Featured Original Articles

Express Tribune publishes false propaganda about #TahirulQadri’s real name, asylum and return flight to Canada

In the last few days Pakistan’s urban elites, many of whom remain aligned (due to sectarian, economic, political reasons) with the Saudi-sponsored Deobandi-Wahhabi hegemony in Pakistani establishment, have been a part of a sustained propaganda campaign against Dr. Tahir ul Qadri, the moderate Sunni Barelvi (Sufi) cleric who has challenged the pro-Taliban Deobandi-Wahhabi hegemony (the status quo) in Pakistan.

For details about why the guardians of the status quo, the urban elites and plutocrats of Pakistan, are upset with Dr. Qadri, refer to Ayaz Amir’s column: https://lubpak.net/archives/239295

According to media reports, Nawaz Sharif (the Saudi-sponsored pro-Taliban, pro-SipahSahaba, pro-Deobandi-Wahhabi politician, head of PML-N) has dedicated millions of rupees to spread false propaganda against Dr. Qadri. Such propaganda is not only being published by right wing newspapers and magazines (e.g., Nawaiwaqt, Jang, Zarbe Momin, Sipah Sahaba, Deobandi-Wahhabi websites etc) but also in English-language liberal-seeming media.

One English-language newspaper which is widely known to be under PML-N’s influence is the Express Tribune. Express Tribune’s owners remain aligned with Sharif brothers (Punjab government) of PML-N due to economic and political reasons.

Express Tribune is the same newspaper that published and then removed a news report about Nawaz Sharif’s PMLN’s alliance with Takfiri Deobandi terrorists of ASWJ-LeJ. https://lubpak.net/archives/229257

In the last two days, Express Tribune published two news reports comprising blatant lies about Dr. Qadri’s real name, asylum application to Canada, return flight and the date and grounds on which he was granted the nationality. At the same time, ET published a blatantly pro-army propaganda piece, an anti-politicians, anti-democracy column by the daughter of a serving military general without much concern and of course without making transparent her military family background and agenda. http://tribune.com.pk/story/495348/the-military-the-ppp-and-pakistan/

Such attitude by the ET speaks of its selective morality, double standards and unprofessional approach to journalism.

Here are two news items (false propaganda) published by ET about Dr. Tahir ul Qadri:

Canadian authorities summon Qadri for violating oath
By Web DeskPublished: January 18, 2013

Canadian authorities on Friday summoned Minhajul Quran International (MQI) chief Dr Tahirul Qadri on February 5, and sought explanation from him for violating the oath he took while seeking asylum, Express News reported.
The authorities said that Qadri violated the oath stating that he was not allowed to enter the country he had sought asylum from.
According to Express News correspondent Shakeel Anjum, Abdul Shakoor Qadri, otherwise known as Tahir Qadri, had sought asylum from Canada in 2008, fearing threats to his life after he met with the Danish cartoonist responsible for making blasphemous caricatures of Prophet Muhammad (pbuh).
Qadri, through his lawyer Mendel Green, had requested that he was receiving death threats from Tehreek-e-Taliban Pakistan, Lashkar-e-Jhangvi (LeJ) and Sipah-e-Sahaba.
On October 17, 2009, his asylum application was accepted, while he was issued the Canadian passport about six months back.
The MQI chief has also been receiving welfare funds from the Canadian government, citing health issues.
Qadri, who led a 5-day long march in Islamabad which concluded Thursday evening, is currently present in Pakistan.
He is scheduled to fly back to Canada on January 27 along with his family.
Correction: An earlier version of this article had incorrectly stated Royal Canadian Monitoring Police instead of Royal Canadian Mounted Police. The error is regretted. http://tribune.com.pk/story/495741/qadri-summoned-by-royal-canadian-monitoring-police-for-violating-oath/

Oath violation: Qadri to file appeal in Canadian federal court
By Web DeskPublished: January 19, 2013

Minhajul Quran International (MQI) chief Dr Tahirul Qadri has decided to file an appeal in the Canadian federal court after Canadian authorities summoned him for violating his asylum oath, reported Express News on Saturday.
Qadri has hired four lawyers who will appear in the federal court on his behalf and will maintain that Qadri received complete security in Pakistan, said sources.
Meanwhile, Qadri’s lawyer Mendel Green who had requested for Qadri’s asylum in Canada refused to contest the summon order issued by authorities.
Canadian authorities had summoned Qadri on February 5, and sought explanation from him for violating the oath he took while seeking asylum.
The authorities said that Qadri violated the oath stating that he was not allowed to enter the country he had sought asylum from.
Qadri is scheduled to fly back to Canada on January 27 along with his family. http://tribune.com.pk/story/496174/oath-violation-qadri-to-file-appeal-in-canadian-federal-court/

Here is Dr. Tahir ul Qadri’s response to rumours and lies spread via Express Tribune and subsequently picked up and further propagated by other right-wing (Lashkar-e-HamidMir) and pseudo-liberal elites (Lashkar-e-NajamSethi) in the media and believed by naive educated masses. As commented by a someone on facebook: “When some one lies left and right it’s hard to differentiate between right and wrong. Not every one has tendency to look matters in depth. Most people read headlines and believe it.”

The ET reports and subsequent propaganda has been rejected as false and malicious by Dr. Tahir ul Qadri and his education trust Minhaj ul Quran International MQI.

In a press conference on 19 January 2013, Dr. Qadri revealed that PML-N chief Nawaz Sharif and his brother Shahbaz Sharif, who had once “carried him on their shoulders” to show their love and respect for him, had now started the “worst propaganda” against him. Qadri, who heads the Tehrik Minhaj-ul-Quran, said the incident had occurred some years ago when the Sharif brothers were living in self-exile in Saudi Arabia. “Both brothers once carried me on their shoulders up to the Ghar-e-Hira (Holy Mountain) in Mecca just to express their love and devotion to my ideology. Now they have started the worst propaganda against me,” said Qadri, who led a four-day sit-in by tends of thousands of his supporters outside the Parliament here recently. The protest ended after Qadri and the government signed an agreement in which Qadri was acknowledged as a stakeholder in the setting up of a neutral interim government.

Qadri alleged in the news conference that the Sharif brothers had allocated Rs three billion from the PML-N government fund in Punjab to launch a “character assassination” campaign against him in the media. “Both brothers are notorious for this,” he added. Referring to his Canadian nationality and media reports about a summons issued to him by Canadian authorities for violating an oath made at the time of seeking asylum, Qadri said: “I got Canadian nationality after I resigned from (Pakistan’s) National Assembly in 2005.

“My name, as mentioned in my Pakistani and Canadian passports, is Tahir-ul-Qadri and not Abdul Shakoor Qadri. I had not sought refugee status in Canada on the pretext of receiving threats from the Lashkar-e-Jhangvi or Sipah-e-Sahaba Pakistan. I got the Canadian passport for being a religious leader in accordance with rules and regulations,” he stated. (Source: The Hindu; Economic Times)

Qadri also stated that Sipah-e-Sahaba and Taliban were created by Nawaz Sharif, Shahbaz Sharif and their financial sponsors (i.e., Saudi Arabia).

(Source: Jang)

About the author

Abdul Nishapuri

10 Comments

Click here to post a comment
  • TMQ officials have denied that he has been summoned to Canada for violating asylum rules. TMQ spokesman Tanveer Khan said here that it was true that Dr Qadri and his family had confirmed seats for January 28, since at the time of booking seats in Canada they were formally bound by international airlines laws to purchase return tickets. TMQ spokesman categorically denied Dr Qadri leaving the country on 27 or 28 January as maliciously reported in Express Tribune. http://www.khaleejtimes.com/kt-article-display-1.asp?xfile=data/international/2013/January/international_January760.xml&section=international

    Those who say Sunni Barelvi and Shia are not a bigger numerical force in Pakistan than Deobandi-Wahhabi should read this: http://criticalppp.com/archives/239423 Has any single Deobandi-Wahhabi leader attracted more crowds than #TahirulQadri in Pakistan’s entire history?

  • ڈاکٹر طاہر القادری کے متعلق جھوٹ پر مبنی خبر

    http://www.facebook.com/photo.php?fbid=10151384363299090&set=a.307595874089.145582.174993319089&type=1&ref=nf

    کینیڈین پولیس کی طرف سے ڈاکٹر طاہر القادری کو بلائے جانے کا بیان حاسدین کی افواہ اور سراسر بے بنیاد ہے۔قاضی فیض الاسلام

    http://www.facebook.com/photo.php?fbid=10151384801859090&set=a.307595874089.145582.174993319089&type=1&ref=nf

  • دھرنا: کیا کھویا, کیا پایا ؟

    محمد عامر خاکوانی کا تجزیہ

    جمعہ کی شام اسلام آبادمیں جاری دھرنے کے خوشگوار اختتام نے جہاں ملک بھر کے عوام کی بے چینی اور اضطراب کو دور کر دیا ، وہاںاس غیرمعمولی اہم واقعے نے ہمارے سیاسی اور جمہوری نظام کو بھی کئی نئے سبق دیے ہیں۔ ہماری سیاسی جماعتیں لانگ مارچ اور دھرنے کے ہفتہ بھر کے تجربے سے بہت کچھ سیکھ سکتی ہیں۔پاکستان کے عوام، سیاسی اشرافیہ اور مقتدر قوتوں نے یہ بھی ثابت کر دیا ہے کہ ان میں کم عمر ہونے کے باوجود پختگی اور شعور موجود ہے، مشرق وسطیٰ میں عرب سپرنگ یا عرب بہار کے برعکس یہاں پرزیادہ سمجھداری اور ہوشمندی کے ساتھ معاملات سلجھائے گئے۔ حالات بظاہر بندگلی میں چلے جانے کی نشاندہی دے رہے تھے ، مگر اچانک ہی فریقین نے ہوشمندی کا مظاہرہ کیا اورخوبصورتی سے اس پورے قضیے کو نمٹا دیا۔ اس ایک ہفتے کے دوران مختلف سیاسی قوتوں، انٹیلی جنشیا، میڈیا اورمقتدر قوتوں نے کیا کیا کردار ادا کیا،اس کے نتیجے میں انہیں کیا ملا…، اس پر ایک نظر ڈالتے ہیں: علامہ طاہرالقادری کا کردار آغاز تحریک منہاج القرآن کے سربراہ علامہ طاہرالقادری سے کرتے ہیں۔ علامہ صاحب ایک معروف دینی سکالر اور خطیب ہونے کی شہرت رکھتے ہیں۔وہ اپنے بعض بیانات اور ماضی میں چند ایشوز پرموقف بدلتے رہنے کے باعث متنازع رہے ہیں۔ 80ء کی دہائی میں ان کی بشارتوں کے حوالے سے بیان کئے گئے بعض خواب اوراپنے اوپر قاتلانہ حملے کے دعوے کے حوالے سے لاہور ہائیکورٹ کے ٹریبونل کی رپورٹ ہمیشہ ان کے خلاف استعمال کی جاتی ہے۔پولیٹیکل سائنس کی اصطلاح میں وہ اچھے خاصے بوجھ(Baggage) کے ساتھ سیاست کی وادی خارزار میںسفر کر رہے تھے۔ چند برس قبل وہ جنرل پرویز مشرف کے دور میں اسمبلی کی رکنیت سے استعفا دے کر کینیڈا چلے گئے تھے، اس وقت کہا گیا کہ وہ اپنا زیادہ وقت علمی وتدریسی مشاغل کو دینا چاہتے ہیں۔ تین چار سال پہلے انہیں وہاں کی نیشنلٹی بھی مل گئی۔اس دوران علامہ صاحب سیاست سے قدرے دور رہے ،مگر ان کے پاکستان میں رابطے مسلسل قائم رہے، منہاج القرآن کا بڑا تعلیمی نیٹ ورک پچھلے چند برسوں میں بہت زیادہ بڑھا، یہ سب علامہ صاحب کی نگرانی میں ہوا۔ اس دوران ان کی تحریر کردہ کئی کتب بھی شائع ہوئیں، جن میں ترجمہ قرآن ’’عرفان القرآن‘‘، احادیث کا مجموعہ اور خودکش حملوں کے خلاف کئی سو صفحوں پر محیط ایک مبسوط فتویٰ قابل ذکر ہے۔ پاکستانی میڈیا لانگ مارچ کے دنوں میںقادری صاحب سے بار بار یہ کہتا رہا کہ آپ اچانک کیسے آ گئے؟ دراصل یہ ہمارے تجزیہ کاروں اور نیوز اینکرز کی روایتی لاعلمی اوربے خبری تھی۔ سیاست کو باریک بینی سے مانیٹر کرنے والے جانتے تھے کہ طاہرالقادری صاحب بتدریج سیاسی اعتبار سے فعال ہو رہے ہیں۔ سال ڈیڑھ پہلے سے لاہور کے بعض موٹر رکشوں کے پیچھے قادری صاحب کا یہ نعرہ نمودار ہوا،چہرے نہیں، نظام بدلو۔ نظام بدلو کے نام سے ایک ویب سائیٹ بھی بنا دی گئی تھی۔اس کے ساتھ ساتھ سوشل میڈیا پر قادری صاحب کے حامی اچانک ہی بہت متحرک ہوگئے تھے۔ نظام بدلنے اور قومی سیاست میں جوہری تبدیلیاں لانے کے حوالے سے قادری صاحب کی تقاریر کے ویڈیو کلپس اور تحریریں فیس بک پیجز پر لگائی جانے لگیں۔ رفتہ رفتہ یہ عمل بڑا تیز ہوگیا ۔ اس وقت بھی سوشل میڈیا پر دو تین سب سے متحرک گروپوں میں سے ایک تحریک منہاج القرآن ہے۔ تئیس دسمبر کے جلسے سے چار پانچ ماہ پہلے قادری صاحب نے لاہور کے تھنک ٹینک کونسل آف نیشنل افئیرز کے صحافیوں اور دانشوروں کو منہاج مرکز میں دعوت دی اور ویڈیو کانفرنس کے ذریعے انہیں بریفنگ دی، سوال جواب کا سیشن بھی ہوا۔ اس میں قادری صاحب نے بتایا کہ وہ پاکستان واپس آ رہے ہیں اور ایک بڑا جلسہ کریں گے۔ تاہم اخبار نویسوں نے قادری صاحب کو زیادہ سنجیدگی سے نہیں لیا۔پھر تئیس دسمبر کے جلسے کے لئے کمپین شروع ہوگئی، دسمبر کے اوائل میں میڈیا کو احساس ہوا کہ قادری صاحب کے حامی جس محنت سے مہم چلا رہے ہیں، وہ بڑا جلسہ کرنے میں کامیاب ہو جائیں گے۔ پھر ایسا ہی ہوا۔ قادری صاحب نے پہلے اپنے جلسے ، لانگ مارچ اور پھر چار پانچ دن کے دھرنے کے بعد اپنا امیج تبدیل کر لیا۔ ایک غیر اہم، مبالغہ آمیز تقاریر کرنے والے خطیب کے بجائے اب انہیں ایک اہم ، عوامی مقبولیت رکھنے والا طاقتور سیاستدان تصور کیا جائے گا۔ آئندہ میڈیا یا کوئی سیاسی جماعت انہیں Easy نہیں لے گی۔ ان کے کسی دعوے یا اعلان کو نظرانداز کرنا اب ممکن نہیں۔ بڑی مہارت اور دانشمندی سے انہوں نے اپنے پتے کھیلے اور اسلام آباد کے قلب میں پہنچنے میں کامیاب ہوگئے۔انہوں نے اپنے سیاسی حریفوں کو ایک طرح سے آئوٹ کلاس کر دیا۔ان کا اعتماد بھی دیدنی تھا، چودھری برادران کے پیچھے ہٹنے اور عین وقت پر ایم کیو ایم کے دغا دے جانے کے باوجود وہ اپنے پروگرام سے پیچھے نہیں ہٹے اور کامیابی حاصل کر لی۔ وہ ایک ایسے سیاستدان کے طور پر ابھرے ہیں، جن کی اب ہمارے سیاسی منظرنامے میں ایک خاص جگہ اور مستقبل ہے۔انہوں نے یہ بھی ثابت کیا ہے کہ وہ لاکھوں افراد کے لئے ایک روحانی رہنما کی حیثیت بھی رکھتے ہیں، ایسا لیڈر جس کے کہنے پر لوگ اپنے معصوم شیر خوار بچے ساتھ لے کر میدان میں کود سکتے ہیں۔ایک زمانے میں پیر پگارا کے حروں کو یہ حیثیت حاصل تھی۔ تحریک منہاج القرآن کا تاثر ایک خالصتاً علمی اور دعوتی تحریک کا تھا، اب اس نے یہ بھی ثابت کر دیا کہ ان کے پاس انتہائی منظم اور مشکل ترین حالات میں ڈسپلن قائم رکھنے والے کارکن موجود ہیں۔ ایسے کارکن جن پر کسی قسم کے پروپیگنڈہ کا کوئی اثر نہیںاور وہ رہنمائی کے لئے اپنے قائد کی جانب ہی دیکھتے ہیں۔ دھرنے کے سبق قادری صاحب کو بھی یہ سمجھنے کی ضرورت ہے کہ خطابت اپنی جگہ ،مگر مطالبے وہی مانے جاتے ہیں جو حقیقت پسندانہ ہوں اور جن کی وسیع پیمانے پر پزیرائی ہوسکے۔انہوں نے اسلام آباد پہنچنے کے بعد شروع میںغیر حقیقی مطالبے کئے، حکومت اور وزرا کو سابق اور پارلیمنٹ کی تحلیل اورالیکشن کمیشن کی فوری تشکیل نو کا کہا۔ یہ مطالبے مانے جانے والے نہیں تھے ، شائد وہ دبائو بڑھانے کے لئے ایسا کر رہے تھے ، مگر ان کا زیادہ مثبت اثر نہیں ہوا۔ بعد میںانہوں نے دانشمندی سے اپنے پرانے اور حقیقی نکات پر توجہ دی اور کم وبیش تمام مطالبے منوا لئے۔ اگلے روز اگرچہ میڈیا کے ایک حصے نے یہ تاثر دینے کی کوشش کی کہ قادری صاحب کے مطالبے نہ مانے گئے ، مگرحقیقت اس کے برعکس تھی۔ علامہ طاہرالقادری کا اصل مطالبہ آئین کے آرٹیکل باسٹھ ، تریسٹھ کے امیدواروں پر اطلاق، سکروٹنی کی مدت میں توسیع اور عوامی نمائندگی ایکٹ کی شق 77تا 82 میں تبدیلی لانا تھا۔ الیکشن کمیشن کے اختیارات میں اضافہ کامطالبہ بھی اس وجہ سے تھا۔ یہ تمام باتیں مانی گئی ہیں، نگران وزیراعظم کے لئے بھی انہیں ایک سٹیک ہولڈر کے طور پر مان لیا گیا ہے۔ اگر اس معاہدے پر عمل درآمد ہوا تو بڑی حد تک بدنام اور کرپٹ امیدواروں کا صفایا ہوجائے گا۔اس لحاظ سے بڑی کامیابی کہی جا سکتی ہے۔تحریک منہاج القرآن کو یقیناً یہ اندازہ ہو گیا ہو گا کہ دھرنے کے آخری روز بارش کے باعث ان کے لئے آپشنز محدود ہوگئی تھیں، اس سے پہلے بعض اپوزیشن جماعتوں نے میاں نواز شریف کی قیادت میں مشترکہ اعلامیہ جا ری کر کے قادری صاحب اور ان کے حامیوں کو سیاسی طور پر تنہا کر دیا تھا۔ یوں لگ رہا تھا کہ وہ بند گلی میں چلے گئے ہیں، اگر حکومت دانشمندی سے کام نہ لیتی ، مذاکرات نہ کرتی اور محفوظ راستہ نہ دیتی توصورتحال خاصی مشکل ہو گئی تھی۔ سیاست میں واپسی کے راستے کھلے رکھنے چاہیں، قادری صاحب نے ایسا نہیں کیا، وہ انتہا پر چلے گئے تھے۔ تیونس، مصر اور یمن وغیر ہ میں عرب سپرنگ کی کامیابی کی ایک وجہ ان ممالک کے دارالحکومت کی خاص پوزیشن تھی۔ مصر میں تحریر اسکوائر پر جمع ہونے والے لاکھوں افراد قاہرہ کے رہائشی تھے، اگرچہ دوسرے شہروں سے بھی لوگ آئے ،مگر بنیادی طور پر وہ مظاہرے ان شہروں کے اپنی آبادی نے کئے تھے۔ یہی تیونس اور یمن میں ہوا۔ لیبیا اور شام میں صورتحال مختلف تھی، وہاں دارالحکومت میں اپوزیشن کی گرفت مضبوط نہیں تھی، اس لئے ان مظاہروں کا اس طرح اثر نہ ہوسکا۔ کوئٹہ میں ہزارہ کمیونٹی کا دھرنا بھی وہاں کے مقامی آبادی کا اجتماع تھا، جن کے لئے گھروں سے ساز وسامان لانا بھی آسان تھا اور لوگ اپنی پوزیشنیں بھی بدل سکتے تھے۔ ایک دو راتوں کے بعد ضرورت پڑنے پر چند گھنٹوں کے لئے اپنے گھروں میں سستایا جا سکتا تھا۔ قادری صاحب کے لانگ مارچ میں ایسی کوئی سہولت موجود نہیں تھی۔ اس کا تمام تر دارومدار شرکا کے عزم وایثار پر تھا۔ اگر چہ قادری صاحب خوش قسمتی سے اس بار کامیاب ہوئے ،مگر شرکا کا اس قدر سخت امتحان لینا رسک ہوتا ہے، اگر ایسی بارش دو دن پہلے ہوجاتی ، تب کیا ہوتا؟اس وقت تک تو دھرنے کا ٹیمپو بھی نہیں بنا تھا۔ حکومتی اتحادکی سیاسی کامیابی پیپلز پارٹی کی حکومت پر بہت سے حوالوں سے سخت تنقید کی جاتی ہے، جو یکسر بے وزن بھی نہیں، ایک بات مگر اس نے یہ ثابت کر دی ہے کہ وہ ایک سیاسی جماعت ہے اور سیاسی انداز سے سوچتی ہے۔ ایک وقت میں وفاقی حکومت سخت مشکلات کا شکار تھی، پنجاب حکومت لانگ مارچ کو پنڈی پہنچا کر سکون سے تماشا دیکھ رہی تھی،تمام تر دبائو مرکز پر تھا۔ اس مشکل وقت میں پیپلز پارٹی نے اپنے اتحادیوں کو ساتھ ملایا اوراعلیٰ سطحی وفد کے ذریعے مذاکرات کئے ،یوں ڈیڈلاک بھی ختم کیا اوراس معاہدے پر عمل درآمد کرا کر وہ الیکشن کے عمل کا شفاف بنانے کا کریڈٹ بھی لے سکتی ہے۔ پیپلز پارٹی نے اپنے سخت گیر سوچ رکھنے والوں کو سائیڈ پر کیا اور اس کے ثمرات بھی انہیں مل گئے۔ اگر خدانخواستہ تصادم ہوجاتا تو اس کے خوفناک نتائج نکلتے۔ لال مسجد کے سانحے کے اثرات سے ہم ابھی تک نہیں نکل سکے، ملک کسی اور ہولناک واقعہ کا متحمل نہیں ہوسکتا۔پیپلز پارٹی کا اصل امتحان لانگ مارچ ڈیکلئریشن پر عمل کرانا ہے۔ انہیں یہ سمجھنا ہوگا کہ صرف منہاج القرآن ہی نہیں بلکہ ملک بھر میں انتخابی اصلاحات کی خواہش موجود ہے۔ یہ اچھا موقعہ ہے کہ ہمارے سیاستدان جمہوری نظام کی تطہیر کریں، اس سے جمہوریت دشمن قوتوں کو شدید حوصلہ شکنی ہوگی۔ میڈیا اور تجزیہ کار اب یہ مان لینا چاہیے کہ میڈیا اور ہمارے تجزیہ کاروں نے علامہ طاہرالقادری کو انڈر اسٹیمیٹ کیا۔ وہ علامہ صاحب کے شخصی اثر اور قوت کا اندازہ نہ لگا سکے۔ میڈیا کے بیشتر حصے کو یقین تھا کہ لانگ مارچ ہو ہی نہیں سکے گا۔دھرنے کے دوران بھی کوریج کرتے ہوئے انہیں شرکا ء کے موڈکا اندازہ نہیں ہوسکا۔ کئی اینکر خواتین چیختی رہیں کہ آپ لوگوں کو سردی کیوں نہیں لگ رہی، بچے بیمار ہوجائیں گے وغیرہ وغیرہ۔ انہیںسمجھنا چاہیے تھا کہ لوگ کسی جذبے اور کمٹمنٹ کے ساتھ ہی یہاں تک آئے ہیں اور یہ یوں واپس نہیں جائیں گے۔ ہمارے اہل دانش اور تجزیہ کاروں نے سب سے اہم غلطی یہ کی کہ انہوں نے طاہرالقادری کی شخصیت کو بے رحمی سے نشانہ بنایا ،مگر ان کے ایجنڈے کو نظر انداز کر گئے۔ انہیں یہ ادراک نہ ہوسکا کہ انتخابی اصلاحات کرنا اور تبدیلی لانے کے ایجنڈے کی عوام میں زبردست کشش موجود ہے۔ قادری صاحب نے اس خلا میں قدم رکھا ،جو ہماری دوسری سیاسی جماعتیں پر کرنے میں ناکام رہیں۔ جیسا کہ شرکا کے انٹرویوز سے ظاہر بھی ہوا کہ ان میں تمام لوگ منہاج القرآن کے نہیں تھے، بہت سے لوگوں نے بتایا کہ وہ عمران خان کے ووٹر ہیں، بعض دوسری جماعتوں کے حامی بھی تھے۔ ایجنڈے پر زیادہ بات ہونا چاہیے تھی، وہ نہ ہوسکی اور تمسخر،پیروڈی،طنز وتشنیع ہمارے میڈیا پر حاوی رہے۔ یہی وجہ ہے کہ جمعہ کو دھرنے کی کامیابی کے بعد بہت سے اینکروں اور تجزیہ کاروں کو سمجھ نہیں آ رہی تھی کہ کیا ردعمل دیں۔ جن باتوں کا وہ مذاق اڑاتے رہے، وہ تقریباً سب مان لی گئیں۔ جہاں تک اسمبلیوں کی تحلیل اور الیکشن کمیشن کی فوری تشکیل کی بات تھی، یہ دبائو بڑھانے کا حربہ تھا، حقیقی مطالبہ نہیں تھا۔میڈیا اور انٹیلی جنشیا کو آنے والے دنوں میں زیادہ محتاط اور باریک بین ہونا پڑے گا۔ الیکشن میں اصلاحات کے عمل پر بھی نظر رکھنے کی ضرورت پڑے گی۔ مسلم لیگ ن مسلم لیگ ن نے بظاہر بڑی عقل مندی اور ہوشیاری سے چالیں چلیں۔ انہوں نے لانگ مارچ کو روکنے کی کوئی کوشش نہیں کی کہ اس کا رخ اسلام آباد کی جانب تھا۔ جب انہوں نے محسوس کیا کہ دھرنے میں خاصے لو گ آگئے ہیں اور یہ اجتماع خطرناک ثابت ہوسکتا ہے تووہ متحرک ہوئے۔ میاں صاحب نے کمال مہارت سے کئی اہم جماعتوںسے رابطے کئے۔ بلوچستان سے اچکزئی صاحب اور حاصل بزنجو کے ساتھ ساتھ مولانا فضل الرحمن اورجماعت اسلامی کو ساتھ ملا لینا ان کی بڑی کامیابی تھی۔ انہوں نے اپنے مشترکہ اعلامیہ سے علامہ طاہرالقادری کو بالکل تنہا کر دیا۔ یہ جمہوریت کے لئے اچھا شگون تھا کہ ہماری سیاسی جماعتیں ہر قسم کی تبدیلی کے لئے انتخابات کی جانب ہی دیکھنے لگی ہیں۔ میاں صاحب نے دانستہ یا نا دانستہ ایک بڑی غلطی یہ کی کہ انہوں نے قادری صاحب کو محفوظ راستہ نہیں دیا۔اے پی سی کے شرکا میں سے کسی نے یہ نہیں سوچا کہ اسلام آباد میںکئی روز سے ہزاروں افراد کا دھرنا جاری ہے۔دھرنے کے شرکا اور ان کے لیڈر قادری صاحب اتنا آگے جا چکے ہیں کہ ان کے لئے کچھ حاصل کئے بغیر واپس لوٹنا شرمندگی کے مترادف ہے۔ انہیں محفوظ راستہ دینا (Face saving)دینا ضروری تھا۔ دوسری صورت میں شرکاء فرسٹریٹ ہو کر تصادم کی طرف جا سکتے تھے، ایسا ہو جاتا تو پھر کچھ بھی نہ بچ پاتا۔ جس طرح کا اعلیٰ سطحی وفد حکومت نے مذاکرات کے لئے بھیجا، ویسا کام پہلے نواز شریف صاحب بھی کر سکتے تھے۔ اگر ایسا کرتے تو وہ محاورے کے مطابق میلہ لوٹ لیتے۔ انہوں نے ایسا نہیں کیا، شائد وہ اپنی مخالف وفاقی حکومت کو ٹف ٹائم دینا چاہتے تھے، مگر اختتام میں اس کا تمام تر نقصان انہیں ہی ہوا۔ ٹی وی چینلز پر ن لیگ کے رہنمائوں کی تلخی دیکھ کر انہیں پہنچنے والے دھچکے کی شدت کا اندازہ کیا جا سکتا ہے۔ اسٹیبلشمنٹ ؟ ہمارے اہل دانش اور تجزیہ کاروں کو ہر ایشو میں اسٹیبلشمنٹ کا کردار دیکھنے کا رویہ بھی بدلنا ہوگا۔ یوں لگتا ہے کہ اسٹیبلشمنٹ کا آسیب ان کی دانش کے گرد لپٹ گیا ہے۔ اسٹیبلشمنٹ کے حوالے سے ویسے بھی دو تین باتیں سمجھنی چاہیں۔ دنیا بھر میں اسٹیبلشمنٹ ہمیشہ پر و’’ سٹیٹس کو‘‘ ہوتی ہے۔ نظام بدلنے یا تبدیلی لانے کا نعرہ کبھی انہیں راس نہیں ہوتا۔ ایسا نعرہ لگانے والوں کو ہمیشہ اسٹیبلشمنٹ کی مخالفت کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ قادری صاحب والے معاملے کو زیادہ غور سے دیکھنا چاہیے تھا۔ اگر اس میں اسٹیبلشمنٹ شامل ہوتی تو معروف اسٹیبلشمنٹ نواز جماعتیں اس سے دور نہ رہتیں اور وعدہ کر کے واپس نہ چلی جاتیں۔ جو مارچ یا دھرنا اسٹیبلشمنٹ کے کہنے پر کیا جاتا ہے ، اس کے تیور ہی الگ ہوتے ہیں، اس کے شرکا شروع ہی سے ڈنڈے لے کر چلتے ہیں اور تباہی ان کا مشن ہوتی ہے۔ ایسے جلوسوں میں لوگ خود اپنی خوشی سے اپنی بیویوں، بہنوں اور شیر خوار بچوں کو نہیں لاتے۔ پیسے خواہ جتنے ملیں، اولاد آدمی کو اپنی جان سے بھی زیادہ پیاری ہوتی ہے۔ اس دھرنے کے پرامن اختتام نے یہ ثابت کر دیا کہ اسٹیبلشمنٹ کی رٹ لگانے والے تجزیہ کاروں نے ٹھوکر کھائی، اصولاً تو انہیں اپنے قارئین اور ناظرین سے معذرت کرنی چاہیے، مگرافسوس کہ ہمارے ہاں ایسی اچھی روایتیں موجود نہیں۔ ویسے اس حوالے سے فورسز کا رویہ مثبت رہا۔ کورکمانڈرز کانفرنس کو بعض حلقوں نے معنی خیز نظروں سے دیکھا ،مگر آئی ایس پی آر نے بروقت وضاحت کر دی۔ ہماری مقتدرہ قوتوں کو یہ یاد رکھناچاہیے کہ سیاست صرف سیاستدانوں کے کھیلنے کا میدان ہے۔ عسکری قوتوںکو اپنے پروفیشنل فرائض ہی انجام دینے چاہیں۔ ایسا کرنا ہی ان کے وقاراور عزت میں اضافہ کرے گا۔ اس دھرنے کا پرامن انجام یہ ثابت کرتا ہے کہ ملک میں جمہوریت پنپ رہی ہے اورہمارا بظاہر کمزور جمہوری سسٹم اس قسم کے بڑے دھچکوں کو برداشت کرنے کی سکت اور قوت رکھتا ہے۔اس سے ہمارے سیاستدانوں اور جمہوری قوتوں نے خاصا کچھ سیکھا ہوگا۔ تحریک انصاف عمران خان اور ان کے بعض حامیوں کو ممکن ہے اب اندازہ ہو رہا ہو کہ انہوں نے ملنے والے ایک بڑے موقع سے فائدہ نہیں اٹھایا۔ تحریک انصاف میں لانگ مارچ کے حمایت میں ایک مضبوط لابی موجود تھی،ان کے کئی اہم سیاسی لیڈروں کا خیال تھا کہ ہمیں قادری صاحب کے ساتھ شامل ہونا چاہیے، ان کی جماعت کا سیاسی نیٹ ورک موجود نہیں ،ا س لئے سیاسی کامیابی کے تمام تر ثمرات تحریک انصاف کو پہنچیں گے۔ اس لابی کی بات نہیں مانی گئی، عمران خان اور ان کے بعض غیر سیاسی مگر پارٹی کے لئے تھنک ٹینک کا درجہ رکھنے والے لوگوں کی بات مانی گئی۔ تاہم عمران خان نے لانگ مارچ اور دھرنے پر تنقید بالکل نہیں کی، وہ اسے بڑی احیتاط سے دیکھتے رہے، جائزہ لیتے رہے ،مگر شامل نہیں ہوئے۔ ممکن ہے انہیں خطرہ ہو کہ یہ دھرنا کسی اور جانب جا سکتا ہے۔ انہوں نے اپنی تمام تر توجہ انتخابات کی جانب مبذول کی اور اس حوالے سے دبائو بڑھانے کی کوشش کی ،مگر تحریک انصاف کے بہت سے نوجوان کارکنوں کو اب یقیناً مایوسی ہو رہی ہوگی۔پی ٹی آئی نے اس معاملے میں اگرچہ کھویا بھی زیادہ نہیں۔ ان کے لئے انتخابات کے حوالے سے قادری صاحب کے ساتھ ہاتھ ملانے کی آپشن موجود ہے۔دیکھنا یہ ہے کہ تحریک انصاف آنے والے دنوں میں کیسے پتے چلتی ہے؟

    http://dunya.com.pk/index.php/special-feature/2013-01-19/1753#.UPusKSe6eSo

  • قادری انقلاب‘ انقلاب کی ریہرسل
    ظہیر اختر بیدری ہفتہ 19 جنوری 2013

    zaheerakhtar_beedri@yahoo.com

    23 دسمبر 2012 کو مینار پاکستان سے شروع ہونے والا ’’قادری انقلاب‘‘ 17 جنوری 2013 کو ڈی چوک اسلام آباد پرکھڑے ایک کنٹینر میں اختتام پذیر ہوگیا۔ اس ’’انقلاب‘‘ نے تقریباً 3 ہفتوں تک پاکستان میں ایک ایسی سنسنی، ایسا اضطراب برپا کردیا تھا جس کی پاکستان کی تاریخ میں مثال نہیں ملتی۔ 65 سال سے اس ملک کے اٹھارہ کروڑ عوام جس فراڈ جمہوریت اور فوجی آمریت کے پنجوں میں جکڑے ہوئے ہیں وہ بڑی امید بھری نظروں سے اس قادری انقلاب کو دیکھ رہے تھے کہ شاید یہ انقلاب اس نظام استحصال سے انھیں نجات دلا دے، جس نے ان کی زندگی کو جہنم بناکر رکھ دیا ہے لیکن ’’اے بسا آرزو کہ خاک شد‘‘ ایسا ہی ایک بھٹو انقلاب بیسویں صدی کی ساتویں دہائی میں پاکستان کے عوام کو زیروزبر کرگیا تھا جو روٹی، کپڑا اور مکان کی دھن پر رقص کرتا ہوا، مزدور، کسان، راج کی تھاپ کے ساتھ عوام کو گلیوں، بازاروں میں لاکھڑا کیا تھا،انقلاب کی آرزو میں سرشار کروڑوں عوام بھٹو کے اس انقلاب میں بہہ رہے تھے اور 23 دسمبر سے شروع ہونے والے اس قادری انقلاب کو بھی اس ملک کے اٹھارہ کروڑ عوام امید اور حسرت کے ساتھ دیکھ رہے تھے جو چینج اور نظام کی تبدیلی کے نعروں کے ساتھ لاہور سے نکل کر اسلام آباد کے ڈی چوک میں 5 روز تک فروکش رہنے کے بعد پرامن طریقے سے اختتام کو پہنچ گیا۔
    بھٹو ایک بڑے جاگیردار خاندان کے چشم و چراغ تھے اور قادری کا تعلق مڈل کلاس سے ہے، دونوں کے انقلاب میں ایک یہ بنیادی فرق تھا، دونوں انقلاب اسلام آباد میں ہی اپنے انجام کو پہنچے، دونوں انقلابوں میں یہی مماثلت تھی قادری انقلاب کی ایک منفرد شناخت یہ تھی کہ 14 جنوری کو لاہور سے شروع ہونے والے اس لانگ مارچی انقلاب میں غریب عوام کے ساتھ ساتھ خواتین کی ایک بڑی تعداد شامل تھی اور 6 مہینے سے 10-8 سال کے بچے بھی ان کی گودوں میں اور انگلیاں تھامے چل رہے تھے جن کی توتلی زبانوں سے Change کی آوازیں نکل رہی تھیں۔ اسلام آباد کی نقطہ انجماد سے بڑھی ہوئی سردی میں ایک لاکھ سے زیادہ مرد، عورتیں، جوان، بوڑھے اور معصوم بچے جس عزم اور حوصلے سے بیٹھے تھے اگر اس عزم اور حوصلے کو ایک منصوبے ایک جامع پالیسی اور ایک واضح ہدف کے ساتھ چلایا جاتا تو شاید اس کا وہ انجام نہ ہوتا جو ہوا۔ لیکن اس انقلاب کا ایک مثبت فائدہ یہ ہوا کہ اس ملک کے اٹھارہ کروڑ مفلس و مظلوم عوام میں یہ احساس اجاگر ہوا کہ اس فراڈ جمہوریت سے انھیں کچھ نہیں ملے گا، اس کے پیچھے بھاگنا بے سود اور وقت کے زیاں کے علاوہ کچھ نہیں۔
    اس انقلاب کا ایک فائدہ یہ ہوا کہ اس ملک کے اٹھارہ کروڑ عوام کو یہ احساس ہوا کہ انھیں اپنی اذیت ناک زندگی کو تبدیل کرنے کے لیے ایک منصوبہ بند منظم اور متعین اہداف کے ساتھ ایک نظریاتی قیادت کی رہنمائی میں گھروں سے نکلنا ہوگا، کوئی ڈانواڈول نظریاتی قیادت انھیں انقلاب کی حقیقی منزل تک نہیں پہنچا سکتی۔ اس انقلاب کا ایک فائدہ یہ ہوا کہ وہ سیاسی وڈیرے اور مذہبی اوتار جو ایک دوسرے کی شکل دیکھنے کے روادار نہ تھے جو ایک دوسرے کے گناہوں کو بازار میں لارہے تھے جو اپنی گندی سیاست کے پوتڑے جمہوریت کی میلی چادر میں چھپائے پھر رہے تھے۔ وہ سب رائے ونڈ میں ایک دوسرے سے کندھے سے کندھا ملائے بیٹھے عوام کو بتا رہے تھے کہ اس قادری طوفان سے بچنے کا ایک ہی ذریعہ ہے کہ زرداری ایک منٹ ضایع کیے بغیر انتخابی شیڈول کا اعلان کردیں، وہ زرداری کو انتباہ دے رہے تھے کہ جلدی کرو، کہیں وقت ہاتھ سے نہ نکل جائے۔
    اس انقلاب کا ایک فائدہ یہ ہوا کہ ان تعلیم یافتہ مڈل کلاسوں کا کردار عوام کے سامنے آگیا جو سیاسی وڈیروں کی ہم زبان بن کر انتخابات اور فراڈ جمہوریت ہی کو پاکستانی عوام کے مسائل کا واحد حل بتا رہی تھیں اور قادری کو تضحیک اور طنز کا نشانہ اس لیے بنا رہی تھیں کہ وہ خاندانی حکمرانی کے خلاف آواز اٹھا رہا تھا اور انھیں چور، ڈاکو اور لٹیرے کہہ رہا تھا۔اس انقلاب کا ایک فائدہ یہ ہوا کہ بچے بچے کی زبان پر نظام کی تبدیلی کا نعرہ انگڑائی لینے لگا۔ اس انقلاب کا ایک فائدہ یہ ہوا کہ خواندہ اور ناخواندہ خواتین گھروں سے باہر نکل آئیں اور نظام بدلو کے نعرے لگانے لگیں۔ اس انقلاب کا ایک فائدہ یہ ہوا کہ عوام کو یہ پتہ چلا کہ ان کی انقلابی کمزوریاں کیا تھیں اور ان کمزوریوں کو دور کرنا کتنا ضروری ہے

    http://www.express.pk/story/80002/

  • I bet if you send this post to Omar Quraishi, he will either ignore you or say let me check, will never get back to you.

  • These fine people on Twitter should show grace and apologize to #TuQ. Must also seek explanation from @etribune:

    Dr Shahid Masood ‏@Shahidmasooddr
    As Dr TUQ sb is leaving on 27th for Canada. “WE” have lot of time to meet him and ASK few Questions in Lahore!!

    Ahmad Noorani ‏@Ahmad_Noorani
    TuQ going to Canada on Jan 27 (Aaj TV). He will surrender his nationality, according to TMQ, and will come back soon to join politics again.

    Ayesha Siddiqa ‏@iamthedrifter
    Ab aya maza! Royal Canadian Monitoring Police summons Qadri for violating oath http://tribune.com.pk/story/495741/qadri-summoned-by-royal-canadian-monitoring-police-for-violating-oath/ … via @etribune

    Raza Rumi ‏@Razarumi
    🙂 RT @beenasarwar:#TUQ sought asylum in Canada citing threats for meeting Danish cartoonist.Enlightened moderation? http://bit.ly/UBNcg7

    Khalid Khan ‏@khalidkhan787
    Canada court has summoned Dr #TUQ on feb 5 for violating oath of asylum, says Express tv

    Mustafa Qadri ‏@Mustafa_Qadri
    Canadian authorities summon Qadri for violating condition of asylum http://truthdive.com/2013/01/18/Canada-summons-Million-March-man-Qadri-for-violating-oath-of-never-returning-to-Pak.html

    Marvi Sirmed ‏@marvisirmed
    Ouch! RT @iamthedrifter: Ab aya maza! Royal Canadian Monitoring Police summons Qadri for violating oath http://tribune.com.pk/story/495741/qadri-summoned-by-royal-canadian-monitoring-police-for-violating-oath/ … via @etribune

    Mohammad Taqi ‏@mazdaki
    MT“@etribune: Analysis: Why Qadri must renounce Canadian citizenship http://tribune.com.pk/story/496108/analysis-why-qadri-must-renounce-canadian-citizenship/ … ” Law lecturer conflates refugee & citizen

    Raza Rumi ‏@Razarumi
    OMG RT @AzazSyed:Ehsan Ulah Ehsan called me n said that Qadri has already sold Pakistan in Canada.He refused 2 tell when they plan to attack

    Imran Jattala ‏@ijattala
    RT @AhmadiyyaTimes: [NEWSDESK] Canada: Firebrand cleric Ul-Qadri to challenge his summoning over violating asylum oath http://dlvr.it/2q3BBp

    Aamir Mughal ‏@mughalbha
    Qadri summoned by Canada for asylum oath breach Video http://timesofindia.indiatimes.com/videos/news/Qadri-summoned-by-Canada-for-asylum-oath-breach/videoshow/18078654.cms … #DrTahirulQadri #TahrirSquare #Canada #Quack v @Adnanhussainxp

    beena sarwar ‏@beenasarwar
    Apparently tickets were booked before the ‘deal’ was struck… RT @omar_quraishi: Tahirul Qadri to return to Canada on Jan 27

    Dilawar Asghar ‏@dasghar
    @Laalshah remmbr I ws saying ths ystrday @etribune jst hs it #Qadri summnd by #RCMP of #Canada for violation of his oath. 🙂

    ——–

    Zeeshan Akram Mirza ‏@ZshanMirza
    Etribune shud issue apology as @TahirulQadri DID NOT come as a refugee to Canada, but as a regular immigrant. http://tribune.com.pk/story/495741/qadri-summoned-by-royal-canadian-monitoring-police-for-violating-oath/

    Tarek Fatah ‏@TarekFatah
    Story abt @TahirulQadri in @etribune is inaccurate. He DID NOT come as a refugee to Canada, but as a regular immigrant. http://tribune.com.pk/story/495741/qadri-summoned-by-royal-canadian-monitoring-police-for-violating-oath/

  • A follow-up crap published in ET, once again funded by Nawaz Sharif, motivated by Sunni-Barelvi-Phobia:

    Analysis: Why Qadri must renounce Canadian citizenship
    By Niaz A ShahPublished: January 19, 2013

    Given Allama Sahib’s background, it can be safely assumed that his asylum claim was based either on political opinion or religion or both. PHOTO: AFP
    Dr Tahirul Qadri sought asylum in 2008 in Canada. The gist of the asylum claim, according to this newspaper, was based on alleged threats to his life from groups such as the Tehreek-e-Taliban Pakistan, Lashkar-e-Jhangvi (LeJ) and Sipah-e-Sahaba. The presence of Allama Sahib in Pakistan raises two issues: legal and moral.
    Legal: Under the UN Refugee Convention Relating to the Status of Refugees 1951 and the Immigration and Refugee Protection Act 2001 of Canada, individuals may claim asylum if they fear persecution based on race, religion, nationality, political opinion or belonging to a particular social group. Given Allama Sahib’s background, it can be safely assumed that his asylum claim was based either on political opinion or religion or both.
    For a successful asylum claim, the fear of persecution must be ‘well-founded’. Allama Sahib’s claim was found well-founded and asylum was granted. International protection (seeking asylum in another country) is temporary in nature and ceases when the circumstances giving rise to asylum cease to exist. The presence of Allama Sahib in Pakistan and his ability to compel the government to sign an agreement, mainly on his terms, demonstrate two things.

    First, that he can continue his political career without fear of persecution and second, the government can provide protection to him as and when needed. In such a situation, international protection (in the form of refugee status leading to Canadian citizenship) is no longer justified. The 951 Refugee Convention states: ‘This Convention shall cease to apply to any person … [who] has voluntarily re-availed himself of the protection of the country of his nationality [i.e. Pakistan]’. The Canadian authorities can revoke his refugee status as he has voluntarily come back to Pakistan. Or Allama Sahib can renounce his status himself.
    Moral: This brings us to the moral implications of the case. As Allama Sahib is no doubt a pious person and is espousing pious and upright political leadership, the option of giving up international protection (Canadian citizenship) would be most appropriate. If he continues to avail Canadian protection simultaneously with his heavy political engagement in Pakistan, and the fact that all those organisations, although proscribed, exist and are very active, ie, the threat is out there, it will raise doubts about the genuineness of his asylum claim in Canada. And also, both positions – refugee status in Canada and his choice to become politically active in Pakistan, a country which he left because of persecution – do not fit within the confines of refugee law.
    The author is a senior lecturer in law at the University of Hull, UK.
    Published in The Express Tribune, January 19th, 2013.

    http://tribune.com.pk/story/496108/analysis-why-qadri-must-renounce-canadian-citizenship/

  • Dr Qadri’s supporters fail to understand that whatever success he achieved was due to the political space afforded by democracy. He succeeded in bringing multitudes on the streets with the indirect help of the government that provided the protestors with security. Likewise, the vibrant and assertive media of this democratic era gave his long march unprecedented coverage. Had it been a martial law regime, could he have led people on a march? No, absolutely not! He would have been shut inside his house or put behind bars, and the use of TV and newspapers would have been banned in his house or cell.

  • Qadri Sahib does not have guns in hands and terror Lashkars at his disposal that is why ‘leberals’ and Military-production politicians, pseudo-intellectuals and network scientists are after him. Right?