Original Articles

Then they came for Barelvis – by Imran Qadir Bhatt

Deobandi Mullahs of the Wafaqul Madaris

Picture source: Daily Times

Let us be honest with one another. We are a nation who has been taught distorted histories. We have been inculcated with absurd notions of religious pride. For us the source of honour and pride is not based upon once contribution towards humanity but how religious one can be.

Everything we see around the world we see it with religious angle and more often we see a plot and conspiracy against our religion. In our social values we attribute great value to so called family pride. In our social values we hardly debate why there is complete lack of sanctity of human life in our society? We kill our daughters and sons in order to save our family pride. We destroy public and private business to protect our religious pride. We protest vehemently against foreign invasion and killing at the hands of foreign solidiers but keep a criminal silence when we kill our own people. Whole country protested angrily at the killing at Data Darbar but there was deafening silence at brutal murder of 95 Ahmedis at Ahmedi Mosque in Lahore.

Let us be honest there is ‘something’ within us which robbed sense of fair play and honesty in us. That ‘something’ has reduced us to mere hypocrites. This ‘something’ has deformed our thinking faculties and we strive and act only to protect this foreign ‘something’ in us.

Over the years this ‘something’ has grown bigger and bigger and its appetite for human blood is now insatiable. Unless we recognise this evil within us this madness and bloodshed will never ever be stopped. This evil is religious extremism. This extremism so pervasive, it crept into our ordinary life. It forced us to change how we value our fellow citizens, how to greet them, how to share our sorrows and happiness with them. We forgot to help the fallen one in the time of their needs all because those fallen ones happened to be Ahmedi Muslims.

We fail to register our anger when Christian villages were being torched and people were being burnt alive. We turned away when Imam Barghas were being bombed and mourners of Hazrat Imam Hussain were being slaughtered in broad day light. Now this extremism turned Data Nagri in to valley of death and still we are unable to locate the problem. We point fingers towards outsiders sometimes calling them ‘Pakistan ke dushmin’ and sometime labelling them ‘Islam dushmin’.

Let us be honest for our own survival and accept categorically that this problem exist inside ourselves. We are the problem and only we can solve it. Unless we change ourselves we cannot change anything. First and foremost thing that we have to do is accept the notion that all Pakistanis are equal. Honour is only for those who contribute towards the scientific, economical or social well being of fellow Pakistanis. From now on sanctity of human life will be given prime importance in our society. We will never entertain any kind of violence legal or illegal in our society. Pakistan as country is for Pakistanis not only for Muslims. State of Pakistan should be renamed into Democratic Republic of Pakistan and religion must be a personal matter.

If we could do this then I can see a ray of light at the end of tunnel. On the other hand I dread the day when we will be telling this story . First they came for secular and rationalists I did not object because I was not a secular or rationalist. Then they came for Hindu it did not bother me as I was not a Hindu. Then they came for Christians I kept my quiet because I was not a Christian but an ordinary Pakistani. After sometime they came for Shias. I did not stop them as I was an ordinary Pakistani not a shia. Recently they came for Brelvis. I did not do anything because I was not a Brelivi. Then they came for ordinary Pakistanis and when I looked around there was no one to defend me.

Tere azaar ka chara nahin nishtar ke siwa
Aur ye saffaak maseeha mere qabze mein nahin
Is jahan ke kisi zi rooh ke qabze mein nahin
Haan magar tere siwa tere siwa tere siwa.

About the author

Abdul Nishapuri

2 Comments

Click here to post a comment
  • ہاتھ اور مرغی!

    وسعت اللہ خان
    بی بی سی اردو ڈاٹ کام، اسلام آباد

    داتا دربار لاہور میں بم دھماکوں کے بعد پولیس نے دربار کو خالی کرالیا

    پاکستان کے ہر محلے میں مرغی کا گوشت بیچنے والے کی دوکان کے باہر ایک بڑا سا مضبوط آہنی پنجرہ رکھا ہوتا ہے۔ اس میں سینکڑوں بیمار اور صحت مند مرغیاں ایک دوسرے سے لگ کر بیٹھی رہتی ہیں۔ وہ اتنی تھکی اور سہمی ہوئی ہوتی ہیں کہ پھڑ پھڑاہٹ تو کجا کُڑک کُڑک کی آواز بھی نہیں آتی۔ ہر پانچ دس منٹ بعد پنجرے کا چھوٹا سا دروازہ کھلتا ہے ۔ ایک ہاتھ اندر جاتا ہے۔ پنجرے میں تیس سیکنڈ کے لیے اجتماعی سی پھڑ پھڑاہٹ اور خوفزدہ سی کُڑک کُڑک سنائی دیتی ہے مگرایک اور مرغی کم ہوجاتی ہے اور اس کی خوفزدہ چیخیں سن کر باقی مرغیاں پھر ڈری سہمی ایک دوسرے سے لگ کر بیٹھ جاتی ہیں۔ پنجرہ ہر صبح بھرتا، ہر شام تک خالی ہوتا ہے اور پھر اگلی صبح بھر جاتا ہے۔

    مجھے آج کا پاکستان اسی طرح کا ایک آہنی پنجرہ محسوس ہوتا ہے۔ جس میں ایک اور مرغی کم ہونے پر ذرا سی احتجاجی پھڑ پھڑاہٹ اور کُڑک کُڑک ہوتی ہے اور باقی رہ جانے والی مرغیاں شکر ادا کرتی ہیں کہ اس دفعہ وہ بچ گئیں۔

    ٹھیک ہے کہ لکی مروت کے گاؤں حسن خیل کے فٹ بال گراؤنڈ میں ایک خودکش بمبار نے سو سے زائد لوگ مار ڈالے مگر خدا کا شکر ہے کہ یہ سانحہ میرے شہر میں نہیں ہوا۔

    مجھے افسوس ہے کہ پشاور کی پیپل منڈی میں ڈیڑھ سو کے لگ بھگ لوگ کار بم کا نشانہ بنے لیکن پشاور میں تو یہ ہوتا ہی رہتا ہے۔اس میں نئی بات کیا ہے۔

    توبہ توبہ پریڈ لین راولپنڈی میں نمازیوں پر خودکش حملہ لیکن فوج چونکہ قبائیلی علاقوں میں آپریشن کر رہی ہے اس لیے ردِ عمل تو ہونا ہی تھا۔ مگر سجدے میں گرے ہوؤں کو بہرحال نہیں مارنا چاہیے تھا۔

    خیبر ایجنسی کے علاقے تیراہ میں چھیاسٹھ بےگناہ لوگ فوجی طیاروں کی بمباری کی زد میں آگئے لیکن قصور ان لوگوں کا بھی تھا۔وہ کیوں اپنے علاقے میں جنگجوؤں کو برداشت کرتے ہیں۔

    بحیثیت انسان ہمیں افسوس ہے کہ لاہور میں دو عبادت گاہوں پر حملے میں سو سے زائد احمدی ہلاک ہوگئے لیکن اس کا یہ مطلب تو نہیں کہ نواز شریف ان احمدیوں کے دکھ میں شریک ہوتے ہوئے انہیں اپنا پاکستانی بھائی بھی کہیں اور دین کی حرمت کا مذاق اڑائیں
    بحیثیت انسان ہمیں افسوس ہے کہ لاہور میں دو عبادت گاہوں پر حملے میں سو سے زائد احمدی ہلاک ہوگئے لیکن اس کا یہ مطلب تو نہیں کہ نواز شریف ان احمدیوں کے دکھ میں شریک ہوتے ہوئے انہیں اپنا پاکستانی بھائی بھی کہیں اور دین کی حرمت کا مذاق اڑائیں۔

    کراچی میں ٹارگٹ کلنگ میں شیعہ مارے جا رہے ہیں تو سنی بھی تو مارے جا رہے ہیں۔ اگر پختون مارے جارہے ہیں تو مہاجر بھی تو ہلاک ہو رہے ہیں۔ایسا نہیں ہونا چاہیے۔ بہت غلط بات ہے۔ سب کو مل جل کر رہنا چاہیے اور پولیس کو ٹارگٹ کلرز کے بارے میں اطلاع دینی چاہیے۔

    پشاور میں رحمان بابا کا مزار، نوشہرہ میں بہادر بابا، لنڈی کوتل میں امیر حمزہ شنواری، مہمند میں حاجی صاحب ترنگزئی کے مزار پر بم حملہ، اسلام آباد میں بری امام کے مزار پر خودکش حملہ اور سوات میں پیر سیف الرحمان کی لاش کو قبر سے نکال کر چوک میں لٹکایا جانا بہت بری بات ہے۔ اسلام اس کی اجازت نہیں دیتا۔ دکھ ہوا یہ خبریں سن کر۔

    مگر داتا صاحب کے مزار پر حملہ!! یہ تو حد ہی ہوگئی۔ ایسا کرنے والا مسلمان تو کجا انسان کہلانے کا مستحق نہیں ہوسکتا۔ یہ تو پنجاب کا نائن الیون ہے۔ اس اندوہناک واقعے پر تین دن کیا سات دن کا سوگ بھی کم ہے۔ اس سانحے پر کون ہے جس کی آنکھ اشکبار نہیں ہے۔

    جتنا ملک گیر ردِ عمل داتا صاحب پر خودکش حملے کے بعد سامنے آیا ہے۔ اس کا صرف بیس فیصد بھی دوسرے مزاروں پر حملوں کے خلاف ملک گیر سطح پر دکھایا جاتا تو غالباً داتا صاحب کے مزار کی حرمت یوں پامال نہ ہوتی
    لیکن کسی کو شاید کبھی احساس تک نہ ہو کہ جتنا ملک گیر ردِ عمل داتا صاحب پر خودکش حملے کے بعد سامنے آیا ہے۔ اس کا صرف بیس فیصد اجتماعی ردِ عمل حسن خیل، پیپل منڈی، تیراہ اور پریڈ لین کے قتلِ عام اور رحمان بابا، بہادر بابا، امیر حمزہ شنواری، حاجی صاحب ترنگزئی اور بری امام کے مزار پر حملوں کے خلاف ملک گیر سطح پر اگر دکھایا جاتا تو غالباً داتا صاحب کے مزار کی حرمت یوں پامال نہ ہوتی۔

    مگر ہر دس منٹ بعد پنجرے کے تنگ دروازے میں داخل ہونے والے پُر اعتماد قاتل ہاتھ کو خوب معلوم ہے کہ سینکڑوں میں سے کوئی ایک مرغی بھی اپنی نوکیلی چونچ سے کام لینا نہیں جانتی۔

    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2010/07/100704_bat_se_bat.shtml