Newspaper Articles Original Articles Urdu Articles

Slaughterhouse in mad house – Taliban in Pakistan

Pagal khanay mein zabah khana – by Mohammed Hanif

پاگل خانےمیں ذبح خانہ

’تو پھر کیا تمام پنجابی طالبان، وزیرستان ہجرت کر جائیں گے یا ایک چھوٹی سے خلافت ملتان اور رحیم یار خان کے بیچ میں بھی قائم ہو گی‘

گذشتہ ہفتے ایک غیر صحافی دوست نے سوال پوچھا کہ آخر پاکستانی طالبان کے سیاسی مقاصد کیا ہیں۔ میں نے اسکو سنی سنائی باتیں بتائیں لیکن اسے کیا یقین آنا تھا مجھے خود اپنے جواب پر یقین نہیں آیا۔ تب سے میں ہر صحافی، دانش ور سے پوچھتا ہوں، ادارتی صفحے کھنگالتا ہوں اور جو جواب ملتے ہیں اس سے میرے ذہن میں مزید سوال اٹھتے ہیں۔ اب تک ملنے والے جوابات اور میرے سوال در سوال کچھ یوں ہیں۔ جواب پہلے ہے سوال بعد میں۔

ج: پاکستانی طالبان، افغانستان کے طالبان کے ساتھ مل کر امریکی فوجوں کی واپسی چاہتے ہیں اور یہ چاہتے ہیں کہ پاکستان قبائلی علاقوں میں مداخلت نہ کرے تاکہ وہ اپنے قبائلی رسم و رواج اور شریعت کے مطابق زندگی گزار سکیں۔

س: تو پھر کیا تمام پنجابی طالبان وزیرستان ہجرت کر جائیں گے یا ایک چھوٹی سے خلافت ملتان اور رحیم یار خان کے بیچ میں بھی قائم ہوگی؟

ج: پاکستانی طالبان کا کوئی وجود نہیں یہ صرف قبائلی انتظام ہے۔ خون کا بدلہ خون۔ پاکستانی فوج نے ان پر چڑھائی کی۔ وہ صرف بدلہ لے رہے ہیں۔

س: اگر یہ صرف قبائلی انتقام ہے تو گزشتہ دہائی میں شیعوں سے اور اس سے پہلے قادیانیوں سے کون سا انتقام لیا جا رہا تھا؟

ج: یہ تحریک اس عالمی اسلامی نشاۃ الثانیہ کا حصہ ہے جو نو گیارہ کے بعد شروع ہوئی۔ یہ تحریک اس وقت تک جاری رہے گی جب تک مسلمانوں کا ازلی دشمن امریکہ گھٹنے نہیں ٹیک دیتا۔

س: اس عالمی تحریک کے پوسٹر بوائے اسامہ بن لادن ہیں اور گیارہ نو سے پہلے ان کا سیاسی مشن تھا سعودی عرب میں اسلامی نظام کا نفاذ۔ سعودی عرب میں اسلامی نظام کا نفاذ؟ ہمیں تو بچپن سے پڑھایا گیا تھا کہ سعودی عرب وہ واحد جگہ ہے جہاں اسلامی نظام موجود ہے۔ تو اب کیا مقصد ہے؟ کیلیفورنیا میں اسلامی نظام کا قیام؟ اور کیا یہ عظیم مقصد پشاور کے معصوم بچوں کو زندہ جلائے بغیر حاصل کیا جاسکتا ہے؟

ج: آپ واقعی توقع رکھتے ہیں کہ قبائلی پٹھان کسی سیاسی منشور پر عمل کر رہے ہیں؟ یہ سوال ہی لغو ہے۔

’میڈیا میں اور مسجدوں میں انکا دفاع کرنے والے کس کے ایجنٹ ہیں‘

س: الیاس کشمیری، ڈاکٹر عقیل، حاجی اسحٰق، اکرم لاہوری، مولانا مسعود اظہر نہ تو قبائلی ہیں نہ پٹھان۔ یہ سب پاکستان میں کبھی کسی ایجنسی، کبھی کسی مذہبی جماعت کے ہیرو بھی رہے ہیں۔ تو کیا یہ سب لوگ بھی طالبان کے ساتھ تعلق بنانے کے بعد پٹھان ہو گئے ہیں؟ کیا ان سادہ دلوں کا بھی کوئی سیاسی منشور نہیں ہے۔ اور کیا اس نامنشور پر عمل کے لیے ضروری ہے کہ غریبوں کے بچے بارود اور کیلوں سے بھری جیکٹیں پہنا کر اڑادیے جائے؟

ج: یہ سب امریکہ، اسرائیل اور بھارت کے ایجنٹ ہیں۔

س: سب کے سب؟ اور میڈیا میں اور مسجدوں میں انکا دفاع کرنے والے کس کے ایجنٹ ہیں؟

ج: یہ ملک ایک پاگل خانہ ہے۔مصری عالم سید قطب کے پیروکاروں کے ذہن میں آیا کہ اس پاگل خانے کے بیچ ایک ذبح خانہ قائم کر دیا جائے تو سارے پاگل اپنے کام چھوڑ کر یا تو تالیاں بجائیں گے، یا روئیں گے، یا خون میں ہاتھ دھو کر اپنے چہروں پر ملیں گے۔گوشت کے لوتھڑے بھنبھوڑیں گے، ڈر کے سجدوں میں گر جائیں گے، ذبح خانے میں سجدوں میں جھکی گردنیں کاٹی جائیں گی، پرانی قبروں سے ڈھانچے نکال کر انہیں چوراہوں پر پھانسی دی جائے گی۔ چھوٹے بچوں کو چھوٹی قبروں میں دفنا کر اللہ کی رضا قرار دیا جائے گا۔ ذبح خانہ تکبیر کے نعروں سے گونجے گا۔ اور یوں سارے پاگل سید قطب کے خواب کی تعبیر پائیں گے اور بخشے جائیں یا نہ جائیں پاگل خانے کی پاگل زندگی سے نجات ضرور پائیں گے۔

س: آمین ثم آمین

War and politics

Reality check

Friday, October 30, 2009
Shafqat Mahmood

Their claim of fighting for Islam was always a sham. That they are barbarous animals has been exposed by the bombing of innocent people in Peshawar. This is not the first time and it will not be the last. They will stop at nothing to get what they really want; power to lord it over you, and tell you how to live your life.

Is this slaughter of poor men, women and children happening because they hate the United States? Were they cutting throats and whipping women in Swat because of the drone attacks? Are these the kind of people who can be talked to, as Imran Khan, Rustam Shah Mohmand and others would have us believe?

They tell us that we the people of Pakistan are being targeted because our governments, past and present, collaborated with the US in fighting the Al Qaeda and Taliban. Let us for a moment accept their logic. How will they explain that these groups had already created cadres, prepared suicide squads, armed themselves and were ready to take on the Pakistani state?

Did this occur because of US-Pakistan partnership after 9/11 or was this happening anyway? The Sufi Mohammads of this world were on the warpath much before September 2001 as were the Punjab-based radical sectarian outfits. Their power and organisation was growing and they were all prepared to assert themselves whether or not the US-Pakistan collaboration took place.

The American presence in Afghanistan has of course added to the problem. After it was occupied, Al Qaeda and other radical groups shifted to Pakistani border regions, adding their money, leadership and skills to the growing strength of local groups. Drone attacks and the overbearing American attitude did not help either. But to say that the terrorism we face today is only because of Pakistan-US collaboration is delusional.

The US could indeed help us to fight this home-grown insurgency better by making its attitude towards Pakistan clearer. It is not just a question of giving us money and arms, although given the state of our economy and the militancy challenge it is not something to sneer at. It could go further by giving greater respect to our sovereignty and not appear to assist our adversaries.

Unwelcome drone attacks are just one aspect of it. The growing footprint of US advisors and security personnel on the ground in Islamabad and other parts of the country is disturbing for the Pakistani people. Some of them have even been caught roaming the capital with arms and others allegedly stopped close to our nuclear installation in Kahuta. Such stories fuel the already high levels of anti-Americanism in the country.

The US attitude in Afghanistan is also giving rise to misgivings. It is allowing Indian presence there to enlarge rapidly. The opening of new consulates is just one part of it. Indian civil institutions and private contractors in every field are also a growing presence. If the US wants to win hearts and minds in Pakistan, it has to show greater sensitivity to our concerns.

The Americans also need to clarify their attitude towards known anti-Pakistan figures, such as Brahmdagh Bugti and others, who are being given refuge in Afghanistan. There is sufficient evidence, according to Pakistan government, of Indian meddling in Balochistan. By giving refuge to the so-called Baloch nationalists, the Americans appear to be colluding with them.

It is in this context that the conditions attached to the Kerry-Lugar Bill raised so many doubts in Pakistan. If there had been no worries regarding American intentions, some of the intemperate language may have been tolerated given the larger framework of support contained in it. But the feeling that Americans are not playing straight, led to the strong response in the country. (The News)

(Ayaz Khan)