Newspaper Articles

Are UN Sanctions a gift to Iran’s regime?


(ria novosti) The UN Security Council’s approval of a fourth round of sanctions against Iran on June 9 has led to more not fewer questions about Tehran’ s nuclear program. There would have been fewer
doubts about the efficacy of the resolution had it been adopted unanimously. There would have been even fewer had the sanctions been as invasive as a scalpel. If something has to be cut off, better to do it in one swift motion. Watered-down sanctions and other long, drawn-out
punishments usually produce the opposite of the intended effect. U.S. President Barack Obama has said that one of the main goals of the new
sanctions is to show Tehran that it risks “complete international isolation.” On the other hand, if Iran halts its nuclear program and agrees to serious talks, it will be rewarded — the old carrot-and-stick tactic. Twelve out of the fifteen members of the UN Security Council (including all the
permanent members with veto power) voted for the sanctions. Turkey and Brazil voted against
them, while Lebanon abstained. Turkey and
Lebanon can be accused of merely showing solidarity with a fellow Muslim nation, but the
same cannot be said for Brazil. Many non-aligned
and developing UN member countries are looking up to Brazil for its unshakeable geopolitical equilibrium. Brazil and Turkey were offended that the P5+1 group (the five permanent members of
the Security Council and Germany) refused to take a serious look at the deal they struck with Iran on May 17. Under the terms of this agreement, Iran agreed to send 1.2 tons of low-enriched uranium to Turkey in exchange for 120 kg of nuclear fuel
over the course of a year. This amounted to half of Iran’s uranium stockpile – a clear sign of progress.
Earlier Tehran demanded that all exchanges take place exclusively on its territory. The Western
countries have expressed willingness to reconsider this deal, but after the fresh round of sanctions, Tehran is unlikely to go for this. Most likely, Iran will break off talks with the P5+1. Immediately
after the resolution passed, Brazilian President Lula da Silva announced that the new sanctions weaken the position of the Security Council. He called the resolution a Pyrrhic victory and called
for reform of the Security Council and the UN in general. This idea enjoys widespread support outside of the five permanent members of the Security Council. This is far from a united front,
and Iran’s “compete isolation” does not appear to be on the horizon. It would be naive to think that
Tehran will not use this move to its advantage,
and that it will ultimately settle down and change its ways. The purpose of all this is to get Iran to change its ways. But what will achieve this – sanctions or negotiations? Sanctions are always
double-edged sword. If they are poorly executed, imposed at the wrong time, or contain a hidden agenda they can end up helping those they’re meant to hurt (Ahmadinejad’s regime, in this case)
and hurt those they should help (the Iranian
people). Iran’s relations with the West have always been troubled. Who’s to blame is not important now. What’s important is that any new sanctions will allow Iran to continue claiming that it faces
encirclement by hostile powers. Ahmadinejad can use this argument to justify anything, from
pursuing nuclear weapons and suppressing the opposition movement to austerity measures and other sacrifices. Tehran has always presented sanctions as the West’s attempt to destroy the Islamic republic and a plot against Islam itself. It
would be wrong to think that the sanctions will not affect the Iranian people. Russia and China agreed to sanctions on the condition they not
affect trade and the energy sector. The sanctions primarily target the Revolutionary Guards (a ban on bank transactions, financing, a boycott of the RG-controlled companies and financial institutions). But the Revolutionary Guards have long since moved on from their role as the republic’s secret police. They are now a major corporation. They control or secretly own trade, shipping, financial, industrial, and oil and gas companies. All told, they control approximately 80
% of Iran’s oil production and up to 50 % of the country’s entire economy. But this is not the only reason it would be strange to assume that the sanctions will have no effect on the energy sector.
All of Iran’s nuclear programs are funded by oil exports (the bulk of which are controlled by the Guards). It turns out that imposing sanctions on the Guards is the same as imposing sanctions on Iran’s entire economy. But not targeting Iran’s energy sector means not targeting Iran’s nuclear
programs, which is absurd. So what will be the effect of the Security Council resolution? It will not lead to talks with Tehran on its nuclear programs. It will likely disrupt these talks. It will not help the opposition movement in Iran, which, by the way, defends Iran’s right to pursue civilian nuclear programs and research. The sanctions will only further weaken Iran’s already terrible economy. This will affect the living standards of
the Iranian people. Even according to official
estimates, out of the 73 million Iranians, 10 million live in abject poverty and another 30
million in relative poverty. How long will this resolution last? Six months? A year? What will come next – a new resolution, an ultimatum or a military strike? The resolution raises more questions than it answers. Russia’s support for the sanctions proposed by the U.S. won’t curry any
favor with Iran. However, it will not affect Russia’s cooperation with Iran in the nuclear power
industry, and Russia will be able to sell missile
defense systems to Iran under the agreement
reached prior to the sanctions. The sanctions only ban the sale of heavy offensive weapons. Strange
though it may seem, these sanctions may provide an impetus for the resolution of another non-proliferation issue. Arab countries, India, Pakistan, Turkey and Brazil have long insisted on fair play when it comes to non-proliferation, and they have demanded that the United States urge Israel to sign the Nuclear Non-Proliferation Treaty and
make public its own nuclear program. It will be very difficult for Washington to resist this demand
after getting its new round of sanctions.

About the author

Ali Arqam

1 Comment

Click here to post a comment
  • Share
    ایران پہ پابندیاں۔ ہم خاموش کیوں!….کشور ناہید

    کئی سال سے سن رہے تھے ”شیر آیا، شیر آیا“ پابندیاں لگنے والی ہیں ایران پر۔ کبھی ادھر سے خبر آتی تھی اور کبھی ادھر سے۔ دھمکیاں بہت تھیں، دھونس بہت تھی۔ کبھی اقوام متحدہ کی طرف سے آواز آتی تو کبھی امریکا کی طرف سے۔ ہر چند کہ دونوں ایک ہیں اور اب تو غزہ کی جانب جانے والا فلوٹیلا کو جس بے رحمی کے ساتھ مسخ کیا گیا۔ لوگوں کو قتل کیا گیا اور باقی ماندہ کو پابہ زنجیر کیا گیا۔ اس کی حرف بہ حرف تفصیل طلعت اور رضا نے سنا دی ہے۔ سلامتی کونسل نے قرارداد مذمت پاس کر دی۔ یہ بھی اسی طرح کی ایک کارروائی ہے جیسے عرب ممالک کی کونسل نے بھی قرارداد مذمت پاس کی۔ حوصلہ کیا تو صرف اور صرف ترکی کے وزیراعظم اور عوام نے کہ آگے بڑھ کر لڑنے اور غزہ کی پٹی میں محصور فلسطینیوں کی مدد کے لئے عملی اقدامات کرنے کی ٹھانی۔
    ایران نے امریکی پابندیوں کو، ردی کی ٹوکری میں پھینکنے کا فیصلہ کیا ہے۔ یہ فیصلہ صرف حکومت کا نہیں، ایرانی عوام کا بھی ہے۔ سربراہ سے لے کر عوام تک، کسی فیصلے میں مماثل اور مستحکم نہ ہوں۔ مثال بھی کیا دوں۔ آپ سمجھ گئے ہوں گے کہ پرویز مشرف کیسے صرف ٹیلیفونک دھمکی سے نہ صرف ڈر گیا تھا بلکہ امریکی حاکمیت کے سامنے دو زانو ہوگیا تھا۔ بعد ازاں یہ سلسلہ حاکمیت اس طرح رواں ہے کہ اگر سنگ جانی کے پاس امریکی کنٹینرز، دہشت گرد نہ اڑا دیتے اور بھسم کر دیتے تو ہمیں معلوم ہی نہیں ہوتا کہ ان کے یعنی نیٹو کے اسلحہ کے پاکستان کے ذریعہ جانے کی اجازت ہے، ورنہ یہ کیسے ممکن تھا اور نہیں معلوم کہ یہ رسل و رسائل کا سلسلہ کتنے سالوں سے جاری تھا۔ یہ تو زمانہ جانتا ہے کہ جب سے ایران کا انقلاب آیا ہے اسی زمانے سے امریکہ کے سینے پہ سانپ لوٹ رہا ہے کہ یہ کیسا ملک ہے جو ہماری حاکمیت کو قبول کرنے سے انکار کر رہا ہے۔ یہ کیسا ملک ہے کہ ہمارے ڈرانے دھمکانے میں نہیں آ رہا ہے۔ ایک طرف چھوٹا سا ملک کیوبا ہے جو امریکہ دھانے پر ہے اس کا سربراہ بوڑھا ہو چکا ہے، وہ امریکی دھمکیوں کو خاطر میں ہی نہیں لاتا ،اسی طرح جنوبی امریکہ کے ممالک میں امریکی جارحیت کے خلاف مسلسل نفرت پھیل رہی ہے خود امریکی عوام، عراق اور افغانستان میں جارحیت کے خلاف ہیں۔ جہاں تک پاکستان کا تعلق ہے تو ہمیں 1956ء سے اب تک امریکیوں کے جوتے چاٹنے کا کچھ بھی تو انعام نہیں ملا ہے۔ do more کے نعرے سب تسلیمیت کے جواب میں آتے جا رہے ہیں۔
    امریکہ کے خلاف بولتے ہوئے دو طرح کا اشتباہ سامنے آتا ہے ایک تو یہ کہ ساری مذہبی اور رجعت پسند جماعتیں بظاہر امریکہ کے خلاف نعرہ زن رہتی ہیں۔ اس کا سبب وہ نہیں جو ہمارا ہے۔ ہم امریکی سامراجیت کے خلاف ہیں جبکہ رجعت پسند جماعتیں جب چاہیں امریکہ کے دورے کر آئیں، ملاقات کر لیں اور سب سے بڑھ کر یہ کہ امریکہ کی پالیسیوں پہ معترض نہ ہوں۔ اب یہی لیجئے ڈرون حملے، کوئی کہتا ہے کہ یہ جہاز فلوریڈا سے اڑائے جاتے ہیں، کوئی کہتا ہے کہ پاکستان کے ہوائی اڈے مخصوص ہیں ان کی اڑان کیلئے۔ کبھی دن میں ایک حملہ ہوتا ہے کبھی چھ۔ مجال ہے حکومت پاکستان یا مذہبی جماعتیں، اس پر احتجاج کریں۔ مارے جاتے ہیں، معصوم کہ جتنے دہشت گرد ہیں وہ تو غاروں میں چھپے برقی آلات اور کمپیوٹرائزڈ سسٹم کے ذریعے دنیا کے حالات سے آگاہ ہیں۔
    امریکی سامراج اور اقوام متحدہ کی پابندیوں کے خلاف اور ایران کے حق میں سول سوسائٹی اور ساری جماعتوں کو احتجاج کے لئے سڑکوں پر ہونا چاہئے تھا۔ میں تو یہ تک خواہش رکھتی ہوں کہ یورپین یونین بھی احتجاج کی آواز بلند کرے مگر یہاں تو اسلامی ممالک خاموش ہیں۔ پہلے ملائیشیا بول لیا کرتا تھا مگر جب سے مہاتیر محمد کی حکومت گئی ہے وہاں بھی ان باتوں کا جواب بس خاموشی میں دیا جا رہا ہے۔ اگر کچھ ہو رہا ہے تو یہ کہ اگر کسی خاتون نے جینز پہن لی تو اس پر جرمانہ ہو رہا ہے۔ اسی طرح کی پابندیوں کا خوف ہے تو اس وقت جب ڈاکٹر خالد مسعود، اسلامک نظریاتی کونسل پاکستان سے رخصت ہوں گے تو تمام مولوی حضرات اس ادارے پر محکم ہوں گے اور جیسے پہلے ہوتا آیا ہے کہ سارے سرکاری ملازم داڑھی رکھیں۔ ایسے ہی احکامات پھر جاری ہونا شروع ہو جائیں گے۔
    فی الوقت کہا جا رہا ہے کہ تعلیم اور صحت کا محکمہ صوبوں کے سپرد کر دیا گیا ہے جبکہ اٹھارویں ترمیم پر صوبائی خود مختاری کے حوالے سے عملدرآمد کو دو سال بعد یہمرتسمکیا گیا ہے۔ اگر ایک حکم انتظامی سطح پر دو سال بعد ہونا ہو تو عوام کیلئے سب سے ضروری صحت اور تعلیم کے محکموں کو مکمل طور پر صوبوں کو اگر دیا بھی جا رہا ہے تو پہلے وفاقی سطح کے اداروں کو ختم کریں۔ اس سے جو بچت ہو وہ سارا پیسہ صوبوں کو دیں اور یوں صوبائی خودمختاری کی پہلی منزل طے ہو۔ اندازہ بھی ہو کہ حکومتی سطح پر صوبوں میں کتنی جان ہے کہ وہ پوری ذمہ داری اٹھا سکتے ہیں۔ علاوہ ازیں جتنے فنڈنگ ادارے ہیں وہ بھی اپنے انتظامی امور، صوبائی سطح پر منتقل کریں۔ اس طرح اسٹاف بھی صوبائی سطح پر جائے گا تو دور دراز علاقوں جیسے راجن پور، میانوالی اور کوٹ ادو میں بھی ترقیاتی منصوبے روبہ عمل ہوں۔
    یہ ساری باتیں تو ممبران قومی اسمبلی کو کرنی چاہئیں کوئی ایسا انسٹی ٹیوٹ ہو جو ان کو یہ نکات سمجھائے مگر ان کو ایک دوسرے پہ الزام تراشی سے فرصت ملے تو وہ سنجیدگی سے حکومت کے بدلتے ہوئے حالات پر غور کریں۔ اسمبلی میں تو صرف خواتین ممبران ہی بحث میں بھی سنجیدہ ہیں اور نئے بل بھی وہی لا رہی ہیں مگر ایران پہ پابندیوں کے معاملے پر وہ بھی ابھی تک خاموش ہیں۔ بھلا کیوں

    http://search.jang.com.pk/details.asp?nid=442155