Original Articles

How Irani Muslims celebrated the birthday of Imam Hussain (a.s.), grandson of Prophet Muhammad (s.a.w.) – by Ahsan Abbas Shah

Two suicide bombings at a mosque in southeast Iran killed more than 20 people Thursday, including worshippers and members of the Revolutionary Guards, state media reported.The attack came as people celebrated the birthday of Imam Hussain (A.s), grandson of the Muslim Prophet Mohammud (s.a.w), a day also set apart each year to honour the Revolutionary Guards.

ایران کے شہر زاہدان میں واقع مسجد کو اُسوقت خون میں نہلا دیا گیا جب پوری کائنات اِمامِ عالی مقام مولا حسین علیہ اسلام اورحضرت غازی عباس علمدار کے ظہور کی خوشی منا رہی ہے۔ زاہدان پاکستان کے بلوچستان سے متصل ایران کے جنوب مشرقی صوبے سیستان میں ہے، حملہ میں متضاد ذرائع کے مطابق ٢٠ سے ٣٢ افراد شہید اور ١٠٠ سے زیادہ زخمی ہیں۔

ایرانی حکام کے مطابق حملہ آور خود کش تھے جس کی ذمہ داری بھی جند اللہ نامی عسکریت پسند سوچ نے قبول کر لی ۔۔۔۔ جند اللہ نامی تنظیم کے کئی سالوں سے ایران کے صوبے سیستان بلوچستان میں ظالمانہ اور سفاکانہ کاروائیوں میں مصروف ہے، عبدالمالک ریگی کی پھانسی کے بعد بھی یہ تنظیم ایران میں بد امنی اور دہشت گردی پھیلانے میں فعال نظر آتی ہے۔

ایران نے متعدد مرتبہ پاکستان کے صوبے بلوچستان میں اِس تنظیم کی سرگرمیوں پر سفارتی احتجاج کیا ہے، مگر پاکستان میں جاری دہشت گردی کی لہر اور عسکریت پسندوں کے خلاف لڑی جانے والی جنگ میں ہماری ہر قُربانی کو ایران بخوبی جانتا ہے ۔

سوال پھر وہی ہے کہ ایرانی مسجد میں کونسا ایسا غیر اسلامی فعل ہو رہا تھا جو نہتے مسلمانوں کو نواسہء رسول جگر گوشہء بتول کی سالگرہ کے موقع پر ایسے بیدردی سے شہید کیا گیا۔

اِدھر پاکستان کے ہر صوبے میں پھیلنے والی بد امنی بھی اپنے عروج پر ہے،بلوچستان میں ٹارگٹ کلنگ کا سلسلہ جاری ہے جو بلا شُبہ وفاقِ پاکستان کمزور کر دینے کے لیے ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔برادر مُلک ایران سے ہمارے تعلقات مثالی ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آج تک امریکہ کی ایران پر بے جا پابندیاں بھی ایران پاکستان کے تعلقات پر اثر انداز نہیں ہوسکیں۔۔۔۔۔۔۔ جس کا واضع ثبوت ایران پاکستان گیس پائپ لائن کا منصوبے کا اعلان ہے۔

ایران اور پاکستان کو باہمی رضامندی سے بلوچستان اور سیستان بارڈر کی نگرانی کو یقینی بنانا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ اقدام دونوں ممالک کی عوام اور تجارتی منصوبوں کی ترقی کے لیے انتہائی ضروری ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دونوں ممالک کے سربراہان کو کسی بھی قسم کی سفارتی غلط فہمی سے بچنے کے لیے انٹیلی جنس اداروں کے آپس میں تعاون اور انفارمیشن شئیرنگ کو یقینی بنانا ہوگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تاکہ ظالم کسی بھی صورت اپنے درندہ صفت منصوبے میں کامیاب نہ ہوسکے۔ اداروں میں اعتماد سازی کی فضا کو فروغ دینا ہوگا اور یزیدی لشکر کو جہنم واصل کرنے کے لیے بلوچستان سیستان بارڈر پر مل کر کام کرنے کی ضرورت ہے۔

دہشت گردی عالمِ اسلام کا متفقہ مسئلہ ہے، اِسلامی تعلیمات میں سے صرف جہاد کا لبادہ اوڑھنے والے یہ سفاک دہشت گرد خارجی ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نہ اِن کا کوئی دین ہے، نہ سرحد۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پاکستان افغانستان اور اب ایران میں مسلمانوں پر اللہ کے گھر میں حملہ آور ہونے والے کسی مسلمان مُلک کی قیادت کے دوست کیسے ہو سکتے ہی؟ اگر یہ سوال حق بجانب ہے تو کبھی سعودی عرب سے دہشت گردی کے خلاف کوئی واضع فتویٰ کیوں سُنائی نہیں دیتا؟۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دہشت گردی کے خلاف تمام مسلمان ممالک میں موجود عالمِ دین اپنی اپنی ذمہ داری کو محسوس کرتے ہوئے واضع فتویٰ جاری کریں اور ان کی صرف مذمت ہی نہ کریں بلکہ انہیں متفقہ طور پر دائرہ اسلام سے خارج قرار دیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بالخصوص پاکستان افغانستان اور ایران میں دہشت گردی کرنے والے عوامل کی پُشت پناہی کی بجائے انہیں کائنات میں اسلام کے مرکز سے خارجی ثابت کیا جائے اور لعنت کی جائے۔

دہشت گردی جو کہ اقوامِ عالم کا مسئلہ ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جس کا حل نکالنے میں بڑے بڑے تھنک ٹینک، مفکر، عالم، لیڈر اور عسکری ماہر ین اکثر سر جوڑ کے بیٹھتے ہیں، ٹی وی ٹاک شوز میں عاقلہ وزیر اپنی اپنی عقل کے مطابق اِس کا حل تلاش کرتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پس دُنیا ظالم اور مظلوم کے دو فرقوں میں بٹ سی گئی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ایک طبقہ مارنے والا اور ایک مرنے والا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایک قاتل تو دوسرا مقتول۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جہاد کے نام پر تیار کی جانے والی اسلامی تنظیمیں اور مدارس الجنت ٹریول ایجنسی بن چُکی ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مارنے والا جنت میں جانے کا خواہشمند بھی ہے اور مرنے والوں کو ساتھ لے کے جانے کا دعویداربھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ گویا کہ اسلامی ممالک میں پھیلنے والا اس ناسور کو ختم کرنا ہی اصل جہاد ہے تاکہ اسلام کے نام پر کی جانے والی ظالم اور اجرتی قاتلوں کی گھناونی سازش کو بے نقاب کیا جائے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔!

حق و باطل کے اس معرکے کو جیتنے کے لیے کربلا کا واقعہ ایک درسگاہ کی حیثیت رکھتا ہے، واقعہ کربلا انسان پر ظالم اور مظلوم کے فرق کو وضع کر تا ہے، اگر یوں کہوں تو غلط نہ ہوگا کہ واقعہ کربلا کے بعد سے اسلام میں دو فرقے رہ گئے ایک ظالم اور ایک مظلوم۔۔۔۔۔۔۔۔ایک قاتل اور ایک مقتول۔۔۔۔۔ اب اسلامی ممالک کے سربراہان کو فیصلہ یہ کرنا ہے کہ وہ کس کا ساتھ دیں گے؟۔

فکر جب انسان کی حق آشنا ہوجائے گی

مقصدِ اقوامِ عالم، کربلا ہو جائے گی۔۔۔۔۔

سید احسن عباس رضوی

احسن شاہ

About the author

Ahsan Abbas Shah

1 Comment

Click here to post a comment
  • Sunni group claims Iran mosque blast killing 27

    By NASSER KARIMI and LEE KEATH, Associated Press Writers – Fri Jul 16, 6:59 pm ET

    TEHRAN, Iran – A Sunni insurgent group said it carried out a double suicide bombing against a Shiite mosque in southeast Iran to avenge the execution of its leader, as Iranian authorities Friday said the death toll rose to 27 people, including members of the elite Revolutionary Guard.
    The insurgent group, Jundallah, has repeatedly succeeded in carrying out deadly strikes on the Guard, the country’s most powerful military force — including an October suicide bombing that killed more than 40 people. The new attack was a sign that the group is still able to carry out devastating bombings even after Iran hanged its leader Abdulmalik Rigi and his brother earlier this year.

    Shiite worshippers were attending ceremonies marking the birthday of the Prophet Muhammad’s grandson, Hussein, when the first blast went off at the entrance of the mosque in the provincial capital Zahedan. The male bomber was disguised as a woman, local lawmaker Hossein Ali Shahriari told the ISNA news agency.

    Inside the mosque, a cleric was reading from the Quran in front of lines of faithful sitting cross-legged on the floor when the building suddenly shook from the blast and screams were heard from outside, according to footage taken at the time and aired on Iranian state TV.

    As people rushed to help, the second explosion detonated 20 minutes later, causing the majority of the deaths and injuries, ISNA reported. The technique is often used by Sunni militants in Iraq to maximize casualties.

    Members of the Guard were among the worshippers, particularly because the ceremonies coincided with Iran’s official Revolutionary Guard Day. The deputy interior minister, Ali Abdollahi, told the Fars news agency Thursday that several Guard members were among the dead.
    Health Minister Marzieh Vahid Dastagerdi told ISNA on Friday that the toll stood at 27 dead but could still rise, with another 270 injured, including 11 in serious condition.

    Iran accuses the United States and Britain of supporting Jundallah in a plot to weaken Tehran clerical leadership, a claim both countries deny. On Friday, officials blamed them for the latest attack.

    Gen. Hossein Salami, deputy head of the Revolutionary Guard, told worshippers at the main weekly prayers in Tehran that the victims “were martyred by hands of mercenaries of the U.S. and U.K.”
    He was echoed by influential lawmaker Alaeddin Boroujerdi who said “America should be answerable for the terrorist incident in Zahedan.”
    President Obama condemned the attacks, saying in a statement that the deaths of innocent civilians in their place of worship is an “intolerable offense” and that those responsible for the blasts must be held accountable.

    In New York, U.N. Secretary-General Ban Ki-moon strongly condemned the suicide bombings saying “this senseless act of terrorism at a place of worship makes it all the more reprehensible,” U.N. associate spokesman Farhan Haq told reporters at U.N. headquarters.

    The U.N. Security Council late Friday condemned “in the strongest terms the terrorist attacks” and underlined “the need to bring the perpetrators, the organizers, financiers and sponsors of this reprehensible act of terrorism to justice.” It urged all parties “to cooperate actively with the Iranian authorities in this regard.”
    Jundallah has been waging an insurgency for years in the remote Sistan-Baluchistan province, a lawless area where smuggling and banditry are rife. The groups says it is fighting for the rights of the mainly Sunni ethnic Baluchi minority, which it says suffers discrimination at the hands of Iran’s Shiite’s leadership. Iran has accused the group of links to al-Qaida, but experts say no evidence of such a link has been found.

    Iran executed Jundallah’s leader in June in Zahedan, a month after hanging his brother Abdulhamid Rigi, who had been captured in Pakistan in 2008 and extradited to Iran. The group named a new leader, al-Hajj Mohammed Dhahir Baluch.

    In a statement posted on its Web site, Jundallah claimed responsibility for Thursday night’s blast, saying they were to avenge Abdulmalik Rigi’s death. It showed pictures of two suicide bombers wearing explosive vests, identified as Mohammad and Mujahid Rigi, apparently members of the leader’s clan, though the site did not specify their relationship to him.

    The group said its “sons of the faith … carried out tonight a heroic unprecedented operation at the heart of an assembly of the Guard at Zahedan,” claiming to have killed more than 100.

    Jundallah has repeatedly targeted the Revolutionary Guards. In its deadliest attack, a suicide bomber hit a meeting between Guard commanders and Shiite and Sunni tribal leaders in the border town of Pishin on Oct. 18, killing 42 people, including 15 Guard members.
    The group struck another mosque in Zahedan in May 2009, killing 25 people. In February 2007, a Jundallah car bomb blew up a bus carrying Revolutionary Guards in Zahedan, killing 11.

    http://news.yahoo.com/s/ap/20100716/ap_on_re_mi_ea/ml_iran_explosions