاکٹر شازیہ پاکستان میں رہیں۔

    ڈاکٹر شازیہ کے ملک چھوڑنے کے بعد پاکستانی میڈیا سے تو ان کی ’سٹوری‘ غائب ہوگئی لیکن شائد خود ڈاکٹر شازیہ اور ان کے شوہر کو ہر روز اس اذیت سے گزرنا پڑتا ہے جس کا وہ شکار ہوئے۔

    ڈاکٹر شازیہ اور ان کے شوہر نے اس پہلے خصوصی وڈیو انٹرویو میں پہلی مرتبہ اس پورے واقعے اور اس کے بعد پیدا ہونے والے حالات کا تفصیل سے ذکر کیا ہے۔

    ڈاکٹر شازیہ کی کہانی ایسی دیگر کہانیوں سے مختلف نہیں۔ ایک عورت زیادتی کا نشانہ بنی جسے انصاف کی تلاش ہے اور اسے زیادتی کا نشانہ بنانے والے کو مبینہ طور پر تحفظ دیا جارہا ہے اور ریاست اپنے ہی عمل کی بد صورتی کو چھپانے میں مصروف ہے۔

    لندن میں پناہ حاصل کرنے کے دیگر خواہشمندوں کی طرح ڈاکٹر شازیہ اور ان کے شوہر ایک غریب علاقے میں ایک بہت ہی چھوٹے سے گھر میں رہتے ہیں۔ ان کی کل آمدنی برطانوی سرکار سے پناہ گزینوں کو ملنے والی تیس پاؤنڈ فی ہفتہ کی رقم ہے کیونکہ وہ اس وقت تک کام نہیں کرسکتے جب تک ان کی پناہ کی درخواست منظور نہ ہوجائے۔

    ’بے روز اور بے مددگار ہوگئے ہیں ہم ، جلا وطن ہوگئے ہیں، میں کبھی سوچ بھی نہیں سکتی تھی کہ میرے ساتھ بھی یہ ہوسکتا ہے۔‘

    مارچ میں ڈاکٹر شازیہ کے برطانیہ آنے کے بعد سے ان کے مطابق حکومت پاکستان نے ان سے بالکل کوئی رابطہ نہیں کیا اور کسی قسم کی کوئی مدد نہیں کی۔

    ڈاکٹر شازیہ اب ہر ہفتے تھیریپی کے لئے کلینک جاتی ہیں جس سے ان کے مطابق انہیں بہت فائدہ ہورہا ہے۔

    ’victim سے survivor بنی ہوں میں۔ مگر ظاہر ہے ابھی بھی سوچتی ہوں کہ یہ میں ہوں؟ جو میں آپ سے بول رہی ہوں مجھے اچھا تو نہیں لگ رہا مگر کیا کروں؟ ابھی ٹھیک ہونے میں بہت وقت لگے گا میرے زخم اتنے گہرے جو ہیں۔‘

    جب میں ان کے گھر سے واپس جارہی تھی تو ڈاکٹر شازیہ کے شوہر نے مجھ سے کہا ’آپ کتنی خوش قسمت ہیں۔ کل پاکستان واپس جارہی ہیں۔‘

    بلوچستان کے علاقے سوئی میں مبینہ زیادتی کا شکار ہونے والی ڈاکٹر شازیہ خالد کا یہ پہلا تفصیلی وڈیو انٹرویو صحافی منیزے جہانگیر نے خصوصی طور پر بی بی سی اردو ڈاٹ کام کے لیے کیا ہے۔

  • ADC’s and Chiefs of Staffs in waiting like Dr. Shahid Masood
    ===========

    ’انصاف ملنے تک لڑتی رہوں گی‘
    وقتِ اشاعت: Saturday, 10 September, 2005, 07:46 GMT 12:46 PST

    http://www.bbc.co.uk/urdu/miscellaneous/story/2005/09/050909_shazia_text_nisar.shtml

    ڈاکٹر شازیہ انصاف کی متمنی ہیں

    ڈاکٹر شازیہ خالد نے بی بی سی کو جو انٹرویو دیا اس میں سوال جواب کے دوران انہوں نے اپنے ساتھ ہونے والے واقعے کے حوالے سے کئی باتیں بتائیں۔ان کے شوہر خالد نے بھی کئی سوالوں کے جواب دیئے۔ انٹرویو کے شروع میں ڈاکٹر شازیہ نے اپنے اوپرگزرنے والے حالات کے بعد کی صورتِ حال کا جواب کچھ یوں دیا:
    ڈاکٹر شازیہ خالد: انسیڈنٹ کے بعد میں اٹھی، میری حالت خراب تھی اور مجھے کچھ سمجھ میں نہیں آ رہا تھا کہ یہ میرے ساتھ کیا ہو رہا ہے۔ میری ڈریسنگ ٹیبل پہ چابی رکھی ہوئی تھی وہ چابی میں نے اٹھائی۔ باہر جو دروازہ تھا وہ باہرہی سے بند کیا گیا تھا۔ اس پہ تالا لگا ہوا تھا۔ کھڑکی سے میں نے ہاتھ ڈال کر باہر کی طرف تالا کھولا اور شال لے کر میں نرسنگ ہوسٹل چلی گئی۔ وہاں سسٹر سکینہ کے شوہر نے دروازہ کھولا۔ سسٹر سکینہ مجھ سے ملیں اور مجھ سے پوچھنے لگیں کہ کیا ہوا تمہارے ساتھ۔ میں نے انہیں بتایا کہ میرے ساتھ یہ واقعہ پیش آیا ہے اور اس بندے نے- – – -، چار گھنٹے وہ میرے کمرے میں رہا۔ مجھے مارا، مجھے پیٹا۔‘

    ’میری بہت حالت خراب تھی۔ میرے سر سے خون نکل رہا تھا۔ مجھے ٹیلیفون کے ریسیور سے مارا گیا۔ میں ریسیور اٹھانا چاہ رہی تھی کہ کسی کو مدد کے لیے پکاروں۔ اس نے میرے سر پہ ریسیور دے مارا اور ٹی ٹی پسٹل سی مجھے دھمکیاں دینے لگا اور کہا اگر تم شور کروگی تو باہر ایک آدمی کھڑا ہے جس کا نام امجد ہے وہ تمہیں- – – – – اس کے ہاتھ میں مٹی کا تیل ہے- – – – – میں جلا دوں گا خاموش رہو‘۔

    ’میری حالت بہت خراب تھی میرے ہاتھ سوجے ہوئے تھے، رسٹ میں ٹیلیفون کی تاریں بندھی ہوئی تھیں، میری آنکھوں پر پٹی باندھ دی گئی تھی۔ تو جب میں نرسنگ ہوسٹل گئی تو میری حالت ایسی تھی۔ سسٹر سکینہ بھی رونے لگی، وہ صدمے میں آگئی کہ کیا ہوا تمہارے ساتھ۔ میں نے بتایا کہ یہ ہوا ہے میرے ساتھ۔ لیکن میں نے اسے زیادتی کا نہیں بتایا کہ میرے ساتھ کیا ہوا ہے۔‘

    ’لیکن میں نے اسے یہ بتایا ہے کہ میرے پیسے میری جیولری (چھین لی گئی ہے)، مجھے اس نے مارا مجھے پیٹا، مجھے دھمکیاں دینے لگا۔ سب میں نے اسے بتایا۔ اس وقت میں سسٹر سکینہ کے کمرے میں ہی تھی۔ اس نے سینیئر کو کال کیا۔ سینیئرز آئے، ایم ڈی، مینیجر آئے، فیلڈ کے مینیجر، پرویز جمولہ آئے، سلیم اللہ آئے اور ڈاکٹر محمد علی آئے سی ایم اور عثمان وادوہ آئے۔ مجھ سے پوچھنے لگے کہ آپ کے ساتھ کیا ہوا ہے۔میں نے ان کو بتایا تو انہوں نے کہا کہ ہمیں پتہ ہے کہ تمہارے ساتھ کیا واقعہ پیش آیا ہے۔ ہم تمہارے کمرے میں گئے تھے۔ تو وہاں سے ہمیں ایویڈینس ملے ہیں۔ لیکن تم خاموش رہو، تم کسی سے کوئی ذکر نہیں کرنا اور صرف تم یہ کہنا کہ میرے ہاں ڈاکہ پڑا ہے۔ اور کچھ بھی نہیں ہوا۔‘

    سوال: کیا آپ سے یہ بات ایم ڈی نے کہی تھی؟

    جواب: نہیں مینیجر تھے، پرویز جمولہ اور سی ایم او ڈاکٹر عثمان وادوہ، سلیم اللہ، یہ تینوں تھے۔ تو اس وقت میری حالت ایسی تھی کے کچھ سمجھ میں ہی نہیں آ رہا تھا کہ میرے ساتھ یہ کیا ہوا ہے۔ میں اکیلی عورت تھی وہاں۔ میں نے ان سے کہا کہ میرے بھائی کو بھابھی کو کال کریں میں ان سے ملنا چاہتی ہوں، میں ان سے بات کرنا چاہتی ہوں۔ تو کہنے لگے کہ نہیں ہم ان کو کانٹیک نہیں کر سکتے اور ناں ہی ہم انہیں بلاسکتے ہیں۔ انہوں نے مجھے انجیکشن بھی لگائے تاکہ میں پولیس کو بیان بھی نہ دے سکوں۔ مجھے کہا گیا کہ اب پولیس آئے گی اور مجھے خاموش رہنا ہے۔ تم نے کچھ بھی نہیں کہنا، تمہاری عزت کا سوال ہے۔ آپ پڑی لکھی عورت ہو بدنام ہو جاؤ گی اور ہماری کمپنی کے امیج کا بھی سوال ہے۔ مجھے تو انجکشن دیتے رہے۔ میں نیم خوابیدہ تھی۔ پولیس آئی لیکن میں بالکل ڈراؤزی تھی میری سمجھ میں ہی نہیں آ رہا تھا اور پولیس ایسے ہی چلی گئی واپس۔ ڈاکٹر ارشاد اینیستھیٹک ہیں۔ انہوں نے مجھے انجکشن لگائے۔ میں ان سے کہتی رہی کہ کیوں انجکشن لگا رہے ہیں؟ ایک بار آپ مجھے انجیکشن دے چکے ہیں، دو بار مجھے ایسیسڈیٹو دے چکے ہیں، تو کہنے لگے کہ سی ایم او کے آرڈر ہیں کے میں آپ کو انجکشن لگاتا رہوں۔

    سوال: سی ایم او معنی
    جواب: سی ایم مینز چیف میڈیکل آفیسر، پی پی ایل کے ہیں۔

    سوال: آپ کو کیا لگتا ہے انہوں نے ایسا کیوں کیا؟

    جواب: وہ شاید اپنی کمپنی کا امیج خراب نہیں کرنا چاہتے تھے۔ وہ یہ سمجھتے کہ اگر یہ دنیا کو پتہ چل گیا کہ ایک لیڈی ڈاکٹر کے ساتھ ایسا واقعہ ان کی کمپنی میں پیش آیا ہے تو اس کے بعد کوئی لیڈی ڈاکٹر، کوئی عورت، ان کے یہاں کام کرنے کی راضی نہیں ہو گی۔تو وہ یہی چاہتے تھے کہ بات ڈھکی چھپی رہے۔ کسی کو پتہ ہی نہیں چلے۔

    ’ان کو پتہ تھا کہ بلوچستان میں ایسے زیادتی کے واقعے کی بات بہت کم ہوتی ہیں۔ اور جب پی پی ایل والوں کو پتہ ہے کہ ان کی جو فیلڈ ہے وہ بہت ہی سیکیور ہے اور ہر جگہ پر، موڑ پر ان کے ڈی ایس جی گارڈز، جو ڈیفنس سیکیوریٹی گارڈز ہوتے ہیں وہ کھڑے ہوتے ہیں۔ ان کے علاوہ کوئی بھی بندہ اگر ہسپتال میں آتا ہے تو اسے لازماً اسے اپنی شناخت دکھانی پڑتی ہے۔ ایسا کوئی بندہ تو پی پی ایل کے ہسپتال میں داخل نہیں ہو سکتا۔ اور جس طرح سے یہ واقعہ پیش آیا ہے- – – – وہ بندہ رات کو آیا اور صبح سویرے گیا ہے۔ بغیر کسی ڈر کے، خوف کے، وہ اتنی دیر تک کمرے میں رہا ہے، ٹی وی بھی دیکھتا رہا۔ ٹی وی میں اس نے جیو چینلز، دیکھا، بی بی سی دیکھا اور سی این این دیکھا۔ انگلش چینیلز وہ دیکھتا رہا ہے اور بالکل اونچی آواز میں، مطلب اس کو کوئی ڈر نہیں تھا۔

    سوال: آپ کا شک کس کی طرف ہے؟

    جواب: میں اس ملزم کی شکل دیکھ نہیں پائی کیونکہ کمرے میں اندھیرا تھا اور مجھے بلائینڈ فولڈ کر دیا تھا۔ میں کچھ نہیں کہ سکتی کہ وہ کون تھا۔ لیکن جو بھی تھا تو وہ کوئی طاقتور بندہ ہو گا۔ اس کے ہاتھ بہت لمبے ہونگے، اس کی پہنچ بہت دور تک ہو گی۔اور حکومت کی طرف سے تفتیش جو بتاتی ہے اور ابھی تک وہ پکڑا نہیں گیا تو اس کا مطلب ہے کہ وہ کلپرٹ عام آدمی نہیں ہے۔

    سوال: یہ جو ٹریبیونل ہے انہوں نے آپ کو دوائیاں بھی دی تھیں۔ آپ کو لگتا ہے کہ یہ ریپ میں شریک تھے۔ پی پی ایل کےافسران نے اس آدمی کی کیا مدد کی تھی۔

    جواب: بس پی پی ایل والے چاہ رہے تھے کہ کسی کو پتہ ناں چلے اور جب مجھے ایسیڈیٹو دینے لگے تو مجھے نیکسٹ ڈے مجھے جو سی ایم او ہیں ڈاکٹر عثمان باجوہ۔ انہوں نے مجھ کہا کہ یہاں سے مجھے شفٹ کر رہے کراچی اور ہم آپ کو ڈائیرکٹ یہاں سوئی سے، سوئی کی فلائیٹ سے نہیں لے جائیں گے۔

    ’وہ کہنے لگے ہم آپ کو بالکل سیکیور لے جائیں گیں تاکہ کسی کو بھی پتہ ناں چلے کہ آپ یہاں سے جا رہی ہیں۔ ایمبولنس میں پہلے ہم آپ کو کہکول لے کر جائیں گے اور لوگوں کو یہی پتہ چلے گا کہ اس میں کوئی پیشنٹ جا رہا ہے۔ پھر انہوں نے مجھے سٹریچر پر بالکل لٹا دیا گیا تاکہ لوگوں کو یہ پتہ چلے کہ اس میں کوئی مریض جا رہا ہے۔ جب میں ایمبولنس میں بیٹھی تو ڈاکٹر ارشاد میرے ساتھ تھے، اینیستھیٹک ڈاکٹر ہیں جو۔ ان کی بیگم بھی میرے ساتھ تھیں تو انہوں نے مجھے بتایا کہ کسی کو ہم نے نہیں بتایا کہ اس میں آپ جا رہی ہیں۔ اور ہم نے بالکل سیکیور رکھا ہے تاکہ کسی کو پتہ بھی ناں چلے۔ اور جب ہم کراچی پہنچیں گے تو وہاس ڈاکٹر امجد اور ڈاکٹر خورشید آپ کو لینے کے لیےآئیں گے اور وہ پھر آپ کو ہسپتال لے کر جائیں گے۔

    سوال: انہوں نے آپ کو فوراً بلوچستان سے کراچی کیوں بھیج دیا؟

    جواب: میں تین دن وہاں رہی، سیکنڈ کو یہ واقع پیش آیا۔ تین دن میں وہاں رہی اور شام مجھے وہاس سے شفٹ کیا گیا۔ اور جو میرا جوڑا پہنا ہوا تھا انسیڈینٹ کے وقت، وہیں انہوں نے وہ جوڑا غائب کروا دیا تھا۔ انہوں سے سارے میرے ایویڈنسز غائب کروا دئیے گئے۔ پولیس جب کراچی میں ہمارے پاس آئی ملنے کے لئیے تو پولیس نے خود کہا کہ آپ کا کمرہ کسی نے سیل نہیں کیا اور آپ کے کمرے سے ہمیں کوئی فنگر پرنٹس نہیں ملےاور آپ کے ایویڈنس بھی پی پی ایل والوں نے غائب کروا دئیے۔ تو ہمیں کوئی ثبوت نہیں ملا آپ کے کمرے سے۔

    ’ٹریبیونل کی جو فائنڈنگز آئیں ہیں اس میں ہمیں، رزلٹ بھی ہمیں بتایا گیا تھا۔ لیکن جب ہم یو کے میں پہنچے تو ہیومن رائٹس کے لوگوں نے ہمیں دی۔ وہ 35 صفحوں کی انکوئری رپورٹ ہے۔ اس میں یہ لکھا ہے کہ ایس ایچ او اور پولیس نے پی پی ایل کے ڈاکٹرز کو وارننگ دی تھی کہ ڈاکٹر شازیہ کو بغیر کسی سٹیٹمنٹ کے کراچی شفٹ نہیں کر سکتے۔ اور ان کو بہت سختی سے بھی کہا تھا لیکن اس وقت پی پی ایل کے جو ڈاکٹرز تھے، جو مینیجمنٹ تھی انہوں نے کسی بھی قسم کا پولیس کے ساتھ کوئی رابطہ نہیں رکھا۔ یعنی وہ پولیس کو معاملے میں شامل ہی نہیں کرنا چاہتے تھے۔ اب جیسے مجھ پر سی ایم او نے الزام لگایا ہے کہ وہ خود نہیں چاہ رہی تھی کہ پولیس کو سٹیٹمنٹ دے اور پولیس کے چکروں میں پڑے، لیکن انہوں نے تو خود زبردستی اس سے (مجھ سے)سٹیٹمنٹ سائن کروائے تھے کہ میں ایف آئی آر نہیں کٹوانا چاہتی اور میں پولیس میں بیان نہیں دینا چاہتی۔ میرے ساتھ صرف ’روبری‘ ہوئی ہے اور کچھ نہیں ہوا۔

    سوال: اس وقت جب انہوں نے بیان سائن کراوئے تھے تو آپ بے ہوش تھی؟
    جواب: انکونشنس نہیں تھی، میں ایسیڈیٹو مجھے دیا تھا، ڈراؤزی تھی میں اور مجھے دھمکیاں دینے لگے۔ آپ اگر ایف آئی آر کٹواؤ گی تو آپ کو دھکے کھانے پڑیں گے۔ آپ کو جیکب آباد جانا پڑے گا اور سبی جانا پڑے گا، در در کی آپ کو ٹھوکریں کھانیں پڑیں گی۔

    سوال: یہ سب کس نہ کہا آپ سے؟

    جواب: یہ سی ایم او نے کہا اور جب میں سائن نہیں کر رہی تھی تو غصے سے انہوں نے مجھے کہا کہ جلدی سائن کرو تمہارے ہاتھوں میں لگ جائے گی ہتھکڑی اور میرے ہاتھوں میں بھی ہتھکڑی لگ جائے گی۔ جلدی سے اس پر سائن کرو۔ میں اکیلی عورت وہاں کیا کرتی میں بے بس تھی۔

    سوال: یہ کون سی تاریخ کو ہوا، اسی دن انہوں نے سائن کروائے کہ اگلے دن؟

    جواب: اسی دن انہوں نے مجھ سے سائن کروائے۔

    سوال: کیپٹن حماد کا نام پہلے کب آیا۔

    جواب: کیپٹن حماد کا نام ہم نے میڈیا میں سنا تھا۔

    سوال: شروع کے دنوں میں جب آپ نے پی پی ایل آفیسرز کو واقعے کے بارے میں بتایا تھا تب کیپٹن حماد کا نام سامنے نہیں آرہا تھا۔

    جواب: نہیں، جب میں سوئی میں تھی تو میں نے اس کا نام نہیں سنا لیکن جب میں کراچی آئی تو اس کا نام ہم نے سنا تھا۔

    سوال: میڈیا کے تھرو
    جواب: جی میڈیا کے تھرو۔

    سوال:کیا اس سلسلے میں ایک خاکروب نے بھی گواہی دی تھی؟

    جواب: جی، جب ہم کراچی میں تھے تو پولیس ہمارے پاس آئی تھی۔ ڈی آئی جی آئے تھے ان کے ساتھ ایس ایس پی تھے۔ مجھ سے غلط قسم کے سوالات کرنے لگے۔ ڈی آئی جی نے مجھ سے یہ پوچھا کہ 25000 آپ کے پاس کہاں سے آئے، کس نے آپ کو دئیے اور اتنی جیولری جو آپ کے پاس تھی وہ آپ کہاں سے لے کر آئے۔ کیوں آپ نے اپنے پاس رکھی۔ کن موقعوں پر آپ پہنتی تھی۔ اور اس نے کہا کہ سویپر کا یہ بیان ہے کے کسی ایک دن میرے کمرے سے ایک وٹنس ملا ہے۔ کونڈم ملا ہے جو اس نے فلش کر دیا ہے۔اب آپ مجھے یہ بتائیں وہ سویپر ان پڑھ بندہ جس کو اپنی عمر یاد نہیں ہو گی۔ اس کو وہ وقت وہ ٹائم کیسے یاد آ گیا کہ اسے میرے کمرے سے یہ ایویڈنس ملا۔

    ’جب پولیس کو کوئی سراغ نہیں ملا اور کسی ہائی پریشر کی وجہ سے ملزم پکڑ نہیں پائے تو مجھ ہی پر الزام ٹھہرانے کی کوشش کی۔ عورتوں کے ساتھ تو ہمیشہ یہی ہوتا آیا ہے۔ عورت پر ہی لوگ انگلی اٹھاتے ہیں۔ اسی کو ہی بدنام کر دیتے ہیں۔

    سوال:یہ بھی کہا گیا ہے کہ شازیہ کے لئے کچھ لوگوں نے دو ایسے شاہدین سے بیان لئیے ہیں کہ وہ ماڈرن کپڑے پہنتی تھی۔

    ڈاکٹر شازیہ: اگر پاکستانی ماڈرن کپڑے شلوار قمیض اور دوپٹہ کہلاتے ہیں تو میں ماڈرن ہوں۔ اس کا مطلب ہے کہ پاکستان کی ساری عورتیں موڈرن ہیں۔

    سوال: آپ کا کیا ری ایکشن تھا جب آپ نے سنا کہ پریزیڈنٹ(جنرل پرویز مشرف) صاحب نے یہ کہا ہے کہ کیپٹن حماد سو فیصد بے قصور ہے۔

    جواب: ہم کیا کرتے۔ ہمیں جب پاکستان کے صدر نے ہی کہ دیا کہ وہ بے قصور ہے اور وہ بھی میری آئڈنٹیفیکیشن پریڈ سے پہلے۔ اور کیپٹن حماد کے ٹربیونل سے پہلے انہوں نے یہ اناؤنس کر دیا کہ وہ بے قصور ہے۔

    سوال: کیا اس وقت ری ایکشن تھا آپ کا۔

    جواب: ہم تو شروع سے چاہتے تھے کہ ہم کیس کریں، میڈیا میں آئیں تاکہ لوگوں کو پتہ چل سکے کہ میرے ساتھ کیا ہوا ہے اور ٹریبیونل کے لیے ہم کوئٹہ جانا چاہتے تھے۔

    دیکھیں انہوں نے اپنی ایجینسیز کی رپورٹ پر کہہ دیا ہو گا کہ وہ بے قصور ہے لیکن ایک جگہ پہ انہوں یہ بھی کہا ہے کہ ڈاکٹر شازیہ کے کیس میں ان کو بہت کچھ پتہ ہے۔ لیکن اگر وہ اپنی بات فاش کریں گے تو ڈاکٹر شازیہ کی جان کو خطرہ ہے۔ اس کا مطلب ان کوپتہ تھا کہ ملزم کون ہے۔ مگر ٹھیک ہے اگر وہ چیف سسپکٹ نہیں ہے کوئی اور ہے تو ان کو پتہ ہے وہ کون ہے کیوں نہیں بتاتے۔

    جب میری شناخت پریڈ ہوئی تھی تو شناخت پریڈ کے دوران ملٹری انٹیلیجنس کا ایک میجر آیا۔ اس نے کہا کہ جی آپ کی جانوں کو خطرہ ہے آپ ملک سے نکل جائیں تو اچھا ہے آپ کے لیے اور ہم آپ کو خوشخبری سنائیں گے آپ ملک سے باہر جہاں بھی جائیں گے تو ہم آپ کو خوشخبری سنائیں گے کہ ملزم پکڑا گیا ہے۔ ہمیں پتہ ہے، ایم آئی اے کے لوگوں کو پتہ ہے۔ یہ ٹربیونلز یہ پولیس انوسٹیگیشنز آپ ان کو چھوڑ دیں، یہ سب ہمارے اوپر ہے، ہم جانتے ہیں کہ اصل مجرم کون ہے۔وہ کہہ رہے ہیں کہ ان کو پتہ ہے۔اب جب ایم آئی اے کے لوگ کہہ رہے ہیں۔ وہ کور کمنانڈر کا پیغام لے کر آیا تھا میجر۔

    سوال: کون سا کور کمانڈر
    مسٹر خالد: نام نہیں بتایا۔ لیکن انہوں نہ کہا کہ میں بلوچستان سے آیا ہوں۔

    سوال: اس نے آپ کو اپنا کارڈ دکھایا تھا، ایم آئی سے ہی تھا۔

    جواب: وہاں ایس ایس پی جو تھا وہاں پہ، جج تھا جو ساتھ بیٹھا ہوا تھا۔ ان سے بھی وہ ملا تھا، ان سے بھی وہ باتیں کر رہا تھا۔ ہمیں اس نے کچھ نہیں بتایا کہ وہ ایم آئی کا آدمی تھا۔ میجر نے بتایا کہ دو طرح کے پیغام ہیں اس کے پاس، بلوچستان سے کچھ لوگ مارنا چاہ رہے ہیں آپ کو، کراچی میں گھوم رہے ہیں ہتھیاروں کے ساتھ، اس لیے آپ کی جان کو خطرہ ہے، ملک سے باہر چلے جائیں اور دوسرا یہ کہ جو کلپرٹ ہے اس کے بارے میں ہم جانتے ہیں۔ پولیس نہیں جانتی۔

    سوال: اچھا یہ بھی بات ہو ئی تھی کہ آپ کے جو گرینڈفادر ہیں انہوں نے لوگوں کواکٹھا کیا ہے شازیہ کو کاری کرنے کے لیے۔

    مسٹر خالد: جی اس طرح کی بات ہوئی تھی، میرے والد اور میری والدہ۔ جو میری سٹیپ مدر ہیں وہ تو اس کے حق میں نہیں تھیں لیکن میرے جو دادا ہیں وہ ایک فیوڈل ذہن کے انسان ہیں۔ انہوں نے کچھ لوگوں کو اکٹھا کیا تھا۔جو میری والدہ نے ہمیں خبر پہنچائی تھی اور دوسری شرط یہ رکھی تھی کہ شازیہ کو طلاق دے دیں تاکہ یہ ہماری عزت کا سوال ہے۔

    سوال: تو آپ کو کیسے محسوس ہوا؟
    ڈاکٹر خالد: مجھے بہت حیرت ہوئی تھی اور میں نے کہا کہ کس طرح کی وہ باتیں کر رہے ہیں۔ انہیں یہ نہیں پتہ کہ شازیہ بے قصور ہے، وہ کیا کر سکتی ہے۔ میں نے کافی سٹینڈ لیا تھا اس بات پر۔

    سوال: آپ اس وقت سعودی عرب میں تھے؟
    جواب: مسٹر خالد: نہیں میں اس وقت لیبیا میں تھا۔

    سوال: اور اس وقت آپ کی نوکری تھی۔
    مسٹر خالد: میں جاب کر رہا تھا۔

    سوال: اب وہ چھوڑ کر آئے ہیں یہاں آپ؟
    مسٹر خالد: جی میری جاب چلی گئی ہے کیونکہ میں شازیہ کو اکیلا نہیں چھوڑ سکتا اس وقت۔

    سوال: ارینجڈ شادی تھی آپ کی؟
    جواب: مسٹر خالد: ارینجڈ بھی تھی اور اپنی مرضی بھی۔

    سوال: آپ کب پہنچے؟
    مسٹر خالد: مجھے شازیہ کی سسٹر ان لا نے ای میل کیا تھا اور اس کے بعد میں نے اس سے بھی فون پر بات کی۔ گیارہ تاریخ کو میں کراچی پہنچا کیونکہ میری جہاں جاب تھی وہ علاقہ سہارا ڈیزرٹ کہلاتا ہے۔ ایک ہفتہ مجھے یہاں لگ گیا تھا آنے میں۔

    سوال: یہ بتائیں کہ آپ کا اب کوئی کانفیڈنس ہے۔ یہ ٹریبیونل کی انکوائری ختم ہو گئی ہے۔

    جواب: ٹربیونل نے تو اپنی فائنڈنگز دے دی۔ جب ہم اسلام آباد میں تھے تو ٹریبیونل اناؤنس ہوا تھا۔تو ہم چاہتے تھے کہ ٹربیونل کی فائنڈنگز ہمیں ملیں تو ہم کیس کریں لیکن ہمیں فائنڈنگز کا کچھ پتہ نہیں چلا۔ جب ہم یہاں پہنچے تو کچھ ایک مہینہ پہلے ہیومن رائٹس کی طرف سے ہمیں یہ رپورٹ ملی ہے تو اب میں چاہتی ہوں کہ میں کیس کروں۔ میں چاہتی ہوں کہ میرے کیس کی انکوائری ایماندار پولیس افسر اور جج کریں اور کسی کے بہکاوےمیں نہ آئیں۔اللہ کا شکر ہے کہ ہمارے ملک میں ایسے لوگ موجود ہیں جن کے ہاتھوں میں قانون محفوظ ہے۔

    سوال: آپ نے کہا کہ آپ گھر میں نظر بند تھیں۔کس کس کو اجازت تھی کہ آپ سے مل سکے؟

    جواب: جب ہم اسلام آباد میں تھے تو ہمیں کسی سے بھی ملنے کی اجازت نہیں تھی۔

    سوال: اسلام آباد میں آپ کون سی تاریخ کو تھے؟

    جواب: ہم پانچ مارچ کو کراچی سےاسلام آباد پہنچے اور ہمیں تھریٹ کیا گیا۔ آپ اپنے موبائل بالکل بند رکھیں۔ کسی سے ملنے جلنے کی کوئی ضرورت نہیں۔ اور اب آپ فیڈرل حکومت کے ہاتھوں میں آ گئے ہو اور ایجنسیز والے بڑے ظالم ہیں اور باہر بیٹھے ہوئے ہیں ہتھیاروں سمیت۔ اور جو ہم کہیں وہ آپ کو کرنا ہو گا۔ آپ بالکل خاموش ہو جاؤ۔

    مسٹر خالد: اصل میں دیکھیں کہ جب ہم کراچی سے اسلام آباد آئے تو ہمارا سب لوگوں سے رابطہ نہیں ہونے دیا گیا۔ اس وقت ہمیں پتہ چلا کہ ٹریبیونل کی فائنڈنگز آنے والی ہیں اور خود بلوچستان حکومت نے جو انوسٹیگیشن کروائی تھی اس کا پتہ چلنے والا تھا۔ جب ہم نے جج سے یہ کہا کہ شازیہ کہ سٹیٹمنٹ کی کاپی ہمیں دے دیں تو اس نے کہا کہ اس کی ایک کاپی گورنر بلوچستان کے پاس جائے گی اور دوسری کاپی اس کی پریزیڈنٹ کے پاس جائے گی۔

    سوال: آپ ٹریبیونل کےسامنے پیش کیوں نہیں ہوئی تھیں؟
    جواب: ٹریبیونل کی سٹیٹمنٹ جب میں نے دی تھی تو وہاس صرف ایک جسٹس تھے اور وکیل تھا ایک اور ایک ٹائپسٹ تھا۔ جب ہمیں ٹربیونل کے لیے بتایا گیا کہ آپ کو کوئٹہ جانا ہے تو ہم نے کراچی کے سی ایس اسلم سنجرانی کو بتایا کہ ہم جانا چاہیں گے تو انہوں نہ کہا کہ آپ کی جان کو خطرہ ہے اور بلوچستان کے حالات بہت خراب ہیں۔ آپ کا ٹریبیونل یہیں کراچی میں ہو گا۔ اپلیکیشن میں لکھا گیا کہ میری طبیعت خراب ہے۔اسی لیے میں کوئٹہ نہیں جانا چاہتی۔ اور اگر آپ پھر بھی جانا چاہتے ہیں تو آپ اپنی زندگی کے خود ذمہ دار ہونگے۔

    سوال: اور یہ ملٹری کے لوگ تھے یا پولیس کے؟
    جواب: یہ چیف سیکریٹری تھے اسلم سنجرانی سندھ کے۔ انہوں نے ہم سے کہا تھا۔

    مسٹر خالد: لیکن جب ہمیں یہ اطلاع ملی کہ آپ کا ٹریبیونل ہم کراچی میں کریں گے تو اس وقت ہمیں ایک خط ملا بلوچستان حکومت سے کہ سندھ ہائی کورٹ میں شازیہ کا ٹریبیونل ہوگا۔ اور پولس کے ساتھ شازیہ جائیں گی۔ لیکن دس منٹ پہلے پولیس کو ہٹا کے رینجرز جیپ لے کر آ گئے۔ وہ ہمیں لینے آ گئے اور ہم یہ سوچ رہے تھے کہ سندھ ہائی کورٹ جائیں گے وہاں جج ہو گا۔ کھلی عدالت ہو گی۔ لیکن پتہ چلا ہمیں تو الیکشن آفس میں لے گئے۔ یہ خفیہ طور سے تحقیقات کرنے کا مطلب کیا ہوا۔

    ’یہ کیس بہت ہی حساس قسم کا کیس تھا۔ پاکستان گورنمنٹ کے لیے اور میں جہاں تک سمجھتا ہوں کہ جو شکوک اور شبہات آرمی کے اوپر آئے تھے، آرمی کے کیپٹن کے اوپر آئے تھے۔ جیسے نواب اکبر بگٹی نے کہا تھا کہ وہی کلپرٹ ہے۔ میں سمجھتا ہوں کہ وہ جو فوج اور قبائلیوں کے درمیان چپکلش ہو گئی تھی اس میں ایک انا کا مسئلہ بھی تھا گورنمنٹ آف پاکستان کے لیے۔

    سوال: آپ کو لگتا ہے کہ آپ میں ہمت تھی ان کا سامنا کرنے کی کیونکہ ہم نے ایک اور بھی کیس دیکھا ہے مختار مائی کا؟

    جواب: جی بالکل ہم تو چاہتے تھے کہ ہم میڈیا کے سامنے آئیں، اپنا کیس میڈیا کے سامنے لائیں لیکن پھر ہمیں ہاؤس اریسٹ کر دیا گیا۔ہمیں شروع سے یہ کہا گیا، حکومت نے ہم سے کہا کہ آپ لوگ خاموش رہیں۔ ہم آپ کو انصاف دلوائیں گے۔ ہمیں انہوں نے فریب اور مکاری سے ملک سے باہر نکال دیا۔ اور اب وہی لوگ میرے کیس کو ختم کر دینا چاہتے ہیں۔ تو میں صرف اپنے لیے نہیں بول رہی ہوں بلکہ پاکستان کی تمام عورتوں کے لیے میں حق اور انصاف کی آواز اٹھائی ہے اور میں تب تک لڑتی رہوں گی جب تک ہم عورتوں کو پاکستان میں انصاف نہیں ملتا۔

    سوال: کیا ’وہ لوگ‘ سے مطلب حکومت ہے؟
    جواب: جی بالکل۔

    سوال: آپ کو لگتا ہے گورنمنٹ ٹارگٹ کرتی ہے عورتوں کو؟

    جواب: جی بالکل، ہمیں تو انہوں نے یہ ہی کہا کہ آپ کو انصاف ملے گا۔ ہم خاموش بیٹھے تھے، جب گورنمنٹ ہی ہمیں خود کہہ رہی ہے، قانون نافذ کرنے والے ہمیں کہہ رہے ہیں کے آپ کو انصاف ملے گا۔ لیکن جب ہم یہاں پہنچے تو نیوز آن لائن والوں کی طرف سے ہمیں یہ اخبار میں رپورٹ ملی کہ ہمارے یو کے جانے سے پہلے میں نے ٹیلیفون پر بات کی ہے بگٹی صاحب سے اور میں نے ان سے رو کے التجا کی ہے کہ خدارا میری عزت کو مت اچھالیں۔ اور میں اپنی مرضی سے پاکستان چھوڑ کر جا رہی ہوں۔ حکومت نے مجھے انصاف دیا ہے خدارا آپ خاموش ہو جائیں اور حکومت نے مجھے ایک لاکھ ڈالر بھی دیے ہے۔ لیکن آج تک میں نے ان سے ٹیلیفون پر بات نہیں کی۔ یہ ساری جھوٹی خبریں ہیں جو نیوز آن لائن والوں نے دی ہیں تاکہ لوگوں میں یہ تاثر پھیلے کہ ڈاکٹر شازیہ ایک ٹھاٹھ باٹھ کی زندگی گزار رہی ہیں جیسا کے ابھی کچھ دن پہلے اخبار میں آیا تھا کہ شازیہ کو یو کے کی شہریت مل چکی ہے اور یو کے گورنمنٹ ان کو دو ہزار پاؤنڈ ماہانہ دے رہی ہے اور ان کے ہیزبینڈ کو بہت جلد جاب ملنے والی ہے۔ ایسی کوئی بات نہیں۔ ہم یہاں خانہ بدوشوں کی طرح زندگی گزار رہے ہیں۔ در در کی ٹھوکر کھا رہے ہیں۔ پاکستان میں تھے تو اپنے گھر سے نکالے گئے، وہاں سے نکلے تو ہمیں ایک اولڈ بلوچ گھر میں رکھا گیا۔ وہاں سے نکالے گئے تو ہمیں اسلام آباد میں رکھا۔ پھر جب ہماری ساری امیدیں ختم ہوگئیں تو خود کیس فائل کیا اور یہاں عام پناہ گاہ میں رہ رہے تھے۔ اب کچھ دن پہلے اس گھر میں شفٹ ہوئے ہیں۔ ہمارا سارا مستقبل ختم ہو گیا۔ میں اپنے بچے سے دور ہوگئی۔

    سوال: واپس جانا چاہتی ہیں؟

    جواب: وقت اور حالات کیا صورت اختیار کرتے ہیں مجھے تو نہیں پتہ اور میں جو پناہ کی طالب بن کر زندگی گزار رہی ہوں اس کا مجھے کوئی شوق ہی نہیں ہے۔ لیکن مجبوری یہ ہے کہ حکومت ہمیں پروٹیکشن نہیں دے سکی۔ لیکن امید رکھتی ہوں کہ اگر وقت اور حالات نے ساتھ دیا تو ضرور جاؤں گی۔

    سوال: اگر حکومت بدلی تو جائیں گی؟
    جواب: جی بالکل جانا چاہوں گی۔

    سوال: آپ کی بے نظیر صاحبہ سے بھی ملاقات ہوئی تھی۔ کیا ان سے باتیں ہوئیں اور کیا انہوں آپ کو سپورٹ کیا۔؟

    جواب: جی انہوں نے مجھے سپورٹ کیا اور کہا کہ آپ نے بہت اچھا کیا اپنے حق اور انصاف کے لیے لڑ رہی ہیں، اپنے لیے نہیں بلکہ پاکستان کی تمام عورتوں کے لیے آپ لڑ رہی ہیں، بہت اچھا کام کر رہی ہیں آپ۔

    سوال: آپ کہ رہی ہیں کہ آپ کا بیٹا بھی وہیں پر ہے۔ اپنے بیٹے کے بارے میں کچھ بتائیں۔
    جواب: میرا یہ بیٹا لے کر پالا ہوا ہے ۔ جب چار سال کا تھا تو اس کے والد کی وفات ہوگئی تھی تو اس کی امی نے دوسری شادی کر لی تھی۔تب سے میں ہی اس کی دیکھ بھال کر رہی ہوں۔ لیکن مجھے ڈر لگ رہا ہے کیونکہ جب ہم اسلام آباد میں تھے تو وہ لوگ کہہ رہے تھے کے یہاں آپ کا بیٹا بھی ہے اور آپ تو چلے جائیں گے ہم کچھ بھی کر سکتے ہیں۔

    سوال: یہ کس نے کہا تھا آپ کو؟

    جواب: یہ نیوز آن لائن کے جو ڈائریکٹر ہیں محسن بیگ، انہوں نے کہا تھا۔

    سوال: آپ کا جو بیٹا ہے اس کو انہوں نے آپ کو لے جانے نہیں دیا کہ آپ خود اس کو وہاں چھوڑ کر آئے ہیں۔

    جواب: جب ہم کراچی میں تھے تو ڈاکٹر شاہد مسعود اے آر وائی کے اور محسن بیگ ہمارے پاس ملنے کے لیے آئے تو شاہد مسعود نے کہا کہ محسن بیگ حکومت کا بندہ ہے۔ ہم آپ کی مدد کریں گے۔ آپ کی جانوں کو خطرہ ہے۔

    سوال: جانوں کا خطرہ کس سے ہے؟

    جواب: کہنے لگے کہ اسلام آباد کی ایجنسیز سے ہم ملے ہیں تو آپ لوگوں کو بہت رسک ہے اور بلوچستان کے حالات آپ کی اشو کی وجہ بہت خراب ہو گئے ہیں۔

    مسٹر خالد: ہم سے ملنے سے پہلے وہ اسلام آباد گئے تھے۔ محسن تو وہ ظاہری بات ہے کہ وہ ایجنسی کا بندہ ہی ہے اور شاہد مسعود نے بھی اس کا اقرار کیا۔ اس نے مجھے کہا تھا کہ محسن بیگ گورنمنٹ کا آدمی ہے۔ میں (شاہد مسعود) اور محسن آپ کی مدد کریں گے۔ اب گورنمنٹ شاہد مسعود اور محسن بیگ کے درمیان جو کھچڑی پک رہی تھی اس کا ہمیں تو علم نہیں۔ شاہد مسعود ہم سے اسلام آباد میں انٹرویو لینے کے بعد غائب ہو گیا تھا۔ پھر دوبئی سے اس نے فون کیا تھا۔ بڑا ڈرا ہوا تھا اور ایجنسیز کے لئیے اس نے کافی بری طرح سے باتیں کی تھیں کہ وہ تو ’مجھے ہی مار دینا چاہتے تھے اور میں اپنی جان بچا کے چار ائیرپورٹس سے اپنے ٹکٹ بک کرواکے اور جان بچا کے نکلا ہوں‘۔ پھر اس کے بعد محسن صاحب آ کے کھڑے ہو گئے جی شاہد مسعود صاحب کو ہم نے فرنٹ پہ رکھا ہوا تھا۔ سارا کام اور آپکا ویزہ وغیرہ تو ہمارا کام ہے، وہ تو ہم نے کیا ہے۔ پریزیڈنٹ سے بھی میں آپ کو اجازت دلوا رہا ہوں اور طارق عزیز جو سپیشل ایڈوائزر ہیں ان سے بھی اس نے ملاقات کروائی لیکن اس نے کہا تھا کہ- – – –

    سوال: طارق عزیز سے ملے؟
    جواب: مسٹر خالد: جی ان سے ملاقات ہوئی۔

    سوال: انہوں نہ کیا کہا تھا آپ سے؟

    مسٹر خالد: طارق عزیز سے جو ملاقات ہوئی تھی اس سے پہلے محسن بیگ صاحب نے ہمیں کہا تھا کہ آپ طارق عزیز صحاب کو کچھ نہ کہیں، آپ ان کی باتیں سنیں۔ میں نے کہا ٹھیک ہے۔ اور پھر ان سے ملاقات ہوئی انہوں نہ کہا کہ آپ نے تو بہت اچھا کیا ہے اور آپ کی سٹیٹمنٹ جو خود ہی انہوں تیار کی تھی اسی سٹیٹمنٹ کی بات کی۔

    سوال: سٹیٹمنٹ میں کیا لکھا ہوا تھا؟

    مسٹر خالد: سٹیٹمنٹ میں کچھ ایسی چیزیں تھیں جس طرح سے پی پی ایل کو بچایا گیا تھا کہ پی پی ایل نے شازیہ کو ٹریٹمنٹ دیا تھا، میڈیکل سپورٹ دی تھی۔ ایسی کوئی بات نہیں، دنیا کو پتہ ہے کہ پی پی ایل نے کیا رویہ اختیار کیا وہ تو آن ریکارڈ ہے، پولیس کے ریکارڈ سے آپ دیکھ لیں کہ انہوں نے کوئی تعاون پولیس کے ساتھ بھی نہیں کیا۔ تو وہ تو جھوٹ نہیں بول رہے۔ اور سینٹ میں بھی اس چیز کو اچھالا گیا ہے۔ ایم ڈی کو بلایا گیا ہے۔ بلکہ ٹریبیونل میں جو انکی یکطرفہ رپورٹس ہیں ان میں بھی یہ بتایا گیا ہے کہ پی پی ایل کی یہ ذمہ داری ہے۔

    سوال: سٹیٹمنٹ میں یہ لکھا ہوا تھا کہ شازیہ کو پی پی ایل نے بڑی اچھی طرح سے ٹریٹ کیا۔

    مسٹر خالد: جی

    سوال: اور یہ وہ خود لکھ کے لائے ہوئے تھے؟

    مسٹر خالد: جی لکھ کے لائے ہوئے تھے۔

    ڈاکٹر شازیہ: اور ا س میں یہ بھی لکھا ہوا تھا کہ میں اپنی مرضی سے ملک چھوڑ کے جا رہی ہوں اور حکومت نے میرا بہت ساتھ دیا ہے۔ تو میں نے کہا کہ میں اس سٹیٹمنٹ پہ سائن نہیں کروں گی۔ تو محسن بیگ نے کہا کہ اگر تم سائن نہیں کرو گی تو ایجنسیز والے یہ کہتے کہ اگر ہم خالی کاغذ پر لکیریں بھی ڈالیں تب بھی آپ اس پر – – – -سائن کرکے یہاں سے اپنی جان بچاؤ اور بھاگو۔

    سوال: اس میٹنگ میں جب آپ طارق عزیز سے ملے تھے تو آپ تھیں آپ کے خاوند تھے،محسن بیگ تھے اور طارق عزیز تھے بس۔ (تاہم محسن بیگ نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے اس بات کی تردید کی ہے کہ انہوں نے ڈاکٹر شازیہ کی ملاقات طارق عزیز سے کروائی تھی)۔

    مسٹر خالد: نہیں شازیہ کی جو بھابھی تھی وہ ان کے ساتھ تھی، تو طارق عزیز کو بھی ہم نہ کہا تھا کہ عدنان کو وہ ہمارے بیٹے جیسا ہے ہم اس کو لے جانا چاہتے ہیں تو انہوں نے کہا کہ جی آپ اس وقت چلے جائیں آپ کے پاس وقت بہت کم ہے۔ آپ یو کے جائیں اور اس کے بعد محسن وغیرہ بھی ہیں ہم آپ لوگوں کی مدد کریں گے اور عدنان بھی آپ کو آ کر مل لے گا۔

    سوال: پاسپورٹ آپ کے کس پاس تھے؟

    مسٹر خالد: پاسپورٹ ہمارے شاہد مسعود کے پاس تھے اور جب اس کو انہوں نے نکال دیا تو اس نے پاسپورٹ جو تھے کسی دوست کو دئیے تھے اور ان کا دوست ہمارے پاس تقریباً رات ایک بجے آیا تھا اور پاسپورٹ ہمیں دے کر چلا گیا۔

    سوال: ویزہ کس نے لگوایا تھا۔
    جواب: دونوں نے۔ شاہد مسعود نے
    مسٹر خالد: شاہد مسعود نے، محسن بیگ نے لگوایا ہے۔ اب کس نے لگوایا ہے ہمیں نہیں پتہ اس بات کا۔
    ڈاکٹر شازیہ: دو دن میں وہ ہمارا پاسپورٹ لے کر گئے اور دو دن میں واپس کر دئیے۔ تو دو دن میں ویزا کون لگوا سکتا ہے۔

    شیخ رشید صاحب کا بیان آیا تھا کہ ہم نے نہیں بھیجا اور کوئی این جی او ہے جس نے یہاں ان لوگوں کو بلوایا ہے۔

    مسٹر خالد: شیخ رشید کا بیان اس طرح آیا تھا کہ ہمیں تو پتہ ہی نہیں ہے کہ ڈاکٹر شازیہ کیسے فلائی کر گئیں اور ہم نے امیگریشن سے پتہ کروایا کہ اس طرح کا کوئی بندہ نہیں گیا۔

    سوال: ایک اخبار نے ایک فائنڈنگ کی تھی اور آپ کی تصویر آئی تھی ائیرپورٹ پر۔ وہ ائیرپورٹ پر ہی کھینچی گئی تھی، اس کے پیچھے جو صوفہ تھا وہ تو کہیں نہیں پایا گیا۔

    جواب: نہیں جب مجھ سے سٹیٹمنٹ لی گئی تھی اسلام آباد میں اس وقت میرے فوٹوز نکالے تھے انہوں نے۔

    مسٹر خالد: اس وقت گیسٹ ہاؤس میں فوٹو لئیے تھے۔ اچھا شیخ رشید صاحب کی بات کریں کیونکہ وہ تو اس طرح کی باتیں کر رہے ہیں کہ ہمیں جی پتہ نہیں ہے اور این جی اوز نے بھیجی ہیں۔ اس کے بعد ہیومن رائٹس اور این جی اوز نے اس باتوں کی تردید کی تھی۔ اب یہ بتائیں کہ حلومت اس طرح کے جھوٹ کب تک بولتی رہے گی۔

    سوال: آپ کی کسی این جی اوز نے مدد نہیں کی تھی۔

    مسٹر خالد: کسی این جی اوز نے نہیں۔ جب ہم طارق عزیز سے مل کر جا رہے ہیں اور ان سے اجازت لے کر جا رہے ہیں تو سمجھیں کہ بات تو ختم ہو گئی۔ ہم سمجھ رہے تھے جیسے کے صدر سے مل کے جا رہے تھے۔

    اس وقت جو حالات تھے ہم خود گھبرائے ہوئے تھے اور ہمیں ڈرایا جا رہا تھا۔ اور محسن بیگ اس طرح کی باتیں کرتے تھے اور کہتے تھے یہاں سے نکل جائیں آپ کی زندگی بچ جائے گی۔

    سوال: آپ وہاں سے جانا چاہتے تھے۔
    جواب: ذاتی طور پہ ہم نہیں نکلنا چاہتے تھے لیکن حالات جو ہو گئے تھے تو ہم مجبور ہو گئے کہ ہم نکلیں۔اس اشو اتنا پولیٹیسائز کیا جا رہا تھا اور انصاف تو مل ہی نہیں پا رہا تھا۔ ایم آئی کے کرنل مجھے ملے تھے، کرنل حفاظت صاحب ملے تھے انہوں نے کہا کہ 48 گھنٹوں کے اندر آپ کو ایک بندہ ملے گا۔ کلپرٹ ملے گا۔ ایم آئی کے جنرل نے کہا کہ وہ میرے ہاتھ میں ہے۔

    سوال: جس دن ٹریبیونل بیٹھا تھا رپورٹ یہ آئی کہ سب سے پہلے ایم آئی کے لوگ آپ سے وہاں ملے تھے۔ یہ بات سچ ہے؟

    مسٹر خالد: نہیں ایم آئی کے کرنل مجھے گیارہ جنوری کو ہی ملے تھے۔

    سوال: یہ جو شناخت پریڈ ہوئی تھی تو اخباروں میں تو یہ آیا تھا کہ وہ لوگ نہیں دکھائے گئے تھے صرف ان کی آڈیو اور ویڈیو دکھائی گئی تھی۔

    جواب: نہیں آئڈنٹیفیکیشن پریڈ میں گیارہ بندے سامنے لے کر آئے تھے تو میں نے کہا کہ شکل تو میں پہچان ہی نہیں پاؤں گی لیکن آواز جو ہے میں وہ پہچان پاؤں گی۔ کبھی نہیں بھول سکتی مرتے دم تک اس بندے کی۔

    سوال: کیپٹن حماد اس پریڈ میں تھے۔
    جواب: مجھے بتایا تو نہیں گیا کہ اس میں کیپٹن حماد ہے۔ آج تک ناں تو کسی نے مجھے اس کی فوٹو دکھائی اور ناں ہی اس کی وڈیو۔ مجھے نہیں پتہ کہ اس میں کیپٹن حماد تھا کہ نہیں تھا۔ جو لوگ بلائے گئے تھے وہ ایک ایک کر کے پردے کے پیچھے سے ایک منٹ تک بولتے رہے لیکن ان میں سے کسی کو میں شناخت نہیں کر پائی۔ جب آئڈنٹیفیکیشن پریڈ ہو رہی تھی تب وہ گیارہ لوگ شیشے کے پیچھے کھڑے ہوئے تھے۔ لیکن میں نے کہا کہ ان کی شکل تو میں نہیں پہچان پاؤں گی اور آواز جو ہے وہ میں کبھی بھی نہیں بھول سکتی۔

    خالد: اگر اس آئڈنٹیفیکشن پریڈ میں کیپٹن حماد تھا اور اس نے ڈاکٹر شازیہ سے بات کی ہے تو وہ بالکل بے قصور ہے۔ کیونکہ جن لوگوں نے بات کی تھی کلپرٹ ان میں نہیں تھا۔

    سوال: آئڈنٹیفیکیشن پریڈ جب ہوئی تھی اس میں جسٹس تھے آپ تھیں اور کوئی ملٹری پرسنل بھی تھے وہاں پر۔

    جواب: وہاں پر کافی پولیس کے لوگ تھے۔ ایس ایس پی تھے اور ہمیں جہاں لے جایا گیا وہ ایک تھانہ تھا۔

    سوال: یہ پہلے بھی کبھی ایسا ہوا ہے سوئی میں۔
    جواب: نہیں کبھی بھی ہم نے نہیں سنا اور جب مجھے اپائنٹ کیا گیا تو پی پی ایل کے ہیڈ آفس والوں نے مجھے یہ بھی یقین دہانی کرائی تھی کہ ہم خالد کو بھی جاب دیں گے اور کپلز ہی کو پسند کرتے ہیں کیونکہ یہ ایک ریموٹ ایریا ہے۔اور جب ہم وہاں کام کے لیے گئے تو وہاں کے سی ایم نے ہمیں یقین دہانی کرائی کہ شازیہ یہاں اپنے گھر زیادہ محفوظ ہے۔

    سوال: اب کیا امیدیں ہیں۔ آپ کو امید ہے کہ جو بھی کلپرٹ ہے پکڑا جائے گا۔
    جواب: میں یہی چاہتی ہوں کہ میں کیس کروں اور ابھی بھی ایسے لوگ موجود ہیں جن کے ہاتھوں میں قانون محفوظ ہے جیسے کہ پولیس میں ایس ایس پی ثنااللہ عباسی ہیں اور اے ڈی خواجہ ہیں اور وکیلوں میں ہماری ہیومن رائٹس کی عاصمہ جہانگیر ہیں۔

    سوال: آپ اپنا کیس فائل کریں گی۔
    جواب: جی انشااللہ۔

    سوال: آپ نے ابھی تک کیوں نہیں کیا۔
    جواب: ہم کچھ ہیومن رائٹس تنظیموں کے ساتھ مل کر کریں گے۔

    سوال: کیا اسی سال کریں گے۔
    جواب: جی ہماری کچھ ہیومن رائٹس کی تنظیموں سے بات چیت چل رہی ہے۔

    سوال: کیا واپس آنے دیں گے آپ کو۔
    جواب: مسٹر خالد: واپس آنے کا جہاں تک تعلق ہے ہمارا ملک ہے۔ ہم جب چاہیں جا سکتیں ہیں۔ لیکن مسئلہ پروٹیکشن کا ہے۔

    سوال: ادھر انٹیلیجنس کے لوگ آپ کو تنگ کرتے ہیں۔
    مسٹر خالد: جی ابھی تک تو ایسی کوئی بات نہیں ہوئی۔ شازیہ نے جو آواز اٹھائی ہے یہ اپنے انصاف کے لیے لڑ رہی ہے۔اس کے ساتھ زیادتی ہوئی ہے۔ابھی ایک اور کیس ہوا ہے سونیا ناز کا۔ حکومت کے ہی رکھوالے ہیں۔
    ڈاکٹر شازیہ: پاکستان میں تو محفوظ ہی نہیں ہوں میں۔ قانون نافذ کرنے والے عورتوں سے زیادتی کرتے ہیں۔

    سوال: اس انسیڈنٹ کے بعد دنیا کے بارے میں انسان کا نظریہ بدل جاتا ہے۔آپ کا بدلا ہے؟

    جواب: میں نے جو آواز اٹھائی ہے ویسٹ میں، عورتوں کو پاکستان میں انصاف نہیں ملتا تو میں کہاں جاؤں۔ جہاں تک ویسٹرن ملکوں کی بات ہے اور اگر یہاں پر کسی سے زیادتی ہوتی ہے تو انصاف بھی ملتا ہے۔

    سوال: اخبار میں پڑھا تھا کہ یہ رات کو سو نہیں سکتیں۔
    جواب: مسٹر خالد: اب بھی ان کی سائکو تھیراپی چل رہی ہے۔ ہفتے میں ایک بار یہ جاتیں ہیں۔ لیکن میں یہ چاہ رہا ہوں کے ان میں حوصلہ آئے۔وکٹم سے سروائیور بنیں ہیں۔

    سوال: شازیہ آپ کیسا محسوس کر رہی ہیں۔ جب یہ واقعہ ہوا تھا تب سے لے کر اب تک؟
    جواب: میں جو بول رہی ہوں وہ اچھا تو نہیں لگ رہا لیکن اس لئیے بول رہی ہوں تاکہ پاکستان میں عورتوں کو انصاف مل سکے اور لا اور آرڈر ٹھیک ہو سکے۔

    سوال: تو کیا آپ اب زیادہ مضبوط محسوس کر رہی ہیں؟
    جواب: جی میں وکٹم سے سروائیور بن گئی ہوں اور مجھے تو انصاف نہیں ملا لیکن میری یہ کوشش ہو گی کہ عورتوں کی آواز بن جاؤں اور اگر ایک عورت کو بھی انصاف ملتا ہے تو وہ میری جیت ہوگی۔

    ایک آرٹیکل چھپا تھا جس سے پتہ چلا کے آپ نے خودکشی کی کوشش کی ہے۔
    جواب: جی حالات کچھ اس طرح کے ہو گئے تھے کیونکہ آپ تو جانتے ہیں پاکستان میں عورتوں عزت نہیں ملتی۔اوپر سے خالد کے دادا نے جرگہ بلایا ہوا تھا اور ان کا فیصلہ تھا کہ شازیہ کو طلاق دے دی جائے۔ اس وقت میں نے خودکشی کرنے کی کوشش کی لیکن خالد اور گھر والوں نے مجھے بچا لیا۔ایک اور آرٹیکل اسلام آباد میں چھپا تھا جس میں لکھا گیا تھا کے شازیہ پریگننٹ ہیں اور خالد لیبیا میں ہیں تو وہ کیسے پریگننٹ ہوئیں۔ تو ایسی باتوں سے تنگ آ کر میں نے باتھ روم میں جا کے خودکشی کرنا چاہی مگر عدنان اور خالد دونوں میرے ساتھ تھے۔ اور عدنان کے کہا کہ ماما اگر آپ اپنے آپ کو مار دیں گی تو میں بھی اپنے آپ کو مار دوں گا دروازہ کھولیں۔ اگر گھر والوں کا اور میرے خاوند کا ساتھ نا ہوتا تو میں کب کی جا چکی ہوتی اس دنیا سے‘۔

  • In such critical times for Pakistan, media has emerged as a very important tool for giving information to the public. But at the same time, it has to make sure that the information it provides is properly researched and does not become a reason to spread confusion all around.

  • The Deep State and technocrats By Kamran Shafi Tuesday, 28 Sep, 2010 http://www.dawn.com/wps/wcm/connect/dawn-content-library/dawn/the-newspaper/columnists/kamran-shafi-the-deep-state-and-technocrats-890

    The Deep State itself wants to puncture the democratic balloon one more time and relegate rule by parliament to the backstage so that any advances made are brought to naught. –File Photo
    Anyone seen the list being circulated on the Internet containing the names of the ‘technocrats’ who are being touted as our newest saviours in the “national government” that is to take over after the present dispensation is kicked out? Makes your skin crawl, I’ll tell you.
    Most of them have been in the various and varied engineered dictatorial/caretaker/lota so-called governments of which we’ve seen more than our fair share; governments that failed in every which way, made a bigger mess of things every single time that they “rescued” us, and after whose failure and subsequent departure the political leaders thrown out came back into the assemblies with larger majorities than they had when they were shown the door.
    So why are these names making it to the lists being “prepared and finalised” when they were such abject failures in their earlier incarnations as ministers and advisers to dictators? It is not as if manna fell from heaven when they were ruling the roost, nor was there a chicken in every pot in the land. So, who are these people that pop up every now and again whenever the Deep State decides democracy has to take yet another setback?
    No prizes for guessing, reader, for the matter is a simple one for any Pakistani who knows the shenanigans of the powers that be in the Land of the Pure: they are the handmaidens of the Deep State, who are always waiting in the wings in the ‘sit/stay’ position, ready to leap at the next command. They are the darlings of the establishment, the actual inheritors of this country who can do no wrong, who are pure as driven snow. And whose acts of omission and commission when in (extra-legal) occupation of their offices have never been inquired into, let alone being prosecuted. Never mind that one of them virtually bankrupted Pakistan Railways.
    No, sirs; no, prosecution is only for the elected representatives of the people who stand against dictatorship and the dark doings of the Deep State. Prosecution is only for those who get elected — never for those who inveigle their way into power through the back door, through the dictator’s pantries. But, really! Are we Pakistanis so naive that we simply cannot understand what is happening around us and to us? Are we so far gone that we haven’t had our fill, and more, of these false prophets? Don’t we know that to a man (and woman) that these people were against the restoration of the superior judiciary to please their boss, the Commando?
    Hold on, though. I have only brought up the matter of a new dispensation because it is being bandied about. Let us see who wants this so-called ‘change’? I see no great demonstrations in the streets, neither against provincial nor the federal governments. So why this tsunami, this cacophony for ‘change’? What, and who, drives this demand? Again no prizes for guessing: it is the Deep State itself which wants this change primarily to puncture the democratic balloon one more time and relegate rule by parliament to the backstage so that any advances made are brought to naught. And, secondly, wants to have absolutely untrammelled suzerainty over foreign affairs as the Afghanistan imbroglio heats up. The Deep State would want no interference whatever from an independent parliament as it goes about playing the Great Game, no matter how disastrously.
    And now for a bit of fun. According to this newspaper of record, Rehmatullah Memon, an official of the Pakistan Standards Quality Control Authority (PSQCA), raided the army’s CSD superstore in Karachi along with a team of inspectors and found several consumer products such as chilli powder, cooking oil, ghee, turmeric powder, CSD tea and other such items being sold illegally because these products had not been registered with the PSQCA. The worst news for customers of the superstore was that the CSD cooking oil manufactured in Multan was found to be substandard, containing higher quantities of Free Fatty Acids (FFA) than permissible.
    For his pains, Mr Memon and his team were harassed by the CSD management and even held hostage for a while after being berated on the telephone by an angry Col Zakaria, probably the manager. The management also pulled down the shutters and shut the doors to the store, panicking the customers that included women and children. Sense soon prevailed, however, and Mr Memon and party (which included media persons and representatives of NGOs, which was probably why he and his team weren’t beaten black and blue!) left the CSD. Mr Memon should immediately be awarded the Sitara-e-Khidmat for entering what is virtually a lion’s den, a Pakistan army retail shop, and doing his duty.
    A word about the Omar Cheema case: a round of applause for my friend Najam Sethi who, during a protest meeting in Lahore, quite rightly called upon the ISI to tell us just who kidnapped, beat and humiliated Cheema. It is my experience from the time that I worked for Benazir Bhutto so many years ago that the ISI was indeed the Mother of All Agencies, even in those far off days. The IB is but a poor relative, its spooks followed and observed relentlessly by ISI operatives. Those were the days when the ISI was notionally reporting to the prime minister, mark; it now reports to the COAS and as such is a far more powerful organisation. So who would know better than the ISI who was responsible for Omar Cheema’s kidnapping and torture?

    I have made this observation before and I will make it again. We, all of us, are citizens of Pakistan. The ISI is a department of the government of this country and therefore belongs to us. Can it please civilise itself, and consider lesser mortals human beings too? If it has a problem with one of us citizens, can it please open a dialogue on the basis of respect and mutual esteem? Can it please get off its high horse?

  • A Geo-inspired French type Revolution:) Here is the background of “Revolution” read “Bangladesh Model”

    Shaheen Sehbai [Group Editor The News International/Jang Group/Geo “now in Exile” in USA] had openly advised General Kayani to intervene and what a Joke another very Senior Journalist i.e. Mehamood Sham [Editor Jang] seconded his demand [I still remember Mehmood Sham’s photos with Benazir and his Father Bhutto, which he has in his Drawing Room in Karachi]: Here are the proofs with dates and their respective “Rant” for Martial Law and guess what Mr. Shaheen Sehbai despite being a senior Journalist had even quoted “a wiretap (transcription of Intelligence Agency phone tapping)” for Martial Law: Shaheen Sehbai [Jang Group] Invites Martial Law in Pakistan ! http://chagataikhan.blogspot.com/2009/11/shaheen-sehbai-jang-group-invites.html Similarities between Shaheen Sehbai & Asghar Khan Letters.
    http://chagataikhan.blogspot.com/2009/11/similarities-between-shaheen-sehbai.html Mahmood Sham’s Advice & Shaheen Sehbai’s Anti Pakistan Army Columns & Jang Group. http://chagataikhan.blogspot.com/2009/11/mahmood-sham-shaheen-sehbais-anti.html Mahmood Sham & Shaheen Sehbai on ISI.
    http://chagataikhan.blogspot.com/2009/11/mahmood-sham-shaheen-sehbai-on-isi.html

  • A Geo-inspired French type Revolution:) Place de la Bastille
    Voice of America & GEO: GEO TV broadcasts programmes from Voice of America. How much money does it receive, if any, from VOA or other US sources? VOA is owned and controlled by the United States government. Its Board members are appointed directly by the President of the United States. Transparency in Pakistan’s Media, Benazir and the US Friday, December 26th, 2008 at 1:22 am By Yousuf Nazar http://www.yousufnazar.com/?p=788 The Jang Group – how low the standards would fall? Saturday, April 10th, 2010 at 9:56 pm By Yousuf Nazar http://www.yousufnazar.com/?p=939 An Open Letter to all Journalists: Would GEO/Jang Group publish the names? Sunday, February 21st, 2010 at 11:38 am http://www.yousufnazar.com/?p=869 The politics of media barons Monday, February 15th, 2010 at 6:18 am http://www.yousufnazar.com/?p=865

  • A Geo-inspired French type Revolution:) Joan of Arc [Male Version] is already online:) A report from Asian Human Rights Commission on GEO TV: PAKISTAN: Two persons murdered after an anchor person proposed the widespread lynching of Ahmadi sect followers ASIAN HUMAN RIGHTS COMMISSION – URGENT APPEALS PROGRAMME Urgent Appeal Case: AHRC-UAC-203-2008 http://www.ahrchk.net/ua/mainfile.php/2008/2999/ PAKISTAN: No action taken against Geo TV presenter who incited Muslims to murder members of Pakistan minority on air FOR IMMEDIATE RELEASE AHRC-STM-244-2008 September 18, 2008 A Statement by the Asian Human Rights Commission – PAKISTAN: No action taken against Geo TV presenter who incited Muslims to murder members of Pakistan minority on air http://www.ahrchk.net/statements/mainfile.php/2008statements/1694/

  • A Geo-inspired French type Revolution:) Joan of Arc [Male Version] is already online:) Ahmadi massacre silence is dispiriting The virtual conspiracy of silence after the murder of 94 Ahmadis in Pakistan exposes the oppression suffered by the sect Declan Walsh
    guardian.co.uk, Monday 7 June 2010 14.59 BST http://www.guardian.co.uk/commentisfree/belief/2010/jun/07/ahmadi-massacre-silence-pakistan?showallcomments=true#end-of-comments In 2008 a prominent preacher on Geo, the country’s largest channel, suggested that right-minded Muslims should kill Ahmadis. Within 48 hours two Ahmadis had been lynched. The television presenter has prospered. Last year a banner appeared outside the high court in Lahore, declaring “Jews, Christians and Ahmadis are enemies of Islam”. Few complained.

  • Hello People! Just wanted to tell you that I got tickets to the A Perfect Circle concert on May 22nd. In this place you can find tickets for other dates too. It’s amazing their performance on stage, this is my third time and I’m still so excited about listening them live! On this page you can see the section where you’re buying the ticket, so it’s very recommended!