Featured Original Articles

Maulana Hassan Jan, a senior Deobandi cleric killed by Takfiri militants of Sipah Sahaba – by Abdul Nishapuri

Maulana Hassan Jan was a leading Sunni Deobandi cleric of Peshawar who was martyred by the Takfiri Deobandi militants of the Sipah-e-Sahaba Taliban (SST) on 17 September 2007.

Maulana was born on 6 January 1938 in Prang, Charsadda. He was Shaikhul-Hadith at Darwesh Masjid in Peshawar and used to deliver Friday sermons in the same mosque. He was also the vice president of Wifaqul-Madaras, the largest board of Islamic madrassas of the Sunni Deobandi sub-sect of Islam.

While it is fact that almost all of the Jihadi-sectarian militant groups operating in Pakistan are either Deobandi (Taliban, Sipah-e-Sahaba Pakistan (ASWJ, LeJ), Jaish-e-Muhammad etc) or Salafi-Wahhabi (Al Qaeda, Jamaat-ud-Dawa (LeT)), Maulana Hasan Jan was killed by Jihadi-sectarian Deobandis (Taliban, SSP/ASWJ) because of his moderate views and also his condemnation of the Taliban/ASWJ’s attacks on innocent human beings in Pakistan and Afghanistan. He also held a meeting with the British Foreign Minister Mr. Jack Straw in famous Mohabat Khan Mosque of Peshawar to explain the Islamic message of peace and tolerance.

Maulana completed memorization (Hifz) of the holy Quran at the age of seven. He studied basic mathematics and Arabic grammar from his uncle. He later got admission at Anjuman Taleem-ul-Quran where he learnt basic Urdu and Islamiat. He then moved to Darul-uloom Utmanzai where he completed Dars-e-Nizami. After Dars-e-Nizami, he moved to Jamia Ashrafia Lahore, where he studied Hadith books from Hafiz Muhammad Idrees and Maulana Muhammad Rasool Khan Hazarvi. He got degree of Fazal-e-Deniat from Jamia Islamia Akora Khattak with distinction. On 11 June 1962 he moved to Madina for further studies at The Islamic University of al-Madinah al-Munawarah. He was awarded gold medal by the University of Peshawar in MA Islamiat for his distinction.

Maulana Hassan Jan used to deliver Friday sermon in Darwesh Mosque and people from all over Peshawar used to attend. For about 40 minutes he used to deliver the sermon and for about half an hour he would answer questions of the audience. His sermon used to be in Pashto and in soft tone. He also had a good sense of humor and his sermon would never get boring. Several of his speeches have been recorded and are available on audio cassettes and CDs.

Maulana was a member of the JUI (F). He contested the 1990 elections and defeated the then Awami National Party leader Abdul Wali Khan in his stronghold. He served as MNA for some time but soon he realized that this position was disturbing his educational and teaching activities so he resigned to devote himself to teaching at the Darwesh Mosque.

On Saturday 17 September 2007 some unknown people came to him near Aftari time and requested him to go with them for Nikah-Khwani. Near Wazir Bagh in the suburbs of Peshawar, they shot him. Post mortem report stated that his death was caused by two bullet wounds which he received in his heart and head.

Maulana Hassan Jan had gone out at 6:05pm along with the alleged assassins. He was killed at 6:45pm in the Sharifabad area, which is about 10-15 minutes away from his home.

The late Maulana often described suicide bombings as un-Islamic in his Friday’s sermons, attracting huge crowds.

Maulana Jan taught Sharia law in Saudi Arabia and was an influential figure among Taliban leaders, including the hardline militia’s fugitive chief Mullah Omar, his friends said.

He was against suicide attacks and had issued fatwas (religious decrees), calling suicide bombings “un-Islamic.”

A former lawmaker, Jan was among a group of officials and clerics who went to Afghanistan in late 2001 to convince Mullah Omar to expel Al-Qaeda leader Osama bin Laden following the September 11 attacks in the United States.

Thousands of students of the 69-year-old religious scholar including politicians, religious leaders and people from all walks of life were seen in a state of shock when the body was brought to Masjid Darvesh where he used to deliver the Friday sermon.

“Some people took the Maulana to solemnize a wedding in Wazir Bagh. Later, we learnt that he has been martyred,” Abidur Rahman, one of the four sons of Maulana, told newsmen. The deceased also left behind a widow and a daughter.

Capital City Police Officer (CCPO) Abdul Majeed Marwat told The News that the late scholar was taken by three persons to solemnise a nikah ceremony. When they reached near Wazir Bagh, two of them took him out of the car and shot him at the time of Iftar.

“We were offering prayers in Jamia Masjid Abu Bakar Siddiq at Wazir Bagh when we heard firing. Later, somebody told us that an elderly man had been shot,” a resident of Wazir Bagh, Jalal, told the people at Darvesh Masjid.

The eyewitness said the Maulana was alive and sitting on the footpath from where the locals took him to the mosque and called the police. “When the police took time to arrive, the locals took him to the Lady Reading Hospital but he breathed his last before reaching the hospital,” eyewitnesses said.

Thousands of people were seen crying when the body was brought to Masjid Darvesh where hundreds of policemen were deployed.

Maulana Hassan Jan, who was a teacher of the leader of the opposition in the National Assembly, Maulana Fazlur Rahman, and a number of ministers and parliamentarians, had always played a key role whenever any religious issue arose in any part of the country.

The funeral prayer of Maulana was held on Sunday 18 Sep 2007 at Qayyum Stadium.

Maulana Hasan Jan was regarded as a friend of Taliban chief Mullah Omar. He was in a group of Pakistani scholars who traveled to Afghanistan in late 2001 in an attempt to convince Omar that he should expel Osama bin Laden from Afghanistan to avoid American attacks. Omar rejected the plea and a U.S.-led invasion later ousted the Taliban from power.

It is to be noted that Maulana Hasan Jan was a moderate religious leader and he was the first to issue fatwa (a religious decree) against suicide attacks and terrorist activities. When the two clerics of Islamabad’s Lal Masjid (Red Mosque) announced to impose their Sharia law, which created a crisis and ended after a bloody operation, Maulana Hasan Jan was the first renowned religious scholar who spoke against the two brothers of Lal Masjid and their activities. He had said that their way of imposing Sharia was wrong.

Unlike his party leaders, he often spoke against terrorism, extremism and suicide attacks and issued fatwas against them. In one of his decrees, he had said that destroying music centres and forcing the barbers to close their shops was cruel and Un-Islamic.

It is also necessary to be mentioned that his party (JUI-F) was a part of a coalition of six religious parties called Muttaheda Majlis Amal (MMA) which was ruling the province since 2002 where he was assassinated.

The head of the investigation team, Khalid Qureshi, briefing the members of Pakistan’s National Assembly, said that Maulana Hassan Jan was killed by Taliban because he had termed the suicide bombings as un-Islamic during a Juma sermon.

The late religious scholar Maulana Hassan Jan was the first to publicly denounce Taliban violence, and he termed it un-Islamic. He was assassinated in retaliation in 2007, said Mufti Azam Khan, a Karachi-based religious teacher. After Jan was killed, a large number of ulema and other religious scholars became reluctant to denounce the Taliban openly.
“Killing the innocent and non-combatants, especially children and women, is clearly a violation of Islamic preaching,” Khan said.

Apparently, the ISI-sponsored Taliban were behind the assassination of Maulana Hasan Jan. Initially they tried to place the blame of Maulana Jan’s murder on Uzbeks and also on Shias. The Shia Kafir (Shias are infidel) chants, a characteristic of Sipah-e-Sahaba (ASWJ) show that the killers of Hasan Jan also participated in his funeral. According to his own students and family members, he was killed by Pakistani ISI, the key sponsor of the Taliban and Sipah-e-Sahaba.

)

خودکش بمبار اسلام کو بدنام کر رہے ہیں، شیخ الحدیث مولانا حسن جان

شیخ الحدیث مولانا حسن جان خیبر پختنخواہ کے شہر چار سدہ سے تعلق رکھتے تھے، انہیں دہشت گردوں نے 15 ستمبر 2007ء کو رمضان المبارک کے مقدس مہینے میں پشاور میں شہید کر دیا تھا۔ اپنی شہادت سے چند روز پہلے مولانا حسن جان نے پشتو کے ایک ریڈیو چینل کو انٹرویو دیا تھا، جو شیخ الحدیث مولانا حسن جان کا میڈیا سے آخری انٹرویو ثابت ہوا، کیونکہ حقائق سے بھرپور اس انٹرویو کے بعد مولانا کو شہید کر دیا گیا۔ اسلام ٹائمز کے قارئین کے استفادہ کیلئے حقائق سے بھرپور شیخ الحدیث مولانا حسن جان کے اس آخری و اہم انٹرویو کا پشتو سے اردو میں من و عن ترجمہ پیش کیا جا رہا ہے۔

یاد رہے کہ مولانا حسن جان مکتب دیوبند کے جید عالم دین اور شیخ الحدیث کے رتبے پر فائز تھے۔ مولانا حسن جان کی عوام میں مقبولیت کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ 1988ء کے انتخابات میں مولانا حسن جان نے چارسدہ سے قومی اسمبلی کی نشست پر عوامی نیشنل پارٹی کے سربراہ خان عبدالولی خان کو شکست دی تھی۔ جس کے بعد خان عبدالولی خان نے عملی سیاست کو خیر باد کہ دیا تھا۔ جے یو آئی سے وابستہ شیخ الحدیث مولانا حسن جان وفاق المدارس پاکستان کے مرکزی نائب صدر کے عہدے پر بھی فائز رہے، جبکہ عمر کے آخری ایام تک پشاور صدر کی مشہور مسجد درویش میں امام جماعت و خطیب کے فرائض سرانجام دیتے رہے۔

سوال:پاکستان میں اس وقت خودکش حملے عروج پر ہیں گزشتہ دنوں سوات کے علاقے شانگار میں پولیس کے اہلکاروں پر ایک خودکش حملہ ہوا ہے، جس میں ایک پولیس آفیسر سمیت چار سرکاری اہلکار جاں بحق ہوئے ہیں، آپ ان خودکش حملوں کو کس نظر سے دیکھتے ہیں۔؟

مولانا حسن جان: اسلام کے مطابق یہ حملے جائز نہیں ہیں اور ان کی کوئی شرعی حیثیت نہیں ہے اور یہ سراسر ظلم ہے، پاکستانی پولیس ہو یا فوج وہ مسلمان ہیں اور ہمارے بھائي ہیں، اگر خودکش کارروائیاں کرنے والے جنرل پرویز مشرف کے مخالف ہیں تو جائیں مشرف سے جنگ کریں، اپنے مسلمان بھائیوں کو کیوں قتل کرتے ہیں۔ ہم ان خودکش حملوں کے مخالف ہیں، ان کی مذمت کرتے ہیں اور اس کو غیرشرعی فعل سمجھتے ہیں۔

سوال: آپ سمیت اکثر علماء ان حملوں کو غیرشرعی سمجھتے ہیں اور اس کی مذمت کرتے ہیں لیکن یہ فرمائیں کہ ان حملوں پر کیسے قابو پایا جا سکتا ہے اور کونسے سے ایسے علماء ہیں جو ان کو جائز سمجھتے ہیں اور اس بارے میں فتوے صادر کرتے ہیں۔؟

مولانا حسن جان: میرا یہ ایمان ہے کہ پاکستان میں کوئی بھی عالم دین ان حملوں کی حمایت نہیں کرتا، البتہ کچھ انتہا پسند تنظیمیں جیسے جیش محمد اور سپاہ صحابہ، جن کے کارکن جو بےوقوف اور سادہ لوح ہیں اور انہیں کسی چیز کا شعور نہیں ہے وہ اس طرح کی کارروائیاں انجام دیتے ہیں یا تو یہ بےشعور ہیں یا اپنی زندگي سے تھک چکے ہیں یا خفیہ ایجنسیوں کے دھوکے میں آ کر یا پیسے کی لالچ میں خودکش کاروائیاں انجام دیتے ہیں۔

سوال:ان حملوں کو کس طرح کنٹرول کیا جاسکتا ہے کیونکہ ان حملوں میں نہ صرف انسانی جانوں کا ضیاع ہوتا ہے بلکہ خودکش حملہ آور بھی جہنم میں جاتا ہے۔؟

مولانا حسن جان: یہ تمام مسائل جہالت کی وجہ سے ہیں، بعض افراد سادہ لوح نوجوانوں کو جنت کی لالچ میں خودکش کارروائیوں پر تیار کرتے ہیں، یہ ایک طرح کی برین واشنگ ہے، اس سے نوجوانوں کو گمراہ کرکے خودکش حملوں کے لئے تیار کیا جاتا ہے۔

سوال: بعض علماء حتٰی بعض جہادی عناصر ان خودکش حملوں کی حمایت کرتے ہیں اور ان کا دعویٰ ہے کہ وہ اس طریقے سے پاکستان میں اسلامی انقلاب لائیں گے۔؟

مولانا حسن جان: انقلاب کا یہ راستہ نہیں ہے، یہ جاہلانہ طرز فکر ہے، اس کا ہدف فقط قتل و غارت اور ملک میں اختلافات اور تفرقہ پھیلانا ہے۔ اسلامی انقلاب کے دو راستے ہیں یا تو اتحادی حکومت مکمل طور پر ختم ہو جائے یا طاقت کے زور پر ملک میں انقلاب لایا جائے یا انتخابات اور عوامی رائے سے لائق اور اسلامی فکر رکھنے والے لوگوں کو اقتدار میں لایا جائے، اس سے ملک میں اسلامی تبدیلی آ سکتی ہے۔ اگر یہ روش اختیار نہ کی جائے اور ہم خودکش حملوں اور دھماکوں کا سلسلہ شروع کر دیں تو کہیں بھی نہیں پہنچ پائیں گے اور کوئی انقلاب و غیرہ برپا نہیں ہو گا۔

سوال: آپ کو پاکستان کے قبائلی علاقوں کے بارے میں اطلاعات ہوں گی کہ بعض عناصر نہ صرف ان علاقوں میں خودکش کاروائیاں اور دھماکے کر رہے ہیں بلکہ پولیس یا پاکستان کی سیکورٹی فورسز کے افراد حتٰی عام افراد کو حکومت کے لئے جاسوسی کرنے کے الزام میں پکڑتے ہیں ان کو قتل کر کے ان کا مثلہ کرتے ہیں۔ مثلا” چند دن پہلے ان عناصر نے وزیرستان میں ایف سی فورس ملیشیا کے سرکاری اہلکاروں کو گرفتار کیا، بعد میں دیگر کو چھوڑ دیا گیا، لیکن ان میں سے ایک ایف سی اہلکار لائق حسین کا سر ایک بچے کے ذریعے قلم کرایا اور اس کی ذبح شدہ ویڈیو فلم بھی بنائی اور اس فلم کو عام لوگوں میں تقسیم بھی کیا۔ آپ اس طرح کی کاروائیوں کے بارے میں کیا کہتے ہیں۔؟

مولانا حسن جان: یہ بہت بڑا ظلم ہے، یہ سب دیوانگی اور پاگل پن کا نتیجہ ہے۔ اس طرح کی کاروائیاں کرنے والے پاگل ہیں۔ یہ لوگ منفی پروپیگنڈے اور جذباتی نعروں کے فریب میں آئے ہوئے ہیں، بعض خفیہ ادارے ان بے وقوفوں کی حرکات سے فائدہ اٹھاتے ہیں، یہ پاکستان مخالف ہیں، ان کے ہندوستان اور اسرائیل سے رابطے ہیں، یہ لوگ پاکستان میں امن و امان کو خراب کرنا چاہتے ہیں۔

سوال: مولانا حسن جان، آپ درست فرما رہے ہیں آج جب ان خودکش حملوں، سر قلم کرنے والے مناظر کو مغربی اور صیہونی میڈیا اپنے ذرائع ابلاغ پر دکھاتا ہے تو ساتھ یہ بھی پروپیگنڈا کرتا ہے کہ یہ اسلام ہے۔ گویا اسلام کا چہرہ مسخ کر کے پیش کیا جا رہا ہے، آپ کیا فرماتے ہیں۔؟

مولانا حسن جان: جو لوگ یہ کام انجام دیتے ہیں اسلام کو بدنام کر رہے ہیں۔ طاغوتی اور استعماری طاقتیں اس طرح کے اقدامات سے فائدہ اٹھاتی ہیں، اسلام کے خلاف پروپیگنڈا کرتی ہیں اور اپنے لوگوں کے اذہان میں اسلام کے خلاف نفرت کے بیج بوتی ہیں۔

سوال:اب جبکہ پاکستان میں خودکش کاروائیاں عروج پر ہیں، آپ ان کو روکنے کے لئے کیا تجاویز پیش کریں گے۔؟

مولانا حسن جان:حقیقت میں انتہا پسندانہ کاروائیاں کرنے والے یہ عناصر جنرل مشرف کی پالیسیوں اور افغانستان پر امریکی حملے پر ناراض ہیں۔ جنرل پرویز مشرف نے اپنی پالیسیوں سے نہ صرف عوام کو اپنا مخالف بنا دیا ہے بلکہ لوگ بھی ایک دوسرے کی جانوں کے دشمن بن گئے ہیں، جبکہ دوسری طرف امریکہ بھی خوش نہیں ہے اور بارہا کہہ چکا ہے کہ پاکستان نے دوستی اور تعاون کا حق ادا نہیں کیا ہے اور اسامہ بن لادن اور ملاعمر کی پاکستان میں موجودگی کے بہانے پاکستان کو عالمی سطح پر بھی بدنام کر رہا ہے۔

سوال:ممکن ہے صدر پرویز مشرف کی پالیسیاں غلط اور اسلام مخالف ہوں، کیا اس کو دلیل بنا کر اسلام اور جہاد کو بدنام کیا جاسکتا ہے اور ایسی کاروائیاں کی جاسکتی ہیں، جو مسلمان تو ایک طرف کفار بھی انجام دیتے ہوئے گبھراتے ہیں۔؟

مولانا حسن جان: جی ہاں ہم بھی امریکہ اور نیٹو فورسز کے مخالف ہیں، اسی طرح ہم ان تمام کاروائیوں کی بھی مخالفت کرتے ہیں جو دہشت گردی کے خلاف جنگ کے نام پر انجام دی جا رہی ہیں، لیکن بعض عناصر کی طرف سے خودکش حملوں اور دھماکوں کے ذریعے ردعمل کا اظہار بھی درست اقدام نہیں ہے۔

سوال:کیا مستقبل میں اس بات کی امید ہے کہ یہ حملے کم یا ختم ہو جائیں۔؟

مولانا حسن جان: قومی انتخابات قریب ہیں اگر اچھے افراد اقتدار میں آ گئے تو ممکن ہے ان مسائل پر قابو پایا جاسکے۔

http://islamtimes.org/vdce7z8f.jh87niqdbj.html

Video: Taliban commander’s confession

Sources:

Wikipedia

http://centralasiaonline.com/en_GB/articles/caii/features/pakistan/main/2012/03/22/feature-01

http://archives.dawn.com/2007/09/23/nat8.htm

http://www.pakpassion.net/ppforum/archive/index.php/t-45966.html

http://www.sunniforum.com/forum/showthread.php?26280-Maulana-Hassan-Jan-shot-dead-in-Pakistan

http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/story/2007/09/070915_maulana_hassan_killed.shtml

http://www.helium.com/items/598134-anti-terror-mullah-assassinated-in-pakistan

http://weeklypulse.org/details.aspx?contentID=1988&storylist=5

About the author

Abdul Nishapuri

25 Comments

Click here to post a comment
  • Some Islamic clerics take hard line on suicide bombers
    By Catholic Online
    4/8/2012

    Suicide bombings kill innocent Muslims, they declare

    Islamic clerics are denying suicide bombers their last rites. The killing of others and themselves is completely un-Islamic, they say, contrary to the popular misconception that such bombers act on the pretense that such acts will get them into heaven.

    Religious scholars in Pakistan say suicide bombers are likely to suffer eternal damnation rather than go to paradise because their acts, blowing themselves up and others invite the wrath of Allah.

    “Most suicide attackers act on the misconception that their acts receive the pleasure of Allah, but the fact is they are killing and injuring innocent Muslims,” Maulana Muhammad Rehman, a prayer leader in a mosque in the Khyber Agency of the Federally Administered Tribal Areas says.

    In addition, religious scholars in Pakistan say suicide bombers are likely to suffer eternal damnation rather than go to paradise because their acts, blowing themselves up and others invite the wrath of Allah.

    The seven agencies of the FATA bordering Afghanistan are the breeding ground for young suicide bombers who are trained and indoctrinated by the Taliban before being sent out to commit violent acts abroad.

    “According to Prophet Muhammad – peace be upon him – killing one person amounts to killing the whole of humanity because there is no way to forgive killers,” Maulana Rehman told journalists.

    “Pakistani Taliban regularly kidnap or lure poor teenagers into madrassas or seminaries where they are brainwashed into becoming suicide bombers, often by using videos showing Muslims under oppression in Kashmir, Iraq and Afghanistan,” Rehman says.

    “Their trainers tell them that jihad (holy war) is imperative and that they would go to paradise after killing many infidels and non-believers in Islam, but this is totally wrong.”

    Anwarullah, a prayer leader in Mardan, in the border province of Khyber Pakhtunkhwa reiterates that “all those blowing themselves up and killing innocent Muslims wouldn’t find a place in paradise as promised by their trainers.

    “There’s no second opinion that suicide attacks aren’t allowed in Islam. It is crystal clear that those disobeying divine commandments and opting to become suicide bombers would land in hell which hosts infidels,” he said.

    Cleric Qari Jauhar Ali says that suicide bombers are unfortunate because they cannot be given proper burial rites. “They are neither given a ritual bath nor are proper rites performed as they are lowered into their graves,” Ali told IPS.

    Unfortunately, religious leaders who speak up against suicide bombing are themselves singled out for attacks by the Taliban in an attempt to silence inimical interpretations of the Holy Scriptures.

    Top scholars killed in recent years on orders from the Taliban included Mufti Sarfaraz Naeemi, Muhammad Farooq Khan and Maulana Hasan Jan. All of them were openly critical of suicide bombings.

    http://www.catholic.org/international/international_story.php?id=45607

  • List of Deobandi and Wahhabi Muslims killed by Sipha-e-Sahaba:

    30 May 2004: A senior Deobandi religious scholar and head of Islamic religious school Jamia Binoria, Mufti Nizamuddin Shamzai, was gunned down in his car while leaving his home in Karachi.

    17 September 2007: Maulana Hasan Jan was killed in Peshawar.

    19 September 2008: A bomb exploded at an Islamic religious school in Quetta killing five people and wounding at least eight. The school was run by Jamiat Ulema-e-Islam of Maulana Fazal-ur-Rehman.

    2 October 2010: Dr. Muhammad Farooq Khan, Mardan

    http://pakistanblogzine.wordpress.com/2012/02/01/barlevi-muslims-ask-sipah-e-sahaba-to-stop-misusing-the-name-of-ahl-e-sunnat-wal-jamaat/

  • Taliban slide ‘from hero to zero’

    Religious and political forces in Northern Pakistan, which hitherto drew strength from their association with the Taliban have begun to distance themselves from the militants, as the latter’s legitimacy plummets in the border regions, writes Ashfaq Yusufz
    Religious and political forces in Northern Pakistan, which hitherto drew strength from their association with the Taliban have begun to distance themselves from the militants, as the latter’s legitimacy plummets in the border regions.
    By targeting schools, mosques, funerals, soldiers, music shops, government buildings, dancers and a range of other professions and civil institutions, the Taliban have brought themselves to the brink of collapse, Mian Iftikhar Hussain, information minister for the Khyber Pakhtunkhwa province, told IPS.
    As the Taliban’s ship sinks, actors who had benefitted from the group’s popularity are increasingly wary of expressing their allegiance to the militants.
    “The religious forces’ unflinching support for the Taliban was the only reason (the latter) won a sweeping victory at the 2002 polls,” Mian Iftikhar said.
    “At the time, the Taliban enjoyed massive public support in the areas bordering Pakistan and Afghanistan and the adjacent Khyber Pakhtunkhwa,” he added.
    After the U.S-led allied forces dismissed the militants’ government in Kabul towards the end of 2001, the Taliban were warmly welcomed in the tribal areas, where they were “revered as ‘true jihadists’,” according to Muhammad Nasir, a student of Peshawar University.
    But now the Taliban are entering a new era, one that will test their ability to withstand severely diminished public support.
    The first signs of the group’s waning popularity came on May 2, when Osama bin Laden’s assassination by U.S. forces in Abbottabad failed to draw a single protest or demonstration condemning the action as a violation of Pakistan’s sovereignty.
    “This was clear evidence that the Taliban have moved from ‘hero to zero’,” Nasir added.
    A slew of attacks against various scholars and public officials over the last half-decade have also contributed to the group’s fall from grace.
    Maulana Hassan Jan, a lawmaker and revered religious scholar, was shot dead by terrorists near Peshawar on Sep. 17 2007 for his opposition to an alleged Taliban-orchestrated suicide bombing.
    The Taliban later claimed responsibility for Hasan Jan’s death, as well as for the assassinations of two other prominent religious scholars – Muhammad Farooq Khan, vice-chancellor of Swat University who was killed on Oct. 2, 2010 and Mufti Sarfaraz Naeemi, who was killed in a suicide attack in Lahore on Jun. 13, 2009.
    All three scholars had condemned the Taliban’s suicide missions as ‘haraam’ (or ‘forbidden’ under Islamic law), a criticism that infuriated the Taliban who have always defended their operations and actions as being perfectly in line with their religious beliefs.
    Even Maulana Fazlur Rehman, leader of Jamiat Ulemai Islam (JUI), who had maintained close ties with the Taliban’s leadership over the years and offered on several occasions to facilitate government-Taliban dialogue, has recently taken a much harder line on the militants.
    Back in March he survived two suicide attacks within two days of each other, one in Swabi and the other in Charsadda.
    Last month Fazlur Rehman stressed that he only supported the Taliban’s struggle against the U.S. occupation in neighbouring Afghanistan, but did not “recognise” the group’s existence on Pakistan’s soil.
    Police officer Owais Shah, who investigated all of the aforementioned suicide attacks, said they were identical to those being launched throughout the country.
    “The Taliban are trying to convey a warning to religious parties about taking a (critical position),” Shah told IPS.
    Last year, Dost Muhammad, city deputy chief of Jamaat Islami for Peshawar, was killed in a suicide attack on its party rally.
    He had been a big supporter of Taliban in the past but his party had recently voiced strong condemnations of the Taliban’s suicide attacks.
    “We don’t support armed struggle by any force,” said Shabbir Ahmed Khan, a former lawmaker of Jamaat Islami, who survived the attack on the rally. “We want everyone to struggle for a change but through legal and constitutional means.”
    Sikandar Khan, a member of the Swat Peace Committee, told IPS that the Taliban has achieved record- breaking levels of barbarism and brutality and don’t stand a chance of regaining their lost support.
    “When the Taliban killed Pir Samiullah, one of their opponents, his body was exhumed and displayed for the public in Swat, (an administrative district of the Khyber Pakhtunkhwa province). It was an act the people could not have conceived of.”
    He added that similarly horrific incidents, like the execution of the celebrated female dancer Shabana whose body was found hanging from an electric pole, are still fresh in people’s minds.
    The militants’ attacks on the army and police are increasingly being viewed as attacks on “civilians’ safety”, since the armed forces are largely deployed in a civilian capacity in the border regions, further eroding the Taliban’s popularity.
    In the past, ordinary civilians donated money to the Taliban, but the group’s involvement in various kidnappings for ransom and the senseless murders of innocent people have disappointed the people, whose sympathies are growing thin.
    Quoting data from the country’s interior ministry, Sikandar claimed that more than 23,000 civilians and 5,000 Pakistani soldiers have been killed in the ‘war against terror’ since 2005.

    “Only a few years ago, the local population gave the Taliban sanctuaries, which enabled them to escape arrests. Now local people in the tribal areas have formed anti-Taliban committees who work with the army,” he added.

    In Bajaur Agency alone, about 2,200 militants have surrendered before the army in the past two years, he said.

    Hasam ul-Haq, professor at the Government College of Bajaur, told IPS the Taliban’s practice of claiming responsibility for every act of terror taking place around the globe further eroded their integrity since many deplore the targeting of mosques and civilians.

    “Islam doesn’t allow armed attacks – but the Taliban continue to use weapons, bombs and suicide bombing as their modus operandi,” he said. Once considered the defenders of Islam, the Taliban are now regarded as oppressors.

    Ul-Haq also believes that the Taliban made a grave tactical error by releasing a video on Jul. 18 containing footage of 16 Pakistani policemen being executed by the group’s militants in the Dir district.

    This, coupled with the kidnapping of 25 children from Bajaur two months ago, only to release four of them after payment of a ransom, is indicative of the Taliban’s crumbling moral and religious framework, he added.

    http://ins.onlinedemocracy.ca/?p=26029

    http://www.newstoday.com.bd/?option=details&news_id=46073&date=2011-12-04

    پاکستان مین طالبان کی مقبولیت مین نمایاں کمی
    طالبان ، پاکستان مین اپنی حماقتوں اور وحشیانہ طرز عمل کی وجہ رائے عامہ کی جنگ اور دوسری جنگ تیزی سے ہارتے جارہے ہین اور اب انہوں نے مسلح افواج اور قانون نافذ کرنے والے ادارون کے بجائے، سافٹ ٹارگٹس پر حملے شروع کر دیے ہین اور پاکستانی عوام کو نقصان پہنچا نے کے درپے ہو رہے ہین۔ درحقیقت طالبان ایک ایسے ٹمٹماٹے چراغ کی مانند ہین ہے جو گل ہونے کے قریب ہے اور امید ہےکہ طالبان بہت جلد ہی تاریخ کے اوراق مین گم ہو جائین گے اور تاریخ مین ان کا ذکر خوارج اور دوسرے باغی گروہوں کے ساتھ آئے گا۔
    گزشتہ کچھ عرصہ سے طالبان کی طرف سے ہونے والے خودکش حملوں میں عام شہریوں کی ہلاکت کے بار بار واقعات اور بعض علاقوں میں ان کے خلاف عام لوگوں کے اٹھ کھڑے جانے سے آجکل طالبان کی حمایت، عوام میں بہت زیادہ کم ہونے کی اطلاعات ہیں۔ خیال ر ہے کہ قبائلی علاقوں اور پاکستان کے دوسرے علاقون میں طالبان کی مقبولیت کا گراف اب وہ نہیں رہا جو کبھی پہلے ہوا کرتا تھا۔
    گزشتہ چند ماہ کے دوران صوبہ سرحد میں طالبان عسکریت پسندوں کی مقبولیت میں واضح کمی آئی ہے اور بندوبستی علاقوں سے لے کر غیر بندوبستی علاقوں تک ان کے مخالفین کی تعداد میں مسلسل اضافہ ہوتا جا رہا ہے جس کا واضح ثبوت مذکورہ علاقوں میں آئے روز بننے والے قومی لشکروں کی تعداد میں اضافہ ہے۔ ان قبائلی لشکروں کے قیام کے بعد اُمید کی جارہی ہے کہ تمام شورش زدہ علاقوں میں جلد ہی حالات بہتری کی طرف گامزن ہونا شروع ہوجائیں گے۔
    طالبان کی طرف سے صوبہ خیبر پختونخواہ مین ایک ہزار سے زیادہ اسکولوں، مساجد اور عام لوگوں کو خود کش بم حملوں کے ذریعے ہلاک کئے جانے کو قبائلی علاقوں اور پاکستان کے دوسرے علاقوں مین اب پسندیدگی کی نظر سے نہیں دیکھا گیا۔طالبان نے ستمبر ۲۰۱۰ تک ۱۰۰۰ سے زیادہ طلبہ و طالبات کے سکولون کو تباہ و برباد کر کے قرآن ،رسول اکرم کی احادیث اور آیمہ کرام کے احکامات کی صریحا خلاف ورزی کے مرتکب ہوئے ہین۔ طالبان درندوں نے اپنے حملوں کے دوران سکولوں کے بچوں ، بچیوں اور اساتذہ کو بھی نہین بخشا۔ طالبان کے مذید حملوں کے خوف کی وجہ سے صوبہ ک پ کے ۲۰۵ پرائمری سکول بند کر دئیے گئے جس سے ہزاروں بچیاں تعلیم سے محروم ہو گئیں۔ اقوام متحدہ کے کمشنر مہاجرین کی ایک روپورٹ کے مطابق ۱۔۸ ملین آبادی کے علاقہ مین ۳ سال پہلے ۱۲۰،۰۰۰ لڑکیاں سکولوں اور کالجوں میں زیر تعلیم تھین جو ، اب کم ہو کر صرف ۴۰،۰۰۰رہ گئین۔ ۳۰ فیصد سے زیادہ لڑکیاں سن ۲۰۰۶ اور ۲۰۰۷ مین مولوی فضل اللہ کی دہمکی آمیز ریڈیو تقریروں کی وجہ سے سوات کے سکول چھوڑ گئیں۔ طالبان نے سوات مین سکول کی بچیوں کے سکول جانے پر پابندی عائد کر دی۔ طالبان نے سوات کے سکولوں اور مدرسوں سے ، ۱۱ سال عمر کے ۱۵۰۰ طلبا کو خودکش بمبار بنانے کے لئے اغوا کیا۔[ٹائمز روپورٹ2009 / Daily Times January 24 th,2011]طالبان نے دوسرے دہشت گردوں اور گروپوں کو ، ۷ سال عمر کے بچے ،خود کش بمبار بنانے کے لئے ۷۰۰۰ سے لیکر ۱۴۰۰۰ ڈالر مین فروخت کئیے۔ طالبان نے اکتوبر ۲۰۰۹ مین انٹرنیشنل اسلامک یونیورسٹی اسلام آباد مین خود کش حملہ کیا جس مین ۶ افراد بشمول ۳ طالبات ہلاک ہو گئین۔ طالبان نے اکتوبر ۲۰۱۰ مین سوات یونیورسٹی کے وائس چانسلر ڈاکٹر فاروق خان کو قتل کر دیا اور سوات طالبان نے اس کی ذمہ داری قبول کر لی ۔ تحریک طالبان نے اسلامیہ یونیورسٹی، پشاور کے وائس چالسلر کو ستمبر ۲۰۱۰ مین اغوا کر لیا اور وہ ابھی تک طالبان کی قید میں ہین۔ طالبان نے ۱۹ جنوری 2011 کو پشاور کے ایک نجی سکول کے باہر دہماکہ کیا جس سے دو افراد ہلاک اور ۱۵ بچے زخمی ہو گئے۔۔ذرائع کے مطابق خیبرایجنسی کی تحصیل لنڈی کوتل کے علاقہ کنڈاؤ خیل میں شدت پسندوں نے ۲۴ جنوری 2011 گرلز پرائمری سکول کو دھماکہ خیزمواد نصب کرکے تباہ کردیا۔ ایجنسی بھر میں تباہ ہونیوالے سکولوں میں اب تک33 درسگاہیں شدت پسندوں کے ہاتھوں تباہ ہوچکی ہیں۔ یہ ہین ان طالبان کی قبیح حرکات و کرتوت جو پاکستان مین سکولون کو تباہ کر کے،طلبا ،اساتذہ و دیگر بے گناہ اور معصوم لوگوں کو قتل کرکے اسلامی نظام نافذ کرنے چلے ہین۔
    ان حملوں کی وجہ سے قبائلی باشندے آہستہ آہستہ طالبان کے بے اصول جہادی رویے سے تنگ آ گئے ہیں اور طالبان کی مقبولیت میں کمی واضح طور پر دیکھنے مین آئی ہے اور محسوس بھی کی جا رہی ہے۔ بہت سے دفاعی اور سیاسی تجزیہ نگاروں کا خیال ہے کہ طالبان بہت جلد فاٹا کی قبائلی پٹی میں بھی معدوم ہو جائیں گے کیونکہ عام لوگ مسلسل اپنے عزیزوں اور بچوں کی ہلاکت کے باعث غمزدہ ہونے کے ساتھ ساتھ ان کی سرگرمیوں کی وجہ سے معاشی اور معاشرتی پریشانی کی چکی میں بری طرح پس کر رہ گئے ہیں۔ پاکستان بھر مین اور بالخصوص صوبہ خیبر پختونخواہ مین تمام معاشی سرگرمیاں ختم ہو چکی ہیں جس سے معیشت کو زبردست نقصان پہنچا ہے۔ پہلے سے انتہائی غریب اور پسماندہ پاکستانی اور قبائلی معاشرہ اب مزید پریشانی کا شکار ہو چکا ہے۔
    سوات سے تعلق رکھنے والے ایک طالب علم رئیس کا کہنا ہےکہ ان کے آبائی ضلع میں طالبان تمام اقسام کی جابرانہ اور ظالمانہ کارروائیوں میں ملوث تھے۔ انہوں نے کہا کہ طالبان اپنے مخالفین کی لاشوں کو قبروں سے نکال کر سر عام پھانسی دیا کرتے تھے جو کہ دین اسلام کی خلاف ورزی ہے۔ انہوں نے کہا کہ طالبان کی اس طرح کی حماقتوں سے ان کی شہرت داغدار ہو گئی اور عوام کے دلوں میں ان کے خلاف نفرت پیدا ہو گئی ہے۔
    ریٹائرڈ میجر انور خان نے سینٹرل ایشیا آن لائن کو بتایا کہ صرف عبد الخالق ہی طالبان کے ظلم و ستم کا شکار ہونے والا شخص نہیں ہے۔ عسکریت پسندوں کی قائم کردہ شرعی عدالتوں نے لوگوں کو سخت سزائیں دیں جو خود ان کی تباہی کا باعث بنیں۔ میجر انور خان نے کہا کہ طالبان کی مقبولیت اپنی کم ترین سطح تک پہنچ چکی ہے۔ کسی زمانے میں عسکریت پسندوں کو پناہ گاہیں فراہم کرنے والے قبائلی اور قبائلی عمائدین اب حکومت کو ان کی نقل و حرکت کی اطلاع دیتے ہیں۔ تاکہ اس طالبانی فتنہ کی بیخ کنی ہو سکے۔
    جولائی میں پیو عالمی رجحانات منصوبے کے جاری کردہ رائے عامہ کے جائزے میں 51 فی صد افراد تحریک طالبان پاکستان کے مخالف جبکہ اس کے مقابلے میں محض 18 فی صد اس کے حامی ہیں۔ طالبان سے متعلق پوچھنے پر 65 فی صد افراد نے ان کی مخالفت اور 15 فی صد نے ان کے حق میں اپنی رائے کا اظہار کیا۔ 2008 میں، 27 فی صد افراد نے طالبان کے حق میں اپنی رائے کا اظہار کیا تھا۔
    وفاق کے زیر انتظام قبائلی علاقوں میں سلامتی کے امور کے سابق سربراہ ریٹائرڈ بریگیڈیر محمود شاہ نے کہا کہ ڈاکٹر فاروق خان، مولانا حسن جان اور مفتی نعیمی سمیت ماہرین تعلیم کے اغوا اور مذہبی علماء کے قتل سے طالبان کا تصور داغدار ہو گیا ہے۔
    انہوں نے کہا کہ طالبان کھیلوں کے مخالف ہیں، وہ اسپتالوں اور اسکولوں میں کام کرنے والی خواتین کی مخالفت کرتے ہیں اور وہ خواتین کے گھروں سے باہر نکلنے کے بھی خلاف ہیں۔ ان پر عوامی اعتماد کیسے برقرار رہ سکتا ہے؟
    تین اپریل کو طالبان کے اراکین کی جانب سے وادی سوات میں ایک نوعمر لڑکی کو کوڑے مارنے کی وڈیو منظر عام پر آنے سے طالبان کی تعلقات عامہ کوششوں کو زبردست دھچکا لگا۔ دو منٹ کی وڈیو میں دو عسکریت پسندوں نے لڑکی کو زبردستی لٹا رکھا تھا جبکہ تیسرا عسکریت پسند اس کی پشت پر لگاتار کوڑے برسا رہا تھا۔
    طالبان کے خلاف نفرت پھیلنے کی ایک وجہ مزارات اور مساجد کی تباہی بھی ہے اور مزارات کی توہین کو خوش عقیدہ قبائلیوں اور پاکستانیوں کی بریلوی اکثریت اور غیرت مند جوانوں نے فراموش نہیں کیا۔ طالبان دہشت گردون نے پچھلے ۱۰ سالون مین لا تعداد مساجد کو بے رحمانہ طریقے سے اپنی دہشت گردی کا نشانہ بنایا اور ۱۱۶۵ نمازیون کو قتل کر کے اپنی بربریت کا نشانہ بنایا اور ۲۹۰۰ نمازیوں کو زخمی کر دیا، جن مین بچے،بوڑھے اور نوجوان شامل ہین۔ آجکل مساجد میں عبادت گزار ون کو اللہ تعالیٰ کے ذکر کی لذت اورعبادت کی سعادت کی بجائے اپنی جان کے لا لے پڑے ہوتے ہیں۔
    ان مسلح طالبان نے قبائلی علاقوں میں اب عدالتوں کا نظام بھی استوار کر دیا ہے۔ تین جنوری کو اورکزئی ایجنسی میں طالبان کی جانب سے ایک مبینہ چور عبد الخالق کو ہاتھ کاٹنے کی سزا دینے کا واقعہ دہشت گردی کی وہ تازہ ترین جھلک ہے جس نے کالعدم تنظیم تحریک طالبان پاکستان کی عوامی حمایت ختم کر دی ہے۔علماء کے قتل، مزاروں کی توہین، مساجد کی تباہی اور اسکولوں کے بموں سے اڑا دیے جانے سے قبائلی عوام پریشان ہیں اور ایسے امکانات کو تقویت حاصل ہو رہی ہے کہ کل جن طالبان کو قبائلیوں نے خوش آمدید کہا تھا، اب وہ ان کے خلاف خود ہی منظم ہو رہے ہین۔
    گیلپ سروے کے مطابق دہشت گردی کے واقعات میں عام لوگوں کو نشانہ بنائے جانے کے واقعات میں اضافے کیساتھ پاکستان اور افغانستان میں طالبان کی مقبولیت میں نمایاں کمی آئی ہے۔سروے کے مطابق جون 2009 میں مجموعی طور پر طالبان کو15 فیصد پاکستانیوں کی حمایت حاصل تھی۔ جو نومبر دسمبر میں کم ہو کر صرف4 فیصد رہ گئی۔ صوبہ سرحد سے تعلق رکھنے والوں کی صرف ایک فیصد تعدادنے نومبر دسمبر2009کے دوران کیے گئے اس سروے میں طالبان کی حمایت کی،جبکہ جون میں طالبان کے حامیوں کی تعداد11فیصدتھی۔ بلوچستان میں بھی طالبان کے حامیوں میں کمی آئی ہے،جون میں کیے گئے سروے کے مطابق صوبے میں طالبان کے حامی26فیصدتھے جبکہ نومبردسمبرمیں صرف5فیصدافرادنے طالبان کی حمایت کی۔یہ سروے پاکستان میں گزشتہ سال نومبردسمبر میں15سال یااس سے زیادہ عمرکے1147افراد سے کیا گیا۔ لوگوں سے طالبان کی حمایت یا مخالفت کے بارے میں رائے لی گئی اورپھر اس کا موازنہ چھ ماہ قبل کیے گئے سروے کے نتائج سے کیا گیا۔ سروے کے مطابق افغانستان میں جون اورنومبرمیں کیے گئے دونوں سروے کے نتائج کے مطابق10میں سے8افرادطالبان کی موجودگی کو ناپسندیدگی کی نظرسے دیکھتے ہیں۔
    چونکہ تمام طالبان ایک مشترکہ خصوصیت کے حامل ہیں اور انکے پیچھے کارفرما ذہن ایک مخصوص طرز فکر رکھنے والا ذہن ہے۔ان میں سے بعض شعوری طور پر اور بعض لاشعوری طور پر دین اسلام کو نابود کرنا چاہتے ہیں۔یہ گروہ اپنی منفرد مذھبی روایات اور مخصوص انتہا پسندانہ طرز زندگی کو اسلام کے نام پر پاکستانی معاشرے پر مسلط کرنا چاہتا ہے اور ان میں موجود اسلام کے شعوری دشمن غیر انسانی اور غیر قرآنی مذھبی روایات اور قبائلی ثقافت کو اسلام کی اقدار و ثقافت قرار دے کر دین اسلام کی روز افزوں مقبولیت کو کم کرنے کی کوشش کر رہے ہیں اور غیر مسلموں کو اسلام سے دور بھگا رہے ہین۔
    ملک میں معاشی ترقی اور صنعتیں تب ہی لگیں گی اور غیر ملکی سرمایہ کاری تب ہو گی جب ملک میں امن و امان ہو گا ۔اس وقت ملک کو دہشت گردی کا سامنا ہے اور دہشت گردی کی وجہ سے ملک کی معاشی حالت دگرگوں ہو چکی ہے۔پاکستان بدحالی کے دھانے پر کھڑا ہے۔ معیشت بند گلی مین داخل ہو گئی ہے اور کوئی ملک پاکستان کو بیل آوٹ پلان دینے کے لئے تیار نہیں۔ حکومت اپنے انتظامی اخراجات پورے نہیں کر پا رہی۔ سنگین حالات سے نکالنے کے لئے قومی یکجہتی سے مشترکہ حکمت عملی اپنانا ہو گی۔ لہذا عوام دل و جان سے دہشت گردی کے خاتمے کے لئے اور ملکی معاشی بہتری کے لئےحکومت سے تعاون کریں۔دہشت گردی جیسے فتنے سے نمٹنا تو ہر مسلمان اور پاکستانی کی اولین ذمہ داری ہے۔
    دہشت گردی ایک غیر ملکی نہین بلکہ پاکستانی ایشو ہے۔ ہمارےعوام کی اپنی سلامتی اور ترقی کے لئے یہ امر انتہائی اہم اور ضروری ہے اوریہ ہماری موجودہ اور آیندہ نسلوں کے وسیع تر مفاد میں ہے کہ دہشت گردی اور انتہاپسندی کو ہر ممکن طریقے سے اور ہر قیمت پر روکا اور ناکام بنایا جائے۔

    http://forum.onepakistan.com/islamic-articles/16583-a.html

  • کراچی میں تحریک طالبان پاکستان کے خلاف مہم کا آغاز

    انجمن محبان پاکستان نے تحریک طالبان پاکستان کو فتنہ قرار دیا ہے
    ضیاء الرحمٰن
    2012-03-22

    کراچی – کراچی میں تحریک طالبان پاکستان کے مظالم کے خلاف شعور بیدار کرنے کی ایک مہم کا آغاز ہوا ہے جس میں تنظیم کی غیر انسانی اور غیر اسلامی کارروائیوں کی مذمت کرتے ہوئے اسے ایک فتنہ قرار دیا گیا ہے۔

    کراچی کا ایک رہائشی 20 مارچ کو ایک پوسٹر پڑھ رہا ہے جس میں تحریک طالبان پاکستان کی کارروائیوں کو غیر انسانی اور غیر اسلامی قرار دیتے ہوئے ان کی مذمت کی گئی ہے۔ کراچی میں انجمن محبان پاکستان نامی ایک تنظیم نے شہر میں تحریک طالبان پاکستان کے تشدد کے خلاف آگہی کی ایک مہم شروع کی ہے۔ [ضیاء الرحمٰن]

    محرم سے قبل کراچی کے کالعدم گروہ سرگرم ہو گئے
    شہر بھر کی دیواروں پر پوسٹر اور دستی بل چسپاں کر دیے گئے ہیں جن میں تحریک طالبان پاکستان کے خودکش حملوں اور شہریوں کے قتل عام کی مذمت کی گئی ہے۔

    یہ مہم انجمن محبان پاکستان نامی ایک غیر سرکاری تنظیم نے شروع کی ہے۔

    انجمن محبان پاکستان: طالبان ‘دائرہ اسلام سے خارج’ ہیں
    انجمن محبان پاکستان کے ایک رہنما کلیم اللہ نے کہا کہ مہم کا مقصد طالبان کے ان مظالم پر روشنی ڈالنا ہے جنہیں پاکستان کے مرکزی دھارے کے ذرائع ابلاغ عام طور پر نظر انداز کر دیتے ہیں۔

    ان پوسٹروں میں مختلف دینی علماء کے فتوے دیے گئے ہیں جنہوں نے طالبان کو ‘دائرہ اسلام سے خارج’ قرار دیا ہے۔ فتووں میں کہا گیا ہے کہ طالبان کے تمام اقدامات اسلام اور انسانیت کی بنیادی اقدار کی نفی کرتے ہیں۔

    کلیم اللہ نے کہا کہ ہم یہ مہم فرقوں اور مختلف مکاتب فکر کے درمیان پائے جانے والے اختلافات سے ہٹ کر چلا رہے ہیں کیونکہ ہمارے خیال میں مسلمانوں کے روپ میں بعض عناصر غیر مسلم طاقتوں کے ہاتھوں میں کھیل رہے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ انجمن محبان پاکستان جلد ہی اپنی اس مہم کو ملک بھر میں توسیع دے گی۔

    کلیم اللہ نے سینٹرل ایشیا آن لائن کے ساتھ گفتگو میں کہا کہ تحریک طالبان پاکستان کے ساتھ روابط رکھنے والے دہشت گرد انسانیت اور اسلام کے دشمن ہیں۔ دہشت گردانہ حملے حرام ہیں۔ انہوں نے کہا کہ تحریک طالبان پاکستان ایک سیاہ قوت ہے اور وہ لوگوں کے سر قلم کرنے، بے گناہ افراد کو قتل کرنے، خودکش حملے کرنے اور مساجد اور صوفیاء کے مزاروں پر حملے کرنے جیسی غیر اسلامی اور غیر انسانی کارروائیوں کے ذریعے اسلام کا نام بدنام کر رہی ہے۔

    انہوں نے دہشت گردی اور بے گناہ مسلمانوں کے قتل و خونریزی کو روکنے کے لئے زیادہ ٹھوس اقدامات اٹھانے کا مطالبہ کیا۔

    انہوں نے کہا کہ تحریک طالبان پاکستان کی انتقامی کارروائیوں کے خوف سے دینی علماء اور ائمہ کی اکثریت طالبان پر بے گناہ مسلمانوں پر حملوں کا الزام عائد نہیں کرتی۔ تاہم اب پانی سر سے گزر چکا ہے۔ اب وقت آ گیا ہے کہ تمام دینی علماء اور شہری معاشرے کے افراد طالبان کے خلاف متحد ہو جائیں اور انہیں غاصب اور غیر اسلامی قرار دیں۔

    عوامی ردعمل
    پوسٹروں کو پڑھنے والے افراد نے انجمن محبان پاکستان کی تعریف کی ہے اور ان کا کہنا ہے کہ اب طالبان کے خلاف اٹھ کھڑے ہونے کا وقت آن پہنچا ہے۔

    سندھ میڈیکل کالج کراچی کے ایک طالب علم ارشد حلیم نے اپنی درس گاہ کی ایک دیوار پر چسپاں پوسٹر پڑھنے کے بعد کہا کہ افغانستان اور پاکستان دونوں کے طالبان دنیا کو یہ غلط پیغام بھیج رہے ہیں کہ مسلمان دہشت گرد ہیں مگر حقیقت میں طالبان اسلام کے دشمن ہیں۔

    مرحوم عالم دین مولانا حسن جان وہ پہلی شخصیت تھے جنہوں نے سر عام طالبان کے تشدد کی مذمت کی اور انہیں غیر اسلامی قرار دیا۔ کراچی کے ایک دینی استاد مفتی اعظم خان نے بتایا کہ طالبان نے جوابی کارروائی کرتے ہوئے انہیں 2007 میں قتل کر دیا تھا۔ مولانا حسن جان کے قتل کے بعد علماء اور دیگر مذہبی عالموں کی ایک بڑی تعداد طالبان کی سر عام مذمت کرنے سے کترانے لگی۔

    مفتی اعظم خان نے سینٹرل ایشیا آن لائن سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ طالبان کے مظالم کی مذمت نہ کرنے والی مذہبی اور سیاسی جماعتیں یا تو ان سے خوفزدہ ہیں یا پھر انہوں نے طالبان کے ساتھ ساز باز کر رکھی ہے۔

    کلیم اللہ نے کہا کہ ہماری مذہبی اور سیاسی جماعتیں غیر ملکیوں کی دہشت گردانہ سرگرمیوں کے بارے میں کھوکھلے بیانات جاری کر رہی ہیں۔ مگر حقیقت تو یہ ہے کہ پاکستانی عسکریت پسندوں کے گروہ اور خاص طور پر طالبان ہی ان تمام ہلاکتوں اور حملوں کے پیچھے ہیں۔

    انہوں نے مزید کہا کہ عسکریت پسند شہریوں پر اس لئے حملے کر رہے ہیں کہ عوام انہیں مسترد کرتے ہیں اور دوسری چیز یہ ہے کہ فوجی کارروائیوں میں انہیں شکست کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

    خان نے کہا کہ معصوم اور نہتے شہریوں خاص طور پر بچوں اور خواتین کا قتل اسلامی تعلیمات کی صریح خلاف ورزی ہے۔

    طالبان کی دہشت گردی میں زیادہ تر عام شہری نشانہ
    اسلام آباد کے ایک تحقیقی ادارے پاک انسٹیٹیوٹ برائے مطالعہ امن کی تیار کردہ پاکستان سلامتی رپورٹ 2011 کے مطابق 2011 میں ملک میں دہشت گردی کے 1 ہزار 9 سو 66 حملوں میں 2 ہزار 3 سو 91 افراد جاں بحق اور 4 ہزار 3 سو 89 زخمی ہوئے۔ ان میں سے تشدد کی بیشتر کارروائیاں طالبان عسکریت پسندوں نے کیں۔

    رپورٹ میں کہا گیا کہ سب سے زیادہ پر آشوب خطہ وفاق کے زیر انتظام قبائلی علاقوں کا تھا جہاں 2011 میں 6 سو 75 حملے ہوئے جبکہ اس کے مقابلے میں 2010 میں ان کی تعداد 7 سو 20 تھی۔ 2011 میں وہاں ہونے والے دہشت گردانہ حملوں میں 6 سو 12 افراد جاں بحق اور 1 ہزار 1 سو 90 زخمی ہوئے۔

    پاک انسٹیٹیوٹ برائے مطالعہ امن کی رپورٹ میں کہا گیا کہ 2011 میں پاکستان میں 45 خودکش حملے ہوئے جبکہ اس کے مقابلے میں 2010 اور 2009 میں ان کی تعداد بالترتیب 68 اور 87 رہی تھی۔ رپورٹ کے مطابق تحریک طالبان پاکستان نے ان میں سے تقریباً تمام حملوں کی ذمہ داری قبول کر لی۔

    ان 45 خودکش بم دھماکوں میں 6 سو 76 افراد جاں بحق اور 1 ہزار 4 سو 62 زخمی ہوئے۔ ان میں سے بیشتر افراد عام شہری تھے جن میں سے 4 سو 77 جاں بحق اور 1 ہزار 2 سو 13 زخمی ہوئے۔

    طالبان عسکریت پسندوں نے عوامی مقامات اور مساجد، گرجا گھروں اور درباروں سمیت مذہبی مقامات کی بے حرمتی کی ہے۔ شیعہ جلوسوں اور امام بارگاہوں، احمدیوں کے عبادت خانوں اور مشنری اسکولوں پر بھی حملے کیے گئے ہیں۔ گزشتہ پانچ سالوں کے دوران 55 پاکستانی عبادت گاہوں پر حملے کیے گئے ہیں اور ان حملوں میں قرآن سمیت مختلف مذاہب کی دینی کتب جل گئیں۔

    طالبان عسکریت پسند جنازوں کو بھی نشانہ بناتے ہیں۔ 12 مارچ کو بڈھ بیر میں ایک جنازے پر بم حملے میں 18 افراد جاں بحق ہوئے

    http://centralasiaonline.com/ur/articles/caii/features/pakistan/main/2012/03/22/feature-01


  • Saleem Safi’s article on a jihadi hypocrite. However, Safi himself showers praise on killers of Hasan Jan and other innocent people:

    یہ کہاں کاانصاف ہے؟
    …جرگہ…سلیم صافی

    وہ جو ہم جیسے گناہگار ہیں، دین کا علم جانتے ہیں اور نہ عمل کے میدان میں آگے ہیں، جو صرف اور صرف اللہ کی رحمت اور نبی رحمت صلی اللہ علیہ وسلم کی شفاعت کے سہارے بخشش کے طلب گار ہیں، ہم جیسے وہ گناہگار لوگ بھی پیغمبر اسلام کی ذات اور دینی شعائر کو مکروہ عزائم کے لئے استعمال کرنے کا سوچتے ہوئے کانپ اٹھتے ہیں لیکن نہ جانے کیوں دین کے بعض نام لیوا اس قبیح فعل کے تسلسل کے ساتھ مرتکب ہوتے رہتے ہیں۔ نام رحمت للعالمین کا استعمال کرتے ہیں لیکن کام وہ کرجاتے ہیں جو آپ کی تعلیمات سے یکسر منافی ہو۔قبیلے کے سرخیل کا اعزاز ان دنوں محمد عطاء اللہ” صدیقی “کو حاصل ہورہا ہے ۔ بھائی آپ کواگر جنگ جیسے اخبار میں نام چھپوانے کا شوق ہے تو کئی اور طریقے ہوسکتے ہیں۔ اس کے لئے آخر پیغمبر اسلام کے مقدس نام کو استعمال کرنے ، جھوٹ لکھنے ، چھپے ہوئے الفاظ کو غلط معنی پہنانے اور دنیا کی نظروں میں ہم جیسے مسلمانوں کے عقیدے سے متعلق ابہام پیدا کرنے کی کیا ضرورت ہے ؟ قارئین میرا کالم اٹھا کر دیکھ سکتے ہیں ، اس میں کہیں فیس بک یا یوٹیوب کا ذکریا حوالہ ہو تو میں گناہگار ۔ اگر کہیں یہ لکھا ہو کہ ہمیں نعوذباللہ پیغمبر اسلام کی توہین پر مشتعل نہیں ہونا چاہئے تومیں مجرم۔ بات فقط یہ تھی صوفی دانشور احمد جاوید صاحب کی اسلامی نظریاتی کونسل کے ایک ہال میں گفتگو کو بنیاد بناتے ہوئے میں نے اس کالم میں یہ واضح کرنے کی کوشش کی تھی کہ قرآن و سنت کی تعلیمات کا منافی عمل بھی ان ہستیوں کی توہین کے زمرے میں آتا ہے ۔ ہم پاکستانی افسوسناک حد تک اس کے مرتکب ہورہے ہیں اور ہمیں احتجاج کے ساتھ ساتھ اس جانب بھی متوجہ ہوکرہمیں اپنے آپ کو حضور کا اچھا اور سچا امتی بنانے کی کوشش کرنی چاہئے لیکن عطاء اللہ ” صدیقی“ نے اپنے کالم میں ایسا تاثر دیا ہے کہ جیسے نعوذ بااللہ میں پیغمبر اسلام کی توہین پر احتجاج کا مخالف ہوں یا مجھے فیس بک اور انٹرنیٹ کی بندش نے پریشان کررکھا تھا۔
    اللہ کی لعنت ہو اس فرد پر جو حضرت محمد کی شان میں کسی بدبخت کی گستاخی پر مضطرب نہ ہو۔ لعنت ہو اس مسلمان پر جو اس عظیم ہستی کی شان اقدس میں گستاخی کے تصور پر تڑپ نہ اٹھے لیکن کیا پیغمبر ﷺ سے محبت کا یہ بھی تقاضا ہے کہ اس کی آڑ میں راسخ العقیدہ مسلمانوں کے دین و ایمان کو مشکوک بنا دیا جائے ؟ کیا اس ہستیﷺ نے مسلمانوں کے خلاف فتویٰ بازی سے منع نہیں فرمایا ہے ؟پیغمبر اسلامﷺ اور صحابہ کرام کی شان میں گستانی کا تصور کفر عظیم ہے لیکن کیا اس کے امتیوں کو ذاتی اور سیاسی مقاصد کے لئے ان کے گستاخوں کی صف میں شامل کرنا ظلم عظیم نہیں؟ اس بندے کا مقام کیا حضورنے جہنم نہیں ٹھہرایا ہے جو راسخ العقیدہ مسلمانوں کے دین و ایمان کے بارے میں شکوک پیدا کرتا ہے ؟
    اللہ تعالیٰ کا لاکھ لاکھ شکر ہے کہ میں نے اپنی زندگی کے جس پہلے احتجاجی جلوس میں شرکت کی ، وہ ملعون سلمان رشدی کے خلاف جلوس تھا۔میرا جب میٹرک کا نتیجہ آرہا تھا تو میں پیغمبرﷺ اور دین اسلام پر غیرت کے جذبے کے تحت افغانستان کے صوبہ کونڑ میں جنگ میں مصروف تھا اور میرے ساتھ جانے والے گواہ آج بھی زندہ ہیں۔ عطاء اللہ ”صدیقی“ یا ان جیسا کوئی اور ہمارا ناقد اگر واقعی دین اور پیغمبرﷺ کے نام پر غیرت کا مظاہرہ کرنا چاہتے ہیں تو میری خدمات حاضر ہیں ۔ میں تمام قارئین کو گواہ بنا کر پیشکش کرتا ہوں کہ عطاء اللہ کوافغانستان لے جانا ، انہیں امریکہ اور ڈنمارک کی فوجیوں کے خلاف جہاد میں مصروف طالبان یا حزب اسلامی کے لوگوں سے ملوانا اور امریکیوں یا ڈنمارک کے فوجیوں کے کیمپ تک پہنچانا میری ذمہ داری ہے، آئیے بسم اللہ کیجئے ۔
    عطاء اللہ ”صدیقی“ صاحب اور ان جیسے دیگر لوگ معصوم اور جذباتی پاکستانیوں کے جذبات سے کھیلنے کی بجائے خود میدان میں آئیں۔ وہ ائیرکنڈیشنڈ کمروں میں بیٹھ کر اللہ اور رسولﷺ کے شیدائی پاکستانیوں کے جذبات سے کھیلتے ہیں۔ یہ لوگ تو صرف دکانداری چمکانے یا حسد کی آگ بجھانے کے لئے اس طرح کی تحریریں لکھ دیتے ہیں لیکن پاکستان کے سادہ لوح اور مخلص مسلمان نوجوان اسی طرح ہی کی تحریروں کو پڑھ کر اپنے جسموں سے بم باندھتے ہیں۔ میں ان لوگوں کی طرح ایئرکنڈیشنڈ کمروں میں بیٹھ کر لوگوں کے جذبات کو نہیں بھڑکا رہا۔ دور طالب علمی میں ایک عرصہ ان لوگوں کے ساتھ افغانستان میں گزارا ہے ۔ اب بھی ہمہ وقت ان سے رابطے کی کوشش کرتا رہتا ہوں۔ یہ جو جسموں سے بم باندھ کر کبھی اسکول ، کبھی پولیس چیک پوسٹ اور کبھی مولانا حسن جان یا مولانا نعیمی جیسے علماء کو نشانہ بناتے ہیں ، ان کی اکثریت مخلص مسلمانوں کی ہے ۔ یہ عطاء اللہ ”صدیقی“ جیسے صرف گفتار کے نہیں بلکہ کردار کے بھی غازی ہیں ۔ وہ پہلے روس سے لڑتے تھے ۔ اب جارح امریکہ سے لڑ رہے ہیں لیکن عطاء اللہ ”صدیقی“ جیسے لوگوں کی تحریروں اور تقریروں نے ان کا رخ پاکستانیوں کی طرف موڑ دیا ہے ۔ جب یہ لوگ اپنی دکانداری کے لئے کسی سیاستدان، کسی صحافی یا کسی عالم کے بارے میں اپنی تحریروں اور تقریروں سے یہ تاثر عام کردیتے ہیں کہ وہ امریکہ کا ایجنٹ ہے ، فوج کا ایجنٹ ہے یا پھر نعوذ باللہ توہین رسالت سے تڑپ نہیں اٹھتے ہیں ، تو وہ مخلص اور سادہ لوح مجاہد اپنے جسموں سے بم باندھ کر ان پاکستانیوں کا خاتمہ کرنے لگ جاتے ہیں۔ میں درجنوں فدائین اور مجاہدین سے ملا ہوں۔ جب ان کے سامنے یہ سوال اٹھاتا ہوں کہ انہوں نے فلاں مسلمان پاکستانی کو کیوں مارنے کا حکم صادر کیا یا کیوں مارنا چاہتے ہیں تو ان کی گفتگو سے یہ نتیجہ سامنے آتا ہے کہ وہ اپنی دانست میں پورے اخلاص کے ساتھ اس پاکستانی مسلمان کو واجب القتل سمجھ رہے ہوتے ہیں اور جب آپ ان کے ساتھ مکالمہ کریں تو وہ دلیل کے طور پر عطاء اللہ” صدیقی“ جیسوں کی تحریریں اور تقریریں پیش کرتے ہیں ۔اسی طرح کی تقریروں اور تحریروں کو انہوں نے اپنے لٹریچر اور پروپیگنڈا سی ڈیز کا حصہ بنا رکھا ہے اور جب سادہ لوح اور عملی مسلمان نوجوان ان کو پڑھتے اور سنتے ہیں تو ان کا خون کھول اٹھتا ہے اور وہ اپنے ہم کلمہ پاکستانیوں کو واجب القتل جان کر ان کے خلاف میدان میں نکل آتے ہیں ۔ افغانستان یا قبائلی علاقوں میں جانے کی ہمت توشاید وہ یا ان کی قبیل کے دیگر لوگ کرسکیں لیکن وہ لاہور اور دیگر شہروں میں گرفتار فدائین سے جاکر مل لیں ۔ ان پر واضح ہوجائے گا کہ ایسے ہی کالموں اور تقریروں سے متاثر ہوکر وہ اس میدان میں اترتے ہیں۔ اسی لئے تو میں کہتا ہوں کہ خودکش حملہ آوروں کے عمل کا اسلام اور پاکستان کو شدید نقصان تو پہنچ رہا ہے لیکن افسوس کہ وہ یہ کام بری نیت سے نہیں بلکہ جنت کی آرزو میں کئے جارہے ہیں ۔ تبھی تو میں اختلاف کے باوجود ان لوگوں کو عظیم سمجھتا ہوں ۔ تبھی تو میں عرض کرتا ہوں کہ یہ لوگ ہماری سوسائٹی کے کریم تھے جو ضائع ہورہے ہیں اور تبھی تو میں کہتا ہوں کہ اصل قصوروار خودکش حملہ آور نہیں بلکہ عطاء اللہ ”صدیقی“ جیسے لوگ ہیں جو انہیں امریکہ اور اسلام دشمنوں کے مقابلے کا صحیح طریقہ سمجھانے کے بجائے محض اپنی دکانداری کی خاطر ان کے جذبات سے کھیلتے رہتے ہیں ۔ آخر یہ کہاں کا انصاف ہے کہ خود تو ایک کالم لکھنے یا پھر ایک تقریر جھاڑنے سے اپنے آپ کو بری الذمہ قرار دیتے ہولیکن دوسروں کے بچوں کو خودکش حملہ آور بننے پر اکساتے ہو اور وہ بھی امریکہ یا کسی غیرمسلم گستاخ کے خلاف نہیں بلکہ اپنے مسلمان پاکستانیوں کے خلاف ۔
    الحمد للہ میں تو کل جس راستے کو پیغمبر اسلام ﷺ کے نام اور دین پر غیرت کا تقاضا سمجھتا تھا ، اس پر عمل کیا اور آج جس کو درست سمجھتا ہوں یا جس کی دوسروں کو تلقین کررہا ہوں، اس پر خود عمل پیرا ہوں۔ آپ اگر احتجاج اور خودکش حملوں کے راستے کو ہی درست سمجھتے ہیں تو آئیے ۔ بسم اللہ کیجئے ۔ افغانستان بھی حاضر ہے اور پاکستان کے اندر کی تربیت گاہیں بھی لیکن یہ تو کوئی بات نہ ہوئی کہ خود ایئرکنڈیشنڈکمروں کے مزے لوٹیں اور دوسروں کے بچوں کو احتجاج اور خودکش حملوں کی تلقین کریں ۔ خود تو اپنے بچوں کو ماں کی گود میں کمپیوٹر اور انٹرنیٹ سے آشنا کرتے ہوئے انگریزی میڈیم اسکولوں میں پڑھائیں اور میرے بچوں کو خودکش حملہ آور بننے کی تلقین کریں۔یہ کہاں کا انصاف ہے ؟

    Source: Jang, 15 June 2010

  • ملک کی ترقی میں رکاوٹ
    Monday, April 4, 2011پروفیسر یحیی خالد, کالم941

    طالبان دین اسلام کے مبلغین کو کہاجاتا ہے اور اسلام کا ماننے والا یہ بھی جانتا ہے کہ اسلام اس سے کیا تقاضا کرتا ہے گنہگار سے گنہگارمسلمان بھی کسی مسلمان کے خون سے ہاتھ رنگنا گناہ عظیم سمجھتا ہے قرآن کریم میں اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے کہ جس نے بھی اس میں کسی کی تخصیص نہیں ہے‘ کسی مومن کو جان بوجھ کر قتل کیا اس کا ٹھکانہ جہنم ہے اور وہ اس میں ہمیشہ رہے گا دوسری بات کہ جو بھی تم سے اچھا سلوک کرے اس سے جوابا بہت ہی اچھا سلوک کرو۔

    کیا یہ لوگ جو خود کو طالبان کہتے ہیں وہ یہ کہہ سکتے ہیں کہ ان کے ہاتھوں کوئی مسلمان شہید نہیں ہوا‘ کیا مولانا حسن جان مرحوم جیسا کوئی پاکباز مومن آج کے معاشرے میں کوئی ہوگا کیا مولانا حسن جان کا قاتل یہ نہیں مانتا کہ اس نے کس بے دردی سے مولانا کو شہید کیا کیا وہ یہ نہیں کہتا کہ میں نے مولانا کو کھڑے نہیں ہونے دیا کہ وہ کھڑے ہو کر کلمہ شہادت نہ پڑھ سکیں اور کیا اس نے مولانا مرحوم کو کلمہ شہادت پڑھتے نہیں سنا تھا اور اگر یہ سب سچ ہے تو کیا قاتل خود کو مسلمان کہہ سکتا ہے ؟ اور یقینا قاتل کو اللہ تعالیٰ کبھی معاف نہیں کریگا اور وہ قرآنی آیت کے مطابق ہمیشہ کیلئے جہنم کا ایندھن ہوگا کیا کرنل امام کی مسلمانی میں کسی کو شک ہے کیا یہ وہ شخص نہیں ہے جس نے طالبان کو اس قابل بنایا کہ وہ روس اور اس کے حواریوں کو افغانستان سے نکال سکیں کرنل امام طالبان کو انتہائی پاک باز اور اللہ کے حقیقی بندے مانتا تھا وہ طالبان کو دنیا کے نیک ترین مسلمانوں میں شمار کرتا تھا اور سب جانتے ہیں کہ طالبان اسے اپنا مرشد مانتے تھے تو پھر یہ کون تھے جنہوں نے اس کے سینے میں گولیاں اتار دیں کیا یہ کرنل امام جیسے پارسا شخص کو شہید کرکے خود کو اسلام کے پیروکار کہہ سکتے ہیں۔

    یہ دو شخص ہم نے تمثیلاً گنوائے ہیں ورنہ ان دہشت گردی کی کارروائیوں میں ہزاروں مسلمان مرد عورت‘ بوڑھے اور بچے موت کی وادی میں چلے گئے ہیں ان کے نزدیک شاید مسلمان کی تعریف کوئی اور ہو ورنہ غیر ملکی اور غیر مسلم دراندازوں کو سارے ہی مسلمان اور پاکستانی برا کہتے ہیں جیسا کہ ریمنڈ ڈیوس کے سلسلے میں انکشافات ہوئے کہ یہ وزیر ستان میں طالبان کے ساتھ قریبی تعلقات رکھتا تھا اور ان کو ٹریننگ دینے میں بھی اس کا ہاتھ تھا تو لازماً یہ ریمنڈ جیسے ہی لوگ ہیں جو ان عسکریت پسندوں کو اسلحہ سپلائی کرتے ہیں ریمنڈوں کا ایجنڈا ہی یہ ہے کہ پاکستان کسی بھی طرح ترقی نہ کرسکے جہاں بھی پاکستان کی ترقی کیلئے کوئی کام ہورہا ہے چاہے وہ معدنیات کا حصول ہے یا تیل و گیس کی تلاش اس میں مصروف اہلکاروں کو نہ صرف عسکریت پسندوں کی جانب سے دھمکیاں ملتی ہیں بلکہ ان پر قاتلانہ حملے بھی ہوتے ہیں کتنے ہی غیر ملکی انجینئر اور کارکن جو ملک میں معدنی دولت کی تلاش میں مصروف تھے یا تیل و گیس کے ذخائر تلاش رہے تھے وہ ان ظالموں کا نشانہ بنے تو معلوم یہ ہوا کہ ان کا ایجنڈا اسلامی حکومت کا قیام نہیں ہے بلکہ پاکستان کی ترقی میں روڑے اٹکانا ہے اگر ان کے پیش نظر اسلام اور پاکستان کی ترقی ہوتی تو وہ کم از کم علماء حق اور ملکی معاشی ترقی میں ہاتھ بٹانے والوں کا قتل نہ کرتے۔

    مولانا فضل الرحمان پاکستان میں طالبان کے سب سے بڑے حامی ہیں اور وہ یہ بات کسی سے پوشیدہ بھی نہیں رکھتے وہ حکومت میں تب بھی اور آج حکومت میں نہیں ہیں تب بھی طالبان کے خلاف فوجی آپریشن کے سخت مخالف ہیں وہ کئی بار پیش کش کرچکے ہیں کہ وہ طالبان اور حکومت کے درمیان گفت و شنید میں کردار ادا کرسکتے ہیں مگر ان کی کبھی بھی نہیں سنی گئی ہمار ا خیال تھا کہ مولانا صاحب واقعی طالبان سے حکومت کی گفت و شنید میں معاون ہوسکتے ہیں مگر معلوم ہوا کہ ان کو بھی کرنل امام کیطرح یہ غلط فہمی ہے کہ طالبان ان کی بات کو نہیں ٹالیں گے کرنل امام بھی اسی غلط فہمی میں مارے گئے اور اب مولانا صاحب بھی طالبان کی ہٹ لسٹ میں دکھائی دیتے ہیں۔

    کسی ناعاقبت اندیش نے مولانا صاحب پر حملوں کو اے این پی سے جوڑنے کی کوشش کی ہے جو یقینا قابل مذمت ہے چونکہ اے این پی کی لیڈر شپ تو عرصے سے دہشت گردی کا شکار ہے وہ تو خود چاہتی ہے کہ ہمارا صوبہ اس خون ریزی سے نجات پا سکے تو وہ کس طرح مولانا کے خلاف ایسی حرکت کا سوچ سکتی ہے ہمارا اپنا خیال ہے کہ یہ وہی کوئی ریمنڈی طاقت ہے جومولانا اور طالبان کے درمیان دوریاں ڈال کر اس خطے میں امن کی طرف گامزن ہونے میں رکاوٹ ہے ہماری حکومت اور خاص کر خیبر حکومت کو اس طرف سنجیدگی سے توجہ دینے کی ضرورت ہے کہ وہ قبائل اور بندوبستی ایریا سے ریمنڈوں کا اخراج کرے تاکہ اس خطے میں بھی امن کی فاختاؤں کی پرواز ہوسکے

    http://www.dailyaaj.com.pk/?p=20143

  • مذہب کے نام پر

    ہارون رشید
    بی بی سی اردو ڈاٹ کام، اسلام آباد

    پاکستان میں مذہب کے نام پر گورنر پنجاب سلمان تاثر پہلی اہم شخصیت نہیں ہیں اور نہ شاید آخری ہوں جنہیں جان سے ہاتھ دھونا پڑا۔ پاکستان میں شدت پسندی کے رحجان کے پھیلاؤ سے ان ہلاکتوں میں بھی اضافہ ہوا ہے۔

    سلمان تاثیر اگر ناموس رسالت قانون میں ترمیم کی بات کرتے ہلاک ہوئے ہیں تو مذہبی رہنما مفتی سرفراز احمد نعیمی کو لاہور میں جبکہ جعمیت علماء اسلام کے مولانا حسن جان کو پشاور میں خودکش حملوں کی مبینہ مخالفت کی پاداش میں جان سے ہاتھ دھونے پڑے۔

    خیبر پختونخوا کی بڑی جماعت عوامی نیشنل پارٹی کے رہنما اسفندیار ولی تاہم خوش قسمت تھے کہ خودکش حملے میں محفوظ رہے لیکن ان کی جماعت کے عالم زیب خان کی طرح کے کئی رہنما شدت پسندوں کے ہاتھوں ہلاک ہوچکے ہیں۔ ان میں صوبائی وزیر اطلاعات میاں افتخار حسین کے صاحبزادے کا قتل بھی شامل ہے۔

    اسی صوبے میں پولیس کو بھی شدت پسندوں کی جانب سے دو اعلی ترین افسران کا نقصان برداشت کرنا پڑا تھا۔ یہ دو اعلیٰ شہرت کے حامل افسر صفوت غیور اور ملک سعد تھے۔

    مردان میں مقیم ڈاکٹر محمد فاروق جوکہ سوات یونیورسٹی کے وائس چانسلر بھی تھے اپنے معتدل اسلامی نظریات کی وجہ سے گزشتہ دنوں ہلاک ہوئے۔ لیکن اسی ملک میں جاوید احمد غامدی جیسے مذہبی رہنما بھی ہیں جنہیں اپنے نظریات کی وجہ سے ملک چھوڑنا پڑا ہے

    فروری دو ہزار سات کو پنجاب کی وزیر برائے سماجی بہبود ظل ہما عثمانکو گولیاں مار کر ہلاک کیا گیا۔ ابتدائی تفتیش میں ملزم کا کہنا تھا کہ وہ سمجھتا ہے کہ عورتوں کا اعلیٰ عہدوں پر فائز ہونا اللہ کے احکام کی خلاف ورزی اور مردوں کو محکوم بنانے کی کوشش ہے۔

    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2011/01/110104_religious_killings_haroon_ha.shtml

    …….

    ۔ پاکستان کے ایک قابلِ احترام عالم اور صوبہ سرحد کے شہرپشاور کی درویش مسجد کے امام مولانا حسن جان نے ایک بار جمعہ کے خطبے میں اس طرح کے اقدامات پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ کسی شخص کی طرف سے قانون اپنے ہاتھ میں لینا اسلامی تعلیمات کی صریح خلاف ورزی ہے۔ اس کے فوراً بعد ہی انہیں جان سے مارنے کی دھمکیاں ملنے لگیں اور بالآخر ستمبر 2007 میں طالبان عسکریت پسندوں نے انہیں گولی مار کرشہید کردیا۔

    http://www.commongroundnews.org/article.php?id=23942&lan=ur&sp=0

    ……..

    دیوبندی بمقابلہ تکفیری
    Written by سید علی شیرازی
    Tuesday, 12 July 2011

    مولانا فضل الرحمن پر ہونے والے حالیہ خودکش حملے اور اس سے بھی پہلے مولانا حسن جان کی شہادت، رائج دیوبندی علماء اور تکفیری جہادیوں کے درمیان بڑھتی ہوئی چپقلش کا شاخسانہ ہے، بلکہ اگر اس کو ایک بڑے اُفق کی چھوٹی سی تصویر کہا جائے تو بےجا نہ ہو گا۔

    http://www.wilayat.net/index.php?option=com_content&view=article&id=1106:%D8%AF%DB%8C%D9%88%D8%A8%D9%86%D8%AF%DB%8C-%D8%A8%D9%85%D9%82%D8%A7%D8%A8%D9%84%DB%81-%D8%AA%DA%A9%D9%81%DB%8C%D8%B1%DB%8C&catid=118:%D9%85%D9%88%D8%AC%D9%88%D8%AF%DB%81-%D8%B5%D8%AF%DB%8C-%DA%A9%DB%92-%D8%BA%D9%84%D8%B7-%D9%BE%D8%B1%D9%88%D9%BE%DB%8C%DA%AF%D9%86%DA%88%DB%92

  • خودکش بمبار تدفین کے عمل سے محروم
    علماء کا کہنا ہے کہ خودکش بمبار انتہائی بدقسمت لوگ ہیں
    اشفاق یوسف زئی
    2012-03-28

    ٹیکسٹ سائز ری سیٹ کریں
    پشاور – علماء کا کہنا ہے کہ خودکش بمبار اس غلط فہمی میں مبتلا ہیں کہ وہ مرنے کے بعد جنت میں داخل ہوں گے۔

    پاکستان کے علاقے مردان چھاؤنی میں 12 فروری 2011 کو سوگواران ایک خودکش بم دھماکے میں جاں بحق ہونے والے معصوم افراد کے جنازے میں شریک ہیں۔ خودکش حملوں میں جاں بحق ہونے والے افراد کے برعکس خودکش بمبار اسلامی طریقے سے تدفین سے محروم رہتے ہیں۔ [اشفاق یوسف زئی]

    پشاور کے علاقے داؤد زئی میں 18 مارچ کی تصویر میں نظر آنے والے امام اجمل شاہ نے سینٹرل ایشیا آن لائن سے گفتگو میں کہا کہ خودکش بمباروں کے رہنماؤں کے وعدوں کے باوجود وہ جنت میں داخل نہیں ہوں گے۔ [اشفاق یوسف زئی]
    متعلقہ مضامین
    دو ہزار گیارہ میں پاکستان اور افغانستان میں عسکریت پسندوں کی امن کو تباہ کرنے کی کوششیں
    ملا برادر کی گرفتاری سے پاکستان میں افغان طالبان کی موجودگی کی تصدیق
    طالبان کو سنگین مالی مسائل درپیش
    پار ہوتی، مردان کے مولانا امین اللہ شاہ نے کہا کہ خودکش بمبار روئے زمین پر سب سے بدقسمت لوگ ہیں کیونکہ مرنے کے بعد انہیں نہ تو عام مسلمانوں کی طرح غسل دیا جاتا ہے اور نہ ہی ان کی اسلامی طریقے سے تدفین ہوتی ہے۔

    مردان کے علاقہ پار ہوتی کے محلہ نیو اسلام آباد میں امام کی حیثیت سے خدمات سر انجام دینے والے مولانا امین اللہ شاہ نے کہا کہ انہیں رحمان اللہ کی حالت پر افسوس ہے جسے نماز جنازہ پڑھائے بغیر ہی دفن کر دیا گیا۔ 17 سالہ رحمان اللہ نے گزشتہ سال ستمبر میں افغان اور اتحادی فورسز پر خودکش حملہ کیا تھا۔

    رحمان اللہ کے والد غفران خان ایک دیہاڑی دار مزدور ہیں اور انہیں اپنے بیٹے کی موت کا اب تک غم ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ طالبان نے رحمان اللہ کو اغوا کر کے اس کے ذہنی خیالات تبدیل کر دیے تھے۔ انہیں اپنے بیٹے کی لاش یا اس کی تدفین کا عمل دیکھنے کا موقع نہیں ملا اور انہیں اپنے بیٹے کی موت کا تاحال یقین نہیں ہے۔

    عسکریت پسندوں کی گرفت سے آزاد ہونے والے بعض افراد
    اسی علاقے کے ایک اور لڑکے سیف اللہ کو اس وقت اپنی جان بچانے کے لئے فرار ہونا پڑا جب طالبان نے اس پر الزام لگایا کہ اس نے مئی 2005 میں القاعدہ کے سینئر رہنما ابو فراج اللبی کی مردان سے گرفتاری سے پہلے انٹیلی جنس ایجنسیوں کو معلومات فراہم کی تھیں۔

    اس کے والد نے بتایا کہ طالبان سیف اللہ کو اغوا کرنے میں ناکام رہے اور وہ بالآخر جرمنی پہنچ گیا۔ دیگر افراد نے اس کے والد کو اپنے بیٹے کے بحفاظت جرمنی پہنچ جانے پر مبارک باد دی ہے۔ سیف اللہ کے والد نے کہا کہ مجھے پتا ہے کہ اگر طالبان میرے بیٹے کو خودکش بمبار کے طور پر استعمال کر لیتے تو وہ غسل، نماز جنازہ اور تدفین سے محروم رہ جاتا، جو کہ مسلمانوں کے لئے موت کے بعد اہم رسومات ہیں۔

    پشاور کے علاقے داؤد زئی کے ایک امام اجمل شاہ نے واضح لفظوں میں ان رسومات کی اہمیت کے بارے میں بتایا۔

    انہوں نے طالبان کی جانب سے نوعمر لڑکوں کو خودکش بمبار بننے کی ترغیب دینے کے وعدوں کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ خودکش بم دھماکے قابل مذمت ہیں۔ انہوں نے کہا کہ خود کو دھماکے سے اڑا کر بے گناہ مسلمانوں کو ہلاک کرنے والے افراد کے لئے جنت میں کوئی جگہ نہیں جیسا کہ ان کے تربیت کاروں نے ان سے وعدہ کیا تھا۔

    طالبان کے ذہنی خیالات بدلنے کے طریقے
    طالبان کے بھرتی کار نیم خواندہ، بے روزگار نوجوانوں کو اغوا کرنے یا بہلانے پھسلانے کے بعد انہیں پراپیگنڈا مواد پڑھنے کو دیتے ہیں اور جہادی وڈیوز دکھاتے ہیں تاکہ وہ دہشت گردی پر کاربند ہو جائیں۔ وہ ان نوجوانوں کو یہ بات کبھی نہیں بتاتے کہ خودکش حملہ کرنے سے وہ اسلامی طریقے سے تدفین اور نماز جنازہ کی رسومات کے پیدائشی حق سے محروم ہو جائیں گے۔ وہ قرآن میں جنت میں جانے کی آیات کی غلط تشریح بھی کرتے ہیں۔

    شاہ نے جذباتی انداز میں سینٹرل ایشیا آن لائن کو بتایا کہ یہ انتہائی المناک بات ہے کہ خودکش حملے کرنے والے نوجوانوں کے خیال میں وہ اللہ تعالٰی کی خوشنودی کے لئے یہ کام کر رہے ہیں۔ حقیقت میں انہیں خدا کے قہر کا سامنا کرنا پڑے گا۔

    انہوں نے کہا کہ اس بات میں کوئی اختلاف نہیں کہ اسلام میں خودکش حملے حرام ہیں۔ خدائی احکامات کی نافرمانی کرتے ہوئے خودکش بمبار بننے کا انتخاب کرنے والے افراد کا ٹھکانہ دوزخ ہے۔

    بھرتی کار نوجوانوں کے مذہبی جذبات سے کھیلتے ہوئے ہدف بنائے جانے والے افراد کو “کافر” قرار دیتے ہیں اور انہیں موت کی سزا سنانے کے فتوے جاری کرتے ہیں۔ یہ تربیت کار اپنے لڑکوں کی گمشدگی پر غمگین خاندانوں کو بتاتے ہیں کہ وہ “شہید” ہو چکے ہیں۔

    خودکش بمباروں کا شرمناک انجام
    لیڈی ریڈنگ اسپتال کے شعبہ حادثات و ہنگامی صورت حال کے سربراہ ڈاکٹر شراق قیوم نے بتایا کہ حکام خودکش بم دھماکوں کا نشانہ بننے والے افراد کی جسمانی باقیات کو سنبھال کر رکھتے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ طبی کارکن ڈی این اے کے ذریعے ناموں کی شناخت ہونے کے بعد پہلے دفنائے گئے افراد کو قبر سے نکال کر دوبارہ دفن کرتے ہیں۔

    تاہم خودکش بمباروں کی جسمانی باقیات کے ساتھ مختلف سلوک کیا جاتا ہے۔

    انہوں نے پورے پاکستان میں جاری رواج کے حوالے سے کہا کہ ہم خودکش بمباروں کی باقیات کو کبھی دفن نہیں کرتے، انہیں فورنزک معائنوں کے مقاصد کے لئے استعمال کیا جاتا ہے۔

    ڈاکٹر قیوم نے کہا کہ خودکش بمبار جنازے کے مستحق نہیں ہیں کیونکہ عوام ان کی کارروائیوں سے نفرت کرتے ہیں۔ خودکش بمباروں کی باقیات کی یہ توہین اس لحاظ سے انتہائی غیر معمولی ہے کہ پاکستان میں تو ایسے افراد کی بھی غائبانہ نماز جنازہ پڑھائی جاتی ہے جو بیرون ملک انتقال کر گئے تھے اور ان کی لاشیں وطن واپس نہیں لائی جا سکتیں۔

    شبقدر کے رہائشی رحیم اللہ نے کہا کہ خودکش بمبار کا کردار اختیار کرنا اسلام چھوڑنے کے مترادف ہے کیونکہ اس میں یہ بات واضح طور پر کہی گئی ہے کہ ایک شخص کا قتل پوری انسانیت کے قتل کے مترادف ہے۔ رحیم اللہ کا 19 سالہ بیٹا قاری نقیب اللہ ایک خودکش بمبار تھا جس نے مارچ 2011 میں افغانستان کے شہر قندھار میں اتحادی فوجیوں پر حملہ کیا تھا۔ اس حملے میں 10 فوجی جاں بحق ہو گئے تھے۔

    چار سدہ کے علاقے سرخ ڈھیری کا رہائشی واحد اللہ جنوری 2008 میں لاپتہ ہو گیا۔ دو ماہ بعد طالبان عسکریت پسندوں کے ایک گروپ نے اس کے بزرگ والد جمعہ گل کو مطلع کیا کہ ان کا “شہید” بیٹا جنت میں چلا گیا ہے۔

    والد نے سینٹرل ایشیا آن لائن سے گفتگو میں کہا کہ ایک دن علی الصبح طالبان نے جب مسجد میں داخل ہو کر مجھے یہ خبر سنائی تو پہلے مجھے یقین ہی نہیں آیا۔ میری ناپسندیدگی کے باوجود وہ مجھے مبارک بادیں دیتے رہے مگر میں اپنے بیٹے کے اس اقدام پر اب بھی لعنت ملامت کر رہا ہوں۔

    واحد اللہ کے والد نے اپنے بیٹے کا سوگ تنہا ہی منایا۔

    انہوں نے کہا کہ کسی کی موت پر تعزیت کرنا رحم دلی کی ایک اہم نشانی ہے جس کا اظہار نبی محمد (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) اور ان کے پیروکاروں نے بھی کیا تھا مگر میں انتہائی بدقسمت ہوں کہ میرے اکلوتے بیٹے کی موت پر کسی شخص نے بھی تعزیت نہیں کی۔ لوگ خودکش حملوں کو ناپسند کرتے ہیں اور اسی وجہ سے کسی نے بھی میرے ساتھ تعزیت نہیں کی۔

    انہوں نے کہا کہ اس طرح کی اموات والدین کے لئے تکلیف کا باعث ہیں اور انہیں بالکل یہ امید نہیں ہے کہ اللہ خود کو دھماکے سے اڑانے اور اسلامی احکامات کی خلاف ورزی کرنے والے ان کے بیٹوں پر کوئی رحم کرے گا۔

    جمعہ گل نے مزید کہا کہ خودکش حملہ آوروں کے لئے کوئی شخص بھی “اللہ اس پر رحمت نازل کرے” یا “اس کی روح کو سکون پہنچائے” جیسے رحم دلانہ الفاظ نہیں کہتا جس سے ان کے اہل خانہ کی تکلیف میں کئی گنا اضافہ ہو جاتا ہے۔

    اسلام میں خود کشی حرام ہونے کے باوجود وہ لوگ جو خود کشی کرتے ہیں رشتہ داروں سے رسم غسل، نماز جنازہ اور دفن ہوتے ہیں- لیکن خود کش بمبار جو دوسروں کو مارتے ہیں ان کو کویئ قبول نہي کرتا اور اسلامی تعلیمات کے مطابق رسومات کی تردید ہوتی ہے، شاہ نے کہا

    خودکش بمباروں کے اہل خانہ کو تمام زندگی ایک اور دکھ بھی جھیلنا پڑتا ہے اور وہ ان کی قبر کا نہ ہونا ہے جس کی وجہ سے دوست رشتہ دار مغفرت کی دعا کرنے کے لئے نہیں جا سکتے۔

    http://centralasiaonline.com/ur/pakistan-articles/caii/features/pakistan/main/2012/03/28/feature-01

  • Very good work

    How cruel these Takfiris are, even killing their own TEACHERS?

    Allah bless him

  • [url=http://www.extorque.com]cheap nfl jerseys china[/url]The Department of Justice Office of Inspector General report on “Fast and Furious” released yesterday seemed anticlimatic given the intense interest the controversial operation received since news about it first leaked out. The Bureau of Alcohol, Tobacco, Firearms and Explosives (ATF) had some experience with a similar operation called “Wide Receiver” that should have raised red flags in the chain of command before launching Fast and Furious, according to the report. DOJ Inspector General Michael Horowitz was expected to testify before lawmakers today about his report.

    [url=http://www.vripmaster.com]michael kors outlet[/url]What is your favourite word?I afraid I do use a lot. It a very adaptable word. In You Beautiful I have the line high and the record company asked me to remove the swear word.

    [url=http://www.extorque.com]cheap nfl jerseys from china[/url]The safety aboard that panels is actually unexpectedly assured making absolutely no breathing space while you liable complain. Entry panels tend to be warmth insulated in addition to good resistant. They will considerably develop a long lasting impact because your own website visitors.

  • [url=http://www.vripmaster.com]michael kors outlet online store[/url]I never saw her face. She was always moving too fast. I knew her only for her shiny helmet, blond ponytail, oversized basketball jersey and dumb guts.

    [url=http://www.extorque.com]cheap nfl jerseys from china[/url]It all came down to Jay Sario versus Mila Hermanovski. This episode was Part I of the Season 7 finale. To be honest, I don’t really have a favorite designer that I’m rooting for nor do I have one that I so despise that I would root for anyone but him or her..

    [url=http://www.extorque.com]nfl jerseys from china[/url]Equipped with Koby, The goal was to gently manipulate the tissue in the region of the lymphatic system and ear canal to open the inner ear and prevent fluid buildup. It worked well. Cohen says her son hasn’t had an ear infection since his visits to the clinic finished almost a year ago.

  • [url=http://www.ditchdaredo.com/nfljerseys/?p=Women+Rob+Gronkowski+Patriots+Nike+Jersey]Women Rob Gronkowski Patriots Nike Jersey[/url]Gold watches are the most expensive timepieces out in the market. Hence, blindly picking any watch in this category is not a wise man’s job. You need to do your research well and explore all the sources available to find the best looking gold watch that fits in your budget. If you are on a hunt for gold watches, it’s obvious that you are a person who gives more importance to the look of the watch than the features it comes with. However, it would be really disappointing to find your watch not functioning just because a few drops of water got into it while washing your hands. Likewise, it would be really irritating to see scratches on your most precious watch. So, make sure that the watch you buy is water resistant as well as resistant to shock and scratches. The whole idea is to pick a precious watch that you can even pass to your upcoming generation, a watch that can last for decades. There are even gold watches (or as the Danes say guldure Uniwatches) that come embedded with costly gems and stones. You can check out the expensive range of watches, if you are looking for a timepiece that suits your wedding or party suit. But always keep in mind that such watches are not designed to suit the daily use and always keep them in the box they are supplied in after use to protect them from scratches and other sorts of damages.

    [url=http://www.ditchdaredo.com/nfljerseys/jackson/?tag=hotels+jackson+new+jersey]hotels jackson new jersey[/url]The event will kick off with a VIP reception and live auction by Jamie Niven of Sotheby’s, followed by a cocktail party and silent auction. The honorary committee includes notables such as Giorgio Armani, Samantha Boardman, Tory Burch, Simon Doonan, Timothy Greenfield Sanders, Amanda Hearst, Lydia Hearst Shaw, Michael Kors, Ralph Lauren, Isaac Mizrahi, Patrick McMullan, Narciso Rodriguez, Kate and Andy Spade and Vera Wang.

    [url=http://www.ditchdaredo.com/nfljerseys/green-bay-packers/?p=philadelphia+eagles+kelly+green+jersey]philadelphia eagles kelly green jersey[/url]Some savvy buyers keep track of sales and outlet prices and purchase bags at lower prices and resell them on Ebay or Overstock for profit. This is one of the only other ways to buy and sell Coach Handbags to the public.Be PreparedMake sure if you do find a retail store or an online store front that sells Coach products at discounted prices that they can certify that the merchandise is authentic.

  • [url=http://cosmopolis.com/nfljerseys/?p=Women+Brandon+Flowers+Chiefs+Nike+Jersey]Women Brandon Flowers Chiefs Nike Jersey[/url]”Steve Smith has continued to grow and develop as an inside receiver, which I think all of us expected,” offensive coordinator Kevin Gilbride said. “But he also did a great job when he was outside, which is something I don’t think all of us had anticipated. He’s just a complete, all around receiver.”.

    [url=http://www.notrench.net/nfljerseys/?p=peyton+manning+kids+jersey+cheap]peyton manning kids jersey cheap[/url]At 2000 miles, I changed the original oil and put in 5W20 full synthetic oil. Is it normal for Ford engines to use some oil? I know that 1 QT in 5000 miles is not terrible but the engine is brand new. Did I make a mistake by switching to synthetic oil so early? Any ideas Frank or anyone?.

    [url=http://cosmopolis.com/nfljerseys/?p=Women+Darrelle+Revis+Jets+Nike+Jersey]Women Darrelle Revis Jets Nike Jersey[/url]Then tragedy struck. A horrible plan crash where some lost their lives and OK State had to go out and play a tough football game. It was an amazing game that came down to the wire and they were upset by a tough Iowa State team and the run looked to possibly be over.

  • [url=http://www.vripmaster.com]www.vripmaster.com[/url]Due to its oh so wearable versatility, women have found that whatever their size, there are so many styles to choose from its easy to find one to suit their frame.Floaty ones, voluminous ones, tiered ones, clingy ones and draped ones. Casual ones, glamorous ones, floral print ones, retro patterned ones and plain block colors. The longer length is cool, sexy and very feminine”Since it reached the stores in 2007 the floor sweeping maxi dress become a fashion statement for many women.The Pantone Color Report Spring 2008, launched for New York Fashion Week in September 07, features 2008 color palettes showcase by designs of tiered maxi dresses (Bill Blass), elegant bandeau drapes (Michael Kors), and well cut strappy, flowing gowns (Tracy Reese).So with the maxi once again hitting the high street for 2008, if you are reluctant to accept the demise of last year’s mini dress, here are some arguments in favor of the maxi:10 Reasons to Love the Maxi Dress.Celebrity fashion comes to the high street at affordable prices.

    [url=http://www.vripmaster.com]michael kors outlet store[/url]An argument ensues, the passenger calls the flight attendant an expletive. The flight attendant’s face gets red, he gets on the intercom and curses out the entire plane load of people. He grabs a strategically placed Bud Light, his luggage, and deploys the emergency chute to the plane and exits.

    [url=http://www.extorque.com]cheap nfl jerseys from china[/url]10. Food They’re teenagers, remember? Popular items they like to get include huge bags of Skittles, large jars of Nutella and fancy chocolates. By fancy chocolates I do not mean those chocolates with a gooey cherry in the center.

  • [url=http://www.ditchdaredo.com/nfljerseys/?p=Women+Andrew+Luck+Colts+Nike+Jersey]Women Andrew Luck Colts Nike Jersey[/url]His design won again in Episode Three. Designers were paired for this Lexus challenge. Each received a key that would fit one particular car. Opening the same car determined the partner. Because the show was nominated for an Emmy, Tim Gunn assigned the teams of two to create an outfit for the award show’s Red Carpet. The designers designed for designers because the models this time were ex participants, including last year’s winner.

    [url=http://www.ditchdaredo.com/nfljerseys/jj-watt/?tag=nike+jj+watt+jersey]nike jj watt jersey[/url]When you are primping for a night out with a girlfriend or you want to catch the eye of the cute barista at Starbucks, you may be guilty of over thinking your outfit choice. Would you like to know the best thing you can put on when making your third coffee run of the day or having brunch with your best friend on Sunday? A pair of denim shorts or a denim skirt, a simple tank top, and sandals; that’s it. There is nothing sexier to a man than a woman showing off a little skin while still looking approachable. Steve Santagati writes in his book that legs are a powerful force for a woman that should be taken advantage of; which leads to the next principle.

    [url=http://www.ditchdaredo.com/nfljerseys/?p=Women+Ben+Roethlisberger+Steelers+Nike+Jersey]Women Ben Roethlisberger Steelers Nike Jersey[/url]It also boasts the same pronounced bonnet bulge as the XF, along with neatly styled bright red tailights. Described by Jaguar as being even more radical than the XF, the XJ gets a sleeker, more coupe like roofline, which mixes with a low nose and high tail to result in a really sporty shape. See our scoop shots of the new XJ.

  • Many are fantastic produce by way of loads of apparel. These products always become peoples’ interest, together with I’ve truly received various compliments on buy wow gold. My partner and i really enjoy safest wow gold, but, Hopefully they will endure for several years of one’s time. Thus far I’ve had absolutely no complications with anything at all! Really enjoy fastest wow gold– my best pair straight from the 9 couples i personal!