Featured Original Articles

Salute to Inspector Hukam Khan of Peshawar Police

His class, ethnicity and mission mean that his heroic death will remain unsung in Pakistan. We will see no vigils and demonstrations in Karachi, Lahore and Islamabad.

Pakistan’s Punjabi-Urdu dominated urban elites often equate all Pashtuns with the Taliban. Nothing could be further from the truth. In the last four decades, thousands of honourable Pashtuns including tribal leaders, political leaders and activists of ANP, PPP, moderate clerics, have been killed for opposing the Taliban and the so called Mujahideen. Honourable mentions include Safwhat Ghayur, Mian Rashid Hussain (the only son of Mian Iftikhar Hussain), moderate Deobandi and Salafist scholars (eg Dr. Farooq and Maulana Hasan Jan), Shia Toori tribes of Parachinar etc, who laid their lives only because they opposed suicide bombing and violence by Takfiri Salafist-Deobandi militants (i.e., Taliban, Lashkar-e-Jhangvi/ASWJ etc).

In the same vein, we cannot forget the services of Hukam Khan of Peshawar Police bomb disposal squad who was killed in the line of duty (Friday, 28 Sep 2012) while trying to save innocent civilians from Takfiri Salafist-Deobandis’ death machines.

One of the most talented experts of the bomb disposal unit (BDU), Hukam Khan, who defused around 200 bombs during the current year only, was killed while neutralising explosives planted near the Frontier Road on the boundary between Peshawar and Khyber Agency on Friday. Hukam Khan was manually defusing explosives and had successfully neutralised one of the improvised explosives devices (IEDs) when the militants triggered another one planted nearby through a remote-controlled device. Despite losing their key man, the BDU experts continued sweeping the area and defused four other IEDs planted by the militants in nearby areas. An encounter took place between the fleeing militants and the policemen. The police claimed to have gunned down a militant and injured another. (Source)

Mr Khan saved thousands of lives by defusing dozens of bombs in his career. Mr Khan was rushed to the city’s Matni neighbourhood after hearing that insurgents had planted two bombs near a road used by security convoys travelling to the Khyber tribal region. In other words, yet another police officer was killed in a bid to save Pakistan Army from attacks by monsters created by Pakistan Army. As usual, Police are the convenient canon-fodder in Deep State’s scheme of things.

Mr Hukam, 49, belonged to Pasani village of Mattani area on the outskirts of Peshawar. He joined police as a constable in 1978. His three sons, Akram Khan, Bilal Khan and Adam Khan, also serve in police. Khan had defused more than 700 bomb during his career.

Peshawar is near Pakistan’s tribal belt – a stronghold of Taliban, al-Qaeda and Sipah-e-Sahaba (Takfiri Deobandi) militants. Violence from the tribal regions has in recent years spilled over into the city. Thousands have died in bomb and suicide attacks in Pakistan in recent years.

Lauded for his valiant nature, Khan’s colleague and junior Zarshaid Khan said that “Khan was my senior and an expert in his field. Together, we found and defused complex booby traps laid out by terrorists to kill innocent civilians.” On Friday morning, police was informed that militants had planted a bomb in the area under the cover of darkness. Khan was called to locate and defuse the explosive device. Upon reaching the site of the reported sighting, Khan began diligently scouting round for signs of a planted bomb. An eyewitness, police constable Ijaz Khan told The Express Tribune that “when Khan saw a pile of bricks, he said he had found the bomb and asked all of us to step away for our safety. But before he could defuse the trigger, a huge explosion occurred” (Source)

Government of Pakistan has announced Sitara-e- Shujaat for Hukam Khan in recognition of his services and great sacrifice. Government has also announced that a son of Hukam Khan will be recruited in a government agency (FIA).

It is high time that Pakistan Army generals reconsider their flawed policy of appeasing and protecting the Jihadist proxy militants, particularly Takfiri Deobandi-Salafists, who have brought nothing but death and destruction to Pakistan and Afghanistan.

About the author

Abdul Nishapuri

5 Comments

Click here to post a comment
  • (from ET)

    My salute to this hero who would defuse bombs to save other people’s life and curse be on people who plant these bombs and also those who mentor and apologize for bombers.

    Say along me, Amen.

  • This happened two months after the BDU was provided with four robots to detect and defuse explosives without endangering human lives.Assistant Inspector General (AIG) BDU Shafqat Malik, however, contended that the robots could not be moved to the remote areas.

    Why not?

  • پاکستان کے صوبہ خیبر پختون خوا میں گذشتہ چار سال سال کے دوران بم ڈسپوزل یونٹ کے نو اہلکار بم ناکارہ بنانے کی کوشش میں ہلاک ہو چکے ہیں۔
    ان میں انسپکٹر حکم خان بھی شامل ہیں جو جمعہ کو پشاور میں ہلاک ہوئے۔
    اسی بارے میں
    پشاور میں بم دھماکہ، آٹھ افراد ہلاک
    پشاور:متنی بازار کے قریب دھماکہ، متعدد ہلاک
    پشاور: دھماکے میں نو افراد زخمی
    متعلقہ عنوانات
    پاکستان, خیبر پختونخوا, بم دھماکے
    بم ڈسپوزل یونٹ ( بی ڈی ایس) کے سربراہ اے آئی جی شفقت ملک نے بی بی سی کو بتایا کہ جمعہ کی صبح پولیس کو اطلاع ملی تھی کہ قبائلی علاقے کے سرحد پر واقع پشاور کے علاقے باڑہ شیخان میں مسلح افراد کی طرف سے دھماکہ خیز مواد نصب کیا گیا ہے۔
    انہوں نے کہا کہ بم ڈسپوزل یونٹ کے انسپکٹر حکم خان نفری کے ہمراہ جائے وقوعہ پہنچے اور ابھی دھماکہ خیز مواد کی تلاش جاری تھی کہ اس دوران ایک زوردار دھماکہ ہوا جس سے وہ موقع ہی پر ہلاک ہوگئے۔ انہوں نے کہا کہ غالب امکان یہی ہے کہ دھماکہ ریموٹ کنٹرول سے کیا گیا ہے۔
    “حکم خان نے بم دھماکے سے بچنے کےلیے کوئی حفاظتی لباس یا بم سوٹ نہیں پہنا ہوا تھا۔ اگر وہ بم سوٹ پہنے بھی ہوئے ہوتے تب بھی وہ نہ بچتے کیونکہ اس دھماکے میں پانچ کلو بارودی مواد استعمال کیا گیا ہے جبکہ بم سوٹ دو ڈھائی کلوگرام بارودی مواد سے بچنے کی صلاحیت فراہم کرتی ہے۔”
    اے آئی جی شفت ملک
    ادھر کالعدم تنظیم تحریک طالبان پاکستان کے ترجمان احسان للہ احسان نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کرلی ہے۔
    حکم خان کا شمار بم ڈسپوزل یونٹ پشاور کے انتہائی دلیر اور فرض شناس اہلکاروں میں ہوتا تھا۔
    چوون سالہ پولیس اہلکار کا تعلق پشاور کے علاقے متنی سے تھا۔ وہ گذشتہ ستائیس سال سے بم ڈسپوزل یونٹ میں انچارج کی حیثیت فرائض سرانجام دے رہے تھے۔
    اس سے پہلے بھی حکم خان ایک مرتبہ بارودی سرنگ ناکارہ بنانے کی کوشش میں دھماکے کی زد میں آئے تھے جس سے ان کے بائیں ہاتھ کے تین انگلیاں کٹ گئی تھیں۔ بتایا جاتا ہے کہ اس واقعہ کے بعد سے اس کے ہاتھ کا ایک حصہ ناکارہ ہوگیا تھا۔
    مرحوم حکم خان کے ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے بھی اچھے مراسم تھے اور وہ ہر کسی سے خندہ پشانی سے پیش آتے تھے۔
    حکم خان کے ایک ساتھی اور ہیڈ کانسٹیبل زریات اللہ کا کہنا ہے کہ ’آج ان کی موت لکھی گئی تھی ورنہ شروع میں تو ان کا جائے وقوعہ کی طرف جانے کا کوئی ارادہ نہیں تھا‘۔ انہوں نے کہا کہ صبح کے وقت جب انہیں اطلاع دی گئی کہ باڑہ شیخان کے علاقے میں بم ناکارہ بنانا ہے تو حکم خان نے انہیں کہا کہ وہ نفری لے کر جائے وقوعہ کی طرف روانہ ہوجائیں۔‘
    انہوں نے کہا کہ جب وہ جانے لگے تو تھوڑی دیر کے بعد حکم خان خود بھی نکل آئے اور کہنے لگے کہ وہ بھی ساتھ جائیں گے حالانکہ پہلے ان کا جانے کا کوئی ارادہ نہیں تھا۔

    بم ڈسپوزل یونٹ پہلے ہی سٹاف کی کمی کا شکار تھا اور حکم خان جیسے باصلاحیت اہلکار کی موت کے بعد مزید خلاء پیدا ہوا: شفقت ملک
    مرحوم کے بیٹے اکرم خان کا کہنا ہے کہ’ ہم سب خوش تھے کہ کل والد صاحب گھر آئیں گے کیونکہ کل ان کی چھٹی تھی لیکن ہمیں کیا پتہ تھا کہ اب وہ زندہ نہیں بلکہ ان کی لاش گھر آئےگی۔‘
    انہوں نے کہا کہ انہیں یقین نہیں آ رہا کہ ان کے والد اس دنیا سے رخصت ہو چکے ہیں۔
    مرحوم نے پسماندگان میں سات بیٹے اور تین بیٹیاں سوگوار چھوڑی ہیں۔حکم خان کے دو بیٹے پولیس ڈیپارٹمنٹ میں کانسٹیبل کی حیثیت سے ملازم ہیں۔
    ادھر بی ڈی ایس کے سربراہ اے آئی جی شفت ملک کا کہنا ہے کہ حکم خان نے بم دھماکے سے بچنے کے لیے کوئی حفاظتی لباس یا بم سوٹ نہیں پہنا ہوا تھا۔
    انہوں نے کہا کہ اگر وہ بم سوٹ پہنے بھی ہوئے ہوتے تب بھی وہ نہ بچتے کیونکہ اس دھماکے میں پانچ کلو بارودی مواد استعمال کیا گیا ہے جبکہ بم سوٹ دو ڈھائی کلوگرام بارودی مواد سے بچنے کی صلاحیت فراہم کرتی ہے۔
    ان کے مطابق گزشتہ چار سالوں کے دوران صوبہ میں نو پولیس اہلکار بم ناکارہ بنانے کی کوشش میں ہلاک ہوچکے ہیں۔
    انہوں نے کہا کہ بم ڈسپوزل یونٹ پہلے ہی سٹاف کی کمی کا شکار تھا اور حکم خان جیسے باصلاحیت اہلکار کی موت کے بعد مزید خلاء پیدا ہوا ہے۔
    شفقت ملک کے مطابق ’پورے صوبے میں بی ڈی ایس یونٹ میں ستر فیصد سٹاف کی کمی ہے جبکہ ان کے پاس آلات کی بھی شدید کمی پائی جاتی ہے۔‘
    اے آئی جی کے مطابق ان کے یونٹ پر تین چار سالوں سے شدید دباؤ کا بھی شکار ہے کیونکہ پشاور اور صوبے کے دیگر اضلاع میں سکیورٹی کی صورتحال انتہائی خراب رہی ہے۔

    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2012/09/120928_bomb_hukam_khan_killed_tk.shtml